کوثر

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں

کوثر، عربی زبان کا ایک لفظ ہے جس کے معنی "خیر کثیر" کے ہیں۔ قرآن میں صرف ایک دفعہ یعنی سورہ کوثر میں اس کا تذکرہ ملتا ہے۔[1]

کوثر کے معنی کے بارے میں اختلاف نظر پایا جاتا ہے۔ ابن عباس، عایشہ اور عبداللہ بن عمر کے مطابق کوثر بہشت میں ایک نہر کو کہا جاتا ہے۔ اسی طرح کوثر سے مراد خیر کثیر، پیغمبری اور آسمانی کتاب، قرآن، پیروان کی کثرت اور نسل کی فراوانی بھی لیا جاتا ہے۔[2]

بعض احادیث میں کوثر سے مراد شفاعت لیا گیا ہے، نیز بعض دوسری احادیث میں اس سے مراد حوض کوثر لیا گیا ہے جو خیر کثیر پر مشتمل ہوگا۔[3]

شیعہ مفسرین کے مطابق سورہ کوثر میں لفظ "کوثر" سے مراد حضرت زہراؑ ہیں کیونکہ عاص بن وائل کی طرف سے پیغمبر اکرمؐ کو "اَبتَر" (بے اولاد؛ ایسا شخص جس کی کوئی اولاد نہ ہو) کا طعنہ دینے کے جواب میں خدا نے حضرت فاطمہؑ کے ذریعے پیغمبر اکرمؐ کو بے شمار نسل عطا فرمایا ہے۔[4]

  • دنیا میں حضرت فاطمہؑ کی نسل کی فراوانی

آج کل دنیا کے مختلف ملکوں میں حضرت فاطمہؑ کی نسل سے سادات کی کثیر تعداد موجود ہیں۔ مثلا ایران اور دیگر عربی ممالک کے علاوہ مغرب (تونس اور مراکش) میں ادریس بن عبداللہ بن حسن نے ادریسوں کی حکومت قائم کی جو اب بھی موجود ہے۔ انڈونیشیا میں حبشی اور علوی خاندانیں کثیر تعداد میں موجود ہیں۔ یمن میں امام حسنؑ اور امام حسینؑ کی نسل سے بہت سارے سادادت موجود ہیں۔ مصر کے شہر اسوان میں "جعافرہ" کے نام سے ایک بہت بڑا قبیلہ ہے جو امام جعفر صادقؑ سے منسوب ہیں۔ ہندوستان اور پاکستان میں رضوی اور نقوی سادات کی کثیر تعداد موجود ہیں۔[5]

متعلقہ صفحات

حوالہ جات

  1. سورہ کوثر، آیہ‌۱.
  2. نک: خرمشاہی، دانشنامہ قرآن و قرآن‌پژوہی، ۱۳۷۷ش، ج۲، ص۱۲۶۹.
  3. نک: خرمشاہی، دانشنامہ قرآن و قرآن‌پژوہی، ۱۳۷۷ش، ج۲، ص۱۲۶۹.
  4. نک: خرمشاہی، دانشنامہ قرآن و قرآن‌پژوہی، ۱۳۷۷ش، ج۲، ص۱۲۶۹
  5. داغر، مصادر الدراسخ الأدبيۃ، ۱۹۸۳م، ج۴، ص۳۶۴-۳۶۶.


مآخذ

  • خرمشاہی، بہاءالدین، دانشنامہ قرآن و قرآن پژوہی، تہران، دوستان و ناہید، ۱۳۷۷ش.
  • داغر، يوسف أسعد، مصادر الدراسۃ الأدبيۃ أعلام النہضۃ، بیروت، المكتبۃ الشرقيۃ، ۱۹۸۳م.