سورہ نمل

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
شعراء سورۂ نمل قصص
سوره نمل.jpg
ترتیب کتابت: 27
پارہ : 19 و 20
نزول
ترتیب نزول: 48
مکی/ مدنی: مکی
اعداد و شمار
آیات: 93
الفاظ: 1166
حروف: 4795

سوره نمل [سُوْرَةُ النَّمْلِ] میں حضرت سلیمان(ع) کی داستان کے ضمن میں چیونٹیوں کی داستان بھی شامل ہے جس کی وجہ سے اس کو سورہ نمل کا نام دیا گیا ہے۔ اس سورت میں حضرت سلیمان(ع) کی داستان تفصیل سے بیان کی گئی ہے۔ سورہ نمل حروف مقطعہ سے شروع ہونے والی انتیس سورتوں میں تیرہویں نمبر پر اور اس کی آیت 25 میں مستحب سجدہ آیا ہے۔

نام

اس سورت کی وجۂ تسمیہ اس میں مندرج حضرت سلیمان اور چیونٹی کی داستان ہے اور چیونٹیوں کی داستان حضرت سلیمان(ع) کی داستان کے ضمن میں بیان ہوئی ہے۔ اس سورت کا دوسرا نام سلیمان ہے کیونکہ اس میں حضرت سلیمان(ع) کی داستان تفصیل سے بیان ہوئی ہے اور یہ داستان اس سورت کے اصلی موضوعات میں سے ہے۔ اس سورت کا تیسرا نام طس [=طا سین] ہے کیونکہ یہ سورت ان ہی حروف مقطعہ (یعنی حروف مقطعہ [طس=طا سین] سے شروع ہوئی ہے۔

کوائف

یہ سورت حروف مقطعہ سے شروع ہونے والی انتیس سورتوں میں تیرہویں نمبر پر ہے؛ ترتیب مصحف کے لحاظ سے قرآن ستائیسویں اور ترتیب نزول کے لحاظ سے اڑتالیسویں سورت ہے۔ قراءِ کوفہ کے بقول اس کی آیات کی تعداد 93، قراءِ بصرہ و شام کے بقول 94 اور قراءِ حجاز کے بقول 95 ہے لیکن اول الذکر قول مشہور اور معمول ہے۔ اس سورت میں الفاظ کی تعداد 1166 اور حروف کی تعداد 4795 ہے۔ کمیت کے لحاظ سے سور مثانی کے زمرے میں آتی ہے اور اس کا حجم نصف سے پارے سے کم ہے۔ اس سورت کی پچیسویں آیت میں مستحب سجدہ ہے۔[1]

مفاہیم

اس سورت کی ایک خصوصیت یہ ہے کہ اس میں آیت بِسْمِ اللّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ دو مرتبہ آئی ہے۔ (ایک بار معمول کے مطابق سورت کے آغاز پر اور ایک مرتبہ آیت 30 میں)۔ توحید اور خدا شناسی، احوالِ حشر اور معاد، نصائح و مواعظ کی اثر انگیزی کی شرطیں، سلیمان(ع) اور سرزمین سبا کی ملکہ "بلقیس" کی داستان، حضرت موسی(ع)، حضرت صالح(ع) اور حضرت لوط(ع) کی داستانیں اس سورت کے اصل موضوعات میں سے ہیں۔[2]

متن سورہ

سورہ فرقان مکیہ ـ نمبر 25 - آیات 67 - ترتیب نزول 42
بِسْمِ اللّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ

طس تِلْكَ آيَاتُ الْقُرْآنِ وَكِتَابٍ مُّبِينٍ ﴿1﴾ هُدًى وَبُشْرَى لِلْمُؤْمِنِينَ ﴿2﴾ الَّذِينَ يُقِيمُونَ الصَّلَاةَ وَيُؤْتُونَ الزَّكَاةَ وَهُم بِالْآخِرَةِ هُمْ يُوقِنُونَ ﴿3﴾ إِنَّ الَّذِينَ لَا يُؤْمِنُونَ بِالْآخِرَةِ زَيَّنَّا لَهُمْ أَعْمَالَهُمْ فَهُمْ يَعْمَهُونَ ﴿4﴾ أُوْلَئِكَ الَّذِينَ لَهُمْ سُوءُ الْعَذَابِ وَهُمْ فِي الْآخِرَةِ هُمُ الْأَخْسَرُونَ ﴿5﴾ وَإِنَّكَ لَتُلَقَّى الْقُرْآنَ مِن لَّدُنْ حَكِيمٍ عَلِيمٍ ﴿6﴾ إِذْ قَالَ مُوسَى لِأَهْلِهِ إِنِّي آنَسْتُ نَارًا سَآتِيكُم مِّنْهَا بِخَبَرٍ أَوْ آتِيكُم بِشِهَابٍ قَبَسٍ لَّعَلَّكُمْ تَصْطَلُونَ ﴿7﴾ فَلَمَّا جَاءهَا نُودِيَ أَن بُورِكَ مَن فِي النَّارِ وَمَنْ حَوْلَهَا وَسُبْحَانَ اللَّهِ رَبِّ الْعَالَمِينَ ﴿8﴾ يَا مُوسَى إِنَّهُ أَنَا اللَّهُ الْعَزِيزُ الْحَكِيمُ ﴿9﴾ وَأَلْقِ عَصَاكَ فَلَمَّا رَآهَا تَهْتَزُّ كَأَنَّهَا جَانٌّ وَلَّى مُدْبِرًا وَلَمْ يُعَقِّبْ يَا مُوسَى لَا تَخَفْ إِنِّي لَا يَخَافُ لَدَيَّ الْمُرْسَلُونَ ﴿10﴾ إِلَّا مَن ظَلَمَ ثُمَّ بَدَّلَ حُسْنًا بَعْدَ سُوءٍ فَإِنِّي غَفُورٌ رَّحِيمٌ ﴿11﴾ وَأَدْخِلْ يَدَكَ فِي جَيْبِكَ تَخْرُجْ بَيْضَاء مِنْ غَيْرِ سُوءٍ فِي تِسْعِ آيَاتٍ إِلَى فِرْعَوْنَ وَقَوْمِهِ إِنَّهُمْ كَانُوا قَوْمًا فَاسِقِينَ ﴿12﴾ فَلَمَّا جَاءتْهُمْ آيَاتُنَا مُبْصِرَةً قَالُوا هَذَا سِحْرٌ مُّبِينٌ ﴿13﴾ وَجَحَدُوا بِهَا وَاسْتَيْقَنَتْهَا أَنفُسُهُمْ ظُلْمًا وَعُلُوًّا فَانظُرْ كَيْفَ كَانَ عَاقِبَةُ الْمُفْسِدِينَ ﴿14﴾ وَلَقَدْ آتَيْنَا دَاوُودَ وَسُلَيْمَانَ عِلْمًا وَقَالَا الْحَمْدُ لِلَّهِ الَّذِي فَضَّلَنَا عَلَى كَثِيرٍ مِّنْ عِبَادِهِ الْمُؤْمِنِينَ ﴿15﴾ وَوَرِثَ سُلَيْمَانُ دَاوُودَ وَقَالَ يَا أَيُّهَا النَّاسُ عُلِّمْنَا مَنطِقَ الطَّيْرِ وَأُوتِينَا مِن كُلِّ شَيْءٍ إِنَّ هَذَا لَهُوَ الْفَضْلُ الْمُبِينُ ﴿16﴾ وَحُشِرَ لِسُلَيْمَانَ جُنُودُهُ مِنَ الْجِنِّ وَالْإِنسِ وَالطَّيْرِ فَهُمْ يُوزَعُونَ ﴿17﴾ حَتَّى إِذَا أَتَوْا عَلَى وَادِي النَّمْلِ قَالَتْ نَمْلَةٌ يَا أَيُّهَا النَّمْلُ ادْخُلُوا مَسَاكِنَكُمْ لَا يَحْطِمَنَّكُمْ سُلَيْمَانُ وَجُنُودُهُ وَهُمْ لَا يَشْعُرُونَ ﴿18﴾ فَتَبَسَّمَ ضَاحِكًا مِّن قَوْلِهَا وَقَالَ رَبِّ أَوْزِعْنِي أَنْ أَشْكُرَ نِعْمَتَكَ الَّتِي أَنْعَمْتَ عَلَيَّ وَعَلَى وَالِدَيَّ وَأَنْ أَعْمَلَ صَالِحًا تَرْضَاهُ وَأَدْخِلْنِي بِرَحْمَتِكَ فِي عِبَادِكَ الصَّالِحِينَ ﴿19﴾ وَتَفَقَّدَ الطَّيْرَ فَقَالَ مَا لِيَ لَا أَرَى الْهُدْهُدَ أَمْ كَانَ مِنَ الْغَائِبِينَ ﴿20﴾ لَأُعَذِّبَنَّهُ عَذَابًا شَدِيدًا أَوْ لَأَذْبَحَنَّهُ أَوْ لَيَأْتِيَنِّي بِسُلْطَانٍ مُّبِينٍ ﴿21﴾ فَمَكَثَ غَيْرَ بَعِيدٍ فَقَالَ أَحَطتُ بِمَا لَمْ تُحِطْ بِهِ وَجِئْتُكَ مِن سَبَإٍ بِنَبَإٍ يَقِينٍ ﴿22﴾ إِنِّي وَجَدتُّ امْرَأَةً تَمْلِكُهُمْ وَأُوتِيَتْ مِن كُلِّ شَيْءٍ وَلَهَا عَرْشٌ عَظِيمٌ ﴿23﴾ وَجَدتُّهَا وَقَوْمَهَا يَسْجُدُونَ لِلشَّمْسِ مِن دُونِ اللَّهِ وَزَيَّنَ لَهُمُ الشَّيْطَانُ أَعْمَالَهُمْ فَصَدَّهُمْ عَنِ السَّبِيلِ فَهُمْ لَا يَهْتَدُونَ ﴿24﴾ أَلَّا يَسْجُدُوا لِلَّهِ الَّذِي يُخْرِجُ الْخَبْءَ فِي السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ وَيَعْلَمُ مَا تُخْفُونَ وَمَا تُعْلِنُونَ ﴿25﴾ اللَّهُ لَا إِلَهَ إِلَّا هُوَ رَبُّ الْعَرْشِ الْعَظِيمِ ﴿26﴾ قَالَ سَنَنظُرُ أَصَدَقْتَ أَمْ كُنتَ مِنَ الْكَاذِبِينَ ﴿27﴾ اذْهَب بِّكِتَابِي هَذَا فَأَلْقِهْ إِلَيْهِمْ ثُمَّ تَوَلَّ عَنْهُمْ فَانظُرْ مَاذَا يَرْجِعُونَ ﴿28﴾ قَالَتْ يَا أَيُّهَا المَلَأُ إِنِّي أُلْقِيَ إِلَيَّ كِتَابٌ كَرِيمٌ ﴿29﴾ إِنَّهُ مِن سُلَيْمَانَ وَإِنَّهُ بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ ﴿30﴾ أَلَّا تَعْلُوا عَلَيَّ وَأْتُونِي مُسْلِمِينَ ﴿31﴾ قَالَتْ يَا أَيُّهَا المَلَأُ أَفْتُونِي فِي أَمْرِي مَا كُنتُ قَاطِعَةً أَمْرًا حَتَّى تَشْهَدُونِ ﴿32﴾ قَالُوا نَحْنُ أُوْلُوا قُوَّةٍ وَأُولُوا بَأْسٍ شَدِيدٍ وَالْأَمْرُ إِلَيْكِ فَانظُرِي مَاذَا تَأْمُرِينَ ﴿33﴾ قَالَتْ إِنَّ الْمُلُوكَ إِذَا دَخَلُوا قَرْيَةً أَفْسَدُوهَا وَجَعَلُوا أَعِزَّةَ أَهْلِهَا أَذِلَّةً وَكَذَلِكَ يَفْعَلُونَ ﴿34﴾ وَإِنِّي مُرْسِلَةٌ إِلَيْهِم بِهَدِيَّةٍ فَنَاظِرَةٌ بِمَ يَرْجِعُ الْمُرْسَلُونَ ﴿35﴾ فَلَمَّا جَاء سُلَيْمَانَ قَالَ أَتُمِدُّونَنِ بِمَالٍ فَمَا آتَانِيَ اللَّهُ خَيْرٌ مِّمَّا آتَاكُم بَلْ أَنتُم بِهَدِيَّتِكُمْ تَفْرَحُونَ ﴿36﴾ ارْجِعْ إِلَيْهِمْ فَلَنَأْتِيَنَّهُمْ بِجُنُودٍ لَّا قِبَلَ لَهُم بِهَا وَلَنُخْرِجَنَّهُم مِّنْهَا أَذِلَّةً وَهُمْ صَاغِرُونَ ﴿37﴾ قَالَ يَا أَيُّهَا المَلَأُ أَيُّكُمْ يَأْتِينِي بِعَرْشِهَا قَبْلَ أَن يَأْتُونِي مُسْلِمِينَ ﴿38﴾ قَالَ عِفْريتٌ مِّنَ الْجِنِّ أَنَا آتِيكَ بِهِ قَبْلَ أَن تَقُومَ مِن مَّقَامِكَ وَإِنِّي عَلَيْهِ لَقَوِيٌّ أَمِينٌ ﴿39﴾ قَالَ الَّذِي عِندَهُ عِلْمٌ مِّنَ الْكِتَابِ أَنَا آتِيكَ بِهِ قَبْلَ أَن يَرْتَدَّ إِلَيْكَ طَرْفُكَ فَلَمَّا رَآهُ مُسْتَقِرًّا عِندَهُ قَالَ هَذَا مِن فَضْلِ رَبِّي لِيَبْلُوَنِي أَأَشْكُرُ أَمْ أَكْفُرُ وَمَن شَكَرَ فَإِنَّمَا يَشْكُرُ لِنَفْسِهِ وَمَن كَفَرَ فَإِنَّ رَبِّي غَنِيٌّ كَرِيمٌ ﴿40﴾ قَالَ نَكِّرُوا لَهَا عَرْشَهَا نَنظُرْ أَتَهْتَدِي أَمْ تَكُونُ مِنَ الَّذِينَ لَا يَهْتَدُونَ ﴿41﴾ فَلَمَّا جَاءتْ قِيلَ أَهَكَذَا عَرْشُكِ قَالَتْ كَأَنَّهُ هُوَ وَأُوتِينَا الْعِلْمَ مِن قَبْلِهَا وَكُنَّا مُسْلِمِينَ ﴿42﴾ وَصَدَّهَا مَا كَانَت تَّعْبُدُ مِن دُونِ اللَّهِ إِنَّهَا كَانَتْ مِن قَوْمٍ كَافِرِينَ ﴿43﴾ قِيلَ لَهَا ادْخُلِي الصَّرْحَ فَلَمَّا رَأَتْهُ حَسِبَتْهُ لُجَّةً وَكَشَفَتْ عَن سَاقَيْهَا قَالَ إِنَّهُ صَرْحٌ مُّمَرَّدٌ مِّن قَوَارِيرَ قَالَتْ رَبِّ إِنِّي ظَلَمْتُ نَفْسِي وَأَسْلَمْتُ مَعَ سُلَيْمَانَ لِلَّهِ رَبِّ الْعَالَمِينَ ﴿44﴾ وَلَقَدْ أَرْسَلْنَا إِلَى ثَمُودَ أَخَاهُمْ صَالِحًا أَنِ اعْبُدُوا اللَّهَ فَإِذَا هُمْ فَرِيقَانِ يَخْتَصِمُونَ ﴿45﴾ قَالَ يَا قَوْمِ لِمَ تَسْتَعْجِلُونَ بِالسَّيِّئَةِ قَبْلَ الْحَسَنَةِ لَوْلَا تَسْتَغْفِرُونَ اللَّهَ لَعَلَّكُمْ تُرْحَمُونَ ﴿46﴾ قَالُوا اطَّيَّرْنَا بِكَ وَبِمَن مَّعَكَ قَالَ طَائِرُكُمْ عِندَ اللَّهِ بَلْ أَنتُمْ قَوْمٌ تُفْتَنُونَ ﴿47﴾ وَكَانَ فِي الْمَدِينَةِ تِسْعَةُ رَهْطٍ يُفْسِدُونَ فِي الْأَرْضِ وَلَا يُصْلِحُونَ ﴿48﴾ قَالُوا تَقَاسَمُوا بِاللَّهِ لَنُبَيِّتَنَّهُ وَأَهْلَهُ ثُمَّ لَنَقُولَنَّ لِوَلِيِّهِ مَا شَهِدْنَا مَهْلِكَ أَهْلِهِ وَإِنَّا لَصَادِقُونَ ﴿49﴾ وَمَكَرُوا مَكْرًا وَمَكَرْنَا مَكْرًا وَهُمْ لَا يَشْعُرُونَ ﴿50﴾ فَانظُرْ كَيْفَ كَانَ عَاقِبَةُ مَكْرِهِمْ أَنَّا دَمَّرْنَاهُمْ وَقَوْمَهُمْ أَجْمَعِينَ ﴿51﴾ فَتِلْكَ بُيُوتُهُمْ خَاوِيَةً بِمَا ظَلَمُوا إِنَّ فِي ذَلِكَ لَآيَةً لِّقَوْمٍ يَعْلَمُونَ ﴿52﴾ وَأَنجَيْنَا الَّذِينَ آمَنُوا وَكَانُوا يَتَّقُونَ ﴿53﴾ وَلُوطًا إِذْ قَالَ لِقَوْمِهِ أَتَأْتُونَ الْفَاحِشَةَ وَأَنتُمْ تُبْصِرُونَ ﴿54﴾ أَئِنَّكُمْ لَتَأْتُونَ الرِّجَالَ شَهْوَةً مِّن دُونِ النِّسَاء بَلْ أَنتُمْ قَوْمٌ تَجْهَلُونَ ﴿55﴾ فَمَا كَانَ جَوَابَ قَوْمِهِ إِلَّا أَن قَالُوا أَخْرِجُوا آلَ لُوطٍ مِّن قَرْيَتِكُمْ إِنَّهُمْ أُنَاسٌ يَتَطَهَّرُونَ ﴿56﴾ فَأَنجَيْنَاهُ وَأَهْلَهُ إِلَّا امْرَأَتَهُ قَدَّرْنَاهَا مِنَ الْغَابِرِينَ ﴿57﴾ وَأَمْطَرْنَا عَلَيْهِم مَّطَرًا فَسَاء مَطَرُ الْمُنذَرِينَ ﴿58﴾ قُلِ الْحَمْدُ لِلَّهِ وَسَلَامٌ عَلَى عِبَادِهِ الَّذِينَ اصْطَفَى آللَّهُ خَيْرٌ أَمَّا يُشْرِكُونَ ﴿59﴾ أَمَّنْ خَلَقَ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضَ وَأَنزَلَ لَكُم مِّنَ السَّمَاء مَاء فَأَنبَتْنَا بِهِ حَدَائِقَ ذَاتَ بَهْجَةٍ مَّا كَانَ لَكُمْ أَن تُنبِتُوا شَجَرَهَا أَإِلَهٌ مَّعَ اللَّهِ بَلْ هُمْ قَوْمٌ يَعْدِلُونَ ﴿60﴾ أَمَّن جَعَلَ الْأَرْضَ قَرَارًا وَجَعَلَ خِلَالَهَا أَنْهَارًا وَجَعَلَ لَهَا رَوَاسِيَ وَجَعَلَ بَيْنَ الْبَحْرَيْنِ حَاجِزًا أَإِلَهٌ مَّعَ اللَّهِ بَلْ أَكْثَرُهُمْ لَا يَعْلَمُونَ ﴿61﴾ أَمَّن يُجِيبُ الْمُضْطَرَّ إِذَا دَعَاهُ وَيَكْشِفُ السُّوءَ وَيَجْعَلُكُمْ خُلَفَاء الْأَرْضِ أَإِلَهٌ مَّعَ اللَّهِ قَلِيلًا مَّا تَذَكَّرُونَ ﴿62﴾ أَمَّن يَهْدِيكُمْ فِي ظُلُمَاتِ الْبَرِّ وَالْبَحْرِ وَمَن يُرْسِلُ الرِّيَاحَ بُشْرًا بَيْنَ يَدَيْ رَحْمَتِهِ أَإِلَهٌ مَّعَ اللَّهِ تَعَالَى اللَّهُ عَمَّا يُشْرِكُونَ ﴿63﴾ أَمَّن يَبْدَأُ الْخَلْقَ ثُمَّ يُعِيدُهُ وَمَن يَرْزُقُكُم مِّنَ السَّمَاء وَالْأَرْضِ أَإِلَهٌ مَّعَ اللَّهِ قُلْ هَاتُوا بُرْهَانَكُمْ إِن كُنتُمْ صَادِقِينَ ﴿64﴾ قُل لَّا يَعْلَمُ مَن فِي السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ الْغَيْبَ إِلَّا اللَّهُ وَمَا يَشْعُرُونَ أَيَّانَ يُبْعَثُونَ ﴿65﴾ بَلِ ادَّارَكَ عِلْمُهُمْ فِي الْآخِرَةِ بَلْ هُمْ فِي شَكٍّ مِّنْهَا بَلْ هُم مِّنْهَا عَمِونَ ﴿66﴾ وَقَالَ الَّذِينَ كَفَرُوا أَئِذَا كُنَّا تُرَابًا وَآبَاؤُنَا أَئِنَّا لَمُخْرَجُونَ ﴿67﴾ لَقَدْ وُعِدْنَا هَذَا نَحْنُ وَآبَاؤُنَا مِن قَبْلُ إِنْ هَذَا إِلَّا أَسَاطِيرُ الْأَوَّلِينَ ﴿68﴾ قُلْ سِيرُوا فِي الْأَرْضِ فَانظُرُوا كَيْفَ كَانَ عَاقِبَةُ الْمُجْرِمِينَ ﴿69﴾ وَلَا تَحْزَنْ عَلَيْهِمْ وَلَا تَكُن فِي ضَيْقٍ مِّمَّا يَمْكُرُونَ ﴿70﴾ وَيَقُولُونَ مَتَى هَذَا الْوَعْدُ إِن كُنتُمْ صَادِقِينَ ﴿71﴾ قُلْ عَسَى أَن يَكُونَ رَدِفَ لَكُم بَعْضُ الَّذِي تَسْتَعْجِلُونَ ﴿72﴾ وَإِنَّ رَبَّكَ لَذُو فَضْلٍ عَلَى النَّاسِ وَلَكِنَّ أَكْثَرَهُمْ لَا يَشْكُرُونَ ﴿73﴾ وَإِنَّ رَبَّكَ لَيَعْلَمُ مَا تُكِنُّ صُدُورُهُمْ وَمَا يُعْلِنُونَ ﴿74﴾ وَمَا مِنْ غَائِبَةٍ فِي السَّمَاء وَالْأَرْضِ إِلَّا فِي كِتَابٍ مُّبِينٍ ﴿75﴾ إِنَّ هَذَا الْقُرْآنَ يَقُصُّ عَلَى بَنِي إِسْرَائِيلَ أَكْثَرَ الَّذِي هُمْ فِيهِ يَخْتَلِفُونَ ﴿76﴾ وَإِنَّهُ لَهُدًى وَرَحْمَةٌ لِّلْمُؤْمِنِينَ ﴿77﴾ إِنَّ رَبَّكَ يَقْضِي بَيْنَهُم بِحُكْمِهِ وَهُوَ الْعَزِيزُ الْعَلِيمُ ﴿78﴾ فَتَوَكَّلْ عَلَى اللَّهِ إِنَّكَ عَلَى الْحَقِّ الْمُبِينِ ﴿79﴾ إِنَّكَ لَا تُسْمِعُ الْمَوْتَى وَلَا تُسْمِعُ الصُّمَّ الدُّعَاء إِذَا وَلَّوْا مُدْبِرِينَ ﴿80﴾ وَمَا أَنتَ بِهَادِي الْعُمْيِ عَن ضَلَالَتِهِمْ إِن تُسْمِعُ إِلَّا مَن يُؤْمِنُ بِآيَاتِنَا فَهُم مُّسْلِمُونَ ﴿81﴾ وَإِذَا وَقَعَ الْقَوْلُ عَلَيْهِمْ أَخْرَجْنَا لَهُمْ دَابَّةً مِّنَ الْأَرْضِ تُكَلِّمُهُمْ أَنَّ النَّاسَ كَانُوا بِآيَاتِنَا لَا يُوقِنُونَ ﴿82﴾ وَيَوْمَ نَحْشُرُ مِن كُلِّ أُمَّةٍ فَوْجًا مِّمَّن يُكَذِّبُ بِآيَاتِنَا فَهُمْ يُوزَعُونَ ﴿83﴾ حَتَّى إِذَا جَاؤُوا قَالَ أَكَذَّبْتُم بِآيَاتِي وَلَمْ تُحِيطُوا بِهَا عِلْمًا أَمَّاذَا كُنتُمْ تَعْمَلُونَ ﴿84﴾ وَوَقَعَ الْقَوْلُ عَلَيْهِم بِمَا ظَلَمُوا فَهُمْ لَا يَنطِقُونَ ﴿85﴾ أَلَمْ يَرَوْا أَنَّا جَعَلْنَا اللَّيْلَ لِيَسْكُنُوا فِيهِ وَالنَّهَارَ مُبْصِرًا إِنَّ فِي ذَلِكَ لَآيَاتٍ لِّقَوْمٍ يُؤْمِنُونَ ﴿86﴾ وَيَوْمَ يُنفَخُ فِي الصُّورِ فَفَزِعَ مَن فِي السَّمَاوَاتِ وَمَن فِي الْأَرْضِ إِلَّا مَن شَاء اللَّهُ وَكُلٌّ أَتَوْهُ دَاخِرِينَ ﴿87﴾ وَتَرَى الْجِبَالَ تَحْسَبُهَا جَامِدَةً وَهِيَ تَمُرُّ مَرَّ السَّحَابِ صُنْعَ اللَّهِ الَّذِي أَتْقَنَ كُلَّ شَيْءٍ إِنَّهُ خَبِيرٌ بِمَا تَفْعَلُونَ ﴿88﴾ مَن جَاء بِالْحَسَنَةِ فَلَهُ خَيْرٌ مِّنْهَا وَهُم مِّن فَزَعٍ يَوْمَئِذٍ آمِنُونَ ﴿89﴾ وَمَن جَاء بِالسَّيِّئَةِ فَكُبَّتْ وُجُوهُهُمْ فِي النَّارِ هَلْ تُجْزَوْنَ إِلَّا مَا كُنتُمْ تَعْمَلُونَ ﴿90﴾ إِنَّمَا أُمِرْتُ أَنْ أَعْبُدَ رَبَّ هَذِهِ الْبَلْدَةِ الَّذِي حَرَّمَهَا وَلَهُ كُلُّ شَيْءٍ وَأُمِرْتُ أَنْ أَكُونَ مِنَ الْمُسْلِمِينَ ﴿91﴾ وَأَنْ أَتْلُوَ الْقُرْآنَ فَمَنِ اهْتَدَى فَإِنَّمَا يَهْتَدِي لِنَفْسِهِ وَمَن ضَلَّ فَقُلْ إِنَّمَا أَنَا مِنَ الْمُنذِرِينَ ﴿92﴾ وَقُلِ الْحَمْدُ لِلَّهِ سَيُرِيكُمْ آيَاتِهِ فَتَعْرِفُونَهَا وَمَا رَبُّكَ بِغَافِلٍ عَمَّا تَعْمَلُونَ ﴿93﴾

قرآن کریم


ترجمہ
اللہ کے نام سے جو بہت رحم والا نہایت مہربان ہے

طا۔ سین، یہ ہیں آیتیں قرآن اور ایک روشن کتاب کی (1) راہنمائی اور خوش خبری ان ایمان لانے والوں کے لیے (2) جو نماز پڑھتے ہیں اور زکوٰة دیتے ہیں اور دور آخرت کا یقین رکھتے ہیں (3) بلاشبہ وہ جو آخرت پر ایمان نہیں رکھتے، ہم نے ان کے کاموں کو ان کے لیے آراستہ کر رکھا ہے تو وہ اندھے پن میں مبتلا ہیں (4) یہ وہ ہیں جن کے لیے بڑا عذاب ہے اور وہ آخرت میں بڑا گھاٹا اٹھانے والے ہیں (5) اور بلاشبہ یہ قرآن آپ کو سکھایا جاتا ہے ایک بڑے حکمت والے، صاحب علم کی طرف سے (6) جب موسیٰ نے اپنے گھر والوں سے کہا کہ میں نے ایک آگ محسوس کی ہے تو ابھی میں تمہارے پاس وہاں سے کوئی خبر لاتا ہوں یا تمہارے لیے آگ کا ایک لوکا لاتا ہوں کہ تم تاپ سکو (7) تو جب وہ اس کے پاس آئے تو آواز دی گئی کہ برکت والا (قائم و دائم) ہے وہ جس کا جلوہ آگ میں ہے اور جس کا جلوہ اس کے ارد گرد ہے اور پاک ہے اللہ جو تمام جہانوں کا پروردگار ہے (8) اے موسیٰ! یقینا میں اللہ ہوں جو عزت والا، بڑی سمجھ بوجھ والا ہے (9) اور اپنے عصا کو پھینکو تو جب اسے دیکھا کہ وہ حرکت کر رہا ہے کہ وہ ایک سانپ ہے تو وہ پیٹھ پھیر کر مڑے اور پھر نہیں پلٹے اے موسیٰ ! ڈرو نہیں میں وہ ہوں کہ میرے پاس پیغمبروں کو ڈر نہیں ہوتا (10) سوا اس کے جو کوئی تجاوز کرے۔ پھر برائی کو اچھائی سے تبدیل کرے تو بلاشبہ میں بخشنے والا مہربان ہوں (11) اور اپنا ہاتھ اپنے گریبان میں ڈالو تو وہ چمکتا ہوا نکلے گا بغیر کسی برائی کے نو معجزوں میں، انہیں لے کر فرعون اور اس کی قوم کی طرف جاؤ، یقینا وہ بداعمال لوگ رہے ہیں (12) تو جب ہماری روشن نشانیاں ان کے پاس آئیں تو انہوں نے کہا یہ کھلا ہوا جادو ہے (13) اور انہوں نے جان بوجھ کر صاف ظلم و ستم اور گھمنڈ سے ان کا انکار کیا حالاں کہ ان کے نفوس کو ان کا یقین تھا تو دیکھو کیا ہوا انجام ان فسادیوں کا (14) اور ہم نے داؤد اور سلیمان کو علم عطا کیا اور انہوں نے کہا کہ شکر ہے اس اللہ کا جس نے ہم کو بہت سے اپنے باایمان بندوں سے زیادہ دیا ہے (15) اور سلیمان داؤد کے وارث ہوئے اور کہا اے لوگو! ہمیں چڑیوں کی بولی کا علم عطا ہوا ہے اور ہر چیز میں حصہ ملا ہے۔ یقینا یہ کھلا ہوا لطف و کرم ہے (16) اور جمع کیے گئے سلیمان کے سامنے ان کے افواج جنات اور آدمیوں اور پرندوں میں سے تو ان کی قواعد ہو رہی تھی (17) یہاں تک کہ جب وہ چیونٹیوں کے میدان میں پہنچے تو ایک چیونٹی نے کہا اے چیونٹیو! اپنے اپنے گھروں میں داخل ہو جاؤ۔ کہیں سلیمان اور ان کی افواج بے خیالی میں تمہیں پامال نہ کر دیں (18) تو وہ مسکرائے اس کی بات پر ہنستے ہوئے اور کہا اے پروردگار! مجھے توفیق دے کہ میں تیری اس نعمت کا جو تونے مجھے عطا کی ہے اور میرے ماں باپ کو شکر گزار رہوں اور میں ایسا اچھا کردار رکھوں جو تجھے پسند ہو اور مجھے اپنی رحمت سے اپنے نیک بندوں میں داخل فرما (19) اور پرندوں کی جانچ کی تو کہا کیا بات ہے ہد ہد مجھے نظر نہیں آ رہا ہے یا وہ واقعی غیر حاضر ہے (20) بلاشبہ میں اسے سخت سزا دوں گا یا اسے ذبح کر دوں گا اور نہیں تو وہ میرے سامنے (اپنی صفائی میں) کھلا ہوا کوئی ثبوت پیش کرے (21) تو کچھ زیادہ دیر نہیں گزری تھی کہ اس نے آ کر کہا۔ میں نے وہ ایک بات معلوم کی ہے جو آپ کو نہیں معلوم اور میں سبا سے ایک یقینی اطلاع آپ کے لئے لایا ہوں (22) میں نے ایک عورت کو پایا ہے جو ان پر بادشاہت کرتی ہے اور اسے ہر چیز کا ذخیرہ عطا ہوا ہے اور اس کا ایک بڑا تخت سلطنت ہے (23) میں نے اسے اور اس کی قوم کو پایا کہ وہ اللہ کو چھوڑ کر سورج کی پوجا کرتے ہیں اور شیطان نے ان کے اعمال کو ان کی نظروں میں سنوار دیا ہے تو اصل راستے سے ان کو روک دیا ہے جس سے وہ ایسے گمراہ ہو گئے ہیں (24) کہ سجدہ نہیں کرتے اللہ کو جو آسمانوں اور زمین کی چھپی ہوئی چیزوں کو باہر لاتا ہے اور جانتا ہے جو کچھ تم چھپاؤ اور جو ظاہر کرو (25) اللہ کہ جس کے سوا کوئی خدا نہیں جو بڑے عرش کا مالک ہے (26) انہوں نے کہا ہم ابھی دیکھیں گے کہ تو نے سچ کہا ہے یا تو جھوٹوں میں سے ہے؟ (27) میرا یہ خط لے جا کر اسے ان کے یہاں ڈال دے، پھر ان کے پاس سے ہٹ آ تو پھر دیکھ کہ وہ کیا جواب دیتے ہیں (28) اس (ملکہ) نے کہا اے سردارو! میرے اوپر ایک معزز خط ڈالا گیا ہے (29) وہ سلیمان کی طرف سے ہے اور اس کا مضمون یہ ہے کہ سہارے سے اللہ کے نام کے جو سب کو فیض پہنچانے والا بڑا مہربان ہے (30) (یہ مطالبہ کیا جاتا ہے) کہ تم لوگ میرے خلاف گھمنڈ سے کام نہ لو اور (چپکے) میرے پاس مسلمان ہو کر آ جاؤ (31) اس نے کہا کہ اے سردارو! تم مجھے میرے معاملہ میں رائے دو میں کوئی قطعی فیصلہ نہیں کرتی جب تک کہ تم لوگ مجھے آ کر مشورہ نہ دو (32) ان لوگوں نے کہا کہ ہم طاقت ور ہیں اور سخت جنگ کرنے والے اور اختیار پورا آپ کو ہے تو آپ غور کیجئے کہ کیا فرمان دیتی ہیں (33) اس (خاتون) نے کہا کہ بادشاہ جب کسی بستی میں داخل ہوتے ہیں تو اسے تباہ کر دیتے ہیں اور اس کے عزت دار باشندوں کو ذلیل کر دیتے ہیں اور ایسا ہی (واقعاً) وہ کرتے ہیں (34) اور میں ان کے پاس ایک تحفہ بھیجتی ہوں اور پھر دیکھتی ہوں کہ میرے فرستادے کیا خبر لاتے ہیں (35) اور جب وہ (فرستادہ) سلیمان کے پاس پہنچا تو انہوں نے کہا کیا تم مال سے مجھے کچھ مدد پہنچاؤ گے تو مجھے اللہ نے جو عطا کیا ہے وہ اس سے جو تمہیں عطا کیا ہے بہتر ہے بلکہ اپنے تحفہ کے ساتھ تم ہی لوگ خوش ہو سکتے ہو (36) پلٹ جاؤ، ان کے پاس۔ اب ہم ایسی فوجیں لے کر ان کی طرف آئیں گے جن کے مقابلہ کی ان میں تاب نہ ہو گی اور ہم ان کو ذلیل حالت میں وہاں سے نکال باہر کریں گے (37) انہوں نے کہا معزز حاضرین! کون ہے تم میں جو اس کا تخت یہاں لے آئے قبل اس کے کہ وہ لوگ مسلمان ہو کر میرے پاس آئیں؟ (38) جنات میں سے ایک دیو نے کہا۔ میں اسے آپ کے پاس لے آؤں گا اس سے پہلے کہ آپ اپنی جگہ سے اٹھ کر کھڑے ہوں اور میں اس پر طاقت رکھنے والا امانت دار ہوں (39) اس شخص نے جس کے پاس کتاب کا کچھ علم تھا کہا میں اسے آپ کے پاس لے آؤں گا اس سے پہلے کہ آپ کی نظر ادھر سے ادھر ہو۔ تو جب انہوں نے اسے اپنے پاس رکھا دیکھا تو کہا کہ یہ میرے رب کے لطف و کرم سے ہے تاکہ وہ مجھے آزمائے کہ میں شکر گزاری کرتا ہوں یا کفران نعمت کرتا ہوں اور جو شکر گزار ہو گا، وہ اپنے فائدہ کے لیے شکر گزار ہو گا اور جو کفران نعمت کرے گا تو بلاشبہ میرا پروردگار عزت والا ہے، بے نیاز (40) (سلیمان نے) کہا اس کے لیے اس کے تخت کی ذرا صورت بدل دو، دیکھیں وہ صحیح صورتحال سمجھ لیتی ہے یا ان آدمیوں میں سے ہوتی ہے جو سمجھ نہیں پاتے (41) تو جب وہ آئی تو کہا گیا کہ کیا ایسا ہی ہے تمہارا تخت؟ اس نے کہا یہ تو جیسے وہی ہے اور ہمیں تو اس کے پہلے حقیقت معلوم ہو چکی اور ہم مسلمان ہو چکے ہیں (42) اور انہوں نے روکا اسے غیر اللہ کی عبادت سے جو وہ کرتی تھی، بلاشبہ وہ کافروں میں سے تھی (43) کہا گیا اس سے کہ داخل ہو ایوان میں تو جب اس نے اسے دیکھا تو پانی کی لہریں سمجھی اور پائینچے پنڈلیوں سے اونچے کر لیے، انہوں نے کہا ارے یہ محل کی زمین ہے جس میں شیشے جڑے ہوئے ہیں۔ اس نے کہا اے میرے پروردگار میں نے اپنے نفس کے اوپر ظلم کیا تھا اور اب میں ایمان لائی ہوں سلیمان کے ساتھ اللہ پر جو تمام جہانوں کا پروردگار ہے (44) اور ہم نے ثمود کی طرف بھیجا ان کے بھائی صالح کو کہ عبادت کرو اللہ کی تو وہ دو فریق ہو گئے جو آپس میں بحث کرنے لگے (45) انہوں نے کہا اے قوم والو! کیوں تم بھلائی کے پہلے برائی کے لیے جلدی کرتے ہو، کیوں نہیں بخشش کے طلب گار ہوتے اللہ سے۔ شاید تم پر رحم کیا جائے (46) انہوں نے کہا ہم تو تم سے اور تمہارے ساتھ والوں سے بڑی نحوست دیکھ رہے ہیں انہوں نے کہا تمہاری اصل نحوست تو اللہ کے یہاں ہے، ہاں تم وہ لوگ ہو جو امتحان میں ڈالے گئے ہو (47) اور اس شہر میں نو شخص تھے جو ہمیشہ مفسد پردازی کرتے تھے اور کبھی ٹھیک کام نہیں کرتے تھے (48) انہوں نے کہا کہ آپس میں اللہ کی قسم کھا کر عہد و پیمان کرو کہ ہم انہیں اور ان کے گھر والوں کو سب کو راتی راتا ختم کر دیں گے، پھر ان کے وارث سے کہیں گے کہ ہم اس گھر والوں کی ہلاکت میں شریک نہ تھے اور یقین مانو کہ ہم سچے ہیں (49) اور (اس طرح) انہوں نے ایک منصوبہ بنایا اور ہم نے بھی ایک منصوبہ بنایا اور انہیں اس کی خبر نہ تھی (50) تو دیکھو ان کے منصوبہ کا انجام کیا ہوا؟ یہ کہ ہم نے انہیں اور ان کی تمام قوم کو تہس نہس کر دیا (51) تو یہ ہیں ان کے گھر ویران و سنسان ان کے ظلم کی وجہ سے، بلاشبہ اس میں نشانی ہے ان کے لیے جو جانیں (52) ہم نے نجات دے دی انہیں جو ایمان لائے تھے اور پرہیز گاری سے کام لیتے تھے (53) اور (بھیجا ہم نے) لوط کو جب انہوں نے اپنی قوم سے کہا کہ کیا تم ایسی بدکاری کے مرتکب ہوتے ہو اور اپنی آنکھوں سے دیکھتے ہو؟ (54) ارے تم نفسانی خواہش عورتوں کو چھوڑ کر مردوں سے پوری کرتے ہو بلکہ تم انتہائی جہالت سے کام لینے والے لوگ ہو (55) تو ان کی قوم کا کوئی جواب نہ تھا سوا اس کے کہ انہوں نے کہا نکال دو لوط کے گھرانے والوں کو اس بستی سے۔ یہ لوگ بڑے پاک باز بنے ہوئے ہیں (56) تو ہم نے ان کے گھر والوں کو نجات دی سوا ان کی بیوی کے جس کی قسمت میں ہم نے لکھ دیا تھا کہ وہ یونہی رہ جانے والوں میں ہو گی (57) اور ان پر ہم نے ایک خاص بارش کی تو کتنی بری بارش تھی ان لوگوں کی جنہیں ڈرایا جا چکا تھا (58) کہئے کہ سب تعریف اللہ کے لیے ہے اور سلام اس کے ان بندوں پر جنہیں اس نے منتخب کیا، کیا اللہ بہتر ہے یا جنہیں وہ شریک کرتے ہیں (59)یا وہ جس نے آسمانوں اور زمین کو پیدا کیا اور تمہارے لئے آسمان سے پانی اتارا تو ہم نے اس سے خوش نما باغ اگائے تمہارے لیے ممکن نہیں تھا کہ تم ان کے درختوں کو اگاؤ، کیا اللہ کے ساتھ کوئی اور خدا ہے؟ بلکہ وہ ایسے لوگ ہیں جو (حق سے) منحرف ہیں (60) یا وہ جس نے زمین کو رہنے کی جگہ بنایا اور اس کے بیچ بیچ میں ندیاں بنائیں اور اس کے لیے پہاڑ پیدا کیے اور دو دریاؤں کے بیچ میں پردہ رکھا۔ کیا اللہ کے ساتھ اور کوئی خدا ہے بلکہ ان میں سے زیادہ علم نہیں رکھتے (61) یا وہ کہ جو دعا قبول کرتا ہے بے بس، بے قرار کی جب وہ اسے پکارتا ہے اور دور کرتا ہے مصیبت کو اور تمہیں زمین میں ایک دوسرے کی جگہ پر لاتا ہے۔ کیا اللہ کے ساتھ اور کوئی خدا ہے؟ بہت کم تم سمجھانے کا اثر لیتے ہو (62) یا وہ جو تمہیں راستہ دکھاتا ہے خشکی اور تری کے اندھیروں میں اور جو ہواؤں کو بھیجتا ہے خوش خبری دیتے ہوئے اپنی رحمت کے آگے؟ کیا کوئی اور خدا ہے اللہ کے ساتھ؟ بالاتر ہے اللہ اس سے جو وہ شرک کرتے ہیں (63) یا وہ جو پہلی دفعہ مخلوق کو پیدا کرتا ہے، پھر اس کو دوبارہ اٹھائے گا اور جو تمہیں آسمان و زمین سے روزی عطا کرتا ہے؟ کیا کوئی خدا ہے اللہ کے ساتھ؟ کہئے کہ لاؤ اپنی دلیل اگر تم سچے ہو (64) کہئے کہ آسمانوں اور زمین میں جو بھی ہے، وہ کوئی غیب کو نہیں جانتا سوا اللہ کے اور انہیں خبر نہیں کہ وہ کب اٹھائے جائیں گے؟ (65) بلکہ رفتہ رفتہ آخرت کی منزل میں جا کر انہیں پورا علم ہو گا ہاں (ابھی) وہ اس کے متعلق شک میں مبتلا ہیں بلکہ وہ اس کی طرف سے اندھے ہیں (66) اور کافر لوگوں نے کہا کہ کیا جب ہم خاک ہو جائیں گے اور ہمارے باپ دادا، تب ہم برآمد کیے جائیں گے؟ (67) یہ ہم سے پہلے بھی وعدہ و عید کیا گیا اور ہمارے باپ داداؤں سے بھی اس کے پہلے۔ یہ نہیں ہیں سوا اگلے زمانے والوں کی کہانیوں کے (68) کہئے کہ چلو پھرو زمین میں دیکھو کہ کیا ہوا انجام گنہگاروں کا (69) اور آپ ان پر رنج نہ کیجئے اور دل تنگ نہ ہوجیئے اس سے جو وہ ترکیبیں کرتے ہیں (70) اور وہ کہتے ہیں کہ یہ وعدہ و عید کب پورا ہو گا اگر تم لوگ سچے ہو؟ (71) کہئے کہ بہت ممکن ہے کہ نزدیک ہو گیا ہو کچھ حصہ اس کا جس کے لیے تم جلدی کرتے ہو (72) اور بلاشبہ آپ کا پروردگار بڑے فضل و کرم والا ہے تمام لوگوں پر مگر ان میں کے زیادہ شکر گزار نہیں ہیں (73) اور بلاشبہ آپ کا پروردگار جانتا ہے اسے جو ان کے سینے چھپائے ہوئے ہیں اور اسے جو وہ ظاہر کرتے ہیں (74) اور کوئی چیز آسمان اور زمین میں پوشیدہ نہیں مگر یہ کہ وہ ایک کھلے ہوئے نوشتے میں ہے (75) بلاشبہ یہ قرآن بیان کرتا ہے بنی اسرائیل کے سامنے اکثر وہ باتیں جن میں وہ باہم اختلاف رکھتے ہیں (76) اور بلاشبہ وہ ہدایت اور رحمت ہے ایمان لانے والوں کے لیے (77) بلاشبہ آپ کا پروردگار ان کے درمیان فیصلہ کرتا ہے اپنے حکم سے اور وہ عزت والا ہے، بڑا جاننے والا (78) تو اللہ پر بھروسا کیجئے، بلاشبہ آپ کھلے ہوئے حق پر ہیں (79) یقینا آپ مردوں کو آواز نہیں سنا سکتے اور نہ بہروں کو صدا پہنچا سکتے ہیں، سب وہ پیٹھ پھرا کر روگردانی کریں (80) اور نہ آپ اندھوں کو ان کی گمراہی سے ہٹا کر راستہ دکھا سکتے ہیں۔ آپ نہیں سنا سکتے سوا ان کے جو ہماری نشانیوں کے ماننے کے لئے تیار ہوں تو یہی اسلام قبول کرنے والے ہوتے ہیں (81) اور جب ان پر حکم آ جائے گا تو ان کے لیے ہم زمین میں سے ایک چلنے پھرنے والا برآمد کریں گے جو ان سے بات کرے گا اس بنا پر کہ لوگ ہماری آیتوں پر یقین نہیں کرتے تھے (82) اور جس دن ہم اٹھائیں گے ہر قوم میں سے ایک دستے کو ان میں سے جو ہماری آیتوں کو جھٹلاتے ہیں تو انہیں تنبیہہ کی جائے گی (83) یہاں تک کہ جب وہ آئیں گے تو ارشاد ہو گا کہ کیا تم نے میری آیتوں کو جھٹلایا اس حالت میں کہ تمہارا علم اس پر حاوی نہ تھا یا کیا تھا جو تم کرتے تھے؟ (84) اور حکم چل گیا ہو گا ان پر اس لیے کہ وہ ظلم کے مرتکب ہوتے تھے تو وہ اب بات نہیں کرتے ہوں گے (85) کیا انہوں نے نہیں دیکھا کہ ہم نے رات بنائی اس لیے کہ وہ اس میں سکون حاصل کریں اور دن کو روشن بنایا، بلاشبہ اس میں نشانیاں ہیں ان کے لیے جو ایمان لانے پر آمادہ ہوں (86) اور جس دن صور پھونکا جائے گا تو گھبرا جائیں گے جو آسمانوں میں ہیں اور جو زمین میں ہیں سوا اس کے جسے اللہ چاہے اور سب اسکی طرف آئیں گے سر جھکائے ہوئے (87) اور تم دیکھتے ہو پہاڑوں کو، سمجھتے ہو انہیں قائم و برقرار، حالاں کہ وہ بادلوں کی طرح رواں دواں ہیں، یہ اللہ کی صناعی ہے جس نے ہر شے کو پائدار بنایا ہے بلاشبہ وہ خوب جانتا ہے اسے جو تم کرتے ہو (88) جو نیک کام کرتا ہے، اسے اس سے بہتر ملے گا اور وہ اس دن کی گھبراہٹ سے محفوظ ہوں گے (89) اور جنہوں نے برائی کی وہ اوندھے منہ آگ میں گرائے جائیں گے۔ کیا تمہیں جو کچھ تم کرتے تھے، اس سے الگ کوئی سز امل رہی ہے (90) مجھے تو بس یہ حکم ہوا ہے کہ اس شہر کے پروردگار کی عبادت کروں جس نے اسے محترم قرار دیا ہے اور اسی کی ہر چیز ہے اور مجھے حکم ہوا ہے کہ میں اسلام اختیار کرنے والوں میں ہوں (91) اور یہ کہ میں قرآن پڑھ کر سنا دوں، اب جو ہدایت پائے گا وہ اپنے لیے ہدایت پائے گا اور جو گمراہی پر برقرار رہے تو کہئے کہ میں تو بس خوف دلانے والوں میں سے ہوں (92) اور کہئے کہ سب تعریف اللہ کے لیے ہے، وہ بہت جلد تمہیں اپنی نشانیاں دکھائے گا تو تم انہیں پہچان لو گے اور نہیں ہے تمہارا پروردگار غافل اس سے جو تم لوگ کرتے ہو (93)

پچھلی سورت:
سورہ شعراء
سورہ 27 اگلی سورت:
سورہ قصص
قرآن کریم

(1) سورہ فاتحہ (2) سورہ بقرہ (3) سورہ آل عمران (4) سورہ نساء (5) سورہ مائدہ (6) سورہ انعام (7) سورہ اعراف (8) سورہ انفال (9) سورہ توبہ (10) سورہ یونس (11) سورہ ہود (12) سورہ یوسف (13) سورہ رعد (14) سورہ ابراہیم (15) سورہ حجر (16) سورہ نحل (17) سورہ اسراء (18) سورہ کہف (19) سورہ مریم (20) سورہ طہ (21) سورہ انبیاء (22) سورہ حج (23) سورہ مؤمنون (24) سورہ نور (25) سورہ فرقان (26) سورہ شعراء (27) سورہ نمل (28) سورہ قصص (29) سورہ عنکبوت (30) سورہ روم (31) سورہ لقمان (32) سورہ سجدہ (33) سورہ احزاب (34) سورہ سباء (35) سورہ فاطر (36) سورہ یس (37) سورہ صافات (38) سورہ ص (39) سورہ زمر (40) سورہ غافر (41) سورہ فصلت (42) سورہ شوری (43) سورہ زخرف (44) سورہ دخان (45) سورہ جاثیہ (46) سورہ احقاف (47) سورہ محمد (48) سورہ فتح (49) سورہ حجرات (50) سورہ ق (51) سورہ ذاریات (52) سورہ طور (53) سورہ نجم (54) سورہ قمر (55) سورہ رحمن (56) سورہ واقعہ (57) سورہ حدید (58) سورہ مجادلہ (59) سورہ حشر (60) سورہ ممتحنہ (61) سورہ صف (62) سورہ جمعہ (63) سورہ منافقون (64) سورہ تغابن (65) سورہ طلاق (66) سورہ تحریم (67) سورہ ملک (68) سورہ قلم (69) سورہ حاقہ (70) سورہ معارج (71) سورہ نوح (72) سورہ جن (73) سورہ مزمل (74) سورہ مدثر (75) سورہ قیامہ (76) سورہ انسان (77) سورہ مرسلات (78) سورہ نباء (79) سورہ نازعات (80) سورہ عبس (81) سورہ تکویر (82) سورہ انفطار (83) سورہ مطففین (84) سورہ انشقاق (85) سورہ بروج (86) سورہ طارق (87) سورہ اعلی (88) سورہ غاشیہ (89) سورہ فجر (90) سورہ بلد (91) سورہ شمس (92) سورہ لیل (93) سورہ ضحی (94) سورہ شرح (95) سورہ تین (96) سورہ علق (97) سورہ قدر (98) سورہ بینہ (99) سورہ زلزال (100) سورہ عادیات (101) سورہ قارعہ (102) سورہ تکاثر (103) سورہ عصر (104) سورہ ہمزہ (105) سورہ فیل (106) سورہ قریش (107) سورہ ماعون (108) سورہ کوثر (109) سورہ کافرون (110) سورہ نصر (111) سورہ مسد (112) سورہ اخلاص (113) سورہ فلق (114) سورہ ناس


متعلقہ مآخذ

پاورقی حاشیے

  1. دانشنامه قرآن و قرآن پژوهی، ج2، ص1244۔
  2. دانشنامه قرآن و قرآن پژوهی، ج2، ص1244۔


منابع