ام داؤد

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
ام‌ داوود
ذاتی کوائف
نام: حبیبہ یا فاطمہ بنت عبداللہ بن ابراہیم
کنیت: ام‌ خالد بربریہ اور ام‌ داوود
مشہوراقارب: حسن مثنی اور داود بن حسن
حدیثی معلومات
نقل حدیث: امام صادقؑ
موضوعات: ماہ رجب کے اعمال
شہرت: عمل ام‌ داؤد اور دعائے استفتاح کو نقل کرنے کی وجہ سے
متفرقات: مادر رضاعی امام صادقؑ


ام‌ّ داؤد، حسن مثنی کی زوجہ اور امام صادقؑ کی مادر رضاعی ہیں۔ آپ کی کنیت آپ کے بیٹے داود بن حسن کی نسبت سے ام داوود مشہور ہے۔ آپ کا نام حبیبہ یا فاطمہ تھا۔ دعائے استفتاح (دعائے ام‌ داوود) اور عمل ام‌ داؤد کو آپ نے امام صادقؑ سے نقل کیا ہے۔

امام صادقؑ نے اس عمل کو ام داؤد کے بیٹے داؤد بن حسن کی رہائی کے لئے انہیں تعلیم دی جس کی انجام دہی کے بعد ان کا بیٹا زندان سے آزاد ہو کر گھر لوٹ آیا۔

نام اور کنیت

حبیبہ یا بعض کے بقول فاطمہ جو ام‌داؤد کے نام سے مشہور ہے، عبداللہ بن ابراہیم کی بیٹی اور حسن مُثَنّیٰ کی زوجہ ہیں۔[1] ان کے بیٹے داؤد بن حسن کی وجہ سے آپ اس نام سے مشہور ہوئی ہیں۔[2] اعیان‌الشیعہ میں انہیں ام‌خالد بربریہ کی کنیت کے ساتھ یاد کیا ہے۔[3]

ام‌داؤد امام صادقؑ(83-148ھ) کے مادر رضاعی بھی ہیں۔[4] ان کے بیٹے داؤد کو امام باقرؑ یا امام صادقؑ کے اصحاب میں شمار کیا جاتا ہے۔[5]

عمل اور دعائے ام‌داؤد

حدیثی مآخذ میں امام صادقؑ سے ایک حدیث نقل ہوئی ہے جس میں آپؑ ام داؤد کو رجب کے ایام البیض میں ایک مخصوص عمل بجا لانے کی سفارش فرماتے ہیں۔ یہ عمل، عمل ام‌داؤد کے نام سے مشہور ہے۔ اسی طرح دعائے استفتاح یا دعائے ام‌داؤد کے نام سے ایک دعا بھی نقل ہوئی ہے جو اس عمل کے آخر میں پڑھی جاتی ہے۔[6] اس حدیث کے راوی خود ام‌داؤد ہیں۔[7]

پانچویں صدی ہجری کے اہل‌سنت عالم دین حاکم حَسکانی کی کتاب فضائلُ شہرِ رجب" میں بھی یہ دعا نقل ہوئی ہے۔[8]

عمل ام‌داؤد کا طریقہ یہ ہے کہ سب سے پہلے ایام البیض(رجب کی تیرہویں، چودہویں اور پندرہویں تاریخ) کو روزہ رکھا جاتا ہے؛ 15 تاریخ کو ظہر کے قریب غسل کیا جاتا ہے؛ نماز ظہر اور عصر کی ادائیگی کے بعد قرآن کی بعض سورتوں کی تلاوت کی جاتی ہے اور آخر میں دعائے ام‌داؤد یا استفتاح پڑھی جاتی ہے۔[9]

شیخ طوسی، سید بن طاووس اور علامہ مجلسی جیسے شیعہ علماء کے مطابق دعائے ام‌داؤد مصیبتوں کے خاتمے اور حاجتوں کی برآوری کے لئے انتہائی مؤثر ہے۔[10]

عمل ام داؤد کا واقعہ

عمل ام‌ داؤد کا امام صادقؑ سے صادر ہونے کا واقعہ ایک مفصل داستان کی صورت میں شیخ صدوق کی کتاب فضائل الاشہر الثلاثہ(رجب، شعبان اور رمضان کی فضیلت) اور سید بن طاووس کی کتاب اِقبال الاَعمال میں آیا ہے۔[11]

ان دو کتابوں کے مطابق بنی عباسی کے حاکم منصور دوانیقی کے دور خلافت میں ام‌ داؤد کا بیٹا داؤد اسیر ہو کر عراق منتقل کیا گیا جس کی وجہ سے ایک عرصہ تک ام‌ داؤد اپنے بیٹے کے بارے میں بے خبر رہیں۔ انہوں نے اپنے بیٹے کی رہائی کے لئے بہت دعائیں مانگی لیکن پھر بھی انہیں ان کے بیٹے کے بارے میں کوئی خبر نہیں ہوئی۔ مختلف عبادت گزاروں سے بھی اس بارے میں دعائیں کرائیں لیکن ان کی دعائیں بھی کسی مکشل کا مداوا نہیں کر سکیں؛[12] یہاں تک کہ وہ اپنے بیٹے کی دیدار سے ناامید ہو گئیں۔[13]

ایک دن امام صادقؑ جو اس وقت بیمار تھے، کی عیادت کے لئے آپ کے دولت سرا چلی جاتی ہیں۔ امامؑ داؤد کی خیریت دریافت فرماتے ہیں جس پر ام داؤد پورا قصہ سنا دیتی ہیں۔ امام صادقؑ فرماتے ہیں: کیوں دعائے استفتاح (دعائے ام‌ داؤد) نہیں پڑھتی؟ اس کے بعد فرماتے ہیں کہ رجب کے ایام البیض میں روزہ رکھیں اور آخری دن یعنی 15 رجب کو یہ مخصوص عمل انجام دیں اور یہ دعا پڑھیں۔[14]

ام‌ داؤد کہتی ہیں کہ اس عمل کی انجام دہی کے بعد رات کو پیغمبر اکرمؐ انہیں خواب میں ان کے بیٹے کی رہائی کی بشارت دیتے ہیں۔ اس کے کچھ مدت بعد داؤد گھر لوٹ آتا ہے۔ بعد میں پتہ چلتا ہے کہ وہ اسی رات رہا ہو گئے تھے جس دن یہ عمل انجام دیا گیا تھا۔[15]

حوالہ جات

  1. امین، اعیان‌الشیعہ، ۱۴۰۶ق، ج۳، ص۴۷۶.
  2. امین، اعیان‌الشیعہ، ۱۴۰۶ق، ج۳، ص۴۷۶.
  3. امین، اعیان‌الشیعہ، ۱۴۰۶ق، ج۳، ص۴۷۶.
  4. امین، اعیان‌الشیعہ، ۱۴۰۶ق، ج۶، ص۳۶۸.
  5. امین، اعیان‌الشیعہ، ۱۴۰۶ق، ج۶، ص۳۶۸.
  6. کفعمی، المصباح، ۱۴۰۵ق، ص۵۳۰-۵۳۵؛ کفعمی، البلد الامین، ۱۴۱۸ق، ۱۸۰-۱۸۳؛ شیخ طوسی، مصباح المتحجد، ۱۴۱۱ق، ج۲، ص۸۰۷-۸۱۲؛ سید بن طاووس، اقبال الاعمال، ۱۳۷۶ش، ج۳، ص۲۴۲-۲۴۸۔
  7. کفعمی، المصباح، ۱۴۰۵ق، ص۵۳۰-۵۳۵؛ کفعمی، البلد الامین، ۱۴۱۸ق، ۱۸۰-۱۸۳؛ شیخ طوسی،مصباح المتحجد، ۱۴۱۱ق، ج۲، ص۸۰۷-۸۱۲؛ سید بن طاووس، اقبال الاعمال، ۱۳۷۶ش، ج۳، ص۲۴۲-۲۴۸۔
  8. اکبری و ربیع‌نتاج، «کاوشی در دعای ام‌داوود»، ص۸۸-۹۱۔
  9. قمی، مفاتیح الجنان، ذیل «اعمال ام‌داوود»۔
  10. اکبری و ربیع‌نتاج، «کاوشی در دعای ام‌داوود»، ص۸۲۔
  11. رجوع کریں: صدوق، فضائل الاشہر الثلاثہ، ۱۳۹۶ق، ص۳۳و۳۴؛ سید بن طاووس، اقبال‌الاعمال، ۱۳۷۶ش، ج۳، ص۲۴۱و۲۴۲۔
  12. رجوع کریں: صدوق، فضائل الاشہر الثلاثہ، ۱۳۹۶ق، ص۳۳و۳۴؛ سید بن طاووس، اقبال‌الاعمال، ۱۳۷۶ش، ج۳، ص۲۴۱و۲۴۲۔
  13. رجوع کریں: صدوق، فضائل الاشہر الثلاثہ، ۱۳۹۶ق، ص۳۴۔
  14. رجوع کریں: صدوق، فضائل الاشہر الثلاثہ، ۱۳۹۶ق، ص۳۳و۳۴؛ سید بن طاووس، اقبال‌الاعمال، ۱۳۷۶ش، ج۳، ص۲۴۱و۲۴۲۔
  15. رجوع کریں: صدوق، فضائل الاشہر الثلاثہ، ۱۳۹۶ق، ص۳۳و۳۴؛ سید بن طاووس، اقبال‌الاعمال، ۱۳۷۶ش، ج۳، ص۲۵۰و۲۵۱۔


مآخذ

  • اکبری، زہرا، و سیدعلی‌اکبر ربیع‌نتاج، «کاوشی در دعای ام‌داوود»، در مجلہ سفینہ، تہران، مؤسسہ فرہنگی نبأ مبین، شمارہ ۳۶، پاییز ۱۳۹۱۔
  • امین، سیدمحسن، اعیان‌الشیعہ، تحقیق حسن الامین، بیروت، دارالتعارف، ۱۴۰۶ق۔
  • سیدبن طاووس، على بن موسی، الإقبال بالأعمال الحسنہ، تحقیق جواد قیومى اصفہانى، قم، ‏دفتر تبلیغات اسلامى، چاپ‏ اول، ۱۳۷۶ش۔‏
  • شیخ صدوق، محمد بن على، ‏فضائل الأشہر الثلاثۃ، تحقیق و تصحیح غلامرضا عرفانیان یزدى، قم، کتابفروشى داورى‏، چاپ اول، ۱۳۹۶ق۔
  • طوسى، محمد بن الحسن، ‏مصباح المتہجّد و سلاح المتعبّد، بیروت، ‏مؤسسہ فقہ الشیعۃ، ۱۴۱۱ق۔‏
  • قمی، عباس، مفاتیح الجنان، اسوہ، قم۔ بی‌تا۔
  • کفعمى، ابراہیم بن على عاملی، البلد الأمین و الدرع الحصین، بیروت، ‏مؤسسۃ الأعلمی للمطبوعات، چاپ اول، ۱۴۱۸ق۔
  • کفعمى، ابراہیم بن على عاملی، ‏مصباح الکفعمی، قم دارالرضی، چاپ دوم، ۱۴۰۵ق۔‏
  • مجلسى، محمدباقر،‏ بحارالأنوار الجامعۃ لدرر أخبار الأئمۃ الأطہار، تحقیق جمعى از محققان‏، بیروت، ‏دار إحیاء التراث العربی،‏ چاپ دوم، ۱۴۰۳ق۔‏