کامل الزیارات (کتاب)

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں

کامل الزیارات ابن قولویہ قمی ( ۳۶۷ق) کی تالیف ہے ۔اس کتاب میں زیارت کی فضیلت ، پیغمبر اکرم(ص) ، اہل بیت اور امامزادوں اور مؤمنوں کی زیارت کی کیفیت سے متعلق احادیث بیان کی گئی ہیں ۔كامل الزيارات شیعہ منابع میں ایک اہم اور معتبر ترین روایات اور دعاؤں کے مجموعے کی حیثیت سے جانی جاتی ہے ۔اسے الزیارات، جامع الزیارات اور کامل الزیارة کے نام سے بھی یاد کیا جاتا ہے۔

نام‌

نجاشی نے اس کتاب کو «‌الزیارات‌» [1] اور شیخ طوسی نے اسے جامع الزیارات‌ کے نام سے یاد کیا ہے۔ [2] لیکن اس کتاب کا مشہور ترین نام کامل الزیارات ہے [3] اگرچہ اسے «‌کتاب المزار‌» بھی کہتے ہیں ۔[4]

مؤلف

اصل مضمون: ابن قولویہ قمی

جعفر بن محمد معروف ابن قولویہ (۳۶۷ ق) شیعوں کے برجستہ ترین راویوں میں سے ہیں۔ وہ محمد بن یعقوب کلینی اور شیخ مفید کے شاگردوں میں شمار ہوتے ہیں۔ ابن قولویہ ان صاحب فتوا فقہا میں ہیں جن کی رائے کو اہل حدیث اور مکتب متکلمین کے درمیان معتدل رائے کا حامل سمجھا جاتا ہے۔ ابن قولويہ کامل الزیارات سمیت دیگر بہت سی کتب کے مؤلف ہیں ۔

سبب تالیف

ابن قولویہ اس کتاب کے لکھنے کا سبب ان الفاظ میں بیان کرتے ہیں:

میں نے اس کتاب کو خدا، پيغمبر اکرم (ص)، امام علی (ع)، حضرت فاطمہ (س)، ائمہ معصومین (ع) کے تقرب اور ان برگواروں کی زیارت کو مومنین کے درمیان نشر کرنے کیلئے لکھا ہے۔ نیز کوشش کی ہے کہ معارف اہل بیت (ع) کی تشہیر اور ان شخصیات کی زیارت نقل کرنے کا ثواب تمام اہل ایمان کو ہدیہ کروں۔.»[5]

منزلت اور مقام

كامل الزيارات شيعہ روایات اور دعاؤں کا اہم ترین مجموعہ ہے کہ جو ہزاروں سال سے شیعہ علما اور فقہا کی توجہ کا مرکز رہا ہے ۔اہم شیعہ روايات کی کتابوں میں اس سے روایات نقل کی گئی ہیں ۔

علامہ مجلسی کہتے ہیں: «كتاب كامل الزيارات شیعہ فقہا کے درمیان مشہور اور اصول معتبر میں سے جانی جاتی ہے۔[6]

توثیق رُوات

اس کتاب کی خصوصیات میں سے یہ ہے کہ ابن قولویہ نے اس کتاب کے تمام راویوں کی توثیق کی ہے اور ان کے اپنے دعوی کے مطابق اس کتاب کی احادیث کو معتبر ترین منابع اور صحیح‌ ترین اسناد کے ساتھ نقل کیا ہے ۔یہان تک کہ ایک بھی حدیث نادر اور ضعیف ذکر نہیں کی ہے ۔ ان کی اس بات سے ان راویوں کی توثیق میں کافی مدد ملتی ہے جن کے نام علم رجال میں ذکر نہیں ہوئے ہیں اور صرف کامل الزیارات میں آئے ہیں ۔.[7]

حدیثی کتاب ہونے خاص طور پر اصحاب ائمہ کی معتبر اور منبع ہونے کے لحاظ سے بعد میں آنے والے مؤلفین اور محدثین کی نسبت یہ کتاب اس طرح سے پہلے درجے کے منابع کی حیثیت رکھتی ہے کہ شیخ طوسی نے بھی اپنی کتاب التہذیب میں اس سے روایات نقل کی ہیں۔ یہ کتاب دعاؤں کی کتب اور ماضی قریب میں لکھی جانے والی کتاب جیسے مفاتیح الجنان کیلئے ایک اہم ترین مرجع کی حیثیت رکھتی ہے ۔

مضامین

ابن قولویہ اس کتاب میں زیارت کے ثواب، فضیلت، اعتبار، مشروعیت اور کیفیت سے مسئلۂ زیارت کے مختلف پہلؤوں کو زیر بحث لائے ہیں۔ مؤلف نے مخالفین کی طرف سے زیارت پر ہونے والے اعتراضات اور شبہات کے جواب دیئے ہیں ۔ کتاب پیامبر اکرمؐ ،ائمہ یہان تک کہ مؤمنین کی زیارت سے متعلق معتبر احادیث پر مشمل ہے۔

کتاب کا ایک قابل توجہ حصہ سيدالشہدا (ع)، ان کی زیارت کے ثواب اور كيفيت سے مخصوص ہے۔ مؤلف نے شہادت امام حسين(ع)، فرشتوں کا اس سے آگاہ ہونا، موجودات کی ان پر عزاداری کرنے جیسے موضوعات پر بھی گفتگو کی ہے۔ اس لحاظ سے كتاب كامل الزيارات اس امام کی زندگی سے آشنائی کا قدیمی ترین منبع کی حیثیت بھی رکھتی ہے ۔

فہرست

كتاب كامل الزيارات ۸۴۳ احادیث پر مشتمل ہے جو ۱۰۸ ابواب میں درج ذیل عناوین کے تحت ذکر ہوئی ہیں:

  1. زیارت حضرت رسول اکرم (ص) کا ثواب.
  2. زیارت امیر المؤمنین (ع) کے آداب اور ثواب.
  3. زیارت امام حسن (ع) آداب اور ثواب.
  4. امام حسین (ع) اور ان کے حرم میں نماز کی زیارت کی کیفیت.
  5. امام کاظم(ع) اور امام جواد (ع) کی زیارت کا طریقہ.
  6. باقی ائمہ اطہار (ع) کی زیارت کا طریقہ.
  7. زیارت مؤمنین.
  8. امامزادوں کی زیارت.[8] [9]

نسخے اور طباعت

  1. نجف میں كتابخانۂ كاشف الغطاء کا نسخہ .
  2. كتابخانۂ آيت اللہ خوانساری کا نسخہ .
  3. سيد حسن صدر، صاحب كتاب تأسیس الشیعہ کا نسخہ.

کتاب کامل الزیارات کئی مرتبہ چاپ ہوئی ہے کہ ان میں سے ایک مرتبہ ۱۳۵۶ق میں علامہ امینی کے مقدمے ساتھ چاپ ہوئی ۔ [10]

ترجمے

یہ کتاب متعدد بار فارسی میں ترجمہ ہوئی ہے جس میں سے ایک ترجمہ سید محمد جواد ذہنی تہرانی نے کیا ہے نیز انگلش میں بھی اس کا ترجمہ ہو چکا ہے۔ [11]

حال ہی میں اردو زبان میں بھی اس کا ترجمہ کیا گیا ہے۔

حوالہ جات

  1. نجاشی، فہرست اسماء مصنفی الشیعہ، ص۱۲۴.
  2. طوسی، الفہرست، ص۹۲.
  3. مجلسی، بحار الانوار، ج۱، ص۸.
  4. مجلسی، بحار الانوار، ج۵۳، ص۱۰۶. (حاشیہ)
  5. قمی، کامل الزیارات، ص۳۷ (مقدمہ).
  6. مجلسی، بحار الانوار، ج۱، ص۲۷
  7. پاک‌نیا، آشنایی با منابع دست اول شیعہ؛ کامل الزیارات.
  8. پاک‌نیا، آشنایی با منابع دست اول شیعہ؛ کامل الزیارات.
  9. ر.ک: قمی، کامل الزیارات، ترجمہ ذہنی تہرانی، فہرست.
  10. پاک‌نیا، آشنایی با منابع دست اول؛ کامل الزیارات.
  11. http://www.ziaraat.org/books/KamiluzZiaraat.pdf


منابع

  • پاک‌نیا، عبدالکریم، آشنایی با منابع دست اول شیعہ؛ کامل الزیارات.
  • طوسی، محمدبن حسن، الفہرست، نشر الفقاہہ، ۱۴۱۷ق.
  • قمی، ابن قولویہ، کامل الزیارات، نشر الفقاہہ، ۱۴۱۷ق.
  • قمی، ابن قولویہ، کامل الزیارات ، ترجمہ ذہنی تہرانی، تہران، پیام حق، ۱۳۷۷ ش.
  • مجلسی، محمدباقر، بحار الانوار، بیروت، مؤسسہ الوفاء، ۱۴۰۳ق.
  • نجاشی، احمد بن علی، فہرست اسماء مصنفی الشیعہ، قم، جامعہ مدرسین، ۱۴۱۶ق.