حدیث

ویکی شیعہ سے
(روایت سے رجوع مکرر)
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں

حدیث اسلامی تمدن اور علوم دینیہ کی اصطلاح ہے جس کا اطلاق رسول اللہ(ص) اور دیگر معصومین(ع) سے منقولہ فرامین یا ان کی روش و سیرت اور سلوک و عمل یا ان کے تائید کردہ اعمال پر ہوتا ہے۔

حدیث قرآن کے ساتھ مل کر، گزشتہ 15 صدیوں سے مسلمانوں کیلئے دین اور شریعت کی فہم و ادراک میں بنیادی کردار ادا کرتی آئی ہے۔ حدیث کی اہمیت کے پیش نظر، احادیث کے مندرجات و مضامین اور ان کی سند کا جائزہ لینے کے لئے مختلف علوم معرض وجود میں آئے ہيں جنہیں مجموعی طور پر علوم حدیث کہا جاتا ہے اور اسی عنوان کے ذیل میں احادیث کی زمرہ بندی کی جاتی ہے۔ احادیث کی سند کا جائزہ روایت حدیث میں جبکہ مضامین و مندرجات (محتویات) کا جائزہ درایت حدیث میں لیا جاتا ہے۔ علوم علم رجال اور مصطلح الحدیث کو روایت حدیث کے ذیلی موضوعات کے زمرے میں شمار کیا جاتا ہے۔ ان علوم میں فہم حدیث اور احادیث کا اعتبار جانچنے کے لئے متعدد تقسیمات بیان ہوئی ہیں۔

مسلمانوں کی کتب حدیث میں سے 10 کتابوں کا کردار بنیادی اور مرکزی ہے۔ ان دس عناوین میں سے چار: کتب اربعہ کا تعلق شیعہ مذہب سے اور چھ عناوین صحاح ستہ کا تعلق اہل سنت سے ہے۔

کتب اربعہ

شیعیان اہل بیت(ع) کی مشہور ترین اور معتبر ترین درج ذیل کتب اربعہ کہلاتی ہیں:

ان چار کتابوں کو مجموعی طور پر کتب اربعہ یا اصول اربعہ کہا جاتا ہے۔[1]

صحاح ستہ

اہل سنت کے ہاں معتبر ترین اور مشہور ترین درج ذیل چھ کتب حدیث ہیں جنہیں مجموعی طور پر صحاح ستہ کہا جاتا ہے۔

مجموعی طور پران چھ کتابوں کو صحاح ستہ کہا جاتا ہے۔

حدیث اور روایت کے معنی

لفظ "حدیث" صفت مشبہہ ہے مادہ "ح د ث" سے، جس کے معنی "جدید، بات، داستان اور حکایت" کے ہیں۔

"حدیث" اور "روایت" میں لغوی لحاظ سے مکمل فرق اور اختلاف ہے لیکن علمی اصطلاح میں یہ دو الفاظ "مترادف" الفاظ کے عنوان سے استعمال ہوتے ہیں۔

بعض اوقات یہ دو الفاظ مختلف معانی میں استعمال ہوتے ہیں اور اس صورت میں لفظ "حدیث" معصومین(ع) کا کلام نقل کرنے کے معنی میں آتا ہے اور لفظ "روایت" "کلام معصوم، و غیر معصوم، تاریخ، واقعہ یا حادثہ" نقل کرنے کے لئے استعمال ہوتا ہے۔

[حدیث کو خبر بھی کہتے ہیں اور] خبر کو بظاہر اس لحاظ سے "حدیث" کہا گیا کہ یہ قرآن کریم کے برابر میں آتی ہے (اور دونوں کا مقصود احکام الہیہ بیان کرنا ہوتا ہے) کیونکہ اہل سنت کی اکثریت کا خیال ہے کہ قرآن قدیم ہے اور اس لحاظ سے جو احکام پیغمبر(ص) کی جانب سے صادر ہوتے ہیں انہیں بمقابلۂ قرآن ـ جو قدیم ہے ـ "حدیث" کہا جاتا ہے۔[3]

واضح رہے کہ حدیث معنی اور مضمون کے لحاظ سے "وحیانی" اور بلحاظ لفظ "انسانی" ہے۔

حدیث کا اثر، خبر اور علم کے ساتھ تعلق

ابتدائی ہجری صدیوں میں "اثر، خبر اور علم" کا مفہوم حدیث کے مفہوم کے ساتھ برابری کرتا تھا۔

اثر

اثر کے لغوی معنی باقیماندہ اور نقش پا کے ہیں۔ یہ لفظ ـ خاص طور پر اہل سنت کے ہاں ہر اس نقش کے لئے استعمال ہوتا تھا جو شریعت اور تعلیمات دین سے باقی رہا ہوتا تھا، خواہ وہ بلاواسطہ پیغعمبر(ص) کا کلام ہوتا، خواہ وہ بالواسطہ طور پر آنحضرت(ص) کے اصحاب، یا تابعین یا تابعین کے تابعین سے باقی رہا ہوتا تھا نیز حتی مدینۃ الرسول میں باقیماندہ اور رواج یافتہ سیرت کو "اثر" کا نام دیتے تھے۔ لیکن یہ اصطلاح شیعہ علماء کے ہاں صرف معصومین(ع) سے منقولہ روایت کے لئے استعمال ہوتی ہے اور بعض علماء کے ہاں ہر اس شیئے کو اثر کہا جاتا ہے جو ان سے منقول و مروی ہو۔[4]

خبر

خبر کی تعریف میں آراء مختلف ہیں: بعض کہتے تھے کہ حدیث کے دو حصے ہیں: حدیث مرفع خبر ہے اور حدیث موقوف اثر ہے[5]؛ اور بعض دوسرے کہتے تھے کہ حدیث معصوم سے نقل شدہ کلام ہے اور خبر عام ہے اور ہر اس کلام کو اثر کہتے ہیں جو سابقین سے نقل ہوا ہو اور اثر ان دو سے بھی عام تر اور وسیع تر ہے[6]۔[7] اور بعض دوسرے ان اختلافات سے بچنے کی سبیل کے طور پر تین اصطلاحات کو معادل، مترادف اور ہم معنی سمجھتے تھے۔[8]۔[9]

عِلم

لفظ "علم" عصر حاضر میں استعمال نہیں ہوتا ہے لیکن بہت سے نمونے موجود ہیں جن سے ثابت ہوتا ہے کہ لفظ پہلی صدی ہجری میں وسیع سطح پر اور دوسرح صدی ہجری میں محدود سطح پر اس خبر کے لئے استعمال ہوتا رہا ہے جس کو آج ہم "حدیث" کہتے ہیں۔ اس زمانے میں حدیث کے لئے جو لفظ سب سے پہلے اس زمانے کے لوگوں کے ذہن میں ابھرتا تھا لفظ "علم" تھا۔ صحابہ اور تابعین سے ایسی عبارات کا مجموعہ پایا جاتا ہے جن میں "علم کے چلے جانے"، "اٹھائے جانے"، "بوسیدہ ہوجانے" کے سلسلے میں تشویش ظاہر کی گئی ہے۔ اور "علم کے چلے جانے" " سے "حاملین علم" کے اٹھ جانے کا مطلب لیا گیا ہے۔

حدیث کی تقسیمات

اصل مضمون: حدیث کی اقسام

علوم حدیث میں ـ حدیث کی سند یا متن کے بہتر ادراک کے لئے ـ مختلف قسم کی درجہ بندیاں کی گئی ہیں جن کے نمونے حسب ذیل ہیں:

  • تقسیم، سند کے راویوں کی تعداد کی بنیاد پر: خبر واحد، خبر مُسْتَفیض اور خبر متواتر؛
  • تقسیم، سند کے اعتبار کے لحاظ سے: صحیح اور اس کی قسمیں (صحیح مُضاف، متفق علیہ، اعلٰی، اوسط، ادنٰی)، حَسَن، موثوق، قوی، *ضعیف اور ااس کی اقسام (مُدْرَج، مشترک، مُصَحَّف، مؤتلف اور مختلف)؛
  • تقسیم، قطع یا اتصال سند کے لحاظ سے: مُسنَد، مُتَّصِل، مَرفوع، موقوف، مَقطوع، مُرْسَل، مُنْقَطِع، مُعْضَل یا مشکل، مُضْمَر، مُعَلَّق، مُعَنْعَن، مُہمَل؛
  • تقسیم، متن کے لحاظ سے: نَصّ، ظاہر، مُؤَوَّل، مُطلَق و مُقَید، عام و خاص، مُجْمَل و مُبَین، مُکاتَب و مکاتِبہ، مشہور، متروک، مطروح، حدیث قدسی، شاذ، مقلوب، متشابہ؛
  • تقسیم، روایت پر عمل کے لحاظ سے: حجت و لاحجت، مقبول، ناسخ اور منسوخ۔

اسناد حدیث و اصلیت مأخذ

پہلی صدی ہجری میں اہل سنت کے ہاں ہر اس حدیث کو اہمیت دی جاتی تھی جو پیغمبر اکرم(ص) سے نقل ہوتی تھی اور اس کی سند کو توجہ نہیں دی جاتی تھی۔ دوسری صدی ہجری میں جاعلین اور واضعین حدیث کی موجودگی محسوس ہوئی تو موضوعہ احادیث کا سد باب کرنے کے لئے ذکر سند کو اوزار اور ہتھیار کے طور پر ذکر کرنا ضروری سمجھا گیا۔ [10]۔[11] اور اس روش کے رائج ہونے کی وجہ سے پیغمبر(ص) اور صحابہ سے بغیر سند کے نقل روایت میں شدید کمی آئی؛ تاہم یہ سلسلہ محدود سطح پر دوسری صدی کے آخر تک اصحاب حدیث میں سے بعض علماء میں سے مالک بن انس[12] کے ہاں اور اصحاب رائے میں سے ابو حنیفہ[13] اور ان کے شاگرد محمد شیبانی[14] کے نزدیک دیکھنے کو ملتا ہے۔ دوسری صدی کے آخر میں محمد بن ادریس شافعی کی کوششوں سے جملہ "کہاں سے لائے ہو؟" قطعی اور غالب ضابطے کے طور پر رائج ہوا۔

شیعیان آل رسول(ص) کے ہاں ابتداء ہی سے معصومین سے نقل روایت کرنے والے افراد کے حوالے سے حساسیت پائی جاتی تھی اور ائمۂ معصومین(ع) نے انہیں قبول حدیث کے معیاروں سے آگاہ کردیا تھا۔

جعلِ حدیث

اصل مضمون: جعل حدیث

حدیث کے مآخذ میں متعدد حدیثیں پائی جاتی ہیں جن کے ضمن میں رسول اللہ(ص) کے زبانی لوگوں کو آپ(ص) کی حدیثیں نقل کرنے کی ترغیب دلائی گئی اور انہیں آپ(ص) پر جھوٹ باندھنے سے باز رکھا گیا ہے۔

رسول خدا(ص) کے وصال کے دن ہی سے واقعۂ سقیفہ کے اجلاس کے ضبط شدہ مکالمات کے مطابق مہاجرین نے خلافت کا عہدہ اپنے لئے مختص کرنے کے لئے قرآن کی آیات سے نہیں بلکہ پیغمبر(ص) سےس منقولہ ایک حدیث سے استناد و استدلال کیا جس کی عبارت تھی: الائمة من قریش[15]۔[16] اور یہ استناد اسی آغاز سے ہی حدیث کے کلیدی کردار کی عکاسی کرتا ہے۔

امیرالمؤمنین(ع) نے بدعت آمیز احادیث کے رواج پر رد عمل ظاہر کرتے ہوئے اپنے ایک خطبے کے ضمن میں فرمایا ہے کہ "لوگوں کے ہاتھوں میں (احادیث رسول اللہ(ص)) میں سے حق و باطل اور سچ اور جھوٹ، ہے"، اور پھر ناقلین حدیث کو چار زمروں میں تقسیم کرتے ہیں:

  1. منافقین جو جان بوجھ کر پیغمبر(ص) پر جھوٹ باندھتے ہیں؛
  2. رسول خدا(ص) سے سن کر اسے صحیح محفوظ نہیں کرسکے اور وہم و اشتباہ کا شکار ہوئے ہیں؛
  3. امر و نہی کو پیغمبر(ص) سے سنا لیکن ان کے ناسخ کو وصول نہیں کرسکے ہیں؛
  4. احادیث کو درست سمجھا اور حفظ کیا ہے اور امانتداری سے دوسروں تک منتقل کیا ۔[17]

تاریخ گواہ ہے کہ صحابہ اور تابعین نے پیغمبر(ص) کی تعلیمات کو منتقل کرتے ہوئے ان تعلیمات سے اپنے تصور و ادراک کو منتقل کرچکے ہیں اور غالبا عین الفاظ رسول کو ضبط و ثبت کرنے کے پابند نہ تھے۔ عملی میدان میں بھی صحابہ سے منقولہ حدیثوں میں ایسی حدیثیں بکثرت پائی جاتی ہیں جن میں ایک واقعے کو بیان کیا گیا ہے لیکن ان کے الفاظ بالکل مختلف ہیں اور یہ حدیثیں اس قسم کی روش کے صحابہ کے ہاں معمول ہونے کی قطعی دلیل ہیں۔ اس سے معلوم ہوتا ہے کہ اسلاف، علمائے خلف کی مانند عین الفاظ نقل کرنے کے لئے اہمیت کے قائل نہیں تھے۔ یہ مشکل معصومین(ع) کی ڈھائی صدیوں پر محیط موجودگی کے بدولت، اہل تشیع کے ہاں بہت کم کہیں دکھائی دیتی ہے۔

كلام لأمير المؤمنين(ع) حول اختلاف الناس في الحديث
کلام امیرالمؤمنین(ع) بسلسلۂ اختلاف حدیث
بِسْمِ اللَّـہ الرَّ‌حْمَـٰنِ الرَّ‌حِيمِ

إِنَّ فِي اءَيْدِي النَّاسِ حَقّا وَباطِلاً، وَصِدْقا وَكَذِبا، وَناسِخا وَمَنْسُوخا، وَعامّا وَخاصّا، وَمُحْكَما وَمُتَشابِها، وَحِفْظا وَوَهما، وَلَقَدْ كُذِبَ عَلَى رَسُولِ اللَّه (صلی الله عليه وَآله) عَلَى عَهدِه حَتَّى قامَ خَطِيبا فَقالَ: مَنْ كَذَبَ عَلَيَّ مُتَعَمِّدا فَلْيَتَبَوَّاءْ مَقْعَدَه مِنَ النَّارِ.

وَإِنَّما اءَتاكَ بِالْحَدِيثِ اءَرْبَعَة رِجالٍ لَيْسَ لَهمْ خامِسٌ:

رَجُلٌ مُنافِقٌ مُظْهرٌ لِلْإِيمانِ، مُتَصَنِّعٌ بِالْإِسْلامِ، لا يَتَاءَثَّمُ وَلا يَتَحَرَّجُ، يَكْذِبُ عَلَى رَسُولِ اللَّه صمُتَ عَمِّدا، فَلَوْ عَلِمَ النَّاسُ أَنه مُنافِقٌ كاذِبٌ لَمْ يَقْبَلُوا مِنْه، وَلَمْ يُصَدِّقُوا قَوْلَه، وَلَكِنَّهمْ قالُوا: صَاحِبُ رَسُولِ اللَّه (صلی الله عليه وَآله) رَآه، وَسَمِعَ مِنْه، وَلَقِفَ عَنْه، فَيَاءْخُذُونَ بِقَوْلِه، وَقَدْ اءَخْبَرَكَ اللَّه عَنِ الْمُنافِقِينَ بِما اءَخْبَرَكَ، وَوَصَفَهمْ بِما وَصَفَهمْ بِه لَكَ، ثُمَّ بَقُوا بَعْدَه، فَتَقَرَّبُوا إ لى اءَئِمَّة الضَّلالَة وَالدُّعاة إ لَى النَّارِ بِالزُّورِ وَالْبُهتانِ، فَوَلَّوْهمُ الْاءَعْمالَ، وَجَعَلُوهمْ حُكَّاما عَلَى رِقابِ النَّاسِ، فَاءَكَلُوا بِهمُ الدُّنْيا، وَإِنَّمَا النَّاسُ مَعَ الْمُلُوكِ وَالدُّنْيا إِلا مَنْ عَصَمَ اللَّه؛ فَهذا اءَحَدُ الْاءَرْبَعَة.

وَرَجُلٌ سَمِعَ مِنْ رَسُولِ اللَّه شَيْئا لَمْ يَحْفَظْه عَلَى وَجْهه، فَوَهمَ فِيه وَلَمْ يَتَعَمَّدْ كَذِبا، فَهوَفِي يَدَيْه وَيَرْوِيه وَيَعْمَلُ بِه، وَيَقُولُ: أَنا سَمِعْتُه مِنْ رَسُولِ اللَّه (صلی الله عليه وَآله) فَلَوْ عَلِمَ الْمُسْلِمُونَ أَنه وَهمَ فِيه لَمْ يَقْبَلُوه مِنْه، وَلَوْ عَلِمَ هوَأَنه كَذَلِكَ لَرَفَضَه.

وَرَجُلٌ ثالِثٌ سَمِعَ مِنْ رَسُولِ اللَّه (صلی الله عليه وَآله) شَيْئا يَاءْمُرُ بِه ثُمَّ إِنَّه نَهى عَنْه وَهوَلا يَعْلَمُ، اءَوْ سَمِعَه يَنْهى عَنْ شَيْءٍ ثُمَّ اءَمَرَ بِه وَهوَلا يَعْلَمُ، فَحَفِظَ الْمَنْسُوخَ وَلَمْ يَحْفَظِ النَّاسِخَ، فَلَوْ يَعْلِمَ أَنه مَنْسُوخٌ لَرَفَضَه، وَلَوْ عَلِمَ الْمُسْلِمُونَ إِذْ سَمِعُوه مِنْه أَنه مَنْسُوخٌ لَرَفَضُوه.

وَآخَرُ رابِعٌ لَمْ يَكْذِبْ عَلَى اللَّه وَلا عَلَى رَسُولِه، مُبْغِضٌ لِلْكَذِبِ خَوْفا مِنَ اللَّه، وَتَعْظِيما لِرَسُولِ اللَّه (صلی الله عليه وَآله) وَلَمْ يَهمْ، بَلْ حَفِظَ ما سَمِعَ عَلَى وَجْهه، فَجاءَ بِه عَلَى ما سَمِعَه: لَمْ يَزِدْ فِيه وَلَمْ يَنْقُصْ مِنْه، فَهوَحَفِظَ النَّاسِخَ فَعَمِلَ بِه، وَحَفِظَ الْمَنْسُوخَ فَجَنَّبَ عَنْه، وَعَرَفَ الْخاصَّ وَالْعامَّ، وَالْمُحْكَمَ وَالْمُتَشَابِه فَوَضَعَ كُلَّ شَيْءٍ مَوْضِعَه وَعَرَفَ المُتَشابِه وَمُحْكَمَه.

وَقَدْ كانَ يَكُونُ مِنْ رَسُولِ اللَّه (صلی الله عليه وَآله) الْكَلامُ لَه وَجْهانِ: فَكَلامٌ خَاصُّ، وَكَلامٌ عَامُّ، فَيَسْمَعُه مَنْ لا يَعْرِفُ ما عَنَى اللَّه سُبْحانَه، بِه وَلا ما عَنَى رَسُولُ اللَّه (صلی الله عليه وَآله) فَيَحْمِلُه السَّامِعُ، وَيُوَجِّهه عَلى غَيْرِ مَعْرِفَة بِمَعْناه، وَما قُصِدَ بِه، وَما خَرَجَ مِنْ اءَجْلِه وَلَيْسَ كُلُّ اءَصْحابِ رَسُولِ اللَّه (صلی الله عليه وَآله) مَنْ كانَ يَسْاءَلُه وَيَسْتَفْهمُه حَتَّى إِنْ كانُوا لَيُحِبُّونَ أَن يَجِي ءَ الْاءَعْرابِيُّ اءَوَالطَّارِئُ فَيَسْاءَلَه (عليه السلام) حَتَّى يَسْمَعُوا، وَكانَ لا يَمُرُّ بِي مِنْ ذلِكَ شَيْءٌ إِلا سَاءلْتُه عَنْه وَحَفِظْتُه، فَهذِه وُجُوه ما عَلَيْه النَّاسُ فِي اخْتِلافِهمْ، وَعِلَلِهمْ فِي رِواياتِهمْ۔

نہج البلاغہ خطبہ نمبر 201۔ </div> </div>

</div>

اللہ کے نام سے جو بہت رحم والا نہایت مہربان ہے

لوگوں کے ہاتھوں میں حق ہے اور باطل، جھوٹ ہے اور سچ، ناسخ ہے اور منسوخ، نیز عام ہے اور خاص، محکم ہے اور متشابہ، خطا و اشتباہ سے خالی اور اس سے بھرپور۔
رسول خدا(ص) کے دور میں اس قدر تک لوگوں نے آپ(ص) کو جھوٹی باتوں کی نسبت دی کہ آپ(ص) اٹھے اور لوگوں کو خطبہ دیا اور اس کے ضمن میں فرمایا: "جو شخص مجھ پر جان بوجھ کر جھوٹ باندھے گویا وہ اپنا ٹھکانا دوزخ میں منتقل کرچکا ہے"۔
حدیث کو چار افراد نقل کرتے ہیں جن میں کوئی پانچواں نہیں ہے؛ یا منافق شخص ہے جو ایمان ظاہر کرتا ہے اور اپنے آپ کو مسلمان کے طور پر پیش کرتا ہے لیکن کسی بھی جرم و گناہ کے ارتکاب کی پروا نہیں کرتا۔ اگر لوگ جانتے کہ وہ منافق اور جھوٹا ہے تو اس کی بات کو قبول نہ کرتے لیکن وہ کہتے ہیں "وہ رسول اللہ(ص) کا صحابی ہے، آپ(ص) کو دیکھ چکا ہے اور آپ(ص) کا کلام سن چکا ہے اور اس کو ضبط کرچکا ہے؛ پس لوگ اس کے کلام کو قبول کرتے ہیں اور خداوند متعال نے قرآن میں منافقین کی خبر دی ہے اور ان کو ان صفات کے ذریعے متعارف کرایا ہے جن سے وہ متصف ہیں۔ یہ لوگ رسول اللہ(ص) کے بعد باقی رہے اور انہیں ضلالت کے پیشواؤں اور باطل و بہتان کے ذریعے لوگوں کے دوزخ کی طرف بلانے والوں کے آستانے قرب و منزلت حاصل کی؛ حتی انھوں نے انہیں حکومت بھی دی اور اس نام سے انہیں لوگوں کی گردنوں پر سوار کردیا اور ان کے نام کی پناہ میں جہان خواری اور تسلط پسندی میں مصروف ہوئے کیونکہ لوگ غالبا بادشاہوں اور دنیا داروں کے ساتھ ہیں سوا اس فرد کے جس کو خداوند متعال نے اس خطرے سے محفوظ رکھا ہو اور یہ چار میں سے ایک ہے۔
دوسرا وہ مرد ہے جس نے رسول خدا(ص) سے ایک خبر سنی ہے لیکن صحیح کلام کو اپنے حافظے میں محفوظ نہیں کرسکتا ہے، وہ جھوٹ بولنے کا ارادہ نہیں رکھتا۔ وہ اپنا آموختہ اب لوگوں کو سناتا ہے اور خود بھی اس پر عمل کرتا ہے اور ہر جگہ جاکر کہتا ہے کہ " میں نے یہ کلام رسول اللہ(ص) سے سنا ہے"؛ اگر مسلمانوں کو معلوم ہوتا کہ اس سے حدیث وصول کرنے اور سننے میں غلطی ہوئی ہے تو اس کا کلام قبول نہ کرتے اور اگر خود بھی جانتا کہ جو کچھ وہ کہہ رہا ہے درست نہیں ہے، تو اس کو ترک کردیتا۔
تیسرا وہ شخص ہے جس نے رسول اللہ(ص) سے کچھ سنا ہے کہ آپ(ص) نے کسی عمل کا حکم دیا ہے اور بعدازاں آپ(ص) نے اس عمل سے لوگوں کو منع کیا ہے لیکن یہ شخص اس دوسرے (ناسخ) حکم سے بےخبر ہے۔ یا اس نے سنا ہے کہ رسول اللہ(ص) نے کسی عمل سے نہی فرمائی ہے لیکن بعدازاں اس پر عمل کرنے کا حکم دیا ہے بغیر اس کے کہ اس شخص کو معلوم ہوا ہو۔
چنانچہ اس نے منسوخ کو سنا ہے لیکن ناسخ کو نہیں سنا، یہ شخص اگر جانتا کہ جو کچھ وہ کہہ رہا ہے منسوخ ہوچکا ہے، ہرگز اس کو نقل نہ کرتا اور اگر مسلمان جانتے کہ جو کچھ اس سے سن رہے ہیں منسوخ ہوچکا ہے تو اس کے کلام کو ترک کردیتے۔
چوتھا وہ مرد ہے جو کسی صورت میں بھی خدا اور اس کے پیغمبر(ص) کو جھوٹی نسبت نہیں دیتا؛ وہ اللہ کے خوف نیز پیغمبر خدا(ص) کی تکریم و تعظیم کی خاطر جھوٹ کو ناپسند کرتا ہے؛ وہ اشتباہ اور خطا سے بھی دوچار نہیں ہوا ہے بلکہ اس نے جو کچھ رسول خدا(ص) سے سنا ہے اس کو صحیح طریقے سے مکمل طور پر حافظے کے سپرد کیا ہے اور اب اس کو نقل کرتا ہے، نہ اس میں اضافہ کرتا ہے اور نہ ہی اس سے کچھ کم کرتا ہے؛ ناسخ کو حفظ کررکھا ہے اور اس پر عمل کرتا ہے اور منسوخ کو حفظ کررکھا ہے اور اس سے دوری کرتا ہے۔
خاص کو عام سے تمیز دیتا ہے اور متشابہ کو محکم کی جگہ نہیں بٹھاتا اور ہر چیز کو اس کے اصل مقام پر رکھتا ہے۔
کبھی ایسا بھی ہوتا تھا رسول خدا(ص) کے کلام کے دو پہلو ہوتے تھے؛ ایک پہلو خاص ہوتا تھا اور ایک پہلو عام ہوتا تھا۔ ایسے کلام کو وہ لوگ سنتے تھے جو خدا اور اس کے رسول(ص) کے مقصد و مطلب سے آگہی نہیں رکھتے تھے، اور پھر اس کے معنی کی معرفت حاصل کئے بغیر اور بولنے والے کے مقصود سے آگہی اور شناخت تک پہنچے بغیر، اس کی کسی طرح سے توجیہ کرتا تھا؛ اور ایسا نہیں تھا کہ سارے صحابہ نے آپ سے کچھ پوچھا ہو اور اس کلام کی فہم کی درخواست کی؛ یہاں تک کہ بعض اصحاب کی آرزو ہوتی تھی کہ کوئی صحرا نشین اجنبی عرب آئے اور آپ(ص) سے کچھ پوچھے، تا کہ وہ بھی سن لیں؛ حالانکہ مجھے کبھی بھی کوئی مشکل پیش نہیں آتی تھی مگر میں آپ سے اس کا حل پوچھ لیتا تھا اور آپ(ص) کا کلام صحیح اور مکمل طور پر حافظے میں محفوظ کرلیتا تھا؛ ہاں! یہ ہیں لوگوں کی مرویات میں اختلاف کے اسباب۔

کتابت حدیث کی تاریخ

عصر نبوی میں علی علیہ السلام اور بعض اصحاب رسول حدیث لکھتے تھے۔ وصال رسول(ص) کے بعد شیعہ اور اہل سنت کے ہاں کتابت حدیث کی روش میں گہرا فرق پیدا ہوا۔ خلیفۂ اول اور خلیفۂ ثانی اور ان کے بعد خلیفۂ ثالث کے ادوار میں ـ اور بعدازاں عمر بن عبدالعزیز کے دور تک حکومت کی سرکاری روش یہ تھی کہ احادیث رسول(ص) کو نقل، تدوین اور مکتوب نہ کیا جائے؛ یہاں تک کہ انھوں نے بڑی مقدار میں مکتوبات حدیث کو نذر آتش کیا۔

عمر بن عبدالعزیز نے سرکاری روش کو بدل ڈالا اور کتب حدیث کی تدوین کا آغاز ہوا اور تیسری صدی ہجری کے آخر تک صحاح ستہ لکھ لی گئیں۔ لیکن تقریبا ایک صدی تک تدوین و کتابت حدیث پر لاگو کی جانے والی ممانعت نے بعد کے زمانے میں معرض وجود میں آنے والے مآخذ کی اصلیت پر تباہ کن اثرات مرتب کئے۔

تاہم شیعیان آل رسول(ص) رسول خدا(ص) کے زمانے میں بھی اور آپ(ص) کے وصال کے بعد ائمہ(ع) کے دور میں غیبت صغری تک احادیث کو لکھتے رہے تھے جیسے امیرالمؤمنین(ع) سے منقول کتاب علی(ع)، جامعہ وغیرہ اور اصحاب ائمہ کی اصول اربمائہ اسی دوران کی تالیف ہوئی ہیں۔ بعد کی صدیوں میں احادیث کی تدوین و تجمیع کا کام انجام پایا۔ کتب اربعہ پانچویں صدی ہجری کے آخر تک مکمل ہوچکی تھیں۔

حدیث کی درجہ بندی

احادیث و روایت تک آسان رسائی کے لئے حدیث کی درجہ بندی، طبقہ بندی اور تبویب قدیم الایام سے علمائے دین کے مد نظر تھی۔ یہ درجہ بندی ابتدائی صدیوں سے آج تک جاری رہی ہے اور روز بروز کامل اور کامل تر ہوئی ہے۔

حدیث کا تاریخی سفر

وضع حدیث یا جعل حدیث

اصل مضمون: جعل حدیث

اگر ایک طرف سے پہلی اور دوسری صدیوں میں حدیث کو فہم دین کے سلسلے میں منبع و ماخذ کے عنوان سے منزلت ملی تو دوسری طرف سے اس منزلت سے ناجائز فائدہ اٹھانے کے رجحانات نے بھی جنم لیا اور کچھ لوگوں نے "جعل حدیث" (اور حدیث سازی) کا کام شروع کیا!۔ "و‏ضع کرنے والے (وضاع) محدثین کے ہاتھوں جعل حدیث اور پیغمبر(ص) اور ائمۂ(ع) پر جھوٹ باندھنے اور ان سے جھوٹی باتیں منسوب کرنے کی تاریخ "تاریخ حدیث" جتنی پرانی ہے۔

علمائے حدیث ان دو مشکلات کے حل کے لئے علم رجال اور علم درایہ کو بروئے کار لاتے ہیں اور اس وسیلے سے خالص کو ناخالص سے تمیز و تشخیص دیتے ہیں۔

سند اور مضمون کےلحاظ سے جائزہ لینے کی راہيں

ظاہر ہے کہ محدثین کی حدود سے باہر کی دنیا سے حدیث پر ہونی والی نقادیاں تشویش اور فکرمندی کا سبب ہوئیں اور اصحاب حدیث مجبور ہوئے کہ احادیث کا تحفظ کرنے کے لئے اقدامات کریں اور خود ماہرانہ انداز سے حدیثوں پر تنقید کریں۔ یہ ضرورت محض باہر سے ہی محدثین پر مسلط نہیں ہوئی بلکہ اخبار و احادیث میں تضاد و تعارض نے انہیں یہ سبیل نکالنے پر آمادہ کیا تھا۔ اس قسم کی تنقید میں ـ گوکہ حدیث کو بحثیت مجموعی مثبت نگاہ سے دیکھا جاتا تھا تاہم کوشش ہوتی تھی کہ ـ حدیث پر عارض ہونے والی بیماریوں کو پہچانا جائے اور حدیث کے پڑھنے اور سننے ان بیماریوں کے آثار سے محفوظ رہیں۔ حدیث پر وسیع سطح پر تنقید کی ضرورت محسوس ہونے کی وجہ سے ایک عظیم تنقیدی نظام ـ صدیوں کے دوران ـ معرض وجود میں آیا جس کا جزء بہ جزء مطالعہ تو ہوا ہے لیکن اس کی ایک مجموعی اور کلی تصویر پیش کرنے سے غفلت ہوئی ہے؛ وہ تصویر جس کو اگلی سطور میں پیش کرنے کی کوشش کی جائے گی۔

فہم حدیث

اصل مضمون: فہم حدیث

حدیث و روایت کی صحیح فہم و ادراک کے لئے لازم ہے کہ نقل بہ معنی[18] [یا نقل بہ مضمون]، روایات کی زبان، مخاطَب شناسی (Audience Studies)، ناسخ و منسوخ، معنی کے لحاظ سے حدیث کی مختلف سطوح، حدیث کی تاویل وغیرہ ـ جو علم درایہ میں زیر بحث ہیں ـ کی طرف توجہ دینے کی ضرورت ہے۔

اسلامی تہذیب و ثقافت میں حدیث

مسلم اقوام کے ادب میں مضامینِ حدیث کا استعمال ایک ایسا رجحان ہے جس کی تاریخ اسلامی ادب جتنی پرانی ہے۔ عربی نظم و نثر میں احادیث کے مندرجات سے تضمین ـ جو بوفور دیکھی جاسکتی ہے ـ کے علاوہ فارسی کے اسلامی ادب کی تشکیل کے آغاز سے لے کر آج تک، فارسی میں بھی اس قسم کی تضمینات کے نمونے تلاش کئے جاسکتے ہیں۔

چھٹی صدی ہجری میں احادیث نبوی ـ تضمینِ صریح (آشکار تضمین) کی صورت میں بھی اور بصورت تلویح (ضمنی طور پر) بھی فارسی کے شعراء کے آثار میں مکرر در مکرر ـ دیکھی جاسکتی ہیں: فارسی شاعری میں احادیث سے تضمین[19] نگاری کے سلسلے میں نمونے کے طور پر رسول اللہ(ص) کی ایک حدیث کی تضمین کی طرف اشارہ کیا جاسکتا ہے جس میں فرمایا گیا ہے کہ "خسرو (مرد خوشنام) مشرق سے ظہور کرے گا اور عدل کو مغرب تک فروغ دے گا"، مشہور شاعر امیر محمد معزی [20] نے اس حدیث کو ایک عینا ایک قصیدے کے ضمن میں نبی اکرم(ص) سے نقل کیا ہے۔[21]۔[22]

سنائی غزنوی [23] زیادہ تر تلمیح[24] کی طرف رجحان رکھتے ہیں اور اپنے اشعار کے ضمن میں حدیث ثقلین [25] اور ابو ذر غفاری کی صداقت کے سلسلے میں منقولہ حدیث[26] سعدی شیرازی [27] کی شاعری میں حدیث معراج اور پر جلنے کے خطرے سے جبرائیل کی فکرمندی سے متعلق حدیث سے تلمیح جیسے نمونے پائے جاتے ہیں۔[28]

فارسی کے شعراء میں جلال الدین مولوی بلخی [29] بہت وسیع سطح پر ـ صراحت کے ساتھ بھی اور تلمیح کے ذریعے بھی ـ احادیث سے استفادہ کرچکے ہیں جن میں بعض احادیث مآخذ حدیث میں دستیاب نہیں ہیں۔ فروزانفر نے ایک مستقل کتاب احادیث مثنوی کے عنوان سے تالیف کی ہے اور اس میں جلال الدین بلخی کی مثنوی میں متذکرہ احادیث کو جمع کیا ہے۔[30].

رسول اکرم(ص) کے بعض مختصر کلمات اس قدر مسلمانوں کے درمیان مشہور ہوئے کہ ضرب المثل کے عنوان سے رائج ہوئے۔ ابوالشیخ اصفہانی نے ایک " یَک موضُوعی رسالہ" (Monograph) الامثال فی الحدیث النبوی کے عنوان سے تحریر کیا ہے جس میں انھوں نے ان احادیث کو اکٹھا کیا ہے جو عام محاورے کی زبان میں استعمال ہوتی ہیں اور اس میں انھوں نے عربی بولنے والے معاشروں کی زبان کو بھی شام کیا ہے جس میں حدیث کے عربی زبان توقع کے عین مطابق ہیں۔[31] حدیث کا ایسا ہی استعمال دوسرے مسلم معاشروں ـ بالخصوص فارسی بولنے والے معاشروں ـ میں بھی رائج ہے۔

پیغمبر خدا(ص) کی بعض حدیثیں ـ خواہ عربی عبارت کے ساتھ خواہ فارسی میں (یا اسلامی ممالک میں رائج دوسروں زبانوں) میں مترجَم صورت میں ضرب الامثال کی صورت میں رائج ہوئی ہیں۔[32] بعض مختصر جملے ـ جن کی نبوی تعلیمات سے مطابقت محسوس کی گئی ہے ـ بھی بڑی شہرت حاصل کرچکے ہیں۔ ‌مثال کے طور پر جملہ "‌النظافۃ من الایمان" (صفائی ایمان کا جزو ہے) ایرانیوں کے ہاں ایک کثیر الاستعمال ضرب المثل ہے؛[33] [اور یہ جملہ اردو بولنے والے مسلمانوں میں بھی بکثرت استعمال ہوتا ہے]۔ گو کہ اس جملے کے الفاظ کتب حدیث میں دستیاب نہیں ہیں اور صرف بعض علمائے حدیث ـ منجملہ ابن حبان بستی نے اس کو بعض احادث سے ماخوذہ کلام قرار دیا ہے۔[34] بعض احادیث نے فارسی میں شعر کے سانچے میں نہایت کار آمد ضرب الامثال کی صورت اختیار کی ہے؛ مثال کے طور پر (رسول اللہ(ص) نے فرمایا ہے کہ "علم حاصل کرو گہوارے سے قبر کے لحد تک" اور اس کو شعر میں ڈھال دیا گیا جو کچھ یوں ہے):

چنین گفت پیغمبر راستگوی
ز گہوارہ تا گور دانش بجوی

یہ ایسی حدیث ہے جس کو صرف متاخرین کے مآخذ حدیث میں دیکھا جاسکتا ہے۔[35]

عصرحاضر میں حدیث کے سلسلے میں مختلف نقطہ ہائے نظر

اخباریت کی رسم کو صفویہ کے دور میں امامیہ حلقوں میں رواج ملا اور میرزا محمد اخباری (متوفی 1232ہجری قمری/1817عیسوی) نے اس کو جاری رکھا۔ اس کے باوجود کہ وحید بہبہانی (متوفی 1205ہجری قمری/1791عیسوی) اور شیخ جعفر کاشف الغطاء (متوفی 1228ہجری قمری/1813عیسوی) کی کوششوں سے عراق اور ایران کے علمی حلقوں میں اخباریوں پر اصولیوں کا غلبہ مستحکم ہوا، لیکن اخباری رجحان ان کے دو صدیاں بعد تک ـ اور حالیہ عشروں تک ـ بدستور موجود تھا اور اس کے کچھ سرگرم عناصر بھی تھے۔ بدعت کہلانے والے افعال کے مقابلے میں جو تہذیبیت (Refinement) کے رجحان کے علاوہ اخباریوں کے ہاں ایک دوسری تہذیبیت بھی بشدت پائی جاتی ہے جو ان کے بقول اسلامی علوم ـ بالخصوص "فقہ اور اصول فقہ" ـ میں پھلاوٹ اور فربہی کی شدید مخالفت ہے جو ان کے بقول ائمۂ معصومین(ع)]] کی تعلیمات کا نتیجہ نہیں ہے بلکہ اہل سنت کی تعلیمات سے اثر پذیری کا ثمرہ ہے۔[36] چودھویں صدی ہجری میں ایک نیا تفکر معرض وجود میں آیا ہے ـ جس کا غائرانہ مطالعہ ابھی تک انجام نہیں پا سکا ہے ـ مکتب تفکیک کے نام سے مشہور ہے اور اس کے حامی اپنے مکتب کا تعارف "مکتب معارف" کے عنوان سے کراتے ہیں۔ اس مکتب کی بنیاد خراسان میں میرزا مہدی اصفہانی (ولادت 1303 وفات 1365) نے رکھی ہے۔ اس مذہب کا بنیادی اور مرکزی نقطہ یہ ہے کہ "علوم اہل بیت کو عام اور رائج عرفی علوم سے الگ کرنا چاہئے؛ حقیقی علم وہ ہے جو احادیث اہل بیت(ع) سے حاصل ہو اور دوسرے سرچشموں سے معرض وجود میں آنے والے علوم ـ بالخصوص فلسفہ کے ساتھ ـ ان (دینی) علوم کی آمیزش گمراہی کا سبب ہے۔ اس مکتب میں تہذیبیت (تہذیب و تخلیص علوم دینیہ) دو صورتوں میں شدت و حدت کے ساتھ دیکھی جاتی ہے:

  1. نصوص سے باہر کے سرچشموں سے حاصلہ علوم کو ان علوم سے بالکل الگ کیا جائے جن کا منبع اور سرچشمہ دینی نصوص (قرآن و سنت) ہے؛
  2. ان کے مطابق معارف اہل بیت(ع) کی توسیع و ترویج میں مداخلت کی اہلیت سے عاری! اصولوں کے سہارے، علوم کی ترویج اور فروغ کی نفی ہونی چاہئے۔[37]

اصفہانی بعض اعجاز قرآن، ظواہر قرآن کی حجیت اور قرآن اور فرقان کے درمیان فرق کے قائل ہونے سے متعلق بنیادی موضوعات پر بحث کرتے ہیںـ فرقان سے مراد وہ تعلیمات ہیں جو احادیث اہل بیت سے حاصل ہوتی ہیں۔[38]۔[39]

نے والے فرقان درمیان فرق ـ سے متعلق اصولی موضوعات کو زیر بحث لاتے ہیں، اور یوں فہم قرآن کی سطوح کا تعین کرتے ہیں اور قرآن و حدیث کے درمیان نسبت متعین کرنے کے لئے پس منظر فراہم کرتے ہيں[40] معاشرے کے حسب ضرورت مختلف شعبوں میں مخاطَبین کو قرآن اور حدیث اہل بیت کے محکمات سے روشناس کرانا اور نصوص کے ذریعے مقصود تک پہنچانے کے لئے مناسب رسائی ممکن بنانا اس مکتب کے پیروکاروں کا نصب العین قرار دیا گیا ہے؛ اس تناظر میں محمد رضا حکیمی کےسلسلۂ کتب "الحیاۃ کو نمونے کے طور پر دیکھا جاسکتا ہے۔[41]

بنیادی اور خالص اسلامی تعلیمات تک رسائی کی غرض سے شیعہ میراث حدیث پر بےاعتمادی اور قرآن کی طرف رجوع کی ضرورت نے معاصر مفکرین کی ایک جماعت کو قرآن کی بنیاد پر تہذیبیت اور مجعولات و تحریفات کی نفی کی طرف مائل کیا۔ یہ جماعت قرآن کی تفسیر بوسیلۂ قرآن اور معاشرتی مسائل حل کرنے کے لئے قرآنی تاملات سے فائدہ اٹھانے کے حوالے سے سید قطب کی تفسیری روش کے قریب پہنچ گئی تھی؛ اگرچہ اس جماعت کے ہاں حدیث پر تنقید عام طور پر احتیاط آمیز اور تقابلی ہے۔

اس سلسلے میں ڈاکٹر علی شریعتی جیسے لوگ بھی ہیں جو نہ صرف حدیث کو لائق اعتنا و توجہ نہیں سمجھتے تھے بلکہ مطالعۂ قرآن کا اہتمام بھی نہیں کرتے تھے۔ وہ حدیث کی نسبت سخت بدگمان تھے اور علامہ مجلسی جیسے محدثین اور ان کی کتاب بحار الانوار پر شدید ترین تنقید کرتے تھے۔[42] دریں اثناء بعض احادیث کو علوی تشیع سے دور اور قومی نظریئے کا نتیجہ سمجھتے تھے اور اس بہانے ان پر تنقید کرتے تھے۔[43] اس کے باوجود کہ وہ کبھی صراحت کے ساتھ دین کے بنیادی مآخذ اور صراحت کے ساتھ قرآن و سنت کے خالص ادراک کے حصول کی ضرورت پر زور دیتے تھے[44] لیکن قرآن کے خالص ادراک اور صحیح اور غیر صحیح احادیث کی تشخیص کے لئے کوئی مناسب راہ حل پیش نہیں کرتے تھے۔ ان کا کہنا تھا کہ "دین میں تعبد عبادات کے محدود دائرے نیز بعض غیبی مسائل تک محدود ہے" اور وہ ان دو دائروں سے باہر اجتہاد اور مصلحت اندیشی کو نصوص پر مقدم رکھتے تھے اور مصلحتوں اور تقاضوں کے مطابق، زندگی کے مختلف امور میں بعض مذہبی مسائل کے تبدیل کرنے اور معتدل بنانے کو جائز سمجھتے تھے۔[45]

امامیہ کے دینی حلقوں میں تہذیبیت کا ایک بالکل مختلف زاویہ، حدیث پر تنقید کے حوالے سے محمد تقی شوشتری کی تنقیدی تالیفات اور ان کے بقول "احادیثِ دخیل" یعنی ناخالص احادیث کی بازشناسی[46] اور ان نقادیوں میں دیکھا جاسکتا ہے جو وہ نہج البلاغہ کے بعض کلمات اور جملوں اور ان کے ضبط و ثبت کے حوالے سے، کیا کرتے تھے[47]؛ مذہب شیعہ نہج البلاغہ کے اعتبار اور اسی زمانے میں اہل سنت کی طرف سے وارد ہونی والی تنقیدوں کے ہوتے ہوئے، شوشتری کا یہ تنقیدی رویہ بہت زیادہ گستاخانہ معلوم ہوتا تھا۔ اس تنقیدی روش کے لئے بھاری قیمت ادا کرنا پڑتی تھی اور پھر یہ شوشتری کی کاوشوں میں بہت منظم انداز سے پیش کی جارہی تھی چنانچہ کہا جاسکتا ہے کہ یہ سب تہذیبیت کی طرف ان کے رجحان کا ثمرہ تھا چنانچہ اس کو صرف ایک عالمانہ تجسس کا نام نہیں دیا جاسکتا۔

مستشرقین (Orientalists) کے حلقوں میں بھی حدیث کی نسبت بدظنی پر مبنی رجحان پائے جاتے تھے۔ مستشرقین انیسویں صدی عیسوی کے آخر تک متن حدیث کی اصلیت اور اسناد پر بداعتماد تھے؛ تاہم ہنگری کے مستشرق "اگناس گولڈزیہر"[48] نے بلاواسطہ طور پر حدیث وسیع مطالعہ کیا اور اس کے بارے میں ایک مناسب اور مربوطہ نظریہ پیش کیا۔ [49] اس کتاب کو بعد میں جوزف شاخت [50] نے مکمل کیا اور بیسویں صدی کے آخر تک یہ کتاب مستشرقین کی اکثریت کا مرجع رہی۔[51] کہا جاسکتا ہے کہ ایک طرف سے حدیث ـ یعنی اسلامی سنت کے ایک اہم حصے ـ پر مستشرقین کی تنقید اور دوسری طرف سے اسلامی اداروں کی تشکیل نو اور تجدید کے حوالے سے محسوس کی جانے والی ضرورت نے مل کر مسلمانوں کی توجہ دینی سنت کے اس حصے پر مرکوز کردی اور یوں مستشرقین کا منفی نقطۂ نگاہ مثبت نقطۂ نظر میں بدل گیا۔

آیت اللہ بروجردی [52] نے حوزہ علمیہ قم کے شیعہ ماحول میں علماء اور فضلاء کو حدیث کی طرف توجہ دینے اور اس شعبے میں تحقیق کرنے کی دعوت دی تو وہ خود دائرۃ المعارف کی نوعیت کی ایک مجموعۂ کتاب جامع احادیث الشیعۃ کی تدوین کی تیار کررہے تھے[53]، جبکہ یہ لہر ابھی مکمل طور نہیں اٹھ سکی تھی۔ اسی زمانے میں مصر میں احیاء حدیث کی تحریک کے علمبرداروں میں سے احمد محمد شاکر (متوفی 1377ہجری قمری/1957عیسوی) تھے جنہوں نے علم حدیث کو اہل حدیث کی ریت و روایت کے مطابق حاصل کیا تھا اور مصر کے اہل حدیث کے سربراہ تھے لیکن انھوں نے اہل حدیث کی اہم تالیفات و تصنیفات پر نظر ثانی اور ان کی تصحیح و تشریح کی راہ میں وسیع کوششیں کیں جس کے نتیجے میں دسوں کتب تالیف ہوئیں۔ ان کے تالیفی آثار میں الکتاب والسنۃ، در حقیقت ایک بیان ہے جس کا نقطۂ نظر اگرچہ سلفی ہے لیکن وہ اس وسیلے سے کوشش کرتے ہیں کہ قوانین اور معاشرے کے انتظام کے مقصد تک پہنچنے کے لئے سنت کے ساتھ ساتھ حدیث کی اہمیت کو اجاگر کریں اور ان لوگوں پر تنقید کرنا چاہتے ہیں جو حدیث کی طرف زيادہ توجہ نہیں دیتے۔[54]

حالیہ عشروں کے دوران قانون سازی، معاشرتی روابط، خاندانی نظام کی تشکیل اور متعلقہ مسائل سمیت زندگی کے تمام شعبوں میں، مختلف سطحوں پر اور اسلامی تعلیمات سے زیادہ سے زیادہ استفادہ کرنے اور انسانیات (Humanities) کے مختلف شعبوں میں دینی اصولوں کی طرف توجہ کی ضرورت، جیسے رجحانات، حدیث کی طرف مسلمانوں کے زیادہ سے زیادہ توجہ و مَیلان کا سبب بنے۔ ان محرکات میں خواتین کے مسائل اور سائنس اور دین کے تعلق جیسے سوالات، عالمگیریت وغیرہ کے لئے جوابات کی فراہمی سمیت عصر جدید کے مسائل کا اضافہ کرنا چاہئے۔

اس قسم کے مباحث و موضوعات نے سماجی سطحی پر سرگرم اداروں اور منور الفکر دانشور حلقوں نیز جدید سائنس کی طرف مائل حلقوں کو بھی حدیث کی طرف مائل کردیا ہے؛ تاہم اس حقیقت کی طرف توجہ دینا ضروری ہے کہ یہ حلقے صرف اپنے مقصد کی حدیثوں سے استفادہ کرتے ہیں اور کبھی تو ان کی نظریں ایسے متون اور حدیثوں پر ٹہر جاتی ہے جو محدثین کی اندرونی نقادیوں کی روشنی میں ان کے اعتبار کے بارے میں شکوک و شبہات پائے جاتے ہیں۔

متعلقہ مآخذ

حوالہ جات

  1. دیکھیں:لغت نامہ دہخدا، اصول اربعہ.
  2. مذکورہ دو کتابوں کو مجموعی طور پر صحیحین بھی کہا جاتا ہے.
  3. عسقلانی، ابن حجر، فتح الباری، ج1
  4. شیخ بہائی، الوجيزۃ في علم الدرايۃ۔
  5. سیوطی، تدریب الراوی، ج1 ص184۔
  6. انصاری، زکریا، الحدود الانیقۃ، ص85۔
  7. شہید ثانی، الرعایۃ، ص49۔
  8. قاسمی، محمد، قواعد التحدیث، ص61۔
  9. صالح، صبحی، علوم الحدیث ومصطلحہ، صص 10-11۔
  10. مسلم، صحیح، ج1 ص15۔
  11. ترمذی، سنن، ج5 ص740۔
  12. مالک بن انس، الموطأ، ج1 ص300۔
  13. شیبانی، محمد، الآثار، ج1 صص3-4۔
  14. شیبانی، ج1 ص10۔
  15. کلینی، الکافی ج8 ص343۔
  16. ابن ‏عساکر، علی، تاریخ مدینۃ دمشق، ج30 ص286۔
  17. نہج البلاغۃ، خطبہ 201۔
  18. راوی جب ایک حدیث معصوم سے سنتا ہے تو لازم ہے کہ اس کو عینا ان ہی الفاظ کے سانچے میں بیان کرے جو اس نے سنے ہیں لیکن بعض شرائط کے ساتھ وہ اس حدیث کے معنی اور مفہوم کو اپنے الفاظ میں بھی بیان کرسکتا ہے۔ صاحب معالم بزرگ شیعہ فقیہ شیخ زین‌الدین بن علی بن احمد العاملی الجبعی، معروف بہ شہید ثانی کے فرزند صاحب معالم الاصول، ابو منصور حسن بن زین الدین بن علی بن احمد بن جمال الدین بن تقی الدین العاملی (متوفی 1011ہجری قمری)؛ کہتے ہیں کہ اکثر سنی علماء بھی نقل بہ معنی یا نقل بہ مضمون کے قائل ہیں اور جو قائل نہیں ہیں وہ بھی کوئی قابل قبول دلیل پیش نہیں کرسکے ہیں۔
  19. تضمین وہ ہے کہ شاعر یا قلمکار اپنے کلام (خواہ وہ شعر ہو خواہ نثر ہو) میں کسی آیت، حدیث، یا کسی شاعر کے ایک مصرع یا شعر کو عینا نقل کرے۔
  20. امیر ابوعبداللہ محمد بن عبدالملک مُعِزّی نیشابوری متوفی 518 یا 521 ہجری قمری۔
  21. ‏معزی، محمد، دیوان، ص 579۔
  22. ابن ماجہ، سنن ج2 ص1367۔
  23. ابو المجد مجدود بن آدم سنائی غزنوی یا حکیم سنائی (ولادت 473، وفات 545ہجری قمری)
  24. تلمیح کے معنی لغت میں آنکھ کے گوشے سے اشارہ کرنے کے ہیں اور اصطلاح میں اس کے معنی یہ ہیں کہ خطیب یا شاعر اپنے کلام کے ضمن میں آیت، حدیث، داستان ، تاریخی واقعے، افسانے وغیرہ کی طرف اشارہ کرے۔
  25. سنائی، دیوان، ص 469۔
  26. وہی وہی ماخذ ص465۔
  27. ابو محمد مُصلِح الدین بن عَبدُاللہ معروف بہ سعدی شیرازی و مشرف الدین (پیدائش 585 یا 606، وفات 691 ہجری قمری)
  28. سعدی، بوستان، ص36۔
  29. جلال الدین محمد بلخی معروف بہ مولوی و مولانا و رومی و مولانا روم (‎ولادت ‌الاول 604، وفات 672 ہجری قمری)
  30. احادیث مثنوی، ط تہران، 1334ہجری شمسی۔
  31. ابوالشیخ اصفہانی، عبداللہ، الامثال، ص21۔
  32. دہخدا، امثال و حِکَم، ج1 صص252، 480۔
  33. دہخدا، وہی ماخذ، ص279۔
  34. ابن ‏حبان، کتاب المجروحین، ج12 ص294۔
  35. حاجی خلیفہ، کشف الظنون، ج1 ص51۔
  36. ‏اخباری، محمد، البرہان فی التکلیف و البیان، پوری کتاب۔
  37. اصفہانی، ابواب الہدی، پوری کتاب۔
  38. کلینی، الکافی، ج2 ص630۔
  39. ابن بابویہ، معانی الاخبار، صص189-190۔
  40. اصفہانی، رسائل شناخت قرآن،، پوری کتاب۔
  41. ط تہران، 1367ہجری شمسی۔
  42. شریعتی، تشیع علوی و تشیع صفوی، ص200۔
  43. شریعتی، وہی ماخذ، صص115-139۔
  44. شریعتی، علی، با مخاطبہای آشنا، ص143۔
  45. شریعتی، وہی ماخذ، ص195۔
  46. ‏شوشتری، محمدتقی، الاخبار الدخیلۃ، صص1و2۔
  47. ‏‏شوشتری، بہج الصباغۃ، ج1 صص 19- 22۔
  48. Ignác (Yitzhaq Yehuda) Goldziher (22 June 1850 – 13 November 1921۔
  49. گولڈزیہر، مطالعات اسلامی، پوری کتاب۔
  50. Joseph Franz Schacht, Born: March 15, 1902, Racibórz, Poland, Died: August 1, 1969, Englewood, New Jersey, United States۔
  51. ‏بہاءالدین، محمد، المستشرقون والحدیث النبوی، پوری کتاب۔
  52. آیت اللہ سید حسین طباطبائی بروجردی متوفی سنہ 1380 ہجری، چودہویں صدی کے نامی گرامی مراجع تقلید میں سے تھے۔ 17 سال تک حوزہ علمیہ قم کے زعیم رہے اور پندرہ سال تک شیعیان عالم کے مرجع تقلید۔
  53. ‏بروجردی، حسین و دیگران، جامع احادیث الشیعۃ، دیباچہ ملاحظہ ہو۔
  54. شاکر، احمد محمد، الکتاب و السنۃ یجب ان یکونا مصدر القوانین، ص 22-23۔


مآخذ

  • ‏قرآن کریم۔
  • ‏‏ ‏ ‏‏خطیب بغدادی، الکفایۃ فی علم الروایۃ، بہ کوشش ابو عبداللہ سورتی و ابراہیم حمدی مدنی، مدینہ، المکتبۃ العلمیہ۔
  • ‏ ‏ ‏‏خطیب بغدادی، شرف اصحاب الحدیث، بہ کوشش محمد سعید خطیب اوغلی، آنکارا، 1971عیسوی۔
  • ‏ ‏ابوالفرج‏ اصفہانی،مقاتل الطالبیین، نجف، 1385ہجری قمری/ 1965عیسوی۔
  • ‏‏ ابوعبید قاسم بن سلام، الناسخ و المنسوخ، بہ کوشش برتن، کیمبریج، 1987عیسوی۔
  • ‏ ابوعبید قاسم بن سلام، غریب الحدیث، حیدرآباد دکن، 1384-1387ہجری قمری۔
  • ‏ ‏‏خطیب بغدادی، الجامع لاخلاق الراوی و آداب السامع، بہ کوشش محمود طحان، ریاض، 1403ہجری قمری۔
  • ‏ ‏‏‏‏ذہبی، میزان الاعتدال، بہ کوشش علی محمد بجاوی، بیروت، 1382ہجری قمری/1963عیسوی۔
  • ‏ طوسی، العدۃ فی اصول الفقہ، بہ کوشش محمدرضا انصاری، قم، 1376ہجری شمسی۔
  • ‏‏ ‏‏طوسی، الفہرست، بہ کوشش محمد صادق آل بحرالعلوم، نجف، 1380ہجری قمری/1960عیسوی۔
  • ‏ «‌الفقہ الاکبر (1) »، ضمن «‌شرح الفقہ الاکبر »، منسوب بہ ابو منصور ماتریدی، الرسائل السبعۃ فی العقائد، حیدرآباد دکن، 1400ہجری قمری/1980عیسوی۔
  • ابن رجب، عبدالرحمان، «‌الاستخراج لاحکام الخراج »، ضمن موسوعۃ الخراج، بیروت، دار المعرفہ۔
  • ابن کثیر، «‌اختصار علوم الحدیث »، ہمراہ الباعث الحثیث، بہ کوشش احمد محمد شاکر، بیروت، 1403ہجری قمری/ 1983عیسوی۔
  • ابن کثیر، تفسیر القرآن العظیم، بیروت، 1401ہجری قمری۔
  • ابن نجیم، زین الدین، البحر الرائق، بہ کوشش زکریا عمیرات، بیروت، 1418ہجری قمری۔
  • ابن‏ ابی الحدید، عبدالحمید، شرح نہج البلاغۃ، بہ کوشش محمد ابوالفضل ابراہیم، قاہرہ، 1379ہجری قمری/ 1959عیسوی۔
  • ابن‏ ابی حاتم، الجرح و التعدیل، حیدرآباد دکن، 1371ہجری قمری/1952عیسوی۔
  • ابن‏ ابی حاتم، المراسیل، بہ کوشش شکراللہ قوجانی، بیروت، 1397ہجری قمری۔
  • ابن ‏ابی حاتم، عبدالرحمان، تقدمۃ المعرفۃ لکتاب الجرح و التعدیل، حیدرآباد دکن، 1374ہجری قمری/1952عیسوی۔
  • ابن ‏ابی عاصم، احمد، الزہد، بہ کوشش عبدالعلی عبدالحمید حامد، قاہرہ، 1408ہجری قمری۔
  • ابن‏ اثیر، مبارک، جامع الاصول، بہ کوشش محمد حامد فقی، قاہرہ، 1370ہجری قمری/1950عیسوی۔
  • ابن ‏ادریس، محمد، السرائر، قم، 1410-1411ہجری قمری۔
  • ابن‏ بابویہ، «‌مشیخۃ الفقیہ »، ہمراہ ج4 من لایحضرہ الفقیہ (ہم‍)۔
  • ابن‏ بابویہ، التوحید، بہ کوشش ہاشم حسینی تہرانی، تہران، 1387ہجری قمری/1967عیسوی۔
  • ابن ‏بابویہ، الخصال، بہ کوشش علی اکبر غفاری، قم، 1362ہجری شمسی۔
  • ابن ‏بابویہ، علل الشرائع، نجف، 1385ہجری قمری/1966عیسوی۔
  • ابن ‏بابویہ، عیون اخبار الرضا(ع)، نجف، 1390ہجری قمری/ 1970عیسوی۔
  • ابن‏ بابویہ، محمد، الامالی، قم، 1417ہجری قمری۔
  • ابن ‏بابویہ، معانی الاخبار، بہ کوشش علی اکبر غفاری، قم، 1361ہجری شمسی۔
  • ابن‏ بابویہ، من لا یحضرہ الفقیہ، بہ‏ کوشش‏ علی اکبر غفاری، قم، 1404ہجری قمری۔
  • ابن ‏بلبان، علی، الاحسان فی تقریب صحیح ابن‏حبان، بہ کوشش شعیب ارنؤوط، بیروت، 1408ہجری قمری/ 1988عیسوی۔
  • ابن ‏تیمیہ، احمد، احادیث القصاص، بہ کوشش احمد عبداللہ باجور، قاہرہ، 1413ہجری قمری/1993عیسوی۔
  • ابن ‏تیمیہ، کتب و رسائل و فتاوی، بہ کوشش عبدالرحمان محمدقاسم نجدی، بیروت، مکتبۃ ابن‏تیمیہ‍۔
  • ابن‏ جماعہ، محمد، المنہل الروی، بہ کوشش محیی الدین عبدالرحمان رمضان، دمشق، 1406ہجری قمری/1986عیسوی۔
  • ابن‏ جوزی، الموضوعات، بہ کوشش عبدالرحمان محمد عثمان، مدینہ، 1386ہجری قمری۔
  • ابن ‏جوزی، تلبیس ابلیس، بہ کوشش سید جمیلی، بیروت، 1405ہجری قمری/ 1985عیسوی۔
  • ابن ‏جوزی، صفۃ الصفوۃ، بہ کوشش محمود فاخوری و محمد رواس قلعہ جی، بیروت، 1399ہجری قمری/ 1979عیسوی۔
  • ابن‏ جوزی، عبدالرحمان، آفۃ اصحاب الحدیث، بہ کوشش علی حسینی میلانی، تہران، 1398ہجری قمری۔
  • ابن ‏حبان، کتاب المجروحین، بہ کوشش محمود ابراہیم زاید، حلب، 1396ہجری قمری/ 1976عیسوی۔
  • ابن ‏حبان، محمد، صحیح، بہ کوشش شعیب ارنؤوط، بیروت، 1414ہجری قمری۔
  • ابن‏ حبان، مشاہیر علماء الامصار، بہ کوشش م۔ فلایش ہامر، قاہرہ، 1379ہجری قمری/1959عیسوی۔
  • ابن ‏حجر عسقلانی، «‌الکاف الشاف »، در حاشیۀ الکشاف زمخشری، قاہرہ، 1366ہجری قمری/ 1947عیسوی۔
  • ابن ‏حجر عسقلانی، احمد، الاصابۃ، بہ کوشش علی محمد بجاوی، بیروت، 1412ہجری قمری/1992عیسوی۔
  • ابن‏ حجر عسقلانی، القول المسدد، قاہرہ، 1401ہجری قمری۔
  • ابن ‏حجر عسقلانی، تہذیب التہذیب، حیدرآباد دکن، 1325ہجری قمری۔
  • ابن ‏حجر عسقلانی، فتح الباری، بہ کوشش محمد فؤاد عبدالباقی و محب الدین خطیب، بیروت، 1379ہجری قمری۔
  • ابن ‏حجر عسقلانی، لسان المیزان، حیدرآباد دکن، 1329-1331ہجری قمری۔
  • ابن‏ حزم، جوامع السیرۃ، بہ کوشش احسان عباس و ناصرالدین اسد، قاہرہ، دارالمعارف۔
  • ابن‏ حزم، علی، الاحکام، قاہرہ، 1404ہجری قمری۔
  • ابن‏ خلاد رامہرمزی، حسن، المحدث الفاصل، بہ کوشش محمد عجاج خطیب، بیروت، 1404ہجری قمری۔
  • ابن ‏خیر، محمد، فہرسۃ، بہ کوشش ف۔ کودرا، بغداد، 1963عیسوی۔
  • ابن ‏سعد، محمد، الطبقات الکبری، بیروت، دار صادر۔
  • ابن‏ شاہین، عمر، ناسخ الحدیث و منسوخہ، بہ کوشش سمیر زہیری، زرقاء، 1408ہجری قمری/ 1988عیسوی۔
  • ابن ‏شعبہ، حسن، تحف العقول، بہ کوشش علی اکبر غفاری، تہران، 1376ہجری قمری۔
  • ابن ‏شہرآشوب، محمد، معالم العلماء، نجف، 1380ہجری قمری/1961عیسوی۔
  • ابن ‏شہر آشوب، مناقب آل ابی طالب، قم، چاپخانۀ علمیہ‍۔
  • ابن‏ صلاح، عثمان، علوم‏ الحدیث ]مقدمۃ[، بہ کوشش صلاح عویضہ، بیروت، 1416ہجری قمری۔
  • ابن ‏عبدالبر، التمہید، بہ کوشش مصطفی بن احمد علوی و محمد عبدالکبیر بکری، رباط، 1387ہجری قمری۔
  • ابن‏ عبدالبر، جامع بیان العلم و فضلہ، بیروت، 1398ہجری قمری۔
  • ابن ‏عبدالبر، یوسف، الاستیعاب، بہ کوشش علی محمد بجاوی، بیروت، 1412ہجری قمری۔
  • ابن‏ عبدربہ، احمد، العقد الفرید، بہ کوشش احمد امین و دیگران، بیروت، 1402ہجری قمری/1982عیسوی۔
  • ابن‏ عدی، عبداللہ، الکامل، بہ کوشش یحیی مختار غزاوی، بیروت، 1405ہجری قمری/1985عیسوی۔
  • ابن ‏عربی، محیی الدین، الفتوحات المکیۃ، بولاق، 1293ہجری قمری۔
  • ابن ‏عساکر، علی، تاریخ مدینۃ دمشق، بہ کوشش علی شیری، بیروت/ دمشق، 1415ہجری قمری/ 1995عیسوی۔
  • ابن ‏غضائری، احمد، الرجال، بہ کوشش محمدرضا جلالی، قم، 1422ہجری قمری۔
  • ابن ‏فہد حلی، احمد، عـدۃ الداعی، قـم، 1407ہجری قمری۔
  • ابن‏ فورک، محمد، مشکل الحدیث و بیانہ، بہ کوشش موسی محمدعلی، بیروت، 1405ہجری قمری/ 1985عیسوی۔
  • ابن‏ قبـہ، محمد، بخشہـایی از «‌نقـض الاشہـاد »، ضمن کمال الدین ابن‏بابویہ، بہ کوشش علی اکبر غفاری، تہران، 1390ہجری قمری۔
  • ابن ‏قتیبہ، المعارف، بہ کوشش ثروت عکاشہ، قاہرہ، 1960عیسوی۔
  • ابن ‏قتیبہ، عبداللہ، تأویل مختلف الحدیث، بہ کوشش محمد زہری نجار، بیروت، 1393ہجری قمری/1973عیسوی۔
  • ابن ‏قیسرانی، محمد، تذکرۃ الموضوعات، قاہرہ، 1323ہجری قمری۔
  • ابن ‏ماجہ، محمد، سنن، بہ کوشش محمد فؤاد عبدالباقی، قاہرہ، 1952-1953عیسوی۔
  • ابن‏ مجاہد، احمد، السبعۃ، بہ کوشش شوقی ضیف، قاہرہ، 1972عیسوی۔
  • ابن ‏مدینی، علی، العلل، بہ کوشش محمد مصطفی اعظمی، بیروت، 1980عیسوی۔
  • ابن ‏مہران، احمد، المبسوط، بہ کوشش سبیع حمزہ حاکمی، دمشق، 1407ہجری قمری/1986عیسوی۔
  • ابن ‏ندیم، الفہرست۔
  • ابن‏ نقطہ، محمد، التقیید، حیدرآباد دکن، 1403-1404ہجری قمری/ 1983-1984عیسوی۔
  • ابن ‏ہمام، محمد، فتح القدیر، قاہرہ، 1319ہجری قمری۔
  • ابو ریہ، شیخ المضیرۃ ابوہریرۃ، قاہرہ، دارالمعارف۔
  • ابو ریہ، محمود، اضواء علی السنۃ المحمدیۃ، قاہرہ، 1994عیسوی۔
  • ابواحمد عسکری، حسن، اخبار المصحفین، بہ کوشش صبحی بدری سامرایی، بیروت، 1406ہجری قمری۔
  • ابواسحاق شیرازی، ابراہیم، التبصرۃ، بہ کوشش محمدحسن ہیتو، دمشق، 1403ہجری قمری/1983عیسوی۔
  • ابوالشیخ اصفہانی، عبداللہ، الامثال، بہ کوشش عبدالعلی عبدالحمید، بمبئی، 1402ہجری قمری۔
  • ‏ابو الفرج‏ اصفہانی، علی، الاغانی، قاہرہ، 1371ہجری قمری/1952عیسوی۔
  • ‏ابوالقاسم کوفی، علی، الاستغاثۃ فی بدع الثلاثۃ، نجف، 1368ہجری قمری۔
  • ابوداوود سجستانی، سلیمان، سنن، بہ کوشش محمد محیی الدین عبدالحمید، قاہرہ، 1369ہجری قمری۔
  • ابوداوود سجستانی، مسائل احمد، قاہرہ، 1353ہجری قمری/1934عیسوی۔
  • ابوزرعۀ دمشقی، عبدالرحمان، تاریخ، بہ کوشش شکراللہ قوجانی، دمشق، 1400ہجری قمری/1980عیسوی۔
  • ابوزہو، محمد، الحدیث و المحدثون، ریاض، 1404ہجری قمری/1984عیسوی۔
  • ابوشہبہ، دفاع عن السنۃ، قاہرہ، 1406ہجری قمری/ 1985عیسوی۔
  • ابوشہبہ، محمد، الاسرائیلیات و الموضوعات، مکتبۃ السنۃ، 1391ہجری قمری/1971عیسوی۔
  • ابوطالب ہارونی، یحیی، الامالی (تیسیر المطالب)، تحریر جعفر بن احمد بن عبدالسلام، بہ کوشش یحیی عبدالکریم فضیل، بیروت، 1395ہجری قمری/ 1975عیسوی۔
  • ابوعبید قاسم بن سلام، الاموال، بہ کوشش عبدالامیر علی مہنا، بیروت، 1988عیسوی۔
  • ‏ابولیث سمرقندی، نصر، تفسیر، بہ کوشش عبدالرحیم احمد زقہ، بغداد، 1405-1406ہجری قمری/1985-1986عیسوی۔
  • ‏ابوموسی مدینی، محمد، طوال الاخبار، نسخۀ خطی موجود در ظاہریۀ دمشق، شم‍ 798‘ 3 (عام)۔
  • ‏ابو نعیم اصفہانی، احمد، حلیۃ الاولیاء، قاہرہ، 1351ہجری قمری/1932عیسوی۔
  • ‏‏ابو نعیم اصفہانی، ذکر اخبار اصبہان، بہ کوشش ددرینگ، لیدن، 1934عیسوی۔
  • ‏ابوہلال عسکری، حسن، الفروق اللغویۃ، بہ کوشش محمد ابراہیم سلیم، قاہرہ، 1418ہجری قمری/1997عیسوی۔
  • ‏‏ابویوسف، الرد علی سیر الاوزاعی، بہ کوشش ابوالوفا افغانی، قاہرہ، 1357ہجری قمری۔
  • ‏ابویوسف، یعقوب، الآثار، بہ کوشش ابوالوفا افغانی، قاہرہ، 1355ہجری قمری۔
  • ‏احمد بن حنبل، العلل و معرفۃ الرجال، بہ کوشش وصی اللہ عباس، بیروت، 1408ہجری قمری/ 1988عیسوی۔
  • ‏‏احمد بن حنبل، مسند، قاہرہ، 1313ہجری قمری۔
  • ‏احمد بن عیسی، الامالی (رأب الصدع)، تدوین محمد بن منصور، بہ کوشش علی بن اسماعیل صنعانی، بیروت، 1410ہجری قمری/ 1990عیسوی۔
  • ‏اخباری، محمد، البرہان فی التکلیف و البیان، بغداد، 1341ہجری قمری۔
  • ‏اربلی، علی، کشف الغمۃ، بیروت، 1405ہجری قمری/ 1985عیسوی۔
  • ‏اردبیلی، محمد، جامع الرواۃ، بیروت، 1403ہجری قمری/1983عیسوی۔
  • ‏اسحاق بن راہویہ، مسند، بہ کوشش عبدالغفور بن عبدالحق بلوشی، مدینہ، 1412ہجری قمری/1992عیسوی۔
  • ‏اسعد، طارق اسعد، علم اسباب ورود الحدیث، بیروت، 1422ہجری قمری/2001عیسوی۔
  • ‏اصفہانی، مہدی، ابواب الہدی، بہ کوشش حسین مفید، تہران، 1387ہجری شمسی۔
  • ‏‏اصفہانی، مہدی، رسائل شناخت قرآن، بہ کوشش حسین مفید، تہران، 1388ہجری شمسی۔
  • آقابزرگ، الذریعۃ۔
  • ‏الاختصاص، منسوب بہ مفید، بہ کوشش علی اکبر غفاری، قم، 1413ہجری قمری۔
  • ‏الاصول الستۃ عشر، قم، 1405ہجری قمری۔
  • ‏الایضاح، منتسب بہ فضل بن شاذان، بـہ کـوشش جلال الدین محدث ارمـوی، تہران، 1347ہجری شمسی۔
  • ‏البانی، محمد ناصرالدین، ضعیف سنن الترمذی، بہ کوشش زہیر شاویش، ریاض، 1411ہجری قمری/1991عیسوی۔
  • ‏التفسیر، منسوب بہ امام حسن عسکری(ع)، بہ کوشش مدرسۀ امام مہدی(ع)، قم، 1409ہجری قمری۔
  • ‏امین استرابادی، محمد، الفوائد المدنیۃ، بہ کوشش رحمت اللہ رحمتی، قم، 1424ہجری قمری۔
  • ‏امینی، عبدالحسین، الغدیر، بیروت، 1387ہجری قمری۔
  • ‏انصاری، زکریا، الحدود الانیقۃ، بہ کوشش مازن مبارک، بیروت، 1411ہجری قمری۔
  • ‏بـاعونی، محمد، جـواہر لمطالب فی مناقب علی بن ابی طالب(ع)، بہ کوشش محمدباقر محمودی، قم، 1415ہجری قمری۔
  • ‏‏بخاری، صحیح، بہ کوشش مصطفی دیب البغا، بیروت، 1407ہجری قمری/1987عیسوی۔
  • ‏بخاری، محمد، التاریخ الکبیر، حیدرآباد دکن، 1398ہجری قمری/ 1978عیسوی۔
  • برقی، احمد، المحاسن، بہ کوشش جلال الدین محدث ارموی، تہران، 1331ہجری شمسی۔
  • ‏بروجردی، حسین و دیگران، جامع احادیث الشیعۃ، قم، 1399ہجری قمری۔
  • ‏بزار، احمد، المسند، بہ کوشش محفوظ الرحمان زین اللہ، بیروت/ مدینہ، 1409ہجری قمری۔
  • ‏بلاذری، احمد، فتوح البلدان، بہ کوشش رضوان محمد رضوان، بیروت، 1398ہجری قمری/ 1978عیسوی۔
  • ‏بہاءالدین، محمد، المستشرقون والحدیث النبوی، عمان، 1420ہجری قمری/ 1999عیسوی۔
  • ‏بیہقی، احمد، المدخل الی السنن الکبری، بہ کوشش محمد ضیاءالرحمان اعظمی، کویت، 1404ہجری قمری۔
  • ‏‏بیہقی، السنن الکبری، بہ کوشش محمد عبدالقادر عطا، مکہ، 1414ہجری قمری/1994عیسوی۔
  • ‏‏‏بیہقی، معرفۃ السنن و الآثار، بہ کوشش عبدالمعطی امین قلعجی، قاہرہ، 1412ہجری قمری/1991عیسوی۔
  • ‏‏‏‏بیہقی، مناقب الشافعی، بہ کوشش احمد صقر، قاہرہ، 1970عیسوی۔
  • ‏‏‏پاکتچی، «‌ویژگیہای ردہ بندی موضوعیبحار الانوار و فرایند شکل گیری آن »، یادنامۀ مجلسی، بہ کوشش مہریزی و ربانی، تہران، 1379ش، ج1۔
  • ‏پاکتچی، احمد، طرح تحقیق اسناد نہج البلاغہ، مقالات نہمین کنگرۀ بین المللی نہج البلاغہ، شم‍ 23۔
  • ‏‏پاکتچی، مکاتب فقہ امامی ایران پس از شیخ طوسی تا پای گیری مکتب حلہ، تہران، 1385ہجری شمسی۔
  • ‏ترمذی، محمد، سنن، بہ کوشش احمد محمد شاکر و دیگران، قاہرہ، 1357ہجری قمری/ 1938م بب‍۔
  • ‏تفتازانی، مسعود، المطول، استانبول، 1330ہجری قمری۔
  • ‏جاحظ، عمرو، البیان و التبیین، بہ کوشش فوزی عطوی، بیروت، 1968عیسوی۔
  • ‏جورقانی، حسین، الاباطیل و المناکیر، بہ کوشش فریوایی، ریاض، 1422ہجری قمری/ 2002عیسوی۔
  • ‏جوزجانی، ابراہیم، احوال الرجال، بہ کوشش صبحی بدری سامرایی، بیروت، 1405ہجری قمری۔
  • مصطفی بن عبداللہ معروف بہ کاتب چلبی یا حاجی خلیفہ، کشف الظنون۔
  • ‏حازمی، محمد، «‌شروط الائمۃ الخمسۃ »، ہمراہ شروط الائمۃ الستۃ ابن‏قیسرانی، بہ کوشش طاہر سعود، بیروت، 1408ہجری قمری/ 1988عیسوی۔
  • ‏حاکم نیشابوری، محمد، المستدرک علی الصحیحین، بہ کوشش مصطفی عبدالقادر عطا، بیروت، 1411ہجری قمری/1990عیسوی۔
  • ‏‏حاکم نیشابوری، معرفۃ علوم الحدیث، بہ کوشش معظم حسین، مدینہ، 1397ہجری قمری/1977عیسوی۔
  • ‏حسین بن عبدالصمد عاملی، وصول الاخیار الی اصول الاخبار، قم، 1401ہجری قمری۔
  • ‏حسینی اشکوری، احمد، مؤلفات الزیدیۃ، قم، 1413ہجری قمری۔
  • ‏حسینی خطیب، عبدالزہراء، مصادر نہج البلاغۃ و اسانیدہ، بیروت، 1405ہجری قمری/1985عیسوی۔
  • ‏حصنی دمشقی، ابوبکر، دفع الشبہ عن الرسول(ص)، قاہرہ، 1418ہجری قمری۔
  • ‏حمیری، عبداللہ، قرب الاسناد، بہ کوشش مؤسسۀ آل البیت(ع)، قم، 1413ہجری قمری۔
  • ‏خاقانی، علی، رجال الخاقانی، بہ کوشش محمد صادق بحرالعلوم، قم، 1404ہجری قمری۔
  • ‏خطیب بغدادی، احمد، تاریخ بغداد، قاہرہ، 1349ہجری قمری۔
  • ‏‏خطیب بغدادی، تقیید العلم، بہ کوشش یوسف عش، قاہرہ، 1974عیسوی۔
  • ‏خلیلی، خلیل، الارشاد، بہ کوشش محمد سعید عمر ادریس، ریاض، 1409ہجری قمری۔
  • ‏خوارزمی، محمد، جامع مسانید ابی حنیفۃ، حیدرآباد دکن، 1332ہجری قمری۔
  • ‏خویی، ابوالقاسم، مصباح الفقاہۃ (تقریرات)، بہ قلم محمدعلی توحید تبریزی، قم، 1377ہجری شمسی۔
  • ‏دارمی، عبداللہ، سنن، بہ کوشش فواز احمد زمرلی و خالد سبع علمی، بیروت، 1407ہجری قمری۔
  • ‏دہخدا، امثال و حکم، تہران، 1352ہجری شمسی۔
  • ‏دیلمی، شیرویہ، الفردوس الاخبار بمأثورالخطاب، بہ کوشش سعید بسیونی زغلول، بیروت، 1986عیسوی۔
  • ‏‏‏ذہبی، «‌تلخیص المستدرک »، ہمراہ المستدرک حاکم نیشابوری، حیدرآباد دکن، 1334ہجری قمری۔
  • ‏‏ذہبی، تذکرۃ الحفاظ، حیدرآباد دکن، 1388ہجری قمری/ 1968عیسوی۔
  • ‏‏‏‏ذہبی، سیر اعلام النبلاء، بہ کوشش شعیب ارنؤوط و دیگران، بیروت، 1405ہجری قمری/1985عیسوی۔
  • ‏ذہبی، محمد، تاریخ الاسلام، بہ کوشش عمر عبدالسلام تدمری، بیروت، 1407ہجری قمری/1987عیسوی۔
  • ‏ذہبی، محمدحسین، الاسرائیلیات فی التفسیر و الحدیث، قاہرہ، مکتبۃ وہبہ‍۔
  • ‏رافعی‏، عبدالکریم، التدوین فی اخبار قزوین‏، حیدرآباد دکن، 1985عیسوی۔
  • ‏زیلعی، عبداللہ، تخریج الاحادیث و الآثار، بہ کوشش عبداللہ بن عبدالرحمان سعد، ریاض، 1414ہجری قمری۔
  • ‏سبط ابن‏عجمی، ابـراہیم، الکشف الحثیث، بـہ کوشش صبحی سامرایی، بیروت، 1407ہجری قمری/1987عیسوی۔
  • ‏سبکی، عبدالوہاب، طبقات الشافعیۃ الکبری، بہ کوشش محمود محمد طناحی و عبدالفتاح محمد حلو، قاہرہ، 1383ہجری قمری/1964عیسوی۔
  • ‏‏سخاوی، المقاصد الحسنۃ، بہ کوشش عبداللہ محمد صدیق، بیروت، 1399ہجری قمری/ 1979عیسوی۔
  • ‏سخاوی، محمد، الاعلان بالتوبیخ، بہ کوشش فرانتس روزنتال، بیروت، 1403ہجری قمری/1983عیسوی۔
  • ‏سعد بن عبداللہ اشعری، المقالات و الفرق، بہ کوشش محمدجواد مشکور، تہران، 1361ہجری شمسی۔
  • ‏سعدی، بوستان، بہ کوشش غلامحسین یوسفی، تہران، 1384ہجری شمسی۔
  • ‏سلفی، احمد، معجم السفر، بہ کوشش عبداللہ عمر بارودی، مکہ، المکتبۃ التجاریہ‍۔
  • ‏سلمی، محمد، طبقات الصوفیۃ، بہ کوشش یوہانس پدرسن، لیدن، 1960عیسوی۔
  • ‏سمعانی، عبدالکریم، ادب الاملاء و الاستملاء، بہ کوشش ماکس وایسوایلر، بیروت، 1401ہجری قمری/ 1981عیسوی۔
  • ‏سنایی، دیوان، بہ کوشش مدرس رضوی، تہران، 1341ہجری شمسی۔
  • ‏سہمی، حمزہ، تاریخ جرجان، بہ کوشش محمد عبدالمعید خان، بیروت، 1407ہجری قمری/1987عیسوی۔
  • ‏سید مرتضی، علی، تنزیہ الانبیاء، بیروت، 1409ہجری قمری/ 1989عیسوی۔
  • ‏سیوطی، الاتقان، بہ کوشش محمد ابوالفضل ابراہیم، قاہرہ، 1387ہجری قمری/ 1967عیسوی۔
  • ‏‏سیوطی، الاقتراح، بہ کوشش محمود سلیمان یاقوت، طنطا، 1426ہجری قمری/ 2006عیسوی۔
  • ‏‏‏‏سیوطی، الدیباج، بہ کوشش ابواسحاق حوینی، الخبر، 1416ہجری قمری/ 1996عیسوی۔
  • ‏‏‏‏‏سیوطی، اللآلی المصنوعۃ، بیروت، دارالمعرفہ‍۔
  • ‏‏‏سیوطی، تدریب الراوی، بہ کوشش عبدالوہاب عبداللطیف، قاہرہ، 1385ہجری قمری/ 1966عیسوی۔
  • ‏‏شافعی، الرسالۃ، بہ کوشش احمد محمد شاکر، قاہرہ، 1358ہجری قمری/ 1939عیسوی۔
  • ‏شافعی، محمد، اختلاف الحدیث، بہ کوشش محمد احمد عبدالعزیز، بیروت، 1406ہجری قمری/1986عیسوی۔
  • ‏شاکر، احمد محمد، الکتاب و السنۃ یجب ان یکونا مصدر القوانین، قاہرہ، 1363ہجری قمری۔
  • ‏‏شریعتی، تشیع علوی و تشیع صفوی، تہران، 1356ہجری شمسی۔
  • ‏شریعتی، علی، با مخاطبہای آشنا، تہران، 1356ہجری شمسی۔
  • ‏‏شہید ثانی، الرعایۃ، بہ کوشش عبدالحسین محمدعلی بقال، قم، 1408ہجری قمری۔
  • ‏شہید ثانی، زین الدین، «‌رسالۃ فی میراث الزوجۃ »، رسائل، تہران، 1313ہجری قمری۔
  • ‏‏شوشتری، بہج الصباغۃ، بہ کوشش احمد پاکتچی، تہران، 1401ہجری قمری۔
  • ‏شوشتری، محمدتقی، الاخبار الدخیلۃ، تہران، 1401ہجری قمری۔
  • ‏شوکانی، محمد، نیل الاوطار، بیروت، 1973عیسوی۔
  • ‏شیبانی، محمد، الآثار، بہ کوشش ابوالوفا افغانی، بیروت، 1413ہجری قمری/1993عیسوی۔
  • ‏صالح، صبحی، علوم الحدیث و مصطلحہ، دمشق، 1986عیسوی۔
  • ‏صالحی شامی، محمد، سبل الہدی و الرشاد، بہ کوشش عادل احمد عبدالموجود و علی محمد معوض، بیروت، 1414ہجری قمری/1993عیسوی۔
  • ‏صحیفۃ الرضا(ع)، بہ روایت ابوالقاسم طائی، بہ کوشش مدرسۀ امام مہدی(ع)، قم، 1408ہجری قمری۔
  • ‏صدر، حسن، نہایۃ الدرایۃ، بہ کوشش ماجد غرباوی، قم، 1413ہجری قمری۔
  • ‏صفار، محمد، بصائر الدرجات، تہران، 1404ہجری قمری۔
  • ‏صنعانی، عبدالرزاق، المصنف، بہ کوشش حبیب الرحمان اعظمی، بیروت، 1403ہجری قمری/1983عیسوی۔
  • ‏‏طبرانی، المعجم الکبیر، بہ کوشش حمدی بن عبدالمجید سلفی، موصل، 1404ہجری قمری/1983عیسوی۔
  • ‏طبرانی، سلیمان، المعجم الاوسط، بہ کوشش طارق بن عوض اللہ و عبدالمحسن بن ابراہیم حسینی، قاہرہ، 1415ہجری قمری۔
  • ‏طبرسی، احمد، الاحتجاج، بہ کوشش محمدباقر موسوی خرسان، نجف، 1386ہجری قمری/1966عیسوی۔
  • ‏طبری، تاریخ۔
  • ‏‏طبری، تفسیر، بیروت، دارالفکر، 1405ہجری قمری۔
  • ‏طحاوی، احمد، شرح معانی الآثار، بہ کوشش نجار و جاد الحق، بیروت، 1414ہجری قمری/1994عیسوی۔
  • ‏‏شیخ طوسی، رجال، بہ کوشش محمدصادق آل بحرالعلوم، نجف، 1381ہجری قمری/1961عیسوی۔
  • شیخ ‏طوسی، محمد، تہذیب الاحکام، بہ کوشش حسن موسوی خرسان، تہران، 1364ہجری شمسی۔
  • ‏عبداللہ بن احمد، مسائل احمد، بہ کوشش زہیر شاویش، بیروت، 1408ہجری قمری/ 1988عیسوی۔
  • ‏عجلونی، اسماعیل، کشف الخفاء، بہ کوشش احمد قلاش، بیروت، 1405ہجری قمری۔
  • ‏عراقی، عبدالرحیم، الفیۃ العراقی، بہ کوشش غریاطی، ریاض، 1418ہجری قمری۔
  • ‏‏عراقی، عبدالرحیم، تخریج احادیث احیاء علوم الدین، بہ کوشش اشرف بن عبدالمقصود، ریاض، 1415ہجری قمری/1995عیسوی۔
  • ‏‏‏عراقی، عبدالرحیم، شرح التبصرۃ و التذکرۃ، بہ کوشش محمد بن حسین عراقی، بیروت، دارالکتب العلمیہ۔
  • ‏عسکری، مرتضی، احادیث ام المؤمنین عائشۃ، تہران، 1414ہجری قمری۔
  • ‏عقیلی، محمد، کتاب الضعفاء الکبیر، بہ کوشش عبدالمعطی امین قلعجی، بیروت، 1404ہجری قمری/1994عیسوی۔
  • ‏علامۀ حلی، حسن، رجال، نجف، 1381ہجری قمری/1961عیسوی۔
  • ‏‏علامہ حلی، کشف المراد فی شرح تجرید الاعتقاد، بہ کوشش ابراہیم موسوی زنجانی، قم، 1373ہجری شمسی۔
  • ‏عماری، احمد عبداللہ، مقدمہ بر اعـلام العالم ابن‏جوزی، پـایان نامۀ دانشگاہ ملک عبدالعزیز مکہ، 1397- 1398ہجری قمری۔
  • ‏عیاشی، محمد، التفسیر، قم، 1421ہجری قمری۔
  • ‏غزالی، محمد، احیاء علوم الدین، قاہرہ، دار الشعب۔
  • ‏فارسی، عبدالغافر، سیاق تاریخ نیسابور، انتخاب صریفینی، بہ کوشش محمدکاظم محمودی، قم، 1403ہجری قمری۔
  • ‏فاکہی، محمد، اخبار مکۃ، بہ کوشش عبدالملک عبداللہ دہیش، بیروت، 1414ہجری قمری۔
  • ‏فتنی، محمدطاہر، تذکرۃ الموضوعات، 1342ق* ‏فرات کوفی، تفسیر، نجف، 1354ہجری قمری۔
  • فروزانفر، بدیع الزمان، احادیث و قصص مثنوی: (دو کتابوں ـ "احادیث مثنوی" و مآخذ قصص و تمثیلات مثنوی" کا مجموعہ) کتابخانہ دانشگاہ صنعتی شریف۔
  • ‏فضلی، عبدالہادی، اصول الحدیث، مؤسسۃ ام القری، 1416ہجری قمری۔
  • ‏قاری، ملاعلی، المصنوع فی معرفۃ الحدیث الموضوع، بہ کوشش عبدالفتاح ابوغدہ، بیروت، 1414ہجری قمری/1994عیسوی۔
  • ‏قاسمی، محمد، قواعد التحدیث، بہ کوشش محمد بہجت بیطار، قاہرہ، 1380ہجری قمری/1961عیسوی۔
  • ‏قاضی عبدالجبار، «‌فضل الاعتزال »، فضل الاعتزال و طبقات المعتزلۃ، بہ کوشش فؤاد سید، تونس، 1393ہجری قمری/1974عیسوی۔
  • ‏قاضی عیاض، الشفاء، بیروت، 1409ہجری قمری/ 1988عیسوی۔
  • ‏قاضی قضاعی، محمد، مسند الشہاب، بہ کوشش حمدی سلفی، بیروت، 1405ہجری قمری/ 1985عیسوی۔
  • ‏قرطبی، محمد، الجامع لاحکام القرآن، بہ کوشش احمد عبدالعلیم بردونی، قاہرہ، 1972عیسوی۔
  • ‏قریب، بدرالزمان، فرہنگ سغدی، تہران، 1374ہجری شمسی۔
  • ‏قیصری، محمد داوود، شرح فصوص الحکم، بہ کوشش جلال الدین آشتیانی، تہران، 1375ہجری شمسی۔
  • ‏کتانی، محمد، الرسالۃ‏ المستطرفۃ، بہ کوشش زمزمی، بیروت، 1406ہجری قمری/1986عیسوی۔

‏* ‏کشی، محمد، معرفۃ الرجال، اختیار طوسی، بہ کوشش حسن مصطفوی، مشہد، 1348ہجری شمسی۔

  • کلینی، محمد، الکافی، بہ کوشش علی اکبر غفاری، تہران، 1391ہجری قمری۔
  • ‏‏لالکایی، کرامات الاولیاء، بہ کوشش احمد سعد حمان، ریاض، 1412ہجری قمری۔
  • ‏لالکایی، ہبۃ اللہ، شرح اصول اعتقاد اہل السنۃ و الجماعۃ، ریاض، 1402ہجری قمری۔
  • ‏مالک بن انس، «‌رسالۃ الی لیث بن سعد »، ضمن ج1 ترتیب المدارک قاضی عیاض، بیروت / طرابلس، 1387ہجری قمری/1967عیسوی۔
  • ‏‏مالک بن انس، الموطأ، بہ کوشش محمد فؤاد عبدالباقی، قاہرہ، 1370ہجری قمری/1951عیسوی۔
  • ‏ماوردی، علی، ادب الدنیا والدین، قاہرہ، 1375ہجری قمری/1955عیسوی۔
  • ‏مبارکفوری، محمد عبدالرحمان، تحفۃ الاحوذی، بیروت، دارالکتب العلمیہ۔
  • ‏مبرد، محمد، الکامل، بہ کوشش محمد احمد دالی، بیروت، 1406ہجری قمری/1986عیسوی۔
  • محمد باقر مجلسی، محمد باقر، بحار الانوار، بیروت، 1403ہجری قمری/1983عیسوی۔
  • ‏محب الدین طبری، احمد، الریاض النضرۃ فی مناقب العشرۃ، بہ کوشش عیسی حمیری، بیروت، 1996عیسوی۔
  • ‏‏محقق حلی، المعتبر، بہ کوشش ناصر مکارم شیرازی و دیگران، قم، 1364ہجری شمسی۔
  • ‏محقق حلی، جعفر، معارج الاصول، بہ کوشش محمدحسین رضوی، قم، 1403ہجری قمری۔
  • ‏مروزی، محمد، اختلاف العلماء، بہ کوشش صبحی سامرایی، بیروت، 1406ہجری قمری/1986عیسوی۔
  • ‏مسعودی، علی، مروج الذہب، بہ کوشش یوسف اسعد داغر، بیروت، 1385ہجری قمری/1965عیسوی۔
  • ‏مسلم بن حجاج، صحیح، بہ کوشش محمد فؤاد عبدالباقی، قاہرہ، 1955-1956عیسوی۔
  • ‏معزی، محمد، دیوان، بہ کوشش عباس اقبال آشتیانی، تہران، 1318ہجری شمسی۔
  • ‏معمر بن راشد، «‌الجامع »، ہمراہ ج11 المصنف صنعانی (نک‍: ہم‍، صنعانی)۔
  • مفید، محمد، اوائل المقالات، بہ کوشش ابراہیم انصاری، قم، 1414ہجری قمری/1993عیسوی۔
  • ‏ملیباری، حمزہ، عبقریۃ الامام مسلم فی ترتیب احادیث مسندہ الصحیح، بیروت، 1418ہجری قمری/ 1997عیسوی۔
  • ‏منتجب الدین، علی، فہرست، بہ کوشش عبدالعزیز طباطبایی، قم، 1404ہجری قمری۔
  • ‏نجاشی، احمد، رجال، بہ‏ کوشش‏ موسی‏ شبیری‏ زنجانی، قم، 1407ہجری قمری۔
  • ‏نعناعہ، رمزی، الاسرائیلیات و اثرہا فی کتب التفسیر، دمشق/ بیروت، 1390ہجری قمری/1970عیسوی۔
  • نہج البلاغہ۔
  • ‏‏‏نووی، المجموع، بہ کوشش محمود مطرحی، بیروت، 1417ہجری قمری/1996عیسوی۔
  • ‏‏نووی ‏، شرح علی صحیح مسلم، بیروت، 1392ہجری قمری۔
  • ‏نووی، یحیی، تہذیب الاسماء و اللغات، قاہرہ، 1927عیسوی۔
  • ‏نویری، احمد، نہایۃ الارب، بہ کوشش مفید قمیحہ و دیگران، بیروت، 1424ہجری قمری/2004عیسوی۔
  • ‏وجیہ، عبدالسلام، اعلام المؤلفین الزیدیۃ، عمان، 1420ہجری قمری/ 1999عیسوی۔
  • ‏وکیع، محمد، اخبار القضاۃ، بیروت، عالم الکتب۔
  • ‏یحیی بن معین، تاریخ، روایت دوری، بہ کوشش احمد محمود نور سیف، مکہ، 1399ہجری قمری/ 1979عیسوی۔
  • ‏یعقوبی، احمد، التاریخ، بیروت، 1379ہجری قمری/1960عیسوی۔
  • ‏یغموری، یوسف، نور القبس المختصر من المقتبس، بہ کوشش رودلف زلہایم، ویسبادن، 1384ہجری قمری/1964عیسوی۔

لاطینی مآخذ

  • Arberry, A. , The Chester Beatty Library: A Handlist of the Arabic Manuscripts, Dublin, 1955-1964.
  • Brun, S. J. , Dictionarium syriaco- latinum, Beirut, 1895.
  • Chong, P. D. , Ural-Altaic Etymological Wordlist, 1998.
  • GAS؛ Gesenius, W. , A Hebrew and English Lexicon of the Old Testament, tr. E. Robinson, ed. F. Brown et al. , Oxford, 1955.
  • Goldziher, I. , Vorlesungen über den Islam, Heidelberg, 1910.
  • Grujic, B. , Rečnik engelsko- srpskohrvatski, Belgrad etc. , 1976.
  • Haghighi, M. ,»Fundamentalism as Post-Modernism: An Iranian Case-Study«, Jusur, 1996, vol. XII.
  • Harnack, A. , History of Dogma, tr. N. Buchanan, Boston, 1901.
  • Hjelmslev, L. , Principes de grammaire générale, Copenhagen, 1928.
  • Horovitz, J. , »Alter und Ursprung des Isnād«, Der Islam, 1918, vol. VIII.
  • Jastrow, M. , A Dictionary of the Targumim, the Talmud Badli and Yershalmi, and the Midrashic Literature, London/ New York, 1903.
  • Leslau, W. , Comparative Dictionary of Ge’ez (Classical Ethiopic), Wiesbaden, 1991.
  • Liddell, H. G. and R. Scott, A Greek-English Lexicon, Oxford, 1968.
  • Littré, E. , Dictionnaire de la langue française, Paris, 1874.
  • Myrzabekova, K. et al. , Kasachisch- Deutsches Wörterbuch, Almaty, 1992.
  • Neusner, J. , Early Rabbinic Judaism: Historical Studies in Religion, Literature and Art, Leiden, 1975.
  • New Catholic Encyclopedia, Detroit etc. , 2003.
  • Pakatchi, A. , Analiticheskiĭ obzor osnov mistitsizma sheĭkha Nadzhm ad-dina Kubra, Ashkhabad/ Mashad, 2001.
  • id, »The Contribution of Eastern Iranian and Central Asian Scholars to the Compilaton of Hadîths«, History of Civilizations of Central Asia, Paris, 2000, vol. IV(2).
  • Pfeifer, W. , Etymologisches Wörterbuch des Deutschen, München, 1995.
  • Skeat, W. W. , An Etymological Dictionary of the English Language, Oxford, 1963.
  • Strack, H. L. , Introduction to the Talmud and Midrash, Philadelphia, 1931.