سورہ زمر

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
ص سورۂ زمر غافر
سوره زمر.jpg
ترتیب کتابت: 39
پارہ : 23 و 24
نزول
ترتیب نزول: 59
مکی/ مدنی: مکی
اعداد و شمار
آیات: 75
الفاظ: 1180
حروف: 4871

سورہ زمر [سُوْرَةُ الزُمَرً]، کو اس سورت میں لفظ "زمر" استعمال ہونے کے باعث، اس نام سے موسوم کیا گیا ہے۔ اس سورت میں جنتیوں کی جماعت کی جنت منتقلی اور دوزخیوں کے دوزخ میں ہانکے جانے کی طرف اشارہ ہوا ہے۔ حجم و کمیت کے لحاظ سے سور مثانی کے زمرے میں آتی ہے اور تقریبا نصف پارے کا احاطہ کئے ہوئے ہے۔

نام

لفظ "زُمَر" (زمرہ بمعنی گروہ و جماعت، کی جمع = جماعتیں) صرف دو بار قرآن کی اسی سورت میں استعمال ہوا ہے (:آیات 71 و 73)۔ ان آیات میں جنتیوں کی جماعت کی جنت منتقلی اور دوزخیوں کے دوزخ میں ہانکے جانے کی طرف اشارہ ہوا ہے۔ اس سورت کا دوسرا نام "سورۃ الغُرَف" (غرفہ بمعنی کمرہ، کی جمع) ہے اور لفظ "غُرَف" دو بار اس سورت کی آیت 20 میں بروئے کا لایا گیا ہے اور جنت کے کمروں کی طرف اشارہ ہے۔ اس کا تیسرا نام "سورۃ العرب" ہے کیونکہ اس کی آیت 28 میں قرآن کو "عربی" کے عنوان سے متعارف کرایا گیا ہے [قُرآنًا عَرَبِيًّا غَيْرَ ذِي عِوَجٍ، یعنی عربی زبان کا قرآن جس میں کوئی کجی نہیں]۔

کوائف

سورہ زمر کی آیات کی تعداد 75 اور بعض قراء کے بقول 73 اور دیگر کے بقول 72 ہے لیکن اول الذکر قول مشہور ہے۔ اس کے الفاظ کی تعداد 1180 اور حروف کی تعداد 4817 ہے۔ یہ سورت ترتیب مصحف کے لحاظ سے انتالیسویں اور نزول کے لحاظ سے انسٹھویں سورت ہے؛ مکی ہے۔ حجم و کمیت کے لحاظ سے سُوَرِ مثانی کے زمرے میں آتی ہے اور تقریبا نصف پارے کے برابر ہے۔

مفاہیم

اس سورت میں مندرجہ مفاہیم و موضوعات درج ذیل ہیں۔[1]:

  • توحید اور باپ بننے اور صاحب فرزند رکھنے کی صفت سے اللہ کی تنزیہ؛
  • خالصانہ عبادات
  • انسان ضرورت اور پریشانی کی حالت میں خدا کی طرف متوجہ ہوتا ہے لیکن فراخی حاصل ہونے کے بعد غفلت سے دوچار ہوتا ہے؛
  • مسئلۂ معاد و حشر اور متعلقہ مسائل؛
  • آنے والی دنیا میں مؤمنین اور کفار کے حالات؛
  • دانا اور نادان لوگوں کی عدم برابری؛


متن سورہ

سورہ زمر مکیہ ـ نمبر 39 - آیات 75 - ترتیب نزول 59
بِسْمِ اللّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ

تَنزِيلُ الْكِتَابِ مِنَ اللَّهِ الْعَزِيزِ الْحَكِيمِ ﴿1﴾ إِنَّا أَنزَلْنَا إِلَيْكَ الْكِتَابَ بِالْحَقِّ فَاعْبُدِ اللَّهَ مُخْلِصًا لَّهُ الدِّينَ ﴿2﴾ أَلَا لِلَّهِ الدِّينُ الْخَالِصُ وَالَّذِينَ اتَّخَذُوا مِن دُونِهِ أَوْلِيَاء مَا نَعْبُدُهُمْ إِلَّا لِيُقَرِّبُونَا إِلَى اللَّهِ زُلْفَى إِنَّ اللَّهَ يَحْكُمُ بَيْنَهُمْ فِي مَا هُمْ فِيهِ يَخْتَلِفُونَ إِنَّ اللَّهَ لَا يَهْدِي مَنْ هُوَ كَاذِبٌ كَفَّارٌ ﴿3﴾ لَوْ أَرَادَ اللَّهُ أَنْ يَتَّخِذَ وَلَدًا لَّاصْطَفَى مِمَّا يَخْلُقُ مَا يَشَاء سُبْحَانَهُ هُوَ اللَّهُ الْوَاحِدُ الْقَهَّارُ ﴿4﴾ خَلَقَ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضَ بِالْحَقِّ يُكَوِّرُ اللَّيْلَ عَلَى النَّهَارِ وَيُكَوِّرُ النَّهَارَ عَلَى اللَّيْلِ وَسَخَّرَ الشَّمْسَ وَالْقَمَرَ كُلٌّ يَجْرِي لِأَجَلٍ مُسَمًّى أَلَا هُوَ الْعَزِيزُ الْغَفَّارُ ﴿5﴾ خَلَقَكُم مِّن نَّفْسٍ وَاحِدَةٍ ثُمَّ جَعَلَ مِنْهَا زَوْجَهَا وَأَنزَلَ لَكُم مِّنْ الْأَنْعَامِ ثَمَانِيَةَ أَزْوَاجٍ يَخْلُقُكُمْ فِي بُطُونِ أُمَّهَاتِكُمْ خَلْقًا مِن بَعْدِ خَلْقٍ فِي ظُلُمَاتٍ ثَلَاثٍ ذَلِكُمُ اللَّهُ رَبُّكُمْ لَهُ الْمُلْكُ لَا إِلَهَ إِلَّا هُوَ فَأَنَّى تُصْرَفُونَ ﴿6﴾ إِن تَكْفُرُوا فَإِنَّ اللَّهَ غَنِيٌّ عَنكُمْ وَلَا يَرْضَى لِعِبَادِهِ الْكُفْرَ وَإِن تَشْكُرُوا يَرْضَهُ لَكُمْ وَلَا تَزِرُ وَازِرَةٌ وِزْرَ أُخْرَى ثُمَّ إِلَى رَبِّكُم مَّرْجِعُكُمْ فَيُنَبِّئُكُم بِمَا كُنتُمْ تَعْمَلُونَ إِنَّهُ عَلِيمٌ بِذَاتِ الصُّدُورِ ﴿7﴾ وَإِذَا مَسَّ الْإِنسَانَ ضُرٌّ دَعَا رَبَّهُ مُنِيبًا إِلَيْهِ ثُمَّ إِذَا خَوَّلَهُ نِعْمَةً مِّنْهُ نَسِيَ مَا كَانَ يَدْعُو إِلَيْهِ مِن قَبْلُ وَجَعَلَ لِلَّهِ أَندَادًا لِّيُضِلَّ عَن سَبِيلِهِ قُلْ تَمَتَّعْ بِكُفْرِكَ قَلِيلًا إِنَّكَ مِنْ أَصْحَابِ النَّارِ ﴿8﴾ أَمَّنْ هُوَ قَانِتٌ آنَاء اللَّيْلِ سَاجِدًا وَقَائِمًا يَحْذَرُ الْآخِرَةَ وَيَرْجُو رَحْمَةَ رَبِّهِ قُلْ هَلْ يَسْتَوِي الَّذِينَ يَعْلَمُونَ وَالَّذِينَ لَا يَعْلَمُونَ إِنَّمَا يَتَذَكَّرُ أُوْلُوا الْأَلْبَابِ ﴿9﴾ قُلْ يَا عِبَادِ الَّذِينَ آمَنُوا اتَّقُوا رَبَّكُمْ لِلَّذِينَ أَحْسَنُوا فِي هَذِهِ الدُّنْيَا حَسَنَةٌ وَأَرْضُ اللَّهِ وَاسِعَةٌ إِنَّمَا يُوَفَّى الصَّابِرُونَ أَجْرَهُم بِغَيْرِ حِسَابٍ ﴿10﴾ قُلْ إِنِّي أُمِرْتُ أَنْ أَعْبُدَ اللَّهَ مُخْلِصًا لَّهُ الدِّينَ ﴿11﴾ وَأُمِرْتُ لِأَنْ أَكُونَ أَوَّلَ الْمُسْلِمِينَ ﴿12﴾ قُلْ إِنِّي أَخَافُ إِنْ عَصَيْتُ رَبِّي عَذَابَ يَوْمٍ عَظِيمٍ ﴿13﴾ قُلِ اللَّهَ أَعْبُدُ مُخْلِصًا لَّهُ دِينِي ﴿14﴾ فَاعْبُدُوا مَا شِئْتُم مِّن دُونِهِ قُلْ إِنَّ الْخَاسِرِينَ الَّذِينَ خَسِرُوا أَنفُسَهُمْ وَأَهْلِيهِمْ يَوْمَ الْقِيَامَةِ أَلَا ذَلِكَ هُوَ الْخُسْرَانُ الْمُبِينُ ﴿15﴾ لَهُم مِّن فَوْقِهِمْ ظُلَلٌ مِّنَ النَّارِ وَمِن تَحْتِهِمْ ظُلَلٌ ذَلِكَ يُخَوِّفُ اللَّهُ بِهِ عِبَادَهُ يَا عِبَادِ فَاتَّقُونِ ﴿16﴾ وَالَّذِينَ اجْتَنَبُوا الطَّاغُوتَ أَن يَعْبُدُوهَا وَأَنَابُوا إِلَى اللَّهِ لَهُمُ الْبُشْرَى فَبَشِّرْ عِبَادِ ﴿17﴾ الَّذِينَ يَسْتَمِعُونَ الْقَوْلَ فَيَتَّبِعُونَ أَحْسَنَهُ أُوْلَئِكَ الَّذِينَ هَدَاهُمُ اللَّهُ وَأُوْلَئِكَ هُمْ أُوْلُوا الْأَلْبَابِ ﴿18﴾ أَفَمَنْ حَقَّ عَلَيْهِ كَلِمَةُ الْعَذَابِ أَفَأَنتَ تُنقِذُ مَن فِي النَّارِ ﴿19﴾ لَكِنِ الَّذِينَ اتَّقَوْا رَبَّهُمْ لَهُمْ غُرَفٌ مِّن فَوْقِهَا غُرَفٌ مَّبْنِيَّةٌ تَجْرِي مِن تَحْتِهَا الْأَنْهَارُ وَعْدَ اللَّهِ لَا يُخْلِفُ اللَّهُ الْمِيعَادَ ﴿20﴾ أَلَمْ تَرَ أَنَّ اللَّهَ أَنزَلَ مِنَ السَّمَاء مَاء فَسَلَكَهُ يَنَابِيعَ فِي الْأَرْضِ ثُمَّ يُخْرِجُ بِهِ زَرْعًا مُّخْتَلِفًا أَلْوَانُهُ ثُمَّ يَهِيجُ فَتَرَاهُ مُصْفَرًّا ثُمَّ يَجْعَلُهُ حُطَامًا إِنَّ فِي ذَلِكَ لَذِكْرَى لِأُوْلِي الْأَلْبَابِ ﴿21﴾ أَفَمَن شَرَحَ اللَّهُ صَدْرَهُ لِلْإِسْلَامِ فَهُوَ عَلَى نُورٍ مِّن رَّبِّهِ فَوَيْلٌ لِّلْقَاسِيَةِ قُلُوبُهُم مِّن ذِكْرِ اللَّهِ أُوْلَئِكَ فِي ضَلَالٍ مُبِينٍ ﴿22﴾ اللَّهُ نَزَّلَ أَحْسَنَ الْحَدِيثِ كِتَابًا مُّتَشَابِهًا مَّثَانِيَ تَقْشَعِرُّ مِنْهُ جُلُودُ الَّذِينَ يَخْشَوْنَ رَبَّهُمْ ثُمَّ تَلِينُ جُلُودُهُمْ وَقُلُوبُهُمْ إِلَى ذِكْرِ اللَّهِ ذَلِكَ هُدَى اللَّهِ يَهْدِي بِهِ مَنْ يَشَاء وَمَن يُضْلِلْ اللَّهُ فَمَا لَهُ مِنْ هَادٍ ﴿23﴾ أَفَمَن يَتَّقِي بِوَجْهِهِ سُوءَ الْعَذَابِ يَوْمَ الْقِيَامَةِ وَقِيلَ لِلظَّالِمِينَ ذُوقُوا مَا كُنتُمْ تَكْسِبُونَ ﴿24﴾ كَذَّبَ الَّذِينَ مِن قَبْلِهِمْ فَأَتَاهُمْ الْعَذَابُ مِنْ حَيْثُ لَا يَشْعُرُونَ ﴿25﴾ فَأَذَاقَهُمُ اللَّهُ الْخِزْيَ فِي الْحَيَاةِ الدُّنْيَا وَلَعَذَابُ الْآخِرَةِ أَكْبَرُ لَوْ كَانُوا يَعْلَمُونَ ﴿26﴾ وَلَقَدْ ضَرَبْنَا لِلنَّاسِ فِي هَذَا الْقُرْآنِ مِن كُلِّ مَثَلٍ لَّعَلَّهُمْ يَتَذَكَّرُونَ ﴿27﴾ قُرآنًا عَرَبِيًّا غَيْرَ ذِي عِوَجٍ لَّعَلَّهُمْ يَتَّقُونَ ﴿28﴾ ضَرَبَ اللَّهُ مَثَلًا رَّجُلًا فِيهِ شُرَكَاء مُتَشَاكِسُونَ وَرَجُلًا سَلَمًا لِّرَجُلٍ هَلْ يَسْتَوِيَانِ مَثَلًا الْحَمْدُ لِلَّهِ بَلْ أَكْثَرُهُمْ لَا يَعْلَمُونَ ﴿29﴾ إِنَّكَ مَيِّتٌ وَإِنَّهُم مَّيِّتُونَ ﴿30﴾ ثُمَّ إِنَّكُمْ يَوْمَ الْقِيَامَةِ عِندَ رَبِّكُمْ تَخْتَصِمُونَ ﴿31﴾ فَمَنْ أَظْلَمُ مِمَّن كَذَبَ عَلَى اللَّهِ وَكَذَّبَ بِالصِّدْقِ إِذْ جَاءهُ أَلَيْسَ فِي جَهَنَّمَ مَثْوًى لِّلْكَافِرِينَ ﴿32﴾ وَالَّذِي جَاء بِالصِّدْقِ وَصَدَّقَ بِهِ أُوْلَئِكَ هُمُ الْمُتَّقُونَ ﴿33﴾ لَهُم مَّا يَشَاءونَ عِندَ رَبِّهِمْ ذَلِكَ جَزَاء الْمُحْسِنِينَ ﴿34﴾ لِيُكَفِّرَ اللَّهُ عَنْهُمْ أَسْوَأَ الَّذِي عَمِلُوا وَيَجْزِيَهُمْ أَجْرَهُم بِأَحْسَنِ الَّذِي كَانُوا يَعْمَلُونَ ﴿35﴾ أَلَيْسَ اللَّهُ بِكَافٍ عَبْدَهُ وَيُخَوِّفُونَكَ بِالَّذِينَ مِن دُونِهِ وَمَن يُضْلِلِ اللَّهُ فَمَا لَهُ مِنْ هَادٍ ﴿36﴾ وَمَن يَهْدِ اللَّهُ فَمَا لَهُ مِن مُّضِلٍّ أَلَيْسَ اللَّهُ بِعَزِيزٍ ذِي انتِقَامٍ ﴿37﴾ وَلَئِن سَأَلْتَهُم مَّنْ خَلَقَ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضَ لَيَقُولُنَّ اللَّهُ قُلْ أَفَرَأَيْتُم مَّا تَدْعُونَ مِن دُونِ اللَّهِ إِنْ أَرَادَنِيَ اللَّهُ بِضُرٍّ هَلْ هُنَّ كَاشِفَاتُ ضُرِّهِ أَوْ أَرَادَنِي بِرَحْمَةٍ هَلْ هُنَّ مُمْسِكَاتُ رَحْمَتِهِ قُلْ حَسْبِيَ اللَّهُ عَلَيْهِ يَتَوَكَّلُ الْمُتَوَكِّلُونَ ﴿38﴾ قُلْ يَا قَوْمِ اعْمَلُوا عَلَى مَكَانَتِكُمْ إِنِّي عَامِلٌ فَسَوْفَ تَعْلَمُونَ ﴿39﴾ مَن يَأْتِيهِ عَذَابٌ يُخْزِيهِ وَيَحِلُّ عَلَيْهِ عَذَابٌ مُّقِيمٌ ﴿40﴾ إِنَّا أَنزَلْنَا عَلَيْكَ الْكِتَابَ لِلنَّاسِ بِالْحَقِّ فَمَنِ اهْتَدَى فَلِنَفْسِهِ وَمَن ضَلَّ فَإِنَّمَا يَضِلُّ عَلَيْهَا وَمَا أَنتَ عَلَيْهِم بِوَكِيلٍ ﴿41﴾ اللَّهُ يَتَوَفَّى الْأَنفُسَ حِينَ مَوْتِهَا وَالَّتِي لَمْ تَمُتْ فِي مَنَامِهَا فَيُمْسِكُ الَّتِي قَضَى عَلَيْهَا الْمَوْتَ وَيُرْسِلُ الْأُخْرَى إِلَى أَجَلٍ مُسَمًّى إِنَّ فِي ذَلِكَ لَآيَاتٍ لِّقَوْمٍ يَتَفَكَّرُونَ ﴿42﴾ أَمِ اتَّخَذُوا مِن دُونِ اللَّهِ شُفَعَاء قُلْ أَوَلَوْ كَانُوا لَا يَمْلِكُونَ شَيْئًا وَلَا يَعْقِلُونَ ﴿43﴾ قُل لِّلَّهِ الشَّفَاعَةُ جَمِيعًا لَّهُ مُلْكُ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ ثُمَّ إِلَيْهِ تُرْجَعُونَ ﴿44﴾ وَإِذَا ذُكِرَ اللَّهُ وَحْدَهُ اشْمَأَزَّتْ قُلُوبُ الَّذِينَ لَا يُؤْمِنُونَ بِالْآخِرَةِ وَإِذَا ذُكِرَ الَّذِينَ مِن دُونِهِ إِذَا هُمْ يَسْتَبْشِرُونَ ﴿45﴾ قُلِ اللَّهُمَّ فَاطِرَ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ عَالِمَ الْغَيْبِ وَالشَّهَادَةِ أَنتَ تَحْكُمُ بَيْنَ عِبَادِكَ فِي مَا كَانُوا فِيهِ يَخْتَلِفُونَ ﴿46﴾ وَلَوْ أَنَّ لِلَّذِينَ ظَلَمُوا مَا فِي الْأَرْضِ جَمِيعًا وَمِثْلَهُ مَعَهُ لَافْتَدَوْا بِهِ مِن سُوءِ الْعَذَابِ يَوْمَ الْقِيَامَةِ وَبَدَا لَهُم مِّنَ اللَّهِ مَا لَمْ يَكُونُوا يَحْتَسِبُونَ ﴿47﴾ وَبَدَا لَهُمْ سَيِّئَاتُ مَا كَسَبُوا وَحَاقَ بِهِم مَّا كَانُوا بِهِ يَسْتَهْزِئُون ﴿48﴾ فَإِذَا مَسَّ الْإِنسَانَ ضُرٌّ دَعَانَا ثُمَّ إِذَا خَوَّلْنَاهُ نِعْمَةً مِّنَّا قَالَ إِنَّمَا أُوتِيتُهُ عَلَى عِلْمٍ بَلْ هِيَ فِتْنَةٌ وَلَكِنَّ أَكْثَرَهُمْ لَا يَعْلَمُونَ ﴿49﴾ قَدْ قَالَهَا الَّذِينَ مِن قَبْلِهِمْ فَمَا أَغْنَى عَنْهُم مَّا كَانُوا يَكْسِبُونَ ﴿50﴾ فَأَصَابَهُمْ سَيِّئَاتُ مَا كَسَبُوا وَالَّذِينَ ظَلَمُوا مِنْ هَؤُلَاء سَيُصِيبُهُمْ سَيِّئَاتُ مَا كَسَبُوا وَمَا هُم بِمُعْجِزِينَ ﴿51﴾ أَوَلَمْ يَعْلَمُوا أَنَّ اللَّهَ يَبْسُطُ الرِّزْقَ لِمَن يَشَاء وَيَقْدِرُ إِنَّ فِي ذَلِكَ لَآيَاتٍ لِّقَوْمٍ يُؤْمِنُونَ ﴿52﴾ قُلْ يَا عِبَادِيَ الَّذِينَ أَسْرَفُوا عَلَى أَنفُسِهِمْ لَا تَقْنَطُوا مِن رَّحْمَةِ اللَّهِ إِنَّ اللَّهَ يَغْفِرُ الذُّنُوبَ جَمِيعًا إِنَّهُ هُوَ الْغَفُورُ الرَّحِيمُ ﴿53﴾ وَأَنِيبُوا إِلَى رَبِّكُمْ وَأَسْلِمُوا لَهُ مِن قَبْلِ أَن يَأْتِيَكُمُ الْعَذَابُ ثُمَّ لَا تُنصَرُونَ ﴿54﴾ وَاتَّبِعُوا أَحْسَنَ مَا أُنزِلَ إِلَيْكُم مِّن رَّبِّكُم مِّن قَبْلِ أَن يَأْتِيَكُمُ العَذَابُ بَغْتَةً وَأَنتُمْ لَا تَشْعُرُونَ ﴿55﴾ أَن تَقُولَ نَفْسٌ يَا حَسْرَتَى علَى مَا فَرَّطتُ فِي جَنبِ اللَّهِ وَإِن كُنتُ لَمِنَ السَّاخِرِينَ ﴿56﴾ أَوْ تَقُولَ لَوْ أَنَّ اللَّهَ هَدَانِي لَكُنتُ مِنَ الْمُتَّقِينَ ﴿57﴾ أَوْ تَقُولَ حِينَ تَرَى الْعَذَابَ لَوْ أَنَّ لِي كَرَّةً فَأَكُونَ مِنَ الْمُحْسِنِينَ ﴿58﴾ بَلَى قَدْ جَاءتْكَ آيَاتِي فَكَذَّبْتَ بِهَا وَاسْتَكْبَرْتَ وَكُنتَ مِنَ الْكَافِرِينَ ﴿59﴾ وَيَوْمَ الْقِيَامَةِ تَرَى الَّذِينَ كَذَبُواْ عَلَى اللَّهِ وُجُوهُهُم مُّسْوَدَّةٌ أَلَيْسَ فِي جَهَنَّمَ مَثْوًى لِّلْمُتَكَبِّرِينَ ﴿60﴾ وَيُنَجِّي اللَّهُ الَّذِينَ اتَّقَوا بِمَفَازَتِهِمْ لَا يَمَسُّهُمُ السُّوءُ وَلَا هُمْ يَحْزَنُونَ ﴿61﴾ اللَّهُ خَالِقُ كُلِّ شَيْءٍ وَهُوَ عَلَى كُلِّ شَيْءٍ وَكِيلٌ ﴿62﴾ لَهُ مَقَالِيدُ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ وَالَّذِينَ كَفَرُوا بِآيَاتِ اللَّهِ أُوْلَئِكَ هُمُ الْخَاسِرُونَ ﴿63﴾ قُلْ أَفَغَيْرَ اللَّهِ تَأْمُرُونِّي أَعْبُدُ أَيُّهَا الْجَاهِلُونَ ﴿64﴾ وَلَقَدْ أُوحِيَ إِلَيْكَ وَإِلَى الَّذِينَ مِنْ قَبْلِكَ لَئِنْ أَشْرَكْتَ لَيَحْبَطَنَّ عَمَلُكَ وَلَتَكُونَنَّ مِنَ الْخَاسِرِينَ ﴿65﴾ بَلِ اللَّهَ فَاعْبُدْ وَكُن مِّنْ الشَّاكِرِينَ ﴿66﴾ وَمَا قَدَرُوا اللَّهَ حَقَّ قَدْرِهِ وَالْأَرْضُ جَمِيعًا قَبْضَتُهُ يَوْمَ الْقِيَامَةِ وَالسَّماوَاتُ مَطْوِيَّاتٌ بِيَمِينِهِ سُبْحَانَهُ وَتَعَالَى عَمَّا يُشْرِكُونَ ﴿67﴾ وَنُفِخَ فِي الصُّورِ فَصَعِقَ مَن فِي السَّمَاوَاتِ وَمَن فِي الْأَرْضِ إِلَّا مَن شَاء اللَّهُ ثُمَّ نُفِخَ فِيهِ أُخْرَى فَإِذَا هُم قِيَامٌ يَنظُرُونَ ﴿68﴾ وَأَشْرَقَتِ الْأَرْضُ بِنُورِ رَبِّهَا وَوُضِعَ الْكِتَابُ وَجِيءَ بِالنَّبِيِّينَ وَالشُّهَدَاء وَقُضِيَ بَيْنَهُم بِالْحَقِّ وَهُمْ لَا يُظْلَمُونَ ﴿69﴾ وَوُفِّيَتْ كُلُّ نَفْسٍ مَّا عَمِلَتْ وَهُوَ أَعْلَمُ بِمَا يَفْعَلُونَ ﴿70﴾ وَسِيقَ الَّذِينَ كَفَرُوا إِلَى جَهَنَّمَ زُمَرًا حَتَّى إِذَا جَاؤُوهَا فُتِحَتْ أَبْوَابُهَا وَقَالَ لَهُمْ خَزَنَتُهَا أَلَمْ يَأْتِكُمْ رُسُلٌ مِّنكُمْ يَتْلُونَ عَلَيْكُمْ آيَاتِ رَبِّكُمْ وَيُنذِرُونَكُمْ لِقَاء يَوْمِكُمْ هَذَا قَالُوا بَلَى وَلَكِنْ حَقَّتْ كَلِمَةُ الْعَذَابِ عَلَى الْكَافِرِينَ ﴿71﴾ قِيلَ ادْخُلُوا أَبْوَابَ جَهَنَّمَ خَالِدِينَ فِيهَا فَبِئْسَ مَثْوَى الْمُتَكَبِّرِينَ ﴿72﴾ وَسِيقَ الَّذِينَ اتَّقَوْا رَبَّهُمْ إِلَى الْجَنَّةِ زُمَرًا حَتَّى إِذَا جَاؤُوهَا وَفُتِحَتْ أَبْوَابُهَا وَقَالَ لَهُمْ خَزَنَتُهَا سَلَامٌ عَلَيْكُمْ طِبْتُمْ فَادْخُلُوهَا خَالِدِينَ ﴿73﴾ وَقَالُوا الْحَمْدُ لِلَّهِ الَّذِي صَدَقَنَا وَعْدَهُ وَأَوْرَثَنَا الْأَرْضَ نَتَبَوَّأُ مِنَ الْجَنَّةِ حَيْثُ نَشَاء فَنِعْمَ أَجْرُ الْعَامِلِينَ ﴿74﴾ وَتَرَى الْمَلَائِكَةَ حَافِّينَ مِنْ حَوْلِ الْعَرْشِ يُسَبِّحُونَ بِحَمْدِ رَبِّهِمْ وَقُضِيَ بَيْنَهُم بِالْحَقِّ وَقِيلَ الْحَمْدُ لِلَّهِ رَبِّ الْعَالَمِينَ ﴿75﴾

قرآن کریم


ترجمہ
اللہ کے نام سے جو بہت رحم والا نہایت مہربان ہے

کتاب کا اتارا جانا ہے اللہ کی طرف سے جو عزت والا، صحیح کام کرنے والا ہے (1) یقینا ہم نے آپ پر یہ کتاب اتاری ہے سچائی کے ساتھ تو اللہ کی عبادت کیجئے خالص رکھتے ہوئے دین کو اس کے لیے (2) معلوم رہے کہ خالص دین کا مرکز صرف اللہ ہے اور جنہوں نے اس کے علاوہ سر پرست بنا لیے ہیں (کہتے ہیں کہ) ہم ان کی عبادت نہیں کرتے ہیں مگر اس لیے کہ ہم کو اللہ کی بارگاہ میں قریب کریں، بلاشبہ اللہ فیصلہ کرے گا ان کے درمیان اس میں کہ جس کے بارے میں وہ اختلاف رکھتے ہیں۔ یقینااللہ منزل مقصود تک نہیں پہنچاتا ایسے کو جو جھوٹا بڑا نا شکرا ہو (3) اگر اللہ چاہتا کہ کوئی اولاد اختیار کرے تو اپنے مخلوقات میں سے جسے چاہتا منتخب کر لیتا۔ پاک ہے اس کی ذات وہ تو بس ایک بڑا غالب و قاہر اللہ ہے (4) اس نے آسمانوں اور زمین کو سچائی کے ساتھ پیدا کیا۔ وہ لپیٹتا ہے رات کو دن پر اور لپیٹتا ہے دن کو رات پر اور وہ قابو میں رکھے ہوئے ہے سورج اور چاند کو، ہر ایک چل رہا ہے ایک مقررہ مدت تک معلوم رہے کہ وہ عزت والا بڑا بخشنے والا ہے (5) اس نے تم سب کو پیدا کیا ایک متنفس سے، پھر اس سے اس کے شریک زندگی کو پیدا کیا اور تمہارے لیے اتارا چوپایوں میں سے آٹھوں قسموں کو، وہ تمہیں پیدا کرتا ہے تمہاری ماؤں کے شکموں میں ایک طرح کی تخلیق، پھر دوسری طرح کی تخلیق کے ساتھ تین اندھیرے پردوں میں۔ یہ ہے اللہ تمہارا پروردگار۔ اس کے لیے سلطنت ہے، کوئی خدا نہیں سوا اسکے، تو کدھر منحرف ہوتے ہو (6) اگر تم ناشکر اپن اختیار کرو تو یقین جانو اللہ تم سے بے نیاز ہے اور وہ اپنے بندوں کے لیے ناشکرے پن کو پسند نہیں کرتا اگر تم شکر گزاری کرو تو وہ تمہارے لیے اسے پسند کرتا ہے اور کوئی ایک بوجھ اٹھانے والا دوسرے کا بوجھ نہیں اٹھائے گا پھر تمہارے پروردگار کی طرف تم سب کی رجوع ہو گی اور وہ تمہیں بتائے گا جو تم کرتے تھے یقینا وہ دلوں کی باتوں کا جاننے والا ہے (7) اور جب آدمی پر کوئی مصیبت آتی ہے تو وہ اپنے پروردگار کو پکارتا ہے اس سے لو لگاتے ہوئے، پھر جب وہ اپنی طرف سے اسے کوئی نعمت عطا کرتا ہے تو وہ بھول جاتا ہے اسے جس کے واسطے وہ پہلے پکار رہا تھا اور اللہ کے لیے شریک قرار دیتا ہے کہ اس کے راستے سے گمراہ کرے۔ کہو کہ فائدہ اٹھا لو اپنے ناشکرے پن سے تھوڑے دن یقینا تو دوزخ والوں میں سے ہے (8) آیا وہ شخص جو عبادت کرنے والا ہے رات کے لمحات میں سجدے کی حالت میں اور قیام میں کہ آخرت سے ڈرتا ہے اور اپنے پروردگار کی رحمت کا امیدوار رہتا ہے ؟ کہئے کہ کیا برابر ہیں وہ جو علم رکھتے ہیں اور وہ جو علم نہیں رکھتے ؟ بس نصیحت تو صاحبان عقل ہی قبول کرتے ہیں (9) کہہ دیجئے کہ اے میرے وہ بندو جو ایمان لائے ہو، اپنے پروردگار سے ڈرو، ان کے لیے جنہوں نے نیک کام کیے اس دنیا میں بھلائی ہے اور اللہ کے زمین وسیع ہے، صبر کرنے والوں کا ثواب بس پورا پورا ان کے انداز سے زیادہ ہی دیا جائے گا (10) کہہ دیجئے کہ مجھے حکم یہ ہے کہ میں اللہ کی عبادت کروں اس کی خالص اطاعت کرتے ہوئے (11) اور مجھے حکم ہے کہ میں اول نمبر کا مسلمان ہو (12) کہئے کہ میں ڈرتا ہوں اگر نافرمانی کروں اپنے پروردگار کی ایک بڑے دن کے عذاب سے (13) کہئے کہ میں صرف اللہ کی عبادت کرتا ہوں اس کے لیے اپنی عبادت کو خالص رکھتے ہوئے (14) تو تم اسے چھوڑ کر جس کی چاہو عبادت کرو، کہیے کہ گھاٹا اٹھانے والے وہ ہیں جنہوں نے گھاٹا پہنچایا اپنے کو اور اپنے گھر والوں کو قیامت کے دن معلوم ہونا چاہیے کہ یہ کھلا ہوا گھاٹا ہے (15) ان کے لیے ان کے اوپر سے سائبان ہیں آگ کے اور ان کے نیچے سے بھی ایسے ہی تختے ہیں آگ کے یہ ہے جس سے ڈراتا ہے اللہ اپنے بندوں کو۔ اے میرے بندو ! تو ڈرو تم مجھ سے (16) اور جنہوں نے باطل معبودوں سے پرہیز کیا کہ وہ ان کی عبادت کریں اور اللہ سے لو لگائی ان کے لیے خوشخبری ہے تو دے دو خوش خبری میرے ان بندوں کو (17) جو بات غور سے سنتے ہیں تو جو اس کا بہترین جز ہے، اس کی پیروی کرتے ہیں۔ یہ وہ ہیں جن کی اللہ نے خاص طور پر راہنمائی کی ہے اور یہ ہیں صاحبان عقل (18) کیا جس پر عذاب کا فیصلہ قلم بند ہو گیا ہے تو کیا آپ اسے چھڑا دیں گے جو آگ میں ہے (19) مگر وہ جو اپنے پروردگار سے ڈرتے رہے ان کے لیے بالائی منزل پر کے محل ہیں جن پر اور محل بنے ہوئے ہیں جن کے نیچے سے نہریں رواں ہیں، یہ اللہ کا وعدہ ہے اللہ وعدہ خلافی نہیں کرتا (20) کیا تم نے نہیں دیکھا کہ اللہ نے آسمان کی طرف سے پانی اتارا تو اسے روانہ کر دیا چشموں کی صورت سے زیر زمین، پھر اس سے کھیتی برآمد کرتا ہے جس کے مختلف رنگ ہوتے ہیں پھر وہ خشک ہو جاتی ہے تو اسے زرد دیکھو گے، پھر وہ اسے ریزہ ریزہ کر دیتا ہے، یقینا اس میں یاد دہانی ہے صاحبان عقل کے لیے (21) تو کیا پوچھنا اس کا جس کے سینے کو اللہ نے اسلام کے لیے کھول دیا ہے تو وہ اپنے پروردگار کی طرف سے ایک اجالے کے اوپر ہے۔ اب وائے ہے ان پر جن کے دل یاد الٰہی کی طرف سے سخت رہیں۔ یہ لوگ کھلی ہوئی گمراہی میں ہیں (22) اللہ نے بہترین کلام اتارا ہے، وہ کتاب ایک جو پوری ایک ہی طرح کی ہے، برابر دہرائی جانے والی جس سے رونگٹے کھڑے ہو جاتے ہیں جسم پر ان کے جو اپنے پروردگار کا خوف رکھتے ہیں، پھر اللہ کی طرف سے ان کی کھالیں اور ان کے دل نرم ہو جاتے ہیں، اللہ کی یاد کی طرف۔ یہ اللہ کی طرف کی راہنمائی ہے جس سے وہ منزل مقصود تک پہنچاتا ہے جسے چاہتا ہے اور جسے گمراہی میں چھوڑ دے، اسکا کوئی راہنما نہیں ہے (23) تو کیا پوچھنا اس کا جو اپنے کو بچائے عذاب کی برائی سے قیامت کے دن، اور کہا جائے گا ظالموں سے کہ چکھو اسے جو تم کرتوت کرتے تھے (24) جھٹلایا انہوں نے جو ان کے پہلے تھے تو آگیا ان پر عذاب ایسی صورت سے جس کا انہیں کوئی تصور بھی نہ تھا (25) تو اللہ نے چکھایا انہیں رسوائی کا مزہ اس دنیاوی زندگی میں اور آخرت کا عذاب ضرور اور بھی بڑا ہے کاش وہ جانیں (26) اور ہم نے پیش کی ہیں لوگوں کے لیے اس قرآن میں ہر طرح کی مثالیں، شاید کہ وہ نصیحت قبول کریں (27) عربی زبان کا قرآن جس میں کوئی کجی نہیں، شاید کہ وہ پرہیز گاری اختیار کریں (28) بیان کی ہے اللہ نے ایک مثال کہ ایک آدمی ہے جس کے مالک کئی پست اخلاق اشخاص ہیں آپس میں جھگڑا کرنے والے اور ایک آدمی ہے جو بس ایک شخص کا ہے۔ کیا یہ دونوں یکساں ہیں؟ شکر خدا کا بلکہ ان میں کے زیادہ لوگ جانتے نہیں (29) آپ کو بھی دنیا سے اٹھنا ہے اور وہ بھی یقینا مرنے والے ہیں (30) پھر تم لوگ قیامت کے دن اپنے پروردگار کے یہاں تصفیہ کر لو گے (31) تو اس سے بڑھ کر ظالم کون ہو گا جو اللہ پر جھوٹ لگائے اور سچائی کو جب وہ اس کے پاس آئے جھٹلائے۔ کیا دوزخ میں ٹھکانا کافروں کا نہیں ہے؟ (32) اور جو سچائی کو لے کر آئے اور اس کی تصدیق کرے تو یہ لوگ اصل پرہیز گار ہیں (33) ان کے لیے ان کے پروردگار کے یہاں وہ ہے جو وہ چاہیں، یہ صلہ ہے اچھے اعمال والوں کا (34) تاکہ اللہ ان کے برے سے برے کاموں کو جو انہوں نے کیے تھے، نظر انداز کر دے اور انہیں ان کا اجر دے ان بہترین اعمال کے بدلے جو اب وہ کرتے رہے (35) کیا اللہ اپنے بندے کے لیے کافی نہیں ہے؟ اور آپ کو وہ اس کے سوا دوسروں سے ڈراتے ہیں اور جسے اللہ گمراہی میں چھوڑ دے، اسے کوئی منزل تک پہنچانے والا نہیں (36) اور جسے اللہ منزل تک پہنچائے، اسے کوئی گمراہ کرنے والا نہیں۔ کیا اللہ سب سے زبردست سخت بدلہ لینے والا نہیں ہے (37) اور اگر ان سے پوچھئے کہ آسمان اور زمین کو کس نے پیدا کیا تو وہ کہیں گے اللہ نے، کہئے تو پھر کیا تم نے دیکھا ہے انہیں جن کی تم دہائی دیتے ہو، اگر اللہ مجھے نقصان پہنچانا چاہے تو کیا، یہ اس کی طرف کے نقصان کو دور کر دیں گے یا وہ میرے ساتھ رحمت شامل حال کرنا چاہے تو کیا یہ اس کی رحمت کو رد کر دیں گے ؟ کہئے کہ اللہ میرے لیے کافی ہے، اسی پر بھروسا کرتے ہیں کرنے والے (38) کہئے اے میری قوم والوں، تم اپنی جگہ کام کرتے رہو، میں اپنا کام کرتا ہوں۔ اس کے بعد معلوم ہو گا (39) کہ کس پر وہ عذاب آتا ہے جو اسے رسوا کرے اور کس پر آتا ہے وہ عذاب جو برقرار رہنے والا ہے (40) یقینا ہم نے آپ پر کتاب تمام انسانوں کے لیے حق کے ساتھ اتاری تو جو ہدایت حاصل کرے گا وہ اپنے لیے اور جو گمراہی اختیار کرے گا، وہ اپنا نقصان کرے گا اور آپ کوئی ان کے ٹھیکیدار نہیں ہیں (41) اللہ لیتا ہے جانوں کو ان کے مرنے کے وقت اور جنہیں موت نہیں آئی، ان کے سونے کے عالم میں تو روک لیتا ہے اسے جس پر موت کا فیصلہ کر دیا ہے اور چھوڑ دیتا ہے دوسری کو ایک مقررہ مدت تک، یقینا اس میں نشانیاں ہیں ان کے لیے جو غور و فکر سے کام لیں (42) کیا انہوں نے اللہ کو چھوڑ کر اور سفارشی بنائے ہیں، کہئے کہ کیا چاہے وہ ایسے ہوں کہ جو نہ کسی چیز پر قدرت رکھتے ہوں؟ اور نہ عقل و شعور رکھتے ہوں (43) کہئے کہ سفارش پوری کی پوری اللہ کے قبضے میں ہے اسی کے لیے مخصوص ہے سلطنت آسمانوں اور زمین کی اور اسی کی طرف پلٹ کر جانا ہے (44) اور جب اللہ کا وحدت کے ساتھ ذکر ہوتا ہے تو جزبز ہوتے ہیں ان کے دل جو آخرت پر یقین نہیں رکھتے اور جب ان کا ذکر ہوتا ہے جو اس کے علاوہ ہیں تو وہ ایک دم خوش ہو جاتے ہیں (45) کہو کہ اے خدا! اے آسمانوں اور زمین کے پیدا کرنے والے! دکھائی دینے والی اور نہ دکھائی دینے والی چیزوں کے جاننے والے! تو اپنے بندوں کے درمیان فیصلہ کرے گا اس میں کہ جس میں وہ باہم اختلاف رکھتے تھے (46) اور اگر ان کے پاس جنہوں نے ظلم سے کام لیا سب کچھ ہو جو روئے زمین پر ہے، پھر ایسا ہی اس کے ساتھ مزید ہو تو وہ اس عذاب سے بچنے کے لئے جو قیامت کے دن ہو گا، اسے تاوان میں دے دیں اور ان کے سامنے آئے گا اللہ کی طرف سے وہ دن جس کا انہیں خیال بھی نہیں تھا (47) اور ظاہر ہوں گی ان کے سامنے برائیاں اس کی جو انہوں نے کیا تھا اور ان کے سر پر آیا ہو گا وہی (عذاب) جس کا وہ مذاق اڑاتے تھے (48) تو جب انسان پر کوئی مصیبت آتی ہے تو وہ ہمیں پکارتا ہے، پھر جب ہم اسے اپنی طرف سے کوئی نعمت عطا کرتے ہیں تو وہ کہتا ہے کہ یہ تو مجھے بس ایک خاص ہنر کی وجہ سے ملی ہے بلکہ وہ ایک آزمائش ہے مگر ان میں سے زیادہ تر لوگ نہیں جانتے (49) ایسا ہی کہا ان لوگوں نے جو ان سے پہلے تھے تو انہیں کچھ فائدہ نہیں دیا اس نے جو وہ کرتے تھے (50) تو انہیں پہنچیں برائیاں اس کی جو انہوں نے کیا تھا اور اب ان میں سے جو ظالم ہیں،انہیں بھی پہنچیں گی برائیاں اس کی جو انہوں نے کیا ہو اور یہ بے بس کرنے والے نہیں ہیں (51) اور کیا انہیں نہیں خبر کہ اللہ جس کے لیے چاہتا ہے رزق میں وسعت دیتا ہے اور (وہی جب چاہتا ہے) تنگی دیتا ہے۔ یقینا اس میں نشانیاں ہیں ان لوگوں کے لیے جو ایمان لائیں (52) کہہ دیجئے کہ اے میرے وہ بندو جنہوں نے اپنے اوپر زیادتی کی ہے اللہ کی رحمت ہے ناامید نہ ہو، یقینا اللہ سب ہی گناہوں کو بخش دیا کرتا ہے، یقینا وہ بڑا بخشنے والا مہربان ہے (53) اور اپنے پروردگار کی طرف توبہ وانابت کرو اور اس کے سامنے سر جھکاؤ اس سے پہلے کہ تم پر عذاب آئے اور پھر تمہاری مدد نہ ہو گی (54) اور پیروی کرو اس بہترین پیغام کی جو تمہاری طرف اتارا گیا ہے تمہارے پرودگار کی طرف سے قبل اس کے کہ تم پر اچانک عذاب آ جائے اور تمہیں احساس بھی نہ ہو (55) ایسا نہ ہو کہ کوئی متنفس کہے ہائے افسوس اس پر جو میں نے اللہ کے معاملہ میں کمی کی اور یہ کہ میں تو مذاق اڑاتا تھا (56) یا کہے کہ اگر اللہ مجھے ہدایت کرتا تو میں پرہیزگاروں میں سے ہوتا (57) یا کہے اس وقت جب عذاب کو دیکھے کہ کاش میرے لیے واپسی ہو تو میں اب اچھے اعمال والوں میں سے ہوں (58) ہاں کیوں نہیں! تیرے پاس میری آیتیں آئیں تو تو نے انہیں جھٹلایا اور گھمنڈسے کام لیا اور تو کافروں میں سے تھا (59) اور قیامت کے دن ان لوگوں کو جنہوں نے اللہ پر جھوٹ باندھا ہے، دیکھو گے کہ ان کے منہ کالے ہوں گے، کیا گھمنڈ رکھنے والوں کے رہنے کا ٹھکانا دوزخ نہیں ہے؟ (60) اور اللہ انہیں جو پرہیزگار رہے، کامیابی کے ساتھ نجات دے گا، انہیں کوئی برائی چھو بھی نہیں جائے گی اور نہ انہیں کوئی صدمہ وملال ہو گا (61) اللہ ہر چیز کو وجود میں لانے والا ہے اور وہ ہر چیز پر صاحب اختیا رہے (62) اس کے لیے کنجیاں ہیں آسمان اور زمین کی اور جنہوں نے اللہ کی آیتوں کے ساتھ کفر اختیار کیا، یہی وہ ہیں جو گھاٹا اٹھانے والے ہیں (63) کہئے تو کیا تمہارا مطالبہ مجھ سے یہ ہے کہ اللہ کے سوا کسی کی عبادت کروں اے جاہلو؟ (64) اور بے شک وحی بھیجی گئی ہے آپ کی طرف اور ان کی طرف بھی جو آپ سے پہلے تھے کہ اگر تم شرک کرو تو تمہارے سب اعمال اکارت جائیں گے اور تم گھاٹا اٹھانے والوں میں سے ہو گے (65) بلکہ بس اللہ ہی کی عبادت کیجئے اور شکر گزاروں میں سے ہو جائیے (66) اور انہوں نے اللہ کی شان کا ویسا اندازہ نہیں کیا جیسا کرنا چاہیے اور (واقعہ یہ ہے کہ) زمین پوری اس کی مٹھی میں ہو گی قیامت کے دن اور آسمان سب بھی لپٹے ہوئے ہوں گے اس کے ہاتھ میں پاک ہے وہ اور بالاتر ہے اس سے جو وہ شرک کرتے ہیں (67) اور صور پھونکا گیا ہو گا تو وہ جو آسمان میں ہیں اور زمین میں ہیں سب ہی بے حس وحرکت ہو کر گر گئے سوا ان کے جنہیں اللہ چاہے، پھر وہ دوبارہ پھونکا گیا تو وہ ایک دم کھڑے ہو کر دیکھنے لگے (68) اور چمک اٹھی زمین اپنے پروردگار کے نورسے اور رکھ دئیے گئے نامہ ہائے اعمال اور پیغمبر اور تمام گواہ حاضر کیے گئے اور فیصلہ کر دیا گیا ان کے درمیان حق کے ساتھ اور ان پر ظلم نہیں کیا جائے گا (69) اور ہر متنفس کو پورا پورا دیا گیا اس کے اعمال کا بدلہ اور وہ خوب واقف ہے اس سے جو وہ کیا کیے ہیں (70) اور لے جائے گئے وہ جنہوں نے کفر اختیار کیا تھا دوزخ کی طرف گروہ در گروہ ، یہاں تک کہ جب وہ وہاں آئے تو اس کے دروازے کھل گئے اور ان سے اس کے محافظوں نے کہا کہ کیا نہیں آئے تمہارے پاس کچھ پیغمبر تم میں کے جو تمہیں پڑھ کر سنائیں تمہارے پروردگار کی آیتیں اور تمہیں ڈرائیں تمہارے اس دن کے سامنے آنے سے انہوں نے کہا کیوں نہیں مگر کافروں پر قدرت کی طرف سے عذاب کا فیصلہ ہو چکا تھا (71) کہا گیا کہ داخل ہو دوزخ کے دروازوں میں وہاں ہمیشہ ہمیشہ رہتے ہوئے، کتنا برا ٹھکانا ہے گھمنڈ کرنے والوں کا (72) اور لے جائے گئے وہ جو اپنے پروردگار سے ڈرتے رہے تھے بہشت کی طرف گروہ درگروہ گروہ یہاں تک کہ جب وہ وہاں آئے اور اس کے دوازے کھولے جا چکے تھے اور ان سے اس کے محافظوں نے کہا سلام ہو تم پر تم پاک رہے، اب تم داخل ہو یہاں ہمیشہ کے لیے (73) اور انہوں نے کہا شکر ہے اللہ کا جس نے ہم سے اپنا وعدہ سچ کر دکھایا اور ہمیں حق دار بنایا اس سرزمین کا کہ ہم بہشت میں جہاں چاہیں ٹھہریں تو کتنا اچھا ہے صلہ عمل کرنے والوں کا (74) اور دیکھو گے فرشتوں کو عرش کے ارد گرد گھیرا کیے ہوئے کہ وہ تسبیح کرتے ہیں اپنے پروردگار کی تعریف کے ساتھ اور ان کے درمیان حق کے ساتھ فیصلہ کیا گیا اور کہاگیا شکر ہے اللہ کا جو تمام جہانوں کا پروردگار ہے (75)


پچھلی سورت:
سورہ ص
سورہ 39 اگلی سورت:
سورہ غافر
قرآن کریم

(1) سورہ فاتحہ (2) سورہ بقرہ (3) سورہ آل عمران (4) سورہ نساء (5) سورہ مائدہ (6) سورہ انعام (7) سورہ اعراف (8) سورہ انفال (9) سورہ توبہ (10) سورہ یونس (11) سورہ ہود (12) سورہ یوسف (13) سورہ رعد (14) سورہ ابراہیم (15) سورہ حجر (16) سورہ نحل (17) سورہ اسراء (18) سورہ کہف (19) سورہ مریم (20) سورہ طہ (21) سورہ انبیاء (22) سورہ حج (23) سورہ مؤمنون (24) سورہ نور (25) سورہ فرقان (26) سورہ شعراء (27) سورہ نمل (28) سورہ قصص (29) سورہ عنکبوت (30) سورہ روم (31) سورہ لقمان (32) سورہ سجدہ (33) سورہ احزاب (34) سورہ سباء (35) سورہ فاطر (36) سورہ یس (37) سورہ صافات (38) سورہ ص (39) سورہ زمر (40) سورہ غافر (41) سورہ فصلت (42) سورہ شوری (43) سورہ زخرف (44) سورہ دخان (45) سورہ جاثیہ (46) سورہ احقاف (47) سورہ محمد (48) سورہ فتح (49) سورہ حجرات (50) سورہ ق (51) سورہ ذاریات (52) سورہ طور (53) سورہ نجم (54) سورہ قمر (55) سورہ رحمن (56) سورہ واقعہ (57) سورہ حدید (58) سورہ مجادلہ (59) سورہ حشر (60) سورہ ممتحنہ (61) سورہ صف (62) سورہ جمعہ (63) سورہ منافقون (64) سورہ تغابن (65) سورہ طلاق (66) سورہ تحریم (67) سورہ ملک (68) سورہ قلم (69) سورہ حاقہ (70) سورہ معارج (71) سورہ نوح (72) سورہ جن (73) سورہ مزمل (74) سورہ مدثر (75) سورہ قیامہ (76) سورہ انسان (77) سورہ مرسلات (78) سورہ نباء (79) سورہ نازعات (80) سورہ عبس (81) سورہ تکویر (82) سورہ انفطار (83) سورہ مطففین (84) سورہ انشقاق (85) سورہ بروج (86) سورہ طارق (87) سورہ اعلی (88) سورہ غاشیہ (89) سورہ فجر (90) سورہ بلد (91) سورہ شمس (92) سورہ لیل (93) سورہ ضحی (94) سورہ شرح (95) سورہ تین (96) سورہ علق (97) سورہ قدر (98) سورہ بینہ (99) سورہ زلزال (100) سورہ عادیات (101) سورہ قارعہ (102) سورہ تکاثر (103) سورہ عصر (104) سورہ ہمزہ (105) سورہ فیل (106) سورہ قریش (107) سورہ ماعون (108) سورہ کوثر (109) سورہ کافرون (110) سورہ نصر (111) سورہ مسد (112) سورہ اخلاص (113) سورہ فلق (114) سورہ ناس


متعلقہ مآخذ

پاورقی حاشیے

  1. دانشنامه قرآن و قرآن پژوهی، ج 2، ص 1248۔


منابع