رد مظالم

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
مشہور احکام
رساله عملیه.jpg
نماز
واجب نمازیں یومیہ نمازیںنماز جمعہنماز عیدنماز آیاتنماز میت
مستحب نمازیں نماز تہجدنماز غفیلہنماز جعفر طیارنماز امام زمانہنماز استسقاءنماز شب قدرنماز وحشتنماز شکرنماز استغاثہدیگر نمازیں
دیگر عبادات
روزہخمسزکاتحججہاد
امر بالمعروف و نہی عن المنکرتولیتبری
احکام طہارت
وضوغسلتیممنجاساتمطہرات
مدنی احکام
وکالتوصیتضمانتکفالتارث
عائلی احکام
شادی بیاهمتعہتعَدُّدِ اَزواجنشوز
طلاقمہریہرضاعہمبستریاستمتاع
عدالتی احکام
قضاوتدیّتحدودقصاصتعزیر
اقتصادی احکام
خرید و فروخت (بیع)اجارہقرضہسود
دیگر احکام
حجابصدقہنذرتقلیدکھانے پینے کے آدابوقفاعتکاف
متعلقہ موضوعات
بلوغفقہشرعی احکامتوضیح المسائل
واجبحراممستحبمباحمکروہ


رَدِّ مَظالِم انسان کے ذمے موجود دوسروں کے ناحق اموال کے ادا کرنے کو کہا جاتا ہے۔ شیعہ احادیث کے مطابق توبہ قبول ہونے کی شرائط میں سے ایک رد مظالم ہے۔ شیعہ فقہاء کے مطابق رد مظالم واجب ہے۔

رد مظالم میں مجہول‌المالک اموال کو مرجع‌ تقلید کی اجازت سے محتاجوں اور فقیروں کو صدقہ دے سکتے ہیں۔ فقہی کتابوں میں خمس، امر بہ معروف، میّت کے احکام، وصیت اور غصب کے ابواب میں ردمظالم سے متعلق بحث کی گئی ہے۔

تعریف‌

ردّ مظالم سے مراد انسان کے ذمے موجود دوسروں کے اموال اور قرضوں کو ادا کرنا ہے؛[1] لیکن ان اموال کی نوعیت کو مد نظر رکھتے ہوئے اس کی مختلف تعریفیں کی گئی ہیں:

اسداللہ شوشتری(تیرہویں صدی ہجری) لکھتے ہیں:‌ مَظالِم مَظلِمَہ کا جمع ہے جس سے مراد دوسروں کے وہ اموال اور حقوق ہیں جو انسان کے ذمے باقی ہیں؛ مثلا وہ اموال جو غصب یا چوری کے ذریعے انسان کے پاس موجود ہو۔[2] آیت اللہ مکارم شیرازی ان حرام اموال کو مظالم قرار دیتے ہیں جو انسان کے پاس موجود ہو لیکن ان کے مالک کو نہ پہنچانتے ہو۔[3]

آقا محمد علی کرمانشاہی فرزند وحید بہبہانی کے مطابق مظالم ان اموال اور حقوق کو کہا جاتا ہے جو انسان کے اموال سے مخلوط ہو گئے ہوں لیکن نہ ان کی مقدار معلوم ہو اور نہ ان کا مالک۔[4] آیت اللہ سیستانی مظالم ان اموال کو قرار دیتے ہیں جنہیں انسان نے ظلم کے ساتھ دوسروں سے لیا ہو یا ا­نہیں ضایح کیا ہو؛ چاہے ان کا مالک معلوم ہو یا معلوم نہ ہو۔[5]

آیت اللہ صافی گلپایگانی مظالم کی تعریف میں فرماتے ہیں کہ مظالم ان اموال کو کہا جاتا ہے جن کی مقدار تو معلوم ہے لیکن ان کا مالک مشخص نہ ہو۔[6]

فقہ اور احادیث میں اس کی اہمیت

شیعہ احادیث میں ردّ مظالم کو توبہ کی قبولیت میں شرائط قرار دیتے ہوئے[7] اسے ترک کرنے کو گناہان کبیرہ اور موجب نزول بلا جانا جاتا ہے۔[8] حدیثی منابع میں امر بہ معروف[9] اور فقہی کتابوں میں احکام طہارت (احکام میت[10] خمس،[11] غصب، وصیت[12] اور امر بہ معروف[13] کے ابواب میں رد مظالم سے بحث کی گئی ہے۔

حکم شرعی

شیعہ فقہاء ردّمظالم کو خمس اور زکات کی طرح واجب مانتے ہیں۔[14] بعض فقہاء مانند آیت اللہ فیاض اسے واجب فوری قرار دیتے ہیں؛[15] لیکن بعض دوسرے فقہاء من جملہ امام خمینی فرماتے ہیں کہ اگر انسان اپنے اندر موت کی نشانیاں دیکھے تو اس وقت اسے فورا ادا کرنا واجب ہے۔[16]

طریقہ

مراجع تقلید کے فتوا کے مطابق اگر انسان کے ذمے دوسروں کا مال ہو چاہے وہ مجہول‌المالک ہو یا ان کے مالک تک رسائل ممکن نہ ہو، انہیں یا ان کی قیمت(اس صورت میں کہ جب عین مال تلف ہوئی ہو) کو حاکم شرع یا مرجع تقلید کی احازت سے فقیروں کو صدقہ دے دیں۔[17] بعض فقہاء من جملہ آیت اللہ صافی گلپایگانی رد مظالم کو صرف غیر سید کو دینا چاہئے۔[18]

مذکورہ مال کو صدقہ دینے کے بعد اگر اس کے مالک کا پتہ چل جائے یا اس تک رسائل ممکن ہو جائے تو اس صورت میں فقہاء کے درمیان اختلاف نظر پابا جاتا ہے۔ امام خمینی کے فتوے کے مطابق احتیاط واجب کی بنا پر اس مال کے برابر اس کے مالک کو بھی دینا واجب ہے؛ لیکن بعض دوسرے فقہاء من جملہ آیت‌ اللہ خویی کے مطابق صدقہ دینے کے بعد دوبارہ اس کے مالک کو بھی دینا واجب نہیں ہے۔[19]

مراجع تقلید کے فتوے کے مطابق رد مظالم میں اگر مال کی مقدار معلوم نہ ہو تو اس کے مالک کے ساتھ صلح کرنا چاہئے؛[20] یعنی ایک دوسرے کو راضی کریں؛[21] لیکن اگر صاحب مال راضی نہ ہو جائے تو اس صورت میں صرف اس مقدار کو دینا کافی ہے جس کے بارے میں انسان کو یقین ہو۔[22] البتہ احتیاط مستحب یہ ہے کہ اس مقدار سے کچھ اضافہ بھی دے دیا جائے۔[23]

مونوگرافی

آقا محمد علی کرمانشاہی نے "رد مظالم کے مصرف" کے عنوان سے فارسی میں ایک کتاب لکھی ہیں۔

حوالہ جات

  1. کرمانشاہی، مقامع‌الفضل، ۱۴۲۱ق، ج۱، ص۱۰۵۔
  2. تستری کاظمی، مقباس‌الانوار، مؤسسہ آل البیت، ص۲۶۴۔
  3. مکارم شیرازی، استفتائات جدید، ۱۴۲۷ق، ج۳، ص۵۶۱۔
  4. کرمانشاہی، مقامع‌الفضل، ۱۴۲۱ق، ج۱، ص۱۰۵۔
  5. "سوال و جواب" مرجع تقلید شیعیان جہان، آیت اللہ سیستانی کا آفیشل ویب سائٹ، تاریخ ویزٹ: 7 اسفند 1395 ش.
  6. صافی گلپایگانی، جامع‌الاحکام، ۱۴۱۷، ج۱، ص۱۶۱۔
  7. حر عاملی، وسایل الشیعہ، ۱۴۰۹ق، ج۱۶، ص۵۲؛ نجفی، جواہر الکلام، ۱۴۰۴ق، ج۴۱، ص۱۱۳۔
  8. ابوحنیفہ مغربی، دعائم‌الاسلام، ۱۳۸۵ق، ص۲۷۰۔
  9. رجوع کریں: طوسی، تہذیب الاحکام، ۱۴۰۷ق، ج۶، ص۱۸۱۔
  10. سید بن طاووس، فلاح السائل، ۱۴۰۶ق، ص۶۴۔
  11. شیخ انصاری، کتاب الخمس، ۱۴۱۵ق، ص۲۶۸؛ امام خمینی، تحریرالوسیلہ، دارالعلم، ج۱، ص۳۶۳۔
  12. عاملی، مفتاح الكرامۃ، ۱۴۱۹ق، ج۲۳، ص۲۹۰۔
  13. علامہ حلی، مختلف الشیعہ، ۱۴۱۳ق، ج۴ ص۴۶۱۔
  14. برای نمونہ نگاہ کنید بہ شیخ انصاری، صیغ‌العقود و الایقاعات، ۱۴۲۱ق، ص۱۴۱؛ امام خمینی، توضیح‌المسائل، ۱۴۲۶ق، ص۵۷۸؛ بہجت، رسالہ توضیح‌المسائل، ۱۴۲۸ق، ص۴۳۶۔
  15. فیاض، رسالہ توضیح‌المسائل، ۱۴۲۶ق، ص۱۱۹۔
  16. بنی‌ہاشمی خمینی، توضیح‌المسائل مراجع، ۱۴۲۴ق، ج۲، ص۶۷۶۔
  17. رجوع کریں: امام خمینی، تحریرالوسیلہ، دارالعلم، ج۱، ص۳۶۳؛ صافی گلپایگانی، جامع‌الاحکام، ۱۴۱۷، ج۱، ص۱۶۱؛ مکارم شیرازی، استفتائات جدید، ۱۴۲۷ق، ج۳، ص۵۶۱۔
  18. صافی گلپایگانی، جامع‌الاحکام، ۱۴۱۷، ج۱، ص۱۶۱۔
  19. بنی‌ہاشمی خمینی، توضیح‌المسائل مراجع، ۱۴۲۴ق، ج۲، ص۴۹-۵۰۔
  20. امام خمینی، تحریرالوسیلہ، دارالعلم، ج۱، ص۳۶۳۔
  21. بنی‌ہاشمی خمینی، توضیح‌المسائل مراجع، ۱۴۲۴ق، ج۲، ص۴۸۔
  22. بنی‌ہاشمی خمینی، توضیح‌المسائل مراجع، ۱۴۲۴ق، ج۲، ص۴۸۔
  23. بنی‌ہاشمی خمینی، توضیح‌المسائل مراجع، ۱۴۲۴ق، ج۲، ص۴۸۔


مآخذ

  • ابوحنیفہ مغربی، نعمان بن محمد، دعائم الاسلام، مؤسسہ آل البیت علیہم السلام، ۱۳۸۵ق۔
  • امام خمینی، سیدروح‌اللہ، تحریرالوسیلہ، مؤسسہ مطبوعات دارالعلم، قم، بی‌تا۔
  • امام خمینی، سیدروح‌اللہ، توضیح‌المسائل، تصحیح مسلم قلی‌پور گیلانی، چاپ اول، ۱۴۲۶ق۔
  • بنی‌ہاشمی خمینی، سیدمحمدحسن، توضیح‌المسائل مراجع، مطابق با فتاوای سیزدہ نفر از مراجع معظم تقلید، قم، دفتر انتشارات اسلامی، ۴۲۴ش۔
  • بہجت، محمدتقی، رسالہ توضیح‌المسائل، قم، شفق، چاپ نود و دوم، ۱۴۲۸ق۔
  • تستری کاظمی، اسداللہ، مقباس الانوار و نفائس الاسرار فی احکام النبی المختار و عترتہ الاخیار، مؤسسہ آل البیت، قم۔
  • دفتر آیت‌اللہ سیستانی؛ پرسش و پاسخ » رد مظالم، دسترسی، ۷ اسفند ۱۳۹۵ش
  • سید بن طاووس، رضی الدین، فلاح‌السائل و نجاح المسائل، دفتر انتشارات اسلامی وابستہ بہ جامعہ مدرسین حوزہ علمیہ قم، قم، ۱۴۰۶ق۔
  • شیخ انصاری، مرتضی بن محمد امین، صیغ‌العقود و الایقاعات، قم، مجمع اندیشہ اسلامی، چاپ اول، ۱۴۲۱ق۔
  • شیخ انصاری، مرتضی بن محمد امین، کتاب الخمس، کنگرہ بزرگذاشت شیخ انصاری، قم، ۱۴۱۵ق۔
  • صافی گلپایگانی، لطف‌اللہ، جامع‌الاحکام، قم، انتشارات حضرت معصومہ، چاپ چہارم، ۱۴۱۷ق۔
  • طوسی، محمد بن حسن، تہذیب الاحکام، دارالکتب الاسلامیہ، تہران، ۱۴۰۷ق۔
  • علامہ حلی، حسن بن یوسف، مختلف الشیعہ فی احکام الشریعہ، دفتر انتشارات اسلامی وابستہ بہ جامعہ مدرسین، حوزہ علمیہ قم، قم، ۱۴۱۳ق۔
  • حر عاملی، محمد بن حسن، وسائل الشیعہ، مؤسسہ آل البیت علیہم السلام، قم، ۱۴۰۹ق۔
  • عاملی، سیدجواد بن محمد حسینی، مفتاح الکرامہ فی شرح قواعد العلامہ، تصحیح محمدباقر خالصی، دفتر انتشارات اسلامی وابستہ بہ جامعہ مدرسین حوزہ علمیہ قم، ۱۴۱۹ق۔
  • فیاض کابلی، محمداسحاق، رسالہ توضیح‌المسائل، قم، انتشارات مجلسی، چاپ اول، ۱۴۲۶ق۔
  • کرمانشاہی، محمدعلی، مقامع‌الفضل، قم، مؤسسہ علامہ مجدد وحید بہبہانی، چاپ اول، ۱۴۲۱ق۔
  • مکارم شیرازی، ناصر، استفتائات جدید، تحقیق و تصحیح ابوالقاسم علیان‌نژادی، قم، انتشارات مدرسہ امام علی بن ابی‌طالب، چاپ دوم، ۱۴۲۷ق۔
  • نجفی، محمدحسن، جواہر الکلام فی شرح شرائع الاسلام، تصحیح عباس قوچانی علی آخوندی، داراحیاء التراث العربی، بیروت، ۱۴۰۴ق۔