سورہ قصص

ويکی شيعه سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
نمل سورہ قصص عنکبوت
ترتیب کتابت: 28
پارہ : 20
نزول
ترتیب نزول: 49
مکی/ مدنی : مکی
اعداد و شمار
آیات: 88
الفاظ: 1443
حروف: 5933

سوره قصص [سُوْرَةُ الْقَصَصِ] بعض انبیاء کی داستانیں بیان کرنے سے تعلق رکھتی ہے۔ لفظ "قصص" آیت 25 میں آیا ہے اور اس سورت (کی 3 سے 46 تک کی آیات)میں حضرت موسی(ع) کی داستان تفصیل سے بیان ہوئی ہے۔

سورہ قصص

سورہ قصص کی وجۂ تسمیہ اس سورت میں بیان ہونے والی بعض انبیاء کی داستانیں ہیں؛ منجملہ حضرت موسی(ع) کی داستان جو تفصیل سے بیان ہوئی ہے [=آیت 3 تا آیت 46] اور آیت 25 میں اس داستان کو قصص کا نام دیا گیا ہے۔ اس سورت کا دوسرا نام سورہ موسی و فرعون ہے۔ سورہ قصص چودھویں سورت ہے جس کا آغاز حروف مقطعہ [=طسم: طا سین میم] سے ہوا ہے۔ مصحف کے لحاظ سے اٹھائیسویں اور نزول کے لحاظ سے انچاسویں سورت ہے۔ مکی سورت ہے جس کی آیات کی تعداد 88 ہے گوکہ بعض قراءِ کے مطابق یہ تعداد 87 ہے تاہم اول الذکر عدد مشہور اور معمول ہے۔ یہ سورت 1443 الفاظ اور 5933 حروف پر مشتمل ہے۔ حجم و کمیت کے لحاظ سے قرآن کی اوسط سورتوں میں سے ہے اور تقریبا نصف جزء (پارے) کا احاطہ کئے ہوئے ہے۔[1]

مفاہیم

موسی(ع) اور فرعون کا قصہ اس سورت کے آغاز ہی میں مندرج ہوا ہے اور قارون کا قصہ اس کے آخری حصے میں آیا ہے۔ خداوند متعال اس سورت کے ضمن میں مسلمانوں کو دلاسہ دیتا ہے کہ انہیں جان لینا چاہئے کہ تمام قوتیں اسی کے ہاتھ میں ہیں اور وہ ان کی مدد کرتا ہے اور فرعون کی ظاہری طاقت اور قارون کی پوری دولت اللہ کے سامنے کوئی وقعت نہیں رکھتی۔

سورہ قصص کے دوسرے مضامین و مندرجات حسب ذیل ہیں:

حضرت موسی(ع) اور حضرت شعیب(ع) کی داستان اور حضرت موسی(ع) کی حضرت شعیب(ع) کی بیٹی سے شادی؛ حضرت موسی(ع) کے بھائی حضرت ہارون(ع) کا قصہ، اور ان کی وزارت اور فصاحت و بلاغت؛ حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ کو فتح و کامرانی کی بشارت اور یہ کہ آپ(ص) فاتحانہ انداز سے اپنے وطن (مکہ) لوٹ کر جائیں گے؛ نیک اعمال کی پاداش دوہری ہے لیکن برے اعمال کا کیفر اعمال ہی کے برابر ہے۔[2]


متن سورہ

سورہ قصص مدنیہ ـ نمبر 29 - آیات 88 ـ ترتیب نزول 85
بِسْمِ اللّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ

طسم ﴿1﴾ تِلْكَ آيَاتُ الْكِتَابِ الْمُبِينِ ﴿2﴾ نَتْلُوا عَلَيْكَ مِن نَّبَإِ مُوسَى وَفِرْعَوْنَ بِالْحَقِّ لِقَوْمٍ يُؤْمِنُونَ ﴿3﴾ إِنَّ فِرْعَوْنَ عَلَا فِي الْأَرْضِ وَجَعَلَ أَهْلَهَا شِيَعًا يَسْتَضْعِفُ طَائِفَةً مِّنْهُمْ يُذَبِّحُ أَبْنَاءهُمْ وَيَسْتَحْيِي نِسَاءهُمْ إِنَّهُ كَانَ مِنَ الْمُفْسِدِينَ ﴿4﴾ وَنُرِيدُ أَن نَّمُنَّ عَلَى الَّذِينَ اسْتُضْعِفُوا فِي الْأَرْضِ وَنَجْعَلَهُمْ أَئِمَّةً وَنَجْعَلَهُمُ الْوَارِثِينَ ﴿5﴾ وَنُمَكِّنَ لَهُمْ فِي الْأَرْضِ وَنُرِي فِرْعَوْنَ وَهَامَانَ وَجُنُودَهُمَا مِنْهُم مَّا كَانُوا يَحْذَرُونَ ﴿6﴾ وَأَوْحَيْنَا إِلَى أُمِّ مُوسَى أَنْ أَرْضِعِيهِ فَإِذَا خِفْتِ عَلَيْهِ فَأَلْقِيهِ فِي الْيَمِّ وَلَا تَخَافِي وَلَا تَحْزَنِي إِنَّا رَادُّوهُ إِلَيْكِ وَجَاعِلُوهُ مِنَ الْمُرْسَلِينَ ﴿7﴾ فَالْتَقَطَهُ آلُ فِرْعَوْنَ لِيَكُونَ لَهُمْ عَدُوًّا وَحَزَنًا إِنَّ فِرْعَوْنَ وَهَامَانَ وَجُنُودَهُمَا كَانُوا خَاطِئِينَ ﴿8﴾ وَقَالَتِ امْرَأَتُ فِرْعَوْنَ قُرَّتُ عَيْنٍ لِّي وَلَكَ لَا تَقْتُلُوهُ عَسَى أَن يَنفَعَنَا أَوْ نَتَّخِذَهُ وَلَدًا وَهُمْ لَا يَشْعُرُونَ ﴿9﴾ وَأَصْبَحَ فُؤَادُ أُمِّ مُوسَى فَارِغًا إِن كَادَتْ لَتُبْدِي بِهِ لَوْلَا أَن رَّبَطْنَا عَلَى قَلْبِهَا لِتَكُونَ مِنَ الْمُؤْمِنِينَ ﴿10﴾ وَقَالَتْ لِأُخْتِهِ قُصِّيهِ فَبَصُرَتْ بِهِ عَن جُنُبٍ وَهُمْ لَا يَشْعُرُونَ ﴿11﴾ وَحَرَّمْنَا عَلَيْهِ الْمَرَاضِعَ مِن قَبْلُ فَقَالَتْ هَلْ أَدُلُّكُمْ عَلَى أَهْلِ بَيْتٍ يَكْفُلُونَهُ لَكُمْ وَهُمْ لَهُ نَاصِحُونَ ﴿12﴾ فَرَدَدْنَاهُ إِلَى أُمِّهِ كَيْ تَقَرَّ عَيْنُهَا وَلَا تَحْزَنَ وَلِتَعْلَمَ أَنَّ وَعْدَ اللَّهِ حَقٌّ وَلَكِنَّ أَكْثَرَهُمْ لَا يَعْلَمُونَ ﴿13﴾ وَلَمَّا بَلَغَ أَشُدَّهُ وَاسْتَوَى آتَيْنَاهُ حُكْمًا وَعِلْمًا وَكَذَلِكَ نَجْزِي الْمُحْسِنِينَ ﴿14﴾ وَدَخَلَ الْمَدِينَةَ عَلَى حِينِ غَفْلَةٍ مِّنْ أَهْلِهَا فَوَجَدَ فِيهَا رَجُلَيْنِ يَقْتَتِلَانِ هَذَا مِن شِيعَتِهِ وَهَذَا مِنْ عَدُوِّهِ فَاسْتَغَاثَهُ الَّذِي مِن شِيعَتِهِ عَلَى الَّذِي مِنْ عَدُوِّهِ فَوَكَزَهُ مُوسَى فَقَضَى عَلَيْهِ قَالَ هَذَا مِنْ عَمَلِ الشَّيْطَانِ إِنَّهُ عَدُوٌّ مُّضِلٌّ مُّبِينٌ ﴿15﴾ قَالَ رَبِّ إِنِّي ظَلَمْتُ نَفْسِي فَاغْفِرْ لِي فَغَفَرَ لَهُ إِنَّهُ هُوَ الْغَفُورُ الرَّحِيمُ ﴿16﴾ قَالَ رَبِّ بِمَا أَنْعَمْتَ عَلَيَّ فَلَنْ أَكُونَ ظَهِيرًا لِّلْمُجْرِمِينَ ﴿17﴾ فَأَصْبَحَ فِي الْمَدِينَةِ خَائِفًا يَتَرَقَّبُ فَإِذَا الَّذِي اسْتَنصَرَهُ بِالْأَمْسِ يَسْتَصْرِخُهُ قَالَ لَهُ مُوسَى إِنَّكَ لَغَوِيٌّ مُّبِينٌ ﴿18﴾ فَلَمَّا أَنْ أَرَادَ أَن يَبْطِشَ بِالَّذِي هُوَ عَدُوٌّ لَّهُمَا قَالَ يَا مُوسَى أَتُرِيدُ أَن تَقْتُلَنِي كَمَا قَتَلْتَ نَفْسًا بِالْأَمْسِ إِن تُرِيدُ إِلَّا أَن تَكُونَ جَبَّارًا فِي الْأَرْضِ وَمَا تُرِيدُ أَن تَكُونَ مِنَ الْمُصْلِحِينَ ﴿19﴾ وَجَاء رَجُلٌ مِّنْ أَقْصَى الْمَدِينَةِ يَسْعَى قَالَ يَا مُوسَى إِنَّ الْمَلَأَ يَأْتَمِرُونَ بِكَ لِيَقْتُلُوكَ فَاخْرُجْ إِنِّي لَكَ مِنَ النَّاصِحِينَ ﴿20﴾ فَخَرَجَ مِنْهَا خَائِفًا يَتَرَقَّبُ قَالَ رَبِّ نَجِّنِي مِنَ الْقَوْمِ الظَّالِمِينَ ﴿21﴾ وَلَمَّا تَوَجَّهَ تِلْقَاء مَدْيَنَ قَالَ عَسَى رَبِّي أَن يَهْدِيَنِي سَوَاء السَّبِيلِ ﴿22﴾ وَلَمَّا وَرَدَ مَاء مَدْيَنَ وَجَدَ عَلَيْهِ أُمَّةً مِّنَ النَّاسِ يَسْقُونَ وَوَجَدَ مِن دُونِهِمُ امْرَأتَيْنِ تَذُودَانِ قَالَ مَا خَطْبُكُمَا قَالَتَا لَا نَسْقِي حَتَّى يُصْدِرَ الرِّعَاء وَأَبُونَا شَيْخٌ كَبِيرٌ ﴿23﴾ فَسَقَى لَهُمَا ثُمَّ تَوَلَّى إِلَى الظِّلِّ فَقَالَ رَبِّ إِنِّي لِمَا أَنزَلْتَ إِلَيَّ مِنْ خَيْرٍ فَقِيرٌ ﴿24﴾ فَجَاءتْهُ إِحْدَاهُمَا تَمْشِي عَلَى اسْتِحْيَاء قَالَتْ إِنَّ أَبِي يَدْعُوكَ لِيَجْزِيَكَ أَجْرَ مَا سَقَيْتَ لَنَا فَلَمَّا جَاءهُ وَقَصَّ عَلَيْهِ الْقَصَصَ قَالَ لَا تَخَفْ نَجَوْتَ مِنَ الْقَوْمِ الظَّالِمِينَ ﴿25﴾ قَالَتْ إِحْدَاهُمَا يَا أَبَتِ اسْتَأْجِرْهُ إِنَّ خَيْرَ مَنِ اسْتَأْجَرْتَ الْقَوِيُّ الْأَمِينُ ﴿26﴾ قَالَ إِنِّي أُرِيدُ أَنْ أُنكِحَكَ إِحْدَى ابْنَتَيَّ هَاتَيْنِ عَلَى أَن تَأْجُرَنِي ثَمَانِيَ حِجَجٍ فَإِنْ أَتْمَمْتَ عَشْرًا فَمِنْ عِندِكَ وَمَا أُرِيدُ أَنْ أَشُقَّ عَلَيْكَ سَتَجِدُنِي إِن شَاء اللَّهُ مِنَ الصَّالِحِينَ ﴿27﴾ قَالَ ذَلِكَ بَيْنِي وَبَيْنَكَ أَيَّمَا الْأَجَلَيْنِ قَضَيْتُ فَلَا عُدْوَانَ عَلَيَّ وَاللَّهُ عَلَى مَا نَقُولُ وَكِيلٌ ﴿28﴾ فَلَمَّا قَضَى مُوسَىالْأَجَلَ وَسَارَ بِأَهْلِهِ آنَسَ مِن جَانِبِ الطُّورِ نَارًا قَالَ لِأَهْلِهِ امْكُثُوا إِنِّي آنَسْتُ نَارًا لَّعَلِّي آتِيكُم مِّنْهَا بِخَبَرٍ أَوْ جَذْوَةٍ مِنَ النَّارِ لَعَلَّكُمْ تَصْطَلُونَ ﴿29﴾ فَلَمَّا أَتَاهَا نُودِي مِن شَاطِئِ الْوَادِي الْأَيْمَنِ فِي الْبُقْعَةِ الْمُبَارَكَةِ مِنَ الشَّجَرَةِ أَن يَا مُوسَى إِنِّي أَنَا اللَّهُ رَبُّ الْعَالَمِينَ ﴿30﴾ وَأَنْ أَلْقِ عَصَاكَ فَلَمَّا رَآهَا تَهْتَزُّ كَأَنَّهَا جَانٌّ وَلَّى مُدْبِرًا وَلَمْ يُعَقِّبْ يَا مُوسَى أَقْبِلْ وَلَا تَخَفْ إِنَّكَ مِنَ الْآمِنِينَ ﴿31﴾ اسْلُكْ يَدَكَ فِي جَيْبِكَ تَخْرُجْ بَيْضَاء مِنْ غَيْرِ سُوءٍ وَاضْمُمْ إِلَيْكَ جَنَاحَكَ مِنَ الرَّهْبِ فَذَانِكَ بُرْهَانَانِ مِن رَّبِّكَ إِلَى فِرْعَوْنَ وَمَلَئِهِ إِنَّهُمْ كَانُوا قَوْمًا فَاسِقِينَ ﴿32﴾ قَالَ رَبِّ إِنِّي قَتَلْتُ مِنْهُمْ نَفْسًا فَأَخَافُ أَن يَقْتُلُونِ ﴿33﴾ وَأَخِي هَارُونُ هُوَ أَفْصَحُ مِنِّي لِسَانًا فَأَرْسِلْهُ مَعِيَ رِدْءًا يُصَدِّقُنِي إِنِّي أَخَافُ أَن يُكَذِّبُونِ ﴿34﴾ قَالَ سَنَشُدُّ عَضُدَكَ بِأَخِيكَ وَنَجْعَلُ لَكُمَا سُلْطَانًا فَلَا يَصِلُونَ إِلَيْكُمَا بِآيَاتِنَا أَنتُمَا وَمَنِ اتَّبَعَكُمَا الْغَالِبُونَ ﴿35﴾ فَلَمَّا جَاءهُم مُّوسَى بِآيَاتِنَا بَيِّنَاتٍ قَالُوا مَا هَذَا إِلَّا سِحْرٌ مُّفْتَرًى وَمَا سَمِعْنَا بِهَذَا فِي آبَائِنَا الْأَوَّلِينَ ﴿36﴾ وَقَالَ مُوسَى رَبِّي أَعْلَمُ بِمَن جَاء بِالْهُدَى مِنْ عِندِهِ وَمَن تَكُونُ لَهُ عَاقِبَةُ الدَّارِ إِنَّهُ لَا يُفْلِحُ الظَّالِمُونَ ﴿37﴾ وَقَالَ فِرْعَوْنُ يَا أَيُّهَا الْمَلَأُ مَا عَلِمْتُ لَكُم مِّنْ إِلَهٍ غَيْرِي فَأَوْقِدْ لِي يَا هَامَانُ عَلَى الطِّينِ فَاجْعَل لِّي صَرْحًا لَّعَلِّي أَطَّلِعُ إِلَى إِلَهِ مُوسَى وَإِنِّي لَأَظُنُّهُ مِنَ الْكَاذِبِينَ ﴿38﴾ وَاسْتَكْبَرَ هُوَ وَجُنُودُهُ فِي الْأَرْضِ بِغَيْرِ الْحَقِّ وَظَنُّوا أَنَّهُمْ إِلَيْنَا لَا يُرْجَعُونَ ﴿39﴾ فَأَخَذْنَاهُ وَجُنُودَهُ فَنَبَذْنَاهُمْ فِي الْيَمِّ فَانظُرْ كَيْفَ كَانَ عَاقِبَةُ الظَّالِمِينَ ﴿40﴾ وَجَعَلْنَاهُمْ أَئِمَّةً يَدْعُونَ إِلَى النَّارِ وَيَوْمَ الْقِيَامَةِ لَا يُنصَرُونَ ﴿41﴾ وَأَتْبَعْنَاهُمْ فِي هَذِهِ الدُّنْيَا لَعْنَةً وَيَوْمَ الْقِيَامَةِ هُم مِّنَ الْمَقْبُوحِينَ ﴿42﴾ وَلَقَدْ آتَيْنَا مُوسَى الْكِتَابَ مِن بَعْدِ مَا أَهْلَكْنَا الْقُرُونَ الْأُولَى بَصَائِرَ لِلنَّاسِ وَهُدًى وَرَحْمَةً لَّعَلَّهُمْ يَتَذَكَّرُونَ ﴿43﴾ وَمَا كُنتَ بِجَانِبِ الْغَرْبِيِّ إِذْ قَضَيْنَا إِلَى مُوسَى الْأَمْرَ وَمَا كُنتَ مِنَ الشَّاهِدِينَ ﴿44﴾ وَلَكِنَّا أَنشَأْنَا قُرُونًا فَتَطَاوَلَ عَلَيْهِمُ الْعُمُرُ وَمَا كُنتَ ثَاوِيًا فِي أَهْلِ مَدْيَنَ تَتْلُو عَلَيْهِمْ آيَاتِنَا وَلَكِنَّا كُنَّا مُرْسِلِينَ ﴿45﴾ وَمَا كُنتَ بِجَانِبِ الطُّورِ إِذْ نَادَيْنَا وَلَكِن رَّحْمَةً مِّن رَّبِّكَ لِتُنذِرَ قَوْمًا مَّا أَتَاهُم مِّن نَّذِيرٍ مِّن قَبْلِكَ لَعَلَّهُمْ يَتَذَكَّرُونَ ﴿46﴾ وَلَوْلَا أَن تُصِيبَهُم مُّصِيبَةٌ بِمَا قَدَّمَتْ أَيْدِيهِمْ فَيَقُولُوا رَبَّنَا لَوْلَا أَرْسَلْتَ إِلَيْنَا رَسُولًا فَنَتَّبِعَ آيَاتِكَ وَنَكُونَ مِنَ الْمُؤْمِنِينَ ﴿47﴾ فَلَمَّا جَاءهُمُ الْحَقُّ مِنْ عِندِنَا قَالُوا لَوْلَا أُوتِيَ مِثْلَ مَا أُوتِيَ مُوسَى أَوَلَمْ يَكْفُرُوا بِمَا أُوتِيَ مُوسَى مِن قَبْلُ قَالُوا سِحْرَانِ تَظَاهَرَا وَقَالُوا إِنَّا بِكُلٍّ كَافِرُونَ ﴿48﴾ قُلْ فَأْتُوا بِكِتَابٍ مِّنْ عِندِ اللَّهِ هُوَ أَهْدَى مِنْهُمَا أَتَّبِعْهُ إِن كُنتُمْ صَادِقِينَ ﴿49﴾ فَإِن لَّمْ يَسْتَجِيبُوا لَكَ فَاعْلَمْ أَنَّمَا يَتَّبِعُونَ أَهْوَاءهُمْ وَمَنْ أَضَلُّ مِمَّنِ اتَّبَعَ هَوَاهُ بِغَيْرِ هُدًى مِّنَ اللَّهِ إِنَّ اللَّهَ لَا يَهْدِي الْقَوْمَ الظَّالِمِينَ ﴿50﴾ وَلَقَدْ وَصَّلْنَا لَهُمُ الْقَوْلَ لَعَلَّهُمْ يَتَذَكَّرُونَ ﴿51﴾ الَّذِينَ آتَيْنَاهُمُ الْكِتَابَ مِن قَبْلِهِ هُم بِهِ يُؤْمِنُونَ ﴿52﴾ وَإِذَا يُتْلَى عَلَيْهِمْ قَالُوا آمَنَّا بِهِ إِنَّهُ الْحَقُّ مِن رَّبِّنَا إِنَّا كُنَّا مِن قَبْلِهِ مُسْلِمِينَ ﴿53﴾ أُوْلَئِكَ يُؤْتَوْنَ أَجْرَهُم مَّرَّتَيْنِ بِمَا صَبَرُوا وَيَدْرَؤُونَ بِالْحَسَنَةِ السَّيِّئَةَ وَمِمَّا رَزَقْنَاهُمْ يُنفِقُونَ ﴿54﴾ وَإِذَا سَمِعُوا اللَّغْوَ أَعْرَضُوا عَنْهُ وَقَالُوا لَنَا أَعْمَالُنَا وَلَكُمْ أَعْمَالُكُمْ سَلَامٌ عَلَيْكُمْ لَا نَبْتَغِي الْجَاهِلِينَ ﴿55﴾ إِنَّكَ لَا تَهْدِي مَنْ أَحْبَبْتَ وَلَكِنَّ اللَّهَ يَهْدِي مَن يَشَاء وَهُوَ أَعْلَمُ بِالْمُهْتَدِينَ ﴿56﴾ وَقَالُوا إِن نَّتَّبِعِ الْهُدَى مَعَكَ نُتَخَطَّفْ مِنْ أَرْضِنَا أَوَلَمْ نُمَكِّن لَّهُمْ حَرَمًا آمِنًا يُجْبَى إِلَيْهِ ثَمَرَاتُ كُلِّ شَيْءٍ رِزْقًا مِن لَّدُنَّا وَلَكِنَّ أَكْثَرَهُمْ لَا يَعْلَمُونَ ﴿57﴾ وَكَمْ أَهْلَكْنَا مِن قَرْيَةٍ بَطِرَتْ مَعِيشَتَهَا فَتِلْكَ مَسَاكِنُهُمْ لَمْ تُسْكَن مِّن بَعْدِهِمْ إِلَّا قَلِيلًا وَكُنَّا نَحْنُ الْوَارِثِينَ ﴿58﴾ وَمَا كَانَ رَبُّكَ مُهْلِكَ الْقُرَى حَتَّى يَبْعَثَ فِي أُمِّهَا رَسُولًا يَتْلُو عَلَيْهِمْ آيَاتِنَا وَمَا كُنَّا مُهْلِكِي الْقُرَى إِلَّا وَأَهْلُهَا ظَالِمُونَ ﴿59﴾ وَمَا أُوتِيتُم مِّن شَيْءٍ فَمَتَاعُ الْحَيَاةِ الدُّنْيَا وَزِينَتُهَا وَمَا عِندَ اللَّهِ خَيْرٌ وَأَبْقَى أَفَلَا تَعْقِلُونَ ﴿60﴾ أَفَمَن وَعَدْنَاهُ وَعْدًا حَسَنًا فَهُوَ لَاقِيهِ كَمَن مَّتَّعْنَاهُ مَتَاعَ الْحَيَاةِ الدُّنْيَا ثُمَّ هُوَ يَوْمَ الْقِيَامَةِ مِنَ الْمُحْضَرِينَ ﴿61﴾ وَيَوْمَ يُنَادِيهِمْ فَيَقُولُ أَيْنَ شُرَكَائِيَ الَّذِينَ كُنتُمْ تَزْعُمُونَ ﴿62﴾ قَالَ الَّذِينَ حَقَّ عَلَيْهِمُ الْقَوْلُ رَبَّنَا هَؤُلَاء الَّذِينَ أَغْوَيْنَا أَغْوَيْنَاهُمْ كَمَا غَوَيْنَا تَبَرَّأْنَا إِلَيْكَ مَا كَانُوا إِيَّانَا يَعْبُدُونَ ﴿63﴾ وَقِيلَ ادْعُوا شُرَكَاءكُمْ فَدَعَوْهُمْ فَلَمْ يَسْتَجِيبُوا لَهُمْ وَرَأَوُا الْعَذَابَ لَوْ أَنَّهُمْ كَانُوا يَهْتَدُونَ ﴿64﴾ وَيَوْمَ يُنَادِيهِمْ فَيَقُولُ مَاذَا أَجَبْتُمُ الْمُرْسَلِينَ ﴿65﴾ فَعَمِيَتْ عَلَيْهِمُ الْأَنبَاء يَوْمَئِذٍ فَهُمْ لَا يَتَسَاءلُونَ ﴿66﴾ فَأَمَّا مَن تَابَ وَآمَنَ وَعَمِلَ صَالِحًا فَعَسَى أَن يَكُونَ مِنَ الْمُفْلِحِينَ ﴿67﴾ وَرَبُّكَ يَخْلُقُ مَا يَشَاء وَيَخْتَارُ مَا كَانَ لَهُمُ الْخِيَرَةُ سُبْحَانَ اللَّهِ وَتَعَالَى عَمَّا يُشْرِكُونَ ﴿68﴾ وَرَبُّكَ يَعْلَمُ مَا تُكِنُّ صُدُورُهُمْ وَمَا يُعْلِنُونَ ﴿69﴾ وَهُوَ اللَّهُ لَا إِلَهَ إِلَّا هُوَ لَهُ الْحَمْدُ فِي الْأُولَى وَالْآخِرَةِ وَلَهُ الْحُكْمُ وَإِلَيْهِ تُرْجَعُونَ ﴿70﴾ قُلْ أَرَأَيْتُمْ إِن جَعَلَ اللَّهُ عَلَيْكُمُ اللَّيْلَ سَرْمَدًا إِلَى يَوْمِ الْقِيَامَةِ مَنْ إِلَهٌ غَيْرُ اللَّهِ يَأْتِيكُم بِضِيَاء أَفَلَا تَسْمَعُونَ ﴿71﴾ قُلْ أَرَأَيْتُمْ إِن جَعَلَ اللَّهُ عَلَيْكُمُ النَّهَارَ سَرْمَدًا إِلَى يَوْمِ الْقِيَامَةِ مَنْ إِلَهٌ غَيْرُ اللَّهِ يَأْتِيكُم بِلَيْلٍ تَسْكُنُونَ فِيهِ أَفَلَا تُبْصِرُونَ ﴿72﴾ وَمِن رَّحْمَتِهِ جَعَلَ لَكُمُ اللَّيْلَ وَالنَّهَارَ لِتَسْكُنُوا فِيهِ وَلِتَبْتَغُوا مِن فَضْلِهِ وَلَعَلَّكُمْ تَشْكُرُونَ ﴿73﴾ وَيَوْمَ يُنَادِيهِمْ فَيَقُولُ أَيْنَ شُرَكَائِيَ الَّذِينَ كُنتُمْ تَزْعُمُونَ ﴿74﴾ وَنَزَعْنَا مِن كُلِّ أُمَّةٍ شَهِيدًا فَقُلْنَا هَاتُوا بُرْهَانَكُمْ فَعَلِمُوا أَنَّ الْحَقَّ لِلَّهِ وَضَلَّ عَنْهُم مَّا كَانُوا يَفْتَرُونَ ﴿75﴾ إِنَّ قَارُونَ كَانَ مِن قَوْمِ مُوسَى فَبَغَى عَلَيْهِمْ وَآتَيْنَاهُ مِنَ الْكُنُوزِ مَا إِنَّ مَفَاتِحَهُ لَتَنُوءُ بِالْعُصْبَةِ أُولِي الْقُوَّةِ إِذْ قَالَ لَهُ قَوْمُهُ لَا تَفْرَحْ إِنَّ اللَّهَ لَا يُحِبُّ الْفَرِحِينَ ﴿76﴾ وَابْتَغِ فِيمَا آتَاكَ اللَّهُ الدَّارَ الْآخِرَةَ وَلَا تَنسَ نَصِيبَكَ مِنَ الدُّنْيَا وَأَحْسِن كَمَا أَحْسَنَ اللَّهُ إِلَيْكَ وَلَا تَبْغِ الْفَسَادَ فِي الْأَرْضِ إِنَّ اللَّهَ لَا يُحِبُّ الْمُفْسِدِينَ ﴿77﴾ قَالَ إِنَّمَا أُوتِيتُهُ عَلَى عِلْمٍ عِندِي أَوَلَمْ يَعْلَمْ أَنَّ اللَّهَ قَدْ أَهْلَكَ مِن قَبْلِهِ مِنَ القُرُونِ مَنْ هُوَ أَشَدُّ مِنْهُ قُوَّةً وَأَكْثَرُ جَمْعًا وَلَا يُسْأَلُ عَن ذُنُوبِهِمُ الْمُجْرِمُونَ ﴿78﴾ فَخَرَجَ عَلَى قَوْمِهِ فِي زِينَتِهِ قَالَ الَّذِينَ يُرِيدُونَ الْحَيَاةَ الدُّنيَا يَا لَيْتَ لَنَا مِثْلَ مَا أُوتِيَ قَارُونُ إِنَّهُ لَذُو حَظٍّ عَظِيمٍ ﴿79﴾ وَقَالَ الَّذِينَ أُوتُوا الْعِلْمَ وَيْلَكُمْ ثَوَابُ اللَّهِ خَيْرٌ لِّمَنْ آمَنَ وَعَمِلَ صَالِحًا وَلَا يُلَقَّاهَا إِلَّا الصَّابِرُونَ ﴿80﴾ فَخَسَفْنَا بِهِ وَبِدَارِهِ الْأَرْضَ فَمَا كَانَ لَهُ مِن فِئَةٍ يَنصُرُونَهُ مِن دُونِ اللَّهِ وَمَا كَانَ مِنَ المُنتَصِرِينَ ﴿81﴾ وَأَصْبَحَ الَّذِينَ تَمَنَّوْا مَكَانَهُ بِالْأَمْسِ يَقُولُونَ وَيْكَأَنَّ اللَّهَ يَبْسُطُ الرِّزْقَ لِمَن يَشَاء مِنْ عِبَادِهِ وَيَقْدِرُ لَوْلَا أَن مَّنَّ اللَّهُ عَلَيْنَا لَخَسَفَ بِنَا وَيْكَأَنَّهُ لَا يُفْلِحُ الْكَافِرُونَ ﴿82﴾ تِلْكَ الدَّارُ الْآخِرَةُ نَجْعَلُهَا لِلَّذِينَ لَا يُرِيدُونَ عُلُوًّا فِي الْأَرْضِ وَلَا فَسَادًا وَالْعَاقِبَةُ لِلْمُتَّقِينَ ﴿83﴾ مَن جَاء بِالْحَسَنَةِ فَلَهُ خَيْرٌ مِّنْهَا وَمَن جَاء بِالسَّيِّئَةِ فَلَا يُجْزَى الَّذِينَ عَمِلُوا السَّيِّئَاتِ إِلَّا مَا كَانُوا يَعْمَلُونَ ﴿84﴾ إِنَّ الَّذِي فَرَضَ عَلَيْكَ الْقُرْآنَ لَرَادُّكَ إِلَى مَعَادٍ قُل رَّبِّي أَعْلَمُ مَن جَاء بِالْهُدَى وَمَنْ هُوَ فِي ضَلَالٍ مُّبِينٍ ﴿85﴾ وَمَا كُنتَ تَرْجُو أَن يُلْقَى إِلَيْكَ الْكِتَابُ إِلَّا رَحْمَةً مِّن رَّبِّكَ فَلَا تَكُونَنَّ ظَهِيرًا لِّلْكَافِرِينَ ﴿86﴾ وَلَا يَصُدُّنَّكَ عَنْ آيَاتِ اللَّهِ بَعْدَ إِذْ أُنزِلَتْ إِلَيْكَ وَادْعُ إِلَى رَبِّكَ وَلَا تَكُونَنَّ مِنَ الْمُشْرِكِينَ ﴿87﴾ وَلَا تَدْعُ مَعَ اللَّهِ إِلَهًا آخَرَ لَا إِلَهَ إِلَّا هُوَ كُلُّ شَيْءٍ هَالِكٌ إِلَّا وَجْهَهُ لَهُ الْحُكْمُ وَإِلَيْهِ تُرْجَعُونَ ﴿88﴾۔

قرآن کریم


ترجمہ
اللہ کے نام سے جو بہت رحم والا نہایت مہربان ہے

طا۔ سین۔ میم۔۔ (1) یہ روشن کتاب کی آیتیں ہیں۔ (2) ہم آپ کے سامنے موسیٰ اور فرعون کی کچھ خبریں سچائی کے ساتھ پیش کرتے ہیں ان کے لیے جو ایمان لائیں (3) بلاشبہ فرعون نے دنیا میں گھمنڈ کیا اور اس کے رہنے والوں کو متفرق جماعتوں میں تقسیم کر دیا کہ ایک گروہ کو ان میں سے وہ کمزور بناتا تھا، ان کے لڑکوں کو ذبح کرتا تھا اور ان کی عورتوں کو زندہ رکھ لیتا تھا، یقینا وہ خرابی پھیلانے والوں میں سے تھا (4) اور ہمارا مقصود یہ ہے کہ احسان کریں ان پر جنہیں دنیا میں دبایا یا پیسا گیا تھا اور انہی کو پیشوا قرار دیں، انہی کو آخر میں قابض و متصرف بنائیں۔ (5) انہیں زمین میں اقتدار عطا کریں اور فرعون اور ہامان اور ان کے تمام لاؤ لشکر کو ان کی جانب سے وہ شے دکھلائیں جس سے وہ ڈرتے تھے (6) اور ہم نے مادر موسیٰ کی طرف وحی بھیجی کہ تم اسے دودھ پلاؤ، اس کے بعد جب اس کے لیے تمہیں خطرہ محسوس ہو تو اسے دریا میں ڈال دینا اور ڈرو نہیں اور نہ رنج کرو۔ ہم بلاشبہ اسے واپس پلٹائیں گے تمہاری طرف اور اسے پیغمبروں میں سے قرار دیں گے (7) تو اسے اٹھا لیا فرعون کے گھر والوں نے تاکہ وہ ان کے لیے دشمن اور سرمایہ رنج و غم ہو۔ یقینا فرعون اور ہامان اور ان کے لاؤ لشکر والے (سب) خطاکار تھے (8) اور فرعون کی بیوی نے کہا کہ ارے، یہ میرے اور تمہارے لیے آنکھ کی ٹھنڈک ہے، تم لوگ اسے قتل نہ کرو بہت ممکن ہے کہ یہ ہمیں فائدہ پہنچائے یا ہم اسے بیٹا بنائیں اور انہیں حقیقت کی خبر نہ تھی (9) اور موسیٰ کی ماں کا دل بے تاب ہو گیا، قریب تھا کہ وہ اس راز کو نمایاں کر دیں اگر ہم ان کے دل کو مضبوط نہ کرتے تاکہ وہ ایمان والوں میں ثابت ہوں۔ (10) اور انہوں نے اس کی بہن سے کہا کہ اسکے پیچھے جاؤ تو اس نے اسے دور سے دیکھا درحالیکہ ان لوگوں کو خبر نہ تھی۔ (11) اور ہم نے اس پر اناؤں کو پہلے سے حرام کر دیا تھا تو اس (بہن) نے کہا کہ کیا میں تم لوگوں کو ایک گھرانا بتاؤں جو پال دے اس کو تمہارے لیے اور وہ اس کے خیر خواہ ہوں گے۔ (12) تو پلٹا یا ہم نے اسکو اس کی ماں کی طرف تاکہ ان کی آنکھیں ٹھنڈی رہیں اور وہ رنجیدہ نہ ہوں اور تاکہ وہ جانیں کہ اللہ کا وعدہ سچا ہے مگر ان میں کے زیادہ لوگ جانتے نہیں (13) اور جب وہ شباب کی منزل تک پہنچے اور پورے قد و قامت پر آ گئے تو ہم نے انہیں حکمت اور علم عطا کیا اور اسی طرح ہم صلہ دیتے ہیں نیک اعمال افراد کو (14) اور وہ شہر کے اندر گئے ایسے وقت جب وہاں کے لوگوں کو خبر نہ تھی تو وہاں دیکھا دو آدمیوں کو آپس میں لڑتے ہوئے، یہ ان کے دوستوں میں سے تھا اور یہ ان کے دشمنوں میں سے تو اس نے جو ان کے دوستوں میں سے تھا فریاد کی ان سے اس کے خلاف جو ان کے دشمنوں میں سے تھا تو موسیٰ نے اسے گھونسا مار دیا تو اس نے اس کا فیصلہ کر دیا، کہا یہ شیطان کی کارستانی کا نتیجہ ہے، بلاشبہ وہ کھلا ہوا گمراہ کرنے والا دشمن ہے۔ (15)کہا اے میرے پروردگار! میں نے اپنے اوپر ظلم کیا اب تو مجھے بخش دے تو اس نے انہیں بخش دیا، بلاشبہ وہ بڑا بخشنے والا ہے،بڑا مہربان۔ (16) کہا اے میرے پروردگار! اس بناء پر کہ تونے مجھے اپنی نعمت سے نوازا ہے، میں کبھی گنہگاروں کا پشت پناہ نہیں ہوں گا (17) دوسرے دن صبح کو نکلے وہ اس شہر میں خوف زدہ، نتیجہ کے منتظر، تو ایک دفعہ دیکھا کہ جس نے کل ان سے مدد طلب کی تھی، وہی پھر ان کو چیخ کر مدد کے لیے پکار رہا ہے، موسیٰ نے اس سے کہا تو بلاشبہ کھلا ہوا گمراہ ہے۔ (18) اب جو انہوں نے چاہا کہ حملہ کریں اس پر جو ان دونوں کا دشمن تھا تو اس نے کہا کیا تم چاہتے ہو کہ مجھے قتل کر دو جس طرح کل ایک آدمی کو قتل کیا؟ تم نہیں چاہتے سوا اس کے کہ سرکش ہو کر رہو دنیا میں اور تم اصلاح کرنے والے نہیں ہونا چاہتے (19) اور آیا شہر کے آخری حصے سے ایک شخص دوڑتا ہوا، اس نے کہا کہ اے موسیٰ! تمام بڑے آدمی تمہارے خلاف سازش کر رہے ہیں کہ تمہیں قتل کر دیں تو تم باہر نکل جاؤ، یقینا میں تمہارے خیر خواہوں میں سے ہوں (20) اور جب وہ نکلے وہاں سے خوف زدہ، نتیجہ کے منتظر کہا اے میرے پروردگار مجھے چھٹکارا دے اس ظالم جماعت سے (21) اور جب وہ مدین کی طرف روانہ ہوئے تو کہا امید ہے کہ میرا پروردگار مجھے سیدھے راستے کی طرف لے جائے گا۔ (22) اور جب وہ مدین کے پانی پر پہنچے تو پایا اس پر ایک جماعت کو آدمیوں کی کہ وہ مویشیوں کو پانی پلا رہی ہے اور ان سب سے الگ دو عورتوں کو پایا کہ وہ الگ کھڑی ہیں۔ انہوں نے کہا تم دونوں کی کیا صورت حال ہے؟ انہوں نے کہا کہ ہم اس وقت نہیں پلائے جائیں گے جب تک یہ چرواہے اپنے جانوروں کو پلا کر لے نہ جائیں اور ہمارے باپ بہت سن رسیدہ بوڑھے ہیں۔ (23) تو انہوں نے ان دونوں کے جانوروں کو پانی پلا دیا، پھر سایہ میں چلے گئے اور کہا اے میرے پروردگار! میں اس کا جو تو مجھ پر نعمت اتارے، محتاج ہوں (24) تو آئی ان دونوں میں کی ایک راستہ چلتی ہوئی شرم کے ساتھ، کہا کہ میرے والد تمہیں بلا رہے ہیں تاکہ تمہیں معاوضہ دیں اس کا جو تم نے ہمارے لیے پانی پلا دیا تو جب وہ ان کے پاس آئے اور تمام واقعات ان سے بیان کیے تو انہوں نے کہا کہ نہ ڈرو، تم نجات پا گئے اس ظالم جماعت سے (25) ان میں کی ایک نے کہا: ابا جان! ان کو مزدوری میں رکھ لیجئے، بہترین شخص جسے آپ مزدوری کے لیے رکھیں، وہی ہے جو طاقت ور بھی ہو اور امانت دار بھی۔ (26) انہوں نے کہا کہ میں تم سے اپنی دونوں بیٹیوں میں سے اس کا ایک عقد کرنا چاہتا ہوں اس شرط پر کہ تم آٹھ برس تک میری خدمت انجام دو گے، اس کے بعد اگر دس پورے کر دو تو وہ تمہارا احسان ہو گا اور میں تمہیں کوئی ناگوار زحمت نہیں دینا چاہتا اللہ نے چاہا تو تم مجھے خوش کردار لوگوں میں سے پاؤ گے۔ (27) انہوں نے کہا اچھا یہ میرے اور آپ کے درمیان طے ہے۔ دونوں میں سے جو بھی مدت میں پوری کر دوں، مجھ پر کوئی الزام نہ ہو گا اور اللہ جو کچھ ہم کہہ رہے ہیں اس کا گواہ ہے۔ (28) تو جب موسیٰ اس مدت کو پورا کر چکے اور اپنے بیوی بچوں کو لے کر چلے تو طور کی جانب سے ایک آگ محسوس کی، کہا اپنے گھر والوں سے کہ ٹھہرو، میں نے ایک آگ محسوس کی ہے، شاید میں تمہارے پاس وہاں سے کوئی خبر لاؤں یا کوئی چنگاری آگ کی کہ تم لوگ تاپو۔ (29) تو جب وہاں گئے تو آواز آئی اس وادی کی داہنی جانب سے اس مبارک سرزمین میں درخت سے کہ اے موسیٰ ! میں اللہ ہوں تمام جہانوں کا پروردگار۔ (30) اور یہ کہ تم اپنا عصا پھینک دو تو جب انہوں نے اسے دیکھا کہ وہ حرکت کر رہا ہے جیسے ایک سانپ ہے تو پیٹھ پھرا کر مڑے اور پھر پلٹ کر نہیں دیکھا۔ اے موسیٰ! آگے بڑھو اور ڈرو نہیں، تم محفوظ ہو۔ (31) اپنا ہاتھ اپنے گریبان میں ڈالو۔ وہ نکلے گا سفید چمکتا ہوا بغیر کسی برائی کے اور پھر سمیٹ لو اپنے بازوؤں کو خوف سے تو یہ دونوں دلیلیں ہیں تمہارے پروردگار کی طرف سے فرعون اور اس کے ارکان سلطنت کے سامنے پیش کرنے کے لیے بلاشبہ وہ بداعمال لوگ رہا کیے ہیں (32) کہا پروردگار! میں نے ان میں سے ایک کو مار ڈالا تھا تو ڈرتا ہوں کہ وہ مجھے قتل کر ڈالیں۔ (33) اور میرے بھائی ہارون مجھ سے زیادہ زبان کے فصیح ہیں تو انہیں میرے ساتھ بھیج مددگار بنا کر کہ وہ میری تصدیق کریں۔ میں ڈرتا ہوں کہ وہ لوگ مجھے جھٹلائیں گے۔ (34) ارشاد ہوا کہ ہاں، ہم تمہارے بازو کو مضبوط کریں گے تمہارے بھائی کے ساتھ اور ہم تم دونوں کو غلبہ عطا کریں گے تو ہماری طرف کی نشانیوں کی وجہ سے ان کا دسترس تم پر نہ ہو گا، تم دونوں اور جو تمہاری پیروی کریں گے، غالب آنے والے ہیں (35) تو جب ان کے پاس آئے موسیٰ ہماری کھلی ہوئی نشانیوں کے ساتھ تو انہوں نے کہا یہ نہیں ہے مگر گھڑا ہوا جادو اور ہم نے اپنے اگلے باپ داداؤں کے دور میں نہیں سنا۔ (36) اور موسیٰ نے کہا میرا پروردگار خوب جانتا ہے کہ کون اس کی طرف سے ہدایت لے کر آیا ہے اور کس کے لیے آخرت کی کامیابی ہو گی، بلاشبہ ظالم لوگ دین اور دنیا کی بہتری نہیں پائیں گے (37) اور کہا فرعون نے اے عمائد و رؤسا! مجھے تمہارے لیے اپنے سوا کسی خدا کا علم نہیں ہے۔ تو اے ہامان! میرے لیے اینٹوں کا بھٹا لگوا دو اور ایک اونچا قصر بنواؤ، شاید میں اس پر چڑھ کر موسیٰ کے خدا کا پتا لگا سکوں اور میں تو انہیں جھوٹوں ہی میں سے سمجھتا ہوں۔ (38) اور اس نے اور اس کی افواج نے دنیا میں ناحق گھمنڈ سے کام لیا اور انہوں نے سمجھا کہ وہ ہماری طرف پلٹ کر نہیں آئیں گے۔ (39) تو ہم نے اس کو اور اسکی افواج کو گرفت میں لے کر دریا میں ڈال دیا تو دیکھو کیسا انجام تھا ظالموں کا۔ (40) اور انہیں ہم نے قرار دیا اور ایسا پیشوا جو آگ کی طرف بلاتے تھے اور قیامت میں ان کی مدد نہ ہو گی۔ (41) اور ان کے پیچھے لگا دی ہم نے اس دنیا میں لعنت اور روز قیامت وہ بدحال لوگوں میں ہوں گے (42) اور بے شک ہم نے موسیٰ کو کتاب عطا کی بعد اس کے کہ پہلی نسلوں کو فنا کیا بصیرتوں کا مجموعہ لوگوں کے لیے اور ہدایت اور رحمت بنا کر شاید کہ وہ نصیحت قبول کریں (43) اور آپ تو موجود نہ تھے مغربی سمت میں جب ہم نے موسیٰ سے اس معاملہ کو طے کیا اور آپ اس موقع پر موجود نہ تھے۔ (44) بلکہ ہم نے کتنی نسلیں پیدا کیں اور انہیں طولانی عمریں ملیں اور آپ مدین والوں میں بھی سکونت پذیر نہ تھے کہ ہماری آیتوں کی آپ تلاوت کرتے ہوں مگر ہم نے رسول بھیجے تھے۔ (45) اور آپ طور کے پہلو میں بھی نہ تھے جب ہم نے آواز دی تھی مگر یہ آپ کے پروردگار کی طرف کی رحمت ہے تاکہ آپ اس قوم کو ڈرائیں جن کے پاس آپ کے پہلے کوئی ڈرانے والا نہیں آیا، شاید کہ وہ نصیحت قبول کریں (46) اور ایسا نہ ہو کہ انہیں کوئی مصیبت آئے اس کی سزا میں جو وہ اپنے ہاتھوں سے کرتے رہے ہیں تو وہ کہیں کہ کیوں نہ تونے ہماری طرف کوئی پیغمبر بھیجا تو ہم تیری آیتوں کی پیروی کرتے اور ایمان لانے والوں میں سے ہوتے۔ (47) تو جب ان کے پاس حق ہماری طرف سے آیا تو وہ کہنے لگے کہ کیوں نہ انہیں ویسا ہی ملا جیسا موسیٰ کو ملا تھا، کیا انہوں نے انکار نہیں کیا اس کا جو اس کے پہلے موسیٰ کو عطا کیا گیا تھا، انہوں نے کہا یہ دونوں جادو ہیں جو آپس میں متفق ہو گئے ہیں اور کہا ہم ہر ایک کے منکر ہیں۔ (48) کہئے کہ پھر تم لاؤ اللہ کی طرف کی کوئی کتاب جو ان دونوں سے زیادہ صحیح راستہ بتانے والی ہو تو میں اس کی پیروی کروں اگر تم سچے ہو۔ (49) اب اگر وہ آپ کی بات نہ مانیں تو جان لیجئے کہ وہ اپنی نفسانی خواہشوں کی پیروی کرتے ہیں اور کون گمراہ ہو گا زیادہ اس سے کہ جو اپنی نفسانی خواہشوں کی پیروی کرے اللہ کی طرف کی ہدایت کو چھوڑ کر؟ بلاشبہ اللہ منزل مقصود تک نہیں پہنچاتا ظالم لوگوں کو۔ (50) اور ہم نے ان سے کہنے کا سلسلہ جاری رکھا شاید کہ وہ نصیحت قبول کریں (51) جنہیں ہم نے کتاب اس کے پہلے عطا کی ہے، وہ اس پر ایمان لاتے ہیں۔ (52) اور جب ان کے سامنے پڑھی جاتی ہے تو وہ کہتے ہیں کہ ہم اس پر ایمان لائے، بلاشبہ یہ حق ہے ہمارے پروردگار کی طرف سے ہم تو اس کے پہلے ہی اسلام قبول کیے ہوئے ہیں۔ (53) یہ وہ ہیں جنہیں ان کا صلہ دہرا عطا ہو گا اس لیے کہ انہوں نے صبر سے کام لیا اور وہ برائی کا بھلائی سے دفعیہ کرتے ہیں اور جو رزق ہم نے انہیں عطا کیا ہے اس میں سے (راہ خدا میں) خرچ کرتے ہیں۔ (54) اور جب وہ فضول باتیں سنتے ہیں تو ان سے بے اعتنائی اختیار کرتے ہیں اور کہتے ہیں ہمارے لیے ہمارے اعمال ہیں اور تمہارے لیے تمہارے اعمال۔ تمہیں سلام، جاہلوں سے ہمیں مطلب نہیں ہے (55) آپ جسے چاہیں، اسے سیدھے راستے پر نہیں لگا سکتے لیکن اللہ جسے چاہتا ہے سیدھے راستے پر لگاتا ہے اور وہی جانتا ہے کہ کون ہدایت قبول کرنے والے ہیں (56) اور انہوں نے کہا کہ اگر آپ کے ساتھ ہو کر اس نظام ہدایت کی پیروی کریں تو ہماری سرزمین سے جھپٹا مار کر ہم کو نکال دیا جائے گا اور کیا ہم ہی نے ان کے لیے مہیا کیا ہے ایسا امن والا محترم مقام جہاں ہر قسم کے پھل لائے جاتے ہیں ہماری طرف کے رزق کی حیثیت سے مگر ان میں کے زیادہ علم نہیں رکھتے (57) اور کتنی ہی بستیاں ایسی جو اپنے عیش و عشرت سے اترائی ہوئی تھیں، ہم نے تہس نہس کر دیں تو یہ ان کے مکانات ہیں جو ان کے بعد بھی آباد نہیں ہوئے سوا کم کے اور ہم تھے آخر میں اس مترو کے پر تصرف رکھنے والے (58) اور نہیں ہے تمہارا پروردگار بستیوں کو ہلاک کرنے والا جب تک کہ ان کی مرکزی آبادی میں کوئی پیغمبر بھیج دے جو ان پر ہماری آیات کی تلاوت کرے اور ہم نہیں ہیں بستیوں کو ہلاک کرنے والے سوا اس کے کہ ان کے باشندے مظالم و جرائم کے مرتکب ہوں (59) اور جو چیز تمہیں ملے، وہ زندگانی دنیا ہی کا سرمایہ اور یہیں کی آرائش تو ہے اور جو اللہ کے یہاں ہے وہ بہتر اور زیادہ پائدار ہے، پھر تم کیوں عقل سے کام نہیں لیتے؟ (60) تو کیا وہ جس سے ہم نے اچھا وعدہ کیا ہے تو وہ اسے پا کر رہے گا، مثل اس کے ہے جسے ہم نے اس دنیوی زندگی کا سامان دیا ہے ، تو پھر قیامت کے دن اسے (خدا کے سامنے) حاضر کیا جائے گا (61) اور جس دن وہ انہیں پکارے گا اور فرمائے گا کہ کہاں ہیں میرے وہ شریک جن کے متعلق تم گمان باطل رکھتے تھے؟ (62) کہیں گے وہ جن پر عذاب کا حکم نافذ ہو چکا کہ اے ہمارے مالک! یہ ہیں جنہیں ہم نے گمراہ کیا تھا جیسے ہم گمراہ تھے، ویسے ہی ہم نے انہیں گمراہ کیا۔ اب ہم تیری طرف برات کرتے ہیں۔ یہ ہماری پرستش نہیں کرتے تھے۔ (63) اور کہا کہ پکارو اپنے بنائے ہوئے شریکوں کو تو وہ پکاریں گے تو وہ ان کو جواب نہ دیں گے اور عذاب کو آنکھوں سے دیکھیں گے، کاش وہ ہدایت پاتے (64) اور جب وہ انہیں پکار کر کہے گا کہ کیا جواب دیا تھا تم نے پیغمبروں کو؟ (65) تو اب اس دن خبریں ان پر تاریک ہو گئی ہوں گی تو وہ آپس میں پوچھ گچھ بھی نہ کر سکیں گے۔ (66) مگر جو اللہ کی طرف لو لگائے تھا اور ایمان لایا تھا اور نیک اعمال کرتا رہا تھا تو امید ہے کہ وہ فلاح پانے والوں میں ہو گا (67) اور آپ کا پروردگار پیدا کرتا ہے جو چاہتا ہے اور منتخب کرتا ہے۔ انہیں کوئی اختیار نہیں پاک ہے اللہ اور بلند ہے اس سے جو وہ شرک کرتے ہیں۔ (68) اور آپ کا پروردگار جانتا ہے جو ان کے سینوں میں چھپا ہے اور جو وہ ظاہر کرتے ہیں (69) اور وہ اللہ ہے اس کے سوا کوئی خدا نہیں ہے، اس کے لیے سب تعریف ہے دنیا میں بھی اور آخرت میں بھی اور اس کی حکومت ہے اور اسی کی طرف تم پلٹ کر جاؤ گے (70) کہئے کہ کیا تم نے غور کیا ہے کہ اگر اللہ رات کو روز قیامت تک کے لیے قرار دے دے تو کون خدا اللہ کے سوا ہے جو تمہاری طرف روشنی کو لائے؟ تو کیوں سماعت نہیں کرتے ہو؟ (71) کہئے کہ کیا تم نے غور کیا ہے کہ وہ دن ہی کو قیامت تک کے لیے ہمیشہ قرار دے دے تو کون خدا ہے سوا اللہ کے جو تمہاری طرف رات کو لائے جس میں تم آرام کرو تو کیوں دیکھتے نہیں ہو؟ (72) اور اس نے اپنی رحمت سے تمہارے لیے رات اور دن قرار دیئے ہیں تاکہ تم اس میں آرام کرو (کسب معاش کرکے) اس کے فوائد کے خواہاں ہو اور شاید کہ تم شکر گزار ہو (73) اور جس دن وہ انہیں پکارے گا اور کہے گا کہ کہاں ہیں میرے وہ شریک جن کے متعلق تم گمان باطل رکھتے تھے۔ (74) اور ہم ہر امت میں سے ایک گواہ لائینگے تو ہم کہیں گے کہ لاؤ اپنی دلیل تب انہیں معلوم ہو گا کہ حق اللہ کا ہے اور جو کچھ غلط باتیں وہ گھڑتے تھے، سب ان سے غائب ہو جائیں گی (75) قارون موسیٰ کی قوم میں سے تھا۔ اس نے ان لوگوں پر بلاوجہ چھا جانے کی کوشش کی اور ہم نے اسے اتنے خزانے عطا کیے تھے کہ اس کی کنجیاں ایک طاقت ور جماعت سے بھی مشکل سے اٹھتی تھیں۔ جب اس سے اس کی قوم والوں نے کہا کہ خوش نہ ہو یقینا اللہ خوش ہونے والوں کو دوست نہیں رکھتا۔ (76) اور جو اللہ نے تمہیں دیا ہے، اس سے آخرت کا سامان کرو اور اپنا حصہ دنیا سے بھی نہ بھولو اور لوگوں کے ساتھ حسن سلوک کرو جیسے اللہ نے تمہارے ساتھ نیک سلوک کیا ہے اور زمین میں خرابیاں پھیلانا نہ چاہو۔ یقینا اللہ خرابیاں پھیلانے والوں کو دوست نہیں رکھتا (77) اس نے کہا یہ تو مجھے ملا ہے بس ایک علم کی وجہ سے جو میرے پاس ہے اور کیا اسے یہ علم نہیں کہ اللہ نے اس کے قبل ایسی نسلوں کو ہلاک کر دیا جو اس سے زیادہ طاقت ور اور زیادہ سرمایہ دار تھیں اور گنہگاروں سے ان کے گناہوں کے متعلق کچھ پوچھنا نہیں ہے (78) تو وہ نکلا اپنی قوم والوں کے سامنے اپنے سازو سامان کے ساتھ، کہا ان لوگوں نے جو زندگانی دنیا کے طلب گار تھے کہ کاش ہمارے لیے ہوتا ویسا ہی جیسا قارون کو ملا۔ یقینا وہ بڑا نصیب والا ہے۔ (79) اور کہا ان لوگوں نے جنہیں علم عطا ہوا تھا کہ وائے ہو تم پر اللہ کے یہاں کا صلہ بہتر ہے اس کے لیے جو ایمان لائے اور نیک اعمال کرے اور نہیں اس کو پاتے مگر صبر و برداشت کرنے والے۔ (80) تو ہم نے غرق کر دیا اسے اور اس کے گھر والوں کو زمین میں تو اب اللہ کو چھوڑنے کے بعد کوئی جماعت نہ تھی جو اس کی مدد کرتی اور نہ وہ خود ہی اپنے لیے کچھ کر سکتا تھا۔ (81) اور وہ جو کل اس کے درجے پر ہونے کی آرزو کر رہے تھے، اب کہنے لگے ارے اللہ جس کے لیے چاہتا ہے روزی میں کشادگی کرتا ہے اور (جس کے لیے چاہتا ہے) تنگی کرتا ہے۔ اگر اللہ ہم پر احسان نہ فرماتا تو ہمیں بھی زمین میں غرق کر دیتا۔ ارے اب ایسا معلوم ہو رہا ہے کہ کافر لوگ کبھی فلاح نہیں پاتے (82) وہ آخرت کا گھر، اسے ہم قرار دیتے ہیں ان کے لیے جو زمین میں دوسروں پر چھانے کی خواہش نہیں رکھتے اور نہ فساد اور انجام کی بہتری پرہیز گاروں کے لیے ہے (83) جو نیک کام کرے اسے اس سے بہتر صلہ ملے گا اور جو برا کام کرے تو انہیں جو برے کام انجام دیتے ہیں، پاداش نہیں ملے گی سوا اسکے جو وہ کرتے تھے (84) بلاشبہ وہ جس نے قرآن پہنچانے کا فریضہ آپ کے ذمے عائد کیا، وہی آپ کو واپسی کی منزل پر دوبارہ لائے گا، کہئے کہ میرا پروردگار بہتر جانتا ہے کہ کون ہدایت لے کر آیا ہے اور کون کھلی ہوئی گمراہی میں ہے۔ (85) اور آپ اس کے امیدوار نہیں تھے کہ آپ پر کتاب اتاری جائے۔ یہ تو بس آپ کے پروردگار کی رحمت ہے تو آپ کبھی کافروں کے پشت پناہ نہ بنئے گا۔ (86) اور وہ آپ کو روکیں نہ اللہ کی آیتوں سے بعد اس کے کہ وہ آپ پر نازل ہو چکی ہیں اور دعوت دیجئے اپنے پروردگار کی طرف اور مشرکوں میں شامل نہ ہوجیے۔ (87) اور اللہ کے ساتھ کسی دوسرے خدا کو نہ پکاریئے۔ اس کے سوا کوئی خدا نہیں۔ ہر چیز فنا ہونے والی ہے سوا اسکے چہرے کے۔ اسی کی حکومت ہے اور اسی کی طرف تم لوگوں کو پلٹ کر جانا ہے (88)


پچھلی سورت:
سورہ نمل
سورہ 28 اگلی سورت:
سورہ عنکبوت
قرآن کریم

(1) سورہ فاتحہ (2) سورہ بقرہ (3) سورہ آل عمران (4) سورہ نساء (5) سورہ مائدہ (6) سورہ انعام (7) سورہ اعراف (8) سورہ انفال (9) سورہ توبہ (10) سورہ یونس (11) سورہ ہود (12) سورہ یوسف (13) سورہ رعد (14) سورہ ابراہیم (15) سورہ حجر (16) سورہ نحل (17) سورہ اسراء (18) سورہ کہف (19) سورہ مریم (20) سورہ طہ (21) سورہ انبیاء (22) سورہ حج (23) سورہ مؤمنون (24) سورہ نور (25) سورہ فرقان (26) سورہ شعراء (27) سورہ نمل (28) سورہ قصص (29) سورہ عنکبوت (30) سورہ روم (31) سورہ لقمان (32) سورہ سجدہ (33) سورہ احزاب (34) سورہ سباء (35) سورہ فاطر (36) سورہ یس (37) سورہ صافات (38) سورہ ص (39) سورہ زمر (40) سورہ غافر (41) سورہ فصلت (42) سورہ شوری (43) سورہ زخرف (44) سورہ دخان (45) سورہ جاثیہ (46) سورہ احقاف (47) سورہ محمد (48) سورہ فتح (49) سورہ حجرات (50) سورہ ق (51) سورہ ذاریات (52) سورہ طور (53) سورہ نجم (54) سورہ قمر (55) سورہ رحمن (56) سورہ واقعہ (57) سورہ حدید (58) سورہ مجادلہ (59) سورہ حشر (60) سورہ ممتحنہ (61) سورہ صف (62) سورہ جمعہ (63) سورہ منافقون (64) سورہ تغابن (65) سورہ طلاق (66) سورہ تحریم (67) سورہ ملک (68) سورہ قلم (69) سورہ حاقہ (70) سورہ معارج (71) سورہ نوح (72) سورہ جن (73) سورہ مزمل (74) سورہ مدثر (75) سورہ قیامہ (76) سورہ انسان (77) سورہ مرسلات (78) سورہ نباء (79) سورہ نازعات (80) سورہ عبس (81) سورہ تکویر (82) سورہ انفطار (83) سورہ مطففین (84) سورہ انشقاق (85) سورہ بروج (86) سورہ طارق (87) سورہ اعلی (88) سورہ غاشیہ (89) سورہ فجر (90) سورہ بلد (91) سورہ شمس (92) سورہ لیل (93) سورہ ضحی (94) سورہ شرح (95) سورہ تین (96) سورہ علق (97) سورہ قدر (98) سورہ بینہ (99) سورہ زلزال (100) سورہ عادیات (101) سورہ قارعہ (102) سورہ تکاثر (103) سورہ عصر (104) سورہ ہمزہ (105) سورہ فیل (106) سورہ قریش (107) سورہ ماعون (108) سورہ کوثر (109) سورہ کافرون (110) سورہ نصر (111) سورہ مسد (112) سورہ اخلاص (113) سورہ فلق (114) سورہ ناس


متعلقہ مآخذ

پاورقی حاشیے

  1. دانشنامه قرآن و قرآن پژوهی، ج۲، ص۱۲۴۴ـ۱۲۴۵
  2. دانشنامه قرآن و قرآن پژوهی، ج2، ص1244ـ1245


منابع