سوسن

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں

سوسن حضرت امام حسن عسکری ؑ کی والدہ کا نام ہے۔ کتابوں میں ان کے چند نام مذکور ہوئے ہیں ۔غیبت صغری میں آپ امام اور لوگوں کے درمیان واسطہ تھیں۔

تعارف

حُدَیث،حربیہ،سلیل[1] ،عسفان[2] اور جدہ[3] آپ کے چند نام مذکور ہوئے ہیں۔کنیت ام الحسن ہے[4]آپ دوسرے بعض آئمہ کی ماؤں کی مانند کنیز تھیں [5] سلیل نام کی خاتون صرف حضرت امام ہادی کی زوجہ تھیں اور تمام اولاد اسی ایک فرزند سے ہے۔ حسن، محمد، حسن، حسین اور جعفر اسی سے ہیں [6]انکی بیٹی کا نام عائشہ تھا [7]

زندگی نامہ

شیعہ ماخذوں میں جدہ کو صاحبِ فضیلت خاتون کہا گیا ہے[8] حضرت امام حسن عسکری نے اپنی شہادت سے کچھ مدت پہلے انہیں حج پر بھجوایا تھا[9] جب حضرت امام حسن عسکری کی شہادت کی خبر سنی تو مدینہ سے سامرا آگئیں اور دیکھا کہ جعفر کذاب نے امامت کا ادعا کیا ہے اور امام کی میراث خود لے لی ہے تو حاکم وقت سے شکایت کی۔ قاضی کے سامنے اپنے ادعا کیلئے دلائل پیش کئے جن کی بنا پر قاضی نے آپ کے حق میں فیصلہ دیا ۔کشھ مدت گزرنے کے بعد جعفر کذاب فقر سے دوچار ہوا تو جدہ اس کے،اہل خانہ اور اسکے حیوانات خرچ و مخارج برداشت کرتی تھی[10] سوسن غیبت صغری کے زمانے میں لوگوں اور امام کے درمیان واسطہ تھیں۔

جدہ نے اپنے گھر میں دفن ہونے کی وصیت کی تھی[11]آپ کا مدفن سامرا میں حرم عسکریین ہے۔[12]

حوالہ جات

  1. بحارالانوار، ج۵۰، ص۲۳۷-۲۳۸
  2. نوبختی، فرق الشیعہ، ص۱۰۵.
  3. منتہی الآمال، ج۲، ص۶۴۹
  4. ریاحین الشریعہ، ج۳، ص۲۴
  5. الارشاد، ج۲، ص۳۱۳؛ بحارالانوار، ج۵۰، ص۲۳۷-۲۳۸
  6. الہدایة الکبری، ص۳۱۳؛ الارشاد، ج۲، ص۳۱۲
  7. الارشاد، ج۲، ص۳۱۲.
  8. رجوع کریں:جلاء العیون، ص۹۸۹؛ منتہی الآمال، ج۲، ص۶۴۹؛ اکمال الدین صدوق
  9. مسعودی، اثبات الوصیہ، ص۲۷۱، به نقل از پاکتچی، حسن عسکری، دایره المعارف بزرگ اسلامی، ج۲۰، ص۶۱۸
  10. مآثر الکبراء فی تاریخ سامراء، ج۱، ص۳۱۱ به نقل از اکمال الدین صدوق
  11. کمال الدین، ج۲، ص۴۴۲
  12. اصول کافی،‌ج۲،‌ص۱۵۹


مآخذ

  • ابن بابویہ، محمد بن علی، کمال الدین و تمام النعمہ، تصحیح علی اکبر غفاری، دارالکتب الاسلامیہ، تہران، ۱۳۵۹ ش.
  • خصیبی، حسین بن ہمدان، الہدایة الکبری، مؤسسہ البلاغ، بیروت، ۱۳۷۷ ش.
  • کلینی، اصول کافی، ترجمه محمد باقر کمره ای، انتشارات اسلامیہ، ۱۳۷۹ ش.
  • قمی، عباس، منتہی الآمال فی تواریخ النبی و الآل(ص)، تعریب ہاشم میلانی، جامعہ مدرسین حوزه علمیہ قم، قم.
  • مجلسی، محمدباقر، بحارالانوار الجامعہ لدرر اخبار الائمہ الاطہار(ع)، تصحیح جمعی از نویسندگان،‌دار احیاء التراث العربی، بیروت.
  • مجلسی، محمدباقر، جلاء العیون:تاریخ چہارده معصوم(ع)، تحقیق علی امامیان، سرور، قم، ۱۳۸۲ ش.
  • محلاتی، ذبیح الله، ریاحین الشریعہ در ترجمہ بانوان دانشمند شیعہ، دارالکتب الاسلامیہ، تہران.
  • محلاتی، ذبیح اللہ، مآثر الکبراء فی تاریخ سامراء، المکتبہ الحیدریہ، قم، ۱۳۸۴ ش.
  • مسعودی، علی بن حسین، اثبات الوصیہ للامام علی بن ابی طالب، انصاریان، قم.
  • مفید، محمد بن محمد، الارشاد فی معرفہ حجج الله علی العباد، تحقیق مؤسسہ آل البیت لاحیاء التراث، الموتمر العالمی لالفیہ الشیخ المفید، قم، ۱۳۷۲ ش.