غزوہ بنی قینقاع

ویکی شیعہ سے
(غزوہ بنى قينقاع سے رجوع مکرر)
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
غزوہ بنی قینقاع
سلسلۂ محارب:
رسول خداؐ کے غزوات
بنوقينقاع.png

تاریخ
مقام حجاز ، مدینہ
محل وقوع مدینہ جنوب غربی مدینہ
نتیجہ بنی قینقاع کا محاصرہ ہوا اور تسلیم ہوئے اور جلا وطن
سبب پیغمبر اکرمؐ سے عہد شکنی اور جنگ
ملک حجاز
فریقین
مسلمان بنی قینقاع کے یہودی
قائدین
حضرت محمدؐ
حمزہ بن عبدالمطلب
علی بن ابی طالب
بنی قینقاع
اس جنگ میں بنو قینقاع کو آخر کار ہتھیار ڈالنا پڑے اور انہیں مدینہ بدر کیا گیا۔


پیغمبر اکرمؐ کی مدنی زندگی
ہجرت نبوی 622ء بمطابق 1ھ
معراج 622ء بمطابق 1ھ
غزوہ بدر 624ء بمطابق 17 رمضان سنہ 2ھ
بنی‌قینقاع کی شکست 624ء بمطابق 15 شوال سنہ 2ھ
غزوہ احد 625ء بمطابق شوال سنہ 3ھ
بنو نضیر کی شکست 625ء بمطابق سنہ 4ھ
غزوہ احزاب 627ء بمطابق سنہ 5ھ
بنو قریظہ کی شکست 627ء بمطابق سنہ 5ھ
غزوہ بنی مصطلق 627ء بمطابق سنہ 5 یا 6ھ
صلح حدیبیہ 628ء بمطابق سنہ 6ھ
غزوہ خیبر 628ء بمطابق سنہ7ھ
پہلا سفرِ حجّ 629ء بمطابق 7ھ
جنگ مؤتہ 629ء بمطابق 8ھ
فتح مکہ 630ء بمطابق 8ھ
غزوہ حنین 630ء بمطابق 8ھ
غزوہ طائف 630ء بمطابق 8ھ
جزیرة العرب پر تسلط 631ء بمطابق 9ھ
غزوہ تبوک 632ء بمطابق 9ھ
حجۃ الوداع 632ء بمطابق 10ھ
واقعۂ غدیر خم 632ء بمطابق 10ھ
وفات 632ء بمطابق 11ھ

غزوہ بنی قَینُقاع [عربی: غزوة بني قينقاع]، یہودیوں کے ساتھ پیغمبر اسلام(ص کا پہلا غزوہ ہے۔ یہ جنگ یہودی قبیلے بنو قینقاع کے ساتھ لڑی گئی جنہوں نے رسول اللہؐ کے ساتھ عہد شکنی کی تھی اور مذکورہ غزوے کے دوران ان کا محاصرہ کیا گیا اور آخر کار ہتھیار ڈالنے پر مجبور ہوئے اور جلا وطن کئے گئے۔

قبیلہ بنی قَینُقاع کا تعارف

بنو قَینُقاع، رسول اللہؐ کے زمانے میں مدینہ کے یہودی قبائل میں سے ایک تھا۔ بعض مؤرخین نے اس قبیلے کے یہودی نژاد ہونے میں شک و شبہے کا اظہار کیا ہے اور انہیں "عیسو" (ادوم) کی نسل میں قرار دیا ہے، جو یعقوب کا بھائی تھا۔ [1] بنو قینقاع کے نام اور ان کی بہت سی رسموں کی عربوں سے مشابہت[2] کے باوجود، ان کے یہودی نژاد ہونے میں شک و تردد کے لئے کوئی معتبر دلیل نہیں ہے۔ اور یہ بھی واضح نہیں ہے کہ وہ کس وقت مدینہ سے ہجرت کرچکے ہیں۔

مدینہ پر یہودی قبائل کے تسلط کے بعد، ان کی طاقت بنو قیلہ کے عربوں کو منتقل ہوئی چنانچہ یہودیوں کو دوسرے عرب قبائل کے ساتھ معاہدے منعقد کرنا پڑے اور بنی قینقاع دوسرے دو یہودی قبائل کے برعکس ـ جنہوں نے اوس کے ساتھ معاہدے منعقد کئے تھے ـ قبیلۂ خزرج کے حلیف تھے۔[3] جواد علی[4] انہیں اوس کے حلیف سمجھتا ہے جو درست نہیں ہے۔ واضح ہے کہ بنو قینقاع اور دوسرے یہودی قبائل (بنو قریظہ اور بنو نضیر) کے درمیان رقابت اور مخالفت پائی جاتی تھی اور ان کے درمیان کئی مرتبہ جنگیں بھی ہوئی تھیں۔[5]

بنو قینقاع مدینہ کے جنوب مغربی حصے میں سکونت پذیر تھے اور ان قلعہ نیز بازار مشہور تھا۔[6] اور یہ بات کہ وہ مدینہ کے مرکز میں مجتمع تھے[7]، درست نہیں ہے۔ دوسرے یہودی قبائل کے برعکس، مدینہ میں وہ باغات، نخلستانوں اور زرعی زمینوں کے مالک نہ تھے بلکہ لوہاری، سناری اور کفاشی ان کے اہم پیشوں میں شمار ہوتی تھی۔[8]

جنگ کے اسباب

پیغمبر اسلامؐ نے ہجرت مدینہ کے بعد یہودیوں کے ساتھ ایک معاہدہ منعقد کیا اور انہیں اجازت دی کہ مدینہ میں رہیں بشرطیکہ وہ مسلمانوں کے خلاف کسی کی مدد نہ کریں۔ بنو قینقاع پہلا قبیلہ تھا جس نے عہدشکنی کی اور مسلمانوں کے خلاف جنگ و پیکار کا راستہ اپنایا۔[9]

جنگ کے آغاز کے بارے میں منقولہ روایات

اس قضیئے کے آغاز کے بارے میں مؤرخین کی روایات میں تین نکات دکھائی دیتے ہیں:

  1. رسول خداؐ غزوہ بدر کے بعد (رمضان سنہ 2 ہجری میں) مدینہ واپس آئے اور بنو قینقاع کے یہودیوں کو ان کے بازار میں اکٹھا کیا اور ان کو نصیحت کی کہ "قریش کی شکست سے عبرت لیں" اور اسلام قبول کریں؛ یہودیوں نے جواب دیا: "ہم جنگجو لوگ ہیں اور قریش کی مانند شکست قبول نہیں کریں گے"۔
  2. ایک مسلمان خاتون دودھ بیچنے[10] یا زیوارت خریدنے[11] کی غرض سے بنو قینقاع کے بازار میں گئی اور ایک یہودی سنار نے اس کی بےحرمتی کی اور اس کا مذاق اڑایا۔ ایک مسلمان مرد نے اس خاتون کی حمایت کی اور سنار کو ہلاک کردیا اور وہ خود بھی اسی وقت یہودیوں کے ہاتھوں قتل ہوا۔ خبر رسول خداؐ کو ملی اور آپؐ نے جنگ کا انتظام کیا۔
  3. جب سورہ انفال کی آیت 58 رسول اللہؐ پر اتری (وَإِمَّا تَخَافَنَّ مِن قَوْمٍ خِيَانَةً فَانبِذْ إِلَيْهِمْ عَلَى سَوَاء إِنَّ اللّهَ لاَ يُحِبُّ الخَائِنِينَ
    ؛ترجمہ: اور اگر آپ کسی جماعت کی خیانت سے فکرمند ہوں تو ان کے عہد و پیمان کو ان کی طرف پھینک دیجئے کہ معاملہ برابر ہو جائے، بلاشبہ اللہ بددیانتی کرنے والوں کو دوست نہیں رکھتا) تو رسول اللہؐ بنو قینقاع کی خیانت سے فکرمندی کا اظہار کرکے ان کے ساتھ جنگ کے لئے نکلے۔ ابن اسحق متذکرہ تینوں اسباب کا الگ الگ تذکرہ کرتا ہے لیکن سورہ انفال کی آیت کے بجائے سورہ آل عمران کی آیت 11 اور 12 کی طرف اشارہ کرتا ہے۔

واقدی پہلے اور دوسرے نکتوں کو ایک دوسرے سے ہمآہنگ کرکے ذکر کرتا ہے اور ابن سعد صرف تیسرے نکتے کا تذکرہ کرتا ہے۔ طبری پہلے اور تیسرے نکتوں کو ملا کر لکھتا ہے کہ: "یہودیوں نے رسول خداؐ کی دعوت مسترد کی تو یہ آیت کریمہ (سورہ انفال کی آیت 58) نازل ہوئی۔ بعض دیگر مآخذ میں غزوہ بدر کے بعد یہودیوں کی سرکشی اور عہدشکنی کی لیکن وہ سرکشی اور بغاوت کے لئے کسی مصداق کی طرف اشارہ نہیں کرتے۔[12] واٹ کا گمان[13] یہ ہے کہ رسول اللہؐ کے خلاف کچھ اقدامات ہورہے تھے اور احتمال یہ تھا کہ یہودی ان اقدامات کے اصل عناصر کی حوصلہ افزائی کرتے تھے۔

وقت جنگ

بعض مآخذ نے شنبہ 15 شوال سنہ 2 ہجری اور اسی سال یکم ذوالقعدہ کو بالترتیب جنگ کا آغاز و انجام قرار دیا ہے۔[14] ایک روایت میں منقول ہے جب رسول اللہؐ بنو قینقاع پر غالب آئے اور مدینہ پلٹ آئے، یہ 10 ذوالحجہ اور عید الاضحی کا دن تھا اور آپؐ نے پہلی بار لوگوں کے ساتھ نماز عید ادا کی۔[15]

طبری ایک روایت میں ابن اسحق سے نقل کرتے ہوئے لکھتے ہیں کہ رسول اللہؐ نے غزوہ بدر کے بعد، شوال اور کے ابتدائی ایام کے سوا شوال اور ذوالقعدہ کے باقی ایام مدینہ میں گذارے۔[16]ایک روایت میں ہے کہ یہ غزوہ صفر المظفر سنہ 3 ہجری کے دوران انجام پایا۔[17] یہاں تک بھی کہا گیا ہے کہ بنو قینقاع اور بنو نضیر کی جلاوطنی بیک وقت انجام کو پہنچی ہے۔[18] بہر حال روایات کی گوناگونی کی وجہ سے اس جنگ کی صحیح تاریخ کا تعین دشوار ہے۔

جنگ اور اس کا انجام

بنو قینقاع کے یہودی اپنے قلعے مین محصور ہوئے اور مسلمانوں نے ان کا محاصرہ کیا؛ محاصرہ 15 دن تک جاری رہا اور بعدازاں یہودی ہتھیار ڈال کر باہر آئے اور جلاوطن کئے گئے۔ کہا جاتا ہے کہ رسول اللہؐ نے ابتداء میں حکم دیا تھا کہ ان کے مردوں کی گردن زنی اور عورتوں اور بچوں کے غلام بنانے کا حکم دیا تھا لیکن بعد میں آپؐ نے چشم پوشی کی اور انہیں جلا وطن کرکے شام کی حدود میں واقع "اِذْرَعات" کے علاقے میں روانہ کیا۔

بلعمی کے مطابق[19] رسول خداؐ نے بنو قینقاع کو جلاوطن کیا اور ان کے حصار کو منہدم کیا۔ بعض یہودیوں نے اسلام قبول کیا اور مدینہ میں ہی باقی رہے؛ یہاں تک کہ سنہ 9 ہجری میں جب عبدالہ بن اُبیّ کے انتقال کے موقع پر بنو قینقاع کے چند افراد بھی موجود تھے۔[20] یہ بات ـ کہ عبداللہ بن سلام بھی اسلام قبول کرنے والوں میں شامل تھا،[21] نادرست ہے، کیونکہ ایک روایت کے مطابق وہ رسول خداؐ کی ہجرت مدینہ سے پہلے اور دوسری روایات کے مطابق ہجرت کے کچھ عرصہ بعد، مسلمان ہوچکے تھے۔[22]

احتمال یہ ہے کہ اس جنگ میں سعد بن معاذ کو حکم ملا تھا کہ دوسرے یہودیوں کو اس واقعے میں مداخلت سے باز رکھیں؛[23] رسول خداؐ کا سفید پرچم اس جنگ میں حمزۃ بن‌عبد المطّلب کے دوش پر تھا۔[24]؛ ابو لبابہ بنن منذر رسول خداؐ کی جانب سے مدینہ میں جانشین مقرر کئے گئے تھے[25]؛ منذر بن قدامہ سلمی باغیوں کے ہاتھ باندھنے پر اور[26] [[محمد بن مسلمہ|محمّد بن مَسلمہ[[ ان کے اموال اکٹھے کرنے پر مامور تھے۔[27]

زیادہ تر مآخذ میں بنو قینقاع کے مردوں کی تعداد 700 بیان ہوئی لیکن ان سے حاصلہ مال غنیمت سے معلوم ہوتا ہے کہ یہ تعداد مبالغہ آمیز ہے لیکن احتمال یہ ہے کہ اس سلسلہ میں کتاب التبیہ والاشراف کے مؤلف کا قول حقیقت سے قریب تر ہوگا جس نے یہ تعداد 400 بتائی ہے۔[28]

بنو قینقاع کی خواتین اور بچوں کو انہیں بخش دیا گیا لیکن ان کے اموال مسلمانوں کے ہورہے۔ واقدی کی روایت[29] جو اس نے ربیع بن سبرہ سے نقل کی ہے، سے معلوم ہوتا ہے کہ بنو قینقاع اپنے بعض اونٹ بھی خواتین اور بچوں لے جانے کے لئے، ساتھ لے گئے تھے۔ بنو قینقاع کو تین دن کی مہلت دی گئی کہ مدینہ سے نکل کر چلے جائیں اور عبادہ بن صامت انہیں شہر سے نکال باہر کرنے کی ذمہ داری سونپ دی گئی تھی۔

بنو قینقاع کے حلیفوں کا کردار

اس جنگ میں بنی قینقاع کے عرب حلیفوں کا کردار لائق توجہ ہے۔ عبادہ بن صامت اور عبداللہ بن ابی بن سلول خزرج کے اصل راہنما تھے۔ عبادہ سچے مسلمان تھے اور بنو قینقاع کی پیمان شکنی دیکھ کر انھوں نے ان کی حمایت ترک کردی اور رسول خداؐ کی خدمت میں حاضر ہوکر بنو قینقاع کے ساتھ اپنے حلف سے بیزاری کا اعلان کیا۔[30] عبداللّہ بن اُبیّ، منافقین کا سرغنہ تھا اور اس قضيئے میں اس کا کردار دوہرا تھا؛ ایک طرف سے وہ اسی نے بظاہر بنو قینقاع کو قلعہ بند ہونے اور سرکشی کرنے پر اکسایا تھا اور دوسری طرف سے اس نے ان سے جاملنے سے انکار کیا۔[31] ان کے قید کئے جانے کے بعد عبداللہ بن ابی نے رسول خداؐ سے درخواست کی کہ اس کے حلیفوں کی جان بخشی کریں اور اپنی اس درخواست پر اس قدر اصرار کیا رسول اللہؐ نے اس پر بھی اور یہودیوں پر بھی لعنت بھیجی اور ان کی جلاوطنی کا حکم جاری فرمایا۔

مال غنیمت

پیغمبر خداؐ نے غنائم کو اپنے اصحاب کے درمیان تقسیم کیا اور پہلی بار مال غنیمت میں سے خمس اٹھایا۔[32] نیز مال غنیمت میں سے "صَفْوُ الغنائم" کے طور پر تین کمانوں، دو زرہوں، تین تلواروں اور تین نیزوں کو منتخب کیا اور محمد بن مسلمہ اور سعد بن معاذ کو دو زرہیں عطا کیں۔[33]

متعلقہ مآخذ

حوالہ جات

  1. Encyclopaedia Judaica, Jerusalem, Under the word: “Qaynuqa”.
  2. Watt, Muhammad at Medina, p 192-193۔
  3. طبری، تاریخ الرسل و الملوک، ج3، ص1361۔
  4. جواد علی، المفصل فی التاریخ العرب قبل الاسلام، ج4، ص39۔
  5. حسن خالد، مجتمع المدینہ قبل الہجرة وبعدہا، ص39۔
  6. بلعمی، تاریخ نامہ طبری، ج1، ص151۔
  7. Encyclopaedia Judaica, Jerusalem, Ditto ۔
  8. بلعمی، تاریخ نامہ طبری، ج1، ص151۔
  9. ابن اسحاق، سیرت رسول اللّہ، ج2، ص 561۔
  10. ابن ہشام، سیرة النبی، ج2، ص632۔
  11. واقدی، المغازی، ج1، ص127۔
  12. ابن اسحاق، سیرت رسول اللّہ، ج2، ص 561؛ ابن سعد، الطبقات الکبری، ج2، ص29۔
  13. Watt, Muhammad at Medina, p 181 ۔
  14. واقدی، المغازی، ج1، ص127؛ ابن سعد، الطبقات الکبری، ج2، ص28ـ29؛ مسعودی، التنبیہ و الاشراف، ص206۔
  15. ابن شبّہ نمیری، تاریخ المدینة المنورة، ج1، ص136ـ137؛ طبری، تاریخ الرسل و الملوک، ج3، ص1362۔
  16. ابن اسحاق، سیرت رسول اللّہ، ج3، ص1363۔
  17. ابن اثیر، الکامل فی التاریخ، ج2، ص139
  18. سمہودی، وفاء الوفا باخبار دارالمصطفی، ج1، ص278۔
  19. بلعمی، تاریخ نامہ طبری، ج1، ص152۔
  20. واقدی، المغازی، ج3، ص 806۔
  21. Encyclopaedia Judaica, Jerusalem, Ditto۔
  22. J. Horovitz, under the name: "Abd Allah bin Salam"۔
  23. Watt, Muhammad at Medina, p 210 ۔
  24. طبری، تاریخ الرسل والملوک، ج3، ص1362۔
  25. واقدی، المغازی، ج3، ص130۔
  26. واقدی، المغازی، ج2، ص33۔
  27. ابن سعد، الطبقات الکبری، ج2، ص30۔
  28. مسعودی، التنبیہ والاشراف، ص206۔
  29. واقدی، المغازی، ج2، ص130۔
  30. ابن اسحاق، سیرت رسول اللّہ، ج2، ص563۔
  31. واقدی، المغازی، ج1، ص129۔
  32. طبری، تاریخ الرسل و الملوک، ج3، ص1362؛ مسعودی، التنبیہ والاشراف، ص207۔
  33. واقدی، المغازی، ج1، ص129۔


مآخذ

  • ابن اثیر، الکامل فی التاریخ، بیروت، 1399ـ1402 ہجری قمری/ 1979ـ1982 عیسوی۔
  • ابن اسحاق، سیرت رسول اللّہ، ترجمة رفیع الدین اسحاق محمد بن ہمدانی، چاپ اصغر مہدوی، تہران، 1361 ہجری شمسی۔
  • ابن سعد، الطبقات الکبری، بیروت، 1405 ہجری قمری /1985 عیسوی۔
  • ابن شبہ نمیری، تاریخ المدینة المنورة، چاپ فہیم محمد شلتوت، بیروت، 1410 ہجری قمری.
  • ابن ہشام، سیرة النبی، چاپ محمد محیی الدین عبدالحمید، مصر، بی‌تا.
  • بلعمی، محمد بن محمد، تاریخ نامہ طبری، چاپ محمد روشن، تہران، 1366 ہجری شمسی۔
  • حسن خالد، مجتمع المدینہ قبل الہجرة وبعدہا، بیروت، بی‌تا.
  • سمہودی، علی بن عبداللہ، وفاء الوفا باخبار دارالمصطفی، بیروت، 1401 ہجری قمری /1981 عیسوی۔
  • طبری، محمد بن جریر، تاریخ الرسل و الملوک، چاپ دخویہ، بی‌جا، 1982ـ 1985 عیسوی۔
  • جواد علی، المفصل فی التاریخ العرب قبل الاسلام، بغداد، بی‌تا.
  • مسعودی، علی بن حسین، التنبیہ والاشراف، چاپ عبداللہ اسماعیل صاوی، قاہرہ، 1357 ہجری قمری /1938 عیسوی۔
  • واقدی، محمد بن عمر، کتاب المغازی، ترجمہ محمود مہدوی دامغانی، تہران، 1369 ہجری شمسی۔

انگلش مآخذ

  • EI 1 , s.v. "K ¤ ainuk ¤ a ¦ Ü " (by A. J . Wensinck).
  • EI 2 , s.v. " ـ Abd Allah bin Salam" (by J. Horovitz).
  • Encyclopaedia Judaica , Jerusalem 1978-1982.
  • s.v. "Qaynuqa ¦ Ü " (by Eli Davis).
  • W. M. Watt, Muhammad at Medina , Oxford 1968.

بیرونی روابط

پچھلا غزوہ:
بدر کبری
رسول اللہؐ کے غزوات
غزوہ بنی قینقاع
اگلا غزوہ:
سویق