شرح نہج البلاغہ (ابن ابی الحدید)

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
شرح نہج البلاغہ
شرح نهج البلاغه ابن ابی الحدید.jpg
مؤلف: ابن ابی الحدید معتزلی
زبان: عربی
موضوع: شرح نہج البلاغہ


شرح نہج‌ البلاغہ، عربی زبان میں لکھی گئی کتاب ہے جس میں ساتویں صدی ہجری کے اہل سنت عالم دین ابن ابی الحدید نے نہج البلاغہ کی شرح لکھی ہے۔ یہ کتاب نہج البلاغہ پر لکھی جانے والی اہم شروحات میں سے شمار ہوتی ہے۔ شیعہ و سنی مآخذ سے استفادہ کرنے اور کئی پہلو (تاریخی، ادبی اور کلامی) کو مدنظر رکھنا اس کتاب کی خصوصیات میں سے ہے۔

ابن ابی‌ الحدید نے اس کتاب کے مقدمے میں اپنے بعض نظریات کو درج کیا ہے؛ وہ امام علیؑ کو دوسرے تین خلیفوں سے افضل سمجھتے ہیں، لیکن اس کے باوجود اس بات کے قائل ہیں کہ آپ کی خلافت پر پیغمبر اکرمؐ کی طرف سے کوئی نص نہیں ہے۔ وہ اس بات کے بھی قائل ہیں کہ خوارج، اصحاب جمل اور شامی لشکر جنہوں علیؑ کے خلاف جنگ میں شرکت کی، وہ سب جہنمی ہیں۔ نیز اس کتاب میں کچھ ایسے مطالب بھی پائے جاتے ہیں جو شیعہ عقیدے کے ساتھ سازگار نہیں ہیں؛ جو علیؑ کو پہلا امام مانتے ہیں۔ اسی لئے اس کے خلاف بعض کتابیں بھی لکھی گئی ہیں۔

یہ کتاب 20 جزء پر مشتمل ہے جو دو جلد، چار جلد اور 20 جلدوں میں نشر ہوئی ہے۔

مؤلف

تفصیلی مضمون: ابن ابی الحدید

عبد الحمید بن ہبۃ اللہ المعروف ابن ابی ‌الحدید (586-656ھ)،[1] مدائن میں یپدا ہوئے۔[2] ابتدائی تعلیم اپنے آبائی علاقے میں حاصل کی اور وہاں سے اعلی تعلیم کے حصول کے لئے بغداد چلے گئے۔[3]

ابن ابی‌ الحدید فقہی اعتبار سے شافعی،[4] اور عقیدے کے حوالے سے معتزلی تھے۔[5] علم کلام، منطق، تاریخ اور شعر میں آپ کی بعض کتابیں ہیں۔[6] شرح نہج البلاغہ اور قصائد سبع علویات آپ کی تالیفات میں سے ہیں۔ آپ کی زیادہ شہرت، شرحِ نہج البلاغہ کی وجہ سے ہے۔[7] کہا جاتا ہے کہ شرح نہج البلاغہ کے مطالب آپ کے ادبیات، کلام، مبانی اخلاق، تاریخ صدر اسلام اور عربی اشعار پر تسلط کی حکایت کرتی ہیں۔[8]

اجمالی خاکہ

جیسا کہ ابن ابی الحدید نے کتاب شرح نہج البلاغہ کے آخر میں لکھا ہے کہ اس کتاب کو لکھنے میں چار سال آٹھ مہینے لگے ہیں جسے حضرت علیؑ کی خلافت کی مدت کے برابر سمجھتے ہیں۔[9] ابن ابی الحدید نے اس کتاب کی تحریر کا آغاز پہلی رجب 644ھ کو کیا اور 649ھ صفر کے آخر میں اختتام کو پہنچایا۔[10]

ابن ابی‌ الحدید نے شرح نہج‌ البلاغہ کو عباسی حکومت کے شیعہ وزیر ابن علقمی (591-656ھ) کو تقدیم کیا جس کے مقابلے میں نفیس انعامات وصول کیا۔[11]

خصوصیات

شرح ابن ابی‌ الحدید کی بعض خصوصیات مندرجہ ذیل ہیں:

  • شیعہ اور سنی مآخذ سے استفادہ: ابن ابی‌ الحدید نے شرح نہج البلاغہ کی تدوین میں شیعہ اور سنی کتابوں سے استفادہ کیا ہے۔[12] مثال کے طور پر قاضی عبد الجبار معتزلی کے عثمان بن عفان کے دفاعیات میں سید مرتضی کی طرف سے قاضی عبدالجبار کو دیئے جانے والے جوابات کو ذکر کیا ہے۔[13] اور کہا گیا ہے کہ ابی الحدید چونکہ بغداد لائبریری کے انچارج تھے تو ان کے پاس بہت ساری سہولیات تھیں اور دس ہزار جلد کتابوں پر مشتمل ابن علقمی کی لائبریری بھی ان کے دسترس میں تھی۔اسی لئے بعض ایسی کتابوں سے استفادہ کیا ہے جو تیسری صدی ہجری کے مورخ محمد بن جریر طبری کے دسترس میں نہیں تھیں۔[14]
  • جامعیت: شرح ابن ابی‌ الحدید، ادب، کلام، فقہ، اخلاق، تاریخ صدر اسلام، انساب اور عرب کی عام ثقافت کے علوم پر مشتمل ایک انسائکلوپیڈیا سمجھی جاتی ہے۔[15] نہج البلاغہ کے مترجم مہدوی دامغانی کا کہنا ہے کہ اگرچہ اس شرح میں مختلف معلومات ہیں لیکن ادبی، معاشرتی تاریخ اور کلامی پہلو دوسرے پہلووں پر برتری رکھتے ہیں۔[16] اس کتاب میں پیغمبر اکرمؐ کے دور سے سنہ 623ھ یعنی مغلوں کے ہاتھوں سقوط بغداد سے 13 سال پہلے تک کی تاریخ اسلام پر مشتمل ہے۔[17]تقریبا کتاب کا آدھا حصہ پہلی صدی ہجری کے پہلے آدھے حصے کے واقعات اور حالات پر مشتمل ہے[18] اسی طرح اس کتاب میں تقریبا آٹھ ہزار شعر بھی ذکر ہوئے ہیں۔[19] ابن ابی ‌الحدید نے ان لوگوں کا جواب بھی دیا ہے جنہوں نے نہج البلاغ کے سجع اور قافیوں پر اشکال کیا ہے۔[20] اور جن لوگوں نے کہا ہے کہ نہج البلاغہ یا اس کے بعض حصے امام علیؑ سے منسوب نہ ہونے کا کہا ہے اس بات کو رد کیا ہے۔[21] آپ نے امام علیؑ کے کلمات کو ایک بسیط جسم سے تشبیہ دی ہے جس کے مختلف حصے ایک دوسرے سے مختلف ہیں۔[22]
  • مشکل الفاظ کی وضاحت: ابن ابی‌ الحدید شروع میں نہج البلاغہ کا بعض متن «اصل» کے عنوان سے ذکر کرتا ہے پھر «شرح» کے عنوان سے بعض وضاحتیں دیتا ہے۔[23] اور الفاظ کی وضاحت کے ذیل میں مشکل الفاظ کی وضاحت کرتا ہے اور متن کی شرح دی ہے۔[24]
  • مولف کے دور کے حالات کی گزارش: ابن ابی ‌الحدید چونکہ مغولوں کے معاصر تھے،[25] جس کی وجہ سے مغلوں کے ظہور کا آغاز، فتح ما وراء النہر، خراسان، عراق، دیگر علاقوں اور ان کا بغداد پر حملے کا تذکرہ کیا ہے۔[26] اسی وجہ سے ابن ابی الحدید کی شرح نہج‌ البلاغہ تاریخ کے اہم مآخذ میں سے شمار ہوتی ہے۔[27]
  • سید رضی کے حالات زندگی: ابن ابی‌ الحدید نے کتاب کے مقدمے میں امام علیؐ اور سید رضی کا نسب، اور مختصر حالات زندگی بھی ذکر کیا ہے۔[28]

مقدمے میں مولف کے نظریات

ابن ابی‌ الحدید نے شرح نہج البلاغہ پر ایک مقدمہ لکھا ہے جس میں امامت، امام علی کے فضائل، آپ کے مقابلے میں قیام کرنے والے اور خوارج کا ذکر کیا ہے۔[29]

  • امام علیؑ کا خلفاء ثلاثہ پر برتری: ابن ابی الحدید کا کہنا ہے کہ خلفا کی افضلیت کے بارے میں معتزلہ کے ہاں تین نظریات ہیں: بعض نے ابوبکر کو افضل سمجھا ہے اور بعض نے اس مسئلے میں سکوت اختیار کرتے ہوئے اور اپنا نظریہ بیان کرنے سے اجتناب کیا ہے۔[30] بغداد کے معتزلیوں کی پیروی کرتے ہوئے ابن ابی‌ الحدید، امام علیؑ کو باقی خلفاء ثلاثہ سے افضل سمجھتے ہیں؛ کیونکہ ان کے نیک اعمال زیادہ اور نیک صفات بھی زیادہ ہیں۔[31]اس کے باوجود ابن ابی الحدید کا کہنا تھا کہ امام علیؑ کی خلافت پر پیغمبر اکرمؐ کی طرف سے کوئی صریح نص موجود نہیں ہے۔[32]
  • اصحاب جمل کا دوزخی ہونا: ابن ابی الحدید اس بات کا معتقد ہے کہ جنگ جمل کو برپا کرنے والے عائشہ، طلحہ اور زبیر کے علاوہ سب جہنمی ہیں۔ اور ان تینوں نے توبہ کیا تھا۔[33] اسی طرح جنگ صفین میں شام کا لشکر اور خوارج بھی جہنمی ہیں؛ کیونکہ انہوں نے بغاوت کرنے پر اصرار کیا ہے۔[34]
  • امام علی کی نظر، سب سے محکم اور آپ کی تدبیر سب سے زیادہ مناسب: ابن ابی الحدید کی نظر میں امام علیؐ نے عمر بن خطاب کو روم اور ایران کے ساتھ جنگ پر جاتے ہوئے مشورہ دیا[35] اور عثمان کو بھی بعض ایسے نکات بیان کئے جس میں ان کی بہتری تھی، اور اگر ان نکات پر عمل کرتے تو وہ واقعات اور حالات پیش نہ آتے۔[36]
  • امام علیؐ کی دیانت: ابن ابی الحدید کا عقیدہ ہے کہ امام علی اپنے دین پر بہت مقید تھے اور اس کے خلاف کام نہیں کرتے تھے، جبکہ دوسرے خلفاء اپنی مصلحت کے مطابق عمل کرتے تھے؛ خواہ شریعت کے مطابق ہو یا نہ ہو۔ ابن ابی الحدید اس بات کا بھی قائل تھے کہ جو شخص اپنی اجتہاد پر عمل کرتا ہے اور کسی قید و بند کا پابند نہیں تو اس کے دنیوی امور بہتر ہو سکتے ہیں۔[37]

کتابیں

ابن ابی الحدید کی شرح نہج البلاغہ پر نقد، خلاصہ یا ترجمہ کرکے بعض کتابیں لکھی گئی ہیں۔ رضا استادی کے کہنے کے مطابق اس کی شرح، ترجمہ اور حاشیہ نویسی پر 20 کتابیں لکھی گئی ہیں۔[38]

نقد پر مشتمل کتابیں

شیعہ علما میں سے بعض نے ابن ابی الحدید کی شرح نہج البلاغہ پر نقد میں بعض کتابیں لکھی ہیں؛ کیونکہ اس کتاب میں بعض ایسے مطالب پائی جاتی ہیں جو امامت اور تاریخی کچھ مسائل کے بارے میں شیعہ عقیدہ سے سازگار نہیں ہیں۔[39] ان کتابوں میں: شیخ یوسف بحرانی (متوفی 1186ھ) کی کتاب «سلاسل الحدید لتقیید ابن ابی‌ الحدید»،[40] احمد بن طاووس حلی (متوفی 673ھ/1274ء) کی کتاب «الروح فی النقض ما ابرمہ ابن ابی ‌الحدید»، علی بن حسن بلادی بحرانی (متوفی 1340ھ/1922ء) کی کتاب، «الرّد علی ابن ابی‌ الحدید»، شیخ یوسف کوفی کی کتاب «سلاسل الحدید فی الرد علی ابن ابی الحدید»، اور «النقد السدید لشرح الخطبۃ الشقشقیہ لابن ابی‌ الحدید».[41]

ترجمے

شرح نہج ‌البلاغہ کا فارسی میں ترجمہ ہوا ہے؛ ملا شمس‌ الدین بن محمد بن مراد (متوفی 1013ھ) اور نصر اللہ بن فتح ‌اللہ دزفولی نے اس کا فارسی میں ترجمہ کیا ہے۔[42] محمود مہدوی‌ دامغانی‌ کی کتاب «جلوہ‌ تاریخ‌ در شرح‌ نہج‌ البلاغہ‌ ابن‌ ابی‌ الحدید» اس شرح کا ترجمہ اور ترجمہ اور اس پر حاشیہ آٹھ جلدوں میں جبکہ غلام رضا لایق کا ترجمہ اور بیس جلدوں میں نشر ہو چکا ہے۔ اسی طرح حسین طیبیان کی کتاب «امام علی علیہ‌ السلام از دیدگاہ ابن‌ ابی ‌الحدید معتزلی» بھی اسی شرح نہج البلاغہ سے ماخوذ ہے۔[43]

خلاصے

شرح نہج البلاغہ کے خلاصے مندرجہ ذیل ہیں:

  • فخر الدین عبد اللہ المؤید باللہ کی کتاب «العقد النضید المستخرج من شرح ابن ابی‌ الحدید»[44]
  • سلطان محمود طبسی نے بھی اس کتاب کا خلاصہ کیا ہے اور شیخ محمد قنبر علی کاظمی نے اپنی کتاب «التقاط الدرر المنتخب» کو شرح نہج البلاغہ سے استخراج کیا ہے۔[45]

اسی طرح احمد ربیعی کی کتاب «العُذَیق النضید بمصادر ابن ابی‌ الحدید فی شرح نہج‌ البلاغہ» ان منابع اور مآخذ کے بارے میں لکھی گئی ہے جنہیں ابن ابی الحدید نے استفادہ کیا ہے۔[46] اس کتاب میں ابن ابی الحدید کی طرف سے استفادہ شدہ 222 کتابوں کا ذکر ہوا ہے۔[47]

طباعت

شرح ابن ابی‌ الحدید بیس جلدوں میں تالیف ہوئی ہے۔[48] رضا استادی کا کہنا ہے کہ یہ کتاب دو جلد، چار جلد اور بیس جلدوں کی شکل میں اب تک چھپ چکی ہے۔[49] اسی طرح تہران(سنہ1271، 1302-1304ھ)، قاہرہ (1329ھ) اور بیروت (1378ھ) میں چھپ چکی ہے۔[50]

اس کتاب کا ایک نسخہ مشہد میں امام رضاؑ کے حرم کی لائبریری میں موجود ہے[51]جس کے بارے میں یہ احتمال دیا جاتا ہے کہ شاید اس دور میں لکھی گئی ہے جب مولف خود بقید حیات تھے۔[52]

یہ کتاب محمد ابو الفضل کی تصحیح کے ساتھ ابن ابی الحدید کی تقسیم بندی کے مطابق 6460 صفحات پر مشتمل بیس جلدوں میں چھپ چکی ہے۔خطا در حوالہ: Closing </ref> missing for <ref> tag اسی طرح عبد الکریم نمری کی تصحیح کے ساتھ 11 جلدوں میں انتشارات دار الکتب العلمیہ بیروت سے چھپ چکی ہے۔[53]

حوالہ جات

  1. ابن فوطی، مجمع الآداب فی معجم الالقاب، ۱۳۷۴ش، ج۱، ص۲۱۴.
  2. ابن کثیر، البدایہ و النہایہ، ۱۴۰۷ق، ج۱۳، ص۱۹۹.
  3. مہدوی دامغانی، جلوہ تاریخ در شرح نہج‌البلاغہ، ۱۳۷۹ش، مقدمہ مترجم، ص7.
  4. ابن خلکان، وفیات الاعیان، ۱۹۹۴م، ج۷، ص۳۴۲.
  5. فکرت، «ابن ابی‌ الحدید»، ص۶۴۲-۶۴۱.
  6. ملاحظہ کریں: ابن خلکان، وفیات الاعیان، ۱۹۹۴م، ج۷، ص۳۴۲.
  7. فکرت، «ابن ابی‌ الحدید»، ص۶۴۲-۶۴۱.
  8. مہدوی دامغانی، جلوہ تاریخ در شرح نہج‌ البلاغہ، ۱۳۷۹ش، مقدمہ مترجم، ص 7
  9. ابن ابی‌الحدید، شرح نہج‌البلاغہ، ۱۴۰۴ق، ج۲۰، ص۳۴۹.
  10. ابن ابی‌الحدید، شرح نہج‌البلاغہ، ۱۴۰۴ق، ج۲۰، ص۳۴۹.
  11. ہندوشاہ، تجارب السلف در تواریخ خلفا و وزای ایشان، ۱۳۵۷ش، ص۳۴۹.
  12. مہدوی دامغانی، جلوہ تاریخ در شرح نہج‌البلاغہ، ۱۳۷۹ش، مقدمہ مترجم، ص 15.
  13. سبحانی‌ نیا، «شرح نہج ‌البلاغہ ابن ابی ‌الحدید»، ص۵۹.
  14. مہدوی دامغانی، جلوہ تاریخ در شرح نہج‌البلاغہ، ۱۳۷۹ش، مقدمہ مترجم، ص 15.
  15. مہدوی دامغانی، جلوہ تاریخ در شرح نہج‌البلاغہ، ۱۳۷۹ش، مقدمہ مترجم، ص 17۔
  16. مہدوی دامغانی، جلوہ تاریخ در شرح نہج‌ البلاغہ، ۱۳۷۹ش، مقدمہ مترجم، ص 14.
  17. حسینی، مصادر نہج‌ البلاغہ، ۱۴۰۹ق، ج۱، ص۲۳۳.
  18. مہدوی دامغانی، جلوہ تاریخ در شرح نہج‌ البلاغہ، ۱۳۷۹ش، مقدمہ مترجم، ص 14.
  19. مہدوی دامغانی، جلوہ تاریخ در شرح نہج‌ البلاغہ، ۱۳۷۹ش، مقدمہ مترجم، ص18
  20. ابن ابی‌ الحدید، شرح نہج‌البلاغہ، ۱۴۰۴ق، ج۱، ص۱۲۶-۱۳۰.
  21. ابن ابی ‌الحدید، شرح نہج‌البلاغہ، ۱۴۰۴ق، ج۱۰، ص۱۲۸و۱۲۹.
  22. ابن ابی‌ الحدید، شرح نہج‌البلاغہ، ۱۴۰۴ق، ج۱۰، ص۱۲۸و۱۲۹.
  23. ملاحظہ کریں: ابن ابی ‌الحدید، شرح نہج‌ البلاغہ، ۱۴۰۴ق، ج۱، ص۵۷-۵۸.
  24. حسینی، مصادر نہج البلاغہ، ۱۴۰۹ق، ج۱، ص۲۳۴.
  25. حسینی، مصادر نہج‌ البلاغہ، ۱۴۰۹ق، ج۱، ص۲۳۳.
  26. ابن ابی‌ الحدید، شرح نہج‌ البلاغہ، ۱۴۰۴ق، ج۸، ص۲۱۹-۲۴۳.
  27. فکرت، «ابن ابی‌ الحدید»، ص۶۴۱.
  28. ابن ابی‌ الحدید، شرح نہج‌ البلاغہ، ۱۴۰۴ق، ج۱، ص۱۱-۴۲.
  29. ابن ابی‌ الحدید، شرح نہج‌البلاغہ، ۱۴۰۴ق، ج۱، ص۶-۱۱.
  30. ابن ابی‌ الحدید، شرح نہج‌ البلاغہ، ۱۴۰۴ق، ج۱، ص۷-۸.
  31. ابن ابی‌ الحدید، شرح نہج‌ البلاغہ، ۱۴۰۴ق، ج۱، ص۹.
  32. ابن ابی ‌الحدید، شرح نہج‌ البلاغہ، ۱۴۰۴ق، ج۲، ص۵۹.
  33. ابن ابی ‌الحدید، شرح نہج‌ البلاغہ، ۱۴۰۴ق، ج۱، ص۹.
  34. ابن ابی ‌الحدید، شرح نہج‌ البلاغہ، ۱۴۰۴ق، ج۱، ص۹.
  35. ابن ابی ‌الحدید، شرح نہج‌البلاغہ، ۱۴۰۴ق، ج۱، ص۲۸.
  36. ابن ابی‌ الحدید، شرح نہج‌ البلاغہ، ۱۴۰۴ق، ج۱، ص۲۸.
  37. ابن ابی‌ الحدید، شرح نہج ‌البلاغہ، ۱۴۰۴ق، ج۱، ص۲۸.
  38. استادی، کتاب نامہ نہج البلاغہ، ۱۳۵۹ش، ص۳۷-۳۹.
  39. مثال کے طور پر مشاہدہ کریں: ابن ابی‌ الحدید، شرح نہج ‌البلاغہ، ج۲، ص۵۹.
  40. آقا بزرگ تہرانی، الذریعہ، ۱۴۰۸ق، ج۱۲، ص۲۱۰.
  41. حسینی، مصادر نہج ‌البلاغہ، ۱۴۰۹ق، ج۱، ص۲۳۷-۲۳۸؛ استادی، کتاب نامہ نہج البلاغہ، ۱۳۵۹ش، ص۳۷-۳۹.
  42. حسینی، مصادر نہج‌البلاغہ، ۱۴۰۹ق، ج۱، ص۲۳۸.
  43. «امام علی علیہ‌السلام از دیدگاہ ابن ‌ابی‌ الحدید معتزلی/ نگارندہ حسین طیبیان.»
  44. حسینی، مصادر نہج‌البلاغہ، ۱۴۰۹ق، ج۱، ص۲۳۸.
  45. حسینی، مصادر نہج‌البلاغہ، ۱۴۰۹ق، ج۱، ص۲۳۸.
  46. ربیعی، العُذَیق النضید بمصادر ابن ابی‌ الحدید فی شرح نہج‌ البلاغہ، مقدمہ، ۱۴۰۷ق، ص ۵-۶.
  47. سبحانی‌ نیا،«شرح نہج‌ البلاغہ ابن ابی ‌الحدید»، ص۵۹.
  48. ابن کثیر، البدایہ و النہایہ، ۱۴۰۷ق، ج۱۳، ص۱۹۹.
  49. استادی، کتاب نامہ نہج‌ البلاغہ، ۱۳۵۹ش، ص۳۷.
  50. فکرت، «ابن ابی ‌الحدید»، ص۶۴۲.
  51. آستان قدس، فہرست، ج۵، ص۱۱۲-۱۱۳: بہ نقل از فکرت، «ابن ابی‌ الحدید»، ص۶۴۲.
  52. فکرت، «ابن ابی‌ الحدید»، ص۶۴۲.
  53. «شرح نہج البلاغۃ 1-11 مع الفہارس »

مآخذ

  • ابن ابی‌ الحدید، عبد الحمید، شرح نہج ‌البلاغۃ، تصحیح محمد ابو الفضل ابراہیم، قم، آیۃ ‌اللہ مرعشی نجفی، ۱۴۰۴ھ۔
  • ابن خلکان، شمس‌ الدین احمد بن محمد، وفیات الاعیان و انباء الزمان، تحقیق احسان عباس، بیروت، دار صادر، ۱۹۹۴ء۔
  • ابن کثیر دمشقی، اسماعیل بن عمر، البدایہ و النہایہ، بیروت، دار الفکر، ۱۴۰۷ھ۔/۱۹۸۶ء۔
  • ابن فوطی، عبد الرازق بن احمد، مجمع الآداب فی معجم الالقاب، تحقیق محمد الکاظم، تہران، وزارت فرہنگ و ارشاد اسلامی، ۱۴۳۵ق/۱۳۷۴ شمسی ہجری۔
  • استادی، رضا، کتاب نامہ نہج البلاغہ، تہران، بنیاد نہج البلاغہ، ۱۳۵۹ شمسی ہجری۔
  • آقا بزرگ تہرانی، محمد محسن، الذریعہ الی تصانیف الشیعہ، قم و تہران، اسماعیلیان و کتابخانہ اسلامیہ، ۱۴۰۸ھ۔
  • «امام علی علیہ‌السلام از دیدگاہ ابن‌ ابی ‌الحدید معتزلی/ نگارندہ حسین طیبیان.»، سازمان اسناد و کتابخانہ ایران، مشاہدہ ۳۰ دی ۱۳۹۸ شمسی ہجری۔
  • حسینی، عبد الزہراء، مصادر نہج ‌البلاغۃ و اسانیدہ، بیروت، دار الزہراء، ۱۴۰۹ق/۱۹۸۸ء۔
  • ربیعی، احمد، العُذَیق النضید بمصادر ابن ابی الحدید فی شرح نہج البلاغہ، بغداد، عبد المجید حسین الربیعی، ۱۴۰۷ھ۔
  • سبحانی ‌نیا، محمد تقی، «شرح نہج‌ البلاغہ ابن ابی ‌الحدید»، دو فصل نامہ حدیث اندیشہ، شمارہ ۶، پاییز و زمستان ۱۳۸۷ شمسی ہجری۔
  • فکرت، محمدآصف، ابن ابی‌ الحدید، در دائرۃ المعارف بزرگ اسلامی، ج۲، تہران، مرکز دائرۃ المعارف بزرگ اسلامی، ۱۳۷۴ شمسی ہجری۔
  • مہدوی دامغانی، محمود، جلوہ تاریخ در شرح نہج البلاغہ، تہران، نشر نی، ۱۳۷۹ شمسی ہجری۔
  • ہندوشاہ بن سنجر، تجارب السلف، بہ کوشش عباس اقبال آشتیانی، تہران، ۱۳۵۷ شمسی ہجری۔