آیات نشوز

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
آیات نشوز
آیت کی خصوصیات
آیت کا نام: آیت نشوز
سورہ: سورہ نساء
آیت نمبر: 34 اور 128
پارہ: 5
صفحہ نمبر: 84 و 99
موضوع: فقہی
مربوط آیات: الرجال قوامون علی النساء

آیات نشوز، سورہ نساء کی آیت نمبر 34 و 128 کا کچھ حصّہ جو نُشوز اور اس کے احکام کو بیان کر رہا ہے۔ نشوز یعنی وہ نافرمانی جو ہمسر کے وظائفِ شرعی کو انجام دینے کے سلسلے میں کی جاتی ہے۔ سورہ نساء کی 34ویں آیت، نشوزِ عورت اور 128ویں آیت، نشوز مرد کے سلسلے میں ہے۔ اس آیت کے بارے میں تفسیری بحث کے علاوہ فقہی بحث بھی کی جاتی ہے۔

فقہاء 34ویں آیت سے استناد کرتے ہوئے اس بات کے معتقد ہیں کہ کسی خاتون کے ناشزہ ہونے کی صورت میں، پہلے تو شوہر اسے نصیحت کرے لیکن اگر اس کا فائدہ نہ ہو تو اس صورت میں بستر پہ اس کی طرف پشت کرکے سوئے یا اپنا بستر الگ کر لے اور اگر اس سے بھی فائدہ نہ ہو تو اسے بہت ہلکی سی جسمانی اذیت دے سکتا ہے۔

آیت نمبر 128 کی بنیاد پر اگر شوہر ناشز ہو جائے لیکن بیوی اپنی ازدواجی زندگی کو برقرار رکھنا چاہتی ہے تو وہ محبت اور عطوفت کے ذریعہ اپنی ازدواجی زندگی کو بچائے اور بعض حقوق سے چشم پوشی کرے۔

متن آیات

آیات نشوز
متن ترجمہ
وَاللَّـاتِی تَخَافُونَ نُشُوزَهُنَّ فَعِظُوهُنَّ وَاهْجُرُ‌وهُنَّ فِی الْمَضَاجِعِ وَاضْرِ‌بُوهُنَّ فَإِنْ أَطَعْنَكُمْ فَلَا تَبْغُوا عَلَيهِنَّ سَبِيلًا إِنَّ اللَّـهَ كَانَ عَلِيّاً كَبِيرً‌ا(سوره نساء/34) اور جن عورتوں کی نافرمانی کا خطرہ ہے انہیں موعظہ کرو، انہیں خوابگاہ میں الگ کردو اور مارو اور پھر اطاعت کرنے لگیں تو کوئی زیادتی کی راہ تلاش نہ کرو کہ خدا بہت بلند اور بزرگ ہے۔
آیات نشوز
متن ترجمہ
...اوَ إِنِ امْرَ‌أَةٌ خَافَتْ مِن بَعْلِهَا نُشُوزًا أَوْ إِعْرَ‌اضًا فَلَا جُنَاحَ عَلَيهِمَا أَن يصْلِحَا بَينَهُمَا صُلْحًا وَالصُّلْحُ خَيرٌ وَأُحْضِرَ‌تِ الْأَنفُسُ الشُّحَّ وَ إِن تُحْسِنُوا وَتَتَّقُوا فَإِنَّ اللَّـهَ كَانَ بِمَا تَعْمَلُونَ خَبِيرً‌ا (سوره نساء:128) اور اگر کوئی عورت شوہر سے حقوق ادا نہ کرنے سے یا کنارہ کشی کرنے سے طلاق کا خظرہ محسوس کرے تو دونوں کے لئے کوئی حرج نہیں ہے کہ کسی طرح آپس میں صلح کر لیں کہ صلح میں بہتری ہے اور بخل تو ہر نفس کے ساتھ حاضر رہتا ہے اور اگر تم اچھا برتاؤ کرو گے اور زیادتی سے بچوگے تو خدا تمہارے اعمال سے خوب باخبر ہے۔

شأن نزول

سورہ نساء کی دونوں آیت (34 و 128) کے لئے ایک شأن نزول بیان کیا جا رہا ہے جو درج ذیل ہے:

34ویں آیت کا شأن نزول

مفسرین کے مطابق، سوره نساء آیت 34، پیغمبر اسلامؐ کے ایک صحابی سعد بن ربیع اور ان کی زوجہ کے سلسلے میں نازل ہوئی۔[1] سعد کی زوجہ نے ان کی نافرمانی کی جس کے نتیجہ میں سعد نے انہیں مارا تھا۔ اسی بنا پر ان کی زوجہ اپنے باپ کے ساتھ پیغمبراکرمؐ کے پاس گئیں اور سعد کی شکایت کی۔ جب پیغمبرؐ نے قصاص کا حکم دیا تو اس نے قصاص سے چشم پوشی کر لیا اور یہ آیت نازل ہوئی۔[2]۔

128ویں آیت کا شأن نزول

کتاب تفسیر قمی کی ایک روایت کے مطابق جو اس آیت کے شأن نزول کے سلسلے میں نقل ہوئی ہے کہ رافع بن خدیج جو صحابی پیغمبرؐ تھے ان کی دو بیویاں تھیں کہ جن میں ایک سن رسیدہ اور دوسری جوان تھی۔ کسی اختلاف کی وجہ سے اس نے اپنی سن رسیدہ زوجہ کو طلاق دے دیا اور عدّت کے زمانے میں ہی اس سے کہا کہ اگر تم چاہو تو ہم اپنا جھگڑا ختم کر سکتے ہیں لیکن اس شرط کے ساتھ کہ اگر میں اپنی جوان بیوی کو تم پر مقدم کروں تو تمہیں کوئی اعتراض نہ ہوگا۔ لیکن اگر جدائی چاہتی ہو تو عدت تمام ہونے تک صبر کرو۔ اس کی زوجہ نے پہلے والے مشورہ کو قبول کر لیا اور آپس میں صلح و مفاہمت کر لیا پھر یہ آیت نازل ہوئی [3]۔

آیت کا فقہی نقطہ نظر

فقہاء، احکام نشوز کے لئے سورہ نساء کی 34ویں اور 128ویں آیت کے مضمون سے استفادہ کرتے ہیں۔[4]۔ نشوز یعنی ہمسر کی نسبت اپنے وظیفہ شرعی کو انجام نہ دینا۔[5]

34ویں آیت، ناشزہ عورت اور اس کے تئیں شوہر کی ذمہ داری کو بیان کر رہی ہے۔ فقہاء نے اس آیت کی بنا پر یہ فتوی دیا ہے کہ کسی خاتون کے ناشزہ ہونے کی صورت میں، پہلے تو شوہر اسے نصیحت کرے لیکن اگر اس کا فائدہ نہ ہو تو اس صورتحال میں خواب گاہ میں اس کی طرف پشت کر کے سوئے یا اپنا بستر الگ کر لے اور اگر اس بھی فائدہ نہ ہو تو اسے بہت ہلکی سی جسمانی اذیت دے سکتا ہے۔[6]

128ویں آیت، مَردوں کے نشوز ہونے کے سلسلے میں ہے کہ جس کی بنیاد پر فقہاء فرماتے ہیں کہ اگر شوہر ناشز ہو جائے لیکن بیوی اپنی ازدواجی زندگی کو برقرار رکھنا چاہتی ہے تو وہ محبت اور عطوفت کے ذریعہ اپنی ازدواجی زندگی کو بچائے اور بعض حقوق سے چشم پوشی کرے اور اس کے ذریعہ طلاق سے بچ سکتی ہے۔[7]۔

کلمہ ضرب (مارنا) کے معنی

تفصیلی مضمون: عورت کی جسمی تنبیہ

شیعہ اور اہلسنت مفسرین اور فقہاء کی نظر میں سورہ نساء کی 128ویں آیت میں کلمہ ضرب مارنے کے معنی میں استعمال ہوا ہے۔[8]۔ البتہ مارنے کے بھی کچھ شرائط و قوانین معین کئے ہیں جیسے کہ اس طرح مارا جائے کہ جس میں صرف اصلاح کا پہلو ہو اور کسی بھی طرح کا انتقام اور رنجش کا جزبہ نہ ہو[9] اور مارنے کی کیفیت بھی بہت ہی آہستہ ہو۔[10] اس کے باوجود بھی آیت‌ الله معرفت کہ جو دور حاضر کے محققِ قرآن ہیں وہ عورتوں کو مسواک کی لکڑی سے مارنے یا ان کو مطلقاً نہ مارنے یا ان کی عظمت و کرامت کا تحفظ کرنے جیسے دلائل سے استفادہ کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ یہ آیت نسخ ہو گئی ہے۔[11] ان کے مطابق اس آیت میں نسخ تمہیدی سے استفادہ کیا گیا ہے۔[12] نسخ تمہیدی یعنی شارع مقدس بعض رسومات جاہلیت کو ختم کرنے کے لئے پہلے تو ایسا حکم دیتے ہیں جو معاشرہ کے مطابق ہو پھر کچھ مدت گزر جانے کے بعد اسے نسخ کر دیتے ہیں۔[13]۔

حوالہ جات

  1. طبرسی، مجمع البیان، ۱۴۰۸ھ، ج۳، ص۶۸.
  2. شیخ طوسی، التبیان، دار إحياء التراث العربی، ج۳، ص۱۸۹؛ طبرسی، مجمع البیان، ۱۴۰۸ھ، ج۳، ص۶۸.
  3. قمی، تفسیر قمی، ۱۴۰۴ھ، ج۱، ص۱۵۴.
  4. مثال کے طور پر، مراجعہ کیجئے محقق اردبیلی، زبدۃ ‌البیان، المكتبۃ المرتضويۃ لإحياء الآثار الجعفريۃ، ص۵۳۶-۵۳۸؛ نجفی، جواهرالکلام، ۱۳۶۲ش، ج۳۱، ص۲۰۵-۲۰۸؛ صدوق، من لا یحضره الفقیہ، ۱۴۱۳ھ، ج۳، ص۵۲۰-۵۲۱؛ شهید ثانی، مسالک الافهام، ۱۴۱۳ھ، ج۸، ص۳۵۵-۳۶۳.
  5. شهید ثانی، الروضۃ البهیۃ، ۱۳۸۶ھ، ج۵، ص۴۲۷؛ محقق حلی، مختصرالنافع، ۱۴۱۰ھ، ص۱۹۱.
  6. ملاحظہ کریں: نجفی، جواهرالکلام، ۱۳۶۲ش، ج۳۱، ص۲۰۵-۲۰۷؛ شهید ثانی، مسالک الافهام، ۱۴۱۳ھ، ج۸، ص۳۵۶-۳۵۷.
  7. برای نمونہ، نگاه کنید بہ نجفی، جواهر الکلام، ۱۳۶۲ش، ج۳۱، ص۲۰۷-۲۰۸؛ شهید ثانی، مسالک الافهام، ۱۴۱۳ھ، ج۸، ص۳۶۳.
  8. مثال کے طور پر دیکھئے طبرسی، مجمع‌البیان، ۱۳۷۲ش، ج۲، ص۶۹؛ ابوالفتوح رازی، روض‌ الجنان، ۱۴۰۸ھ، ج۵، ص۳۵۰؛ طباطبایی، المیزان، ۱۳۹۰ھ، ج۴، ص۳۴۵؛ مکارم شیرازی، تفسیر نمونہ، ۱۳۷۱ش، ج۳، ص۳۷۲؛ فخر رازی، تفسیر الکبیر،‌۱۴۲۰ھ، ج۱۰، ص۷۲؛ صدوق، من لا یحضره الفقیہ، ۱۴۱۳ھ، ج۳، ص۵۲۱؛ شهید ثانی، مسالک، ۱۴۱۳ھ، ج۸، ص۳۵۶.
  9. نجفی، جواهر الکلام، ۱۳۶۲ش، ج۳۱، ص۲۰۷؛ خوانساری، جامع ‌المدارک، ۱۳۶۴ش، ج۴، ص۴۳۷؛ امام خمینی، تحریر الوسیلۃ، ۱۳۹۰ھ، ج۲، ص۲۷۳.
  10. مکارم شیرازی، احکام خانواده، ۱۳۸۹ش، ص۲۱۹.
  11. معرفت، شبهات وردود حول القران الكریم، ۱۳۸۸ش، ص۱۵۸.
  12. معرفت، شبهات و ردود حول القرآن الكریم، ۱۳۸۸ش، ص۱۵۸.
  13. احمدی ‌نژاد، فاطمہ و دیگران، «معنا شناسی نسخ تدریجی، مشروط و تمهیدی از منظر آیت ‌الله معرفت»، ص۱۸.


مآخذ

  • ابو الفتوح رازی، حسین بن علی، روض الجنان و روح الجنان فی تفسیر القرآن، تهران، بنیاد پژوهش های اسلامی، ۱۴۰۸ھ۔
  • احمدی ‌نژاد، فاطمہ و دیگران، «معنا شناسی نسخ تدریجی، مشروط و تمهیدی از منظر آیت‌الله معرفت»، تحقیقات علوم قرآن و حدیث، شماره ۱، بهار ۱۳۹۷ش.
  • امام خمینی، سید روح ‌الله، تحریر الوسیلۃ، نجف اشرف، مطبعۃ الآداب، چاپ دوم، ۱۳۹۰ھ۔
  • خوانساری، سید احمد، جامع‌ المدارک، تهران، مکتبۃ الصدوق، ۱۴۰۵ھ۔
  • شهید ثانی، زین ‌الدین بن علی، مسالک‌الافهام، قم، موسسہ المعارف الاسلامیہ، ۱۴۱۳ھ۔
  • شیخ صدوق، محمد بن علی، من لا یحضره الفقیہ، قم، انتشارات اسلامی، ۱۴۱۳ھ۔
  • شیخ طوسی، محمد بن حسن، التبیان فی تفسیر القرآن، بیروت، دار إحياء التراث العربی، بی‌تا.
  • طباطبایی، سید محمد حسین، المیزان فی تفسیر القرآن، بیروت، موسسہ الاعلمی للمطبوعات، ۱۳۹۰ھ۔
  • طبرسی، فضل بن حسن، مجمع البیان فی تفسیر القرآن، بیروت، دارالمعرفۃ، ۱۴۰۸ھ۔
  • طیب اصفهانی، عبدالحسین، اطیب البیان، تهران، اسلام، ۱۳۷۸ش.
  • فخر رازی، محمد بن عمر، التفسیر الکبیر، بیروت،‌ دار احیا التراث العربی، ۱۴۲۰ھ۔
  • قمی، علی بن ابراهیم، تفسیر قمی، قم، دار الکتاب، ۱۴۰۴ھ۔
  • محقق اردبیلی، احمد بن محمد، زبدۃ‌ البیان فی احکام القرآن، تهران، المكتبۃ المرتضويۃ لإحياء الآثار الجعفريۃ، بی‌تا.
  • معرفت، محمد هادی، شبهاتٌ و ردودٌ حولَ القرآن الکریم، قم، موسسه التمهید، ۱۳۸۸ش.
  • مکارم شیرازی، ناصر، تفسیر نمونہ، تهران، دار الكتب الاسلاميہ، ۱۳۷۴ش.
  • مکارم شیرازی، ناصر، احکام خانواده، قم، امام على بن ابى طالب عليہ السلام‌، چاپ دوم، ۱۳۸۹ش.
  • نجفی، محمد حسن، جواهر الکلام، قم، موسسه نشر اسلامی، ۱۴۱۷ھ۔