سورہ حج

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
انبیاء سورۂ حج مؤمنون
سوره حج.jpg
ترتیب کتابت: 22
پارہ : 17
نزول
ترتیب نزول: 103
مکی/ مدنی: مدنی
اعداد و شمار
آیات: 78
الفاظ: 1282
حروف: 5315

سورہ حج [سُوْرَةُ الْحَجِّ] کی آیات (25 تا 37) میں حج کے مسائل اور احکام بیان کئے گئے ہیں اور آیت 27 میں حج کا اعلان عام کیا گیا ہے؛ اسی مناسبت سے اس کو سورہ حج کا نام دیا گیا ہے۔ سجدے کی حامل چودہ سورتوں میں چھٹے نمبر پر ہے اور حجم و کمیت کے لحاظ سے تقریبا اوسط درجے کی سورت ہے اور ٹھیک نصف پارے پر مشتمل ہے۔

سوره حج

سورہ حج [سُوْرَةُ الْحَجِّ] کی آیات (25 تا 37) میں حج کے مسائل اور احکام بیان کئے گئے ہیں اور اس کی آیت 27 میں حج کا اعلان عام کیا گیا ہے؛ اسی مناسبت سے اس کو سورہ حج کا نام دیا گیا ہے اور مدنی، ترتیب مصحف کے لحاظ سے بائیسویں اور ترتیب نزول کے لحاظ سے ایک سو تیسری سورت ہے۔ اس سورت کی آیات کی تعداد قراءِ کوفہ، کے قول کے مطابق 78، قراءِ مکہ کے قول کے مطابق 86، قراءِ بصرہ کے بقول 75 اور قراءِ شام کے قول کے مطابق 74 ہے لیکن اول الذکر قول مشہور اور معمول ہے۔ سورہ حج کے الفاظ کی تعداد 1282 الفاظ اور حروف کی تعداد 5315 ہے۔ یہ چودہ حامل سجدہ سورتوں میں چھٹے نمبر پر ہے اور اس کی آیات 18 اور 77 مستحب سجدوں کی حامل ہیں۔ حجم و کمیت کے لحاظ سے نسبتا اوسط درجے کی سورتوں اور سور مثانی کے زمرے میں شمار ہوتی ہے اور ٹھیک نصف پارے کا احاطہ کئے ہوئے ہے۔

مفاہیم

یہ سورت درج ذیل فقہی احکام پر مشتمل ہے:

  • وجوبِ حج؛
  • حج کے موقع پر قربانی کے احکام؛
  • حیوانات کے گوشت کا حلال ہونا ما سوا ان حیوانات کے جنہیں مستثنیٰ کیا گیا ہے اور ان کا گوشت حرام قرار دیا گیا ہے؛
  • حج میں طوافِ خانۂ خدا کا وجوب؛

علاوہ ازیں اس سورت کی آخری آیت سے قاعدہ لا حَرَج اخذ کیا گیا ہے۔

خداوند متعال اس سورت کے آغاز میں لوگوں کو خدا کے خوف اور اس کی نافرمانی سے اجتناب کی دعوت دیتا ہے اور انہیں قیامت کے خوفناک زلزلے کا حوالہ دے کر خوف دلاتا ہے اور اس جماعت کی طرف اشارہ کرتا ہے جو خدا کے بارے میں بغیر علم و دانش کے مجادلہ اور منازعہ کرتے ہیں اور ہر سرکش شیطان کی پیروی کرتے ہیں۔

رب ذوالجلال اس سورت میں دو جماعتوں کی خاکہ کشی کرتا ہے جن میں سے ایک اللہ کی راہ میں اور دوسری طاغوت کی راہ، میں باہم دست بگریباں ہیں اور ایک ضرب المثل کے سانچے میں جبر استکبار کی راہ پر گامزن کافروں کی بے بسی کو بیان فرماتا ہے۔[1]

متن سورہ

سورہ حج مدنیہ ـ نمبر 22 - آیات 78 - ترتیب نزول 103
بِسْمِ اللّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ

يَا أَيُّهَا النَّاسُ اتَّقُوا رَبَّكُمْ إِنَّ زَلْزَلَةَ السَّاعَةِ شَيْءٌ عَظِيمٌ ﴿1﴾ يَوْمَ تَرَوْنَهَا تَذْهَلُ كُلُّ مُرْضِعَةٍ عَمَّا أَرْضَعَتْ وَتَضَعُ كُلُّ ذَاتِ حَمْلٍ حَمْلَهَا وَتَرَى النَّاسَ سُكَارَى وَمَا هُم بِسُكَارَى وَلَكِنَّ عَذَابَ اللَّهِ شَدِيدٌ ﴿2﴾ وَمِنَ النَّاسِ مَن يُجَادِلُ فِي اللَّهِ بِغَيْرِ عِلْمٍ وَيَتَّبِعُ كُلَّ شَيْطَانٍ مَّرِيدٍ ﴿3﴾ كُتِبَ عَلَيْهِ أَنَّهُ مَن تَوَلَّاهُ فَأَنَّهُ يُضِلُّهُ وَيَهْدِيهِ إِلَى عَذَابِ السَّعِيرِ ﴿4﴾ يَا أَيُّهَا النَّاسُ إِن كُنتُمْ فِي رَيْبٍ مِّنَ الْبَعْثِ فَإِنَّا خَلَقْنَاكُم مِّن تُرَابٍ ثُمَّ مِن نُّطْفَةٍ ثُمَّ مِنْ عَلَقَةٍ ثُمَّ مِن مُّضْغَةٍ مُّخَلَّقَةٍ وَغَيْرِ مُخَلَّقَةٍ لِّنُبَيِّنَ لَكُمْ وَنُقِرُّ فِي الْأَرْحَامِ مَا نَشَاء إِلَى أَجَلٍ مُّسَمًّى ثُمَّ نُخْرِجُكُمْ طِفْلًا ثُمَّ لِتَبْلُغُوا أَشُدَّكُمْ وَمِنكُم مَّن يُتَوَفَّى وَمِنكُم مَّن يُرَدُّ إِلَى أَرْذَلِ الْعُمُرِ لِكَيْلَا يَعْلَمَ مِن بَعْدِ عِلْمٍ شَيْئًا وَتَرَى الْأَرْضَ هَامِدَةً فَإِذَا أَنزَلْنَا عَلَيْهَا الْمَاء اهْتَزَّتْ وَرَبَتْ وَأَنبَتَتْ مِن كُلِّ زَوْجٍ بَهِيجٍ ﴿5﴾ ذَلِكَ بِأَنَّ اللَّهَ هُوَ الْحَقُّ وَأَنَّهُ يُحْيِي الْمَوْتَى وَأَنَّهُ عَلَى كُلِّ شَيْءٍ قَدِيرٌ ﴿6﴾ وَأَنَّ السَّاعَةَ آتِيَةٌ لَّا رَيْبَ فِيهَا وَأَنَّ اللَّهَ يَبْعَثُ مَن فِي الْقُبُورِ ﴿7﴾ وَمِنَ النَّاسِ مَن يُجَادِلُ فِي اللَّهِ بِغَيْرِ عِلْمٍ وَلَا هُدًى وَلَا كِتَابٍ مُّنِيرٍ ﴿8﴾ ثَانِيَ عِطْفِهِ لِيُضِلَّ عَن سَبِيلِ اللَّهِ لَهُ فِي الدُّنْيَا خِزْيٌ وَنُذِيقُهُ يَوْمَ الْقِيَامَةِ عَذَابَ الْحَرِيقِ ﴿9﴾ ذَلِكَ بِمَا قَدَّمَتْ يَدَاكَ وَأَنَّ اللَّهَ لَيْسَ بِظَلَّامٍ لِّلْعَبِيدِ ﴿10﴾ وَمِنَ النَّاسِ مَن يَعْبُدُ اللَّهَ عَلَى حَرْفٍ فَإِنْ أَصَابَهُ خَيْرٌ اطْمَأَنَّ بِهِ وَإِنْ أَصَابَتْهُ فِتْنَةٌ انقَلَبَ عَلَى وَجْهِهِ خَسِرَ الدُّنْيَا وَالْآخِرَةَ ذَلِكَ هُوَ الْخُسْرَانُ الْمُبِينُ ﴿11﴾ يَدْعُو مِن دُونِ اللَّهِ مَا لَا يَضُرُّهُ وَمَا لَا يَنفَعُهُ ذَلِكَ هُوَ الضَّلَالُ الْبَعِيدُ ﴿12﴾ يَدْعُو لَمَن ضَرُّهُ أَقْرَبُ مِن نَّفْعِهِ لَبِئْسَ الْمَوْلَى وَلَبِئْسَ الْعَشِيرُ ﴿13﴾ إِنَّ اللَّهَ يُدْخِلُ الَّذِينَ آمَنُوا وَعَمِلُوا الصَّالِحَاتِ جَنَّاتٍ تَجْرِي مِن تَحْتِهَا الْأَنْهَارُ إِنَّ اللَّهَ يَفْعَلُ مَا يُرِيدُ ﴿14﴾ مَن كَانَ يَظُنُّ أَن لَّن يَنصُرَهُ اللَّهُ فِي الدُّنْيَا وَالْآخِرَةِ فَلْيَمْدُدْ بِسَبَبٍ إِلَى السَّمَاء ثُمَّ لِيَقْطَعْ فَلْيَنظُرْ هَلْ يُذْهِبَنَّ كَيْدُهُ مَا يَغِيظُ ﴿15﴾ وَكَذَلِكَ أَنزَلْنَاهُ آيَاتٍ بَيِّنَاتٍ وَأَنَّ اللَّهَ يَهْدِي مَن يُرِيدُ ﴿16﴾ إِنَّ الَّذِينَ آمَنُوا وَالَّذِينَ هَادُوا وَالصَّابِئِينَ وَالنَّصَارَى وَالْمَجُوسَ وَالَّذِينَ أَشْرَكُوا إِنَّ اللَّهَ يَفْصِلُ بَيْنَهُمْ يَوْمَ الْقِيَامَةِ إِنَّ اللَّهَ عَلَى كُلِّ شَيْءٍ شَهِيدٌ ﴿17﴾ أَلَمْ تَرَ أَنَّ اللَّهَ يَسْجُدُ لَهُ مَن فِي السَّمَاوَاتِ وَمَن فِي الْأَرْضِ وَالشَّمْسُ وَالْقَمَرُ وَالنُّجُومُ وَالْجِبَالُ وَالشَّجَرُ وَالدَّوَابُّ وَكَثِيرٌ مِّنَ النَّاسِ وَكَثِيرٌ حَقَّ عَلَيْهِ الْعَذَابُ وَمَن يُهِنِ اللَّهُ فَمَا لَهُ مِن مُّكْرِمٍ إِنَّ اللَّهَ يَفْعَلُ مَا يَشَاء ﴿18﴾ هَذَانِ خَصْمَانِ اخْتَصَمُوا فِي رَبِّهِمْ فَالَّذِينَ كَفَرُوا قُطِّعَتْ لَهُمْ ثِيَابٌ مِّن نَّارٍ يُصَبُّ مِن فَوْقِ رُؤُوسِهِمُ الْحَمِيمُ ﴿19﴾ يُصْهَرُ بِهِ مَا فِي بُطُونِهِمْ وَالْجُلُودُ ﴿20﴾ وَلَهُم مَّقَامِعُ مِنْ حَدِيدٍ ﴿21﴾ كُلَّمَا أَرَادُوا أَن يَخْرُجُوا مِنْهَا مِنْ غَمٍّ أُعِيدُوا فِيهَا وَذُوقُوا عَذَابَ الْحَرِيقِ ﴿22﴾ إِنَّ اللَّهَ يُدْخِلُ الَّذِينَ آمَنُوا وَعَمِلُوا الصَّالِحَاتِ جَنَّاتٍ تَجْرِي مِن تَحْتِهَا الْأَنْهَارُ يُحَلَّوْنَ فِيهَا مِنْ أَسَاوِرَ مِن ذَهَبٍ وَلُؤْلُؤًا وَلِبَاسُهُمْ فِيهَا حَرِيرٌ ﴿23﴾ وَهُدُوا إِلَى الطَّيِّبِ مِنَ الْقَوْلِ وَهُدُوا إِلَى صِرَاطِ الْحَمِيدِ ﴿24﴾ إِنَّ الَّذِينَ كَفَرُوا وَيَصُدُّونَ عَن سَبِيلِ اللَّهِ وَالْمَسْجِدِ الْحَرَامِ الَّذِي جَعَلْنَاهُ لِلنَّاسِ سَوَاء الْعَاكِفُ فِيهِ وَالْبَادِ وَمَن يُرِدْ فِيهِ بِإِلْحَادٍ بِظُلْمٍ نُذِقْهُ مِنْ عَذَابٍ أَلِيمٍ ﴿25﴾ وَإِذْ بَوَّأْنَا لِإِبْرَاهِيمَ مَكَانَ الْبَيْتِ أَن لَّا تُشْرِكْ بِي شَيْئًا وَطَهِّرْ بَيْتِيَ لِلطَّائِفِينَ وَالْقَائِمِينَ وَالرُّكَّعِ السُّجُودِ ﴿26﴾ وَأَذِّن فِي النَّاسِ بِالْحَجِّ يَأْتُوكَ رِجَالًا وَعَلَى كُلِّ ضَامِرٍ يَأْتِينَ مِن كُلِّ فَجٍّ عَمِيقٍ ﴿27﴾ لِيَشْهَدُوا مَنَافِعَ لَهُمْ وَيَذْكُرُوا اسْمَ اللَّهِ فِي أَيَّامٍ مَّعْلُومَاتٍ عَلَى مَا رَزَقَهُم مِّن بَهِيمَةِ الْأَنْعَامِ فَكُلُوا مِنْهَا وَأَطْعِمُوا الْبَائِسَ الْفَقِيرَ ﴿28﴾ ثُمَّ لْيَقْضُوا تَفَثَهُمْ وَلْيُوفُوا نُذُورَهُمْ وَلْيَطَّوَّفُوا بِالْبَيْتِ الْعَتِيقِ ﴿29﴾ ذَلِكَ وَمَن يُعَظِّمْ حُرُمَاتِ اللَّهِ فَهُوَ خَيْرٌ لَّهُ عِندَ رَبِّهِ وَأُحِلَّتْ لَكُمُ الْأَنْعَامُ إِلَّا مَا يُتْلَى عَلَيْكُمْ فَاجْتَنِبُوا الرِّجْسَ مِنَ الْأَوْثَانِ وَاجْتَنِبُوا قَوْلَ الزُّورِ ﴿30﴾ حُنَفَاء لِلَّهِ غَيْرَ مُشْرِكِينَ بِهِ وَمَن يُشْرِكْ بِاللَّهِ فَكَأَنَّمَا خَرَّ مِنَ السَّمَاء فَتَخْطَفُهُ الطَّيْرُ أَوْ تَهْوِي بِهِ الرِّيحُ فِي مَكَانٍ سَحِيقٍ ﴿31﴾ ذَلِكَ وَمَن يُعَظِّمْ شَعَائِرَ اللَّهِ فَإِنَّهَا مِن تَقْوَى الْقُلُوبِ ﴿32﴾ لَكُمْ فِيهَا مَنَافِعُ إِلَى أَجَلٍ مُّسَمًّى ثُمَّ مَحِلُّهَا إِلَى الْبَيْتِ الْعَتِيقِ ﴿33﴾ وَلِكُلِّ أُمَّةٍ جَعَلْنَا مَنسَكًا لِيَذْكُرُوا اسْمَ اللَّهِ عَلَى مَا رَزَقَهُم مِّن بَهِيمَةِ الْأَنْعَامِ فَإِلَهُكُمْ إِلَهٌ وَاحِدٌ فَلَهُ أَسْلِمُوا وَبَشِّرِ الْمُخْبِتِينَ ﴿34﴾ الَّذِينَ إِذَا ذُكِرَ اللَّهُ وَجِلَتْ قُلُوبُهُمْ وَالصَّابِرِينَ عَلَى مَا أَصَابَهُمْ وَالْمُقِيمِي الصَّلَاةِ وَمِمَّا رَزَقْنَاهُمْ يُنفِقُونَ ﴿35﴾ وَالْبُدْنَ جَعَلْنَاهَا لَكُم مِّن شَعَائِرِ اللَّهِ لَكُمْ فِيهَا خَيْرٌ فَاذْكُرُوا اسْمَ اللَّهِ عَلَيْهَا صَوَافَّ فَإِذَا وَجَبَتْ جُنُوبُهَا فَكُلُوا مِنْهَا وَأَطْعِمُوا الْقَانِعَ وَالْمُعْتَرَّ كَذَلِكَ سَخَّرْنَاهَا لَكُمْ لَعَلَّكُمْ تَشْكُرُونَ ﴿36﴾ لَن يَنَالَ اللَّهَ لُحُومُهَا وَلَا دِمَاؤُهَا وَلَكِن يَنَالُهُ التَّقْوَى مِنكُمْ كَذَلِكَ سَخَّرَهَا لَكُمْ لِتُكَبِّرُوا اللَّهَ عَلَى مَا هَدَاكُمْ وَبَشِّرِ الْمُحْسِنِينَ ﴿37﴾ إِنَّ اللَّهَ يُدَافِعُ عَنِ الَّذِينَ آمَنُوا إِنَّ اللَّهَ لَا يُحِبُّ كُلَّ خَوَّانٍ كَفُورٍ ﴿38﴾ أُذِنَ لِلَّذِينَ يُقَاتَلُونَ بِأَنَّهُمْ ظُلِمُوا وَإِنَّ اللَّهَ عَلَى نَصْرِهِمْ لَقَدِيرٌ ﴿39﴾ الَّذِينَ أُخْرِجُوا مِن دِيَارِهِمْ بِغَيْرِ حَقٍّ إِلَّا أَن يَقُولُوا رَبُّنَا اللَّهُ وَلَوْلَا دَفْعُ اللَّهِ النَّاسَ بَعْضَهُم بِبَعْضٍ لَّهُدِّمَتْ صَوَامِعُ وَبِيَعٌ وَصَلَوَاتٌ وَمَسَاجِدُ يُذْكَرُ فِيهَا اسْمُ اللَّهِ كَثِيرًا وَلَيَنصُرَنَّ اللَّهُ مَن يَنصُرُهُ إِنَّ اللَّهَ لَقَوِيٌّ عَزِيزٌ ﴿40﴾ الَّذِينَ إِن مَّكَّنَّاهُمْ فِي الْأَرْضِ أَقَامُوا الصَّلَاةَ وَآتَوُا الزَّكَاةَ وَأَمَرُوا بِالْمَعْرُوفِ وَنَهَوْا عَنِ الْمُنكَرِ وَلِلَّهِ عَاقِبَةُ الْأُمُورِ ﴿41﴾ وَإِن يُكَذِّبُوكَ فَقَدْ كَذَّبَتْ قَبْلَهُمْ قَوْمُ نُوحٍ وَعَادٌ وَثَمُودُ ﴿42﴾ وَقَوْمُ إِبْرَاهِيمَ وَقَوْمُ لُوطٍ ﴿43﴾ وَأَصْحَابُ مَدْيَنَ وَكُذِّبَ مُوسَى فَأَمْلَيْتُ لِلْكَافِرِينَ ثُمَّ أَخَذْتُهُمْ فَكَيْفَ كَانَ نَكِيرِ ﴿44﴾ فَكَأَيِّن مِّن قَرْيَةٍ أَهْلَكْنَاهَا وَهِيَ ظَالِمَةٌ فَهِيَ خَاوِيَةٌ عَلَى عُرُوشِهَا وَبِئْرٍ مُّعَطَّلَةٍ وَقَصْرٍ مَّشِيدٍ ﴿45﴾ أَفَلَمْ يَسِيرُوا فِي الْأَرْضِ فَتَكُونَ لَهُمْ قُلُوبٌ يَعْقِلُونَ بِهَا أَوْ آذَانٌ يَسْمَعُونَ بِهَا فَإِنَّهَا لَا تَعْمَى الْأَبْصَارُ وَلَكِن تَعْمَى الْقُلُوبُ الَّتِي فِي الصُّدُورِ ﴿46﴾ وَيَسْتَعْجِلُونَكَ بِالْعَذَابِ وَلَن يُخْلِفَ اللَّهُ وَعْدَهُ وَإِنَّ يَوْمًا عِندَ رَبِّكَ كَأَلْفِ سَنَةٍ مِّمَّا تَعُدُّونَ ﴿47﴾ وَكَأَيِّن مِّن قَرْيَةٍ أَمْلَيْتُ لَهَا وَهِيَ ظَالِمَةٌ ثُمَّ أَخَذْتُهَا وَإِلَيَّ الْمَصِيرُ ﴿48﴾ قُلْ يَا أَيُّهَا النَّاسُ إِنَّمَا أَنَا لَكُمْ نَذِيرٌ مُّبِينٌ ﴿49﴾ فَالَّذِينَ آمَنُوا وَعَمِلُوا الصَّالِحَاتِ لَهُم مَّغْفِرَةٌ وَرِزْقٌ كَرِيمٌ ﴿50﴾ وَالَّذِينَ سَعَوْا فِي آيَاتِنَا مُعَاجِزِينَ أُوْلَئِكَ أَصْحَابُ الْجَحِيمِ ﴿51﴾ وَمَا أَرْسَلْنَا مِن قَبْلِكَ مِن رَّسُولٍ وَلَا نَبِيٍّ إِلَّا إِذَا تَمَنَّى أَلْقَى الشَّيْطَانُ فِي أُمْنِيَّتِهِ فَيَنسَخُ اللَّهُ مَا يُلْقِي الشَّيْطَانُ ثُمَّ يُحْكِمُ اللَّهُ آيَاتِهِ وَاللَّهُ عَلِيمٌ حَكِيمٌ ﴿52﴾ لِيَجْعَلَ مَا يُلْقِي الشَّيْطَانُ فِتْنَةً لِّلَّذِينَ فِي قُلُوبِهِم مَّرَضٌ وَالْقَاسِيَةِ قُلُوبُهُمْ وَإِنَّ الظَّالِمِينَ لَفِي شِقَاقٍ بَعِيدٍ ﴿53﴾ وَلِيَعْلَمَ الَّذِينَ أُوتُوا الْعِلْمَ أَنَّهُ الْحَقُّ مِن رَّبِّكَ فَيُؤْمِنُوا بِهِ فَتُخْبِتَ لَهُ قُلُوبُهُمْ وَإِنَّ اللَّهَ لَهَادِ الَّذِينَ آمَنُوا إِلَى صِرَاطٍ مُّسْتَقِيمٍ ﴿54﴾ وَلَا يَزَالُ الَّذِينَ كَفَرُوا فِي مِرْيَةٍ مِّنْهُ حَتَّى تَأْتِيَهُمُ السَّاعَةُ بَغْتَةً أَوْ يَأْتِيَهُمْ عَذَابُ يَوْمٍ عَقِيمٍ ﴿55﴾ الْمُلْكُ يَوْمَئِذٍ لِّلَّهِ يَحْكُمُ بَيْنَهُمْ فَالَّذِينَ آمَنُوا وَعَمِلُوا الصَّالِحَاتِ فِي جَنَّاتِ النَّعِيمِ ﴿56﴾ وَالَّذِينَ كَفَرُوا وَكَذَّبُوا بِآيَاتِنَا فَأُوْلَئِكَ لَهُمْ عَذَابٌ مُّهِينٌ ﴿57﴾ وَالَّذِينَ هَاجَرُوا فِي سَبِيلِ اللَّهِ ثُمَّ قُتِلُوا أَوْ مَاتُوا لَيَرْزُقَنَّهُمُ اللَّهُ رِزْقًا حَسَنًا وَإِنَّ اللَّهَ لَهُوَ خَيْرُ الرَّازِقِينَ ﴿58﴾ لَيُدْخِلَنَّهُم مُّدْخَلًا يَرْضَوْنَهُ وَإِنَّ اللَّهَ لَعَلِيمٌ حَلِيمٌ ﴿59﴾ ذَلِكَ وَمَنْ عَاقَبَ بِمِثْلِ مَا عُوقِبَ بِهِ ثُمَّ بُغِيَ عَلَيْهِ لَيَنصُرَنَّهُ اللَّهُ إِنَّ اللَّهَ لَعَفُوٌّ غَفُورٌ ﴿60﴾ ذَلِكَ بِأَنَّ اللَّهَ يُولِجُ اللَّيْلَ فِي النَّهَارِ وَيُولِجُ النَّهَارَ فِي اللَّيْلِ وَأَنَّ اللَّهَ سَمِيعٌ بَصِيرٌ ﴿61﴾ ذَلِكَ بِأَنَّ اللَّهَ هُوَ الْحَقُّ وَأَنَّ مَا يَدْعُونَ مِن دُونِهِ هُوَ الْبَاطِلُ وَأَنَّ اللَّهَ هُوَ الْعَلِيُّ الْكَبِيرُ ﴿62﴾ أَلَمْ تَرَ أَنَّ اللَّهَ أَنزَلَ مِنَ السَّمَاء مَاء فَتُصْبِحُ الْأَرْضُ مُخْضَرَّةً إِنَّ اللَّهَ لَطِيفٌ خَبِيرٌ ﴿63﴾ لَهُ مَا فِي السَّمَاوَاتِ وَمَا فِي الْأَرْضِ وَإِنَّ اللَّهَ لَهُوَ الْغَنِيُّ الْحَمِيدُ ﴿64﴾ أَلَمْ تَرَ أَنَّ اللَّهَ سَخَّرَ لَكُم مَّا فِي الْأَرْضِ وَالْفُلْكَ تَجْرِي فِي الْبَحْرِ بِأَمْرِهِ وَيُمْسِكُ السَّمَاء أَن تَقَعَ عَلَى الْأَرْضِ إِلَّا بِإِذْنِهِ إِنَّ اللَّهَ بِالنَّاسِ لَرَؤُوفٌ رَّحِيمٌ ﴿65﴾ وَهُوَ الَّذِي أَحْيَاكُمْ ثُمَّ يُمِيتُكُمْ ثُمَّ يُحْيِيكُمْ إِنَّ الْإِنسَانَ لَكَفُورٌ ﴿66﴾ لِكُلِّ أُمَّةٍ جَعَلْنَا مَنسَكًا هُمْ نَاسِكُوهُ فَلَا يُنَازِعُنَّكَ فِي الْأَمْرِ وَادْعُ إِلَى رَبِّكَ إِنَّكَ لَعَلَى هُدًى مُّسْتَقِيمٍ ﴿67﴾ وَإِن جَادَلُوكَ فَقُلِ اللَّهُ أَعْلَمُ بِمَا تَعْمَلُونَ ﴿68﴾ اللَّهُ يَحْكُمُ بَيْنَكُمْ يَوْمَ الْقِيَامَةِ فِيمَا كُنتُمْ فِيهِ تَخْتَلِفُونَ ﴿69﴾ أَلَمْ تَعْلَمْ أَنَّ اللَّهَ يَعْلَمُ مَا فِي السَّمَاء وَالْأَرْضِ إِنَّ ذَلِكَ فِي كِتَابٍ إِنَّ ذَلِكَ عَلَى اللَّهِ يَسِيرٌ ﴿70﴾ وَيَعْبُدُونَ مِن دُونِ اللَّهِ مَا لَمْ يُنَزِّلْ بِهِ سُلْطَانًا وَمَا لَيْسَ لَهُم بِهِ عِلْمٌ وَمَا لِلظَّالِمِينَ مِن نَّصِيرٍ ﴿71﴾ وَإِذَا تُتْلَى عَلَيْهِمْ آيَاتُنَا بَيِّنَاتٍ تَعْرِفُ فِي وُجُوهِ الَّذِينَ كَفَرُوا الْمُنكَرَ يَكَادُونَ يَسْطُونَ بِالَّذِينَ يَتْلُونَ عَلَيْهِمْ آيَاتِنَا قُلْ أَفَأُنَبِّئُكُم بِشَرٍّ مِّن ذَلِكُمُ النَّارُ وَعَدَهَا اللَّهُ الَّذِينَ كَفَرُوا وَبِئْسَ الْمَصِيرُ ﴿72﴾ يَا أَيُّهَا النَّاسُ ضُرِبَ مَثَلٌ فَاسْتَمِعُوا لَهُ إِنَّ الَّذِينَ تَدْعُونَ مِن دُونِ اللَّهِ لَن يَخْلُقُوا ذُبَابًا وَلَوِ اجْتَمَعُوا لَهُ وَإِن يَسْلُبْهُمُ الذُّبَابُ شَيْئًا لَّا يَسْتَنقِذُوهُ مِنْهُ ضَعُفَ الطَّالِبُ وَالْمَطْلُوبُ ﴿73﴾ مَا قَدَرُوا اللَّهَ حَقَّ قَدْرِهِ إِنَّ اللَّهَ لَقَوِيٌّ عَزِيزٌ ﴿74﴾ اللَّهُ يَصْطَفِي مِنَ الْمَلَائِكَةِ رُسُلًا وَمِنَ النَّاسِ إِنَّ اللَّهَ سَمِيعٌ بَصِيرٌ ﴿75﴾ يَعْلَمُ مَا بَيْنَ أَيْدِيهِمْ وَمَا خَلْفَهُمْ وَإِلَى اللَّهِ تُرْجَعُ الأمُورُ ﴿76﴾ يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا ارْكَعُوا وَاسْجُدُوا وَاعْبُدُوا رَبَّكُمْ وَافْعَلُوا الْخَيْرَ لَعَلَّكُمْ تُفْلِحُونَ ﴿77﴾ وَجَاهِدُوا فِي اللَّهِ حَقَّ جِهَادِهِ هُوَ اجْتَبَاكُمْ وَمَا جَعَلَ عَلَيْكُمْ فِي الدِّينِ مِنْ حَرَجٍ مِّلَّةَ أَبِيكُمْ إِبْرَاهِيمَ هُوَ سَمَّاكُمُ الْمُسْلِمينَ مِن قَبْلُ وَفِي هَذَا لِيَكُونَ الرَّسُولُ شَهِيدًا عَلَيْكُمْ وَتَكُونُوا شُهَدَاء عَلَى النَّاسِ فَأَقِيمُوا الصَّلَاةَ وَآتُوا الزَّكَاةَ وَاعْتَصِمُوا بِاللَّهِ هُوَ مَوْلَاكُمْ فَنِعْمَ الْمَوْلَى وَنِعْمَ النَّصِيرُ ﴿78﴾۔

قرآن کریم


ترجمہ
اللہ کے نام سے جو بہت رحم والا نہایت مہربان ہے

اے انسانو! اپنے پروردگار (کی ناراضی) سے بچو۔ بلاشبہ قیامت کا زلزلہ بہت بڑی چیز ہے (1) جس دن تم اسے دیکھو گے ہر دودھ پلانے والی بھول جائے گی اسے کہ جسے وہ دودھ پلاتی ہے اور ہر حاملہ کا حمل ساقط ہو جائے گا اور تم لوگوں کو دیکھو گے مدہوش نشہ میں، حالاں کہ وہ نشہ میں نہیں ہیں مگر اللہ کا عذاب بہت سخت ہے (2) اور انسانوں میں وہ بھی ہے جو اللہ کے بارے میں بے جانے بوجھے بحث کرتا ہے اور ہر سرکش شیطان کی پیروی کرتا ہے (3) جس کے لیے یہ بات طے شدہ ہے کہ جو اس کا ساتھ دے، وہ اسے گمراہ کرکے چھوڑے گا اور اسے آتش دوزخ کے عذاب کا راستہ دکھائے گا (4) اے انسانو! اگر تمہیں دوبارہ اٹھائے جانے میں شک ہو تو (اس پر غور کرو کہ) ہم نے تم کو مٹی سے پیدا کیا۔ پھر نطفہ سے، پھر جمے ہوئے خون سے، پھر گوشت کے لوتھڑے سے جسے صورت دی گئی ہے اور ایسے سے بھی جسے صورت نہ دی گئی ہو تاکہ تمہارے لیے ظاہر کریں اور ماؤں کے پیٹ میں، جو چاہتے ہیں ہم رکھتے ہیں، ایک مقررہ مدت تک۔ پھر تمہیں بچہ کی صورت میں باہر لاتے ہیں۔ پھر نشوونما دیتے ہیں کہ تم اپنی پوری قوت کی منزل تک پہنچو اور کوئی تم میں سے وہ ہے جسے اٹھا لیا جاتا ہے اور کوئی تم میں سے پہنچ جاتا ہے انتہائی عمر کی منزلوں تک، یہاں تک کہ علم و دانش کے بعد پھر ایسا ہو جاتا ہے کہ کچھ جانتا بوجھتا نہیں اور تم دیکھو گے زمین کو خشک تو جب ہم اس پر پانی برساتے ہیں تو وہ لہلہا اٹھتی ہے اور نشوونما پیدا کرتی ہے اور ہر قسم کے خوشنما نباتات اگاتی ہے (5) یہ اس لیے ہے کہ بس اللہ ایک برقرار، نہ بدلنے والی ذات ہے اور وہ بلاشبہ مُردوں کو زندہ کرتا ہے اور یقینا وہ ہر چیز پر قادر ہے (6) اور یہ کہ قیامت آنے والی ہے جس میں کسی شک کی گنجائش نہیں اور یقینا اللہ انہیں جو قبروں میں ہیں زندہ کرے گا (7) اور انسانوں میں وہ بھی ہے جو اللہ کے بارے میں بحث کرتا ہے بغیر کسی علم اور بغیر کسی رہنمائی اور بغیر کسی روشن کتاب کے (8) موڑے ہوئے اپنے شانے کو تاکہ اللہ کی راہ سے بھٹکائے۔ اس کے لیے دنیا میں رسوائی ہے اور اسے قیامت کے دن ہم آگ کا مزہ چکھائیں گے (9) یہ اس وجہ سے ہے جو تیرے ہاتھ کر چکے ہیں اور یقینا اللہ بندوں پر ظلم کرنے والا نہیں ہے (10) اور انسانوں میں وہ بھی ہے جو اللہ کی عبادت کنارے پر کھڑا کرتا ہے۔ اگر اس کے لیے کوئی بھلائی ہوتی ہے تو وہ اس سے مطمئن ہو جاتا ہے اور اگر اسے کوئی آزمائش سامنے آتی ہے تو اپنا منہ اٹھائے ہوئے پلٹ جاتا ہے۔ وہ دنیا اور آخرت دونوں کے گھاٹے میں ہے۔ یہ کھلا ہوا خسارہ ہے (11) پکارتا ہے اللہ کو چھوڑ کر اسے کہ جو اسے نہ نقصان پہنچاتا ہے اور نہ اسے کوئی نفع پہنچاتا ہے یہی سخت گمراہی ہے (12) وہ پکارتا ہے ایسے کو جس سے نقصان کا امکان اس کے فائدے سے زیادہ ہے۔ کیا برا ہے آقا اور کتنا برا ساتھی (13) بلاشبہ اللہ داخل کرتا ہے انہیں جو ایمان لائے اور جنہوں نے نیک اعمال کیے ان بہشتوں میں جن کے نیچے سے نہریں جاری ہیں۔ یقینا اللہ کرتا ہے جو کچھ وہ چاہتا ہے (14) جو سمجھتا ہو کہ اللہ ہرگزدنیا اور آخرت میں ان کی مدد نہیں کرے گا تو وہ کوئی رسی بلندی تک کھینچ کر لے جائے، پھر اسے کاٹ ڈالے۔ اس کے بعد دیکھے کہ اس کی ترکیب اس کے غم و غصہ کو دور کرتی ہے؟ (15) اور اسی طرح ہم نے اسے اتارا ہے کھلی ہوئی نشانیوں کی صورت میں اور اس بنا پر کہ اللہ منزل مقصود تک پہنچاتا ہے جسے چاہتا ہے (16) بلاشبہ جو ایمان لائے ہیں اور جو یہودی ہیں اور صابئی اور عیسائی اور مشرکین، یقینا ان سب کے درمیان اللہ فیصلہ کرے گا قیامت کے دن، بلاشبہ اللہ ہر چیز پر حاضر و ناظر ہے (17) کیا تم نے نہیں دیکھا کہ اللہ کے لیے سجدہ میں ہیں جو آسمانوں میں ہیں اور جو زمین میں ہیں اور سورج اور چاند اور ستارے اور پہاڑ اور درخت اور چوپائے اور بہت سے آدمی اور بہت سے وہ ہیں جن پر عذاب مقرر ہو گیا ہے اور جسے اللہ ذلیل کرے، اسے عزت دینے والا کوئی نہیں، بلاشبہ اللہ کرتا ہے جو چاہتا ہے (18) یہ دو فریق ہیں جو اپنے پروردگار کے بارے میں باہم دگر مقابل ہیں۔ تو جنہوں نے کفر اختیار کیا ان کے لیے آگ کے کپڑے قطع کیے جائیں گے، ان کے سروں پر گرم پانی انڈیلا جائے گا (19) جس سے ان کے پیٹ کے اندر کی تمام چیزیں اور کھالیں گل جائیں گی (20) اور ان کے لیے لوہے کے گرز ہوں گے (21) جب چاہیں گے اس سے نکل کر رنج و صدمہ سے چھٹکارا پائیں تو پھر اس میں پلٹا دیئے جائیں گے اور چکھو عذاب جلنے کا (22) بلاشبہ اللہ داخل کرے گا انہیں جو ایمان لائے اور جنہوں نے نیک اعمال کیے ان بہشتوں میں جن کے نیچے سے نہریں بہتی ہوں گی، وہاں انہیں پہننے کو ملیں گے کنگن سونے کے اور موتی اور ان کے کپڑے وہاں ریشم کے ہوں گے (23) اور ان کی ہدایت ہوئی پاک و پاکیزہ گفتگو کی طرف اور ان کی ہدایت ہوئی اس کے راستے کی طرف جو حمد و ثنا کا حق دار ہے (24) بلاشبہ وہ جو کافر ہیں اور روکتے ہیں اللہ کے راستے اور اس مسجد حرام سے جسے ہم نے تمام لوگوں کے لئے قرار دیا ہے، برابر ہیں اس میں مجاور وہاں کے اور باہر سے آنے والے اور جو اس میں ظلم و تعدی کے ساتھ غلط روی کرنا چاہے ہم اسے دردناک عذاب کا مزہ چکھائیں گے (25) اور جب ہم نے معین کیا ابراہیم کے لیے خانہ کعبہ کی جگہ کو کہ میرے ساتھ کسی کو شریک نہ کرنا اور میرے گھر کو پاک رکھنا طواف کرنے والوں اور قیام کرنے والوں اور رکوع و سجود کرنے والوں کے لیے (26) اور لوگوں میں حج کا اعلان کر دو تو وہ آئیں گے تمہاری آواز پر پیادہ پا اور ہر لاغر سواری پر کہ آئیں گی (وہ سواریاں) ہر دور دراز راستے سے (27) تاکہ لوگ اپنے فائدوں کے لیے حاضر ہوں اور اللہ کے نام کا ورد کریں مقررہ دنوں میں، اس پر کہ اس نے انہیں چوپایوں سے روزی عطا کی تو کھاؤ ان سے اور محتاجوں، غریبوں کو بھی کھلاؤ (28) پھر وہ اپنے جسم کی کثافت دور کریں اور اپنی نذریں پوری کریں اور اس قدیم گھر کا طواف کریں (29) یہ بات ہے، اور جو اللہ کی حرمتوں کی عزت کرے تو اس کے لیے اس کے پروردگار کے نزدیک وہ بہتر ہے اور تمہارے لیے چوپائے حلال ہیں سوا اس کے کہ جو تم سے بیان کیے جاتے رہتے ہیں تو بتوں کی ناپاکی سے پرہیز کرو اور جھوٹی باتوں سے پرہیز کرو (30) اللہ کے لیے دین حنیفی کو اختیار کرتے ہوئے، اس کے ساتھ شرک نہ کرنے والے ہو کر اور جو اللہ کے ساتھ شرک کرے وہ گویا آسمان سے گرا تو اسے اچک لیں پرندے یا ہوائیں اسے کسی دور دراز جگہ پر پھینک دیں (31) یہ ہے حقیقت حال اور جو اللہ کے شعائر کی تعظیم و تکریم کرے تو وہ عظمت الٰہی سے دلوں کے تاثر کا لازمی نتیجہ ہے (32) تمہارے لیے ان میں فائدے ہیں ایک مقررہ مدت تک، پھر ان کی جگہ اسی قدیم گھر کی طرف ہے (33) اور ہر قوم کے لیے ہم نے ایک عبادت کا طریقہ مقرر کیا ہے تاکہ وہ اللہ کا نام لیں چوپایوں پر جو اللہ نے ان کی روزی کے لیے مقرر کیے ہیں تو تمہارا خدا بس ایک خدا ہے لہٰذا اسی کی بارگاہ میں سر جھکاؤ اور خوش خبری دو ان لو لگانے والوں کو (34) کہ جب اللہ کا ذکر ہوتا ہے تو ان کے دل دہل جاتے ہیں اور جو صبر کرنے والے ہیں ان مصائب پر جو انہیں درپیش ہوں اور جو نماز ادا کرتے ہیں اور جو ہم نے انہیں عطا کیا ہے، اس میں سے خیرات کرتے ہیں (35) اور قربانی کے اونٹ، انہیں ہم نے تمہارے لیے اللہ کے شعائر میں سے قرار دیا ہے، تمہارے لیے ان میں بھلائی ہے تو اللہ کا نام لو ان کو لائن لگا کر کھڑے کرنے کی حالت میں تو جب وہ کروٹ کے بل زمین پر گر جائیں تو کھاؤ ان میں سے اور ہر قسم کے محتاجوں کو، جو دست سوال دراز نہیں کرتے اور جو دست سوال دراز کرتے ہیں کھلاؤ، اس طرح ہم نے انہیں تمہارے قبضہ میں دیا ہے، شاید کہ تم شکر گزار ثابت ہو (36) ان کے گوشت اور خون ہرگز اللہ کو نہیں پائیں گے مگر تمہاری پرہیز گاری اسے پا لے گی۔ اس طرح ہم نے تمہارے قبضہ میں انہیں دیا ہے تاکہ تم اللہ کی بڑائی کو محسوس کرو، اس بات پر کہ اس نے تمہیں صحیح راستہ دکھایا اور خوش خبری دو نیک اعمال والوں کو (37) بلاشبہ اللہ دفاع کرتا ہے ان کی طرف سے جو ایمان لائیں، بلاشبہ اللہ کسی خیانت کرنے والے، ناشکرے کو دوست نہیں رکھتا (38) اجازت دی جاتی ہے انہیں جن سے جنگ کی جا رہی ہے اس بنا پر کہ ان پر ظلم ہوا ہے، اور بلاشبہ اللہ ان کی مدد پر قادر ہے (39) وہ جو اپنے گھروں سے نکالے گئے بغیر کسی جرم و خطا کے سوا اس کے کہ ان کا قول یہ تھا کہ ہمارا مالک اللہ ہے اور اگر نہ ہوتا اللہ کا دفع کرنا بعض کو بعض کے ساتھ تو گرا دیئے جاتے راہبوں کے ٹھکانے اور گرجے اور یہودیوں کے عبادت کدے اور مسجدیں جن میں اللہ کے نام کا بہت ورد ہوتا ہے اور یقینا اللہ مدد کرے گا اس کی جو اس کی مدد کرے۔ بلاشبہ اللہ طاقت والا ہے، غالب آنے والا (40) وہ جنہیں ہم اگر اقتدار عطا کریں زمین میں تو وہ نماز کی پابندی کریں گے اور زکوٰة دیں گے اور نیک باتوں کی ہدایت کریں گے اور برے کاموں سے روکیں گے اور اللہ کے ہاتھ میں تمام باتوں کا انجام ہے (41) اور اگر وہ آپ کو جھٹلائیں تو ان کے پہلے جھٹلایا ہے نوح کی قوم اور عاد اور ثمود (42) اور ابراہیم کی قوم اور لوط کی قوم (43) اور مدین کے باشندوں نے اور موسیٰ کو جھٹلایا گیا تو میں نے کافروں کو مہلت دی اور پھر ان کو گرفت میں لے لیا تو کیسی میری سزا تھی (44) تو کتنی ہی بستیاں ہیں جنہیں ہم نے نیست و نابود کر دیا اس عالم میں کہ وہ ظالم تھے، اب وہ گری ہوئی ہیں اپنی چھتوں پر اور کتنے کنویں ہیں جو بے کار پڑے ہیں اور مضبوط محلات (45) کیا وہ اطراف زمین میں چلے پھرے نہیں ہیں کہ ان کے لیے ایسے دل و دماغ ہوتے جن سے وہ سمجھتے یا کان جن سے وہ سنتے کیوں کہ اصل اندھا پن آنکھوں کا نہیں ہے مگر اندھا پن تو دلوں کا ہے جو سینوں کے اندر ہوتے ہیں (46) اور وہ آپ سے عذاب کی جلدی کرتے ہیں اور اللہ ہرگز اپنے وعدے کے خلاف نہ کرے گا اور بلاشبہ ایک دن آپ کے پروردگار کے یہاں کا تم لوگوں کے شمار کیے ہوئے ہزاروں برسوں کے برابر ہے (47) اور کتنی ہی بستیاں ہیں جنہیں میں نے مہلت دی اس عالم میں کہ وہ ظلم و ستم کی مرتکب تھیں پھر میں نے ان کو گرفت میں لے لیا اور آخر میں رجوع تو میری ہی طرف ہونا ہے (48) کہئے کہ اے لوگو! میں تو بس تمہارے لیے کھلا ہوا تنبیہہ کرنے والا ہوں (49) تو جو ایمان لائیں اور نیک اعمال بجا لائیں، ان کے لیے بخشش ہے اور عزت کے ساتھ روزی (50) اور جو ہماری آیتوں کے مقابلہ میں عاجز کرنے کی کوشش کریں تو یہ دوزخ والے لوگ ہیں (51) اور نہیں بھیجا ہم نے آپ کے پہلے کوئی رسول اور نہ نبی مگر یہ کہ جب اس نے توقعات باندھے تو شیطان نے اس کی توقع (کے پورے ہونے) میں دراندازی کی تو اللہ ختم کر دیتا ہے اسے کہ جو شیطان دراندازی کرتا ہے، پھر مضبوط کرتا ہے اپنی نشانیوں کو اور اللہ جاننے والا ہے، ہر کام ٹھیک ٹھیک انجام دینے والا (52) تاکہ وہ اسے کہ جو شیطان دراندازی کرتا ہے قرار دے آزمائش کا ذریعہ، ان کے لیے جن کے دلوں میں بیماری ہے اور جن کے دل سخت ہیں اور بلاشبہ ظالم لوگ بڑی سخت تفرقہ اندازی میں ہیں (53) اور تاکہ وہ جنہیں علم عطا ہوا ہے جانیں کہ وہ آپ کے پروردگار کی طرف سے حق ہے تو وہ اس پر ایمان لائیں تو اس کے لیے ان کے دل خشوع و خضوع سے جھک جائیں اور بلاشبہ اللہ انہیں کہ جو ایمان لائیں سیدھے راستے تک پہنچانے والا ہے (54) اور ہمیشہ رہیں گے وہ جو کافر ہیں شک و شبہ میں اس سے یہاں تک کہ آئے ان پر قیامت اچانک یا آئے ان پر عذاب اس دن کا جو بڑا سخت ہو گا (55) سلطنت اس دن صرف اللہ کی ہو گی، وہ ان کے درمیان فیصلہ کرے گا تو جو ایمان لائے اور نیک اعمال کرتے رہے وہ آرام والے بہشتوں میں ہوں گے (56) اور جنہوں نے کفر کیا اور ہماری آیتوں کو جھٹلایا تو ان کے لیے ایک بڑا عذاب ہے، ذلیل کرنے والا (57) اور جنہوں نے ہجرت کی اللہ کی راہ میں، پھر قتل ہو گئے یا مر گئے تو ضرور اللہ انہیں عطا کرے گا اچھی روزی اور یقینا اللہ بہترین روزی عطا کرنے والا ہے (58) وہ ضرور انہیں داخل کرے گا ایسی جگہ جسے وہ پسند کریں گے اور بلاشبہ اللہ جاننے والا ہے، بڑا برداشت کرنے والا (59) یہ بات ہے اور جو سزا دے ویسی ہی جیسی اسے سزا ملی ہے، پھر اس کے خلاف زیادتی سے کام لیا جائے تو بلاشبہ اللہ اس کی مدد کرے گا، یقینا اللہ معاف کرنے والا ہے بڑا بخشنے والا (60) یہ اس بنا پر ہے کہ اللہ رات کو دن کے اندر لے جاتا ہے اور دن کو رات کے اندر لے جاتا ہے اور بلاشبہ اللہ سننے والا ہے، دیکھنے والا (61) یہ اس بنا پر ہے کہ اللہ بس برقرار حقیقت ہے اور جس کی وہ اس کے سوا دہائی دیتے ہیں، وہ سب بے حقیقت ہے اور بلاشبہ اللہ ہی ہے جو بلند و بزرگ ہے (62) کیا تم نے نہیں دیکھا کہ اللہ نے اتارا آسمان سے پانی تو زمین سرسبز و شاداب ہو جاتی ہے۔ بلاشبہ اللہ لطف و کرم والا ہے، خبر رکھنے والا (63) اس کا ہے جو آسمانوں میں ہے اور جو زمین میں ہے اور بلاشبہ اللہ ہی وہ بے نیاز ہے جو تعریف کا حق دار ہے (64) کیا تم نے نہیں دیکھا کہ اللہ نے تمہارے قابو میں دیا ہے جو کچھ زمین میں ہے اور کشتیوں کو جو سمندر میں چلتی ہیں اس کے حکم سے اور وہ روکے ہوئے ہے آسمان کو اس سے کہ وہ گرے زمین پر مگر اس کے حکم سے، بلاشبہ اللہ لوگوں کے ساتھ شفیق ہے، بڑا مہربان (65) اور وہ وہ ہے جس نے تمہیں زندگی عطا کی، پھر تمہیں موت دے گا، پھر تمہیں زندگی دے گا، یقینا آدمی بڑا ناشکرا ہے (66) ہر قوم کے لیے ہم نے ایک طریقہ عبادت قرار دیا جسے وہ اختیار کیے ہوئے ہیں، اس لیے انہیں آپ سے جھگڑا نہ کرنا چاہیے اور آپ اپنے پروردگار کے راستے کی طرف بلاتے رہیے بلاشبہ آپ صحیح رہ نمائی کے جادہ پر ہیں (67) اور اگر وہ آپ سے خوامخواہ بحث کریں تو کہئے کہ اللہ تمہارے کرتوت سے خوب واقف ہے (68) اللہ تمہارے درمیان قیامت کے دن فیصلہ کرے گا اس میں کہ جس میں تم باہم اختلاف کرتے رہتے تھے (69) کیا تمہیں نہیں معلوم کہ اللہ جانتا ہے اسے کہ جو آسمان اور زمین میں ہے، یقینا یہ سب ایک نوشتہ میں محفوظ ہے، بلاشبہ یہ اللہ پر آسان بات ہے (70) اور وہ عبادت کرتے ہیں اللہ کو چھوڑ کر اس کی جس کے لیے اللہ نے کوئی دلیل نہیں اتاری اور نہ اس کے متعلق انہیں کوئی علم ہے اور ان ظالموں کا کوئی مددگار نہیں ہے (71) اور جب ان کے سامنے ہماری آیتیں پڑھی جاتی ہیں، درآنحالیکہ وہ بالکل صاف ہیں تو تم ان لوگوں کے چہروں میں جو کافر ہیں ناگواری محسوس کرو گے، قریب ہو گا کہ وہ حملہ کر بیٹھیں ان پر جو ہماری آیتوں کو پڑھ کر سناتے ہیں، کہئے کہ کیا میں اس سے زیادہ بری خبر تمہیں سناؤں! وہ آتش دوزخ ہے جس کا اعلان کیا ہے اللہ نے ان کے لیے جو کافر ہیں اور کیا بری ہے وہ منزل (72) اے انسانو! سمجھانے کو بطور مثال ایک بات کہی جاتی ہے، اسے دھیان سے سنو، یہ جن کی تم اللہ کو چھوڑ کر دہائی دیتے ہو، ہرگز ایک مکھی کو پیدا نہیں کر سکتے چاہے وہ سب اس کے لیے اکٹھا ہو جائیں اور اگر مکھی ان سے کوئی چیز چھین لے جائے تو وہ اس سے چھڑا نہیں سکتے طالب و مطلوب دونوں ہی کمزور (73) انہوں نے نہیں سمجھا اللہ کی اس شان کو جو اس کے شایان شان ہے، بلاشبہ اللہ طاقت ور ہے غالب آنے والا (74) اللہ منتخب کرتا ہے فرشتوں میں سے بھی انہیں کہ جن کو وہ بھیجے اور آدمیوں میں سے بھی، بلاشبہ اللہ سننے والا ہے، دیکھنے والا (75) جانتا ہے اسے جو ان کے سامنے ہے اور اسے جو ان کے پیچھے ہے اور اللہ ہی کی طرف تمام معاملات کو رجوع ہوتا ہے (76) اے ایمان لانے والو! رکوع و سجود کرو اور اپنے پروردگار کی عبادت کرو اور نیک اعمال بجا لاؤ، شاید کہ تم ہر طرح کی بہتری حاصل کر لو (77) اور اللہ کی راہ میں جہاد کرو جیسا کہ اس کے لیے جہاد کا حق ہے۔ اس نے تم کو امتیاز بخشا ہے اور دین میں تمہارے لیے کوئی دشواری قرار نہیں دی ہے۔ وہ تمہارے مورث اعلیٰ ابراہیم کا دین ہے۔ انہوں نے ہی تمہارا نام مسلم رکھا ہے پہلے سے اور اس میں بھی تاکہ پیغمبر تم پر گواہ ہوں اور تم لوگوں پر گواہ ہو تو نماز پڑھو اور زکوٰة دو اور اللہ سے وابستہ رہو، وہ تمہارا حاکم ہے تو کتنا اچھا حاکم ہے اور کتنا اچھا مددگار (78)

پچھلی سورت:
سورہ انبیاء
سورہ 22 اگلی سورت:
سوره مؤمنون
قرآن کریم

(1) سورہ فاتحہ (2) سورہ بقرہ (3) سورہ آل عمران (4) سورہ نساء (5) سورہ مائدہ (6) سورہ انعام (7) سورہ اعراف (8) سورہ انفال (9) سورہ توبہ (10) سورہ یونس (11) سورہ ہود (12) سورہ یوسف (13) سورہ رعد (14) سورہ ابراہیم (15) سورہ حجر (16) سورہ نحل (17) سورہ اسراء (18) سورہ کہف (19) سورہ مریم (20) سورہ طہ (21) سورہ انبیاء (22) سورہ حج (23) سورہ مؤمنون (24) سورہ نور (25) سورہ فرقان (26) سورہ شعراء (27) سورہ نمل (28) سورہ قصص (29) سورہ عنکبوت (30) سورہ روم (31) سورہ لقمان (32) سورہ سجدہ (33) سورہ احزاب (34) سورہ سباء (35) سورہ فاطر (36) سورہ یس (37) سورہ صافات (38) سورہ ص (39) سورہ زمر (40) سورہ غافر (41) سورہ فصلت (42) سورہ شوری (43) سورہ زخرف (44) سورہ دخان (45) سورہ جاثیہ (46) سورہ احقاف (47) سورہ محمد (48) سورہ فتح (49) سورہ حجرات (50) سورہ ق (51) سورہ ذاریات (52) سورہ طور (53) سورہ نجم (54) سورہ قمر (55) سورہ رحمن (56) سورہ واقعہ (57) سورہ حدید (58) سورہ مجادلہ (59) سورہ حشر (60) سورہ ممتحنہ (61) سورہ صف (62) سورہ جمعہ (63) سورہ منافقون (64) سورہ تغابن (65) سورہ طلاق (66) سورہ تحریم (67) سورہ ملک (68) سورہ قلم (69) سورہ حاقہ (70) سورہ معارج (71) سورہ نوح (72) سورہ جن (73) سورہ مزمل (74) سورہ مدثر (75) سورہ قیامہ (76) سورہ انسان (77) سورہ مرسلات (78) سورہ نباء (79) سورہ نازعات (80) سورہ عبس (81) سورہ تکویر (82) سورہ انفطار (83) سورہ مطففین (84) سورہ انشقاق (85) سورہ بروج (86) سورہ طارق (87) سورہ اعلی (88) سورہ غاشیہ (89) سورہ فجر (90) سورہ بلد (91) سورہ شمس (92) سورہ لیل (93) سورہ ضحی (94) سورہ شرح (95) سورہ تین (96) سورہ علق (97) سورہ قدر (98) سورہ بینہ (99) سورہ زلزال (100) سورہ عادیات (101) سورہ قارعہ (102) سورہ تکاثر (103) سورہ عصر (104) سورہ ہمزہ (105) سورہ فیل (106) سورہ قریش (107) سورہ ماعون (108) سورہ کوثر (109) سورہ کافرون (110) سورہ نصر (111) سورہ مسد (112) سورہ اخلاص (113) سورہ فلق (114) سورہ ناس


متعلقہ مآخذ

پاورقی حاشیے

  1. دانشنامه قرآن و قرآن پژوهی، ج2، ص1243۔


مآخذ