روضہ خوانی

ویکی شیعہ سے
(مجلس سے رجوع مکرر)
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
محرم کی عزاداری
تابلوی عصر عاشورا.jpg
واقعات
امام حسینؑ کے نام کوفیوں کے خطوط • حسینی عزیمت، مدینہ سے کربلا تک • واقعۂ عاشورا • واقعۂ عاشورا کی تقویم • روز تاسوعا • روز عاشورا • واقعۂ عاشورا اعداد و شمار کے آئینے میں • شب عاشورا
شخصیات
امام حسینؑ
علی اکبر  • علی اصغر • عباس بن علی • زینب کبری • سکینہ بنت الحسین • فاطمہ بنت امام حسین • مسلم بن عقیل • شہدائے واقعہ کربلا •
مقامات
حرم حسینی • حرم حضرت عباسؑ • تل زینبیہ • قتلگاہ • شریعہ فرات • امام بارگاہ
مواقع
تاسوعا  • عاشورا  • عشرہ محرماربعینعشرہ صفر
مراسمات
زیارت عاشورا • زیارت اربعین • مرثیہ  • نوحہ • تباکی  • تعزیہ • مجلس • زنجیرزنی • ماتم داری  • عَلَم  • سبیل  • جلوس عزا  • شام غریبان • شبیہ تابوت • اربعین کے جلوس

رَوضہ‌ خوانی عزاداری کا ایک طریقہ ہے جس میں امام حسینؑ اور دوسرے معصومین پر آنے والی مصیبتوں کا ذکر کرتے ہیں۔ عزاداری کی مجلسوں کو مجلس روضہ‌ خوانی بھی کہاجاتا ہے۔ ان مراسم میں ذاکر یا مولوی حضرات منبر یا کرسی وغیرہ پر بیٹھ کر متعلقہ معصوم کے مصائب کو مخصوص انداز میں بلند آواز کے ساتھ پڑھتے ہیں۔ شیعوں کی عزاداری کے مجالس میں روضہ اور روضہ خوانی کی تعابیر دسویں صدی ہجری میں کتاب روضۃ الشہداء کے منظر عام پر آنے کے بعد سے رائج ہوئی ہے۔

مفہوم

لغت میں روضہ باغ، بہشت اور گلزار وغیرہ کے معنی میں آتا ہے۔[1] اصطلاح میں امام حسینؑ اور دوسرے معصومینؑ کی مصیبتوں کو ذکر کرنے کو روضہ کہا جاتا ہے۔ روضہ‌ خوان یا ذاکر اس شخص کو کہا جاتا ہے جو روضہ‌ خوانی کرتا ہے۔ امام حسینؑ کی مجلس عزا کو بھی روضہ‌ خوانی کہا جاتا ہے۔[2]

تاریخچہ

شیعوں کی عزاداری کے مجالس میں روضہ اور روضہ خوانی کی تعابیر دسویں صدی ہجری میں کتاب روضۃ الشہداء کے منظر عام پر آنے کے بعد سے رائج ہوئی ہے۔ محدث نوری جس نے لؤلؤ و مرجان نامی کتاب کو روضہ‌ خوان کے شرائط کے بارے میں تحریر کی ہیں،[3] کہتے ہیں: "ملا حسین کاشفی کی کتاب روضہ الشہدا کے منظر عام پر آنے سے پہلے مؤمنین کے اس گروہ[ذاکرین] کے لئے کوئی مخصوص نام نہیں تھا"۔[4]

مرثیہ‌ اور مصائب پڑھنے والے شخص کو روضہ‌ خوان کہنے کی علت یہ ہے کہ گذشتہ زمانے میں مرثیہ خوان یا مصائب پڑھنے والے حضرات کربلا کے مصائب کو روضۃ الشہداءِ نامی کتاب سے پڑھتے تھے۔ چون ذاکرین مصائب کو بعینہ کتاب روضۃ الشہداء سے لوگوں کے لئے بیان کرتے تھے اس مناسب سے ان کو روضہ خوان کہا جانے لگے۔[5] رفتہ رفتہ یہ اصطلاح امام حسینؑ کی ذکر مصیبت کے لئے رائج ہوئی اور متعلقہ شخص یا ذاکر روضہ خوان کے نام سے مشہور ہوا۔[6] محمد ہادی یوسفی غروی روضہ اور روضہ‌ خوانی کی اصطلاح کو فتال نیشابوری (متوفی 508ھ) کی کتاب روضۃ الواعظین کی طرف نسبت دیتے ہیں اور کہتے ہیں کہ چونکہ نوحہ‌ پڑھنے والے ذاکرین کتاب روضۃ الواعظین کو پڑھتے تھے اس لئے ان کو روضہ خوان کہا جاتا تھا۔[7]

آداب و رسوم

روضہ خوانی کی مجلسیں معصومین کی شہادت کے ایام، خاص کر محرم اور صفر میں منعقد ہوتی ہیں۔ یہ مجلسیں امام بارگاہوں، مساجد اور دیگر مذہبی مقامات پر منقد ہوتی ہیں۔[8]ان مجالس میں ذاکر منبر یا کسی کرسی پر بیٹھ کر امام حسینؑ یا دیگر معصومین کے مصائب کو مخصوص انداز میں بلند آواز کے ساتھ پڑھتے ہیں جس سے سامعین میں گریہ و زاری کی کیفیت پیدا ہوتی ہے۔ ذکر مصیبت پڑھنے والوں میں ذاکرین کے ساتھ ساتھ علماء کا نام بھی لیا جا سکتا ہے جو عموما ذکر مصیبت سے پہلے تقریر کرتے ہوئے لوگوں کو وعظ و نصیحت اور معصومین کی سیرت اور اهداف سے آشنا کرتے ہیں اور آخر میں ان ہستیوں پر آنے والے مصائب کا ذکر کرتے ہیں۔[9]

روضہ‌ خوانی کی اکثر مجلسوں میں جہاں خواتین و حضرات دونوں حاضر ہوتے ہیں تو بعض مجالس صرف خواتین کے ساتھ بھی مخصوص ہوا کرتی ہیں۔[10]

شیعہ عقائد کی ترویج

روضہ خوانی کی مجلسیں شیعہ اعتقادات کی تثبیت اور ائمہ معصومینؑ خاص کر شہدائے کربلا کے اہداف کو لوگوں تک پہنچانے میں نہایت اہم کردار ادا کرتی ہیں۔ امام خمینی سید الشہداء امام حسینؑ کی عزاداری کا مقصد مکتب تشیّع کی حفاظت اور اس کی ترویج قرار دیتے ہیں۔[11]

متعلقہ صفحات

حوالہ جات

  1. دہخدا، لغت‌نامہ، ج۸، ص۱۲۳۸۹۔
  2. دہخدا، لغت‌نامہ، ج۸، ص۱۲۳۹۱-۱۲۳۸۹۔
  3. حسینی‌جلالی، فہرس‌التراث، ج۲، ص۲۳۷۔
  4. نوری، لؤلؤ و مرجان، ص۷۸۔
  5. قمی، فوائدالرضویہ، ص۱۴۶؛ آقا بزرگ، الذریعہ، ج۷، ص۹۳۔
  6. قمی، فوائدالرضویہ، ص۱۴۶۔
  7. اعتبارسنجي منابع عاشورا
  8. یاراحمدی، روضہ‌خوانی بہ مثابہ یک نظام نمایشی، ص۱۷۴۔
  9. مستوفی، شرح زندگانی من۔۔، ج۱، ص۲۷۵۔
  10. یاراحمدی، روضہ‌خوانی بہ مثابہ یک نظام نمایشی، ص۱۷۴۔
  11. امام خمینی، صحیفہ نور، ج۸، ص۵۲۶۔


مآخذ