الخصال (کتاب)

ويکی شيعه سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش
خصال مؤلف شیخ صدوق

الخِصال کے نام سے عربی زبان میں لکھی گئی کتاب محمد بن علی بن حسین بن بابویہ قمی (متوفا381ھ ق)کی تالیف ہے جو شیخ صدوق کے نام سے معروف ہیں ۔ وہ چوتھی صدی کے شیعہ فقہا اور محدثین میں سے ہیں ۔ شیخ صدوق نے اس کتاب میں اخلاقی اور اعتقادی مسائل سے مربوط روایات کو جمع کیا ہے ۔اس کتاب میں روایات کو ذکر کرتے ہوئے عددی تناسب کا لحاظ کیا ہے ۔اس طرز تحریر میں خصال پہلی کتاب ہے ۔

مؤلف

اصل مضمون: شیخ صدوق

محمد بن علی بن حسین بن موسی بن بابویہ قمی مشہور بنام شیخ صدوق چوتھی ہجری صدی کے بزرگ‌ترین علما میں سے ہیں ۔ان کی پیدائش کا سال ۳۰۵ق کے بعد کا ہے اور ۳۸۱ق میں فوت ہوئے ۔انہیں ری میں دفنایا گیا ۔ وہ قم کے مکتب حدیثی کے بزرگ ترین عالم دین تھے ۔ ۳۰۰ کے قریب علمی آثار چھوڑے جن میں سے اکثر مفقود ہیں ۔ شیعہ حضرات کی کتب اربعہ میں سے من لایحضره الفقیہ انہی کا اثر ہے ۔

سبب تالیف

شیخ صدوق خصال کی سبب تالیف بیان کرتے ہوئے کہتے ہیں:

میں نے تحقیق سے اس بات کو جان لیا کہ گذشتہ مشائخ اور علما نے مختلف علوم کے مختلف شعبوں میں کتابیں تالیف کی ہیں لیکن اعداد اور اچھی اور بری صفات کے درمیان مناسبت سے کوئی کتاب ابھی تک نہیں لکھی گئی ۔ طالبین علم کیلئے اس موضوع میں موجود بہت سے فوائد کو دیکھتے ہوئے میں ارادہ کیا ہے کہ تقرب الہی کے حصول کی خاطر اس روش کے مطابق ایک کتاب تالیف کروں تا کہ اس کے ذریعے جزائے الہی ،خوشبختی اور رحمت خدا کو حاصل کر سکوں ۔ خدا کی بارگاہ سے اس بات کا خواستگار ہوں کہ وہ مجھے اس سے مایوس نہ کرے کیونکہ وہی ہر چیز کی قدرت و طاقت کا حامل ہے ۔ [1]

اعتبار

یہ کتاب بھی شیخ صدوق کی دوسری کتابوں کی مانند شیعہ علما میں خاص طور پر مورد توجہ قرار پائی اور اسکی بہت سی روایات کتب اربعہ، بحارالانوار اور وسائل الشیعہ جیسی متاخر علما کی روائی کتابوں میں مذکور ہوئی ہیں ۔[2]

مضامین

کتاب خصال کم حجم کے باوجود معارف اسلامی اور حلال و حرام کے احکام کا ایک وسیع دائرۃ المعارف ہے کہ جس میں تاریخی، تفسیر قرآن،فلسفی نکات اور سیاسی مسائل کی طرف اشارہ موجود ہے ۔ اس کتاب کی روایات موضوع کے لحاظ سے بہت وسیع ہیں ۔ اخلاقی اور عقیدتی موضوعات میں سے ہر ایک کے متعلق روایات منقول ہیں جو باہمی اعداد کی صورت میں ایک دوسرے سے مربوط ہیں ۔ [3]

تعداد احادیث

موجودہ کتاب ۱۲۵۵ احادیث پر شتمل ہے۔

عناوین فصل‌

کتاب خصال ۲۶ ابواب میں تقسیم ہوئی ہے ۔ابواب کی عنوان بندی اعداد پر مشتمل ہے ۔اس لحاظ سے کتاب کے ابواب درج ذیل ناموں کے ساتھ رکھے گئے ہیں  :

  • پہلا باب : مثلا دنیا کی دوستی سے ایک صفت ،پانچ خصلتوں کے برابر میں ایک صفت۔
  • دوسرا باب: مثلا شیعہ کی دو صفتیں.
  • تیسرا باب : مثلاجس میں تین صفتیں نہ ہو وہ مؤمن نہیں ہے۔
  • چوتھا باب : مثلا چار چیزیں چار جگہوں پر قابل قبول نہیں ہیں ۔
  • پانچواں باب : مثلاایمان کی علامت پانج چیزیں ہیں ۔
  • چھٹا باب: مثلا جو بھی چھ چیزیں انجام دے گا وہ بہشت جائے گا ۔
  • ساتواں باب  : مثلا رسول خدا نے سات چیزوں سے منع فرمایا ہے ۔
  • آٹھواں باب: مثلا آٹھ قسم کے لوغوں کی نماز قبول نہیں ہو گی۔
  • نواں باب: مثلا فاطمہ زہرا(س) کے خدا کے نزدیک نو نام ہیں ۔
  • دسواں باب : امام میں دس صفات موجود ہوتی ہیں ۔

...

  • اٹھارھواں باب
  • انیسواں باب
  • بیسواں باب
  • ....
  • چالیسواں باب
  • تا باب آخر [4]

خطی نسخے

اس کتاب کے چند قدیمی نسخے درج ذیل ہیں  :

  1. کتابخانۂ مدرسہ علمیہ نواب مشہد کا نسخہ تاریخ استنساخ:۱۰۲۶ق.
  2. نسخۂ دیگر اسی کتابخانے کا ملا عبدالله تونی کے نسخے سے جانچا ہوا .
  3. نسخۂ دیگر اسی کتابخانے کا نسخہ جو ۱۲ ویں صدی کی تاریخ ۱۱۲۰ق کو وقف ہوا ۔
  4. نسخۂ کتابخانۂ آستان قدس رضوی، تاریخ استنساخ:۹۷۵ ق.
  5. نسخہ کتابخانۂ آستان قدس رضوی، تاریخ استنساخ ۱۰۷۳ ق.
  6. نسخہ کتابخانۂ آستان قدس رضوی، تاریخ استنساخ۱۰۹۴ ق.
  7. کتابخانۂ آستان قدس رضوی کے تاریخ کے بغیر نسخے.[5]

تلخیص

  • «نُخْبَۃُ الخِصال» اسکی ملخص کرنے والے کا معلوم نہیں ہے۔ [6]
  • «خلاَصَۃُ الخِصال» تلخیص کنندہ سید محمد موسوی، چاپ‌دار المورخ، بیروت، لبنان، ۱۴۱۶ ق.[7]

ترجمے

  • ترجمہ محمدباقر کمره‌ای: متن کے ساتھ چھپا ہے ۔
  • ترجمہ سید احمد فہری زنجانی : یہ ترجمہ نیز متن کے ساتھ چھپا ہے ۔
  • ترجمہ سید علی اصفہانی (متوفا قرن ۱۱)۔
  • ترجمہ مدرس گیلانی کہ سازمان انتشارات جاویدان تہران نے اسے ۱۳۶۲ش مشتمل بر ۳۳۳ صفحات پر چھاپا۔[8]

سنگی سائز میں دو مرتبہ ۱۳۰۲ق اور ۱۳۷۴ق میں چھپا اور اسکے بعد متعدد مرتبہ منتشر ہوا ۔ایک مرتبہ ۱۴۰۳ق میں علی اکبر غفاری کی تحقیق کے ساتھ جامعہ مدرسین نے اسے چھاپا ۔

بیرونی روابط

حوالہ جات

  1. صدوق، الخصال، ۱۴۰۳ ق، ص۱.
  2. نرم افزار جامع فقہ اہل بیت.
  3. صدوق، الخصال، ۱۴۰۳ ق، ص۹.
  4. نرم افزار جامع فقہ اہل بیت.
  5. مدنی، فرہنگ کتب حدیث شیعہ، ۱۳۸۵ ش، ص ۳۷۸.
  6. تہرانی، الذریعہ، ج ۲۴، ص ۹۴.
  7. مدنی، فرہنگ کتب حدیث شیعہ، ۱۳۸۵ ش، ص ۳۷۹.
  8. مدنی، فرہنگ کتب حدیث شیعہ، ۱۳۸۵ ش، ص ۳۷۹.

منابع

  • شیخ صدوق، محمد بن علی، الخصال، تصحیح علی اکبر غفاری، جامعہ مدرسین، ۱۴۰۳ ق.
  • تہرانی، آقا بزرگ، الذریعہ، بیروت، درالاضواء.
  • مدنی، محمود، فرهنگ کتب حدیث شیعه، تہران، امیر کبیر، ۱۳۸۵ ش.