فاقد خانہ معلومات
فاقد تصویر
غیر سلیس
غیر جامع
تلخیص کے محتاج

حدیث باب مدینۃ العلم

ویکی شیعہ سے
(حدیث مدینۃ العلم سے رجوع مکرر)
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
باب مدینۃ العلم
حدیث نبوی.jpg
حدیث کے کوائف
موضوع: امام علیؑ کی دینی مرجعیت کا اثبات
صادر از: پیامبر اسلامؐ
راویان: امام حسنؑ، امام حسینؑ، عبداللہ بن عباس، جابر بن عبداللہ انصاری، عبداللہ بن مسعود، عبداللہ بن عمر، حذیفۃ بن یمان، عمرو بن عاص
اعتبارِ سند: متواتر
مشہور احادیث
حدیث سلسلۃ الذہب.حدیث ثقلین.حدیث کساء.مقبولہ عمر بن حنظلہ.حدیث قرب نوافل.حدیث معراج. حدیث ولایت.حدیث وصایت.حدیث جنود عقل و جہل


حدیث باب مدینۃ العلم؛ پیغمبر اسلامؐ کی ایک حدیث ہے جس میں آپ نے اپنے آپ کو علم کا شہر اور حضرت علی علیہ السلام کو اس کا دروازہ قرار دیا ہے۔ یہ حدیث من جملہ ان دلائل میں سے ہے جسے شیعہ متکلمین پیغمبر اکرمؐ کے بعد حضرت علیؑ کی دینی مرجعیت کو ثابت کرنے کے لئے پیش کرتے ہیں۔

متن حدیث

شیعوں کے پہلے امام
حضرت علی علیہ السلام

حرم امام علی1.jpg


حیات
واقعۂ غدیرلیلۃ المبیتیوم الدارمختصر زندگی نامہ


علمی ورثہ
نہج البلاغہغرر الحکم و درر الکلمخطبۂ شقشقیہبے الف خطبہبے نقطہ خطبہحرم


فضائل
فضائل اہل‌بیت، آیت ولایت • آیت اہل‌الذکر • آیت شراء • آیت اولی‌الامر • آیت تطہیر • آیت مباہلہ • آیت مودت • آیت صادقین-حدیث مدینۃالعلم • حدیث رایت • حدیث سفینہ • حدیث کساء • خطبہ غدیر • حدیث منزلت • حدیث یوم‌الدار • حدیث ولایتسدالابوابحدیث وصایت


اصحاب
عمار بن یاسرمالک اشترابوذر غفاریعبیداللہ بن ابی رافعحجر بن عدیدیگر افراد

حدیث مدینۃ العلم مختلف الفاظ کے ساتھ وارد نقل ہوئی ہے جن میں سے بعض یہ ہیں

"أنا مدينة العلم وعليّ بابها فمن اراد العلم فليأت الباب"۔
میں علم کا شہر ہوں اور علیؑ اس کا دروازہ ہیں پس جو بھی اس شہر میں داخل ہونا چاہتا ہے، دروازے سے آکر داخل ہوجائے۔[1]
"أنا مدينة العلم وعليّ بابها فمن اراد العلم فليأته من بابه""۔
میں علم کا شہر ہوں اور علیؑ اس کا دروازہ ہیں، پس جو علم حاصل کرنا چاہے اس کو دروازے سے اس شہر میں داخل ہونا پڑے گا۔[2]
"انا دار الحكمة وعليّ بابها"۔
میں حکمت کا گھر ہوں اور علیؑ اس گھر کا دروازہ ہیں۔[3]

تواتر اور صحت حدیث

حدیث مدینۃ العلم، اہل تشیع متواتر اور محمد بن جریر طبری، حاکم نیشابوری، خطیب بغدادی اور جلال الدین سیوطی جیسے اکابر اہل سنت کے ہاں حسن اور صحیح ہے۔ عبدالحسین امینی نے اہل سنت کے 21 محدثین کے نام ذکر کئے ہیں جو اس حدیث کو حسن اور صحیح سمجھتے ہیں۔[4]

حدیث کے راوی

صحابہ اور تابعین

دوسرے افراد

  • حافظ یحیی بن معین بغدادی؛[6]
  • شیبانی؛[7]
  • ترمذی؛[8]
  • طبری؛[9]
  • حاکم نیشابوری؛[10]
  • بغدادی؛[11]
  • ابن عبدالبر؛[12]
  • ابن مغازلی؛[13]
  • سمعانی؛[14]
  • ابن اثیر؛[15]
  • ذہبی؛[16]
  • ابن صباغ مالکی؛[17]
  • سیوطی؛[18]
  • آلوسی۔[19]

عام راوی

  • حافظ یحیی بن معین بغدادی؛[20]
  • شیبانی؛[21]
  • ترمذی؛[22]
  • طبری؛[23]
  • حاکم نیشابوری؛[24]
  • بغدادی؛[25]
  • ابن عبدالبر؛[26]
  • ابن مغازلی؛[27]
  • سمعانی؛[28]
  • ابن اثیر؛[29]
  • ذہبی؛[30]
  • ابن صباغ مالکی؛[31]
  • سیوطی؛[32]
  • آلوسی۔[33]

مشاہیر اہل سنت کے اقوال

گنجی شافعی

تمام اہل بیتؑ، صحابہ اور تابعین منجملہ ابوبکر، عمر اور عثمان نے اللہ کے احکام کے سلسلے میں علیؑ کے ساتھ صلاح مشورے کئے ہیں اور آپؑ کی مرتبت، فضیلت، عظمت اور علمی برتری کا اعتراف کیا ہے۔ علیؑ کے علمی مقام کے سامنے یہ حدیث کچھ بہت بڑی خبر نہیں ہے کیونکہ آپؑ کی منزلت خداوند متعال اور رسول اکرمؐ اور مؤمنین کے نزدیک اس سے کہیں زیادہ ہے۔[34]

ابوسعید خلیل علائی

اس حدیث کی نفی کے سلسلے دلیل کیا ہے؟! جن لوگوں نے اس کو ضعیف قرار دینے کی کوشش کی ہے، وہ اس کی صحیح سندوں اور قطعی و یقینی شواہد کے مقابلے میں کوئی دلیل پیش کرنے سے عاجز ہیں۔[35]

ابن حجر عسقلانی

یہ حدیث متعدد اسناد سے نقل ہوئی ہے اور یہ درست نہیں ہے کہ ہم اس کو ضعیف قرار دیں۔این حدیث سندهای متعددی دارد و سزاوار نیست آن را تضعیف کنیم.[36]

حوالہ جات

  1. المستدرک علی الصحیحین، حاکم نیشابوری ج3، ص126۔
  2. الاستیعاب، ابن عبد البر، ج3، ص1102۔
  3. ترمذی، السنن ج5، ص637۔
  4. امینی، ج 6، ص 78 ـ 79۔
  5. نظم درر السمطين، زرندی، ص 113۔
  6. حاکم نیشابوری، المستدرک علی الصحیحین، ج3، ص138۔
  7. فضائل الصحابۃ، ص138۔
  8. الجامع الصحيح، ج7، ص437۔
  9. تہذيب الآثار وتفصيل الثابت، ص105۔
  10. المستدرک علی الصحیحین، ج3، ص137۔
  11. تاریخ بغداد، ج4، ص348۔
  12. الاستیعاب، قسم سوم، ص1102۔
  13. مناقب علی بن ابی طالب، ص 80۔
  14. الأنساب، ج3، ص475۔
  15. معجم جامع الأصول فی أحادیث الرسول، ج9، ص473۔
  16. تذکرة الحفاظ، ج4، ص1231۔
  17. الفصول المہمہ، ص36۔
  18. جامع الصغیر، ج1، ص415، ح2705۔
  19. روح المعاني، ذیل سوره ذاریات، آیہ 1۔
  20. حاکم نیشابوری، المستدرک علی الصحیحین، ج3، ص138۔
  21. فضائل الصحابۃ، ص138۔
  22. الجامع الصحيح، ج7، ص437۔
  23. تہذيب الآثار وتفصيل الثابت، ص105۔
  24. المستدرک علی الصحیحین، ج3، ص137۔
  25. تاریخ بغداد، ج4، ص348۔
  26. الاستیعاب، قسم سوم، ص1102۔
  27. مناقب علی بن ابی طالب، ص 80۔
  28. الأنساب، ج3، ص475۔
  29. معجم جامع الأصول فی أحادیث الرسول، ج9، ص473۔
  30. تذکرة الحفاظ، ج4، ص1231۔
  31. الفصول المہمہ، ص36۔
  32. جامع الصغیر، ج1، ص415، ح2705۔
  33. روح المعاني، ذیل سوره ذاریات، آیہ 1۔
  34. گنجی، کفایۃ الطالب، ص220، 222 و223۔
  35. سیوطی، اللئالى المصنوعۃ، ج1، ص155 و 333۔
  36. ابن حجر عسقلانی، ج 2، ص 155۔


مآخذ

  • آلوسی، روح المعاني، دار إحیاء التراث العربی، بیروت.
  • ابن أثیر الجزری، معجم جامع الأصول فی أحادیث الرسول، تحقیق محمد الفقی ، دار احیاء التراث العربی ، بیروت.
  • ابن حجر عسقلانی، لسان الميزان، مؤسسۃ الأعلمی للمطبوعات - بیروت.
  • ابن صباغ مالکی، الفصول المہمہ، تحقیق سامی الغریری، دار الحدیث، قم.
  • ابن عبدالبر، الاستیعاب، تحقیق علی محمد بجاوی، دار الجیل، بیروت.
  • ابن مغازلی، مناقب علی بن ابی طالب، مکتبہ اسلامیہ، تہران.
  • ابو نعیم اصفہانی، حلیۃ الأولیاء و طبقات الأصفیاء، دار الکتاب العربی، بیروت.
  • امینی، الغدیر، دار الکتاب العربی، بیروت.
  • بغدادی، تاريخ بغداد، دار الکتب العلمیہ، بیروت.
  • ترمذی، الجامع الصحيح، تحقیق احمد محمد شاکر، مرکز اطلاعات و مدارک اسلامی.
  • حاکم نیشابوری، المستدرک علی الصحیحین، تحقیق مصطفی عبد القادر عطا، دار الکتب العلمیہ، بیروت.
  • ذہبی، تذکرة الحفاظ، دار الکتب العلمیۃ، بیروت.
  • زرندی، نظم درر السمطين، حسن بیرجندی، مجمع جہانی اہل بیت، تہران.
  • سمعانی، الأنساب، تحقیق عبد الله عمر البارودی، ناشر دار الفکر، بیروت.
  • سیوطی، جامع الصغير، دار الفکر، بیروت.
  • سیوطی، اللئالی المصنوعۃ فی الأحادیث الموضوعۃ، تحقیق أبو عبدالرحمان صلاح بن محمد بن عویضۃ، دار الکتب العلمیۃ، بیروت.
  • شیبانی، فضائل الصحابۃ، تحقیق وصی الله محمد عباس، مؤسسۃ الرسالۃ، بیروت.
  • ابن جریر طبری، تہذيب الآثار وتفصيل الثابت، تحقیق محمود محمد شاکر، مطبعۃ المدنی، قاہرة.
  • گنجی شافعی، کفایۃ الطالب، دار احیاء التراث، بیروت.