صفحۂ اول

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
ویکی شیعہ میں خوش آمدید

اہل بیتؑ عالمی اسمبلی سے وابستہ، مکتب اہل بیتؑ کا آنلائن دائرة المعارف
اردو مضامین کی تعداد:3,074
(اس سائٹ کو بہتر حالت میں دیکھنے کے لیے موزیلا فائر فاکس اور اردو نستعلیق فونٹ استعمال کیجئے)

آ ا ب پ ت ث ج چ ح خ د ذ ر ز ژ س ش ص ض ط ظ ع غ ف ق ک گ ل م ن و ه ی

منتخب مضمون

سامِری کا بچھڑا یا سنہرا بچھڑا، سونے سے بنایا گیا ایک بت تھا جسے سامری نے توریت کے دریافت کے دوران حضرت موسی کی طولانی غیبت کے وقت ایک بچھڑے کی شکل میں بنایا تھا اور بنی‌ اسرائیل کو اس کی پرستش کرنے کی دعوت دی۔ اس بچھڑے سے گائیں کی آواز آتی تھی جو ایک معجزے کی طرح لگتا تھا۔ حضرت موسی کو طور سیناء سے واپس آنے کے بعد جب بنی‌ اسرائیل کی گوسالہ پرستی کا علم ہوا تو اپنے بھائی حضرت ہارون کی توبیخ کی اور بنی اسرائیل کے مشرکین اور سامری کو سزا دیا، مذکورہ بچھڑے کو جلا دیا گیا اور اس کے راکھ کو دریا یا کسی نہر کے پانی میں بہایا گیا، اور اس بت پرستی کی وجہ سے بنی‌ اسرائیل جس گناه کے مرتکب ہوئے تھے اس سلسلے میں ان کی مغفرت کے لئے خدا سے دعا مانگی۔

قرآن میں یہ داستان سورہ اعراف اور سورہ طہ میں نقل ہوئی ہے۔ توریت میں بھی بنی اسرائیل کی گوسالہ پرستی کی طرف اشارہ ہوا ہے۔ قرآن کے مطابق اس بچھڑے کے بنانے والے کا نام سامری تھا، لیکن توریت میں اس کی نسبت حضرت ہارون کی طرف دی گئی ہے۔

اس بچھڑے کا بنانے والا کون تھا، بنی‌ اسرائیل نے بچھڑے کی پوجا کیوں شروع کی اور ان کو اس بت پرستی کی کیا سزا دی گئی ان مطالب کے بارے میں مفسرین کے درمیان اختلاف پایا جاتا ہے۔


مزید



منتخب تصویر  

حرم امام علی1.jpg
نجف میں حضرت علیؑ کا روضہ

آئینہ تاریخ

نئے مضامین


منتخب مضامین


اہل بیت عالمی اسمبلی کی دوسری ویب سائٹیں