سورہ یوسف

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
ہود سورۂ یوسف رعد
سوره یوسف.jpg
ترتیب کتابت: 12
پارہ : 12 و 13
نزول
ترتیب نزول: 53
مکی/ مدنی: مکی
اعداد و شمار
آیات: 111
الفاظ: 1795
حروف: 7305

سورہ یوسف [سُوْرَةُ يُوْسُف] کو "سورہ یوسف" کہا گیا ہے کیونکہ اس میں یوسف بن یعقوب علیہما السلام اور ان کے بھائیوں کی داستان تفصیل سے بیان ہوئی ہے۔ یہ سورت [[حجم اور کمیت کے لحاظ سے قرآن کی اوسط درجے کی سورتوں اور مئون کے زمرے میں آتی ہے اور حروف مقطعہ [=الر = الف لام را] سے شروع ہونے والی سورتوں میں چھٹے نمبر پر ہے۔

سورہ یوسف

سورہ یوسف میں یوسف بن یعقوب علیہما السلام اور ان کے بھائیوں کی داستان تفصیل سے بیان ہوئی ہے۔ قرآن کی دوسری داستانوں کے برعکس ـ جو کئی سورتوں میں بیان ہوئی ہیں ـ یہ سورت ایک مربوط سورت ہے اور اس کی اکثر آیات کا تعلق اسی داستان سے ہے۔ اس سورت میں حضرت یوسف(ع) کا نام 25 بار آیا ہے اور اسی مناسبت سے اس کو سورہ یوسف کا نام دیا گیا ہے۔ اس سورت کا دوسرا نام احسن القصص أحسَنُ القَصََص (یعنی داستانوں میں بہترین اور عمدہ ترین) ہے اور اس نام کا تعلق بھی حضرت یوسف(ص) کی داستان سے ہے۔ یہ سورت مکی ہے، مصحف کے لحاظ سے بارہویں اور ترتیب نزول کے لحاظ سے قرآن تریپن ویں سورت ہے۔ یہ سورت حجم و کمیت کے لحاظ سے اوسط سورتوں اور مئون میں سے ہے اور حروف مقطعہ [=الر = الف لام را] سے شروع ہونے والی سورتوں میں چھٹے نمبر پر ہے۔ اس سورت کی آیات کی تعداد 111، الفاظ کی تعداد 1795 اور حروف کی تعداد 7305 ہے۔ گوکہ اس کی آیات کی تعداد کے حوالے سے قراء اور مفسرین کے درمیان اختلاف ہے۔

مفاہیم

حضرت یوسف(ع) کی مکمل داستان اور ان کے والدین اور بھائیوں کے حالات نیز عبرت انگیز واقعات و حوادث اور سبق آموز نکات اس سورت کے اصلی اور بنیادی مضامین ہیں۔[1]

متن سورہ

سورہ یوسف مکیہ ـ نمبر 12 - آیات 111 - ترتیب نزول 53
بِسْمِ اللّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ

الر تِلْكَ آيَاتُ الْكِتَابِ الْمُبِينِ ﴿1﴾ إِنَّا أَنزَلْنَاهُ قُرْآنًا عَرَبِيًّا لَّعَلَّكُمْ تَعْقِلُونَ ﴿2﴾ نَحْنُ نَقُصُّ عَلَيْكَ أَحْسَنَ الْقَصَصِ بِمَا أَوْحَيْنَا إِلَيْكَ هَذَا الْقُرْآنَ وَإِن كُنتَ مِن قَبْلِهِ لَمِنَ الْغَافِلِينَ ﴿3﴾ إِذْ قَالَ يُوسُفُ لِأَبِيهِ يَا أَبتِ إِنِّي رَأَيْتُ أَحَدَ عَشَرَ كَوْكَبًا وَالشَّمْسَ وَالْقَمَرَ رَأَيْتُهُمْ لِي سَاجِدِينَ ﴿4﴾ قَالَ يَا بُنَيَّ لاَ تَقْصُصْ رُؤْيَاكَ عَلَى إِخْوَتِكَ فَيَكِيدُواْ لَكَ كَيْدًا إِنَّ الشَّيْطَانَ لِلإِنسَانِ عَدُوٌّ مُّبِينٌ ﴿5﴾ وَكَذَلِكَ يَجْتَبِيكَ رَبُّكَ وَيُعَلِّمُكَ مِن تَأْوِيلِ الأَحَادِيثِ وَيُتِمُّ نِعْمَتَهُ عَلَيْكَ وَعَلَى آلِ يَعْقُوبَ كَمَا أَتَمَّهَا عَلَى أَبَوَيْكَ مِن قَبْلُ إِبْرَاهِيمَ وَإِسْحَقَ إِنَّ رَبَّكَ عَلِيمٌ حَكِيمٌ ﴿6﴾ لَّقَدْ كَانَ فِي يُوسُفَ وَإِخْوَتِهِ آيَاتٌ لِّلسَّائِلِينَ ﴿7﴾ إِذْ قَالُواْ لَيُوسُفُ وَأَخُوهُ أَحَبُّ إِلَى أَبِينَا مِنَّا وَنَحْنُ عُصْبَةٌ إِنَّ أَبَانَا لَفِي ضَلاَلٍ مُّبِينٍ ﴿8﴾ اقْتُلُواْ يُوسُفَ أَوِ اطْرَحُوهُ أَرْضًا يَخْلُ لَكُمْ وَجْهُ أَبِيكُمْ وَتَكُونُواْ مِن بَعْدِهِ قَوْمًا صَالِحِينَ ﴿9﴾ قَالَ قَآئِلٌ مَّنْهُمْ لاَ تَقْتُلُواْ يُوسُفَ وَأَلْقُوهُ فِي غَيَابَةِ الْجُبِّ يَلْتَقِطْهُ بَعْضُ السَّيَّارَةِ إِن كُنتُمْ فَاعِلِينَ ﴿10﴾ قَالُواْ يَا أَبَانَا مَا لَكَ لاَ تَأْمَنَّا عَلَى يُوسُفَ وَإِنَّا لَهُ لَنَاصِحُونَ ﴿11﴾ أَرْسِلْهُ مَعَنَا غَدًا يَرْتَعْ وَيَلْعَبْ وَإِنَّا لَهُ لَحَافِظُونَ ﴿12﴾ قَالَ إِنِّي لَيَحْزُنُنِي أَن تَذْهَبُواْ بِهِ وَأَخَافُ أَن يَأْكُلَهُ الذِّئْبُ وَأَنتُمْ عَنْهُ غَافِلُونَ ﴿13﴾ قَالُواْ لَئِنْ أَكَلَهُ الذِّئْبُ وَنَحْنُ عُصْبَةٌ إِنَّا إِذًا لَّخَاسِرُونَ ﴿14﴾ فَلَمَّا ذَهَبُواْ بِهِ وَأَجْمَعُواْ أَن يَجْعَلُوهُ فِي غَيَابَةِ الْجُبِّ وَأَوْحَيْنَآ إِلَيْهِ لَتُنَبِّئَنَّهُم بِأَمْرِهِمْ هَذَا وَهُمْ لاَ يَشْعُرُونَ ﴿15﴾ وَجَاؤُواْ أَبَاهُمْ عِشَاء يَبْكُونَ ﴿16﴾ قَالُواْ يَا أَبَانَا إِنَّا ذَهَبْنَا نَسْتَبِقُ وَتَرَكْنَا يُوسُفَ عِندَ مَتَاعِنَا فَأَكَلَهُ الذِّئْبُ وَمَا أَنتَ بِمُؤْمِنٍ لِّنَا وَلَوْ كُنَّا صَادِقِينَ ﴿17﴾ وَجَآؤُوا عَلَى قَمِيصِهِ بِدَمٍ كَذِبٍ قَالَ بَلْ سَوَّلَتْ لَكُمْ أَنفُسُكُمْ أَمْرًا فَصَبْرٌ جَمِيلٌ وَاللّهُ الْمُسْتَعَانُ عَلَى مَا تَصِفُونَ ﴿18﴾ وَجَاءتْ سَيَّارَةٌ فَأَرْسَلُواْ وَارِدَهُمْ فَأَدْلَى دَلْوَهُ قَالَ يَا بُشْرَى هَذَا غُلاَمٌ وَأَسَرُّوهُ بِضَاعَةً وَاللّهُ عَلِيمٌ بِمَا يَعْمَلُونَ ﴿19﴾ وَشَرَوْهُ بِثَمَنٍ بَخْسٍ دَرَاهِمَ مَعْدُودَةٍ وَكَانُواْ فِيهِ مِنَ الزَّاهِدِينَ ﴿20﴾ وَقَالَ الَّذِي اشْتَرَاهُ مِن مِّصْرَ لاِمْرَأَتِهِ أَكْرِمِي مَثْوَاهُ عَسَى أَن يَنفَعَنَا أَوْ نَتَّخِذَهُ وَلَدًا وَكَذَلِكَ مَكَّنِّا لِيُوسُفَ فِي الأَرْضِ وَلِنُعَلِّمَهُ مِن تَأْوِيلِ الأَحَادِيثِ وَاللّهُ غَالِبٌ عَلَى أَمْرِهِ وَلَكِنَّ أَكْثَرَ النَّاسِ لاَ يَعْلَمُونَ ﴿21﴾ وَلَمَّا بَلَغَ أَشُدَّهُ آتَيْنَاهُ حُكْمًا وَعِلْمًا وَكَذَلِكَ نَجْزِي الْمُحْسِنِينَ ﴿22﴾ وَرَاوَدَتْهُ الَّتِي هُوَ فِي بَيْتِهَا عَن نَّفْسِهِ وَغَلَّقَتِ الأَبْوَابَ وَقَالَتْ هَيْتَ لَكَ قَالَ مَعَاذَ اللّهِ إِنَّهُ رَبِّي أَحْسَنَ مَثْوَايَ إِنَّهُ لاَ يُفْلِحُ الظَّالِمُونَ ﴿23﴾ وَلَقَدْ هَمَّتْ بِهِ وَهَمَّ بِهَا لَوْلا أَن رَّأَى بُرْهَانَ رَبِّهِ كَذَلِكَ لِنَصْرِفَ عَنْهُ السُّوءَ وَالْفَحْشَاء إِنَّهُ مِنْ عِبَادِنَا الْمُخْلَصِينَ ﴿24﴾ وَاسُتَبَقَا الْبَابَ وَقَدَّتْ قَمِيصَهُ مِن دُبُرٍ وَأَلْفَيَا سَيِّدَهَا لَدَى الْبَابِ قَالَتْ مَا جَزَاء مَنْ أَرَادَ بِأَهْلِكَ سُوَءًا إِلاَّ أَن يُسْجَنَ أَوْ عَذَابٌ أَلِيمٌ ﴿25﴾ قَالَ هِيَ رَاوَدَتْنِي عَن نَّفْسِي وَشَهِدَ شَاهِدٌ مِّنْ أَهْلِهَا إِن كَانَ قَمِيصُهُ قُدَّ مِن قُبُلٍ فَصَدَقَتْ وَهُوَ مِنَ الكَاذِبِينَ ﴿26﴾ وَإِنْ كَانَ قَمِيصُهُ قُدَّ مِن دُبُرٍ فَكَذَبَتْ وَهُوَ مِن الصَّادِقِينَ ﴿27﴾ فَلَمَّا رَأَى قَمِيصَهُ قُدَّ مِن دُبُرٍ قَالَ إِنَّهُ مِن كَيْدِكُنَّ إِنَّ كَيْدَكُنَّ عَظِيمٌ ﴿28﴾ يُوسُفُ أَعْرِضْ عَنْ هَذَا وَاسْتَغْفِرِي لِذَنبِكِ إِنَّكِ كُنتِ مِنَ الْخَاطِئِينَ ﴿29﴾ وَقَالَ نِسْوَةٌ فِي الْمَدِينَةِ امْرَأَةُ الْعَزِيزِ تُرَاوِدُ فَتَاهَا عَن نَّفْسِهِ قَدْ شَغَفَهَا حُبًّا إِنَّا لَنَرَاهَا فِي ضَلاَلٍ مُّبِينٍ ﴿30﴾ فَلَمَّا سَمِعَتْ بِمَكْرِهِنَّ أَرْسَلَتْ إِلَيْهِنَّ وَأَعْتَدَتْ لَهُنَّ مُتَّكَأً وَآتَتْ كُلَّ وَاحِدَةٍ مِّنْهُنَّ سِكِّينًا وَقَالَتِ اخْرُجْ عَلَيْهِنَّ فَلَمَّا رَأَيْنَهُ أَكْبَرْنَهُ وَقَطَّعْنَ أَيْدِيَهُنَّ وَقُلْنَ حَاشَ لِلّهِ مَا هَذَا بَشَرًا إِنْ هَذَا إِلاَّ مَلَكٌ كَرِيمٌ ﴿31﴾ قَالَتْ فَذَلِكُنَّ الَّذِي لُمْتُنَّنِي فِيهِ وَلَقَدْ رَاوَدتُّهُ عَن نَّفْسِهِ فَاسَتَعْصَمَ وَلَئِن لَّمْ يَفْعَلْ مَا آمُرُهُ لَيُسْجَنَنَّ وَلَيَكُونًا مِّنَ الصَّاغِرِينَ ﴿32﴾ قَالَ رَبِّ السِّجْنُ أَحَبُّ إِلَيَّ مِمَّا يَدْعُونَنِي إِلَيْهِ وَإِلاَّ تَصْرِفْ عَنِّي كَيْدَهُنَّ أَصْبُ إِلَيْهِنَّ وَأَكُن مِّنَ الْجَاهِلِينَ ﴿33﴾ فَاسْتَجَابَ لَهُ رَبُّهُ فَصَرَفَ عَنْهُ كَيْدَهُنَّ إِنَّهُ هُوَ السَّمِيعُ الْعَلِيمُ ﴿34﴾ ثُمَّ بَدَا لَهُم مِّن بَعْدِ مَا رَأَوُاْ الآيَاتِ لَيَسْجُنُنَّهُ حَتَّى حِينٍ ﴿35﴾ وَدَخَلَ مَعَهُ السِّجْنَ فَتَيَانَ قَالَ أَحَدُهُمَآ إِنِّي أَرَانِي أَعْصِرُ خَمْرًا وَقَالَ الآخَرُ إِنِّي أَرَانِي أَحْمِلُ فَوْقَ رَأْسِي خُبْزًا تَأْكُلُ الطَّيْرُ مِنْهُ نَبِّئْنَا بِتَأْوِيلِهِ إِنَّا نَرَاكَ مِنَ الْمُحْسِنِينَ ﴿36﴾ قَالَ لاَ يَأْتِيكُمَا طَعَامٌ تُرْزَقَانِهِ إِلاَّ نَبَّأْتُكُمَا بِتَأْوِيلِهِ قَبْلَ أَن يَأْتِيكُمَا ذَلِكُمَا مِمَّا عَلَّمَنِي رَبِّي إِنِّي تَرَكْتُ مِلَّةَ قَوْمٍ لاَّ يُؤْمِنُونَ بِاللّهِ وَهُم بِالآخِرَةِ هُمْ كَافِرُونَ ﴿37﴾ وَاتَّبَعْتُ مِلَّةَ آبَآئِي إِبْرَاهِيمَ وَإِسْحَقَ وَيَعْقُوبَ مَا كَانَ لَنَا أَن نُّشْرِكَ بِاللّهِ مِن شَيْءٍ ذَلِكَ مِن فَضْلِ اللّهِ عَلَيْنَا وَعَلَى النَّاسِ وَلَكِنَّ أَكْثَرَ النَّاسِ لاَ يَشْكُرُونَ ﴿38﴾ يَا صَاحِبَيِ السِّجْنِ أَأَرْبَابٌ مُّتَفَرِّقُونَ خَيْرٌ أَمِ اللّهُ الْوَاحِدُ الْقَهَّارُ ﴿39﴾ مَا تَعْبُدُونَ مِن دُونِهِ إِلاَّ أَسْمَاء سَمَّيْتُمُوهَا أَنتُمْ وَآبَآؤُكُم مَّا أَنزَلَ اللّهُ بِهَا مِن سُلْطَانٍ إِنِ الْحُكْمُ إِلاَّ لِلّهِ أَمَرَ أَلاَّ تَعْبُدُواْ إِلاَّ إِيَّاهُ ذَلِكَ الدِّينُ الْقَيِّمُ وَلَكِنَّ أَكْثَرَ النَّاسِ لاَ يَعْلَمُونَ ﴿40﴾ يَا صَاحِبَيِ السِّجْنِ أَمَّا أَحَدُكُمَا فَيَسْقِي رَبَّهُ خَمْرًا وَأَمَّا الآخَرُ فَيُصْلَبُ فَتَأْكُلُ الطَّيْرُ مِن رَّأْسِهِ قُضِيَ الأَمْرُ الَّذِي فِيهِ تَسْتَفْتِيَانِ ﴿41﴾ وَقَالَ لِلَّذِي ظَنَّ أَنَّهُ نَاجٍ مِّنْهُمَا اذْكُرْنِي عِندَ رَبِّكَ فَأَنسَاهُ الشَّيْطَانُ ذِكْرَ رَبِّهِ فَلَبِثَ فِي السِّجْنِ بِضْعَ سِنِينَ ﴿42﴾ وَقَالَ الْمَلِكُ إِنِّي أَرَى سَبْعَ بَقَرَاتٍ سِمَانٍ يَأْكُلُهُنَّ سَبْعٌ عِجَافٌ وَسَبْعَ سُنبُلاَتٍ خُضْرٍ وَأُخَرَ يَابِسَاتٍ يَا أَيُّهَا الْمَلأُ أَفْتُونِي فِي رُؤْيَايَ إِن كُنتُمْ لِلرُّؤْيَا تَعْبُرُونَ ﴿43﴾ قَالُواْ أَضْغَاثُ أَحْلاَمٍ وَمَا نَحْنُ بِتَأْوِيلِ الأَحْلاَمِ بِعَالِمِينَ ﴿44﴾ وَقَالَ الَّذِي نَجَا مِنْهُمَا وَادَّكَرَ بَعْدَ أُمَّةٍ أَنَاْ أُنَبِّئُكُم بِتَأْوِيلِهِ فَأَرْسِلُونِ ﴿45﴾ يُوسُفُ أَيُّهَا الصِّدِّيقُ أَفْتِنَا فِي سَبْعِ بَقَرَاتٍ سِمَانٍ يَأْكُلُهُنَّ سَبْعٌ عِجَافٌ وَسَبْعِ سُنبُلاَتٍ خُضْرٍ وَأُخَرَ يَابِسَاتٍ لَّعَلِّي أَرْجِعُ إِلَى النَّاسِ لَعَلَّهُمْ يَعْلَمُونَ ﴿46﴾ قَالَ تَزْرَعُونَ سَبْعَ سِنِينَ دَأَبًا فَمَا حَصَدتُّمْ فَذَرُوهُ فِي سُنبُلِهِ إِلاَّ قَلِيلاً مِّمَّا تَأْكُلُونَ ﴿47﴾ ثُمَّ يَأْتِي مِن بَعْدِ ذَلِكَ سَبْعٌ شِدَادٌ يَأْكُلْنَ مَا قَدَّمْتُمْ لَهُنَّ إِلاَّ قَلِيلاً مِّمَّا تُحْصِنُونَ ﴿48﴾ ثُمَّ يَأْتِي مِن بَعْدِ ذَلِكَ عَامٌ فِيهِ يُغَاثُ النَّاسُ وَفِيهِ يَعْصِرُونَ ﴿49﴾ وَقَالَ الْمَلِكُ ائْتُونِي بِهِ فَلَمَّا جَاءهُ الرَّسُولُ قَالَ ارْجِعْ إِلَى رَبِّكَ فَاسْأَلْهُ مَا بَالُ النِّسْوَةِ اللاَّتِي قَطَّعْنَ أَيْدِيَهُنَّ إِنَّ رَبِّي بِكَيْدِهِنَّ عَلِيمٌ ﴿50﴾ قَالَ مَا خَطْبُكُنَّ إِذْ رَاوَدتُّنَّ يُوسُفَ عَن نَّفْسِهِ قُلْنَ حَاشَ لِلّهِ مَا عَلِمْنَا عَلَيْهِ مِن سُوءٍ قَالَتِ امْرَأَةُ الْعَزِيزِ الآنَ حَصْحَصَ الْحَقُّ أَنَاْ رَاوَدتُّهُ عَن نَّفْسِهِ وَإِنَّهُ لَمِنَ الصَّادِقِينَ ﴿51﴾ ذَلِكَ لِيَعْلَمَ أَنِّي لَمْ أَخُنْهُ بِالْغَيْبِ وَأَنَّ اللّهَ لاَ يَهْدِي كَيْدَ الْخَائِنِينَ ﴿52﴾ وَمَا أُبَرِّىءُ نَفْسِي إِنَّ النَّفْسَ لأَمَّارَةٌ بِالسُّوءِ إِلاَّ مَا رَحِمَ رَبِّيَ إِنَّ رَبِّي غَفُورٌ رَّحِيمٌ ﴿53﴾ وَقَالَ الْمَلِكُ ائْتُونِي بِهِ أَسْتَخْلِصْهُ لِنَفْسِي فَلَمَّا كَلَّمَهُ قَالَ إِنَّكَ الْيَوْمَ لَدَيْنَا مِكِينٌ أَمِينٌ ﴿54﴾ قَالَ اجْعَلْنِي عَلَى خَزَآئِنِ الأَرْضِ إِنِّي حَفِيظٌ عَلِيمٌ ﴿55﴾ وَكَذَلِكَ مَكَّنِّا لِيُوسُفَ فِي الأَرْضِ يَتَبَوَّأُ مِنْهَا حَيْثُ يَشَاء نُصِيبُ بِرَحْمَتِنَا مَن نَّشَاء وَلاَ نُضِيعُ أَجْرَ الْمُحْسِنِينَ ﴿56﴾ وَلَأَجْرُ الآخِرَةِ خَيْرٌ لِّلَّذِينَ آمَنُواْ وَكَانُواْ يَتَّقُونَ ﴿57﴾ وَجَاء إِخْوَةُ يُوسُفَ فَدَخَلُواْ عَلَيْهِ فَعَرَفَهُمْ وَهُمْ لَهُ مُنكِرُونَ ﴿58﴾ وَلَمَّا جَهَّزَهُم بِجَهَازِهِمْ قَالَ ائْتُونِي بِأَخٍ لَّكُم مِّنْ أَبِيكُمْ أَلاَ تَرَوْنَ أَنِّي أُوفِي الْكَيْلَ وَأَنَاْ خَيْرُ الْمُنزِلِينَ ﴿59﴾ فَإِن لَّمْ تَأْتُونِي بِهِ فَلاَ كَيْلَ لَكُمْ عِندِي وَلاَ تَقْرَبُونِ ﴿60﴾ قَالُواْ سَنُرَاوِدُ عَنْهُ أَبَاهُ وَإِنَّا لَفَاعِلُونَ ﴿61﴾ وَقَالَ لِفِتْيَانِهِ اجْعَلُواْ بِضَاعَتَهُمْ فِي رِحَالِهِمْ لَعَلَّهُمْ يَعْرِفُونَهَا إِذَا انقَلَبُواْ إِلَى أَهْلِهِمْ لَعَلَّهُمْ يَرْجِعُونَ ﴿62﴾ فَلَمَّا رَجِعُوا إِلَى أَبِيهِمْ قَالُواْ يَا أَبَانَا مُنِعَ مِنَّا الْكَيْلُ فَأَرْسِلْ مَعَنَا أَخَانَا نَكْتَلْ وَإِنَّا لَهُ لَحَافِظُونَ ﴿63﴾ قَالَ هَلْ آمَنُكُمْ عَلَيْهِ إِلاَّ كَمَا أَمِنتُكُمْ عَلَى أَخِيهِ مِن قَبْلُ فَاللّهُ خَيْرٌ حَافِظًا وَهُوَ أَرْحَمُ الرَّاحِمِينَ ﴿64﴾ وَلَمَّا فَتَحُواْ مَتَاعَهُمْ وَجَدُواْ بِضَاعَتَهُمْ رُدَّتْ إِلَيْهِمْ قَالُواْ يَا أَبَانَا مَا نَبْغِي هَذِهِ بِضَاعَتُنَا رُدَّتْ إِلَيْنَا وَنَمِيرُ أَهْلَنَا وَنَحْفَظُ أَخَانَا وَنَزْدَادُ كَيْلَ بَعِيرٍ ذَلِكَ كَيْلٌ يَسِيرٌ ﴿65﴾ قَالَ لَنْ أُرْسِلَهُ مَعَكُمْ حَتَّى تُؤْتُونِ مَوْثِقًا مِّنَ اللّهِ لَتَأْتُنَّنِي بِهِ إِلاَّ أَن يُحَاطَ بِكُمْ فَلَمَّا آتَوْهُ مَوْثِقَهُمْ قَالَ اللّهُ عَلَى مَا نَقُولُ وَكِيلٌ ﴿66﴾ وَقَالَ يَا بَنِيَّ لاَ تَدْخُلُواْ مِن بَابٍ وَاحِدٍ وَادْخُلُواْ مِنْ أَبْوَابٍ مُّتَفَرِّقَةٍ وَمَا أُغْنِي عَنكُم مِّنَ اللّهِ مِن شَيْءٍ إِنِ الْحُكْمُ إِلاَّ لِلّهِ عَلَيْهِ تَوَكَّلْتُ وَعَلَيْهِ فَلْيَتَوَكَّلِ الْمُتَوَكِّلُونَ ﴿67﴾ وَلَمَّا دَخَلُواْ مِنْ حَيْثُ أَمَرَهُمْ أَبُوهُم مَّا كَانَ يُغْنِي عَنْهُم مِّنَ اللّهِ مِن شَيْءٍ إِلاَّ حَاجَةً فِي نَفْسِ يَعْقُوبَ قَضَاهَا وَإِنَّهُ لَذُو عِلْمٍ لِّمَا عَلَّمْنَاهُ وَلَكِنَّ أَكْثَرَ النَّاسِ لاَ يَعْلَمُونَ ﴿68﴾ وَلَمَّا دَخَلُواْ عَلَى يُوسُفَ آوَى إِلَيْهِ أَخَاهُ قَالَ إِنِّي أَنَاْ أَخُوكَ فَلاَ تَبْتَئِسْ بِمَا كَانُواْ يَعْمَلُونَ ﴿69﴾ فَلَمَّا جَهَّزَهُم بِجَهَازِهِمْ جَعَلَ السِّقَايَةَ فِي رَحْلِ أَخِيهِ ثُمَّ أَذَّنَ مُؤَذِّنٌ أَيَّتُهَا الْعِيرُ إِنَّكُمْ لَسَارِقُونَ ﴿70﴾ قَالُواْ وَأَقْبَلُواْ عَلَيْهِم مَّاذَا تَفْقِدُونَ ﴿71﴾ قَالُواْ نَفْقِدُ صُوَاعَ الْمَلِكِ وَلِمَن جَاء بِهِ حِمْلُ بَعِيرٍ وَأَنَاْ بِهِ زَعِيمٌ ﴿72﴾ قَالُواْ تَاللّهِ لَقَدْ عَلِمْتُم مَّا جِئْنَا لِنُفْسِدَ فِي الأَرْضِ وَمَا كُنَّا سَارِقِينَ ﴿73﴾ قَالُواْ فَمَا جَزَآؤُهُ إِن كُنتُمْ كَاذِبِينَ ﴿74﴾ قَالُواْ جَزَآؤُهُ مَن وُجِدَ فِي رَحْلِهِ فَهُوَ جَزَاؤُهُ كَذَلِكَ نَجْزِي الظَّالِمِينَ ﴿75﴾ فَبَدَأَ بِأَوْعِيَتِهِمْ قَبْلَ وِعَاء أَخِيهِ ثُمَّ اسْتَخْرَجَهَا مِن وِعَاء أَخِيهِ كَذَلِكَ كِدْنَا لِيُوسُفَ مَا كَانَ لِيَأْخُذَ أَخَاهُ فِي دِينِ الْمَلِكِ إِلاَّ أَن يَشَاء اللّهُ نَرْفَعُ دَرَجَاتٍ مِّن نَّشَاء وَفَوْقَ كُلِّ ذِي عِلْمٍ عَلِيمٌ ﴿76﴾ قَالُواْ إِن يَسْرِقْ فَقَدْ سَرَقَ أَخٌ لَّهُ مِن قَبْلُ فَأَسَرَّهَا يُوسُفُ فِي نَفْسِهِ وَلَمْ يُبْدِهَا لَهُمْ قَالَ أَنتُمْ شَرٌّ مَّكَانًا وَاللّهُ أَعْلَمْ بِمَا تَصِفُونَ ﴿77﴾ قَالُواْ يَا أَيُّهَا الْعَزِيزُ إِنَّ لَهُ أَبًا شَيْخًا كَبِيرًا فَخُذْ أَحَدَنَا مَكَانَهُ إِنَّا نَرَاكَ مِنَ الْمُحْسِنِينَ ﴿78﴾ قَالَ مَعَاذَ اللّهِ أَن نَّأْخُذَ إِلاَّ مَن وَجَدْنَا مَتَاعَنَا عِندَهُ إِنَّآ إِذًا لَّظَالِمُونَ ﴿79﴾ فَلَمَّا اسْتَيْأَسُواْ مِنْهُ خَلَصُواْ نَجِيًّا قَالَ كَبِيرُهُمْ أَلَمْ تَعْلَمُواْ أَنَّ أَبَاكُمْ قَدْ أَخَذَ عَلَيْكُم مَّوْثِقًا مِّنَ اللّهِ وَمِن قَبْلُ مَا فَرَّطتُمْ فِي يُوسُفَ فَلَنْ أَبْرَحَ الأَرْضَ حَتَّىَ يَأْذَنَ لِي أَبِي أَوْ يَحْكُمَ اللّهُ لِي وَهُوَ خَيْرُ الْحَاكِمِينَ ﴿80﴾ ارْجِعُواْ إِلَى أَبِيكُمْ فَقُولُواْ يَا أَبَانَا إِنَّ ابْنَكَ سَرَقَ وَمَا شَهِدْنَا إِلاَّ بِمَا عَلِمْنَا وَمَا كُنَّا لِلْغَيْبِ حَافِظِينَ ﴿81﴾ وَاسْأَلِ الْقَرْيَةَ الَّتِي كُنَّا فِيهَا وَالْعِيْرَ الَّتِي أَقْبَلْنَا فِيهَا وَإِنَّا لَصَادِقُونَ ﴿82﴾ قَالَ بَلْ سَوَّلَتْ لَكُمْ أَنفُسُكُمْ أَمْرًا فَصَبْرٌ جَمِيلٌ عَسَى اللّهُ أَن يَأْتِيَنِي بِهِمْ جَمِيعًا إِنَّهُ هُوَ الْعَلِيمُ الْحَكِيمُ ﴿83﴾ وَتَوَلَّى عَنْهُمْ وَقَالَ يَا أَسَفَى عَلَى يُوسُفَ وَابْيَضَّتْ عَيْنَاهُ مِنَ الْحُزْنِ فَهُوَ كَظِيمٌ ﴿84﴾ قَالُواْ تَالله تَفْتَأُ تَذْكُرُ يُوسُفَ حَتَّى تَكُونَ حَرَضًا أَوْ تَكُونَ مِنَ الْهَالِكِينَ ﴿85﴾ قَالَ إِنَّمَا أَشْكُو بَثِّي وَحُزْنِي إِلَى اللّهِ وَأَعْلَمُ مِنَ اللّهِ مَا لاَ تَعْلَمُونَ ﴿86﴾ يَا بَنِيَّ اذْهَبُواْ فَتَحَسَّسُواْ مِن يُوسُفَ وَأَخِيهِ وَلاَ تَيْأَسُواْ مِن رَّوْحِ اللّهِ إِنَّهُ لاَ يَيْأَسُ مِن رَّوْحِ اللّهِ إِلاَّ الْقَوْمُ الْكَافِرُونَ ﴿87﴾ فَلَمَّا دَخَلُواْ عَلَيْهِ قَالُواْ يَا أَيُّهَا الْعَزِيزُ مَسَّنَا وَأَهْلَنَا الضُّرُّ وَجِئْنَا بِبِضَاعَةٍ مُّزْجَاةٍ فَأَوْفِ لَنَا الْكَيْلَ وَتَصَدَّقْ عَلَيْنَآ إِنَّ اللّهَ يَجْزِي الْمُتَصَدِّقِينَ ﴿88﴾ قَالَ هَلْ عَلِمْتُم مَّا فَعَلْتُم بِيُوسُفَ وَأَخِيهِ إِذْ أَنتُمْ جَاهِلُونَ ﴿89﴾ قَالُواْ أَإِنَّكَ لَأَنتَ يُوسُفُ قَالَ أَنَاْ يُوسُفُ وَهَذَا أَخِي قَدْ مَنَّ اللّهُ عَلَيْنَا إِنَّهُ مَن يَتَّقِ وَيِصْبِرْ فَإِنَّ اللّهَ لاَ يُضِيعُ أَجْرَ الْمُحْسِنِينَ ﴿90﴾ قَالُواْ تَاللّهِ لَقَدْ آثَرَكَ اللّهُ عَلَيْنَا وَإِن كُنَّا لَخَاطِئِينَ ﴿91﴾ قَالَ لاَ تَثْرَيبَ عَلَيْكُمُ الْيَوْمَ يَغْفِرُ اللّهُ لَكُمْ وَهُوَ أَرْحَمُ الرَّاحِمِينَ ﴿92﴾ اذْهَبُواْ بِقَمِيصِي هَذَا فَأَلْقُوهُ عَلَى وَجْهِ أَبِي يَأْتِ بَصِيرًا وَأْتُونِي بِأَهْلِكُمْ أَجْمَعِينَ ﴿93﴾ وَلَمَّا فَصَلَتِ الْعِيرُ قَالَ أَبُوهُمْ إِنِّي لَأَجِدُ رِيحَ يُوسُفَ لَوْلاَ أَن تُفَنِّدُونِ ﴿94﴾ قَالُواْ تَاللّهِ إِنَّكَ لَفِي ضَلاَلِكَ الْقَدِيمِ ﴿95﴾ فَلَمَّا أَن جَاء الْبَشِيرُ أَلْقَاهُ عَلَى وَجْهِهِ فَارْتَدَّ بَصِيرًا قَالَ أَلَمْ أَقُل لَّكُمْ إِنِّي أَعْلَمُ مِنَ اللّهِ مَا لاَ تَعْلَمُونَ ﴿96﴾ قَالُواْ يَا أَبَانَا اسْتَغْفِرْ لَنَا ذُنُوبَنَا إِنَّا كُنَّا خَاطِئِينَ ﴿97﴾ قَالَ سَوْفَ أَسْتَغْفِرُ لَكُمْ رَبِّيَ إِنَّهُ هُوَ الْغَفُورُ الرَّحِيمُ ﴿98﴾ فَلَمَّا دَخَلُواْ عَلَى يُوسُفَ آوَى إِلَيْهِ أَبَوَيْهِ وَقَالَ ادْخُلُواْ مِصْرَ إِن شَاء اللّهُ آمِنِينَ ﴿99﴾ وَرَفَعَ أَبَوَيْهِ عَلَى الْعَرْشِ وَخَرُّواْ لَهُ سُجَّدًا وَقَالَ يَا أَبَتِ هَذَا تَأْوِيلُ رُؤْيَايَ مِن قَبْلُ قَدْ جَعَلَهَا رَبِّي حَقًّا وَقَدْ أَحْسَنَ بَي إِذْ أَخْرَجَنِي مِنَ السِّجْنِ وَجَاء بِكُم مِّنَ الْبَدْوِ مِن بَعْدِ أَن نَّزغَ الشَّيْطَانُ بَيْنِي وَبَيْنَ إِخْوَتِي إِنَّ رَبِّي لَطِيفٌ لِّمَا يَشَاء إِنَّهُ هُوَ الْعَلِيمُ الْحَكِيمُ ﴿100﴾ رَبِّ قَدْ آتَيْتَنِي مِنَ الْمُلْكِ وَعَلَّمْتَنِي مِن تَأْوِيلِ الأَحَادِيثِ فَاطِرَ السَّمَاوَاتِ وَالأَرْضِ أَنتَ وَلِيِّي فِي الدُّنُيَا وَالآخِرَةِ تَوَفَّنِي مُسْلِمًا وَأَلْحِقْنِي بِالصَّالِحِينَ ﴿101﴾ ذَلِكَ مِنْ أَنبَاء الْغَيْبِ نُوحِيهِ إِلَيْكَ وَمَا كُنتَ لَدَيْهِمْ إِذْ أَجْمَعُواْ أَمْرَهُمْ وَهُمْ يَمْكُرُونَ ﴿102﴾ وَمَا أَكْثَرُ النَّاسِ وَلَوْ حَرَصْتَ بِمُؤْمِنِينَ ﴿103﴾ وَمَا تَسْأَلُهُمْ عَلَيْهِ مِنْ أَجْرٍ إِنْ هُوَ إِلاَّ ذِكْرٌ لِّلْعَالَمِينَ ﴿104﴾ وَكَأَيِّن مِّن آيَةٍ فِي السَّمَاوَاتِ وَالأَرْضِ يَمُرُّونَ عَلَيْهَا وَهُمْ عَنْهَا مُعْرِضُونَ ﴿105﴾ وَمَا يُؤْمِنُ أَكْثَرُهُمْ بِاللّهِ إِلاَّ وَهُم مُّشْرِكُونَ ﴿106﴾ أَفَأَمِنُواْ أَن تَأْتِيَهُمْ غَاشِيَةٌ مِّنْ عَذَابِ اللّهِ أَوْ تَأْتِيَهُمُ السَّاعَةُ بَغْتَةً وَهُمْ لاَ يَشْعُرُونَ ﴿107﴾ قُلْ هَذِهِ سَبِيلِي أَدْعُو إِلَى اللّهِ عَلَى بَصِيرَةٍ أَنَاْ وَمَنِ اتَّبَعَنِي وَسُبْحَانَ اللّهِ وَمَا أَنَاْ مِنَ الْمُشْرِكِينَ ﴿108﴾ وَمَا أَرْسَلْنَا مِن قَبْلِكَ إِلاَّ رِجَالاً نُّوحِي إِلَيْهِم مِّنْ أَهْلِ الْقُرَى أَفَلَمْ يَسِيرُواْ فِي الأَرْضِ فَيَنظُرُواْ كَيْفَ كَانَ عَاقِبَةُ الَّذِينَ مِن قَبْلِهِمْ وَلَدَارُ الآخِرَةِ خَيْرٌ لِّلَّذِينَ اتَّقَواْ أَفَلاَ تَعْقِلُونَ ﴿109﴾ حَتَّى إِذَا اسْتَيْأَسَ الرُّسُلُ وَظَنُّواْ أَنَّهُمْ قَدْ كُذِبُواْ جَاءهُمْ نَصْرُنَا فَنُجِّيَ مَن نَّشَاء وَلاَ يُرَدُّ بَأْسُنَا عَنِ الْقَوْمِ الْمُجْرِمِينَ ﴿110﴾ لَقَدْ كَانَ فِي قَصَصِهِمْ عِبْرَةٌ لِّأُوْلِي الأَلْبَابِ مَا كَانَ حَدِيثًا يُفْتَرَى وَلَكِن تَصْدِيقَ الَّذِي بَيْنَ يَدَيْهِ وَتَفْصِيلَ كُلَّ شَيْءٍ وَهُدًى وَرَحْمَةً لِّقَوْمٍ يُؤْمِنُونَ ﴿111﴾۔

قرآن کریم


ترجمہ
اللہ کے نام سے جو بہت رحم والا نہایت مہربان ہے

الف۔ لام۔ را۔ یہ واضح کتاب کی آیتیں ہیں (1) ہم نے اسے عربی زبان کا قرآن بنا کر اتارا ہے، شاید تم لوگ عقل سے کام لو (2) ہم آپ کے سامنے بہترین قصے سناتے ہیں اس سے جو ہم نے آپ کی طرف قرآن کی وحی بھیجی ہے اگرچہ آپ اس سے پہلے بے خبر تھے (3) جب کہ یوسف نے اپنے باپ سے کہ اے بابا! میں نے خواب میں دیکھا گیارہ ستاروں اور سورج اور چاند کو اپنے سامنے سجدہ کرتے ہوئے (4) انہوں نے کہا اے بیٹا اپنا خواب اپنے بھائیوں کے سامنے بیان نہ کرنا کہ کہیں تمہیں نقصان پہنچانے کے لیے کوئی سازش نہ کریں۔ یقینا شیطان انسان کا کھلا ہوا دشمن ہے (5) اور اسی طرح تمہیں تمہارا پروردگار امتیاز عطا کرے گا اور تمہیں تعبیر خواب کا علم عطا کرے گا اور اپنی نعمت تم پر پوری کرے گا اور یعقوب کے خاندان پر جس طرح اس نے اسے پورا کیا اس کے پہلے تمہارے آباؤ اجداد میں سے دو ابراہیم اور اسحاق پر، یقینا تمہارا پروردگار جاننے والا ہے، بڑا ٹھیک کام کرنے والا (6) بلاشبہ یوسف اور ان کے بھائیوں (کے حالات) میں نشانیاں ہیں سوال کرنے والوں کے لیے (7) جب انہوں نے کہا کہ یوسف اور ان کا بھائی، یہ ہمارے باپ کو ہم سے زیادہ محبوب ہیں، حالاں کہ ہم اتنے ہیں طاقت ور یقینا ہمارے باپ کھلی ہوئی گمراہی میں ہیں (8) قتل کر دو یوسف کو یا کسی اور سر زمین پر لے جا کر ڈال دو کہ تمہارے باپ کی توجہ تمہاری طرف ہو جائے اور تم اس کے بعد پھر نیک لوگ ہو جانا (9) ان میں سے ایک نے کہا کہ یوسف کو قتل نہ کرو اور اندھیرے کنویں میں انہیں ڈال دو تو مسافروں کے قافلوں میں سے کوئی انہیں اٹھا لے جائے گا اگر ایسا کرنا چاہتے ہو (10) ان لوگوں نے کہا اے ہمارے والد صاحب! کیا بات ہے کہ آپ یوسف کے بارے میں ہم پر اطمینان نہیں کرتے حالانکہ ہم ان کے خیر خواہ ہیں (11) کل ہمارے ساتھ انہیں بھیج دیجئے کہ باغوں سے بہرہ اندوز ہوں اور کھیل کود میں مصروف رہیں اور ہم سب ان کی حفاظت کے ذمہ دار ہیں (12) کہا مجھے اس سے صدمہ ہو گا کہ تم اسے لے جاؤ اور ڈرتا ہوں کہ اسے بھیڑیا نہ کھا لے دراں حالیکہ تم اس کی طرف سے غفلت میں رہو (13) انہوں نے کہا اگر بھیڑیا انہیں کھا لے تو اس صورت میں کہ ہم ایک مضبوط جماعت کی حیثیت رکھتے ہیں تو ہم یقینا بڑے خسارے میں ہیں ( 14) تو وہ جب انہیں لے گئے اور اس پر متفق ہوئے کہ انہیں اندھیرے کنویں میں ڈال دیں اور ہم نے ان کی طرف وحی بھیجی کہ تم انہیں بتلاؤ گے ان کی اس کار گزاری کو جب کہ انہیں اس کا شعور نہیں ہو گا (15) اوروہ اپنے باپ کے پاس شام کو روتے ہوئے آئے (16) کہنے لگے اے ہمارے باپ! ہم گئے دوڑ میں مقابلہ کرنے آپس میں اور یوسف کو اپنے سامان کے پاس چھوڑ گئے اور بھیڑیا آیا اور انہیں کھا گیا اور آپ ہماری بات کا یقین نہیں کریں گے چاہے ہم سچے ہوں (17) اور لائے ان کے کرتے پر جھوٹا خون لگا کر، انہوں نے کہا بلکہ تمہارے نفس نے تمہارے لیے ایک بات بنائی ہے خیر میں صبر کرتا ہوں جو اچھا ہے اور اللہ ہی سے مدد حاصل کی جا سکتی ہے اس کے مقابلہ میں جو تم بیان کرتے ہو (18) اور ایک قافلہ آیا تو ان لوگوں نے اپنے پانی لانے والے کو بھیجا تو اس نے اپنا ڈول ڈالا، کہا ارے خوشخبری ہو یہ ایک لڑکا ہے اور ان لوگوں نے پوشیدہ رکھا اسے ایک سرمایہ قرار دے کر اور اللہ جاننے والا ہے اس کا جو وہ کرتے ہیں (19) اور ان لوگوں نے انہیں بیچا بہت کم چند گنتی کے چاندی والے سکوں کی قیمت پر اور وہ ان کی ناقدری کرنے والے تھے (20) اور جس نے مصر سے انہیں خریدا، اس نے اپنی بیوی سے کہا کہ اسے عزت کے ساتھ رکھنا ممکن ہے یہ ہمیں فائدہ پہنچائے یا ہم اسے بیٹا بنا لیں اور اس طرح دنیا میں ہم نے یوسف کو اقتدار ملنے کا سامان کیا اور اس لیے کہ ہم انہیں خوابوں کی تعبیر کا علم عطا کریں اور اللہ اپنے منشا کے پورا کرنے پر قدرت رکھتا ہے لیکن زیادہ لوگ جانتے نہیں (21) اور جب وہ پورے طور پر جوان ہوئے ہم نے انہیں حکمت اور علم عطا کیا اور یونہی ہم صلہ دیتے ہیں نیک اعمال اشخاص کو (22) اور ان پر ڈول ڈالنے لگی وہ جس کے گھر میں وہ رہتے تھے اور اس نے دروازوں کو بند کر دیا اور کہا بس آؤ کہا اللہ کی پناہ۔ یہ میرے مالک ہیں جنہوں نے اچھی طرح مجھے اپنے مکان میں رکھا۔ یقینا جو ظالم ہوں، وہ بہتری نہیں پا سکے (23) اور اس نے قصد کیا ان کی طرف اور وہ بھی قصد کرتے اس طرف اگر نہ دیکھتے اپنے پروردگار کی طرف کی دلیل اس لیے کہ ہم ان سے برائی اور ہوس ناکی دور رکھیں۔ یقینا وہ ہمارے خالص چنے ہوئے بندوں میں سے تھے (24) اور وہ دونوں ایک دوسرے سے پہلے دروازہ کی طرف پہنچنے کے لیے دوڑے اور اس نے ان کے کرتے کو پیچھے سے لمبان میں پھاڑ دیا اور ان دونوں نے اس کے شوہر کو دروازہ پر پایا، وہ کہنے لگی نہیں ہے سزا اس کی جو آپ کے ناموس کے ساتھ بدی کرنا چاہے سوا اس کے کہ اسے قید کیا جائے یا اور کوئی درد ناک سزا (25) انہوں نے کہا کہ اس نے مجھ پر ڈول ڈالے اور اس کے گھرانے والوں میں سے ایک گواہ نے گواہی دی کہ اگر ان کا کرتا آگے سے پھٹا ہو تو یہ سچی ہے اور وہ جھوٹوں میں سے ہیں (26) اور اگر ان کا کرتا پیچھے سے پھٹا ہو تو یہ جھوٹ بول رہی ہے اور وہ سچوں میں سے ہیں (27) تو جب اس نے دیکھا ان کے کرتے کو پیچھے سے پھٹا ہوا تو کہنے لگا کہ یقینا یہ تم عورتوں کی چال ہے یقینا تمہاری چال بہت سخت ہوتی ہے (28) اے یوسف ! اس سے در گزر کرو اور تو اپنے جرم سے توبہ کر، یقینا تو خطا کاروں میں سے ہے (29) اور کہا اس شہر کی کچھ عورتوں نے کہ عزیز مصر کی بیوی اپنے نوجوان پر ڈول ڈال رہی ہے اس کی محبت نے اس کے دل کی گہرائیوں میں اثر کیا ہے ہم اسے کھلی ہوئی گمراہی میں دیکھتے ہیں (30) تو جب اس نے سنا ان کی ترکیب کو تو انہیں بلوا بھیجا اور ان سب کے لیے ایک ایک مسند بچھوا دی اور ہر ایک کو ان میں سے ایک ایک چھری دے دی اور کہا نکلو ان کے سامنے تو جب ان سب نے انہیں دیکھا تو بہت بڑھا ہوا پایا انہیں اور انہوں نے اپنے ہاتھ کاٹ ڈالے اور کہنے لگیں۔ سبحان اللہ ! یہ آدمی نہیں ہے۔ یہ تو نہیں ہے مگر کوئی بزرگ فرشتہ (31) اس نے کہا تو یہی ہے وہ جس کے بارے میں تم لوگ مجھے ملامت کرتے تھے اور بے شک میں نے اس پر ڈول ڈالے تو اس نے اپنے کو بچائے رکھا اور اگر نہ کیا اس نے وہ جس کا میں اسے حکم دیتی ہوں تو وہ ضرور قید کر دیا جائے گا اور ضرور وہ ذلیل ہو گا (32) وہ کہنے لگے اے میرے پروردگار! قید خانہ مجھے زیادہ پسند ہے اس سے جس کی طرف یہ سب مجھے تحریک کرتی ہیں اور اگر تو دور نہ کرے مجھ سے ان کی چال کو تو میں بھی جھک جاؤں ان کی طرف اور جاہلوں میں سے ہوں (33) تو ان کے پروردگار نے ان کی دعا قبول کی تو ان سے ان کی چال کو ناکام بنا کر ہٹا دیا، یقینا اللہ سننے والا ہے، بڑا جاننے والا (34) پھر قدرت کی نشانیاں دیکھنے کے باوجود بعد میں ان کی رائے یہ ہو گئی کہ وہ انہیں ایک مدت تک لازمی طور پر قید رکھیں گے (35) اور ان کے ساتھ قید خانہ میں دو جو ان داخل ہوئے، ان میں سے ایک نے کہا میں نے خواب دیکھا ہے کہ میں انگور کا رس نچوڑ رہا ہوں اور دوسرے نے کہا میں نے دیکھا کہ میں اپنے سر پر روٹیاں اٹھائے ہوئے ہوں جس میں سے چڑیاں کھا رہی ہیں۔ ہمیں اس کی تعبیر بتایئے۔ ہم آپ کو نیک اعمال آدمیوں میں سے دیکھتے ہیں (36) انہوں نے کہا تم دونوں تک کوئی کھانا نہیں آئے گا جو تمہیں عطا کیا جائے مگر یہ کہ میں تم کو اس کا انجام بتا سکتا ہوں اس سے پہلے کہ وہ تمہارے پاس آئے۔ یہ اس کا ایک جز ہے جو اللہ نے مجھے علم عطا کیا ہے۔ میں نے چھوڑا ہے ایسے لوگوں کا مذہب کہ جو اللہ پر ایمان نہیں رکھتے اور جو آخرت کے منکر ہیں (37) اور میں نے پیروی کی ہے اپنے باپ دادا، ابراہیم اسحاق اور یعقوب کے مذہب کی۔ ہمیں یہ زیب نہیں کہ اللہ کے ساتھ کسی چیز کو شریک کریں۔ یہ اللہ کے فضل و کرم سے ہے ہم پر اور تمام لوگوں پر مگر زیادہ تر لوگ شکر ادا نہیں کرتے (38) اے دونوں قید خانہ والو ! کیا متفرق خدا اچھے ہیں یا ایک اکیلا اللہ جو سب پر غالب ہے (39) تم لوگ نہیں پوجا کرتے اسے چھوڑ کر مگر ایسے ناموں کی جو تم نے اور تمہارے باپ دادا نے تجویز کیے ہیں، اللہ نے اس کے ساتھ کوئی دلیل نہیں اتاری ہے۔ نہیں ہے حکومت کا مالک مگر اللہ اس کا حکم ہے کہ نہ عبادت کرو سوا اس کے کسی کی۔ یہی سیدھا دین ہے مگر زیادہ تر لوگ علم نہیں رکھتے (40) اے دونوں قید خانہ والو! تم دونوں میں سے ایک جو ہے تو وہ اپنے مالک کو شراب پلانے والا ہو گا اور دوسرا جو ہے اسے سولی دی جائے گی تو چڑیاں اس کے سر میں سے کھائیں گی، طے پا چکی ہے یہ بات جس کے بارے میں تم دونوں دریافت کر رہے ہو (41) اور کہا انہوں نے اس سے جس کے متعلق وہ سمجھے تھے کہ وہ نجات پانے والا ہے کہ میرا تذکرہ کر دینا اپنے مالک سے یہاں تو شیطان نے اسے اپنے مالک والا تذکرہ بھلا دیا تو وہ قید خانہ میں رہے کئی سال (42) اور بادشاہ نے کہا کہ میں نے خواب میں دیکھی ہیں سات گائیں موٹی جنہیں کھا رہی ہیں سات دبلی گائیں اور سات بالیاں ہری اور دوسری خشک، اے معزز لوگو! مجھے میرے خواب کے بارے میں بتاؤ اگر تم خواب کی تعبیر دیا کرتے ہو (43) ان لوگوں نے کہا کہ یہ خواب ہائے پریشان ہیں اور ہم خواب ہائے پریشان کی تعبیر نہیں جانتے ہیں (44) اور اس نے کہا کہ جو ان دونوں میں نجات پا گیا تھا اور ایک مدت کے بعد اب اسے یاد آیا تھا، کہا کہ میں تم لوگوں کو اس کی تعبیر بتاؤں گا تو مجھے روانہ کرو (45) یوسف ! اے بڑے سچے ! ہمیں تعبیر بتائیے سات موٹی گایوں کی جنہیں سات دبلی گائیں کھا رہی ہیں اور سات ہری بالیوں اور دوسری خشک کی۔ شاید میں ان لوگوں کے پاس جاؤں تو شاید انہیں علم ہو (46) انہوں نے کہا کہ تم لوگ کھیتی کرو سات برس متواتر تو جو کھیتی کاٹو اسے رہنے دو اس کی بالیوں میں سوا تھوڑی سی مقدار کے جسے کھاؤ (47) پھر اس کے بعد سات برس آئیں گے سخت جو کھا جائیں گے اس سب کو جو تم نے ان کے لیے ذخیرہ کیا تھا سوا بہت کم کے اس میں سے جسے تم محفوظ رکھتے ہو (48) پھر اس کے بعد ایک سال ایسا آئے گا جس میں لوگوں کے لیے بارش ہو گی اور اس میں وہ پھلوں کا عرق نچوڑیں گے (49) اور بادشاہ نے کہا کہ لاؤ انہیں میرے پاس تو جب ان کے پاس قاصد آیا تو انہوں نے کہا واپس جاؤ اپنے مالک کے پاس اور ان سے پوچھو کہ ان عورتوں کا کیا واقعہ ہے جنہوں نے اپنے ہاتھ کاٹ ڈالے تھے، یقینا میرا پروردگار ان کی چال کو خوب جاننے والا ہے (50) اس نے کہا کہ کیا واقعہ تھا تمہارا جب تم نے یوسف پر ڈول ڈالے تھے؟ ان عورتوں نے کہا کہ پاک ہے اللہ ہمیں انکی کوئی برائی ثابت نہیں ہوئی۔ عزیز مصر کی بیوی نے کہا کہ اب حق تو نمایاں ہو ہی گیا۔ میں نے ان پر ڈول ڈالے تھے اور وہ بلاشبہ سچے لوگوں میں سے ہیں (51) یہ اس لیے کہ انہیں معلوم ہو کہ میں نے پیٹھ پیچھے ان کی ساتھ غداری نہیں کی اور یقینا اللہ غداری کرنے والوں کی چال کو کامیاب نہیں کرتا (52) اور میں اپنے نفس کو بری نہیں کرتا ہوں۔ بلاشبہ نفس برائی پر آمادہ کیا ہی کرتا ہے مگر یہ کہ میرے پروردگار کا رحم و کرم شامل حال ہو۔ یقینا میرا پروردگار بخشنے والا ہے، بڑا مہربان (53) اور بادشاہ نے کہا کہ انہیں میرے پاس لاؤ کہ میں انہیں اپنا خاص مقرب بناؤں تو جب اس نے ان سے بات چیت کی تو کہا کہ تم یقینا اب ہمارے یہاں صاحب اقتدار، بھروسے کے آدمی ہو (54) انہوں نے کہا کے مجھے اس سر زمین کے خزانوں پر مقرر کر دیجئے یقینا میں حفاظت کرنے والا ہوں، خوب جاننے والا (55) اور اس طرح ہم نے یوسف کو اس سر زمین پر اقتدار کا مالک بنایا کہ وہ اس میں جہاں پر چاہیں قیام کریں۔ ہم اپنی رحمت کو پہچانتے ہیں جس تک چاہتے ہیں یقینا ہم نہیں برباد کرتے صلہ نیک اعمال والوں کا (56) اور بلاشبہ آخرت کا ثواب بہتر ہے ان کے لیے جو ایمان رکھتے ہوں اور پرہیز گاری سے کام لیتے ہوں (57) اور یوسف کے بھائی ان کے پاس داخل ہوئے تو وہ ان لوگوں کو پہچان گئے اور وہ سب ان کو نہیں پہچان رہے تھے ( 58) اور جب ان کا سامان سفر ان کی روانگی کے لیے تیار کیا تو کہا تم لوگ اب کی بار اپنے اس علاقی بھائی کو بھی لیتے آنا، کیا تم نہیں دیکھتے کہ میں پورا پورا ناپ کر دیتا ہوں اور بہترین طریقہ پر میزبانی بھی کرتا ہوں (59) اب اگر تم اسے نہ لائے تو تمہارے لیے میرے پاس تولنے کے لیے غلہ نہ ہو گا اور تم میرے نزدیک نہ آنا (60) ان لوگوں نے کہا کہ ہم اس کے باپ پر اس کے بھیجنے کے لیے ڈول ڈالیں گے اور یقینا ہم ایسا کریں گے (61) اور انہوں نے اپنے جوانوں سے کہا کہ ان کی پونجی ان کے سامان میں رکھ دو، ممکن ہے یہ اسے پہچانیں اس وقت جب وہ اپنے گھر بار میں جائیں، شاید پھر واپس آئیں (62) تو جب وہ لوگ واپس گئے اپنے باپ کے پاس تو کہا اے ہمارے والد صاحب! روک دیا گیا ہم سے غلہ کا ناپ کر دیا جانا، اس لیے ہمارے ساتھ ہمارے بھائی کو بھیجئے تو نپوا کر اناج لے آئیں گے اور یقینا ہم اس کی حفاظت کریں گے (63) کہا کیا تم پر اس کے بارے میں اطمینان کروں ویسے ہی جیسے اطمینان کیا تھا تم پر اس کے بھائی کے بارے میں پہلے، بہر حال اللہ سب سے بہتر حفاظت کرنے والا ہے، اور وہ بہترین رحم کرنے والا ہے (64) اور جب انہوں نے اپنا سامان کھولا تو اپنی پونجی کو پایا کہ وہ انہیں واپس کر دی گئی ہے۔ کہنے لگے اور ہمیں کیا چاہیے، یہ ہماری پونجی بھی تو ہمیں واپس کر دی گئی ہے اور اب ہم اپنے گھر والوں کے لیے پھر غلہ لائیں گے اور اپنے بھائی کی حفاظت کریں گے اور ایک اونٹ بھر اور زیادہ غلہ لائیں گے یہ تو تھوڑا غلہ ہے جو ہمیں ناپ کر ملا ہے (65) انہوں نے کہا کہ میں کبھی نہیں بھیجوں گا اسے تمہارے ساتھ جب تک تم مجھ سے اللہ کی قسم کھا کر یہ عہد و پیمان نہ کرو کہ تم اسے اپنے ساتھ ضرور لے آؤ گے سوا اس کے کہ تم سب گھیر لیے جاؤ تو جب ان سب نے ان سے عہد و پیمان کیا تو انہوں نے کہا کہ اللہ ہماری گفتگو پر گواہ ہے (66) اور انہوں نے کہا اے میرے بیٹو! ایک دروازے سے شہر کے اندر نہ جانا اور مختلف دروازوں سے جانا اور میں تم کو اللہ سے بچا تو نہیں سکتا، کچھ بھی فیصلہ نہیں ہے مگر اللہ کے قبضہ میں۔ اسی پر میرا بھروسا ہے اور اسی پر بھروسا کرنا چاہیے بھروسا کرنے والوں کو (67) اور جب وہ لوگ داخل ہوئے جس طرح ان کے باپ نے انہیں حکم دیا تھا تو انہیں تقدیر الٰہی سے کوئی چیز بچا تو سکتی نہ تھی مگر یعقوب کے دل کی ایک حسرت تھی جسے انہوں نے نکال لیا اور یقینا وہ علم رکھنے والے تھے اس کا کہ جس کا ہم نے انہیں علم عطا کیا تھا مگر اکثر لوگ جانتے نہیں (68) اور جب وہ لوگ یوسف کے پاس داخل ہوئے تو انہوں نے اپنے پاس رکھا اپنے بھائی کو، کہا میں تمہارا سگا بھائی ہوں تو تم پریشان نہ ہونا اس سے جو یہ لوگ کریں (69) اس کے بعد جب ان کا سامان تیار کرایا تو پانی پینے کا کٹورا اپنے بھائی کے سامان میں رکھوا دیا۔ پھر ایک منادی نے ندا دی کہ اے قافلہ والو! یقینا تم لوگ چور ہو (70) انہوں نے ان کی طرف متوجہ ہوتے ہوئے کہاکہ کیا چیز تمہاری کھو گئی ہے ؟ (71) انہوں نے کہا کہ بادشاہ کے پینے کا پیالہ ہمیں نہیں مل رہا ہے اور جو اسے لائے اسے اونٹ کے برابر بھر غلہ انعام میں ملے گا اور میں اس کا ذمہ دار ہوں (72) انہوں نے کہا کہ خدا کی قسم تم جانتے ہو کہ ہم نہیں آئے ہیں اس لیے کہ اس سر زمین میں خرابی پھیلائیں اور ہم چور نہیں ہیں (73) انہوں نے کہا تو کیا سزا ہے اس کی اگر تم جھوٹے ہو (74) انہوں نے کہا کہ سزا اس کی یہ ہے کہ جس کے سامان میں وہ مل جائے تو یہی آدمی اس کا معاوضہ ہے۔ اس طرح سزا دیتے ہیں ہم مجرموں کو (75) تو انہوں نے اپنے بھائی کے برتن سے پہلے ان کے برتنوں سے ابتدا کی، پھر اسے نکال لیا اپنے بھائی کے برتن سے۔ اس طرح ہم نے ترکیب کی یوسف کے لیے۔ وہ نہیں لے سکتے تھے اپنے بھائی کو بادشاہ کے قانون کے مطابق سوا اس کے کہ اللہ چاہے۔ ہم جسے چاہتے ہیں مرتبوں میں بلندی عطا کرتے ہیں اور ہر علم والے سے اوپر ایک علم والا ہوتا ہے (76) انہوں نے کہا کہ اگر اس نے چوری کی ہے تو اس کے ایک بھائی نے بھی اس سے پہلے چوری کی تھی تو اسے یوسف نے اپنے دل میں چھپائے رکھا اور نہیں ظاہر کیا ان کے لیے کہا تم منزل کے لحاظ سے بدتر ہو اور اللہ خوب جانتا ہے اس کیفیت کو جو تم بیان کرتے ہو (77) ان لوگوں نے کہا اے عزیز مصر! یقین مانئے کہ اس کا ایک بہت بوڑھا باپ ہے تو ہم میں سے ایک کو اس کی جگہ پر رکھ لیجئے ہم تو آپ کو بڑے حسن کردار کا حامل دیکھتے ہیں (78) انہوں نے کہا اللہ کی پناہ اس سے کہ ہم لیں کسی کو سوا اس کے کہ جس کے پاس ہم نے اپنی چیز پائی ہے اس صورت میں تو ہم ظالم قرار پائیں گے (79) تو جب وہ لوگ ان کی طرف سے ناامید ہوئے تو تخلیہ میں جا کر آپس میں چپکے چپکے مشورہ کرنے لگے۔ ان میں جو سب سے بڑا تھا، اس نے کہا، کیا تمہیں نہیں معلوم کہ تمہارے باپ نے تم سے اللہ کی قسم دے کر عہد لیا تھا اور اس کے پہلے تم نے یوسف کے بارے میں تقصیر کی ہی تھی لہٰذا میں تو اس سر زمین سے ہٹوں گا نہیں جب تک کہ میرے والد مجھے اجازت نہ دیں یا اللہ میرے لیے اپنا کوئی فیصلہ صادر کرے اور وہ بہترین فیصلہ کرنے والا ہے (80) واپس جاؤ اپنے والد کے پاس اور جا کر ان سے کہو کہ اے ہمارے والد صاحب آپ کے بیٹے نے چوری کی اور ہم نہیں گواہی دیتے مگر وہی کہ جو ہمیں معلوم ہے اور غیب کی بات کی ہمیں خبر نہیں ہے (81) اور اس بستی سے پوچھ لیجئے جس میں ہم تھے اور اس قافلہ سے کہ جس میں ہم آئے ہیں اور ہم بلاشبہ سچے ہیں (82) انہوں نے کہا کہ بلکہ تمہارے نفوس نے تمہارے لیے ایک بات بنائی ہے تو بہر حال میں صبر کرتا ہوں جو بہتر ہے ممکن ہے کہ اللہ ان سب کو میرے پاس لائے یقینا وہ بڑا جاننے والا ہے صحیح کام کرنے والا (83) اور ان کی طرف سے انہوں نے منہ پھیر لیا اور کہا ہائے افسوس یوسف پر اور ان کی دونوں آنکھیں رنج و غم سے سفید ہو گئیں تو ایک خاموش مرقع غم بن گئے (84) ان لوگوں نے کہا خدا کی قسم آپ برابر یوسف کو یاد کرتے رہیں گے یہاں تک کہ سخت بیمار پڑ جائیں یا ہلاک ہی ہو جائیں (85) انہوں نے کہا میں تو اپنے رنج و غم کی شکایت بس اللہ سے کرتا ہوں اور جانتا ہوں اللہ کی طرف سے وہ جو تم نہیں جانتے ہو (86) اے میرے بیٹو! جاؤ، یوسف اور اس کے بھائی کی خبر لو اور اللہ کی رحمت سے نا امید نہ ہو، یقینا اللہ کی رحمت سے نا امید نہیں ہوتے مگر کافر لوگ (87) جب وہ لوگ ان کے پاس داخل ہوئے تو کہنے لگے اے عزیز مصر! ہمیں اور ہمارے تمام گھر والوں کو بڑی سختی در پیش ہو گئی ہے اور ہم تھوڑی سے پونچی لائے ہیں تو ہمیں پورا پیمانہ ناپ کر دلوا دیجئے اور ہم پر خیرات کیجئے، یقینا اللہ خیرات کرنے والوں کو دوست رکھتا ہے (88) انہوں نے کہا کچھ تمہیں خبر ہے کہ تم نے یوسف اور اس کے بھائی کے ساتھ کیا سلوک کیا جب کہ تم جہالت میں مبتلا تھے (89) انہوں نے کہا سچ مچ تم یوسف ہو ؟ کہا میں یوسف ہوں اور یہ میرا بھائی ہے۔ ہم پر اللہ نے احسان کیا ہے۔ یقینا جو پرہیز گاری سے کام لیتا ہے اور صبر کرتا ہے تو بلاشبہ اللہ نیک اعمال والوں کے اجرو ثواب کو برباد نہیں کرتا (90) ان لوگوں نے کہا کہ خدا کی قسم اللہ نے تم کو ہم پر مقدم کیا ہے اور ہم بے شک خطا وار تھے (91) انہوں نے کہا اب آج تم کو کوئی لعنت ملامت کرنا نہیں ہے، اللہ تم کو بخش دے اور وہ تمام رحمت والوں میں سب سے زیادہ رحمت والا ہے (92) لے جاؤ میرے اس کرتے کو اور لے جا کر میرے باپ کے چہرے پر ڈال دو۔ ان کی آنکھیں روشن ہو جائیں گی اور میرے پاس اپنے تمام گھر والوں کو سب کو لے کر آؤ (93) اور جب قافلہ روانہ ہوا تو ان کے باپ نے کہا کہ میں یوسف کی خوشبو محسوس کر رہا ہوں، اگر تم لوگ مجھے بے وقوف نہ بناؤ (94) ان لوگوں نے کہا خدا کی قسم آپ اپنی پرانی گمراہی میں ہیں (95) تو جب خوشخبری دینے والا آیا، اس نے اسے ان کے چہرہ پر ڈال دیا تو ان کی آنکھیں دوبارہ روشن ہو گئیں انہوں نے کہا کیا میں نے تم سے نہیں کہا تھا کہ میں اللہ کی طرف سے وہ جانتا ہوں جو تم نہیں جانتے ہو (96) انہوں نے کہا اے ہمارے والد! ہمارے گناہوں کی مغفرت کے لیے سفارش کیجئے، یقینا ہم خطا وار تھے (97) انہوں نے کہا میں تمہارے لیے پروردگار سے بخشش کی التجا کروں گا۔ یقینا وہ بخشنے والا ہے، بڑا مہربان (98) تو جب وہ سب یوسف کے پاس داخل ہوئے تو انہوں نے اپنے ماں باپ کو اپنے پاس جگہ دی اور کہا مصر میں داخل ہو جیے جہاں انشاء اللہ امن و اطمینان سے رہیے گا (99) اور اپنے ماں باپ کو تخت پر اونچا بٹھایا اور وہ سب ان کے سامنے سجدہ میں گر گئے اور انہوں نے کہا اے بابا! یہ میرے خواب کی جو پہلے دیکھا تھا، تعبیر ہے جسے میرے پروردگار نے سچ کر دکھایا ہے اور اس نے مجھ پر احسان کیا جب کہ اس نے مجھے قید خانہ سے نکالا اور آپ لوگوں کو بیابان سے یہاں لایا جب کہ اس کے پہلے شیطان نے میرے اور میرے بھائیوں کے درمیان پھوٹ ڈال دی تھی۔ یقینا اللہ مہربانی کرنے والا ہے جس پروہ چاہے۔ یقینا وہ جاننے والا ہے ٹھیک کام کرنے والا (100) اے میرے پروردگار! تو نے مجھے ایک طرح کی سلطنت دی اور مجھے خوابوں کی تعبیر کا علم دیا اے آسمانوں اور زمین کے پیدا کرنے والے! تو میرا پروردگار ہے دنیا اور آخرت میں مجھے دنیا سے مسلمان اٹھا اور مجھے نیک اعمال لوگوں میں محسوب فرما (101) یہ غیب کی خبریں ہیں جن کی ہم آپ کی طرف وحی بھیجتے ہیں اور آپ خود ان کے پاس موجود نہ تھے جب انہوں نے طے کیا اپنے منصوبہ کو اور وہ سازش کر رہے تھے (102) اور چاہے آپ کتنے ہی خواہش مند ہوں، زیادہ تر لوگ ایمان نہیں لائیں گے (103) اور آپ ان سے اس پر کوئی معاوضہ طلب نہیں کرتے، وہ نہیں ہے مگر یاد دہانی تمام جہانوں کے لیے (104) اور کتنی ہی نشانیاں ہیں آسمانوں اور زمین میں کہ وہ گزرتے ہیں ان کی طرف سے اس طرح کہ وہ ان سے بے اعتنائی اختیار کیے ہوتے ہیں (105) اور ان میں سے زیادہ تر نہیں ایمان لاتے اللہ پر مگر یہ کہ شرک اختیار کئے ہوئے ہیں (106) کیا وہ مطمئن ہیں اس خطرہ سے کہ ان پر کوئی چھا جانے والا عذاب اللہ کا اچانک یا ان کے سامنے قیامت آجائے در حالیکہ انہیں خبر نہ ہو (107) کہئے کہ یہ ہے میرا راستا میں اللہ کی طرف دعوت دیتا ہوں پوری طرح سمجھ کر، میں بھی اور وہ بھی جو میرا پیرو ہے اور اللہ کی ذات ہر برائی سے پاک ہے اور میں مشرکوں میں سے نہیں ہوں (108) اور ہم نے آپ کے پہلے نہیں بھیجا مگر انہی بستیوں میں سے ایسے آدمیوں کو جن کی طرف ہم نے اپنی وحی بھیجی تو کیا وہ روئے زمین پر چلے پھرے نہیں کہ وہ دیکھتے کیا انجام ہوا ان لوگوں کا جو ان کے پہلے تھے اور ضرور آخرت کا گھر بہتر ہے ان کے لیے جو پرہیز گاری سے کام لیں تو کیوں تم عقل سے کام نہیں لیتے ؟ (109) یہاں تک کہ جب بھی پیغمبر نا امید ہونے لگے اور سمجھنے لگے کہ ان سے جھوٹی باتیں کہی گئی تھیں تو ان کے پاس ہماری مدد آ گئی تو جسے ہم نے چاہا، وہ نجات پا گیا اور ہمارا عذاب ہٹایا نہیں جا سکتا ان لوگوں سے جو گنہگار ہیں (110) بلاشبہ ان کے واقعات میں سبق ہے صاحبان عقل کے لیے۔ وہ کوئی افسانہ نہیں ہے جسے گھڑ لیا گیا ہو بلکہ وہ تصدیق ہے اس کی جو پہلے موجود تھا اور ہر بات کی تشریح ہے اور ہدایت ہے اور رحمت ان کے لیے جو ایمان لائیں (111)

پچھلی سورت:
سورہ ہود
سورہ 12 اگلی سورت:
سورہ رعد
قرآن کریم

(1) سورہ فاتحہ (2) سورہ بقرہ (3) سورہ آل عمران (4) سورہ نساء (5) سورہ مائدہ (6) سورہ انعام (7) سورہ اعراف (8) سورہ انفال (9) سورہ توبہ (10) سورہ یونس (11) سورہ ہود (12) سورہ یوسف (13) سورہ رعد (14) سورہ ابراہیم (15) سورہ حجر (16) سورہ نحل (17) سورہ اسراء (18) سورہ کہف (19) سورہ مریم (20) سورہ طہ (21) سورہ انبیاء (22) سورہ حج (23) سورہ مؤمنون (24) سورہ نور (25) سورہ فرقان (26) سورہ شعراء (27) سورہ نمل (28) سورہ قصص (29) سورہ عنکبوت (30) سورہ روم (31) سورہ لقمان (32) سورہ سجدہ (33) سورہ احزاب (34) سورہ سباء (35) سورہ فاطر (36) سورہ یس (37) سورہ صافات (38) سورہ ص (39) سورہ زمر (40) سورہ غافر (41) سورہ فصلت (42) سورہ شوری (43) سورہ زخرف (44) سورہ دخان (45) سورہ جاثیہ (46) سورہ احقاف (47) سورہ محمد (48) سورہ فتح (49) سورہ حجرات (50) سورہ ق (51) سورہ ذاریات (52) سورہ طور (53) سورہ نجم (54) سورہ قمر (55) سورہ رحمن (56) سورہ واقعہ (57) سورہ حدید (58) سورہ مجادلہ (59) سورہ حشر (60) سورہ ممتحنہ (61) سورہ صف (62) سورہ جمعہ (63) سورہ منافقون (64) سورہ تغابن (65) سورہ طلاق (66) سورہ تحریم (67) سورہ ملک (68) سورہ قلم (69) سورہ حاقہ (70) سورہ معارج (71) سورہ نوح (72) سورہ جن (73) سورہ مزمل (74) سورہ مدثر (75) سورہ قیامہ (76) سورہ انسان (77) سورہ مرسلات (78) سورہ نباء (79) سورہ نازعات (80) سورہ عبس (81) سورہ تکویر (82) سورہ انفطار (83) سورہ مطففین (84) سورہ انشقاق (85) سورہ بروج (86) سورہ طارق (87) سورہ اعلی (88) سورہ غاشیہ (89) سورہ فجر (90) سورہ بلد (91) سورہ شمس (92) سورہ لیل (93) سورہ ضحی (94) سورہ شرح (95) سورہ تین (96) سورہ علق (97) سورہ قدر (98) سورہ بینہ (99) سورہ زلزال (100) سورہ عادیات (101) سورہ قارعہ (102) سورہ تکاثر (103) سورہ عصر (104) سورہ ہمزہ (105) سورہ فیل (106) سورہ قریش (107) سورہ ماعون (108) سورہ کوثر (109) سورہ کافرون (110) سورہ نصر (111) سورہ مسد (112) سورہ اخلاص (113) سورہ فلق (114) سورہ ناس


متعلقہ مآخذ

پاورقی حاشیے

  1. دانشنامه قرآن و قرآن پژوهی، ج2، ص1240ـ1239۔


مآخذ

  • قرآن کریم، ترجمہ سید علی نقی نقوی (لکھنوی)۔
  • دانشنامه قرآن و قرآن پژوهی، ج2، به کوشش بهاءالدین خرمشاهی، تهران: دوستان-ناهید، 1377ش.