حدیث سفینہ

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں

حدیث سفینہ رسول اللہ(ص) سے منقولہ حدیث ہے جس میں اہل بیت(ع) کو امت اسلامیہ کے لئے کشتی نجات کے طور پر متعارف کرایا گیا ہے۔

حدیث کا متن

حدیث سفینہ ـ جس طرح کہ ابوذر غفاری نے حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ سے روایت کی ہے ـ کچھ یوں ہے: "إِنَّمَا مَثَلُ أَهْلِ بَیْتِی فِیکُمْ کَمَثَلِ سَفِینَةِ نُوحٍ، مَنْ دَخَلَهَا نَجَی، وَمَنْ تَخَلَّفَ عَنْهَا غَرِقَ" (ترجمہ: تمہارے درمیان میرے اہل بیت کی مثال نوح(ع) کی کشتی کی مثال ہے، جو بھی اس کشتی میں داخل ہوتا ہے نجات پاتا ہے اور جو سوار ہونے سے روگرانی کرتا ہے و غرق اور نابود ہوجاتا ہے)۔[1][2][3][4][5][6]

حدیث سفینہ کتب اہل سنت میں

یہ حدیث اہل سنت کی کتب میں بھی نقل ہوئی ہے۔[7] مثال کے طور پر اہل سنت کے محدث کبیر حاکم نیشابوری، نے حدیث کا متن یوں نقل کیا ہے:

"قال رسول الله: مَثَلُ اهل بیتی مَثَل سفینة نوح، من رکبها نجی و من تخلّف عنها غَرِق"۔

(ترجمہ: میرے اہل بیت کی مثال تمہارے درمیان کشتیِ نوح کی مثال ہے جو اس میں سوار ہوگا وہ نجات پائے گا اور جو اس سے روگردانی کرے، غرق ہوجاتا ہے۔[8]

حاکم نیشابوری مزید لکھتے ہیں: "هذا حدیث صحیح على شرط مسلم ــ" (یعنی یہ حدیث مسلم کی نقل کی بنا پر حدیث صحیح ہے یعنی یہ حدیث صحیح مسلم میں منقولہ حدیثوں کے ہم رتبہ ہے؛ جو اہل سنت کی دوسری معتبر کتاب ہے۔[9]

بیرونی ربط

پاورقی حاشیے

  1. حر عاملی، وسایل الشیعه، ج27، ص35، حدیث 33145
  2. شیخ طوسی، الأمالی، ص 633
  3. دیلمی، ارشادالقلوب، ج2، ص306
  4. شیخ صدوق، عیون اخبار الرضا، ج 2 ص 27
  5. صدوق، الأمالی، ص 269، حدیث 18
  6. طبرسی، الاحتجاج، ج 1 ص273
  7. مجمع الزوائد هیثمی ، ج9، ص168 [1]
  8. حاکم نیشابوری، المستدرک علی الصحیحین، ج2 ص 343.
  9. حاکم نیشابوری، المستدرک علی الصحیحین، ج2 ص 343.


مآخذ

  • حر عاملی، محمد بن حسن، وسائل الشیعه، قم: آل البیت، 1409ہجری۔
  • طبرانی، حافظ ابوالقاسم سلیمان بن احمد، المعجم الکبیر، تحقیق حمدی عبدالمجید السلفی، بیروت: دار احیاء التراث العربی، 1404ہجری۔
  • حاکم نیشابوری، حافظ ابی عبدالله، المستدرک علی الصحیحین، بیروت: دارالمعرفه، بی تا.
  • شیخ طوسی، الامالی، قم: دارالثقافه، 1414ہجری۔
  • دیلمی، حسن بن اب الحسن، ارشاد القلوب، قم: شریف رضی، 1412ہجری۔
  • شیخ صدوق، عیون اخبار الرضا، انتشارات جهان، 1378ہجری شمسی۔
  • شیخ صدوق، الامالی، کتابخانه اسلامی، 1362ہجری شمسی۔
  • طبرسی، ابومنصور احمد بن علی، الاحتجاج، مشهد: نشر مرتضی، 1403ہجری۔