سورہ ہود

ويکی شيعه سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
یونس سورہ ہود یوسف
ترتیب کتابت: 11
پارہ : 11 اور 12
نزول
ترتیب نزول: 52
مکی/ مدنی : مکی
اعداد و شمار
آیات: 123
الفاظ: 1948
حروف: 7820

سوره ہود [سُوْرَةُ هُوْد] قوم عاد کے پیغمبر حضرت ہود کی داستان کو تفصیل سے بیان کرتی ہے اور اسی بنا پر اس کو سورہ ہود(ع) کا نام دیا گیا ہے؛ قرآن کی پانچویں سورت ہے جن کا آغاز حروف مقطعہ سے ہوتا ہے۔ یہ سورت سور مئون میں سے ہے اور حجم و کمیت کے لحاظ سے اوسط درجے کی سورت ہے اور تقریبا دو تہائی سورت پر محیط ہے۔

سورہ ہود

سوره ہود (کی آیات 50 تا 60) میں قوم عاد کے پیغمبر حضرت ہود کی داستان کو تفصیل سے بیان کیا گیا ہے اور مکی سورت ہے۔ یہ سورت مصحف کے لحاظ سے گیارہویں اور ترتیب نزول کے لحاظ سے باون ویں سورت ہے۔ پانچویں سورت ہے جس کا آغاز حروف مقطعہ [= الر = الف لام را] سے ہوتا ہے یہ سورت سور مئون میں سے ہے اور حجم و کمیت کے لحاظ سے اوسط درجے کی سورت ہے اور تقریبا دو تہائی سورت پر محیط ہے۔ اس سورت کی آیات کی تعداد کوفی قراء کے مطابق 123 اور مدنی قراء کے مطابق 122 جبکہ بصری قراء کے مطابق 121 ہے تاہم اول الذکر قول صحیح اور مشہور ہے۔ اس سورت کے الفاظ 1948 اور حروف 7820 ہیں۔

مفاہیم

اس صورت کے اہم مضامین و مفاہیم درج ذیل ہیں[1]:

  • [[قصص الانبیاء (نوح، ہود، صالح، لوط، شعیب، ابراہیم، و موسی علیہم السلام)؛
  • فساد، برائیوں اور انحرافات کے خلاف جدوجہد اور حق و استقامت کے راستے پر گامزن ہونا؛
  • وحی اور قرآن کی حقانیت اور عظمت و شوت اور اعجاز کا اثبات؛
  • علم اللہ کا مسئلہ اور ارتقاء اور انتخابِ احسن کی راہ مکں انسان کی آزمائش۔

متن سوره

سورہ یونس مکیہ ـ نمبر 11 - آیات 123 - ترتیب نزول 52
بِسْمِ اللّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ

الَر كِتَابٌ أُحْكِمَتْ آيَاتُهُ ثُمَّ فُصِّلَتْ مِن لَّدُنْ حَكِيمٍ خَبِيرٍ ﴿1﴾ أَلاَّ تَعْبُدُواْ إِلاَّ اللّهَ إِنَّنِي لَكُم مِّنْهُ نَذِيرٌ وَبَشِيرٌ ﴿2﴾ وَأَنِ اسْتَغْفِرُواْ رَبَّكُمْ ثُمَّ تُوبُواْ إِلَيْهِ يُمَتِّعْكُم مَّتَاعًا حَسَنًا إِلَى أَجَلٍ مُّسَمًّى وَيُؤْتِ كُلَّ ذِي فَضْلٍ فَضْلَهُ وَإِن تَوَلَّوْاْ فَإِنِّيَ أَخَافُ عَلَيْكُمْ عَذَابَ يَوْمٍ كَبِيرٍ ﴿3﴾ إِلَى اللّهِ مَرْجِعُكُمْ وَهُوَ عَلَى كُلِّ شَيْءٍ قَدِيرٌ ﴿4﴾ أَلا إِنَّهُمْ يَثْنُونَ صُدُورَهُمْ لِيَسْتَخْفُواْ مِنْهُ أَلا حِينَ يَسْتَغْشُونَ ثِيَابَهُمْ يَعْلَمُ مَا يُسِرُّونَ وَمَا يُعْلِنُونَ إِنَّهُ عَلِيمٌ بِذَاتِ الصُّدُورِ ﴿5﴾ وَمَا مِن دَآبَّةٍ فِي الأَرْضِ إِلاَّ عَلَى اللّهِ رِزْقُهَا وَيَعْلَمُ مُسْتَقَرَّهَا وَمُسْتَوْدَعَهَا كُلٌّ فِي كِتَابٍ مُّبِينٍ ﴿6﴾ وَهُوَ الَّذِي خَلَق السَّمَاوَاتِ وَالأَرْضَ فِي سِتَّةِ أَيَّامٍ وَكَانَ عَرْشُهُ عَلَى الْمَاء لِيَبْلُوَكُمْ أَيُّكُمْ أَحْسَنُ عَمَلاً وَلَئِن قُلْتَ إِنَّكُم مَّبْعُوثُونَ مِن بَعْدِ الْمَوْتِ لَيَقُولَنَّ الَّذِينَ كَفَرُواْ إِنْ هَذَا إِلاَّ سِحْرٌ مُّبِينٌ ﴿7﴾ وَلَئِنْ أَخَّرْنَا عَنْهُمُ الْعَذَابَ إِلَى أُمَّةٍ مَّعْدُودَةٍ لَّيَقُولُنَّ مَا يَحْبِسُهُ أَلاَ يَوْمَ يَأْتِيهِمْ لَيْسَ مَصْرُوفًا عَنْهُمْ وَحَاقَ بِهِم مَّا كَانُواْ بِهِ يَسْتَهْزِؤُونَ ﴿8﴾ وَلَئِنْ أَذَقْنَا الإِنْسَانَ مِنَّا رَحْمَةً ثُمَّ نَزَعْنَاهَا مِنْهُ إِنَّهُ لَيَئُوسٌ كَفُورٌ ﴿9﴾ وَلَئِنْ أَذَقْنَاهُ نَعْمَاء بَعْدَ ضَرَّاء مَسَّتْهُ لَيَقُولَنَّ ذَهَبَ السَّيِّئَاتُ عَنِّي إِنَّهُ لَفَرِحٌ فَخُورٌ ﴿10﴾ إِلاَّ الَّذِينَ صَبَرُواْ وَعَمِلُواْ الصَّالِحَاتِ أُوْلَئِكَ لَهُم مَّغْفِرَةٌ وَأَجْرٌ كَبِيرٌ ﴿11﴾ فَلَعَلَّكَ تَارِكٌ بَعْضَ مَا يُوحَى إِلَيْكَ وَضَآئِقٌ بِهِ صَدْرُكَ أَن يَقُولُواْ لَوْلاَ أُنزِلَ عَلَيْهِ كَنزٌ أَوْ جَاء مَعَهُ مَلَكٌ إِنَّمَا أَنتَ نَذِيرٌ وَاللّهُ عَلَى كُلِّ شَيْءٍ وَكِيلٌ ﴿12﴾ أَمْ يَقُولُونَ افْتَرَاهُ قُلْ فَأْتُواْ بِعَشْرِ سُوَرٍ مِّثْلِهِ مُفْتَرَيَاتٍ وَادْعُواْ مَنِ اسْتَطَعْتُم مِّن دُونِ اللّهِ إِن كُنتُمْ صَادِقِينَ ﴿13﴾ فَإِن لَّمْ يَسْتَجِيبُواْ لَكُمْ فَاعْلَمُواْ أَنَّمَا أُنزِلِ بِعِلْمِ اللّهِ وَأَن لاَّ إِلَهَ إِلاَّ هُوَ فَهَلْ أَنتُم مُّسْلِمُونَ ﴿14﴾ مَن كَانَ يُرِيدُ الْحَيَاةَ الدُّنْيَا وَزِينَتَهَا نُوَفِّ إِلَيْهِمْ أَعْمَالَهُمْ فِيهَا وَهُمْ فِيهَا لاَ يُبْخَسُونَ ﴿15﴾ أُوْلَئِكَ الَّذِينَ لَيْسَ لَهُمْ فِي الآخِرَةِ إِلاَّ النَّارُ وَحَبِطَ مَا صَنَعُواْ فِيهَا وَبَاطِلٌ مَّا كَانُواْ يَعْمَلُونَ ﴿16﴾ أَفَمَن كَانَ عَلَى بَيِّنَةٍ مِّن رَّبِّهِ وَيَتْلُوهُ شَاهِدٌ مِّنْهُ وَمِن قَبْلِهِ كِتَابُ مُوسَى إَمَامًا وَرَحْمَةً أُوْلَئِكَ يُؤْمِنُونَ بِهِ وَمَن يَكْفُرْ بِهِ مِنَ الأَحْزَابِ فَالنَّارُ مَوْعِدُهُ فَلاَ تَكُ فِي مِرْيَةٍ مِّنْهُ إِنَّهُ الْحَقُّ مِن رَّبِّكَ وَلَكِنَّ أَكْثَرَ النَّاسِ لاَ يُؤْمِنُونَ ﴿17﴾ وَمَنْ أَظْلَمُ مِمَّنِ افْتَرَى عَلَى اللّهِ كَذِبًا أُوْلَئِكَ يُعْرَضُونَ عَلَى رَبِّهِمْ وَيَقُولُ الأَشْهَادُ هَؤُلاء الَّذِينَ كَذَبُواْ عَلَى رَبِّهِمْ أَلاَ لَعْنَةُ اللّهِ عَلَى الظَّالِمِينَ ﴿18﴾ الَّذِينَ يَصُدُّونَ عَن سَبِيلِ اللّهِ وَيَبْغُونَهَا عِوَجًا وَهُم بِالآخِرَةِ هُمْ كَافِرُونَ ﴿19﴾ أُولَئِكَ لَمْ يَكُونُواْ مُعْجِزِينَ فِي الأَرْضِ وَمَا كَانَ لَهُم مِّن دُونِ اللّهِ مِنْ أَوْلِيَاء يُضَاعَفُ لَهُمُ الْعَذَابُ مَا كَانُواْ يَسْتَطِيعُونَ السَّمْعَ وَمَا كَانُواْ يُبْصِرُونَ ﴿20﴾ أُوْلَئِكَ الَّذِينَ خَسِرُواْ أَنفُسَهُمْ وَضَلَّ عَنْهُم مَّا كَانُواْ يَفْتَرُونَ ﴿21﴾ لاَ جَرَمَ أَنَّهُمْ فِي الآخِرَةِ هُمُ الأَخْسَرُونَ ﴿22﴾ إِنَّ الَّذِينَ آمَنُواْ وَعَمِلُواْ الصَّالِحَاتِ وَأَخْبَتُواْ إِلَى رَبِّهِمْ أُوْلَئِكَ أَصْحَابُ الجَنَّةِ هُمْ فِيهَا خَالِدُونَ ﴿23﴾ مَثَلُ الْفَرِيقَيْنِ كَالأَعْمَى وَالأَصَمِّ وَالْبَصِيرِ وَالسَّمِيعِ هَلْ يَسْتَوِيَانِ مَثَلاً أَفَلاَ تَذَكَّرُونَ ﴿24﴾ وَلَقَدْ أَرْسَلْنَا نُوحًا إِلَى قَوْمِهِ إِنِّي لَكُمْ نَذِيرٌ مُّبِينٌ ﴿25﴾ أَن لاَّ تَعْبُدُواْ إِلاَّ اللّهَ إِنِّيَ أَخَافُ عَلَيْكُمْ عَذَابَ يَوْمٍ أَلِيمٍ ﴿26﴾ فَقَالَ الْمَلأُ الَّذِينَ كَفَرُواْ مِن قِوْمِهِ مَا نَرَاكَ إِلاَّ بَشَرًا مِّثْلَنَا وَمَا نَرَاكَ اتَّبَعَكَ إِلاَّ الَّذِينَ هُمْ أَرَاذِلُنَا بَادِيَ الرَّأْيِ وَمَا نَرَى لَكُمْ عَلَيْنَا مِن فَضْلٍ بَلْ نَظُنُّكُمْ كَاذِبِينَ ﴿27﴾ قَالَ يَا قَوْمِ أَرَأَيْتُمْ إِن كُنتُ عَلَى بَيِّنَةٍ مِّن رَّبِّيَ وَآتَانِي رَحْمَةً مِّنْ عِندِهِ فَعُمِّيَتْ عَلَيْكُمْ أَنُلْزِمُكُمُوهَا وَأَنتُمْ لَهَا كَارِهُونَ ﴿28﴾ وَيَا قَوْمِ لا أَسْأَلُكُمْ عَلَيْهِ مَالاً إِنْ أَجْرِيَ إِلاَّ عَلَى اللّهِ وَمَآ أَنَاْ بِطَارِدِ الَّذِينَ آمَنُواْ إِنَّهُم مُّلاَقُو رَبِّهِمْ وَلَكِنِّيَ أَرَاكُمْ قَوْمًا تَجْهَلُونَ ﴿29﴾ وَيَا قَوْمِ مَن يَنصُرُنِي مِنَ اللّهِ إِن طَرَدتُّهُمْ أَفَلاَ تَذَكَّرُونَ ﴿30﴾ وَلاَ أَقُولُ لَكُمْ عِندِي خَزَآئِنُ اللّهِ وَلاَ أَعْلَمُ الْغَيْبَ وَلاَ أَقُولُ إِنِّي مَلَكٌ وَلاَ أَقُولُ لِلَّذِينَ تَزْدَرِي أَعْيُنُكُمْ لَن يُؤْتِيَهُمُ اللّهُ خَيْرًا اللّهُ أَعْلَمُ بِمَا فِي أَنفُسِهِمْ إِنِّي إِذًا لَّمِنَ الظَّالِمِينَ ﴿31﴾ قَالُواْ يَا نُوحُ قَدْ جَادَلْتَنَا فَأَكْثَرْتَ جِدَالَنَا فَأْتَنِا بِمَا تَعِدُنَا إِن كُنتَ مِنَ الصَّادِقِينَ ﴿32﴾ قَالَ إِنَّمَا يَأْتِيكُم بِهِ اللّهُ إِن شَاء وَمَا أَنتُم بِمُعْجِزِينَ ﴿33﴾ وَلاَ يَنفَعُكُمْ نُصْحِي إِنْ أَرَدتُّ أَنْ أَنصَحَ لَكُمْ إِن كَانَ اللّهُ يُرِيدُ أَن يُغْوِيَكُمْ هُوَ رَبُّكُمْ وَإِلَيْهِ تُرْجَعُونَ ﴿34﴾ أَمْ يَقُولُونَ افْتَرَاهُ قُلْ إِنِ افْتَرَيْتُهُ فَعَلَيَّ إِجْرَامِي وَأَنَاْ بَرِيءٌ مِّمَّا تُجْرَمُونَ ﴿35﴾ وَأُوحِيَ إِلَى نُوحٍ أَنَّهُ لَن يُؤْمِنَ مِن قَوْمِكَ إِلاَّ مَن قَدْ آمَنَ فَلاَ تَبْتَئِسْ بِمَا كَانُواْ يَفْعَلُونَ ﴿36﴾ وَاصْنَعِ الْفُلْكَ بِأَعْيُنِنَا وَوَحْيِنَا وَلاَ تُخَاطِبْنِي فِي الَّذِينَ ظَلَمُواْ إِنَّهُم مُّغْرَقُونَ ﴿37﴾ وَيَصْنَعُ الْفُلْكَ وَكُلَّمَا مَرَّ عَلَيْهِ مَلأٌ مِّن قَوْمِهِ سَخِرُواْ مِنْهُ قَالَ إِن تَسْخَرُواْ مِنَّا فَإِنَّا نَسْخَرُ مِنكُمْ كَمَا تَسْخَرُونَ ﴿38﴾ فَسَوْفَ تَعْلَمُونَ مَن يَأْتِيهِ عَذَابٌ يُخْزِيهِ وَيَحِلُّ عَلَيْهِ عَذَابٌ مُّقِيمٌ ﴿39﴾ حَتَّى إِذَا جَاء أَمْرُنَا وَفَارَ التَّنُّورُ قُلْنَا احْمِلْ فِيهَا مِن كُلٍّ زَوْجَيْنِ اثْنَيْنِ وَأَهْلَكَ إِلاَّ مَن سَبَقَ عَلَيْهِ الْقَوْلُ وَمَنْ آمَنَ وَمَا آمَنَ مَعَهُ إِلاَّ قَلِيلٌ ﴿40﴾ وَقَالَ ارْكَبُواْ فِيهَا بِسْمِ اللّهِ مَجْرَاهَا وَمُرْسَاهَا إِنَّ رَبِّي لَغَفُورٌ رَّحِيمٌ ﴿41﴾ وَهِيَ تَجْرِي بِهِمْ فِي مَوْجٍ كَالْجِبَالِ وَنَادَى نُوحٌ ابْنَهُ وَكَانَ فِي مَعْزِلٍ يَا بُنَيَّ ارْكَب مَّعَنَا وَلاَ تَكُن مَّعَ الْكَافِرِينَ ﴿42﴾ قَالَ سَآوِي إِلَى جَبَلٍ يَعْصِمُنِي مِنَ الْمَاء قَالَ لاَ عَاصِمَ الْيَوْمَ مِنْ أَمْرِ اللّهِ إِلاَّ مَن رَّحِمَ وَحَالَ بَيْنَهُمَا الْمَوْجُ فَكَانَ مِنَ الْمُغْرَقِينَ ﴿43﴾ وَقِيلَ يَا أَرْضُ ابْلَعِي مَاءكِ وَيَا سَمَاء أَقْلِعِي وَغِيضَ الْمَاء وَقُضِيَ الأَمْرُ وَاسْتَوَتْ عَلَى الْجُودِيِّ وَقِيلَ بُعْداً لِّلْقَوْمِ الظَّالِمِينَ ﴿44﴾ وَنَادَى نُوحٌ رَّبَّهُ فَقَالَ رَبِّ إِنَّ ابُنِي مِنْ أَهْلِي وَإِنَّ وَعْدَكَ الْحَقُّ وَأَنتَ أَحْكَمُ الْحَاكِمِينَ ﴿45﴾ قَالَ يَا نُوحُ إِنَّهُ لَيْسَ مِنْ أَهْلِكَ إِنَّهُ عَمَلٌ غَيْرُ صَالِحٍ فَلاَ تَسْأَلْنِ مَا لَيْسَ لَكَ بِهِ عِلْمٌ إِنِّي أَعِظُكَ أَن تَكُونَ مِنَ الْجَاهِلِينَ ﴿46﴾ قَالَ رَبِّ إِنِّي أَعُوذُ بِكَ أَنْ أَسْأَلَكَ مَا لَيْسَ لِي بِهِ عِلْمٌ وَإِلاَّ تَغْفِرْ لِي وَتَرْحَمْنِي أَكُن مِّنَ الْخَاسِرِينَ ﴿47﴾ قِيلَ يَا نُوحُ اهْبِطْ بِسَلاَمٍ مِّنَّا وَبَركَاتٍ عَلَيْكَ وَعَلَى أُمَمٍ مِّمَّن مَّعَكَ وَأُمَمٌ سَنُمَتِّعُهُمْ ثُمَّ يَمَسُّهُم مِّنَّا عَذَابٌ أَلِيمٌ ﴿48﴾ تِلْكَ مِنْ أَنبَاء الْغَيْبِ نُوحِيهَا إِلَيْكَ مَا كُنتَ تَعْلَمُهَا أَنتَ وَلاَ قَوْمُكَ مِن قَبْلِ هَذَا فَاصْبِرْ إِنَّ الْعَاقِبَةَ لِلْمُتَّقِينَ ﴿49﴾ وَإِلَى عَادٍ أَخَاهُمْ هُودًا قَالَ يَا قَوْمِ اعْبُدُواْ اللّهَ مَا لَكُم مِّنْ إِلَهٍ غَيْرُهُ إِنْ أَنتُمْ إِلاَّ مُفْتَرُونَ ﴿50﴾ يَا قَوْمِ لا أَسْأَلُكُمْ عَلَيْهِ أَجْرًا إِنْ أَجْرِيَ إِلاَّ عَلَى الَّذِي فَطَرَنِي أَفَلاَ تَعْقِلُونَ ﴿51﴾ وَيَا قَوْمِ اسْتَغْفِرُواْ رَبَّكُمْ ثُمَّ تُوبُواْ إِلَيْهِ يُرْسِلِ السَّمَاء عَلَيْكُم مِّدْرَارًا وَيَزِدْكُمْ قُوَّةً إِلَى قُوَّتِكُمْ وَلاَ تَتَوَلَّوْاْ مُجْرِمِينَ ﴿52﴾ قَالُواْ يَا هُودُ مَا جِئْتَنَا بِبَيِّنَةٍ وَمَا نَحْنُ بِتَارِكِي آلِهَتِنَا عَن قَوْلِكَ وَمَا نَحْنُ لَكَ بِمُؤْمِنِينَ ﴿53﴾ إِن نَّقُولُ إِلاَّ اعْتَرَاكَ بَعْضُ آلِهَتِنَا بِسُوَءٍ قَالَ إِنِّي أُشْهِدُ اللّهِ وَاشْهَدُواْ أَنِّي بَرِيءٌ مِّمَّا تُشْرِكُونَ ﴿54﴾ مِن دُونِهِ فَكِيدُونِي جَمِيعًا ثُمَّ لاَ تُنظِرُونِ ﴿55﴾ إِنِّي تَوَكَّلْتُ عَلَى اللّهِ رَبِّي وَرَبِّكُم مَّا مِن دَآبَّةٍ إِلاَّ هُوَ آخِذٌ بِنَاصِيَتِهَا إِنَّ رَبِّي عَلَى صِرَاطٍ مُّسْتَقِيمٍ ﴿56﴾ فَإِن تَوَلَّوْاْ فَقَدْ أَبْلَغْتُكُم مَّا أُرْسِلْتُ بِهِ إِلَيْكُمْ وَيَسْتَخْلِفُ رَبِّي قَوْمًا غَيْرَكُمْ وَلاَ تَضُرُّونَهُ شَيْئًا إِنَّ رَبِّي عَلَىَ كُلِّ شَيْءٍ حَفِيظٌ ﴿57﴾ وَلَمَّا جَاء أَمْرُنَا نَجَّيْنَا هُودًا وَالَّذِينَ آمَنُواْ مَعَهُ بِرَحْمَةٍ مِّنَّا وَنَجَّيْنَاهُم مِّنْ عَذَابٍ غَلِيظٍ ﴿58﴾ وَتِلْكَ عَادٌ جَحَدُواْ بِآيَاتِ رَبِّهِمْ وَعَصَوْاْ رُسُلَهُ وَاتَّبَعُواْ أَمْرَ كُلِّ جَبَّارٍ عَنِيدٍ ﴿59﴾ وَأُتْبِعُواْ فِي هَذِهِ الدُّنْيَا لَعْنَةً وَيَوْمَ الْقِيَامَةِ أَلا إِنَّ عَادًا كَفَرُواْ رَبَّهُمْ أَلاَ بُعْدًا لِّعَادٍ قَوْمِ هُودٍ ﴿60﴾ وَإِلَى ثَمُودَ أَخَاهُمْ صَالِحًا قَالَ يَا قَوْمِ اعْبُدُواْ اللّهَ مَا لَكُم مِّنْ إِلَهٍ غَيْرُهُ هُوَ أَنشَأَكُم مِّنَ الأَرْضِ وَاسْتَعْمَرَكُمْ فِيهَا فَاسْتَغْفِرُوهُ ثُمَّ تُوبُواْ إِلَيْهِ إِنَّ رَبِّي قَرِيبٌ مُّجِيبٌ ﴿61﴾ قَالُواْ يَا صَالِحُ قَدْ كُنتَ فِينَا مَرْجُوًّا قَبْلَ هَذَا أَتَنْهَانَا أَن نَّعْبُدَ مَا يَعْبُدُ آبَاؤُنَا وَإِنَّنَا لَفِي شَكٍّ مِّمَّا تَدْعُونَا إِلَيْهِ مُرِيبٍ ﴿62﴾ قَالَ يَا قَوْمِ أَرَأَيْتُمْ إِن كُنتُ عَلَى بَيِّنَةً مِّن رَّبِّي وَآتَانِي مِنْهُ رَحْمَةً فَمَن يَنصُرُنِي مِنَ اللّهِ إِنْ عَصَيْتُهُ فَمَا تَزِيدُونَنِي غَيْرَ تَخْسِيرٍ ﴿63﴾ وَيَا قَوْمِ هَذِهِ نَاقَةُ اللّهِ لَكُمْ آيَةً فَذَرُوهَا تَأْكُلْ فِي أَرْضِ اللّهِ وَلاَ تَمَسُّوهَا بِسُوءٍ فَيَأْخُذَكُمْ عَذَابٌ قَرِيبٌ ﴿64﴾ فَعَقَرُوهَا فَقَالَ تَمَتَّعُواْ فِي دَارِكُمْ ثَلاَثَةَ أَيَّامٍ ذَلِكَ وَعْدٌ غَيْرُ مَكْذُوبٍ ﴿65﴾ فَلَمَّا جَاء أَمْرُنَا نَجَّيْنَا صَالِحًا وَالَّذِينَ آمَنُواْ مَعَهُ بِرَحْمَةٍ مِّنَّا وَمِنْ خِزْيِ يَوْمِئِذٍ إِنَّ رَبَّكَ هُوَ الْقَوِيُّ الْعَزِيزُ ﴿66﴾ وَأَخَذَ الَّذِينَ ظَلَمُواْ الصَّيْحَةُ فَأَصْبَحُواْ فِي دِيَارِهِمْ جَاثِمِينَ ﴿67﴾ كَأَن لَّمْ يَغْنَوْاْ فِيهَا أَلاَ إِنَّ ثَمُودَ كَفرُواْ رَبَّهُمْ أَلاَ بُعْدًا لِّثَمُودَ ﴿68﴾ وَلَقَدْ جَاءتْ رُسُلُنَا إِبْرَاهِيمَ بِالْبُشْرَى قَالُواْ سَلاَمًا قَالَ سَلاَمٌ فَمَا لَبِثَ أَن جَاء بِعِجْلٍ حَنِيذٍ ﴿69﴾ فَلَمَّا رَأَى أَيْدِيَهُمْ لاَ تَصِلُ إِلَيْهِ نَكِرَهُمْ وَأَوْجَسَ مِنْهُمْ خِيفَةً قَالُواْ لاَ تَخَفْ إِنَّا أُرْسِلْنَا إِلَى قَوْمِ لُوطٍ ﴿70﴾ وَامْرَأَتُهُ قَآئِمَةٌ فَضَحِكَتْ فَبَشَّرْنَاهَا بِإِسْحَقَ وَمِن وَرَاء إِسْحَقَ يَعْقُوبَ ﴿71﴾ قَالَتْ يَا وَيْلَتَى أَأَلِدُ وَأَنَاْ عَجُوزٌ وَهَذَا بَعْلِي شَيْخًا إِنَّ هَذَا لَشَيْءٌ عَجِيبٌ ﴿72﴾ قَالُواْ أَتَعْجَبِينَ مِنْ أَمْرِ اللّهِ رَحْمَتُ اللّهِ وَبَرَكَاتُهُ عَلَيْكُمْ أَهْلَ الْبَيْتِ إِنَّهُ حَمِيدٌ مَّجِيدٌ ﴿73﴾ فَلَمَّا ذَهَبَ عَنْ إِبْرَاهِيمَ الرَّوْعُ وَجَاءتْهُ الْبُشْرَى يُجَادِلُنَا فِي قَوْمِ لُوطٍ ﴿74﴾ إِنَّ إِبْرَاهِيمَ لَحَلِيمٌ أَوَّاهٌ مُّنِيبٌ ﴿75﴾ يَا إِبْرَاهِيمُ أَعْرِضْ عَنْ هَذَا إِنَّهُ قَدْ جَاء أَمْرُ رَبِّكَ وَإِنَّهُمْ آتِيهِمْ عَذَابٌ غَيْرُ مَرْدُودٍ ﴿76﴾ وَلَمَّا جَاءتْ رُسُلُنَا لُوطًا سِيءَ بِهِمْ وَضَاقَ بِهِمْ ذَرْعًا وَقَالَ هَذَا يَوْمٌ عَصِيبٌ ﴿77﴾ وَجَاءهُ قَوْمُهُ يُهْرَعُونَ إِلَيْهِ وَمِن قَبْلُ كَانُواْ يَعْمَلُونَ السَّيِّئَاتِ قَالَ يَا قَوْمِ هَؤُلاء بَنَاتِي هُنَّ أَطْهَرُ لَكُمْ فَاتَّقُواْ اللّهَ وَلاَ تُخْزُونِ فِي ضَيْفِي أَلَيْسَ مِنكُمْ رَجُلٌ رَّشِيدٌ ﴿78﴾ قَالُواْ لَقَدْ عَلِمْتَ مَا لَنَا فِي بَنَاتِكَ مِنْ حَقٍّ وَإِنَّكَ لَتَعْلَمُ مَا نُرِيدُ ﴿79﴾ قَالَ لَوْ أَنَّ لِي بِكُمْ قُوَّةً أَوْ آوِي إِلَى رُكْنٍ شَدِيدٍ ﴿80﴾ قَالُواْ يَا لُوطُ إِنَّا رُسُلُ رَبِّكَ لَن يَصِلُواْ إِلَيْكَ فَأَسْرِ بِأَهْلِكَ بِقِطْعٍ مِّنَ اللَّيْلِ وَلاَ يَلْتَفِتْ مِنكُمْ أَحَدٌ إِلاَّ امْرَأَتَكَ إِنَّهُ مُصِيبُهَا مَا أَصَابَهُمْ إِنَّ مَوْعِدَهُمُ الصُّبْحُ أَلَيْسَ الصُّبْحُ بِقَرِيبٍ ﴿81﴾ فَلَمَّا جَاء أَمْرُنَا جَعَلْنَا عَالِيَهَا سَافِلَهَا وَأَمْطَرْنَا عَلَيْهَا حِجَارَةً مِّن سِجِّيلٍ مَّنضُودٍ ﴿82﴾ مُّسَوَّمَةً عِندَ رَبِّكَ وَمَا هِيَ مِنَ الظَّالِمِينَ بِبَعِيدٍ ﴿83﴾ وَإِلَى مَدْيَنَ أَخَاهُمْ شُعَيْبًا قَالَ يَا قَوْمِ اعْبُدُواْ اللّهَ مَا لَكُم مِّنْ إِلَهٍ غَيْرُهُ وَلاَ تَنقُصُواْ الْمِكْيَالَ وَالْمِيزَانَ إِنِّيَ أَرَاكُم بِخَيْرٍ وَإِنِّيَ أَخَافُ عَلَيْكُمْ عَذَابَ يَوْمٍ مُّحِيطٍ ﴿84﴾ وَيَا قَوْمِ أَوْفُواْ الْمِكْيَالَ وَالْمِيزَانَ بِالْقِسْطِ وَلاَ تَبْخَسُواْ النَّاسَ أَشْيَاءهُمْ وَلاَ تَعْثَوْاْ فِي الأَرْضِ مُفْسِدِينَ ﴿85﴾ بَقِيَّةُ اللّهِ خَيْرٌ لَّكُمْ إِن كُنتُم مُّؤْمِنِينَ وَمَا أَنَاْ عَلَيْكُم بِحَفِيظٍ ﴿86﴾ قَالُواْ يَا شُعَيْبُ أَصَلاَتُكَ تَأْمُرُكَ أَن نَّتْرُكَ مَا يَعْبُدُ آبَاؤُنَا أَوْ أَن نَّفْعَلَ فِي أَمْوَالِنَا مَا نَشَاء إِنَّكَ لَأَنتَ الْحَلِيمُ الرَّشِيدُ ﴿87﴾ قَالَ يَا قَوْمِ أَرَأَيْتُمْ إِن كُنتُ عَلَىَ بَيِّنَةٍ مِّن رَّبِّي وَرَزَقَنِي مِنْهُ رِزْقًا حَسَنًا وَمَا أُرِيدُ أَنْ أُخَالِفَكُمْ إِلَى مَا أَنْهَاكُمْ عَنْهُ إِنْ أُرِيدُ إِلاَّ الإِصْلاَحَ مَا اسْتَطَعْتُ وَمَا تَوْفِيقِي إِلاَّ بِاللّهِ عَلَيْهِ تَوَكَّلْتُ وَإِلَيْهِ أُنِيبُ ﴿88﴾ وَيَا قَوْمِ لاَ يَجْرِمَنَّكُمْ شِقَاقِي أَن يُصِيبَكُم مِّثْلُ مَا أَصَابَ قَوْمَ نُوحٍ أَوْ قَوْمَ هُودٍ أَوْ قَوْمَ صَالِحٍ وَمَا قَوْمُ لُوطٍ مِّنكُم بِبَعِيدٍ ﴿89﴾ وَاسْتَغْفِرُواْ رَبَّكُمْ ثُمَّ تُوبُواْ إِلَيْهِ إِنَّ رَبِّي رَحِيمٌ وَدُودٌ ﴿90﴾ قَالُواْ يَا شُعَيْبُ مَا نَفْقَهُ كَثِيرًا مِّمَّا تَقُولُ وَإِنَّا لَنَرَاكَ فِينَا ضَعِيفًا وَلَوْلاَ رَهْطُكَ لَرَجَمْنَاكَ وَمَا أَنتَ عَلَيْنَا بِعَزِيزٍ ﴿91﴾ قَالَ يَا قَوْمِ أَرَهْطِي أَعَزُّ عَلَيْكُم مِّنَ اللّهِ وَاتَّخَذْتُمُوهُ وَرَاءكُمْ ظِهْرِيًّا إِنَّ رَبِّي بِمَا تَعْمَلُونَ مُحِيطٌ ﴿92﴾ وَيَا قَوْمِ اعْمَلُواْ عَلَى مَكَانَتِكُمْ إِنِّي عَامِلٌ سَوْفَ تَعْلَمُونَ مَن يَأْتِيهِ عَذَابٌ يُخْزِيهِ وَمَنْ هُوَ كَاذِبٌ وَارْتَقِبُواْ إِنِّي مَعَكُمْ رَقِيبٌ ﴿93﴾ وَلَمَّا جَاء أَمْرُنَا نَجَّيْنَا شُعَيْبًا وَالَّذِينَ آمَنُواْ مَعَهُ بِرَحْمَةٍ مَّنَّا وَأَخَذَتِ الَّذِينَ ظَلَمُواْ الصَّيْحَةُ فَأَصْبَحُواْ فِي دِيَارِهِمْ جَاثِمِينَ ﴿94﴾ كَأَن لَّمْ يَغْنَوْاْ فِيهَا أَلاَ بُعْدًا لِّمَدْيَنَ كَمَا بَعِدَتْ ثَمُودُ ﴿95﴾ وَلَقَدْ أَرْسَلْنَا مُوسَى بِآيَاتِنَا وَسُلْطَانٍ مُّبِينٍ ﴿96﴾ إِلَى فِرْعَوْنَ وَمَلَئِهِ فَاتَّبَعُواْ أَمْرَ فِرْعَوْنَ وَمَا أَمْرُ فِرْعَوْنَ بِرَشِيدٍ ﴿97﴾ يَقْدُمُ قَوْمَهُ يَوْمَ الْقِيَامَةِ فَأَوْرَدَهُمُ النَّارَ وَبِئْسَ الْوِرْدُ الْمَوْرُودُ ﴿98﴾ وَأُتْبِعُواْ فِي هَذِهِ لَعْنَةً وَيَوْمَ الْقِيَامَةِ بِئْسَ الرِّفْدُ الْمَرْفُودُ ﴿99﴾ ذَلِكَ مِنْ أَنبَاء الْقُرَى نَقُصُّهُ عَلَيْكَ مِنْهَا قَآئِمٌ وَحَصِيدٌ ﴿100﴾ وَمَا ظَلَمْنَاهُمْ وَلَكِن ظَلَمُواْ أَنفُسَهُمْ فَمَا أَغْنَتْ عَنْهُمْ آلِهَتُهُمُ الَّتِي يَدْعُونَ مِن دُونِ اللّهِ مِن شَيْءٍ لِّمَّا جَاء أَمْرُ رَبِّكَ وَمَا زَادُوهُمْ غَيْرَ تَتْبِيبٍ ﴿101﴾ وَكَذَلِكَ أَخْذُ رَبِّكَ إِذَا أَخَذَ الْقُرَى وَهِيَ ظَالِمَةٌ إِنَّ أَخْذَهُ أَلِيمٌ شَدِيدٌ ﴿102﴾ إِنَّ فِي ذَلِكَ لآيَةً لِّمَنْ خَافَ عَذَابَ الآخِرَةِ ذَلِكَ يَوْمٌ مَّجْمُوعٌ لَّهُ النَّاسُ وَذَلِكَ يَوْمٌ مَّشْهُودٌ ﴿103﴾ وَمَا نُؤَخِّرُهُ إِلاَّ لِأَجَلٍ مَّعْدُودٍ ﴿104﴾ يَوْمَ يَأْتِ لاَ تَكَلَّمُ نَفْسٌ إِلاَّ بِإِذْنِهِ فَمِنْهُمْ شَقِيٌّ وَسَعِيدٌ ﴿105﴾ فَأَمَّا الَّذِينَ شَقُواْ فَفِي النَّارِ لَهُمْ فِيهَا زَفِيرٌ وَشَهِيقٌ ﴿106﴾ خَالِدِينَ فِيهَا مَا دَامَتِ السَّمَاوَاتُ وَالأَرْضُ إِلاَّ مَا شَاء رَبُّكَ إِنَّ رَبَّكَ فَعَّالٌ لِّمَا يُرِيدُ ﴿107﴾ وَأَمَّا الَّذِينَ سُعِدُواْ فَفِي الْجَنَّةِ خَالِدِينَ فِيهَا مَا دَامَتِ السَّمَاوَاتُ وَالأَرْضُ إِلاَّ مَا شَاء رَبُّكَ عَطَاء غَيْرَ مَجْذُوذٍ ﴿108﴾ فَلاَ تَكُ فِي مِرْيَةٍ مِّمَّا يَعْبُدُ هَؤُلاء مَا يَعْبُدُونَ إِلاَّ كَمَا يَعْبُدُ آبَاؤُهُم مِّن قَبْلُ وَإِنَّا لَمُوَفُّوهُمْ نَصِيبَهُمْ غَيْرَ مَنقُوصٍ ﴿109﴾ وَلَقَدْ آتَيْنَا مُوسَى الْكِتَابَ فَاخْتُلِفَ فِيهِ وَلَوْلاَ كَلِمَةٌ سَبَقَتْ مِن رَّبِّكَ لَقُضِيَ بَيْنَهُمْ وَإِنَّهُمْ لَفِي شَكٍّ مِّنْهُ مُرِيبٍ ﴿110﴾ وَإِنَّ كُلاًّ لَّمَّا لَيُوَفِّيَنَّهُمْ رَبُّكَ أَعْمَالَهُمْ إِنَّهُ بِمَا يَعْمَلُونَ خَبِيرٌ ﴿111﴾ فَاسْتَقِمْ كَمَا أُمِرْتَ وَمَن تَابَ مَعَكَ وَلاَ تَطْغَوْاْ إِنَّهُ بِمَا تَعْمَلُونَ بَصِيرٌ ﴿112﴾ وَلاَ تَرْكَنُواْ إِلَى الَّذِينَ ظَلَمُواْ فَتَمَسَّكُمُ النَّارُ وَمَا لَكُم مِّن دُونِ اللّهِ مِنْ أَوْلِيَاء ثُمَّ لاَ تُنصَرُونَ ﴿113﴾ وَأَقِمِ الصَّلاَةَ طَرَفَيِ النَّهَارِ وَزُلَفًا مِّنَ اللَّيْلِ إِنَّ الْحَسَنَاتِ يُذْهِبْنَ السَّيِّئَاتِ ذَلِكَ ذِكْرَى لِلذَّاكِرِينَ ﴿114﴾ وَاصْبِرْ فَإِنَّ اللّهَ لاَ يُضِيعُ أَجْرَ الْمُحْسِنِينَ ﴿115﴾ فَلَوْلاَ كَانَ مِنَ الْقُرُونِ مِن قَبْلِكُمْ أُوْلُواْ بَقِيَّةٍ يَنْهَوْنَ عَنِ الْفَسَادِ فِي الأَرْضِ إِلاَّ قَلِيلاً مِّمَّنْ أَنجَيْنَا مِنْهُمْ وَاتَّبَعَ الَّذِينَ ظَلَمُواْ مَا أُتْرِفُواْ فِيهِ وَكَانُواْ مُجْرِمِينَ ﴿116﴾ وَمَا كَانَ رَبُّكَ لِيُهْلِكَ الْقُرَى بِظُلْمٍ وَأَهْلُهَا مُصْلِحُونَ ﴿117﴾ وَلَوْ شَاء رَبُّكَ لَجَعَلَ النَّاسَ أُمَّةً وَاحِدَةً وَلاَ يَزَالُونَ مُخْتَلِفِينَ ﴿118﴾ إِلاَّ مَن رَّحِمَ رَبُّكَ وَلِذَلِكَ خَلَقَهُمْ وَتَمَّتْ كَلِمَةُ رَبِّكَ لأَمْلأنَّ جَهَنَّمَ مِنَ الْجِنَّةِ وَالنَّاسِ أَجْمَعِينَ ﴿119﴾ وَكُلاًّ نَّقُصُّ عَلَيْكَ مِنْ أَنبَاء الرُّسُلِ مَا نُثَبِّتُ بِهِ فُؤَادَكَ وَجَاءكَ فِي هَذِهِ الْحَقُّ وَمَوْعِظَةٌ وَذِكْرَى لِلْمُؤْمِنِينَ ﴿120﴾ وَقُل لِّلَّذِينَ لاَ يُؤْمِنُونَ اعْمَلُواْ عَلَى مَكَانَتِكُمْ إِنَّا عَامِلُونَ ﴿121﴾ وَانتَظِرُوا إِنَّا مُنتَظِرُونَ ﴿122﴾ وَلِلّهِ غَيْبُ السَّمَاوَاتِ وَالأَرْضِ وَإِلَيْهِ يُرْجَعُ الأَمْرُ كُلُّهُ فَاعْبُدْهُ وَتَوَكَّلْ عَلَيْهِ وَمَا رَبُّكَ بِغَافِلٍ عَمَّا تَعْمَلُونَ ﴿123﴾۔

قرآن کریم


ترجمہ
اللہ کے نام سے جو بہت رحم والا نہایت مہربان ہے

الف۔ لام۔ را۔ وہ کتاب ہے جس کی آیتیں مضبوط اتاری گئی ہیں، پھر یہ کہ انہیں واضح بنایا گیا ہے اس ٹھیک ٹھیک کام کرنے والے کی طرف سے جو بڑا باخبر ہے۔ (1) یہ کہ عبادت نہ کرو مگر اللہ کی۔ میں تمہیں اس کی طرف سے متنبہ کرنے والا اور خوش خبری دینے والا ہوں (2) اور یہ کہ بخشش کے طلبگار ہو اپنے پروردگار سے، پھر اس کی بارگاہ میں لو لگاؤ، وہ تمہیں بہرہ مند کرے گا اچھے فائدوں سے ایک مقررہ مدت تک اور ہر مرتبہ والے کو اس کے درجہ کے مطابق عطا کرے گا اور اگر تم نے رو گردانی کی تو مجھے اندیشہ ہے تمہارے لیے ایک بہت بڑے دن کے عذاب کا (3) اللہ کی طرف تم سب کو پلٹ کر جانا ہے اور وہ ہر چیز پر قادر ہے (4) آگاہ ہو کہ وہ اپنے سینوں کو دہرا کیے دیتے ہیں کہ اس سے چھپنے کی کوشش کریں۔ آگاہ ہو کہ جب وہ اوڑھتے لپیٹتے ہیں اپنے کپڑوں کو تو وہ جانتا ہے اسے جو وہ چھپاتے ہیں اور جو وہ ظاہر کرتے ہیں۔ یقینا وہ سینہ کے اندر والی باتوں کا جاننے والا ہے (5) اور کوئی چلنے پھرنے والا زمین میں نہیں ہے مگر یہ کہ اللہ پر اس کی روزی ہے اور وہ جانتا ہے اس کے قیام کی جگہ اور اس کے ٹھہرائے جانے کے مقام کو۔ ہر بات ایک صاف کھلے ہوئے نوشتہ میں ہے (6) اور وہی وہ ہے جس نے آسمانوں اور زمین کو پیدا کیا چھ دنوں میں اور اس کا عرش پانی پر تھا تاکہ تمہیں آزمائے کہ تم میں سے کون اعمال میں بہتر ہے اور اگر آپ کہیے کہ تم لوگ موت کے بعد دوبارہ اٹھائے جاؤ گے تو ضرور وہ جو کافر ہیں، کہیں گے کہ یہ تو نہیں ہے مگر کھلا ہوا جادو (7) اور اگر ہم ان پر عذاب میں دیر کریں ایک مقررہ مدت تک تو وہ ضرور یہ کہیں گے کہ کون چیز اسے روکے ہوئے ہے ؟ آگاہ ہونا چاہیے کہ جس دن وہ ان پر آئے گا تو اسے ان سے ہٹایا نہیں جا سکے گا اور گھیرلے گا انہیں وہی (عذاب) جس کا وہ مذاق اڑاتے تھے (8) اور اگر ہم انسان کو اپنی طرف سے کچھ رحمت کا مزہ چکھائیں، پھر اس سے اسے سلب کر لیں تو وہ بلاشبہ بڑا مایوس اور ناشکرا ثابت ہوتا ہے (9) اور اگر اسے کسی نعمت کا مزہ چکھائیں بعد کسی سختی کے جو اسے لاحق تھی تو وہ کہے گا کہ بس مصیبتیں مجھ سے دور ہوئیں بلاشبہ وہ خوش ہونے والا ہو گا، بڑا ہی فخر کرنے والا (10) سوا ان کے جو صبر و تحمل سے کام لیتے ہیں اور نیک اعمال کرتے ہیں، ان کے لیے بخشش ہے اور بہت بڑا ثواب ہے ( 11) تو جیسے آپ چھوڑ دیں گے کچھ ان باتوں کو جن کی آپ کی طرف وحی ہوتی ہے اور اس سے آپ کا دم الجھتا ہے کہ وہ کہتے ہیں کہ ان پر ایک خزانہ کیوں نہیں اتارا گیا یا ان کے ساتھ کوئی فرشتہ کیوں نہیں آیا؟ ارے آپ تو بس متنبہ کرنے والے ہیں اور اللہ ہر چیز کا ذمہ دار ہے (12) کیا وہ کہتے ہیں کہ انہوں نے اس کو گھڑ لیا ہے؟ کہئے کہ پھر لے آؤ اس کے مثل دس ہی سورہ گھڑے ہوئے اور بلالو جنہیں بلاسکو اللہ کے سوا اگر تم سچے ہو ( 13) تو وہ اگر تمہاری دعوت پر لبیک نہ کہیں تو جان لو کہ وہ بس اللہ کے علم سے اتارا گیا ہے، اور یہ کہ سوا اس کے کوئی معبود نہیں ہے، تو اب کیا تم اسلام لاؤ گے ؟ (14) جو دینوی زندگی اور اس کی زیب و زینت کا طلب گار ہو تو ہم اس میں ان کے کاموں کا پورا پورا نتیجہ ظاہر کر دیں گے اور ان کے لیے اس میں کوئی کمی نہ ہو گی (15) یہ وہ ہوں گے جن کے لیے آخرت میں سوا آتش دوزخ کے کچھ اور نہیں ہے اور جو کچھ انہوں نے اس میں کیا ہو گا وہ اکارت ہو گا ور جو کچھ ان کے کام تھے، وہ بے حقیقت ثابت ہوں گے (16) تو کیا جو اپنے پروردگار کی طرف سے کھلی ہوئی حقانیت کی دلیل کے ساتھ آیا ہے اور جس کے پیچھے آیا ہے اس کا گواہ جو اسی کا جز ہے اور اس سے پہلے موسیٰ کی کتاب ایک پیشوا اور رحمت کی حیثیت سے یہ اس پر ایمان لائیں گے؟ اور جو ان گروہوں میں سے اس کے ساتھ کفر اختیار کرے گا تو اس سے قول و قرار بس آتش دوزخ کا ہے تو تمہیں اس میں کوئی شک نہ ہو، وہ یقینا حق ہے تمہارے پروردگار کی طرف سے مگر اکثر لوگ ایمان نہیں رکھتے (17) اور کون زیادہ ظالم ہو گا اس سے کہ جو اللہ پر جھوٹ تہمت لگائے؟ یہ لوگ پیش ہوں گے اپنے پروردگار کے سامنے اور گواہی دینے والے کہیں گے کہ یہ وہ ہیں جنہوں نے اپنے پروردگار پر غلط تہمت لگائی، آگاہ ہو کہ اللہ کی لعنت ہے۔ ان ظالموں پر (18) جو اللہ کی راہ سے روکیں اور اسے ٹیٹرھا کرنے کی کوشش کریں اور وہ آخرت کے منکر تھے (19) یہ لوگ دنیا میں اللہ کے قبضہ سے نکل نہ سکتے تھے اور نہ ان کے اللہ کو چھوڑ کر کوئی مدد گار تھے۔ ان کو دو نا دون عذاب ہو گا، نہ وہ سن ہی سکتے تھے اور نہ آنکھوں سے دیکھتے ہی تھے (20) یہ وہ ہیں جنہوں نے اپنے کو خسارے میں مبتلا کیا اور غائب ہو گئے ان سے وہ جنہیں وہ غلط طور پر گھڑتے تھے (21) بلاشبہ آخرت میں وہی گھاٹا اٹھانے والے ہیں (22) یقینا جنہوں نے ایمان اختیار کیا اور نیک اعمال کیے اور لگاتار اپنے پروردگار سے لو لگائے رہے یہ اہل بہشت ہیں جو اس میں ہمیشہ ہمیشہ رہیں گے ( 23) ان دونوں فریقوں کی مثال مثل اندھے، بہرے اور آنکھ کان والے کی ہے کیا ان دونوں کی بات یکساں ہے؟ کیوں نصیحت قبول نہیں کرتے ہو ؟ (24) اور ہم نے نوح کو ان کی قوم کی طرف بھیجا کہ میں تمہارے لیے کھلا ہوا عذاب سے ڈرانے والا ہوں (25) کہ عبادت نہ کرو کسی کی سوا اللہ کے، یقینا مجھے ڈر ہے تمہارے لیے ایک درد ناک دن کے عذاب سے (26) تو کہا ان کی قوم کے بڑے آدمیوں نے کہ جو کافر تھے، ہم نہیں دیکھتے ہیں تمہیں مگر اپنے ایسا ایک آدمی اور نہیں دیکھتے ہم کہ تمہاری پیروی کی ہے مگر ایسوں نے جو ہم میں پست طبقہ کے لوگ ہیں روا روی میں اور نہیں دیکھتے ہم تم لوگوں کے لیے اپنے مقابلہ میں کوئی فضیلت بلکہ ہم تم لوگوں کو جھوٹا خیال کرتے ہیں (27) کہا اے میری قوم والو! کیا تم نے غور کیا ہے کہ اگر میں اپنے پروردگار کی طرف سے حقانیت کی دلیل رکھتا ہوں اور اس نے مجھے اپنے پاس سے رحمت دی ہے مگر وہ تمہاری سمجھ میں نہ آتی ہو تو کیا ہم تمہیں زبردستی اس کا پابند بنا سکتے ہیں جبکہ تم اسے نا پسند کرتے ہو ؟ (28) اے میری قوم والو ! میں تم سے اس پر کوئی مالی معاوضہ نہیں مانگتا، میرا معاوضہ نہیں ہے مگر اللہ پر اور میں نکالنے والا نہیں ہوں انہیں جو ایمان لائے، وہ اپنے پروردگار سے ملنے والے ہیں مگر میں دیکھتا ہوں تمہیں کہ تم جہالت سے کام لیتے ہو (29) اور اے میری قوم والو ! کون اللہ کے عذاب کے مقابلہ میں میری مدد کرے گا اگر میں انہیں نکال دوں؟ کیوں تم نصیحت قبول نہیں کرتے ( 30) اور میں تم سے یہ نہیں کہتا کہ میرے پاس اللہ کے خزانے ہیں اور نہ میں غیب کی باتیں جانتا ہوں اور نہ میں یہ کہتا ہوں کہ میں کوئی فرشتہ ہوں، ہاں میں ان لوگوں کے لیے جنہیں تمہاری نگاہیں حقیر محسوس کر رہی ہیں، یہ بھی نہیں کہا کہ انہیں اللہ ہرگز کوئی بھلائی عطا نہیں کرے گا اللہ خوب جانتا ہے اسے جو ان کے دلوں میں ہے، اس وقت بلاشبہ میں ظالموں میں سے ہوں گا (31) ان لوگوں نے کہا کہ اے نوح تم نے تو ہم سے تکرار کی ہے اور بہت زیادہ تکرار کی ہے تو بس اب لے آؤ اسے جس کی تم ہمیں دھمکی دیتے ہو اگر تم سچے ہو (32) کہا کہ اسے اللہ ہی لائے گا اگر چاہے گا اور تم اسے (بھاگ کر) بے بس نہیں کر سکتے (33) اور تمہیں میری نصیحت فائدہ نہیں پہنچا سکتی، کتنا ہی میں تمہیں کرنا چاہوں، اگر اللہ تمہیں گمراہی میں چھوڑ دینا چاہتا ہو، وہ تمہارا پروردگار ہے اور اسی کی طرف تم کو پلٹ کر جانا ہے ( 34) کیا وہ کہتے ہیں کہ انہوں نے اس کو گھڑ لیا ہے؟ کہئے کہ اگر میں نے اسے گھڑا ہے تو میرے جرم کی ذمہ داری مجھ ہی پر ہے اور میں بری ہوں اس جرم سے جو تم کرتے ہو (35) اور نوح کی طرف وحی بھیجی گئی کہ اب ان لوگوں کے سوا جو ایمان لے آئے ہیں تمہاری قوم میں سے کوئی کبھی ایمان نہیں لائے گا تو رنجیدہ نہ ہو تم اس سے جو وہ کرتے ہیں (36) اور بناؤ کشتی ہماری نگاہوں کے سامنے اور ہماری وحی سے اور مجھ سے بات نہ کرنا ان کے بارے میں جو ظالم ہیں، وہ سب یقینا غرق کر دیئے جائیں گے (37) اور وہ کشتی بنا رہے تھے اور جب بھی ان کی طرف سے ان کی قوم کے کچھ بڑے لوگ گزرتے تھے تو ان سے وہ تمسخر کرتے تھے۔ انہوں نے کہا کہ اگر تم ہم سے تمسخر کرتے ہو تو ہم بھی (ایک دن) تم سے تمسخر کریں گے جس طرح تم تمسخر کر رہے ہو (38) اب بہت جلد تمہیں معلوم ہو جائے گا کہ کس پر آتا ہے وہ عذاب جو اسے رسوا کر دے اور اترتا ہے اس پر قائم رہنے والا عذاب (39) یہاں تک کہ جب ہمارا حکم آیا اور تنور ابلا، ہم نے کہا کہ سوار کر لو اس (کشتی) میں ہر چیز کے دو جوڑے اور اپنے گھر والوں کو سوا ان کے جن پر بات پہلے ہو چکی ہے اور جو ایمان لائے ہوں اور نہیں ایمان لائے تھے ان پر مگر بہت کم (40) اور کہا سوار ہو اس میں، اللہ کے نام کے سہارے پر ہے اس کا چلنا اور اس کا رکنا۔ یقینا میرا پروردگار بخشنے والا ہے، بڑا مہربان ( 41) اور وہ چل رہی تھی ان کو لیے ہوئے ایسی لہروں میں جو پہاڑوں جیسی تھیں اور آواز دی نوح نے اپنے بیٹے کو اور وہ الگ ایک طرف تھا کہ اے میرے بیٹے ! سوار ہو لے ہمارے ساتھ اور کافروں کے ساتھ نہ ہو (42) اس نے کہا۔ میں بہت جلد پناہ لے لوں گا ایک ایسے پہاڑ کی طرف جو مجھے پانی سے بچالے گا۔ انہوں نے کہا آج اللہ کے حکم سے بچانے والا کوئی نہیں ہے سوا اس کے جس پر وہ رحم کرے اور ان دونوں کے درمیان موج حائل ہو گئی تو وہ ڈبوئے جانے والوں میں سے تھا (43) اور کہا گیا کہ اے زمین نگل لے اپنے پانی کو اور اے آسمان تھم جا اور پانی تہہ نشین ہو گیا، اور جو ہونا تھا وہ ہو چکا اور وہ جودی (پہاڑ) پر ٹھہری اور کہا گیا کہ لعنت ہو ظالم لوگوں پر (44) اور پکارا نوح نے اپنے پروردگار کو تو کہا اے میرے پروردگار! میرا بیٹا میرے اہل سے ہے اور یقینا تیرا وعدہ سچا ہے اور تو بہترین فیصلہ کرنے والا ہے (45) کہا اے نوح! وہ تمہارے اہل میں سے نہیں ہے۔ وہ تو برے اعمال کا مجسمہ ہے، تو مجھ سے سوال نہ کرو ایسا جس کے متعلق تمہیں علم نہیں ہے، میں تمہیں نصیحت کرتا ہوں کہ تم جاہلوں میں سے نہ ہو (46) کہا اے میرے پروردگار ! میں پناہ مانگتا ہوں خود تجھ سے اس بات سے کہ تجھ سے سوال کروں ایسا جس کے متعلق مجھے علم نہ ہو اور اگر تو مجھے نہ بخشے اور نہ رحم کرے تو میں خسارہ اٹھانے والوں میں سے ہوں گا (47) کہا گیا کہ اے نوح !ا ترو ہماری طرف کی سلامتی اور برکتوں کے ساتھ جو تم پر اور تمہارے ساتھ والوں سے پیدا ہونے والی نسلوں پر ہیں اور کچھ جماعتیں ایسی ہوں گی جنہیں ہم فائدہ اٹھانے کا موقع دیں گے، پھر ان پر ہماری طرف سے درد ناک عذاب آ جائے گا (48) یہ غیب کی خبروں میں سے ہے جنہیں ہم آپ پر وحی کے ذریعہ سے بھیجتے ہیں آپ اس سے پہلے ان سے واقف نہ تھے اور نہ آپ کی قوم والے، تو برداشت سے کام لیجئے، بلاشبہ انجام پرہیز گاروں کے حق میں ہے (49) اور قبیلہ عاد کی طرف ان کے بھائی ہود کو، انہوں نے کہا اے میری قوم والو! اللہ کی عبادت کرو تمہارا سوا اس کے کوئی خدا نہیں ہے نہیں ہو تم مگر دل سے باتیں بنانے والے (50) اے میری قوم والو! میں تم سے اس پر کوئی معاوضہ نہیں مانگتا، میرا معاوضہ نہیں ہے مگر اس پر کہ جس نے مجھے پیدا کیا ہے تو کیوں تم عقل سے کام نہیں لیتے (51) اور میری قوم والو! اپنے پروردگار سے بخشش کے طلبگار ہو، پھر اس سے لو لگاؤ کہ وہ تمہاری طرف گھٹا بھیجے خوب برستی ہوئی اور تمہاری قوت میں مزید قوت عطا کرے اور تم مجرمانہ طور پر رو گردانی اختیار نہ کرو (52) ان لوگوں نے کہا اے ہود! تم ہمارے پاس کھلی ہوئی دلیل نہیں لائے اور ہم تمہارے کہنے سے اپنے خداؤں کو چھوڑنے والے نہیں ہیں اور نہ ہم تم پر ایمان لانے والے ہیں (53) ہم سوا اس کے کچھ کہہ نہیں سکتے کہ ہمارے خداؤں میں کسی نے تمہیں کچھ نقصان پہنچا دیا ہے، انہوں نے کہا کہ میں اللہ کو گواہ کرتا ہوں اور تم بھی گواہ رہو کہ میں بے تعلق ہوں ان سے جنہیں تم شریک مانتے ہو (54) اسے چھوڑ کر تو تم سب مل کر میرے خلاف تدبیریں کرو (55) پھر مجھے مہلت نہ دو، بلاشبہ میرا بھروسا ہے اللہ پر جو میرا بھی پروردگار ہے اور تمہارا بھی پروردگار ہے۔ کوئی چلنے پھرنے والا نہیں مگر یہ کہ وہ پکڑے ہوئے ہیں اس کی پیشانی کے اوپر کے بالوں کو، یقینا میرا پروردگار سیدھے راستے پر ہے (56) اب اگر تم رو گردانی کرو تو میں تمہیں تبلیغ کر چکا اس کی جس کے ساتھ مجھے تمہاری جانب بھیجا گیا تھا اور میرا پروردگار تمہاری جگہ تمہارے علاوہ کسی دوسری قوم کو لے آئے گا اور تم اس کا کچھ بگاڑ نہیں سکو گے یقینا میرا پروردگار ہر چیز پر نگہبان ہے (57) اور جب ہمارا حکم آ گیا تو ہم نے ہود کو اور انہیں کہ جنہوں نے ان کا ساتھ دیتے ہوئے ایمان اختیار کیا تھا اپنی طرف کی رحمت کے ساتھ چھٹکارا دے دیا اور انہیں بڑے سخت عذاب سے بچا دیا (58) اور یہ ہے وہ قبیلہ عاد جس نے جان بوجھ کر اپنے پروردگار کی آیتوں کا انکار کیا اور اس کے پیغمبروں کی نافرمانی کی اور ہر ہٹ دھرم سرکش کے احکام کی پیروی کی (59) اور ان کے پیچھے لگا دی گئی اس دنیا میں بھی لعنت اور قیامت کے دن بھی۔ معلوم ہونا چاہیے کہ قبیلہ عاد نے اپنے پروردگار کی نافرمانی کی۔ آگاہ ہو کہ لعنت ہے عاد پر جو ہود کی قوم والے تھے (60) اور قبیلہ ثمود کی طرف ان کے بھائی صالح کو، انہوں نے کہا اے میری قوم والو! عبادت کرو اللہ کی، اس کے سوا کوئی تمہارا خدا نہیں ہے، اس نے تم کو شروع شروع زمین سے پیدا کیا اور تمہیں اس میں آباد کیا تو اس سے مغفرت طلب کرو، پھر اس سے لو لگاؤ، یقینا میرا پروردگار نزدیک ہے، دعاؤں کا قبول کرنے والا (61) ان لوگوں نے کہا کہ اے صالح! ہمارے اندر تم سے اس کے پہلے بڑی امیدیں وابستہ تھیں، کیا تم ہمیں روکتے ہو اس سے کہ ہم عبادت نہ کریں اس کی جس کی عبادت ہمارے باپ دادا کرتے رہے اور ہم اس سے جس کی طرف تم ہمیں دعوت دیتے ہو بڑے شک و شبہ میں ہیں جو پریشان کن ہے (62) انہوں نے کہا اے میری قوم والو! کیا تم نے غور کیا ہے کہ اگر میں اپنے پروردگار کی طرف سے حقانیت کی نمایاں دلیل کے ساتھ بھیجا گیا ہوں اور اس نے مجھے اپنی طرف سے خاص رحمت عطا کی ہے تو کون میری مدد کرے گا اللہ کے مقابلہ میں اگر میں اس کی نافرمانی کروں؟ اس صورت میں تم تو ہمارے لیے سوا خسارہ پہنچانے کے کچھ اور نہیں کر سکتے (63) اے میری قوم والو! یہ اللہ کی طرف کی اونٹنی ہے تمہارے لیے ایک معجزہ کے طور پر تو اسے زمین خدا سے غذا حاصل کرنے دو اور کوئی برائی اسے چھلانا بھی نہیں کہ تمہیں بہت جلد عذاب گرفت میں لے لے گا (64) تو ان لوگوں نے اسے پے کر دیا تو انہوں نے کہا کہ اپنے گھروں میں بس اب تین دن تک مزے اڑالو، یہ وعدہ ہے جو جھوٹا نہیں ہے (65) چنانچہ جب ہمارا حکم آ گیا تو ہم نے صالح کو اور انہیں جنہوں نے ان کا ساتھ دے کر ایمان اختیار کیا تھا اپنی طرف کی رحمت کے ساتھ نجات دیدی اور اس دن کی رسوائی سے بچا دیا، یقینا تمہارا پروردگار طاقتور ہے بڑا زبردست (66) اور جو ظالم تھے، ان کو کڑک نے اپنی گرفت میں لے لیا تو وہ اپنے مکانوں میں منہ کے بل گر گئے (67) جیسے کبھی وہ یہاں بسے ہی ہوئے نہ تھے آگاہ ہو کہ ثمود نے اپنے پروردگار کے ساتھ کفر کیا۔ آگاہ ہو کہ لعنت ہے ثمود پر (68) اور جب ابراہیم کے پاس ہمارے بھیجے ہوئے خوش خبری لے کر آئے کہا سلام۔ پھر ذرا دیر نہ گزری کہ وہ لے آئے بھنا ہوا بچھڑا (69) تو جب دیکھا ان کے ہاتھوں کو کہ نہیں پہنچتے اس تک تو انہیں ان پر شک ہوا، اور دل ہی دل میں ان سے ذرا ڈر محسوس کیا انہوں نے کہا ڈریے نہیں، ہم تو لوط کی قوم کی طرف بھیجے گئے ہیں (70) اور ان کی بیوی کھڑی ہوئی تھیں تو وہ ہنسنے لگیں، اس پر ہم نے ان کو اسحاق کی خوش خبری دی اور اسحاق کے پیچھے یعقوب کی (71) وہ کہنے لگیں: ارے غضب ! کیا میرے یہاں اولاد ہوگی اس حال میں کہ میں بڑھیا ہوں اور یہ میرے شوہر ہیں اسی عالم میں کہ بوڑھے ہیں؟ بلاشبہ یہ ایک عجیب چیز ہے (72) انہوں نے کہا آپ تعجب کرتی ہیں اللہ کی بات سے۔ اللہ کی رحمت اور اس کی برکتیں ہیں آپ لوگوں پر اے اس گھر والو! یقینا وہ قابل تعریف ہے، بزرگی والا (73) تو جب ابراہیم سے خوف و دہشت کی کیفیت دور ہوئی اور خوش خبری انہیں مل گئی تو وہ ہم سے لوط کی قوم کے بارے میں لڑنے لگے (74) یقینا ابراہیم بڑی قوت برداشت رکھنے والے، ہمدردی رکھنے والے، خدا سے لو لگانے والے تھے (75) اے ابراہیم در گزرو اس سے بلاشبہ آچکا ہے حکم تمہارے پروردگار کا اور یقینا آکے رہے گا ان پر وہ عذاب جو پلٹایا نہیں جا سکتا (76) اور جب وہ ہمارے بھیجے ہوئے لوط کے پاس آئے تو وہ رنجیدہ ہو گئے ان کی وجہ سے اور وہ ان کے سبب سے شش و پنج میں پڑ گئے اور کہا یہ بڑا شرانگیز دن ہے (77) اور ان کی قوم والے دوڑتے ہوئے ان کی طرف آ گئے اور اس کے پہلے برابر وہ سیاہ کاریوں کے مرتکب رہا ہی کرتے تھے۔ انہوں نے کہا : اے میری قوم کے لوگو ! یہ میری لڑکیاں موجود ہیں۔ یہ تمہارے لیے زیادہ مناسب ہیں تو اللہ سے ڈرو اور مجھے میرے مہمان کے معاملہ میں رسوا نہ کرو۔ کیا تم میں ایک بھی شائستہ شخص موجود نہیں ہے ؟ (78) ان لوگوں نے کہا تم جانتے ہو کہ ہمیں تمہاری بیٹیوں سے کوئی مطلب نہیں ہے بلکہ تم بلاشبہ جانتے ہو کہ ہمارا مقصد کیا ہوا کرتا ہے (79) انہوں نے کہا کاش مجھے تمہارے مقابلہ کی طاقت ہوتی یا میں سہارا لے سکتا کسی مضبوط ستون کا (80) انہوں نے کہا اے لوط! ہم آپ کے پروردگار کے بھیجے ہوئے ہیں، یہ لوگ ہرگز آپ تک نہیں پہنچ سکیں گے، اب آپ اپنے اہل کو لے کر رات کے کسی حصہ میں چلے جایئے گا اور کوئی آپ لوگوں میں سے مڑ کر نہ دیکھے سوا آپ کی بیوی یقینا اس تک پہنچنے والی ہے وہی مصیبت جو ان لوگوں پر آئے گی۔ بلاشبہ ان کا مقرر شدہ وقت صبح کا ہے، کیا صبح نزدیک نہیں ہے ؟ (81) چنانچہ جب ہمارا حکم آیا تو ہم نے اس سر زمین کو تہ و بالا کر دیا اور ان پر مسلسل کنکر پتھر برسائے (82) جو تمہارے پروردگار کے یہاں نشان زدہ تھے اور وہ ان ظالموں سے کچھ دور نہیں ہیں (83) اور سر زمین مدین کی طرف ان کے بھائی شعیب کو انہوں نے کہا اے میری قوم والو! اللہ کی عبادت کرو، اس کے سوا تمہارا کوئی خدا نہیں اور ناپ تول میں کمی نہ کیا کرو۔ میں تمہیں اچھی حالت میں دیکھتا ہوں اور مجھے اندیشہ ہے تمہارے لیے گھیر نے والے دن کے عذاب کا (84) اور اے میری قوم والو! پورا کیا کرو ناپ تول کو عدالت کے ساتھ اور لوگوں کو ان کی چیزیں کم نہ دو اور زمین میں فساد پھیلاتے نہ پھرو (85) اللہ کی نعمت جو باقی رہ جائے بہتر ہے تمہارے لیے اگر تم با ایمان ہو اور میں کوئی تمہارا نگہبان نہیں ہوں (86) ان لوگوں نے کہا اے شعیب ! کیا تمہاری نماز تم پر یہ حکم نافذ کرتی ہے کہ ہم چھوڑ دیں اسے جس کی ہمارے باپ دادا عبادت کرتے آئے ہیں یا اسے کہ ہم اپنے اموال میں اپنی خواہش کے مطابق تصرف کریں۔ تم تو یقینا بڑے ضبط و تحمل والے ٹھیک آدمی ہو (87) انہوں نے کہا اے میری قوم والو! کیا تم نے غور کیا؟ اگر میں نمایاں دلیل پر ہوں اپنے پروردگار کی طرف سے اور اس نے مجھ کو دی ہے اپنی طرف سے اچھی روزی؟ اور میرا یہ مقصود نہیں ہے کہ میں تمہاری مخالفت کروں خود ان چیزوں کی طرف متوجہ ہوتے ہوئے جن سے تم کو منع کرتا ہوں۔ میں نہیں چاہتا مگر اصلاح جہاں تک کر سکوں۔ نہیں مجھے توفیق مگر اللہ کی طرف سے اسی پر میرا بھروسہ ہے اور اسی سے میں لو لگاتا ہوں (88) اور اے میری قوم والو! میری مخالفت تم سے ایسے کام کہیں نہ کروا دے کہ تمہیں پہنچ جائے ایسی آفت جیسی پہنچی نوح کی قوم کو یا ہود کی قوم کو یا صالح کی قوم کو اور لوط کی قوم تو تم سے دور نہیں ہے (89) اور اپنے پروردگار سے مغفرت کے طالب ہو، پھر اس سے لو لگاؤ، یقینا میرا پروردگار مہربان ہے، بڑی محبت والا (90) ان لوگوں نے کہا اے شعیب ! جو کچھ تم کہتے ہو، اس کا زیادہ حصہ ہماری سمجھ میں نہیں آتا اور ہم تم کو اپنے میں کمزور دیکھتے ہیں اور اگر تمہارا قبیلہ نہ ہوتا تو ہم تم کو سنگسار کر دیتے اور تم ہمارے سامنے کوئی اہمیت نہیں رکھتے (91) انہوں نے کہا اے میری قوم والو! کیا میرا قبیلہ تمہاری نظر میں اللہ سے زیادہ زبردست ہے؟ اور تم نے تو اسے اپنے پس پشت ڈال دیا ہے۔ یقینا میرا پروردگار اس پر جو تم کرتے ہو، حاوی ہے (92) اور اے میری قوم والو! تم اپنی جگہ جو کچھ کرتے ہو، کیے جاؤ اور جو میں کرتا ہوں، میں کیے جاؤں گا بہت جلد تم کو معلوم ہو جائے گا کہ کس پر آتا ہے وہ عذاب جو اسے رسوا کر دے اور کون جھوٹا ہے؟ اور انتظار کرو، میں بھی تمہارے ساتھ انتظار کرتا ہوں (93) اور جب ہمارا حکم آگیا تو ہم نے بچا دیا شعیب کو اور انہیں کہ جنہوں نے ان کا ساتھ دے کر ایمان اختیار کیا تھا اپنی رحمت سے اور گرفت میں لے لیا ان کو جو ظالم تھے کڑک نے، تو وہ اپنے گھروں میں گر گئے منہ کے بل (94) گویا کہ وہ وہاں بسے ہی ہوئے نہ تھے، آگاہ ہو کہ لعنت ہے مدین کے لیے جیسے لعنت میں مبتلا ہوئے ثمود (95) اور ہم نے بھیجا موسیٰ کو اپنی طرف کے معجزہ اور کھلے ہوئے اقتدار کے ساتھ (96) فرعون اور اس کے ساتھ والے بڑے آدمیوں کے پاس تو ان لوگوں نے فرعون کے حکم کی پیروی کی اور فرعون کا حکم بالکل صحیح نہ تھا (97) وہ اپنی قوم کی قیادت کرے گا قیامت کے دن اور اس طرح انہیں دوزخ کی آگ میں پہنچا دے گا۔ کیا بری ہو گی یہ منزل جہاں وار دہوا جائے گا (98) اور ان کے پیچھے لگا دی گئی اس دنیا میں لعنت اور قیامت کے دن کیا برا عطیہ ہے جو انہیں عطا کیا گیا (99) یہ ان بستیوں کی خبریں ہیں جو آپ کے سامنے ہم بیان کرتے ہیں، ان میں کچھ کچھ رہ گئی ہیں اور کچھ کا قلع قمع ہو چکا ہے (100) اور ہم نے ان پر ظلم نہیں کیا مگر انہوں نے خود اپنے اوپر ظلم کیا تو نہیں فائدہ پہنچایا انہیں ان کے خداؤں نے جن کی وہ اللہ کو چھوڑ کر دہائی دیتے تھے جب آ گیا آپ کے پروردگار کا حکم اور انہوں نے سوا تباہی و بربادی کے انہیں کچھ اور نتیجہ نہ بخشا (101) اور اسی طرح ہوتا ہے گرفت میں لینا تمہارے پروردگار کا جب وہ گرفت میں لیتا ہے بستیوں کو اس عالم میں کہ وہ ظلم و ستم کی مرتکب ہیں یقینا اس کی گرفت درد ناک ہوتی ہے، سخت (102) یقینا اس میں نشانی ہے اس کے لیے جو ڈرے آخرت کے عذاب سے۔ وہ ایسا دن ہے جس کے لیے تمام خلق اکٹھی کی جائے گی اور وہ ایسا دن ہے جس میں سب حاضر ہوں گے (103) اور ہم اس کے لانے میں دیر نہیں کر رہے ہیں مگر ایک مقررہ مدت کے پورا ہونے کے لئے (104) جس دن وہ آئے گا تو کوئی متنفس بات نہ کرے گا مگر اس کی اجازت سے تو ان میں کچھ بد نصیب ہوں گے اور کچھ خوش نصیب (105) تو جو بد نصیب ہیں، وہ آتش دوزخ میں ہوں گے۔ ان کے لیے اس میں چیخ و پکار ہو گی (106) وہ اس میں ہمیشہ رہیں گے جب تک آسمان اور زمین قائم ہیں سوا، اس کے جو تمہارا پروردگار چاہے یقینا تمہارا پروردگار جو ارادہ کرتا ہے، اسے کرکے رہنے والا ہے (107) اور جو خوش نصیب ہیں، وہ بہشت میں ہوں گے۔ ہمیشہ رہیں گے اس میں جب تک آسمان و زمین ہیں سوا اس کے کہ تمہارا پرور دگار چاہے۔ یہ عطائے الٰہی ایسی ہو گی جو قطع ہونے والی نہیں ہے (108) تو جن چیزوں کی یہ عبادت کرتے ہیں، ان سے تمہیں کوئی تردو نہ ہونا چاہیے، یہ نہیں عبادت کرتے مگر اسی طرح کہ جیسے اس کے پہلے ان کے باپ دادا عبادت کرتے تھے اور ہم پورا پورا ان کا حصہ انہیں دیں گے جس میں کوئی کمی نہ ہو گی (109) اور ہم نے موسیٰ کو کتاب عطا کی تو اس میں اختلاف پیدا ہوا اور اگر نہ ہوتی اللہ کی طرف کی بات جو پہلے طے ہو چکی تھی تو ان کے درمیان فیصلہ ہو جاتا اور وہ یقینا اس میں پریشان کرنے والے شک میں مبتلا ہیں (110) اور بلاشبہ ہر ایک کو ایک وقت پورا پورا دے گا تمہارا پروردگار ان کے اعمال کا معاوضہ۔ یقینا وہ اس سے جو وہ کرتے ہیں، باخبر ہے ( 111) تو مضبوطی سے برقرار رہیے جیسا کہ آپ مامور ہیں اور وہ بھی جو آپ کے ساتھ لو لگائے ہیں اور تم لوگ سر کشی نہ کرو۔ یقینا وہ جو کچھ تم کرتے ہو، اس کا دیکھنے والا ہے (112) اور ان کی طرف جو ظالم ہیں نہ جھکو کہ پہنچے تم کو آتش دوزخ اور اللہ کو چھوڑ کر تمہارے کوئی حوالی موالی نہ ہوں گے، پھر تمہاری مدد نہ ہو گی (113) اور نماز ادا کرو دن کے دونوں طرف کے حصوں میں اور رات کے کچھ حصوں میں یقینا نیکیاں ختم کر دیتی ہیں برائیوں کو۔ یہ یاد آوری ہے ان کے لیے جو یاد تازہ رکھنا چاہیں (114) اور صبر و برداشت سے کام لیجئے اس لیے کہ اللہ اچھے اعمال کرنے والوں کے ثواب کو برباد نہیں کرتا (115) تو کیوں نہ ہوئے ان قوموں میں جو تمہارے پہلے تھیں ایسے بچے کھچے سمجھ دار لوگ جو زمین میں خرابیاں پھیلانے سے منع کرتے سوا تھوڑے سے ایسے افراد کے جن کو ہم نے نجات دی ان میں سے جو ظالم تھے، وہ پیچھے لگے رہے ان عیش و عشرت کی لذتوں کے جو انہیں دی گئی تھیں اور وہ گنہگار تھے (116) اور تمہارا پروردگار ایسا نہیں ہے کہ بستیوں کو تباہ کرے ظلم کے ساتھ حالانکہ ان کے باشندے درست اعمال ہوں (117) اور اگر تمہارا پروردگار چاہتا تو سب کو ایک مذہب بنا دیتا اور وہ برابر اختلاف کرتے رہیں گے (118) سوا اس کے جس کو تمہارے پروردگار کا رحم و کرم شامل حال ہو حالانکہ اس نے پیدا انہیں اسی لیے کیا تھا اور تمہارے پروردگار کی بات پوری ہوئی کہ میں ضرور بھر دوں گا دوزخ کو جنات اور انسانوں سے (119) اور پیغمبروں کے واقعات میں سے ہر وہ چیز ہم آپ کے سامنے بیان کرتے ہیں جس سے ہم آپ کے دل کو مضبوط کرتے ہیں اور آئی ہے آپ کے پاس اس میں حقیقت اور موعظت اور نصیحت اہل ایمان کے لیے (120) اور کہئے ان سے جو ایمان نہیں لاتے کہ تم اپنے طور پر عمل کرتے رہو، ہم بھی عمل کر رہے ہیں (121) اور انتظار کرو، ہم بھی انتظار رکھتے ہیں (122) اور اللہ سے مخصوص ہے آسمانوں اور زمین کے غیب کا علم اور اسی کی طرف تمام تر معاملہ کی رجوع ہے تو اسی کی عبادت کرواور اسی پر بھروسا کرو اور تمہارا پروردگار اس سے جو تم لوگ کرتے ہو بے خبر نہیں ہے (123)

پچھلی سورت:
سوره یونس
سورہ 11 اگلی سورت:
سوره یوسف
قرآن کریم

(1) سورہ فاتحہ (2) سورہ بقرہ (3) سورہ آل عمران (4) سورہ نساء (5) سورہ مائدہ (6) سورہ انعام (7) سورہ اعراف (8) سورہ انفال (9) سورہ توبہ (10) سورہ یونس (11) سورہ ہود (12) سورہ یوسف (13) سورہ رعد (14) سورہ ابراہیم (15) سورہ حجر (16) سورہ نحل (17) سورہ اسراء (18) سورہ کہف (19) سورہ مریم (20) سورہ طہ (21) سورہ انبیاء (22) سورہ حج (23) سورہ مؤمنون (24) سورہ نور (25) سورہ فرقان (26) سورہ شعراء (27) سورہ نمل (28) سورہ قصص (29) سورہ عنکبوت (30) سورہ روم (31) سورہ لقمان (32) سورہ سجدہ (33) سورہ احزاب (34) سورہ سباء (35) سورہ فاطر (36) سورہ یس (37) سورہ صافات (38) سورہ ص (39) سورہ زمر (40) سورہ غافر (41) سورہ فصلت (42) سورہ شوری (43) سورہ زخرف (44) سورہ دخان (45) سورہ جاثیہ (46) سورہ احقاف (47) سورہ محمد (48) سورہ فتح (49) سورہ حجرات (50) سورہ ق (51) سورہ ذاریات (52) سورہ طور (53) سورہ نجم (54) سورہ قمر (55) سورہ رحمن (56) سورہ واقعہ (57) سورہ حدید (58) سورہ مجادلہ (59) سورہ حشر (60) سورہ ممتحنہ (61) سورہ صف (62) سورہ جمعہ (63) سورہ منافقون (64) سورہ تغابن (65) سورہ طلاق (66) سورہ تحریم (67) سورہ ملک (68) سورہ قلم (69) سورہ حاقہ (70) سورہ معارج (71) سورہ نوح (72) سورہ جن (73) سورہ مزمل (74) سورہ مدثر (75) سورہ قیامہ (76) سورہ انسان (77) سورہ مرسلات (78) سورہ نباء (79) سورہ نازعات (80) سورہ عبس (81) سورہ تکویر (82) سورہ انفطار (83) سورہ مطففین (84) سورہ انشقاق (85) سورہ بروج (86) سورہ طارق (87) سورہ اعلی (88) سورہ غاشیہ (89) سورہ فجر (90) سورہ بلد (91) سورہ شمس (92) سورہ لیل (93) سورہ ضحی (94) سورہ شرح (95) سورہ تین (96) سورہ علق (97) سورہ قدر (98) سورہ بینہ (99) سورہ زلزال (100) سورہ عادیات (101) سورہ قارعہ (102) سورہ تکاثر (103) سورہ عصر (104) سورہ ہمزہ (105) سورہ فیل (106) سورہ قریش (107) سورہ ماعون (108) سورہ کوثر (109) سورہ کافرون (110) سورہ نصر (111) سورہ مسد (112) سورہ اخلاص (113) سورہ فلق (114) سورہ ناس


متعلقہ مآخذ

پاورقی حاشیے

  1. دانشنامه قرآن و قرآن پژوهی، ج2، ص1239۔


مآخذ

  • قرآن کریم، ترجمہ سید علی نقی نقوی (لکھنوی)۔
  • دانشنامه قرآن و قرآن پژوهی، ج2، به کوشش بهاءالدین خرمشاهی، تهران: دوستان-ناهید، 1377ش.