امام رضا علیہ السلام

ویکی شیعہ سے
(امام رضا(ع) سے رجوع مکرر)
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
بسم اللّه الرّحمن الرّحیم
امام رضا علیہ السلام
ضریح امام رضا.jpg
نام علی بن موسی
کنیت ابوالحسن (ثانی)۔
القاب رضا
ولادت 11ذو القعدة الحرام، سنہ 148 ہجری۔
مولد مدینہ
مسکن مدینہ، مرو
والد امام کاظم
والدہ تکتم
ازواج سبیکہ و...
اولاد امام محمد تقی علیہ السلام،محمد قانع، حسن، جعفر، ابراہیم، حسین ، عائشہ
شہادت 30 صفر المظفر 203ہجری۔
مدفن مشہد
عمر 55 سال.
ائمہ معصومینؑ

امام علیؑ • امام حسنؑ  • امام حسینؑ • امام سجادؑ • امام محمد باقرؑ • امام صادقؑ  • امام موسی کاظمؑ • امام رضاؑ  • امام محمد تقیؑ  • امام علی نقیؑ • امام حسن عسکریؑ • امام مہدیؑ


ابو الحسن علی بن موسی الرضا، امام رضا علیہ السلام کے نام سے معروف، شیعہ اثنا عشریہ مکتب کے آٹھویں امام ہیں۔

عباسی خلیفہ مامون آپ کو مدینہ سے زبردستی خراسان لے آیا اور اپنی ولایت عہدی قبول کرنے پر مجبور کیا۔ امام(ع) نے مدینہ سے خراسان جاتے ہوئے نیشاپور کے مقام پر ایک حدیث ارشاد فرمائی جو حدیث سلسلۃ الذہب کے نام سے مشہور ہے۔ مامون نے اپنے خاص مقاصد کی خاطر مختلف ادیان و مذاہب کے اکابرین کے ساتھ آپ کے مناظرے کروائے جس کے نتیجے میں یہ سارے اکابرین آپ کی فضیلت کے معترف ہوئے۔ آپ 20 سال تک امامت کے عہدے پر فائز رہے۔

55 سال کی عمر میں مامون کے ہاتھوں شہید ہوئے۔ آپ کا مرقد مبارک ایران کے شہر مشہد میں موجود ہے جہاں سالانہ لاکھوں افراد زیارت کیلئے آتے ہیں۔

سوانح عمری

نسب، کنیت، لقب

علی بن موسی بن جعفر بن محمد بن علی بن حسین بن علی بن ابی‌ طالب، آپ (ع) کی کنیت ابو الحسن اور سب سے زیادہ مشہور لقب "رضا" ہے۔ بعض منابع میں آیا ہے کہ آپ کو یہ لقب مأمون نے دیا تھا؛[1] لیکن امام جواد(ع) سے منقول ایک حدیث میں آیا ہے کہ آپ کا یہ لقب خداوند عالم کی طرف سے آپ کے والد ماجد حضرت امام کاظم (ع) کی طرف الہام کیا گیا تھا۔[2] صابر، رضی اور وفی آپ کے دیگر القاب میں سے ہیں۔[3] اسی طرح آپ (ع) عالم آل محمد کے نام سے بھی مشہور ہیں۔ کہا جاتا ہے کہ امام کاظم(ع) اپنے دوسرے فرزندوں سے کہا کرتے تھے: "تمہارا بھائی علی بن موسی، عالم آل محمد ہے"۔[4]

انگشتری کا نقش

امام علی بن موسی الرضا علیہ السلام کی انگشتری کے لئے ایک نقش منقول ہے: "ما شاءَ اللہُ لا قُوَّةَ إِلَّا بِاللہِ(:ترجمہ وہی ہوتا ہے جو خدا چاہے، نہیں کوئی قوت سوائے خدائے بلند و برتر کے۔)"[5]

ولادت اور شہادت

آپ کی تاریخ پیدائش جمعرات یا جمعہ 11 ذی‌القعدہ، یا ذی‌الحجہ یا ربیع الاول سن 148 ہجری قمری نقل کئے ہیں۔[6] کلینی آپ کی تاریخ پیدائش کو سنہ 148 ذکر کیا ہے۔[7] اور اکثر علماء اور مورخین اس بات میں جناب کلینی کے ساتھ ہم عقیدہ ہیں۔[8]

آپ کی شہادت کے بارے میں بھی مورخین کے درمیان اختلاف پایا جاتا ہے اسی بنا پر بروز جمعہ یا پیر، ماہ صفر کی آخری تاریخ، یا 17 صفر، یا 21 رمضان، یا 18 جمادی‌الاولی، یا 23 ذی‌القعدہ، یا ذی قعد کی آخری تاریخ سن 202، 203 یا 206 نقل ہوئی ہیں۔[9] کلینی کے مطابق آپ صفر کے مہینے میں سنہ 203 ہجری کو 55 سال کی عمر میں شہادت کے مقام پر فائز ہوئے ہیں۔[10] اکثر علماء اور مورخین کے مطابق آپ(ع) کی شہادت سنہ 203 ہجری قمری میں واقع ہوئی ہے۔[11] طبرسی آپ(ع) کی شہادت کو ماہ صفر کی آخری تاریخ نقل کرتے ہیں۔[12]

ولادت اور شہادت کی تاریخ میں اختلاف کی وجہ سے آپ کی عمر مبارک کے بارے میں بھی علماء اور مورخین کے درمیان اختلاف پایا جاتا ہے اسی بنا پر آپ کی عمر 47 سال سے 57 سال تک ذکر کیا گیا ہے۔[13] اکثر علماء اور مورخین کے مطابق آپ کی عمر شہادت کے وقت 55 سال تھی۔

والدہ

امام رضا(ع) کی والدہ نجمہ خاتون سے منسوب بقعہ (مدینہ منورہ، مشرب ام ابراہیم)

امام رضا(ع) کی مادر گرامی نوبہ کی رہنے والی ایک کنیز تھیں۔[14] آپ کو تاریخی منابع میں مختلف ناموں سے یاد کیا گیا ہے۔ کہا جاتا ہے کہ جب آپ امام کاظم(ع) کی ملکیت میں آگئی تو امام نے آپ کا نام "تکتم" رکھا[15] اور جب امام رضا (ع) کی ولادت ہوئی تو امام کاظم(ع) نے آپ کو "طاہرہ" کے نام سے یاد کرنے لگا۔[16] شیخ صدوق کہتے ہیں کہ بعض مورخین امام رضا(ع) کی والدہ گرامی کو "سَکَن نوبیہ" کے نام سے یاد کیا ہے۔ اسی طرح آپ کو اروی، نجمہ اور سمانہ کے نام سے بھی یاد کیا گیا ہے آپ کی کنیت "ام البنین" تھی۔[17]

ایک حدیث میں آیا ہے کہ امام رضا(ع) کی مادر گرامی نجمہ، ایک پاک و پاکیزہ اور پرہیزگار کنیز تھی جسے امام کاظم(ع) کی والدہ حمیدہ نے خرید کر اپنے بیٹے کیلئے بخش دی جس کے بعد جب امام رضا(ع) کی ولادت ہوئی تو آپ کا نام "طاہرہ" رکھا گیا۔"[18]

ازواج

آپ کی ایک زوجہ کا نام سبیکہ [19] تھا جن کے متعلق کہا جاتا ہے کہ آپ ام المؤمنین ماریہ قبطیہ کے خاندان سے تھیں۔[20]

قزوین میں امام رضا(ع) کے صاحبزادے، امام زادہ حسین کا روضہ

بعض دیگر منابع میں سبیکہ کے علاوہ ایک زوجہ کا بھی ذکر ملتا ہے: مامون عباسی نے امام رضا(ع) کو اپنی بیٹی ام حبیب سے شادی کی تجویز دی جسے امام(ع) نے قبول کیا۔ طبری نے اس واقعے کو سنہ 202 ہجری کے واقعات کے ضمن میں بیان کیا ہے۔[21] اس کام کے ذریعے مامون زیادہ سے زیادہ امام رضا(ع) کے نزدیک ہونے چاہتا تھا تاکہ آپ کے گھر میں رسوخ کرکے آپ کے "خفیہ منصوبوں" سے باخبر ہوتا رہے۔[22] سیوطی نے بھی امام رضا(ع) سے مامون کی بیٹی کی تزویج کی طرف اشارہ کیا ہے لیکن اس کا نام ذکر نہيں کیا ہے۔[23]

اولاد

امام رضا(ع) کی اولاد کی تعداد اور ان کے اسماء کے بارے میں مورخین کا اختلاف پایا جاتا ہے۔ بعض نے آپ کے پانچ بیٹے ہیں: "محمد قانع، حسن، جعفر، ابراہیم، حسین اور ایک بیٹی: عائشہ" کا ذکر کیا ہے۔[24] سبط بن جوزی نے آپ کے چار بیٹے: "محمد تقی (ابوجعفر ثانی)، جعفر، ابومحمد حسن، ابراہیم، اور ایک بیٹی کا تذکرہ کیا ہے لیکن اس کا کا نام ذکر نہیں کیا ہے۔[25] کہا گیا ہے کہ امام(ع) کا ایک بیٹا ـ جو دو سال یا اس سے کم عمر میں وفات پاچکے تھے ـ "قزوین" میں مدفون ہیں جو اس وقت امام زادہ حسین کے نام سے مشہور ہیں۔ ایک روایت کے مطابق سنہ 193 ہجری میں امام رضا(ع) نے قزوین کا سفر کیا۔[26] شیخ مفید، امام رضا(ع) کی شہادت کا ذکر کرتے ہوئے لکھتے ہیں کہ آپ نے ابو جعفر محمد بن علی التقی الجواد ـ جو آپ کے بعد (نویں) امام تھے ـ کے سوا کوئی اولاد نہيں چھوڑی جن کی عمر سات سال اور چند مہینے تھی۔ [27] ابن شہرآشوب اور امین الاسلام طبرسی، کی رائے بھی یہی ہے۔ [28] بعض مؤرخین نے لکھا ہے کہ آپ کی ایک بیٹی بھی تھیں جن کا نام فاطمہ تھا۔[29]

امامت

امام رضا(ع) اپنے والد ماجد امام موسی کاظم علیہ السلام کی شہادت کے بعد 20 سال (183 - 203 ہجری قمری) تک امامت کے عہدے پر فائز رہے۔ آپ کی امامت کے ابتدائی دور میں ہارون رشید خلافت پر قابض تھا اس کے بعد ان کے بیٹے امین نے تین سال اور 25 دن حکومت کی جس کے بعد "ابراہیم بن مہدی" عباسی المعروف "ابن شکلہ" نے 14 روز حکومت کی جس کے بعد امین عباسی نے ایک بار پھر اقتدار سنبھال کر ایک سال اور سات مہینے حکومت کی۔ آپ(ع) کی امامت کے آخری 5 سال مامون عباسی کے دور خلافت میں گذرے ہیں۔[30]

دلائل امامت

متعدد راویوں جیسے: داود بن کثیر الرقي، محمد بن اسحاق بن عمار، علی بن یقطین، نعیم قابوسی، حسین بن مختار، زیاد بن مروان، أبو لبید یا ابو ایوب مخزومي، داؤد بن سلیمان، نصر بن قابوس، داود بن زربی، یزید بن سلیط اور محمد بن سنان وغیرہ نے امام موسی کاظم علیہ السلام سے امام رضا(ع) کی امامت کے بارے میں احادیث نقل کی ہیں۔[31] اس سلسلے میں بطور مثال بعض احادیث کا تذکرہ کرتے ہیں:

داود رقی کہتے ہیں: میں نے امام موسی کاظم(ع) سے پوچھا: ...آپ کے بعد امام کون ہے؟ امام کاظم(ع) نے اپنے فرزند علی بن موسی(ع) کی طرف اشارہ کرتے ہوئے فرمایا: میرے بعد یہ تمہارے امام ہیں۔[32]

اس کے علاوہ رسول اللہ(ص) سے متعدد احادیث نقل ہوئی ہیں جن میں 12 ائمۂ معصومین کے اسماء گرامی ذکر ہوئے ہیں اور یہ احادیث امام علی بن موسی الرضا علیہ السلام سمیت تمام ائمہ(ع) کی امامت و خلافت و ولایت کی تائید کرتی ہیں۔[33] جابر بن عبداللہ کہتے ہیں کہ سورہ نساء کی آیت 59 اطیعوا الله واطیعوا الرسول و اولی الامر منکم نازل ہوئی تو رسول اللہ(ص) نے 12 ائمہ کے نام تفصیل سے بتائے جو اس آیت کے مطابق واجب الاطاعت اور اولو الامر ہیں؛[34] امام علی(ع) سے روایت ہے کہ ام سلمہ کے گھر میں سورہ احزاب کی آیت 33 انما یرید الله لیذهب عنکم الرجس اهل البیت و یطهرکم تطهیرا نازل ہوئی تو پیغمبر نے بارہ اماموں کے نام تفصیل سے بتائے کہ وہ اس آیت کے مصداق ہیں؛[35] ابن عباس سے مروی ہے کہ نعثل نامی یہودی نے رسول اللہ(ص) کے جانشینوں کے نام پوچھے تو آپ(ص) نے بارہ اماموں کے نام تفصیل سے بتائے۔[36]

متعدد احادیث اور نصوص کے علاوہ امام رضا(ع) اپنے زمانے میں شیعوں کے درمیان مقبولیت عام رکھتے تھے اور علم و اخلاق میں اپنے خاندان کے افراد اور تمام امت کے افراد پر فوقیت اور برتری رکھتے تھے۔ یہ خصوصیات بھی آپ کی امامت کے اوپر دلیل بن سکتی ہیں۔ گوکہ امام موسی کاظم علیہ السلام کی حیات مبارکہ کے آخری ایام میں امامت کا مسئلہ کافی حد تک پیچیدہ ہوچکا تھا لیکن امام کاظم علیہ السلام کے اکثر اصحاب اور پیروکاروں نے امام رضا علیہ السلام کو امام کاظم(ع) کا جانشین اور آپ کے بعد امام تسلیم کر لئے تھے۔ [37]

امام رضا کے دور میں شیعوں کے اعتقادات

اصل مضمون: واقفیہ

امام کاظم(ع) کی شہادت کے بعد شیعوں کی اکثریت نے ساتویں امام کی وصیت اور دوسرے قرائن و شواہد کی بنا پر ان کے بیٹے علی بن موسی الرضا(ع) کو آٹھویں امام کے طور پر قبول کر لئے تھے۔آپ(ع) کی امامت کو قبول کرنے والے شیعہ جن میں امام کاظم(ع) کے بزرگ اصحاب شامل تھے، قطعیہ کے نام سے مشہور تھے۔[38] لیکن امام کاظم(ع) کے اصحاب میں سے ایک گرہ نے بعد دلایل کی بنیاد پر علی بن موسی الرضا(ع) کی امامت کو قبول کرنے سے انکار کیا اور امام موسی کاظم(ع) کی امامت پر توقف کیا۔ ان کا عقیدہ تھا کہ موسی بن جعفر(ع) آخری امام ہیں جنہوں نے کسی کو امام متعین نہیں کیا ہے یا کم از کم ہمیں اس بارے میں کوئی معلومات نہیں ہیں۔ یہ گروہ واقفیہ (یا واقفہ) کے نام سے جانے جاتے تھے۔

مدینہ میں آپ(ع) کا مقام

امام رضا(ع) نے اپنی امامت کے تقریبا 17 سال (183-200 یا 201 ہجری) مدینے میں گزاریں جہاں پر آپ(ع) لوگوں کے درمیان ایک ممتاز مقام کے حامل تھے۔ مأمون کے ساتھ اپنی ولایتعہدی کے بارے میں ہونے والی گفتگو میں امام(ع) خود اس بارے میں فرماتے ہیں:

میرے نزدیک اس ولایت عہدی کی کوئی حیثیت نہیں ہے۔ جس وقت میں مدینے میں ہوتا تھا تو میرا حکم مشرق و مغرب میں نافذ تھا اور جب میں اپنی سواری پر مدینے کی گلی کوچوں سے گزرتا تو لوگوں کے یہاں مجھ سے زیاده محبوت شخصیت کوئی نہیں تھا۔[39]

مدینے میں آپ(ع) کی علمی مرجعیت کے بارے میں بھی خود امام(ع) فرماتے ہیں:

میں مسجد نبوی کے دروازے پر بیٹھتا تھا اور مدینے میں موجود صاحبان علم جب بھی کسی مسئلے میں پھنس جاتے تھے تو میری طرف رجوع کرتے تھے اور اپنے اپنے مسائل کو میری طرف ارجاع دیتے تھے اور میں ان کا جواب دیتا تھا۔[40]

خراسان کا سفر

روایت ہے کہ امام رضا(ع) کی مدینہ سے مرو کی طرف ہجرت سنہ 200 ہجری میں انجام پائی۔[41] رسول جعفریان لکھتے ہیں: امام رضا(ع) سنہ 201 کو مدینہ میں تھے اور اسی سال رمضان کے مہینے میں مرو پہنچ گئے۔[42] اس قول کے مطابق امام رضا(ع) سنہ 201 کو مدینہ میں تھے اور اسی سال رمضان میں مرو پہنچ گئے۔[43]

یعقوبی کے مطابق مامون کے حکم سے امام رضا(ع) کو مدینہ سے مرو بلایا گیا۔ امام(ع) کو مدینہ سے خراسان لانے کے لئے جانے والا شخص مامون کے وزیر فضل بن سہل کا قریبی رشتہ دار، رجاء بن ضحاک تھا۔ آپ کو بصرے کے راستے مرو لایا گیا۔ [44] امام(ع) کی مرو منتقلی کے لئے مامون نے ایک خاص راستہ منتخب کیا تھا تا کہ آپ کو شیعہ اکثریتی علاقوں گذرنے نہ دیا جائے، کیونکہ وہ ان علاقوں میں لوگوں کے اجتماعات سے خوفزدہ تھا جو امام کے ان علاقوں میں پہنچنے پر متوقع تھا۔ اس نے حکم دیا تھا کہ امام(ع) کو کوفہ کے راستے سے نہیں بلکہ بصرہ، خوزستان اور فارس کے راستے سے نیشابور لایا جائے۔[45] کتاب "اطلسِ شیعہ" کے مطابق امام رضا(ع) کو "مرو" لانے کے لئے مقررہ راستہ کچھ یوں تھا: مدینہ، نقرہ، ہوسجہ، نباج، حفر ابوموسی، بصرہ، اہواز، بہبہان، اصطخر، ابرقوہ، دہ شیر(فراشاہ)، یزد، خرانق، رباط پشت بام، نیشابور، قدمگاہ، دہ سرخ، طوس، سرخس، مرو.[46]

شیخ مفید کہتے ہیں: مامون نے خاندان ابو طالب(ع) کے بعض افراد کو مدینہ سے بلوایا جن میں امام رضا(ع) بھی شامل تھے۔ وہ یعقوبی کے برعکس، لکھتے ہیں کہ مامون نے امام(ع) کی خراسان منتقلی کے لئے عیسی جلودی کو ایلچی کے طور پر مدینہ بھجوایا تھا اور کہتے ہیں کہ جلودی امام(ع) کو بصرہ کے راستے مامون کے پاس لے آیا۔ مامون نے آل ابی طالب کو ایک گھر میں جگہ دی اور امام رضا(ع) کو دوسرے گھر میں اور آپ کی تکریم و تعظیم کی۔[47]

حدیث سلسلۃ الذہب

حدیث سلسلة الذهب

"اللَّه جَلَّ جَلَالُهُ یقُولُ لَا إِلَهَ‏ إِلَّا اللَّهُ‏ حِصْنِی‏ فَمَنْ دَخَلَ حِصْنِی أَمِنَ مِنْ عَذَابِی قَالَ فَلَمَّا مَرَّتِ الرَّاحِلَةُ نَادَانَا بِشُرُوطِهَا وَ أَنَا مِنْ شُرُوطِهَا. (:ترجمہ خداوند حل جلالہ نے فرمایا: کلمہ "لَا إِلَہ إِلَّا اللَّہ" میرا مظبوط قلعہ ہے، پس جو بھی میرے اس قلعہ میں داخل ہوگا وہ میری عذاب سے محفوظ رہے گا، جب سواری چلنے لگی تو [امام رضا](ع) نے فرمایا: [البتہ] اس کے کچھ شرائط ہیں اور میں ان شرائط میں سے ایک ہوں۔)

ابن بابویہ، کتاب التوحید، ص۴۹.

اسحاق بن راہویہ کہتے ہیں: جب امام رضا(ع)، خراسان جاتے ہوئے نیشابور کے مقام پر پہنچے تو مُحدِّثین کا ایک گروہ آپ کی خدمت میں حاضر ہوئے اور کہا:‌ اے فرزند پیغمبر آیا ہمارے شہر سے تشریف لے جا رہے ہو؟ کیا ہمارے لئے کوئی حدیث بیان نہیں فرماؤ گے؟ اس مطالبے کے بعد امام(ع) نے اپنا سر کجاوے سے باہر نکالا اور فرمایا:

میں نے اپنے والد گرامی موسی بن جعفر(ع) سے، انہوں نے اپنے والد گرامی جعفر بن محمّد(ع) سے، انہوں نے اپنے والد گرامی محمّد بن علی(ع) سے، انہوں نے اپنے والد گرامی علی بن الحسین (علیہما السّلام) سے، انہوں نے اپنے والد گرامی حسین بن علی(ع) سے، انہوں نے اپنے والد گرامی امیرالمؤمنین علی بن أبی طالب(ع) سے، انہوں نے رسول خدا(ص) سے آپ(ص) نے جبرئیل سے سنا جبرئیل کہتے ہیں پروردگار عزّ و جلّ فرماتے ہیں: "اللَّه جَلَّ جَلَالُهُ یقُولُ لَا إِلَهَ‏ إِلَّا اللَّهُ‏ حِصْنِی‏ فَمَنْ دَخَلَ حِصْنِی أَمِنَ مِنْ عَذَابِی قَالَ فَلَمَّا مَرَّتِ الرَّاحِلَةُ نَادَانَا بِشُرُوطِهَا وَ أَنَا مِنْ شُرُوطِهَا. (:ترجمہ خداوند حل جلالہ نے فرمایا: کلمہ "لَا إِلَہ إِلَّا اللَّہ" میرا مظبوط قلعہ ہے، پس جو بھی میرے اس قلعہ میں داخل ہوگا وہ میری عذاب سے محفوظ رہے گا، جب سواری چلنے لگی تو [امام رضا](ع) نے فرمایا: [البتہ] اس کے کچھ شرائط ہیں اور میں ان شرائط میں سے ایک ہوں۔)[48]

نیشابور میں امام(ع) کا محدثین کی محفل میں اس حدیث کا بیان مدینے سے خراسان تک کے سفر کا اہم ترین اور مستند ترین واقعہ شمار کیا جاتا ہے۔[49]

مامون کی ولیعہدی

امام رضا کی ولایت عہدی کا سکہ
سکه ولایتعهدی امام رضا(ع) -پشت سکه.jpg

امام رضا(ع) کا مرو میں قیام پذیر ہونے کے بعد مأمون نے امام رضا(ع) کے پاس اپنا قاصد بھیجا اور یہ پیغام دیا کہ میں خلافت سے کنارہ کشی اختیار کرتا ہوں اور اسے آپ کے حوالے کرتا ہوں، لیکن امام(ع) نے اس کی شدید مخالفت کی۔ اس کے بعد مأمون نے آپ(ع) کو اپنی ولیعہدی کی تجویز دی تو امام نے اسے بھی ٹھکرایا۔ اس موقع پر مأمون نے تہدید آمیز لہجے میں کہا: عمر بن خطاب نے چھ رکنی کمیٹی تشکیل دی جس میں سے ایک آپ کے دادا علی بن ابی طالب تھا۔ عمر نے یہ شرط رکھی تھی کہ ان چھ افراد میں سے جس نے بھی مخالفت کی اس کی گردن اڑا دی جائے۔ آپ کے پاس اس کے سوا کوئی چارہ نہیں ہے کہ جو کچھ میں آپ سے طلب کر رہا ہوں اسے قبول کرو۔ اس وقت امام(ع) نے فرمایا: پس اگر ایسا ہے تو میں قبول کرتا ہوں لیکن اس شرط پر کہ میں نے کوئی حکم جاری کروں گا اور نہ کسی کو کسی چیز سے منع کروں گا، نہ کسی چیز کے بارے میں کوئی فتوی دوں گا اور نہ کی مقدمے کا فیصلہ سناوں گا، نہ کسی کو کسی عہدے پر نصب کروں گا اور نہ کسی کو اس کے عہدے سے عزل کروں گا اور نہ کسی چیز کو اس کی جگہ سے ہٹا دوں گا۔ مأمون نے ان شرائط کو قبول کیا۔[50]

مناظرے

امام رضا(ع) کا سفر مدینہ سے مرو تک
١٥ محرمء مدینہ سے حرکت
٣ صفرء بصرہ میں داخل ہوئے
٨ صفرء بصرہ سے حرکت
١٦ صفرء اھواز میں داخل ہوئے
١٦ ربیع الاولء اھواز سے حرکت
٢٦ ربیع الاولء شیراز میں داخل ہوئے
١ربیع الثانیء شیراز سے حرکت
١٥ ربیع الثانیء یزد میں داخل ہوئے
٢٠ ربیع الثانیء یزد سے حرکت
٧ جمادی الاولء نیشابور میں داخل ہوئے
١ جمادی الثانیء نیشابور سے حرکت
٣ جمادی الثانیء طوس میں داخل ہوئے
٨ جمادی الثانیء سرخس میں داخل ہوئے
٢٣ جمادی الثانیء سرخس سے حرکت
٢٩ جمادی الثانیء مشھد میں داخل ہوئے
٧ رمضانء ولایت عھدی کا اعلان کیا

امام رضا(ع) کو مرو منتقل کرنے کے بعد مامون نے مختلف مکاتب فکر اور ادیان و مذاہب کے دانشوروں اور امام(ع) کے درمیان مختلف مناظرات ترتیب دئے جن میں زیادہ تر اعتقادی اور فقہی مسائل بحث و گتفگو ہوتی تھی۔ ان ہی میں سے بعض مناظرات کو ابو على، فضل بن حسن بن فضل طبرسى، جو امین الاسلام طبرسی کے نام سے معروف ہیں نے کتاب "الاحتجاج" میں نقل کیا ہے،[51] ان میں سے بعض احتجاجات اور مناظرات کی فہرست کچھ یوں ہے:[52]

  • توحید اور عدل کے موضوع پر امام رضا(ع) کا مناظرہ
  • امامت کے موضوع پر امام رضا(ع) کا مناظرہ
  • سلیمان مروزی کے ساتھ امام رضا(ع) کا مناظرہ
  • ابی قرہ کے ساتھ امام رضا(ع) کا مناظرہ
  • جاثلیق کے ساتھ امام رضا(ع) کا مناظرہ
  • رأس الجالوت کے ساتھ امام رضا(ع) کا مناظرہ
  • زرتشتیوں کے ساتھ امام رضا(ع) کا مناظرہ
  • صابئین کے زعیم کے ساتھ امام رضا(ع) کا مناظرہ

مناظرات کا تجزیہ

مامون، امام رضا(ع) کو مختلف مکاتب فکر کے دانشوروں کے ساتھ بحث اور مناظرات میں الجھا کر لوگوں کے درمیان آئمۂ اہل بیت کے بارے میں قائم عمومی سوچ ـ جو انہيں علم لدنی کے مالک سمجھتے تھے ـ کو ختم کرنا چاہتا تھا۔ شیخ صدوق لکھتے ہیں: مامون مختلف مکاتب فکر اور ادیان و مذاہب کے بلند پایہ دانشوروں کو امام(ع) کے سامنے لایا کرتا تھا تاکہ ان کے ذریعے امام(ع) کے دلائل کو ناکارہ بنا دے۔ یہ سارے کام وہ امام(ع) کی علمی اور اجتماعی مقام و منزلت سے حسد کی وجہ سے انجام دیتا تھا۔ لیکن نتیجہ اس کی برخلاف نکل آیا اور جو بھی امام کے سامنے آتا وہ آپ کے علم و فضل کا اقرار کرتا اور آپ کی طرف سے پیش کردہ دلائل کے سامنے لاجواب اور بے بس ہوکر انہیں تسلیم کرنے پر مجبور ہو جاتے۔[53]

جب مامون کو اس بات کا علم ہوا کہ ان محفلوں اور مناظروں کا جاری رکھنا اس کے لئے خطرناک ہو سکتا ہے، تو اس نے امام(ع) کو محدود کرنا شروع کیا۔ ابا صلت سے روایت ہے کہ جب مامون کو اطلاع دی گئی کہ امام رضا(ع) نے کلامی اور اعتقادی مجالس تشکیل دینا شروع کی ہیں جس کی وجہ سے لوگ آپ کے شیدائی بن رہے ہیں تو اس نے محمد بن عمرو طوسی کی ذمہ داری لگائی کہ وہ لوگوں کو امام(ع) کے مجالس دور رکھیں۔ اس کے بعد امام(ع) نے مامون کو بد دعا دی۔[54]

نماز عید

امام رضا(ع) کو اپنا ولیعہد بنانے کے بعد (7 رمضان 201ہجری کو) عید کے موقع پر (بظاہر اسی رمضان کی عید فطر) مأمون نے امام رضا(ع) سے کہا کہ جاکر نماز عید پڑھائیں۔ لیکن امام(ع) نے ولیعہدی کے لئے مقرر کردہ شرائط کا حوالہ دے کر مأمون سے کہا کہ "مجھےاس کام سے معاف رکھو"۔ مامون نے اصرار کیا چنانچہ امام(ع) کو قبول کرنا پڑا اور فرمایا: ٹھیک ہے تو میں پھر رسول اللہ(ع) کی طرح نماز عید قائم کروں گا۔ مامون نے بھی امام کی شرط مان لی۔
لوگوں کو توقع تھی کہ امام رضا(ع) بھی دوسرے خلفاء کی طرح خاص قسم کی آداب و رسوم کے ساتھ نماز کے لئے نکلیں گے لیکن سب نے حیرت کے ساتھ دیکھا کہ امام(ع) ننگے پاؤں تکبیر کہتے ہوئے گھر سے باہر آئے؛ سرکاری اہلکار جو اس طرح کے مراسمات کے لئے رائج لباس پہن کر آئے تھے، یہ حالت دیکھ کر اپنی سواریوں سے نیچے آئے اور سب نے اپنے جوتے اتار لئے اور روتے ہوئے اور اللہ اکبر کہتے ہوئے امام(ع) کے پیچھے پيجھے [عیدگاہ کی طرف] روانہ ہوئے۔ امام(ع) ہر قدم پر تین مرتبہ اللہ اکبر کہتے تھے۔

کہا جاتا ہے کہ فضل بن سہل نے مامون سے کہا: اگر امام رضا(ع) اسی حالت میں عید گاہ پہنچ جائیں تو لوگ انکے شیدائی بن جائیں گے۔ پس بہتر ہے کہ امام سے کہیں کہ وہ واپس آجائیں۔ چنانچہ مامون نے اپنا ایک ایلچی روانہ کرکے امام(ع) سے واپس آنے کی خواہش کی۔ چنانچہ امام(ع) نے اپنے جوتے منگوائے اور اپنی سواری پر بیٹھ کر واپس چلے آئے۔[55]

مسئلۂ شہادت

تاریخی منابع میں امام رضا(ع) کی شہادت سے متعلق مختلف اقوال ذکر ہوئیں ہیں:

  • چنانچہ تاریخ یعقوبی میں آیا ہے کہ مامون سنہ 202 میں عراق روانہ ہوا اس سفر میں علی بن موسی الرضا اور فضل بن سہل بھی ان کے ساتھ تھے؛ [56] جب طوس پہنچے تو سنہ 203ہجری کے اوائل میں امام رضا(ع) بیمار ہوئے اور صرف تین دن بعد "نوقان" نامی محلے میں وفات پائی۔ ایک قول یہ بھی ہے کہ علی بن ہشام نے آپ کو زہریلا انار کھلا کر مسموم کیا اور مامون نے اس واقعے پر سخت بےچینی کا اظہار کیا۔ یعقوبی مزید لکھتے ہیں: "مجھ سے ابو الحسن بن ابی عباد نے کہا: میں نے دیکھا مامون سفید قبا پہنے، سر برہنہ، تابوت کے دستوں کے بیچ جا رہا تھا اور کہہ رہا تھا: آپ کے بعد میں کس سے سکون پاؤںگا۔ مامون نے تین دن تک قبر کے پاس قیام کیا اور ہر روز ایک روٹی اور تھوڑا سا نمک اس کے پاس لایا جاتا تھا اور یہی اس کا کھانا تھا اور چوتھے روز وہاں سے واپس آیا۔[57]
  • شیخ مفید روایت کرتے ہیں کہ عبداللہ بن بشیر نے کہا: مجھے مامون نے حکم دیا کہ اپنے ناخن نہ تراشوں تاکہ معمول سے زیادہ بڑھ جائیں اور اس کے بعد اس نے مجھے تمر ہندی (املی) جیسی چیز دے دی اور کہا کہ اسے اپنے ہاتھوں سے گوندہ لوں۔ اس کے بعد مامون امام رضا(ع) کے پاس گیا اور مجھے آواز دے کر بلوایا اور کہا کہ انار کا شربت نکالو۔ میں نے انار کو دباکر شربت نکالا اور مامون نے وہی شربت امام(ع) کو پلایا اس کے دو روز بعد امام(ع) رحلت کرگئے۔[58]
  • شیخ صدوق نے اس سلسلے میں بعض روایتیں نقل کی ہیں جن میں سے بعض میں ہے کہ زہریلے انگور جبکہ بعض میں زہریلے انار اور انگور دونوں کا ذکر ہے۔[59] جعفر مرتضی حسینی، نے امام رضا(ع) کے انتقال کے متعلق 6 نظریات بیان کی ہیں۔[60]
  • چوتھی صدی ہجری کے محدث اور رجال شناس ابن حبّان نے "علی بن موسی الرضا" کے نام کے ذیل میں لکھا ہے: علی بن موسی الرضا اس زہر کے نتیجے میں وفات پاگئے جو مامون نے انہیں کھلایا تھا۔ یہ واقعہ روز شنبہ آخرِ صفر المظفر سنہ 203ہجری کو پیش آیا۔[61]

شہادت کی پیشین گوئیاں اور زیارت کا ثواب

رسول اللہ(ص) نے فرمایا: بہت جلد میرے وجود کا ایک ٹکڑا خراسان میں دفن ہوگا، جس نے اس کی زیارت کی خداوند متعال جنت کو اس پر واجب اور جہنم کی آگ اس کے جسم پر حرام کرے گا۔ [62]

امام علی علیہ السلام نے فرمایا: بہت جلد میرا ایک فرزند خراسان میں مسموم کیا جائے گا جس کا نام میرا نام ہے اور اس کے باپ کا نام موسی بن عمران(ع) کا نام ہے۔ جس نے غریب الوطنی میں اس کی زیارت کی خداوند اس کے اگلے پچھلے گناہ بخش دے گا خواہ وہ ستاروں اور بارش کے قطروں اور درختوں کے پتوں جتنے ہی کیوں نہ ہوں۔ [63]

امام جعفر صادق علیہ السلام نے فرمایا: خداوند میرے بیٹے موسی کو ایک فرزند عطا کرے گا جو طوس میں مسموم کرکے شہید کیا جائے گا اور غریب الوطنی میں دفن کیا جائے گا۔ جو اس کے حق کو پہچانے اور اس کی زیارت کرے خداوند متعال اس کو ان لوگوں کا ثواب عطا کرے گا جنہوں نے فتح مکہ سے پہلے انفاق کیا ہے اور خیرات دی ہے اور جہاد کیا ہے۔[64]

شہادت کے علل و اسباب

مأمون نے کیوں امام کو قتل کروایا؟ اس حوالے سے مختلف علل و اسباب ذکر کئے گئے ہیں:

  • مختلف ادیان و مذاہب کے دانشوروں کے ساتھ ہونے والے مناظروں میں امام(ع) کی برتری اور فوقیت؛[65]
  • امام رضا(ع) کی اقتداء میں نماز عید ادا کرنے کیلئے لوگوں کا جوق در جوق شرکت؛ اس واقعے سے مامون بہت خائف ہوا اور سجھ گیا تھا کہ امام رضا(ع) کو ولیعہد بنانا اس کی حکومت کیلئے کس قدر خطرناک ثابت ہو سکتا ہے۔ اسی وجہ سے اس نے امام(ع) کی نگرانی کرنا شروع کیا کہ کہیں اس کے خلاف کوئی اقدام نہ کرے۔ [66]
  • دوسری طرف سے امام(ع) مامون سے کسی خوف و خطر کا احساس نہیں فرماتے تھے اسی وجہ سے اکثر اوقات ایسے جوابات دے دیتے تھے جو مامون کیلئے سخت ناگوار گذرتے تھے۔ یہ چیز مامون کو امام کے خلاف مزید بھڑکانے اور امام کے ساتھ مامون کی دشمنی کا باعث بنتی تھی اگرچہ مامون اس کا برملا اظہار نہیں کرتا تھا۔[67] چنانچہ منقول ہے کہ مأمون ایک عسکری فتح کے بعد خوشی کا اظہار کررہا تھا کہ امام(ع) نے فرمایا: اے امیر الممؤمنین! امت محمد اور اس چیز سے متعلق خدا سے ڈرو جسے خدا نے تیرے ذمے لگائی ہے، تم نے مسلمانوں کے امور کو ضائع کردیا ہے....۔[68]

حرم

اصل مضمون: حرم امام رضا

امام رضا(ع) کی شہادت کے بعد مامون نے آپ کو "سناباد" نامی محلے میں واقع "حمید بن قحطبۂ طائی" کے گھر (بقعۂ ہارونیہ) میں سپرد خاک کیا۔[69] اس وقت حرم رضوی ایران کے شہر مشہد میں واقع ہے جہاں ایران اور دوسرے مسلمان ممالک سے سالانہ لاکھوں مسلمان زیارت کیلئے آتے ہیں۔[70]

امام رضا کی سیرت

عبادات میں آپ کی سیرت: امام رضا(ع) کی عملی سیرت میں آیا ہے کہ آپ(ع) مختلف مکاتب فکر اور ادیان و مذاہب کے دانشوروں کے ساتھ ہونے والے گرما گرم مناظرات کے دوران بھی جیسے ہی اذان سنائی دیتی مناظرے کو متوقف فرماتے تھے اور جب مناظرے کو جاری رکھنے سے متعلق لوگ اصرار کرتے تو فرماتے: نماز پڑھ کر دوبارہ واپس آتا ہوں۔[71] رات کی تاریکی میں عبادات کی انجام دہی اور آپ(ع) کی شب بیداری سے متعلق متعدد روایات نقل ہوئی ہیں۔[72] دعبل خزاعی کو اپنا کرتہ ہدیہ کے طور پر دیتے وقت اس سے مخاطب ہو کر فرمایا: اس کرتے کی حفاظت کرو! میں نے اس کرتے میں ہزار راتوں میں ہزار رکعت نماز اور ہزار ختم قرآن انجام دیا ہوں۔[73] آپ کے طولانی سجدوں کے بارے میں بھی روایات نقل ہوئی ہیں۔[74]

اخلاق میں آپ کی سیرت: لوگوں کے ساتھ آپ(ع) کی حسن معاشرت کے متعدد نمونے تاریخ میں نقل ہوئے ہیں۔ حتی مامون کی ولیعہدی قبول کرنے کے بعد بھی غلاموں اور ماتحتوں کے ساتھ محبت آمیز رویہ اختیار کرنا اور ان کو دسترخوان پر ساتھ بٹھانا[75] اس سلسلے کی چند ایک مثالیں ہیں۔ابن شہرآشوب نقل کرتے ہیں کہ ایک دن امام(ع) حمام تشریف لے گئے اور وہاں پر موجود افراد میں سے ایک جو امام کو نہیں پہچانتا تھا، امام سے مالش کرنے کی درخواست کی جسے آپ نے قبول فرمایا اور مالش کرنا شروع کیا جب لوگوں نے یہ دیکھا تو اس شخص کیلئے آپ کی معرفی کی، جب وہ شخص اپنے کیے پر شرمندہ ہوا اور مغذرت خواہی کی تو امام نے اسے خاموش کرایا اور مالش جاری رکھی۔[76]

تربیتی امور میں آپ کی سیرت: آپ(ع) کی سیرت میں بچوں کی تربیت کے حوالے سے خاندان کے کلیدی کردار پر بہت زیادہ تاکید کی گئی ہے۔ اسی تناظر میں صالح اور نیک بیوی سے شادی کی ضرورت،[77] حمل کے ایام میں خصوصی توجہ،[78] اچھے ناموں کا انتخاب،[79] اور بچوں کے احترام[80] وغیرہ پر تاکید ہوئی ہے۔

اسی طرح رشتہ داروں کے ساتھ رفت و آمد اور ان کے ساتھ انس پیدا کرنا بھی آپ کی سیرت میں نمایاں طور پر دیکھا جا سکتا ہے۔ اس حوالے سے منقول ہے کہ جب بھی امام کو فراغت حاصل ہوتی تو آپ اپنے رشتہ داروں؛ چھوٹے بڑے سب کو جمع کرتے اور ان کے ساتھ گفتگو میں مشغول ہوتے تھے۔[81]

قال الرضا (ع)

لَا تَدَعُوا الْعَمَلَ الصَّالِحَ وَ الِاجْتِہادَ فِي الْعِبَادَۃ اتِّكَالًا عَلَى حُبِّ آلِ مُحَمَّدٍ (ع‏)؛ لَا تَدَعُوا حُبَّ آلِ مُحَمَّدٍ (ع) وَ التَّسْلِيمَ لِأَمْرِہمْ اتِّكَالًا عَلَى الْعِبَادَۃ فَإِنَّہ لَا يُقْبَلُ أَحَدُہمَا دُونَ الْآخَر(:ترجمہ آل‌محمد (ص) کی دوستی کے بہانے نیک کاموں کی انجام دہی اور خدا کی عبادت میں سعی و تلاش سے دریغ مت کرو؛ اسی طرح اپنی عبادت پر مغرور ہو کر آل‌محمد (ص) کی دوستی اور ان کے اوامر کے سامنے سر تسلیم خم کرنے سے پرہیز مت کرو، کیونکہ ان دونوں میں سے کوئی ایک بھی دوسرے کے بغیر قابل قبول نہیں ہے۔)

بحار الأنوار، ج۷۵، ص۳۴۸

تعلیم و تعلم میں آپ کی سیرت: مدینے میں قیام کے دوران امام رضا(ع) مسجد نبوی میں تشریف فرما ہوتے اور مختلف سوالات اور مسائل میں جواب دینے سے عاجز آنے والے حضرات آپ سے رجوع کرتے تھے۔[82] "مرو" پہنچنے کی بعد بھی مناظرات کی شکل میں بہت سارے شبہات اور سوالوں کے جواب مرحمت فرماتے تھے۔ اس کے علاوہ امام(ع) نے اپنی اقامت گاہ اور مرو کے مسجد میں ایک حوزہ علمیہ بھی قائم کیا ہوا تھا لیکن جب آپ کی علمی محفل رونق پیدا کرنے لگا تو مامون نے انقلاب کے خوف سے ان محفلوں پر پابندی لگا دی جس پر آپ نے مامون کو بد دعا دی۔[83]

طب اسلامی اور حفظان صحت کے اصولوں پر خصوصی توجہ دینا امام رضا(ع) کی احادیث میں نمیاں طور پر دیکھا جاتا ستکا ہے۔ ان احادیث میں اسی موضوع سے مربوط مفاہیم کی تبیین کے ساتھ ساتھ پرہیز، مناسب خوراک، حفظان صحت کی رعایت اور مختلف بیماریوں کے علاج کی طرف بھی اشارہ فرمایا ہے۔ رسالہ ذہبیہ نامی کتاب طب الرضا کے نام سے آپ کی طرف منسوب ہے جس میں اس حوالے سے مختلف تجاویز پائی جاتی ہیں۔

امامت کی بحث میں تقیہ نہ کرنا: امام رضا(ع) کے دور امامت میں کسی حد تقیہ کی خاص ضرورت محسوس نہیں کی جاتی تھی؛ کیونکہ واقفیہ کی پیدائش جیسے واقعے نے شیعوں کو ایک سنگین خطرے سے دوچار کیا تھا۔ اس کے علاوہ فطحیہ فرقے کے بچے کھچے افراد بھی امام رضا(ع) کے دور امامت میں فعال تھے۔

ان شرایط کو مد نظر رکھتے ہوئے امام(ع) نے کسی حد تک تقیہ کی حکمت عملی اپنانے سے پرہیز کرتے ہوئے امامت کے مختلف ابعاد کو صراحت کے ساتھ بیان فرماتے تھے۔ مثلا امام کی اطاعت کا واجب ہونا اگرچہ امام صادق (ع) کے دور سے دینی اور کلامی محافل میں مطرح ہوتے تھے لیکن اس مسلئے میں ائمہ معصومین تقیہ کرتے تھے۔ لیکن امام رضا(ع) جیسا کہ احادیث میں آیا ہے "ظالم و جابر حکمرانوں سے کسی خوف کا احساس کئے بغیر" اپنے آپ کو واجب الطاعۃ امام معرفی کرتے تھے۔[84] جیسا کہ "علی بن ابی حمزہ بطائنی" (جو کہ واقفیہ کے بنیاد گزاروں میں سے تھا)‌ نے جب امام سے سوال کیا: آیا کیا آپ واجب الاطاعت امام ہو؟ تو امام نے فرمایا: ہاں (کشی، ۱۳۴۸، ص۴۶۳) اسی طرح ایک اور شخص جس نے یہی سوال دہراتے ہوئے کہا: آیا علی بن ابی طالب کی طرح واجب الاطاعت ہو؟ نیز آپ نے یہی جواب دیا ہاں میں اسی طرح واجب الاطاعت ہوں(کلینی، (۱۳۶۳ش)، ج۱، ص۱۸۷) لیکن ساتھ ساتھ امام(ع) اپنے چاہنے والوں سے فرماتے تھے کہ "تقوا اختیار کرو اور ہماری احادیث کو ہر کس و ناکس کے سامنے بیان کرنے سے پرہیز کرو۔" [85]

اسی طرح جب مأمون نے امام(ع) سے اسلام ناب محمدی کے بارے میں بتانے کا مطالبہ کیا تو آپ نے توحید اور پیغمبر اسلام کی نبوت کے بعد امام علی(ع) کی جانشینی پھر آپ کے بعد آپ کی نسل سے گیارہ اماموں کی امامت پر تصریح فرماتے ہوئے فرمایا کہ امام القائم بامر المسلمین یعنی امام مسلمانوں کے امور کا اہتمام کرنے والا ہے۔[86]

امام رضا سے منسوب کتابیں

امام رضا(ع) سے متعدد حدیثیں نقل ہوئی ہیں اور جن لوگوں نے علوم و معارف کے مسائل سمجھنے کے لئے جو سوالات آپ سے پوچھے تھے جن کے جوابات کتب حدیث میں نقل ہوئے ہیں؛ مثال کے طور پر شیخ صدوق نے ان حدیثوں اور جوابات کو اپنی کتاب عیون اخبار الرضا میں اکٹھا کرلیا ہے۔ علاوہ ازیں بعض تالیفات اور کتب بھی آپ سے منسوب کی گئی ہیں گوکہ اس انتساب کے اثبات کے لئے کافی و شافی دلیلوں کی ضرورت ہے چنانچہ ان میں سے بعض تالیفات کا انتساب ثابت کرنا ممکن نہیں ہے جیسے:

  • فقہ الرضا: علماء اور محققین نے امام رضا(ع) سے اس کتاب کے انتساب کی صحت تسلیم نہیں کی ہے۔[87]
  • رسالہ الذہبیہ :امام رضا(ع) سے منسوب ہے جس کا موضوع "علم طبّ" ہے۔ مروی ہے کہ امام(ع) نے یہ رسالہ سنہ 201 ہجری میں لکھ کر مأمون کے لئے بھجوایا اور مأمون نے رسالے کی اہمیت ظاہر کرنے کی غرض سے ہدایت کی کہ اسے سونے کے پانی سے تحریر کیا جائے اور اسے "دارالحکمہ" کے خزانے میں رکھا جائے اور اسی بنا پر اسے رسالہ ذہبیہ کہا جاتا ہے۔ بہت سے علماء نے اس رسالے پر شرحیں لکھی ہیں۔[88]
  • صحیفہ الرضا:امام رضا(ع) سے منسوب دیگر تالیفات میں سے ہے جو فقہ کے موضوع پر لکھی گئی ہے گوکہ علماء کے نزدیک یہ انتساب ثابت نہيں ہوسکا ہے۔[89]

اصحاب

بعض اہل قلم نے 367 افراد کو آپ کے اصحاب اور راویان حدیث کے زمرے میں قرار دیا ہے۔[91] ان میں سے بعض کے نام درج ذیل ہیں:

اہل سنت کے یہاں امام کا مقام

اہل‌سنت کے بعض بزرگوں نے امام رضا(ع) کے نسب اور علم و فضل کی تعریف اور زیارت کیلئے حرم امام رضا(ع) جایا کرتے تھے۔[92] ابن حبان کہتے تھے کہ وہ کئی دفعہ مشہد میں علی بن موسی کی زیارت کیلئے گئے اور آپ سے توسل کے نتیجے میں ان کی مشکلات برطرف ہوئے ہیں۔[93] اسی طرح ابن حجر عسقلانی نقل کرتے ہیں کہ "ابوبکر بن خزیمہ" (جو اہل حدیث کا امام ہے) اور "ابوعلی ثقفی" اہل سنت کے دیگر بزرگان کے ساتھ امام رضا(ع) کی زیارت کو گئے ہیں۔ راوی (جس نے خود اس حکایت کو ابن حجر کیلئے بیان کی) کہتے ہیں:

"ابوبکر بن خزیمہ نے اس قدر اس روضے کی تعزیم اور وہاں پر راز و نیاز اور فروتنی کا اظہار کیا کہ ہم سب حیران ہو گئے۔"[94]

ابن نجار امام رضا(ع) کی علمی کمالات اور دینی بصیرت کے حوالے سے کہتے ہیں:

"آپ(ع) علم اور فہم دین میں ایک ایسے مقام پر فائز تھے کہ 20 سال کی عمر میں مسجد نبوی میں بیٹھ کر فتوا دیا کرتے تھے۔" [95]

متعلقہ مآخذ

مزید مطالعہ

التحفۃ الرضويۃ، سید اولاد حیدر فوق بلگرامی

حوالہ جات

  1. مفید، الارشاد، ۱۳۷۲ش، ج۲، ص۲۶۱؛ ابن شہرآشوب، مناقب آل ابی طالب، نشر علامہ، ج۴، ص۳۶۳.
  2. صدوق، عیون اخبار الرضا، ۱۳۷۸ق، ج۱، ص۱۳
  3. امین، سید محسن، اعیان الشیعہ، ۱۴۱۸ق، ج۲، ص۵۴۵.
  4. طبرسی، اعلام الوری باعلام الہدی، ۱۴۱۷ق، ج۲، ص۶۴
  5. کلینی، الکافی، ج 6، ص 474۔
  6. فضل اللہ، تحلیلی از زندگانی امام رضا (ع)، ۱۳۷۷ش، ص۴۳.
  7. کلینی، الکافی، ۱۳۶۳ش، ج۱، ص۴۸۶.
  8. عاملی، الحیاۃ السیاسیۃ للامام الرضا، ۱۴۳۰ق، ص۱۶۸.
  9. فضل اللہ، تحلیلی از زندگانی امام رضا (ع)، ۱۳۷۷ش، ص۴۳.
  10. کلینی، الکافی، ۱۳۶۳ش، ج۱، ص۴۸۶.
  11. عاملی، الحیاۃ السیاسیۃ للامام الرضا، ۱۴۳۰ق، ص۱۶۹.
  12. طبرسی، اعلام الوری باعلام الہدی، ۱۴۱۷ق، ج۲، ص۴۱.
  13. ر.ک: القرشی، حیاة الامام علی بن موسی الرضا، ۱۴۲۹ق، ج۲، ص۵۰۳-۵۰۴.
  14. جعفریان، حیات فکری و سیاسی امامان شیعہ، ۱۳۸۱ش، ص۴۲۵.
  15. صدوق، عیون اخبار الرضا، ۱۳۷۸ق، ج۱، ص۱۴.
  16. صدوق، عیون اخبار الرضا، ۱۳۷۸ق، ج۱، ص۱۵.
  17. صدوق، عیون اخبار الرضا، ۱۳۷۸ق، ج۱، ص۱۶.
  18. صدوق، عیون اخبار الرضا، ۱۳۷۸ق، ج۱، ص۴۱.
  19. طبرسی، 1417 ص 91.
  20. کلینی، الکافی، مصحح محمد آخوندی، بی تا، ج 1، ص 492۔
  21. طبری، محمد بن جریر، التاریخ، ج 7، ط بیروت: مؤسسۃ الاعلمی للمطبوعات، بی تا، ص 149 (مکتبۃ اہل البیت ای۔ لائبریری۔ نسخہ نمبر2)
  22. قرشی، ج 2، 1429ه، ص 408.
  23. تاريخ الخلفاء سیوطی، ص 307۔
  24. فضل اللہ، محمدجواد، ایضا، ص 44.
  25. سبط بن الجوزی، تذکرۃالخواص، ص 123.
  26. جعفریان، حیات فکری و سیاسی امامان شیعہ (علیہم السلام)، ط 1381، ص 426.
  27. مفید، الارشاد مؤسسہ ال البيت (ع) لتحقيق التراث دار المفيد 1413، ج2، ص 271.
  28. فضل الله،ایضا ط 1377، ص 44.
  29. رجوع کریں: قمی، 1379، ص 1725-1726.
  30. طبرسی، اعلام الوری ج2، 1417ہجری۔، صص 41-42.
  31. مفید، الارشاد، ص 448.
  32. مفید، الارشاد ص 448.
  33. مفید، الاختصاص، ص211؛ صافی، شیخ لطف اللہ، منتخب الاثر باب ہشتم ص97؛ طبرسی، اعلام الوری باعلام الہدی، ج2، ص182-181؛ عاملی، اثبات الہداة بالنصوص و المعجزات، ج2، ص285۔
  34. بحارالأنوار ج23 ص290؛ اثبات الہداة ج3،‌ ص123؛ مناقب ابن شہر آشوب، ج1، ص283۔
  35. مجلسی، بحارالأنوار ج36 ص337؛ علی بن محمد خزاز قمى، كفاية الأثر في النص على الأئمة الإثنی عشر، ص157۔
  36. سلیمان قندوزی حنفی، ینابیع المودة، ج2، ص387 – 392، باب 76۔
  37. جعفریان، حیات فکری و سیاسی امامان شیعہ، ۱۳۸۱ش، ص۴۲۷.
  38. نوبختی، فرق الشیعہ، ۱۳۵۵ق، ص۷۹.
  39. كلينی، الكافى، ۱۳۶۳ش، ج۸، ص۱۵۱
  40. طبرسی، اعلام الوری باعلام الہدی، ۱۴۱۷ق، ج۲، ص۶۴.
  41. صدوق، عیون اخبار الرضا، ج2، ص473؛ مسعودي، اثبات الوصيہ، ص391۔
  42. جعفریان، حیات فکری و سیاسی امامان شیعہ(ع) 1381، ص 426.
  43. ایضا ص426۔
  44. یعقوبی، التاریخ ج 2، 1378، ص 465.
  45. مطہری، مجموعہ آثار، ج 18، 1381، ص 124.
  46. جعفریان، 1387، ص 95.
  47. مفید، الارشاد، ص 455۔
  48. صدوق، معانی الاخبار‏،۱۴۰۳ق، ص۳۷۱.
  49. فضل اللہ، تحلیلی از زندگانی امام رضا (ع)، ۱۳۷۷ش، ص۱۳۳.
  50. مفید، الارشاد، ۱۳۷۲ش، ج۲، ص۲۵۹.
  51. جعفریان، حیات فکرى و سیاسى ائمہ، ‏1381، ص 442۔
  52. رجوع کریں: طبرسی، الاحتجاج، ج 2، 1403ہجری، ص 396 اور بعد کے صفحات۔
  53. عیون اخبار الرضا، ج1، ص 152۔
  54. جعفریان،حیات فکری و سیاسی امامان شیعہ(ع) 1381، ص 442-443.
  55. جعفریان، 1381، ص 443-444.
  56. یعقوبی، ایضا، ص 469.
  57. یعقوبی ،تاريخ اليعقوبي ج2 453۔
  58. مفید، الارشاد، ص 464.
  59. ر.ک: صدوق، ج2، 1373، صص 592 و 602.
  60. رجوع کریں جعفر مرتضی حسینی عاملی، زندگی سیاسی هشتمین امام ، 1381، صص 202-212.
  61. ابن حبان، الثقات، ج 8، 1402، صص 456-457؛ جعفریان، ایضا 1376، ص 460.
  62. بحار الانوار، ج 49، ص 284، ح 3 بحوالہ صدوق، عیون اخبار الرضا، ج 2، ص 255۔
  63. بحار الانوار، ج 49، ص 284، ح 11. بحوالہ عیون اخبار الرضا، ج 2، ص 258- 259۔
  64. بحار الانوار، ج 49، ص 286، ح 10. بحوالہ عیون اخبار الرضا، ج 2، ص 255
  65. جعفریان، ایضا 1376، ص 443.
  66. جعفریان، حیات فکری و سیاسی امامان شیعہ، ۱۳۷۶ش، ص۴۴۴.
  67. جعفریان، حیات فکری و سیاسی امامان شیعہ، ۱۳۷۶ش، ص۴۴۴-۴۴۵.
  68. عطاردی، 1413،مسند الامام الرضا، ص 84-85.
  69. مفید، الارشاد، ص 464.
  70. دخیل، ۱۴۲۹ه‍.ق.، صص۷۶-۷۷.
  71. صدوق، عیون اخبار الرضا، ۱۳۷۸ق، ج۱، ص۱۷۲.
  72. صدوق، عيون أخبار الرضا، ۱۳۷۸ق، ج۲، ص۱۸۴.
  73. طوسی، الامالی، ۱۴۱۴ق، ص۳۵۹.
  74. صدوق، عيون أخبار الرضا، ۱۳۷۸ق، ج۲، ص۱۷.
  75. صدوق، عيون أخبار الرضا(ع)، ۱۳۷۸ق، ج۲، ص۱۵۹.
  76. ابن شہرآشوب، مناقب آل ابی طالب، نشر علامہ، ج۴، ص۳۶۲
  77. کلینی، الکافی، ۱۳۶۳ش، ج۵، ص۳۲۷.
  78. کلینی، الکافی، ۱۳۶۳ش، ج۶، ص۲۳
  79. کلینی، الکافی، ۱۳۶۳ش، ج۶، ص۱۹
  80. نوری، مستدرک الوسائل، ۱۴۰۸ق، ج۱۵، ص۱۷۰.
  81. شيخ صدوق، عيون أخبار الرضا، ۱۳۷۸ق، ج۲، ص۱۵۹.
  82. طبرسی، اعلام الوری، ۱۴۱۷ق، ج۲، ص۶۴.
  83. صدوق، عیون اخبار الرضا، ۱۳۷۸ق، ج۲، ص۱۷۲.
  84. کلینی، الکافی، ۱۳۶۳ش، ج۱، ص۱۸۷.
  85. کلینی، الکافی، ۱۳۶۳ش، ج۲، ص۲۲۴
  86. صدوق، عيون أخبار الرضا، ۱۳۷۸ق، ج‏۲، ص۱۲۲.
  87. فضل الله، 1377،تحلیلی از زندگانی امام رضا (ع)، ترجمہ محمدصادق عارف، ص 187.
  88. فضل الله، ایضا، 1377، صص 191-196.
  89. فضل الله، ایضا 1377، ص 196.
  90. فضل اللہ، ایضا 1377، ص 197-198.
  91. ر.ک: قرشی، 1429ہجری حیاۃ الامام علی بن موسی الرضا۔/2008م.
  92. عسقلانی، تہذیب التہذیب، دار صادر، ج۷، ص۳۸۹؛ یافعی، مرآۃ الجنان، ۱۴۱۷ق، ج۲، ص۱۰.
  93. ابن حبان، الثقات، ۱۴۰۲ق، ج۸، ص۴۵۷.
  94. عسقلانی، تہذیب التہذیب، دار صادر، ج۷، ص۳۸۸.
  95. ابن النجار، ذیل تاریخ بغداد، ۱۴۱۷ق، ج۴، ص۱۳۵؛ نیز ر.ک: عسقلانی، تہذیب التہذیب، دار صادر، ج۷، ص۳۸۷.


مآخذ

  • ابن النجار البغدادی، محب الدین، ذیل تاریخ بغداد، دراسۃ وتحقیق مصطفی عبدالقادر یحیی، بیروت، دارالکتب العلمیۃ، ۱۴۱۷ق.
  • سیوطی، عبدالرحمن بن ابی بکر، تاریخ الخلفاء، تحقیق حمدی الدمرداش، ریاض، مكتبۃ نزار مصطفى الباز، ۱۴۲۵ق.
  • ابن جوزی، یوسف بن قزاوغلی، تذکرۃ الخواص من الامۃ فی ذکر خصائص الائمۃ، قم، منشورات الشریف الرضی، بی‌تا.
  • ابن حبان، الثقات، حیدر آباد، مطبعۃ مجلس دائرۃ المعارف العثمانیۃ، ۱۴۰۲ق.
  • ابن شہرآشوب، محمد بن علی، مناقب آل ابی طالب، قم، نشر علامہ‏، بی تا.
  • امین، سیدمحسن، اعیان الشیعۃ، بیروت، دارالتعارف للمطبوعات، ۱۴۱۸ق.
  • جعفریان، رسول، اطلس شیعہ، تہران، سازمان جغرافیایی نیروہای مسلح، ۱۳۸۷ش.
  • جعفریان، رسول، حیات فکری و سیاسی امامان شیعہ (علیہم السلام)، قم، انصاریان، ۱۳۸۱ش.
  • جعفریان، رسول، حیات فکری و سیاسی امامان شیعہ، قم، انصاریان، ۱۳۷۶ش.
  • دخیل، علی محمد علی، ائمتنا: سیرۃ الائمۃ الاثنی عشر، قم، مؤسسۃ دار الکتاب الاسلامی، ۱۴۲۹ق.
  • صدوق، محمد بن على‏، معانی الاخبار‏، تحقیق علی اکبر غفاری، قم، دفتر انتشارات اسلامى وابستہ بہ جامعہ مدرسين حوزہ علميہ قم‏‏، ۱۴۰۳ق.
  • صدوق، محمد بن علی، عیون اخبار الرضا(ع)، تہران، نشر جہان، ۱۳۷۸ق.
  • طبرسی، احمد بن علی، الاحتجاج، تحقیق السیدمحمدباقر الموسوی الخرسان، مشہد، نشر سعید، ۱۴۰۳ق.
  • طبرسی، فضل بن الحسن، اعلام الوری باعلام الہدی، قم، مؤسسہ آل البیت لأحیاء التراث، ۱۴۱۷ق.
  • طبری، محمد بن جریر، تاریخ الطبری، بیروت، مؤسسۃ الاعلمی للمطبوعات، بی‌تا.
  • طوسی، محمد بن الحسن، الامالی، قم، دارالثقافۃ، ۱۴۱۴ق.
  • عاملی، السید جعفر مرتضی، الحیاۃ السیاسیۃ للامام الرضا (ع): دراسۃ و تحلیل، بیروت، المرکز الاسلامی للدراسات، ۱۴۳۰ق.
  • عاملی، سید جعفر مرتضی، زندگی سیاسی ہشتمین امام، ترجمہ سید خلیل خلیلیان، تہران، دفتر نشر فرہنگ اسلامی، ۱۳۸۱ش.
  • عرفان منش، جلیل، جغرافیای تاریخی ہجرت امام رضا علیہ‌السلام از مدینہ تا مرو، مشہد، آستان قدس رضوی، ۱۳۷۴ش.
  • عسقلانی، ابن حجر، تہذیب التہذیب، بیروت، دار صادر، بی تا.
  • عطاردی، عزیز اللہ، مسند الامام الرضا، بیروت، دار الصفوۃ، ۱۴۱۳ق.
  • فضل اللہ، محمدجواد، تحلیلی از زندگانی امام رضا (ع)، ترجمہ محمدصادق عارف، مشہد، آستان قدس رضوی، ۱۳۷۷ش.
  • قرشی، باقر شریف، حیاۃ الامام علی بن موسی الرضا: دراسۃ و تحلیل، قم، مہر دلدار، ۱۴۲۹ق./۲۰۰۸م.
  • قمی، شیخ عباس، منتہی الآمال، تحقیق ناصر باقری بیدہندی، قم، انتشارات دلیل ما، ۱۳۷۹ش.
  • کلینی، محمد بن یعقوب، الکافی، تصحیح علی اکبر غفاری، تہران، اسلامیہ، چاپ پنجم، ۱۳۶۳ش.
  • کلینی، محمد بن یعقوب، الکافی، مصحح محمد آخوندی و علی اکبر غفاری، تہران، دار الکتب الاسلامیہ، بی‌تا.
  • مطہری، مرتضی، مجموعہ آثار استاد شہید مطہری، تہران، انتشارات صدرا، ۱۳۸۱ش.
  • مفید، محمد بن محمد بن نعمان، الارشاد فی معرفۃ حجج اللہ علی العباد، قم، المؤتمر العاملی لألفيۃ الشیخ المفید، ۱۳۷۲ش.
  • نوبختی، حسن بن موسی، فرق الشیعہ، نجف، حیدریہ، ۱۳۵۵ق.
  • نوری، حسین بن محمد تقی، مستدرک الوسائل و مستنبط المسائل، بیروت، موسسۃ آل بیت لاحیاء التراث، ۱۴۰۸ق.
  • یافعی، عبداللہ بن اسعد، مرآۃ الجنان و عبرۃ الیقضان فی معرفۃ ما یعتبر من حوادث الزمان، بیروت، دار الکتب العلمیۃ، ۱۴۱۷ق.
  • یعقوبی، احمد بن اسحاق، تاریخ یعقوبی، ترجمہ محمد ابراہیم آیتی، تہران، علمی و فرہنگی، ۱۳۷۸ش.

بیرونی روابط

معصوم نہم:
امام موسی کاظم علیہ السلام
14 معصومین
امام علی رضا علیہ السلام
معصوم یازدہم:
امام محمد تقی علیہ السلام
چودہ معصومین علیہم السلام
حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا
بارہ امام
امام علی علیہ السلام امام سجّاد علیہ‌السلام امام موسی کاظم علیہ السلام امام علی نقی علیہ السلام
امام حسن علیہ السلام امام باقر علیہ السلام امام رضا علیہ السلام امام عسکری علیہ السلام
امام حسین علیہ السلام امام صادق علیہ السلام امام جواد علیہ السلام امام مہدی علیہ السلام