سید الساجدین

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں

سَیّدُ السّاجِدین، شیعوں کے چوتھے امام علی بن الحسینؑ کے مشہور القاب میں سے ایک ہے جس کے معنی سجدہ کرنے والوں کے سردار کے ہیں۔[1] شیخ صدوق نے اپنی کتاب علل الشرایع میں امام کے فراوان سجدوں کو اس لقب کے لیے دلیل کے طور پر پیش کیا ہے اور امام باقرؑ سے ایک روایت نقل کرتے ہیں، آپؑ فرماتے ہیں: میرے والد (علی بن الحسین) کسی بھی نعمت کو یاد کرتے تھے تو اس کے لیے سجدہ شکر بجا لاتے تھے۔ جب بھی اللہ تعالی کی طرف سے ان سے کوئی مکر و حیلہ یا خطرہ ٹل جاتا تھا تو آپ سجدے میں گر پڑتے تھے اور جب بھی نماز سے فارغ ہوتے تھے تب بھی سجدہ کرتے تھے۔ اسی طرح جب کبھی دو آدمیوں کے درمیان اختلافات کو ختم کرنے پر کامیاب ہوتے تھے تو بھی سجدہ ریز ہوتے تھے۔ ان سجدوں کے آثار آپ کے سجدہ کے ساتوں اعضا میں نمایاں تھے اور انہی سجدوں کی وجہ سے سجاد لقب پایا۔[2] جزایری نے سید الساجدین لقب دینے کی دلیل بھی اسی روایت کو قرار دیا ہے[3] اور باقر شریف قرشی نے بھی کہا ہے کہ تاریخ اسلام میں صرف امام سجاد ہی کو سید الساجدین کا لقب ملا ہے۔[4]

متعلقہ مضامین

حوالہ جات

  1. ابن ابی الثلج، تاریخ اہل‌ البیت، ۱۴۱۰ق، ص۱۳۱.
  2. صدوق، علل الشرایع، ۱۳۸۵ق، ج۱، ص۱۳۳.
  3. جزایری، ریاض الابرار، ۱۴۲۷ق، ج۲، ص۱۳.
  4. قرشی، حیاة الامام زین العابدین، ۱۴۰۹ق، ج۱، ص۱۸۷.

مآخذ

  • صدوق، محمد بن علی، علل الشرایع، نجف، المکتبۃ الحیدریۃ، ۱۳۸۵ ھ
  • قرشی، باقر شریف، حیاۃ الامام زین العابدین، بیروت، دارالاضواء، ۱۴۰۹ ھ
  • ابن ابی الثلج، تاریخ اہل‌ البیت، قم، آل‌البیت، ۱۴۱۰ ھ
  • جزایری، سید نعمت‌ الله، ریاض الابرار، بیروت، مؤسسۃ التاریخ العربی، ۱۴۲۷ ھ