سورہ یونس

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
توبہ سورۂ یونس ہود
سوره یونس.jpg
ترتیب کتابت: 10
پارہ : 11
نزول
ترتیب نزول: 51
مکی/ مدنی: مکی
اعداد و شمار
آیات: 109
الفاظ: 1844
حروف: 7593

سورہ یونس [سُوْرَۃُ يُوْنُسَ] نے حضرت یونس(ع) کی داستان کی طرف اشارہ کیا ہے اور یہ سورت خدا کے ایک عظیم پیغمبر کے اسم مبارک سے ماخوذ ہے۔ طول اور حجم کے لحاظ سے اوسط درجے کی سورت ہے جو تقریبا دو تہائی پارے پر مشتمل ہے اور مئون میں پہلی سورت ہے۔

سورہ یونس

اس سورت میں حضرت یونس(ع) کی داستان کی طرف اشارہ ہوا ہے، چنانچہ اس سورت کا نام خدا کے ایک ‏عظیم پیغمبر کے نام سے ماخوذ ہے۔ یہ سورت مکی ہے اور مصحف کے لحاظ سے دسویں اور ترتیب نزول کے لحاظ سے قرآن اکاون ویں سورت ہے۔ یہ سورت حروف مقطعہ [=الر = الف لام را] سے شروع ہونے والی 29 سورتوں میں چوتھی سورت ہے۔ اس سورت کی آیات کی تعداد 109 ہے گوکہ بعض قراء کے قول کے مطابق یہ تعداد 110 ہے تاہم پہلا قول صحیح اور مشہور ہے۔ اس سورت کے الفاظ 1844 اور حروف 7593 ہے۔ سورہ یونس حجم و کمیت کے لحاظ سے قرآن کی اوسط سورتوں میں سے ہے جو تقریبا دو تہائی پارے کا احاطہ کئے ہوئے ہے۔ یہ سُوَرِ مِئین میں پہلی سورت ہے۔

مفاہیم

اس سورت کے مضامین و مفاہیم میں سے بعض حسب ذیل ہے:

  • مظاہر خداوندی کا بیان
  • وجود خدا کے اثبات کے دلائل
  • وحی، نبوت اور انبیاء کی بعثت کا مسئلہ
  • تکوینی آیات اور طبیعی علوم، فطرت شناسی اور اسرار خلقت اور اس کے خفیہ اور پیچیدہ رازوں سے متعلق بحث
  • حقیقت عالم کی تمثیلی ترسیم و خاکہ کشی،
  • انبیاء منجملہ یونس، نوح اور موسی علیہم السلام کی سبق آموز داستانیں۔[1]

متن سورہ

سورہ یونس مکیہ ـ نمبر 10 آیات 109 - ترتیب نزول 51
بِسْمِ اللّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ

الر تِلْكَ آيَاتُ الْكِتَابِ الْحَكِيمِ ﴿1﴾ أَكَانَ لِلنَّاسِ عَجَبًا أَنْ أَوْحَيْنَا إِلَى رَجُلٍ مِّنْهُمْ أَنْ أَنذِرِ النَّاسَ وَبَشِّرِ الَّذِينَ آمَنُواْ أَنَّ لَهُمْ قَدَمَ صِدْقٍ عِندَ رَبِّهِمْ قَالَ الْكَافِرُونَ إِنَّ هَذَا لَسَاحِرٌ مُّبِينٌ ﴿2﴾ إِنَّ رَبَّكُمُ اللّهُ الَّذِي خَلَقَ السَّمَاوَاتِ وَالأَرْضَ فِي سِتَّةِ أَيَّامٍ ثُمَّ اسْتَوَى عَلَى الْعَرْشِ يُدَبِّرُ الأَمْرَ مَا مِن شَفِيعٍ إِلاَّ مِن بَعْدِ إِذْنِهِ ذَلِكُمُ اللّهُ رَبُّكُمْ فَاعْبُدُوهُ أَفَلاَ تَذَكَّرُونَ ﴿3﴾ إِلَيْهِ مَرْجِعُكُمْ جَمِيعًا وَعْدَ اللّهِ حَقًّا إِنَّهُ يَبْدَأُ الْخَلْقَ ثُمَّ يُعِيدُهُ لِيَجْزِيَ الَّذِينَ آمَنُواْ وَعَمِلُواْ الصَّالِحَاتِ بِالْقِسْطِ وَالَّذِينَ كَفَرُواْ لَهُمْ شَرَابٌ مِّنْ حَمِيمٍ وَعَذَابٌ أَلِيمٌ بِمَا كَانُواْ يَكْفُرُونَ ﴿4﴾ هُوَ الَّذِي جَعَلَ الشَّمْسَ ضِيَاء وَالْقَمَرَ نُورًا وَقَدَّرَهُ مَنَازِلَ لِتَعْلَمُواْ عَدَدَ السِّنِينَ وَالْحِسَابَ مَا خَلَقَ اللّهُ ذَلِكَ إِلاَّ بِالْحَقِّ يُفَصِّلُ الآيَاتِ لِقَوْمٍ يَعْلَمُونَ ﴿5﴾ إِنَّ فِي اخْتِلاَفِ اللَّيْلِ وَالنَّهَارِ وَمَا خَلَقَ اللّهُ فِي السَّمَاوَاتِ وَالأَرْضِ لآيَاتٍ لِّقَوْمٍ يَتَّقُونَ ﴿6﴾ إَنَّ الَّذِينَ لاَ يَرْجُونَ لِقَاءنَا وَرَضُواْ بِالْحَياةِ الدُّنْيَا وَاطْمَأَنُّواْ بِهَا وَالَّذِينَ هُمْ عَنْ آيَاتِنَا غَافِلُونَ ﴿7﴾ أُوْلَئِكَ مَأْوَاهُمُ النُّارُ بِمَا كَانُواْ يَكْسِبُونَ ﴿8﴾ إِنَّ الَّذِينَ آمَنُواْ وَعَمِلُواْ الصَّالِحَاتِ يَهْدِيهِمْ رَبُّهُمْ بِإِيمَانِهِمْ تَجْرِي مِن تَحْتِهِمُ الأَنْهَارُ فِي جَنَّاتِ النَّعِيمِ ﴿9﴾ دَعْوَاهُمْ فِيهَا سُبْحَانَكَ اللَّهُمَّ وَتَحِيَّتُهُمْ فِيهَا سَلاَمٌ وَآخِرُ دَعْوَاهُمْ أَنِ الْحَمْدُ لِلّهِ رَبِّ الْعَالَمِينَ ﴿10﴾ وَلَوْ يُعَجِّلُ اللّهُ لِلنَّاسِ الشَّرَّ اسْتِعْجَالَهُم بِالْخَيْرِ لَقُضِيَ إِلَيْهِمْ أَجَلُهُمْ فَنَذَرُ الَّذِينَ لاَ يَرْجُونَ لِقَاءنَا فِي طُغْيَانِهِمْ يَعْمَهُونَ ﴿11﴾ وَإِذَا مَسَّ الإِنسَانَ الضُّرُّ دَعَانَا لِجَنبِهِ أَوْ قَاعِدًا أَوْ قَآئِمًا فَلَمَّا كَشَفْنَا عَنْهُ ضُرَّهُ مَرَّ كَأَن لَّمْ يَدْعُنَا إِلَى ضُرٍّ مَّسَّهُ كَذَلِكَ زُيِّنَ لِلْمُسْرِفِينَ مَا كَانُواْ يَعْمَلُونَ ﴿12﴾ وَلَقَدْ أَهْلَكْنَا الْقُرُونَ مِن قَبْلِكُمْ لَمَّا ظَلَمُواْ وَجَاءتْهُمْ رُسُلُهُم بِالْبَيِّنَاتِ وَمَا كَانُواْ لِيُؤْمِنُواْ كَذَلِكَ نَجْزِي الْقَوْمَ الْمُجْرِمِينَ ﴿13﴾ ثُمَّ جَعَلْنَاكُمْ خَلاَئِفَ فِي الأَرْضِ مِن بَعْدِهِم لِنَنظُرَ كَيْفَ تَعْمَلُونَ ﴿14﴾ وَإِذَا تُتْلَى عَلَيْهِمْ آيَاتُنَا بَيِّنَاتٍ قَالَ الَّذِينَ لاَ يَرْجُونَ لِقَاءنَا ائْتِ بِقُرْآنٍ غَيْرِ هَذَا أَوْ بَدِّلْهُ قُلْ مَا يَكُونُ لِي أَنْ أُبَدِّلَهُ مِن تِلْقَاء نَفْسِي إِنْ أَتَّبِعُ إِلاَّ مَا يُوحَى إِلَيَّ إِنِّي أَخَافُ إِنْ عَصَيْتُ رَبِّي عَذَابَ يَوْمٍ عَظِيمٍ ﴿15﴾ قُل لَّوْ شَاء اللّهُ مَا تَلَوْتُهُ عَلَيْكُمْ وَلاَ أَدْرَاكُم بِهِ فَقَدْ لَبِثْتُ فِيكُمْ عُمُرًا مِّن قَبْلِهِ أَفَلاَ تَعْقِلُونَ ﴿16﴾ فَمَنْ أَظْلَمُ مِمَّنِ افْتَرَى عَلَى اللّهِ كَذِبًا أَوْ كَذَّبَ بِآيَاتِهِ إِنَّهُ لاَ يُفْلِحُ الْمُجْرِمُونَ ﴿17﴾ وَيَعْبُدُونَ مِن دُونِ اللّهِ مَا لاَ يَضُرُّهُمْ وَلاَ يَنفَعُهُمْ وَيَقُولُونَ هَؤُلاء شُفَعَاؤُنَا عِندَ اللّهِ قُلْ أَتُنَبِّئُونَ اللّهَ بِمَا لاَ يَعْلَمُ فِي السَّمَاوَاتِ وَلاَ فِي الأَرْضِ سُبْحَانَهُ وَتَعَالَى عَمَّا يُشْرِكُونَ ﴿18﴾ وَمَا كَانَ النَّاسُ إِلاَّ أُمَّةً وَاحِدَةً فَاخْتَلَفُواْ وَلَوْلاَ كَلِمَةٌ سَبَقَتْ مِن رَّبِّكَ لَقُضِيَ بَيْنَهُمْ فِيمَا فِيهِ يَخْتَلِفُونَ ﴿19﴾ وَيَقُولُونَ لَوْلاَ أُنزِلَ عَلَيْهِ آيَةٌ مِّن رَّبِّهِ فَقُلْ إِنَّمَا الْغَيْبُ لِلّهِ فَانْتَظِرُواْ إِنِّي مَعَكُم مِّنَ الْمُنتَظِرِينَ ﴿20﴾ وَإِذَا أَذَقْنَا النَّاسَ رَحْمَةً مِّن بَعْدِ ضَرَّاء مَسَّتْهُمْ إِذَا لَهُم مَّكْرٌ فِي آيَاتِنَا قُلِ اللّهُ أَسْرَعُ مَكْرًا إِنَّ رُسُلَنَا يَكْتُبُونَ مَا تَمْكُرُونَ ﴿21﴾ هُوَ الَّذِي يُسَيِّرُكُمْ فِي الْبَرِّ وَالْبَحْرِ حَتَّى إِذَا كُنتُمْ فِي الْفُلْكِ وَجَرَيْنَ بِهِم بِرِيحٍ طَيِّبَةٍ وَفَرِحُواْ بِهَا جَاءتْهَا رِيحٌ عَاصِفٌ وَجَاءهُمُ الْمَوْجُ مِن كُلِّ مَكَانٍ وَظَنُّواْ أَنَّهُمْ أُحِيطَ بِهِمْ دَعَوُاْ اللّهَ مُخْلِصِينَ لَهُ الدِّينَ لَئِنْ أَنجَيْتَنَا مِنْ هَذِهِ لَنَكُونَنِّ مِنَ الشَّاكِرِينَ ﴿22﴾ فَلَمَّا أَنجَاهُمْ إِذَا هُمْ يَبْغُونَ فِي الأَرْضِ بِغَيْرِ الْحَقِّ يَا أَيُّهَا النَّاسُ إِنَّمَا بَغْيُكُمْ عَلَى أَنفُسِكُم مَّتَاعَ الْحَيَاةِ الدُّنْيَا ثُمَّ إِلَينَا مَرْجِعُكُمْ فَنُنَبِّئُكُم بِمَا كُنتُمْ تَعْمَلُونَ ﴿23﴾ إِنَّمَا مَثَلُ الْحَيَاةِ الدُّنْيَا كَمَاء أَنزَلْنَاهُ مِنَ السَّمَاء فَاخْتَلَطَ بِهِ نَبَاتُ الأَرْضِ مِمَّا يَأْكُلُ النَّاسُ وَالأَنْعَامُ حَتَّىَ إِذَا أَخَذَتِ الأَرْضُ زُخْرُفَهَا وَازَّيَّنَتْ وَظَنَّ أَهْلُهَا أَنَّهُمْ قَادِرُونَ عَلَيْهَآ أَتَاهَا أَمْرُنَا لَيْلاً أَوْ نَهَارًا فَجَعَلْنَاهَا حَصِيدًا كَأَن لَّمْ تَغْنَ بِالأَمْسِ كَذَلِكَ نُفَصِّلُ الآيَاتِ لِقَوْمٍ يَتَفَكَّرُونَ ﴿24﴾ وَاللّهُ يَدْعُو إِلَى دَارِ السَّلاَمِ وَيَهْدِي مَن يَشَاء إِلَى صِرَاطٍ مُّسْتَقِيمٍ ﴿25﴾ لِّلَّذِينَ أَحْسَنُواْ الْحُسْنَى وَزِيَادَةٌ وَلاَ يَرْهَقُ وُجُوهَهُمْ قَتَرٌ وَلاَ ذِلَّةٌ أُوْلَئِكَ أَصْحَابُ الْجَنَّةِ هُمْ فِيهَا خَالِدُونَ ﴿26﴾ وَالَّذِينَ كَسَبُواْ السَّيِّئَاتِ جَزَاء سَيِّئَةٍ بِمِثْلِهَا وَتَرْهَقُهُمْ ذِلَّةٌ مَّا لَهُم مِّنَ اللّهِ مِنْ عَاصِمٍ كَأَنَّمَا أُغْشِيَتْ وُجُوهُهُمْ قِطَعًا مِّنَ اللَّيْلِ مُظْلِمًا أُوْلَئِكَ أَصْحَابُ النَّارِ هُمْ فِيهَا خَالِدُونَ ﴿27﴾ وَيَوْمَ نَحْشُرُهُمْ جَمِيعًا ثُمَّ نَقُولُ لِلَّذِينَ أَشْرَكُواْ مَكَانَكُمْ أَنتُمْ وَشُرَكَآؤُكُمْ فَزَيَّلْنَا بَيْنَهُمْ وَقَالَ شُرَكَآؤُهُم مَّا كُنتُمْ إِيَّانَا تَعْبُدُونَ ﴿28﴾ فَكَفَى بِاللّهِ شَهِيدًا بَيْنَنَا وَبَيْنَكُمْ إِن كُنَّا عَنْ عِبَادَتِكُمْ لَغَافِلِينَ ﴿29﴾ هُنَالِكَ تَبْلُو كُلُّ نَفْسٍ مَّا أَسْلَفَتْ وَرُدُّواْ إِلَى اللّهِ مَوْلاَهُمُ الْحَقِّ وَضَلَّ عَنْهُم مَّا كَانُواْ يَفْتَرُونَ ﴿30﴾ قُلْ مَن يَرْزُقُكُم مِّنَ السَّمَاء وَالأَرْضِ أَمَّن يَمْلِكُ السَّمْعَ والأَبْصَارَ وَمَن يُخْرِجُ الْحَيَّ مِنَ الْمَيِّتِ وَيُخْرِجُ الْمَيَّتَ مِنَ الْحَيِّ وَمَن يُدَبِّرُ الأَمْرَ فَسَيَقُولُونَ اللّهُ فَقُلْ أَفَلاَ تَتَّقُونَ ﴿31﴾ فَذَلِكُمُ اللّهُ رَبُّكُمُ الْحَقُّ فَمَاذَا بَعْدَ الْحَقِّ إِلاَّ الضَّلاَلُ فَأَنَّى تُصْرَفُونَ ﴿32﴾ كَذَلِكَ حَقَّتْ كَلِمَتُ رَبِّكَ عَلَى الَّذِينَ فَسَقُواْ أَنَّهُمْ لاَ يُؤْمِنُونَ ﴿33﴾ قُلْ هَلْ مِن شُرَكَآئِكُم مَّن يَبْدَأُ الْخَلْقَ ثُمَّ يُعِيدُهُ قُلِ اللّهُ يَبْدَأُ الْخَلْقَ ثُمَّ يُعِيدُهُ فَأَنَّى تُؤْفَكُونَ ﴿34﴾ قُلْ هَلْ مِن شُرَكَآئِكُم مَّن يَهْدِي إِلَى الْحَقِّ قُلِ اللّهُ يَهْدِي لِلْحَقِّ أَفَمَن يَهْدِي إِلَى الْحَقِّ أَحَقُّ أَن يُتَّبَعَ أَمَّن لاَّ يَهِدِّيَ إِلاَّ أَن يُهْدَى فَمَا لَكُمْ كَيْفَ تَحْكُمُونَ ﴿35﴾ وَمَا يَتَّبِعُ أَكْثَرُهُمْ إِلاَّ ظَنًّا إَنَّ الظَّنَّ لاَ يُغْنِي مِنَ الْحَقِّ شَيْئًا إِنَّ اللّهَ عَلَيمٌ بِمَا يَفْعَلُونَ ﴿36﴾ وَمَا كَانَ هَذَا الْقُرْآنُ أَن يُفْتَرَى مِن دُونِ اللّهِ وَلَكِن تَصْدِيقَ الَّذِي بَيْنَ يَدَيْهِ وَتَفْصِيلَ الْكِتَابِ لاَ رَيْبَ فِيهِ مِن رَّبِّ الْعَالَمِينَ ﴿37﴾ أَمْ يَقُولُونَ افْتَرَاهُ قُلْ فَأْتُواْ بِسُورَةٍ مِّثْلِهِ وَادْعُواْ مَنِ اسْتَطَعْتُم مِّن دُونِ اللّهِ إِن كُنتُمْ صَادِقِينَ ﴿38﴾ بَلْ كَذَّبُواْ بِمَا لَمْ يُحِيطُواْ بِعِلْمِهِ وَلَمَّا يَأْتِهِمْ تَأْوِيلُهُ كَذَلِكَ كَذَّبَ الَّذِينَ مِن قَبْلِهِمْ فَانظُرْ كَيْفَ كَانَ عَاقِبَةُ الظَّالِمِينَ ﴿39﴾ وَمِنهُم مَّن يُؤْمِنُ بِهِ وَمِنْهُم مَّن لاَّ يُؤْمِنُ بِهِ وَرَبُّكَ أَعْلَمُ بِالْمُفْسِدِينَ ﴿40﴾ وَإِن كَذَّبُوكَ فَقُل لِّي عَمَلِي وَلَكُمْ عَمَلُكُمْ أَنتُمْ بَرِيئُونَ مِمَّا أَعْمَلُ وَأَنَاْ بَرِيءٌ مِّمَّا تَعْمَلُونَ ﴿41﴾ وَمِنْهُم مَّن يَسْتَمِعُونَ إِلَيْكَ أَفَأَنتَ تُسْمِعُ الصُّمَّ وَلَوْ كَانُواْ لاَ يَعْقِلُونَ ﴿42﴾ وَمِنهُم مَّن يَنظُرُ إِلَيْكَ أَفَأَنتَ تَهْدِي الْعُمْيَ وَلَوْ كَانُواْ لاَ يُبْصِرُونَ ﴿43﴾ إِنَّ اللّهَ لاَ يَظْلِمُ النَّاسَ شَيْئًا وَلَكِنَّ النَّاسَ أَنفُسَهُمْ يَظْلِمُونَ ﴿44﴾ وَيَوْمَ يَحْشُرُهُمْ كَأَن لَّمْ يَلْبَثُواْ إِلاَّ سَاعَةً مِّنَ النَّهَارِ يَتَعَارَفُونَ بَيْنَهُمْ قَدْ خَسِرَ الَّذِينَ كَذَّبُواْ بِلِقَاء اللّهِ وَمَا كَانُواْ مُهْتَدِينَ ﴿45﴾ وَإِمَّا نُرِيَنَّكَ بَعْضَ الَّذِي نَعِدُهُمْ أَوْ نَتَوَفَّيَنَّكَ فَإِلَيْنَا مَرْجِعُهُمْ ثُمَّ اللّهُ شَهِيدٌ عَلَى مَا يَفْعَلُونَ ﴿46﴾ وَلِكُلِّ أُمَّةٍ رَّسُولٌ فَإِذَا جَاء رَسُولُهُمْ قُضِيَ بَيْنَهُم بِالْقِسْطِ وَهُمْ لاَ يُظْلَمُونَ ﴿47﴾ وَيَقُولُونَ مَتَى هَذَا الْوَعْدُ إِن كُنتُمْ صَادِقِينَ ﴿48﴾ قُل لاَّ أَمْلِكُ لِنَفْسِي ضَرًّا وَلاَ نَفْعًا إِلاَّ مَا شَاء اللّهُ لِكُلِّ أُمَّةٍ أَجَلٌ إِذَا جَاء أَجَلُهُمْ فَلاَ يَسْتَأْخِرُونَ سَاعَةً وَلاَ يَسْتَقْدِمُونَ ﴿49﴾ قُلْ أَرَأَيْتُمْ إِنْ أَتَاكُمْ عَذَابُهُ بَيَاتًا أَوْ نَهَارًا مَّاذَا يَسْتَعْجِلُ مِنْهُ الْمُجْرِمُونَ ﴿50﴾ أَثُمَّ إِذَا مَا وَقَعَ آمَنْتُم بِهِ آلآنَ وَقَدْ كُنتُم بِهِ تَسْتَعْجِلُونَ ﴿51﴾ ثُمَّ قِيلَ لِلَّذِينَ ظَلَمُواْ ذُوقُواْ عَذَابَ الْخُلْدِ هَلْ تُجْزَوْنَ إِلاَّ بِمَا كُنتُمْ تَكْسِبُونَ ﴿52﴾ وَيَسْتَنبِئُونَكَ أَحَقٌّ هُوَ قُلْ إِي وَرَبِّي إِنَّهُ لَحَقٌّ وَمَا أَنتُمْ بِمُعْجِزِينَ ﴿53﴾ وَلَوْ أَنَّ لِكُلِّ نَفْسٍ ظَلَمَتْ مَا فِي الأَرْضِ لاَفْتَدَتْ بِهِ وَأَسَرُّواْ النَّدَامَةَ لَمَّا رَأَوُاْ الْعَذَابَ وَقُضِيَ بَيْنَهُم بِالْقِسْطِ وَهُمْ لاَ يُظْلَمُونَ ﴿54﴾ أَلا إِنَّ لِلّهِ مَا فِي السَّمَاوَاتِ وَالأَرْضِ أَلاَ إِنَّ وَعْدَ اللّهِ حَقٌّ وَلَكِنَّ أَكْثَرَهُمْ لاَ يَعْلَمُونَ ﴿55﴾ هُوَ يُحْيِي وَيُمِيتُ وَإِلَيْهِ تُرْجَعُونَ ﴿56﴾ يَا أَيُّهَا النَّاسُ قَدْ جَاءتْكُم مَّوْعِظَةٌ مِّن رَّبِّكُمْ وَشِفَاء لِّمَا فِي الصُّدُورِ وَهُدًى وَرَحْمَةٌ لِّلْمُؤْمِنِينَ ﴿57﴾ قُلْ بِفَضْلِ اللّهِ وَبِرَحْمَتِهِ فَبِذَلِكَ فَلْيَفْرَحُواْ هُوَ خَيْرٌ مِّمَّا يَجْمَعُونَ ﴿58﴾ قُلْ أَرَأَيْتُم مَّا أَنزَلَ اللّهُ لَكُم مِّن رِّزْقٍ فَجَعَلْتُم مِّنْهُ حَرَامًا وَحَلاَلاً قُلْ آللّهُ أَذِنَ لَكُمْ أَمْ عَلَى اللّهِ تَفْتَرُونَ ﴿59﴾ وَمَا ظَنُّ الَّذِينَ يَفْتَرُونَ عَلَى اللّهِ الْكَذِبَ يَوْمَ الْقِيَامَةِ إِنَّ اللّهَ لَذُو فَضْلٍ عَلَى النَّاسِ وَلَكِنَّ أَكْثَرَهُمْ لاَ يَشْكُرُونَ ﴿60﴾ وَمَا تَكُونُ فِي شَأْنٍ وَمَا تَتْلُو مِنْهُ مِن قُرْآنٍ وَلاَ تَعْمَلُونَ مِنْ عَمَلٍ إِلاَّ كُنَّا عَلَيْكُمْ شُهُودًا إِذْ تُفِيضُونَ فِيهِ وَمَا يَعْزُبُ عَن رَّبِّكَ مِن مِّثْقَالِ ذَرَّةٍ فِي الأَرْضِ وَلاَ فِي السَّمَاء وَلاَ أَصْغَرَ مِن ذَلِكَ وَلا أَكْبَرَ إِلاَّ فِي كِتَابٍ مُّبِينٍ ﴿61﴾ أَلا إِنَّ أَوْلِيَاء اللّهِ لاَ خَوْفٌ عَلَيْهِمْ وَلاَ هُمْ يَحْزَنُونَ ﴿62﴾ الَّذِينَ آمَنُواْ وَكَانُواْ يَتَّقُونَ ﴿63﴾ لَهُمُ الْبُشْرَى فِي الْحَياةِ الدُّنْيَا وَفِي الآخِرَةِ لاَ تَبْدِيلَ لِكَلِمَاتِ اللّهِ ذَلِكَ هُوَ الْفَوْزُ الْعَظِيمُ ﴿64﴾ وَلاَ يَحْزُنكَ قَوْلُهُمْ إِنَّ الْعِزَّةَ لِلّهِ جَمِيعًا هُوَ السَّمِيعُ الْعَلِيمُ ﴿65﴾ أَلا إِنَّ لِلّهِ مَن فِي السَّمَاوَات وَمَن فِي الأَرْضِ وَمَا يَتَّبِعُ الَّذِينَ يَدْعُونَ مِن دُونِ اللّهِ شُرَكَاء إِن يَتَّبِعُونَ إِلاَّ الظَّنَّ وَإِنْ هُمْ إِلاَّ يَخْرُصُونَ ﴿66﴾ هُوَ الَّذِي جَعَلَ لَكُمُ اللَّيْلَ لِتَسْكُنُواْ فِيهِ وَالنَّهَارَ مُبْصِرًا إِنَّ فِي ذَلِكَ لآيَاتٍ لِّقَوْمٍ يَسْمَعُونَ ﴿67﴾ قَالُواْ اتَّخَذَ اللّهُ وَلَدًا سُبْحَانَهُ هُوَ الْغَنِيُّ لَهُ مَا فِي السَّمَاوَات وَمَا فِي الأَرْضِ إِنْ عِندَكُم مِّن سُلْطَانٍ بِهَذَا أَتقُولُونَ عَلَى اللّهِ مَا لاَ تَعْلَمُونَ ﴿68﴾ قُلْ إِنَّ الَّذِينَ يَفْتَرُونَ عَلَى اللّهِ الْكَذِبَ لاَ يُفْلِحُونَ ﴿69﴾ مَتَاعٌ فِي الدُّنْيَا ثُمَّ إِلَيْنَا مَرْجِعُهُمْ ثُمَّ نُذِيقُهُمُ الْعَذَابَ الشَّدِيدَ بِمَا كَانُواْ يَكْفُرُونَ ﴿70﴾ وَاتْلُ عَلَيْهِمْ نَبَأَ نُوحٍ إِذْ قَالَ لِقَوْمِهِ يَا قَوْمِ إِن كَانَ كَبُرَ عَلَيْكُم مَّقَامِي وَتَذْكِيرِي بِآيَاتِ اللّهِ فَعَلَى اللّهِ تَوَكَّلْتُ فَأَجْمِعُواْ أَمْرَكُمْ وَشُرَكَاءكُمْ ثُمَّ لاَ يَكُنْ أَمْرُكُمْ عَلَيْكُمْ غُمَّةً ثُمَّ اقْضُواْ إِلَيَّ وَلاَ تُنظِرُونِ ﴿71﴾ فَإِن تَوَلَّيْتُمْ فَمَا سَأَلْتُكُم مِّنْ أَجْرٍ إِنْ أَجْرِيَ إِلاَّ عَلَى اللّهِ وَأُمِرْتُ أَنْ أَكُونَ مِنَ الْمُسْلِمِينَ ﴿72﴾ فَكَذَّبُوهُ فَنَجَّيْنَاهُ وَمَن مَّعَهُ فِي الْفُلْكِ وَجَعَلْنَاهُمْ خَلاَئِفَ وَأَغْرَقْنَا الَّذِينَ كَذَّبُواْ بِآيَاتِنَا فَانظُرْ كَيْفَ كَانَ عَاقِبَةُ الْمُنذَرِينَ ﴿73﴾ ثُمَّ بَعَثْنَا مِن بَعْدِهِ رُسُلاً إِلَى قَوْمِهِمْ فَجَآؤُوهُم بِالْبَيِّنَاتِ فَمَا كَانُواْ لِيُؤْمِنُواْ بِمَا كَذَّبُواْ بِهِ مِن قَبْلُ كَذَلِكَ نَطْبَعُ عَلَى قُلوبِ الْمُعْتَدِينَ ﴿74﴾ ثُمَّ بَعَثْنَا مِن بَعْدِهِم مُّوسَى وَهَارُونَ إِلَى فِرْعَوْنَ وَمَلَئِهِ بِآيَاتِنَا فَاسْتَكْبَرُواْ وَكَانُواْ قَوْمًا مُّجْرِمِينَ ﴿75﴾ فَلَمَّا جَاءهُمُ الْحَقُّ مِنْ عِندِنَا قَالُواْ إِنَّ هَذَا لَسِحْرٌ مُّبِينٌ ﴿76﴾ قَالَ مُوسَى أَتقُولُونَ لِلْحَقِّ لَمَّا جَاءكُمْ أَسِحْرٌ هَذَا وَلاَ يُفْلِحُ السَّاحِرُونَ ﴿77﴾ قَالُواْ أَجِئْتَنَا لِتَلْفِتَنَا عَمَّا وَجَدْنَا عَلَيْهِ آبَاءنَا وَتَكُونَ لَكُمَا الْكِبْرِيَاء فِي الأَرْضِ وَمَا نَحْنُ لَكُمَا بِمُؤْمِنِينَ ﴿78﴾ وَقَالَ فِرْعَوْنُ ائْتُونِي بِكُلِّ سَاحِرٍ عَلِيمٍ ﴿79﴾ فَلَمَّا جَاء السَّحَرَةُ قَالَ لَهُم مُّوسَى أَلْقُواْ مَا أَنتُم مُّلْقُونَ ﴿80﴾ فَلَمَّا أَلْقَواْ قَالَ مُوسَى مَا جِئْتُم بِهِ السِّحْرُ إِنَّ اللّهَ سَيُبْطِلُهُ إِنَّ اللّهَ لاَ يُصْلِحُ عَمَلَ الْمُفْسِدِينَ ﴿81﴾ وَيُحِقُّ اللّهُ الْحَقَّ بِكَلِمَاتِهِ وَلَوْ كَرِهَ الْمُجْرِمُونَ ﴿82﴾ فَمَا آمَنَ لِمُوسَى إِلاَّ ذُرِّيَّةٌ مِّن قَوْمِهِ عَلَى خَوْفٍ مِّن فِرْعَوْنَ وَمَلَئِهِمْ أَن يَفْتِنَهُمْ وَإِنَّ فِرْعَوْنَ لَعَالٍ فِي الأَرْضِ وَإِنَّهُ لَمِنَ الْمُسْرِفِينَ ﴿83﴾ وَقَالَ مُوسَى يَا قَوْمِ إِن كُنتُمْ آمَنتُم بِاللّهِ فَعَلَيْهِ تَوَكَّلُواْ إِن كُنتُم مُّسْلِمِينَ ﴿84﴾ فَقَالُواْ عَلَى اللّهِ تَوَكَّلْنَا رَبَّنَا لاَ تَجْعَلْنَا فِتْنَةً لِّلْقَوْمِ الظَّالِمِينَ ﴿85﴾ وَنَجِّنَا بِرَحْمَتِكَ مِنَ الْقَوْمِ الْكَافِرِينَ ﴿86﴾ وَأَوْحَيْنَا إِلَى مُوسَى وَأَخِيهِ أَن تَبَوَّءَا لِقَوْمِكُمَا بِمِصْرَ بُيُوتًا وَاجْعَلُواْ بُيُوتَكُمْ قِبْلَةً وَأَقِيمُواْ الصَّلاَةَ وَبَشِّرِ الْمُؤْمِنِينَ ﴿87﴾ وَقَالَ مُوسَى رَبَّنَا إِنَّكَ آتَيْتَ فِرْعَوْنَ وَمَلأهُ زِينَةً وَأَمْوَالاً فِي الْحَيَاةِ الدُّنْيَا رَبَّنَا لِيُضِلُّواْ عَن سَبِيلِكَ رَبَّنَا اطْمِسْ عَلَى أَمْوَالِهِمْ وَاشْدُدْ عَلَى قُلُوبِهِمْ فَلاَ يُؤْمِنُواْ حَتَّى يَرَوُاْ الْعَذَابَ الأَلِيمَ ﴿88﴾ قَالَ قَدْ أُجِيبَت دَّعْوَتُكُمَا فَاسْتَقِيمَا وَلاَ تَتَّبِعَآنِّ سَبِيلَ الَّذِينَ لاَ يَعْلَمُونَ ﴿89﴾ وَجَاوَزْنَا بِبَنِي إِسْرَائِيلَ الْبَحْرَ فَأَتْبَعَهُمْ فِرْعَوْنُ وَجُنُودُهُ بَغْيًا وَعَدْوًا حَتَّى إِذَا أَدْرَكَهُ الْغَرَقُ قَالَ آمَنتُ أَنَّهُ لا إِلِهَ إِلاَّ الَّذِي آمَنَتْ بِهِ بَنُو إِسْرَائِيلَ وَأَنَاْ مِنَ الْمُسْلِمِينَ ﴿90﴾ آلآنَ وَقَدْ عَصَيْتَ قَبْلُ وَكُنتَ مِنَ الْمُفْسِدِينَ ﴿91﴾ فَالْيَوْمَ نُنَجِّيكَ بِبَدَنِكَ لِتَكُونَ لِمَنْ خَلْفَكَ آيَةً وَإِنَّ كَثِيرًا مِّنَ النَّاسِ عَنْ آيَاتِنَا لَغَافِلُونَ ﴿92﴾ وَلَقَدْ بَوَّأْنَا بَنِي إِسْرَائِيلَ مُبَوَّأَ صِدْقٍ وَرَزَقْنَاهُم مِّنَ الطَّيِّبَاتِ فَمَا اخْتَلَفُواْ حَتَّى جَاءهُمُ الْعِلْمُ إِنَّ رَبَّكَ يَقْضِي بَيْنَهُمْ يَوْمَ الْقِيَامَةِ فِيمَا كَانُواْ فِيهِ يَخْتَلِفُونَ ﴿93﴾ فَإِن كُنتَ فِي شَكٍّ مِّمَّا أَنزَلْنَا إِلَيْكَ فَاسْأَلِ الَّذِينَ يَقْرَؤُونَ الْكِتَابَ مِن قَبْلِكَ لَقَدْ جَاءكَ الْحَقُّ مِن رَّبِّكَ فَلاَ تَكُونَنَّ مِنَ الْمُمْتَرِينَ ﴿94﴾ وَلاَ تَكُونَنَّ مِنَ الَّذِينَ كَذَّبُواْ بِآيَاتِ اللّهِ فَتَكُونَ مِنَ الْخَاسِرِينَ ﴿95﴾ إِنَّ الَّذِينَ حَقَّتْ عَلَيْهِمْ كَلِمَتُ رَبِّكَ لاَ يُؤْمِنُونَ ﴿96﴾ وَلَوْ جَاءتْهُمْ كُلُّ آيَةٍ حَتَّى يَرَوُاْ الْعَذَابَ الأَلِيمَ ﴿97﴾ فَلَوْلاَ كَانَتْ قَرْيَةٌ آمَنَتْ فَنَفَعَهَا إِيمَانُهَا إِلاَّ قَوْمَ يُونُسَ لَمَّآ آمَنُواْ كَشَفْنَا عَنْهُمْ عَذَابَ الخِزْيِ فِي الْحَيَاةَ الدُّنْيَا وَمَتَّعْنَاهُمْ إِلَى حِينٍ ﴿98﴾ وَلَوْ شَاء رَبُّكَ لآمَنَ مَن فِي الأَرْضِ كُلُّهُمْ جَمِيعًا أَفَأَنتَ تُكْرِهُ النَّاسَ حَتَّى يَكُونُواْ مُؤْمِنِينَ ﴿99﴾ وَمَا كَانَ لِنَفْسٍ أَن تُؤْمِنَ إِلاَّ بِإِذْنِ اللّهِ وَيَجْعَلُ الرِّجْسَ عَلَى الَّذِينَ لاَ يَعْقِلُونَ ﴿100﴾ قُلِ انظُرُواْ مَاذَا فِي السَّمَاوَاتِ وَالأَرْضِ وَمَا تُغْنِي الآيَاتُ وَالنُّذُرُ عَن قَوْمٍ لاَّ يُؤْمِنُونَ ﴿101﴾ فَهَلْ يَنتَظِرُونَ إِلاَّ مِثْلَ أَيَّامِ الَّذِينَ خَلَوْاْ مِن قَبْلِهِمْ قُلْ فَانتَظِرُواْ إِنِّي مَعَكُم مِّنَ الْمُنتَظِرِينَ ﴿102﴾ ثُمَّ نُنَجِّي رُسُلَنَا وَالَّذِينَ آمَنُواْ كَذَلِكَ حَقًّا عَلَيْنَا نُنجِ الْمُؤْمِنِينَ ﴿103﴾ قُلْ يَا أَيُّهَا النَّاسُ إِن كُنتُمْ فِي شَكٍّ مِّن دِينِي فَلاَ أَعْبُدُ الَّذِينَ تَعْبُدُونَ مِن دُونِ اللّهِ وَلَكِنْ أَعْبُدُ اللّهَ الَّذِي يَتَوَفَّاكُمْ وَأُمِرْتُ أَنْ أَكُونَ مِنَ الْمُؤْمِنِينَ ﴿104﴾ وَأَنْ أَقِمْ وَجْهَكَ لِلدِّينِ حَنِيفًا وَلاَ تَكُونَنَّ مِنَ الْمُشْرِكِينَ ﴿105﴾ وَلاَ تَدْعُ مِن دُونِ اللّهِ مَا لاَ يَنفَعُكَ وَلاَ يَضُرُّكَ فَإِن فَعَلْتَ فَإِنَّكَ إِذًا مِّنَ الظَّالِمِينَ ﴿106﴾ وَإِن يَمْسَسْكَ اللّهُ بِضُرٍّ فَلاَ كَاشِفَ لَهُ إِلاَّ هُوَ وَإِن يُرِدْكَ بِخَيْرٍ فَلاَ رَآدَّ لِفَضْلِهِ يُصَيبُ بِهِ مَن يَشَاء مِنْ عِبَادِهِ وَهُوَ الْغَفُورُ الرَّحِيمُ ﴿107﴾ قُلْ يَا أَيُّهَا النَّاسُ قَدْ جَاءكُمُ الْحَقُّ مِن رَّبِّكُمْ فَمَنِ اهْتَدَى فَإِنَّمَا يَهْتَدِي لِنَفْسِهِ وَمَن ضَلَّ فَإِنَّمَا يَضِلُّ عَلَيْهَا وَمَا أَنَاْ عَلَيْكُم بِوَكِيلٍ ﴿108﴾ وَاتَّبِعْ مَا يُوحَى إِلَيْكَ وَاصْبِرْ حَتَّىَ يَحْكُمَ اللّهُ وَهُوَ خَيْرُ الْحَاكِمِينَ ﴿109﴾

قرآن کریم


ترجمہ
اللہ کے نام سے جو بہت رحم والا نہایت مہربان ہے

الف۔ لام۔ را۔ یہ آیتیں ہیں حکمت والی کتاب کی (1) کیا یہ لوگوں کے لیے عجیب بات تھی کہ ہم نے انہی میں سے ایک شخص پر وحی بھیجی کہ آپ لوگوں کو ڈرایئے اور ایمان لانے والوں کو خوش خبری دیجئے کہ ان کے لیے سچائی کی روایت قائم ہے، ان کے پروردگار کے یہاں۔ کافر کہنے لگے کہ بلاشبہ یہ تو کھلا ہوا جادو ہے (2) یقینا تمہارا پروردگار اللہ ہے جس نے آسمانوں اور زمین کو چھ دنوں میں پیدا کیا، پھر عرش پر برقرار ہوا تدبیر کائنات کرتا ہوا۔ کوئی سفارشی نہیں ہے مگر اس کی اجازت کے بعد یہ ہے اللہ تمہارا پروردگار تو عبادت کرو اس کی۔ تو کیا تم نصیحت قبول نہ کرو گے ؟ (3) اسی کی طرف تم سب کو پلٹ کر جانا ہے۔ یہ اللہ کا سچا وعدہ ہے، بلاشبہ وہی پہلے پہل مخلوق کو پیدا کرتا ہے، پھر دوبارہ اسے زندہ کرے گا تاکہ جزا دے انہیں کہ جو ایمان لائے اور جنہوں نے نیک اعمال کیے عدالت کے ساتھ اور جنہوں نے کفر اختیار کیا، انہیں کھولتا ہوا پانی پینے کو ہو گا اور درد ناک عذاب اس وجہ سے کہ وہ کفر کرتے تھے (4) وہ وہ ہے جس نے آفتاب کو چمکدار بنایا اور چاند کو روشن اور اس کی مختلف منزلیں قرار دیں تاکہ تمہیں برسوں کا شمار اور حساب معلوم ہو۔ اللہ نے یہ سب نہیں پیدا کیا مگر بالکل صحیح و مناسب وہ تفصیل کے ساتھ پیش کرتا ہے آیتیں ان لوگوں کے لیے جو جاننا چاہیں (5) یقینا رات اور دن کی ادل بدل میں اور اس میں کہ جو اللہ نے آسمانوں اور زمین میں پیدا کیا ہے، نشانیاں ہیں ان لوگوں کے لیے جو نجات کی فکر رکھتے ہوں (6) یقینا وہ جنہیں ہم سے ملنے کی امید نہیں ہے اور وہ اس دنیوی زندگی سے خوش اور اس پر مطمئن ہیں اور وہ جو ہماری آیتوں سے بے پرواہ ہیں (7) یہ وہ ہیں جن کا ٹھکانا دوزخ میں ہے ان اعمال کی سزا میں جو وہ کرتے تھے (8) یقینا وہ کہ جنہوں نے ایمان اختیار کیا اور نیک اعمال کیے، انہیں ان کا پروردگار ان کے ایمان کی بدولت منزل مقصود تک پہنچائے گا ان کے زیر قدم نہریں رواں ہوں گی، آرام والے بہشت کے باغوں میں (9) وہاں ان کی صدا یہی ہو گی کہ پاک ہے تیری ذات اے اللہ اور آپس کی ملاقات کے وقت ان کی دعا سلام کے ساتھ ہو گی اور آخر میں ان کی آواز ہو گی کہ سب تعریف اللہ کے لیے ہے جو تمام جہانوں کا پروردگار ہے (10) اور یہ لوگ بھلائی حاصل کرنے کے لیے جتنی جلدی کرتے ہیں، اتنی جلد اگر اللہ ان کے واسطے خرابی لے آئے تو ان کی عمر کا خاتمہ ہی ہو جائے مگر ہم تو چھوڑے ہوئے ہیں ان لوگوں کو جو ہم سے ملنے کی امید نہیں رکھتے کہ وہ اپنی سرکشی کے اندر اندھا دھن مبتلا رہیں (11) اور آدمی پر جب مصیبت پڑتی ہے تو وہ ہمیں پکارتا ہے کروٹ کے بل یا بیٹھے یا کھڑے (جس عالم میں بھی ہو) اس کے بعد جب ہم اس کی مصیبت دور کر دیتے ہیں تو وہ ایسا چلتا ہوتا ہے جیسے کہ کسی مصیبت میں جو اس پر پڑی ہو، اس نے ہمیں پکارا ہی نہ تھا، اسی طرح حد سے تجاوز کرنے والوں کے لیے آراستہ ہوا وہ طرز عمل جو وہ اختیار کیے ہوئے تھے (12) اور ہم نے تمہارے پہلے بہت نسلوں کو ختم کر دیا جب کہ انہوں نے ظلم سے کام لیا اور ان کے پاس ان کے پیغمبر معجزے لے کر آئے اور وہ کسی طرح ایمان لانے والے نہ تھے ، یونہی سزا دیتے ہیں ہم مجرم لوگوں کو (13) پھر ان کے بعد ہم نے تمہیں روئے زمین پر ان کی جگہ پیدا کیا تاکہ ہم دیکھیں تم کیسے اعمال کرتے ہو (14) اور جب ان کے سامنے ہماری آیتیں جو بہت ہی صاف ہیں، پیش ہوتی ہیں تو وہ جنہیں ہم سے ملنے کی امید نہیں ہے، کہتے ہیں کہ اس کے علاوہ کوئی اور قرآن پیش کیجئے یا اسکو بدل دیجئے کہئے کہ مجھے یہ حق نہیں ہے کہ میں اسے خود اپنی طرف سے بدل دوں، میں تو نہیں پیروی کرتا مگر اس کی کہ جو میری جانب وحی ہوتی ہے، یقینا میں اپنے پروردگار کی نافرمانی کروں، تو میں ڈرتا ہوں ایک بڑے دن کے عذاب سے (15) کہیے کہ اگر اللہ کو ایسا منظور ہوتا تو میں اس کو تمہارے سامنے نہ پڑھتا اور نہ وہ تمہیں اس پر مطلع کرتا کیونکہ اس کے پہلے میں ایک عمر تک تمہارے درمیان رہ چکا ہوں تو کیا تم عقل سے کام نہیں لو گے ؟ (16) تو اس سے بڑھ کر ظالم کون ہو گا جو اللہ پر جھوٹ تہمت لگائے یا اس کی آیتوں کو جھٹلائے یقینا جو مجرم ہیں وہ کبھی فلاح و نجات نہیں پا سکتے (17) وہ اللہ کو چھوڑ کر ایسی چیزوں کی عبادت کرتے ہیں جو نہ انہیں نقصان پہنچا سکتی ہیں اور نہ انہیں نفع پہنچا سکتی ہیں اور کہتے ہیں کہ یہ اللہ کے یہاں ہماری سفارش کرنے والے ہیں، کہئے کہ کیا تم اللہ کو اطلاع دیتے ہو ایک ایسی چیز کی جس کی خود اسے آسمانوں اور زمین میں کوئی خبر نہیں ہے پاک ہے وہ اور بالاتر ہے اس سے کہ جو یہ شریک قرار دیتے ہیں (18) اور نہ تھے لوگ مگر ایک مذہب کے، پھر انہوں نے آپس میں اختلاف کیا اور اگر نہ ہوتی اللہ کی ایک بات جو پہلے سے طے شدہ تھی تو فیصلہ کر دیا جاتا ان کے درمیان ان باتوں میں کہ جن میں ان کے درمیان اختلاف تھا (19) اور وہ کہتے ہیں کہ ان پر ان کے پروردگار کی طرف سے کوئی نشانی کیوں نہیں اترتی؟ کہہ دیجئے کہ غیب اللہ سے مخصوص ہے تو انتظار کرو میں بھی تمہارے ساتھ انتظار کرنے والوں میں ہوں (20) اور جب ہم انسانوں کو رحمت کا مزہ چکھاتے ہیں کسی تکلیف کے بعد جو ان پر پڑی ہے تو وہ ہماری قدرت کی نشانیوں کے بارے میں اپنی ترکیبیں لڑانے لگتے ہیں، کہہ دیجئے کہ اللہ ترکیب میں زیادہ تیز ہے، بلاشبہ ہمارے نمائندے لکھ رہے ہیں، وہ جو تم ترکیبیں لڑاتے ہو (21) وہ وہ ہے جو تمہیں خشکی اور تری میں سفر کراتا ہے، یہاں تک کہ جب تم کشتیوں میں سوارہوئے اور وہ چلیں ان (مسافروں ) کو لے کر موافق ہوا کے ساتھ اور وہ اس سے خوش ہوئے تو آگئی ان پر تیز جھکڑ کی ہوا اور آ گئیں ان پر لہریں ہر طرف سے اور انہوں نے سمجھا کہ وہ گھر گئے ہیں تو وہ پکارنے لگے اللہ کو خالص اس سے لو لگاتے ہوئے اگر تو ہم کو اس سے چھٹکارا دیدے تو ضرور ہم شکر گزار ہوں گے (22) اس کے بعد جب اس نے انہیں چھٹکارا دے دیا تو ایک دم وہ دنیا میں ناحق بغاوت کرنے لگے اے لوگو! تمہاری بغاوت سے نقصان خود تمہارا ہی ہے۔ اس دینوی زندگی سے فائدہ اٹھالو، پھر ہماری ہی طرف تمہارا پلٹنا ہے تو ہم تمہیں بتائیں گے جو تم اعمال کرتے تھے (23) دنیوی زندگی کی مثال تو بس اس پانی کی سی ہے جسے ہم نے آسمان سے اتارا تو اس کے سبب سے مل جل کر پیدا ہوئیں زمین سے اگنے والی چیزیں جنہیں انسان و مویشی کھاتے ہیں، یہاں تک کہ جب زمین زیب و زینت کو لے چکی اور وہ سنور گئی اور اس کے باشندے سمجھنے لگے کہ انہیں اس پر قابو حاصل ہے تو آگیا اس پر ہمارا حکم رات یا دن کو تو ہم نے اس کو کٹا پھٹا بنا دیا ایسا جیسے کہ کل اس کا وجود ہی نہ تھا، اس طرح تفصیل کے ساتھ ہم آیتیں پیش کرتے ہیں ان کے لیے جو غور و فکر سے کام لیں (24) اور اللہ بلاتا ہے سلامتی کے گھر کی طرف اور جسے چاہتا ہے سیدھے راستے پر لگاتا ہے (25) جنہوں نے نیک کام کیے ہوں، ان کو ویسا ہی نیک بدلہ ملے گا اور کچھ بڑھ کر اور نہیں چھائے گی ان کے چہروں پر سیاہی اور نہ ذلت و حقارت یہ جنت والے ہیں کہ اس میں ہمیشہ رہیں گے (26) اور جنہوں نے برے اعمال کیے تو انہیں برائی کی سزا ملے گی، ان پر ذلت و حقارت چھائی ہوئی ہو گی، اللہ سے ان کو بچانے والا کوئی نہیں ہے، گویا ان کے چہروں کو ڈھانپ دیا گیا ہو گا اندھیری رات کے ٹکڑوں سے، یہ دوزخ والے ہیں۔ وہ اس میں ہمیشہ رہیں گے (27) اور جس دن ہم ان سب کو محشور کریں گے، پھر کہیں گے ان سے جنہوں نے شرک کیا تھا، رہو اپنی جگہ تم اور تمہارے بنائے ہوئے شریک، تو ہم تفرقہ ڈال دیں گے ان کے درمیان اور ان کے بنائے ہوئے شریک کہیں گے کہ تم ہماری عبادت نہیں کرتے تھے (28) اچھا تو اللہ ہمارے اور تمہارے درمیان گواہی کے لیے کافی ہے کہ ہم تمہاری عبادت سے بے خبر تھے (29) یہ وہ موقع ہو گا کہ جب ہر ایک نتیجہ دیکھ لے گا اس کا جو وہ پہلے کر چکا ہے اور سب پلٹائے گئے ہوں گے اللہ کی طرف جو ان کا حقیقی مالک ہے اور غائب ہو جائے گا ان سے جو وہ جھوٹ تہمت لگاتے تھے (30) کہیے کہ کون تمہیں روزی دیتا ہے آسمان اور زمین سے یا کون ہے جو سننے کی طاقت اور نگاہوں کا مالک ہے؟ اور کون نکالتا ہے جاندار کو بے جان سے اور نکالتا ہے بے جان کو جاندار سے اور کون کائنات کا انتظام کرتا ہے ؟ اس پر وہ کہیں گے کہ اللہ، کہئے کہ پھر تم بچاؤ کا خیال کیوں نہیں کرتے؟(31) تو یہی تو تمہارا حقیقی پروردگار ہے تو کیا ہے حق کو چھوڑنے کے بعد سوا گمراہی کے تو کیسے تم مڑے چلے جا رہے ہو (32) اسی طرح تمہارے پروردگار کی بات سچ ہوئی ان لوگوں پر جو بداعمال ہیں کہ وہ ایمان نہیں لائیں گے (33) کہیے کہ تمہارے والے شریکوں میں سے کیا کوئی ہے ایسا جو کائنات کو پہلے پہل پیدا کرتا ہو، پھر اسے دوبارہ زندہ کرتا ہو، کہئے کہ اللہ وہ ہے جو کائنات کو پہلے پہل پیدا بھی کرتا ہے اور اسے دوبارہ زندہ بھی کرے گا، تو تم کس طرح منحرف ہوتے ہو ؟ (34) کہیے کہ تمہارے والے شریکوں میں سے کوئی ہے جو حق کی طرف رہنمائی کرتا ہو کہیے کہ اللہ حق کی طرف رہنمائی کرتا ہے تو کیا جو حق کی طرف رہنمائی کرے، وہ اس کا زیادہ حق دار ہے کہ اس کی پیروی کی جائے یا وہ جو خود اس وقت تک راستا نہ پائے جب تک کہ اسے راستا دکھایا نہ جائے، تو تمہیں کیا ہو گیا ہے ؟ کیسے فیصلے کرتے ہو؟ (35) اور ان میں سے زیادہ تر ایسے ہیں جو نہیں پیروی کرتے مگر ایک طرح کے گمان کی، بلاشہ گمان حق تک پہنچنے میں کچھ فائدہ نہیں دیتا۔ یقینا اللہ جانتا ہے ان کاموں کو جو تم کرتے ہو (36) یہ قرآن ایسا نہیں ہے کہ اللہ کے سوا کسی اور کی طرف سے غلط بنا دیا گیا ہو بلکہ وہ تو تصدیق ہے اس کی جو اس کے پہلے ہے اور قانون الٰہی کی تفصیل ہے جس میں شک و شبہ کی گنجائش نہیں ہے، تمام جہانوں کے پروردگار کی طرف سے (37) کیا وہ کہتے ہیں کہ انہوں نے اس کو گھڑ لیا ہے؟ کہئے کہ پھر لے آؤ ایک سورہ اس کے مثل اور بلا لو جس جس کو بلا سکو اللہ کے علاوہ، اگر تم سچے ہو (38) بلکہ انہوں نے جھٹلایا ہے اسے جس کے علم پر وہ حاوی نہیں ہیں اور جس کی حقیقت بھی ان کے سامنے نہیں آئی، اسی طرح جھٹلاتے رہے وہ جو ان کے پہلے تھے تو دیکھو کیا ہوا انجام ان ظالموں کا (39) اور ان میں ایسے بھی ہیں جو اس پر ایمان لاتے ہیں اور ایسے بھی ہیں جو اس پر ایمان نہیں لاتے اور تمہارا پروردگار خوب جاننے والا ہے فسادیوں کا (40) اور اگر وہ آپ کو جھٹلائیں تو کہہ دیجئے کہ میرے لیے میرے اعمال ہیں اور تمہارے لیے تمہارے اعمال، تم بے تعلق ہو اس سے جو میں کرتا ہوں اور میں بے سرو کار ہوں اس سے جو تم کرتے ہو (41) اور ان میں کچھ تو وہ ہیں جو آپ کی باتیں توجہ سے سنتے ہیں مگر کیا آپ بہروں کو بھی سنا دیں گے؟ چاہے وہ عقل سے کام نہ لیتے ہوں (42) اور ان میں کچھ وہ ہیں جو آپ کی طرف نظر اٹھا کر دیکھتے ہیں مگر کیا آپ اندھوں کو بھی راستا دکھا دیجئے گا؟ چاہے وہ دیکھیں نہ (43) یقینا اللہ لوگوں پر کچھ بھی ظلم نہیں کرتا مگر لوگ خود اپنے اوپر ظلم کرتے ہیں (44) اور جس دن ہم انہیں قیامت میں اٹھائیں گے، ایسا معلوم ہو گا کہ وہ نہیں رہے اس عالم میں مگر دن کے تھوڑے حصے میں، آپس میں ایک دوسرے کو پہچان رہے ہوں گے، اس وقت گھاٹے میں ہیں وہ جو اللہ سے ملنے کو غلط کہتے تھے اور وہ صحیح راستے پر نہ تھے (45) اور خواہ ہم آپ کو آنکھوں سے دکھا دیں کچھ وہ باتیں جن کا ہم ان سے وعدہ کر رہے ہیں یا آپ کو پہلے ہی دنیا سے اٹھالیں بہر صورت ان کی رجوع ہماری ہی طرف ہوتی ہے، پھر اللہ گواہ ہے اس پر جو یہ کرتے تھے (46) اور ہر قوم کے لیے ایک پیغمبر ہوتا ہے تو جب ان کا پیغمبر آ جاتا ہے تو ان کے درمیان عدالت کے ساتھ فیصلہ ہو جاتا ہے اور ان پر ظلم نہیں ہوتا (47) اور وہ کہتے ہیں کہ یہ وعدہ کب پورا ہو گا اگر تم سچے ہو ؟ (48) کہہ دیجئے کہ میں خود اپنے لیے نہ کسی نقصان پر قبضہ رکھتا ہوں اور نہ کسی نفع پر مگر جو اللہ چاہے، ہر قوم کی ایک عمر ہوتی ہے، جب ان کی عمر پوری ہو جاتی ہے تو ذرا دیر نہ پیچھے ہٹتے ہیں، اور نہ آگے بڑھ سکتے ہیں (49) کہئے کہ کیا تم نے غور کیا ہے اگر تم پہ اس کا عذاب رات کے وقت یا دن کو آجائے تو وہ کیا چیز ہو گی جس کی گنہگار لوگ جلدی کر رہے ہیں ؟ (50) کیا اس کے بعد جب وہ آجائے گا تو تم ایمان لاؤ گے؟ کیا اب! حالانکہ اس کی تم جلدی کر رہے تھے (51) پھر کہا جائے گا ان سے جو ظالم تھے کہ چکھو ہمیشہ ہمیشہ کا عذاب کیا تمہیں سزا مل رہی ہے سوا اس کے کہ جو تم اعمال کرتے تھے ؟ (52) اور وہ آپ سے دریافت کر رہے ہیں کہ کیا یہ سچ ہے ؟ کہئے کہ ہاں خدا کی قسم وہ ضرور سچ ہے اور تم بے بس نہیں بنا سکتے (53) اور اگر ہر اس شخص کی ملک میں جو ظالم ہے، وہ سب ہو جو روئے زمین پر ہے تو وہ معاوضہ میں دے دے اور وہ دل میں چھپائے ہوئے ہوں گے پشیمانی جب کہ عذاب کو آنکھوں سے دیکھ رہے ہوں گے اور ان کے درمیان فیصلہ ہوا ہو گا عدالت کے ساتھ اور ان پر ظلم نہیں ہو رہا ہو گا (54) معلوم ہونا چاہیے کہ بلاشبہ اللہ کا ہے جو کچھ آسمانوں اور زمین میں ہے، آگاہ ہو کہ بلاشبہ اللہ کا وعدہ سچا ہے مگر ان میں کے زیادہ نادانی میں مبتلا ہیں (55) وہ زندہ کرتا ہے اور مارتا ہے اور اسی کی طرف تم کو پلٹنا ہے (56) اے انسانو! تمہارے پاس آیا ہے وعظ و نصیحت کا مجموعہ تمہارے پروردگار کی طرف سے اور سینوں کے اندر کی بیماریوں کا علاج اور رہنمائی اور رحمت ایمان لانے والوں کے لیے ( 57) کہئے کہ یہ اللہ ہی کی طرف کے فضل و کرم سے ہے تو اس پر تو انہیں خوش ہونا چاہیے، وہ بہتر ہے اس دولت سے جو وہ جمع کرتے ہیں (58) کہئے کہ کیا تم نے غور کیا ہے کہ جو اللہ نے تمہارے لیے روزی کا سامان پیدا کیا ہے تو تم نے اس میں حرام اور حلال خود قرار دے لیے ہیں ، کہئے کہ کیا اللہ نے تمہیں حکم دیا تھا یا تم اللہ پر غلط تہمت لگاتے ہو (59) اور کیا ہے گمان ان کا جو اللہ پر جھوٹ باندھتے ہیں قیامت کے دن اور بلاشبہ اللہ لوگوں پر بڑے فضل و کرم والا ہے مگر زیادہ تر لوگ شکر گزاری نہیں کرتے (60) اور نہیں ہوتے آپ کسی حالت میں اور نہ اس کی طرف کی کوئی چیز آپ پڑھتے ہیں اور نہ تم لوگ کوئی کام کرتے ہو مگر ہم تمہارے اوپر حاضر و ناظر ہوتے ہیں جب تم اس میں بڑے انہماک کے ساتھ مصروف ہوتے ہو اور تمہارے پروردگار سے کوئی ذرہ بھر چیز پوشیدہ نہیں رہتی زمین میں نہ آسمان میں اور نہ اس سے چھوٹی اور بڑی مگر یہ کہ وہ ایک واضح نوشتہ میں موجود ہے (61) آگاہ ہو کہ اللہ کے جو دوست ہیں، ان پر نہ کوئی خوف ہے اور نہ انہیں رنج ہوتا ہے (62) جو ایمان لائیں اور پرہیز گار رہیں (63) ان کے لیے خوش خبری ہے دنیوی زندگی میں بھی اور آخرت میں بھی اللہ کی باتوں میں تبدیلی نہیں ہوتی، وہ بہت بڑی کامیابی ہے (64) اور ان کی گفتگو آپ کو رنجیدہ نہ کرے، یقینا عزت تمام کی تمام اللہ کے لیے ہے۔ وہ سننے والا ہے، بڑا جاننے والا (65) آگاہ ہونا چاہیے کہ اللہ کے ہیں وہ جو آسمانوں میں ہیں اور وہ جو زمین میں ہیں اور اللہ کو چھوڑ کر شریکوں کی جو دہائی دیتے ہیں، وہ کاہے کی پیروی کرتے ہیں ؟ وہ نہیں پیروی کرتے کسی چیز کی سوائے گمان کے اور نہیں ہیں وہ سوا اس کے کہ اٹکل پچو باتیں کرتے ہیں (66) وہ وہ ہے جس نے تمہارے لیے رات کو قرار دیا، اس لیے کہ تم اس میں سکون حاصل کرو اور دن کو دیکھنے والا۔ بے شک اس میں نشانیاں ہیں ان لوگوں کے لیے جو سنتے ہیں (67) انہوں نے کہا کہ اللہ نے ایک بیٹا بنایا ہے پاک ہے اس کی ذات، وہ بے نیاز ہے، اس کا ہے جو کچھ آسمانوں میں ہے اور جو زمین میں ہے، تمہارے پاس کوئی دلیل اس پر نہیں ہے، کیا تم اللہ پر منڈھتے ہو ایسی بات جو تم جانتے نہیں ہو (68) کہہ دیجئے کہ بلاشبہ جو اللہ پر جھوٹ تہمت باندھتے ہیں، وہ بہتری حاصل نہیں کریں گے (69) دنیا میں تھوڑا فائدہ اٹھالیں، پھر ہماری طرف ان کی رجوع ہو گی، پھر ہم ان کو سخت عذاب کا مزہ چکھائیں گے بدلے میں اس کے جو وہ کفر اختیار کرتے تھے (70) اور ان کے سامنے نوح کا واقعہ بیان کیجئے جب کہ انہوں نے اپنی قوم والوں سے کہا۔ اے میری قوم والو! اگر تم پر شاق ہے میرا قیام اور میرا نصیحت کرنا آیات الٰہی کے ساتھ تو میرا تو بھروسا صرف اللہ پر ہے تو تم اپنے تمام مددگاروں کو ساتھ میں ملا کر اپنی مہم کی تیاری کر لو پھر تمہیں اس میں کوئی تذبذب و تردد بھی نہیں ہونا چاہیے، پھر کر گزرو میرے ساتھ جو کرنا ہو اور مجھے ذرا بھی مہلت نہ دو (71) اب اگر تم رو گردانی کرتے ہو تو میں نے تم سے کوئی معاوضہ نہیں مانگا ہے۔ میرا معاوضہ نہیں ہے مگر اللہ پر اور میں مامور اس پر ہوں کہ اس کے سامنے سر جھکائے رہوں (72) اس پر ان لوگوں نے انہیں جھٹلایا تو ہم نے انہیں چھٹکارا دیا اور انہیں کہ جو ان کے ساتھ کشتی میں تھے اور انہیں دوسری جگہ متمکن کیا اور غرق کر دیا انہیں کہ جنہوں نے ہماری آیتوں کو جھٹلایا تھا تو دیکھو کیسا برا انجام ہوا ڈرائے جانے والوں کا (73) پھر ان کے بعد بہت سے پیغمبر ان کی قوموں کی طرف ہم نے بھیجے تو وہ ان کے پاس معجزے لے کر آئے مگر وہ ایمان نہیں لانے والے تھے اسی پر کہ جسے پہلے جھٹلا چکے تھے اس طرح ہم مہر لگا دیتے ہیں ظلم و تعدی کرنے والوں کے دلوں پر (74) پھر ہم نے بھیجا ان کے بعد موسیٰ اور ہارون کو فرعون اور اس کے یہاں کے بڑے بڑے آدمیوں کی طرف اپنی نشانیوں کے ساتھ تو انہوں نے تکبر سے کام لیا اور وہ بڑے گنہگار لوگ تھے (75) تو جب ان کے پاس حق آیا ہمارے پاس سے تو انہوں نے کہا یقینا یہ کھلا ہوا جادو ہے (76) موسیٰ نے کہا کیا تم حق کو ایسا کہتے ہو جب کہ وہ تمہارے پاس آیا، کیا یہ جادو ہے؟ اور جادوگر لوگ کبھی بہتری حاصل نہیں کرتے (77) انہوں نے کہا کہ کیا تم آئے ہو اس لیے کہ ہمیں پھیرو اس سے کہ جس پر ہم نے باپ داداؤں کو پایا ہے اور تمہارے لیے بڑائی ہو اس سر زمین پر اور ہم تم پر ایمان لانے والے نہیں ہیں (78) اور فرعون نے کہا کہ لاؤ میرے پاس ہر بڑے واقف کار جادو گر کو (79) تو وہ جادو گر آئے تو ان سے موسیٰ نے کہا کہ پھینکو جو تم پھینکنے والے ہو (80) تو جب انہوں نے پھینکا موسیٰ نے کہا کہ جو تم لائے ہو وہ جادو ہے، یقینا اللہ اسے باطل کر دے گا۔ بلاشبہ اللہ ٹھیک نہیں رہنے دیتا کام فسادیوں کا (81) اور اللہ حق کو اپنی باتوں سے ثابت کردے گا، چاہے گنہگار لوگ ناپسند کریں (82) تو نہیں ایمان لائے موسیٰ پر مگر ان کی قوم کے کچھ بچے فرعون اور ان کے بڑے آدمیوں سے سہمے ہوئے کہ کہیں وہ انہیں سزا نہ دیں اور بلاشبہ فرعون سرکشی کرنے والا تھا روئے زمین پر اور حد سے تجاوز کرنے والوں میں سے تھا (83) اور موسیٰ نے کہا اے میری قوم والو ! اگر تم اللہ پر ایمان لائے ہو تو پھر اسی پر بھروسا رکھو اگر تم مسلم ہو (84) اس پر انہوں نے کہا کہ اللہ ہی پر ہم بھروسا کرتے ہیں، اے ہمارے پروردگار! ہمیں ظالم جماعت کا تختہ مشق نہ بنا (85) اور اپنی رحمت سے ہمیں نجات دے اس کافر جماعت سے (86) اور ہم نے وحی بھیجی موسیٰ اور ان کے بھائی کی طرف کہ جگہ لو اپنی قوم کے لیے مصر کے گھروں میں اور بناؤ اپنے گھروں کو قبلہ اور نماز کی پابندی کرو اور خوش خبری دو ایمان والوں کو (87) موسیٰ نے کہا اے ہمارے پروردگار! تو نے فرعون اور اس کے ساتھ کے بڑے آدمیوں کو اس دنیوی زندگی میں زیب و زینت اور بہت اموال دے رکھے ہیں، اے پروردگار! نتیجہ اس کا یہ ہے کہ وہ تیرے راستے سے بہکاتے ہیں۔ اے ہمارے مالک! نیست و نابود کر دے ان کے اموال اور سختی کر ان کے دلوں پر کہ جب تک درد ناک عذاب وہ دیکھ نہ لیں گے ایمان نہیں لائیں گے (88) اس نے کہا کہ تم دونوں کی دعا قبول ہوتی ہے، اب تم ذرا ٹھیک رہنا اور ان کے راستوں کی پیروی نہ کرنا جو علم نہیں رکھتے (89) اور ہم نے گزار دیا بنی اسرائیل کو دریا سے تو پیچھا کیا ان کا فرعون اور اس کے لشکر والوں نے بغاوت اور ظلم و تعدی سے یہاں تک کہ جب اس کو ڈوبنے کی صورت سامنے آئی تو اس نے کہا میں ایمان لاتا ہوں کہ کو ئی خدا نہیں سوا اس ذات کے جس پر بنی اسرائیل ایمان لائے ہیں اور میں مسلمانوں میں سے ہوں (90) اب ؟ حالانکہ اس کے پہلے تو نے نافرمانی کی اور تو فسادیوں میں سے تھا (91) اب آج ہم تجھے تیرے جسم کے ساتھ چھٹکارا دے دیں گے تاکہ تو اپنے بعد والوں کے لیے قدرت کی نشانی رہے اور لوگوں میں زیادہ ایسے ہیں جو ہماری نشانیوں سے بے خبر ہیں (92) اور ہم نے جگہ دی بنی اسرائیل کو شایان شان مقام پر اور اچھی اچھی نعمتوں سے انہیں غذا دی تو انہوں نے آپس میں اختلاف نہیں کیا، یہاں تک کہ ان کے پاس آیا علم یقینا تمہارا پروردگار ان کے درمیان فیصلہ کرے گا قیامت کے دن ان باتوں میں جن میں وہ اختلاف کرتے تھے (93) تو اگر کوئی شک ہو آپ کو اس میں جو ہم نے آپ پر اتارا ہے تو پوچھ لیجئے ان سے جو کتاب پڑھا کرتے ہیں آپ کے پہلے سے آپ کے پروردگار کی طرف سے حق آگیا ہے تو نہ ہو جیے شک کرنے والوں میں سے (94) اور نہ ہو جیے ان میں سے جنہوں نے آیات الٰہی کو جھٹلایا تو آپ ہوں گے گھاٹا اٹھانے والوں میں سے (95) یقینا وہ کہ جن پر آپ کے پروردگار کی بات پوری ہو کر رہی، وہ ایمان نہیں لائیں گے (96) چاہے ان کے پاس ہر طرح کا معجزہ آ جائے، جب تک کہ درد ناک عذاب کو آنکھوں سے نہ دیکھ لیں (97) تو کیوں نہ کوئی بستی اس وقت ایمان لائی جبکہ اسے اس کا ایمان فائدہ پہنچائے، سوا یونس کی قوم کے جب وہ ایمان لائے تو ہم نے ہٹا دیا ان سے رسوائی والا عذاب اس دنیوی زندگی میں اور فائدہ اٹھانے کا موقع دیا انہیں ایک مدت تک (98) اور اگر آپ کا پروردگار چاہتا تو دنیا میں جتنے ہیں، سب ہی ایمان لے آتے تو کیا آپ لوگوں کو مجبور کیجئے گا کہ وہ مؤمن ہو جائیں ؟ (99) اور کسی متنفس کے لیے یہ نہیں ہے کہ وہ ایمان لائے مگر اللہ کی مشیت کے مطابق اور اللہ نجاست کا حکم لگا دیتا ہے ان پر جو عقل سے کام نہیں لیتے (100) کہئے کہ غور کرو، کیا کیا ہے آسمانوں اور زمین میں؟ اور نشانیاں قدرت کی اور تنبیہیں فائدہ نہیں دیتیں ان کو جو ایمان نہیں لاتے (101) تو کیا انتظار کر رہے ہیں وہ سوا ایسے دنوں کے جیسے ان لوگوں پر آئے جو ان کے پہلے تھے، کہئے کہ اچھا پھر انتظار کرو۔ میں بھی تمہارے ساتھ انتظار کرنے والوں میں ہوں (102) پھر ہم چھٹکارا دیتے ہیں اپنے پیغمبروں کو اور ان کو جو ایمان لائے ہیں، اس طرح ہمارے ذمہ حق ہے کہ ہم اہل ایمان کو چھٹکارا دیں (103) کہئے کہ اے لوگو! اگر تم میرے دین کی طرف سے کچھ شک و شبہ میں گرفتار ہو تو (صاف سن لو) میں عبادت نہیں کرتا ان کی جن کی اللہ کو چھوڑ کر تم عبادت کرتے ہو بلکہ میں عبادت کرتا ہوں اللہ کی جو تمہاری روح قبض کرتا ہے اور میں مامور ہوں اس پر کہ ایمان لانے والوں میں سے ہوں (104) اور یہ (مجھ سے کہا گیا ہے) کہ تم اپنے چہرہ کو ادھر ادھر سے ہٹا کر اس دین کی طرف سیدھا رکھو اور مشرکوں میں سے نہ ہو (105) اور اللہ کے سوا ایسی چیزوں کی دہائی نہ دو جو نہ تمہیں نفع پہنچاتی ہیں اور نہ نقصان کہ اگر تم ایسا کرو گے تو یقینا اس وقت تم ظالموں میں سے ہو گے (106) اور اگر اللہ تمہیں کوئی نقصان پہنچائے تو سوا اس کے کوئی دور کرنے والا نہیں اور اگر وہ تمہارے ساتھ بھلائی چاہے تو کوئی اس کے فضل و کرم کا پلٹانے والا نہیں، اللہ اسے پہنچاتا ہے اپنے بندوں میں سے جس تک چاہتا ہے اور وہ بخشنے والا ہے، بڑا مہربان (107) کہہ دیجئے کہ اے لوگو! تمہارے پاس آیا ہے حق تمہارے پروردگار کی طرف سے تو جو ہدایت حاصل کرے گا، وہ صرف اپنے لیے ہدایت حاصل کرے گا اور جو گمراہ ہو گا وہ گمراہ ہو کر اپنا ہی نقصان کرے گا اور میں تمہارا کوئی ٹھیکیدار نہیں ہوں (108) اور پیروی کیجئے اس کی جو آپ پر وحی اتاری گئی ہے اور صبر و تحمل سے کام لیجئے جب تک کہ اللہ کی طرف سے فیصلہ ہو اور وہ بہترین فیصلہ کرنے والا ہے (109)

پچھلی سورت:
سورہ توبہ
سورہ 10 اگلی سورت:
سورہ ہود
قرآن کریم

(1) سورہ فاتحہ (2) سورہ بقرہ (3) سورہ آل عمران (4) سورہ نساء (5) سورہ مائدہ (6) سورہ انعام (7) سورہ اعراف (8) سورہ انفال (9) سورہ توبہ (10) سورہ یونس (11) سورہ ہود (12) سورہ یوسف (13) سورہ رعد (14) سورہ ابراہیم (15) سورہ حجر (16) سورہ نحل (17) سورہ اسراء (18) سورہ کہف (19) سورہ مریم (20) سورہ طہ (21) سورہ انبیاء (22) سورہ حج (23) سورہ مؤمنون (24) سورہ نور (25) سورہ فرقان (26) سورہ شعراء (27) سورہ نمل (28) سورہ قصص (29) سورہ عنکبوت (30) سورہ روم (31) سورہ لقمان (32) سورہ سجدہ (33) سورہ احزاب (34) سورہ سباء (35) سورہ فاطر (36) سورہ یس (37) سورہ صافات (38) سورہ ص (39) سورہ زمر (40) سورہ غافر (41) سورہ فصلت (42) سورہ شوری (43) سورہ زخرف (44) سورہ دخان (45) سورہ جاثیہ (46) سورہ احقاف (47) سورہ محمد (48) سورہ فتح (49) سورہ حجرات (50) سورہ ق (51) سورہ ذاریات (52) سورہ طور (53) سورہ نجم (54) سورہ قمر (55) سورہ رحمن (56) سورہ واقعہ (57) سورہ حدید (58) سورہ مجادلہ (59) سورہ حشر (60) سورہ ممتحنہ (61) سورہ صف (62) سورہ جمعہ (63) سورہ منافقون (64) سورہ تغابن (65) سورہ طلاق (66) سورہ تحریم (67) سورہ ملک (68) سورہ قلم (69) سورہ حاقہ (70) سورہ معارج (71) سورہ نوح (72) سورہ جن (73) سورہ مزمل (74) سورہ مدثر (75) سورہ قیامہ (76) سورہ انسان (77) سورہ مرسلات (78) سورہ نباء (79) سورہ نازعات (80) سورہ عبس (81) سورہ تکویر (82) سورہ انفطار (83) سورہ مطففین (84) سورہ انشقاق (85) سورہ بروج (86) سورہ طارق (87) سورہ اعلی (88) سورہ غاشیہ (89) سورہ فجر (90) سورہ بلد (91) سورہ شمس (92) سورہ لیل (93) سورہ ضحی (94) سورہ شرح (95) سورہ تین (96) سورہ علق (97) سورہ قدر (98) سورہ بینہ (99) سورہ زلزال (100) سورہ عادیات (101) سورہ قارعہ (102) سورہ تکاثر (103) سورہ عصر (104) سورہ ہمزہ (105) سورہ فیل (106) سورہ قریش (107) سورہ ماعون (108) سورہ کوثر (109) سورہ کافرون (110) سورہ نصر (111) سورہ مسد (112) سورہ اخلاص (113) سورہ فلق (114) سورہ ناس


متعلقہ مآخذ

پاورقی حاشیے

  1. دانشنامه قرآن و قرآن پژوهی، ج2، ص1239۔


مآخذ

  • قرآن کریم، ترجمہ سید علی نقی نقوی (لکھنوی)۔
  • دانشنامه قرآن و قرآن پژوهی، ج2، به کوشش بهاء الدین خرمشاهی، تهران: دوستان-ناهید، 1377.