سورہ جاثیہ

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
دخان سورۂ جاثیہ احقاف
سوره جاثیه.jpg
ترتیب کتابت: 45
پارہ : 25
نزول
ترتیب نزول: 65
مکی/ مدنی: مکی
اعداد و شمار
آیات: 37
الفاظ: 489
حروف: 2085

سورہ جاثیہ قرآن کی ۲۵ویں سپارے میں واقع پینتالیسویں(45ویں) سورت ہے جو مکی سورتوں کا حصہ ہے۔ جاثیہ گھٹنوں کے بل بیٹھنے کے معنا میں ہے۔ اٹھائیسویں آیت میں قیامت کے دن امتوں کے گھٹنوں کے بل جھکنے اور انہیں انکے اعمال نامے دینے کے ذکر کی وجہ سے اس کا نام جاثیہ رکھا گیا ہے۔ حقانیت قرآن، وحدانیت خداوند اور منحرف عقائد پر مصر افراد کو تہدید، مؤمنین کو کفار کو بخشنے کی دعوت اور قیامت کے مختلف مناظر کی تصویر کشی اس سورے میں بیان ہوئی ہے۔ سورت کی فضیلت میں رسول اللہ سے مروی ہے کہ اس کی تلاوت کرنے والے کے عیوب کی خدا پردہ پوشی کرے گا اور اسے پریشانی اور حساب و کتاب کے وقت آرام و سکون نوازے گا۔

تعارف

  • وجہ تسمیہ

اس سورے کی اٹھائیسویں آیت میں جاثیہ کا ذکر آنے کی وجہ سے اس کا نام جاثیہ رکھا گیا کہ قیامت کے روز تمام امتں اپنے اعمال نامہ لینے کیلئے گھٹنوں کے بل جھکے ہونگیں۔ جاثیہ کا لفظ قرآن میں ص