مرکزی مینیو کھولیں

ویکی شیعہ β

ابو مہدی المہندس (1954ء-2020ء) حشد الشعبی عراق کے کمانڈر ان چیف کے جانشین تھے۔ وہ حزب الدعوۃ الاسلامیۃ اور مجلس اعلائے اسلامی عراق کے رکن اور کتائب حزب ‌اللہ عراق و حشد الشعبی کے بانیوں میں سے تھے۔ داعش کو عراق سے باہر نکالنے میں وہ عراق کے سب سے زیادہ تاثیر گزار کمانڈر تھے۔ ابو مہدی 3 جنوری 2020ء کو امریکی فوجی حملہ میں بغداد ائرپورٹ کے قریب قاسم سلیمانی کے ساتھ شہادت کے درجہ پر فائز ہوئے۔

ابو مہدی المہندس
أبو مهدي المهندس.jpg
کوائف
نام جمال جعفر تمیمی
لقب المہندس
تاریخ پیدائش 1954ء
آبائی شہر بصرہ
ملک عراق
تاریخ/مقام شہادت 3 جنوری 2020ء
علت وفات/شہادت بغداد عراق
مدفن نجف ـ وادی السلام
دین اسلام
مذہب شیعہ
پیشہ جانشین کمانڈر حشد الشعبی
سیاسی کوائف
علمی و دینی معلومات

فہرست

زندگی‌ نامہ

جمال جعفر تمیمی، عرف ابومہدی المہندس نے سنہ ۱۹۵۴ء کو شہر بصرہ میں آنکھیں کھولیں[1] آپ کے والد عراقی اور آپ کی والدہ ایرانی تھیں[2] ۱۹۷۳ء میں آپ «الجامعۃ التکنولوجیۃ» یونیورسٹی میں داخل ہوئے۔ اور سول انجینئرنگ میں گریجویشن کی سند حاصل کی۔[3] اس کے بعد آپ علوم سیاسی کے تعلیمی شعبہ میں وارد ہوئے اور پی ایچ ڈی کی ڈگری لےکر فارغ التحصیل ہوگئے۔ اسی طرح آپ نے حوزہ علمیہ کے مقدمات کے دروس کو شہر بصرہ میں حوزہ آیت اللہ سید محسن حکیم میں پڑھا۔ [4]

 
ابومہدی مہندس، قاسم سلیمانی کے ساتھ

شہادت

ابومہدی 3 جنوری سنہ 2020ء کو امریکی فوجی حملہ میں بغداد ائرپورٹ کے قریب قاسم سلیمانی اور کچھ دیگر ساتھیوں کے ساتھ شہادت کے درجہ پر فائز ہوئے۔[5] ان سب کی تشییع جنازہ کاظمین، کربلا، نجف، اہواز، مشہد، تہران اور قم کے شہروں میں ہوئی اور ابومہدی المہندس کا جنازہ ان کی جائے ولادت بصرہ، میں تشییع ہونے کے بعد وادی السلام نجف میں دفن ہوا۔ [6]

 
تہران میں ابو مہدی المہندس اور جنرل قاسم سلیمانی کی تشییع جنازہ

بعض ملکوں میں جیسے بحرین،[7] یمن،[8] کشمیر اور پاکستان[9] ابو مہدی اور سردار سلیمانی کی شہادت کی مذمت کے سلسلہ میں مظاہرے منعقد ہوئے۔

سیاسی اور فوجی سرگرمیاں

ابومہدی المہندس ستر کی عیسوی دہائی میں حزب الدعوۃ الاسلامیۃ سے جڑ گئے اور عراق کی حکومت وقت کی طرف سے مطلوب قرار دئے جانے کے سبب سنہ۱۹۸۰ء میں عراق سے نکلنے پر مجبور ہوگئے۔ لہذا پہلے کویت اور پھر ایران چلے گئے۔ آپ نے ۱۹۸۵ء میں مجلس اعلائے اسلامی عراق کی رکنیت اختیار کی[10] ابومہدی سنہ۱۹۸۳ء میں سپاہ بدر کے رکن ہوگئے۔[11] اور ۱۳۸۱ش میں اس کے کمانڈر کے طور پر منصوب ہوئے۔ [12] صدام کے دور میں عراق کے وزیر خارجہ طارق عزیز پر ناکام قاتلانہ حملہ کے ذمہ دار تھے۔ [13] ابومہدی کتائب حزب‌اللہ عراق کے بانیوں میں سے تھے۔ [14] اور عراق میں حشد الشعبی کی تشکیل کے بعد اس کے کمانڈر ان چیف کے جانشین منصوب ہوئے؛ لیکن عملی میدان میں اور ماہرین کے خیال میں وہی حشد الشعبی کے کمانڈر شمار کئے جاتے تھے۔[15] داعش کی نابودی کے لئے ہونے والی منصوبہ بندی اور کارروائی انجام دینے میں آپ کا بنیادی کردار تھا۔ [16]

مہندس امریکا سے دشمنی میں مشہور تھے اور کہاجاتا ہے کہ وہ ان لوگوں میں سے تھے جنھوں نے سنہ۲۰۱۹ء میں بغداد میں امریکی سفارت خانہ پر حملہ کیا۔ [17] امریکا نے سنہ۲۰۰۹ء سے انھیں دہشت گردوں کی فہرست میں شامل کرلیا۔ [18]

ایک سیلفی ابومہدی کے ساتھ

"ابومہدی کے ساتھ ایک سیلفی" (فارسی عنوان: سلفی با ابومهدی) ایک فلم کا عنوان میں ہے جس میں حشد الشعبی کے کمانڈر کے عنوان سے جنگی محاذوں پر ابومہدی االمہندس کے حاضر ہونے کے انداز اور کیفیت کو بیان کیا گیا ہے۔ سنہ۲۰۱۶ء میں سید ہاشم موسوی کے زیر نگرانی بننے والی اس چالیس منٹ کی دستاویزی فلم میں صلاح الدین نامی جنگی َآپریشن اور جرف الصخر علاقہ واپس لینے کے حال احوال کو بیان کیا گیا ہے۔ [19]

متعلقہ صفحات

حوالہ جات

  1. من ہو الشہید القائد الحاج ابو مہدی المہندس؟
  2. دربارہ ابومہدی المہندس
  3. الکشف عن الاسم الحقیقی للقیادی"أبو مہدی المہندس"
  4. من ہو أبو مہدی المہندس؟
  5. «اخبار لحظہ بہ لحظہ از شہادت حاج "قاسم سلیمانی" و "ابومہدی المہندس" و واکنش‌ہا بہ آن»
  6. تصاویری از حضور پرشکوہ مردم بصرہ در مراسم تشییع ابومہدی المہندس
  7. مردم بحرین در اعتراض بہ ترور سردار سلیمانی و المہندس تظاہرات کردند.
  8. خشم یمنی‌ہا از ترور سردار سلیمانی
  9. تظاہرات مردم کشمیر و شہرہای مختلف پاکستان در پی شہادت سردار سلیمانی
  10. زندگی‌نامہ سردار شہید ابو مہدی المہندس
  11. باشگاہ خبرنگاران جوان: گفت‌وگویی منتشر نشدہ با شہید ابومہدی المہندس دربارہ رازہای سپاہ بدر
  12. شاہد یاران، مصاحبہ با ابومہدی المہندس، ش۸۷.
  13. مؤسسة کتائب حزب‌اللہ.
  14. المہندس العدو اللدود لأمریکا.
  15. مقتل قاسم سلیمانی.
  16. دربارہ ابومہدی المہندس
  17. المہندس العدو اللدود لأمریکا.
  18. المہندس العدو اللدود لأمریکا.
  19. سلفی با ابومہدی


مآخذ

  • ابنا خبر ایجنسی میں «اخبار لحظہ بہ لحظہ از ادامہ واکنش‌ہا بہ شہادت حاج "قاسم سلیمانی" و "ابومہدی المہندس" و مراسم تشییع»، مندرجات درج کرنے کی تاریخ: ۱۴ دی ۱۳۹۸، رجوع کی تاریخ ۲۶ دی ۱۳۹۸ش۔
  • عربی اسپوٹنک میں «الکشف عن الاسم الحقیقی للقیادی"أبو مہدی المہندس"»، مندرجات درج کرنے کی تاریخ ۴ جنوری ۲۰۲۰م، رجوع کی تاریخ ۲۶ دی ۱۳۹۸.
  • ایکنا خبر ایجنسی میں، «تصاویری از حضور پرشکوہ مردم بصرہ در مراسم تشییع ابومہدی المہندس»، مندرجات درج کرنے کی تاریخ ۱۵ دی ۱۳۹۸، رجوع کی تاریخ ۲۶ دی ۱۳۹۸.
  • تسنیم خبر ایجنسی میں «تظاہرات مردم کشمیر و شہرہای مختلف پاکستان در پی شہادت سردار سلیمانی»، مندرجات درج کرنے کی تاریخ ۱۳ دی ۱۳۹۸، رجوع کی تاریخ ۲۶ دی ۱۳۹۸.
  • العالم فارسی چینل پر «خشم یمنی‌ہا از ترور سردار سلیمانی»، مندرجات درج کرنے کی تاریخ ۱۷ دی ۱۳۹۸، رجوع کی تاریخ ۲۶ دی ۱۳۹۸.
  • جمہوری اسلامی خبر ایجنسی میں «دربارہ ابومہدی المہندس» مندرجات درج کرنے کی تاریخ ۱۳ دی ۱۳۹۸، رجوع کی تاریخ ۲۶ دی ۱۳۹۸.
  • شام عربی چینل پر«رجل إیران و مؤسس کتائب "حزب‌اللہ" العراقیۃ من ہو "أبو مہدی المہندس"؟» مندرجات درج کرنے کی تاریخ ۳ کانون الثانی ۲۰۲۰م، رجوع کی تاریخ ۲۶ دی ۱۳۹۸.
  • جمہوری اسلامی خبر ایجنسی میں «زندگی‌نامہ سردار شہید ابو مہدی المہندس» مندرجات درج کرنے کی تاریخ ۱۳ دی ۱۳۹۸، رجوع کی تاریخ ۲ بہمن ۱۳۹۸.
  • باشگاہ خبرنگاران جوان «گفت‌وگویی منتشرنشدہ با شہید ابومہدی المہندس دربارہ رازہای سپاہ بدر»، مندرجات درج کرنے کی تاریخ ۲۲ دی ۱۳۹۸، رجوع کی تاریخ ۲۶ دی ۱۳۹۸.
  • حوزہ کی رسمی خبر ایجنسی میں «مردم بحرین در اعتراض بہ ترور سردار سلیمانی و المہندس تظاہرات کردند.»، مندرجات درج کرنے کی تاریخ ۱۴ دی ۱۳۹۸، رجوع کی تاریخ ۲۶ دی ۱۳۹۸.
  • ٹی آر ٹی عربی پر «من ہو أبو مہدی المہندس..»، مندرجات درج کرنے کی تاریخ ۳ ینایر ۲۰۲۰م، رجوع کی تاریخ ۲۶ دی ۱۳۹۸.
  • فرانس۲۴ عربی پر«من ہو أبو مہدی المہندس..»، مندرجات درج کرنے کی تاریخ ۳ جنوری ۲۰۲۰م، رجوع کی تاریخ ۲۶ دی ۱۳۹۸.
  • المنار چینل پر«من ہو الشہید القائد الحاج ابو مہدی المہندس؟»، مندرجات درج کرنے کی تاریخ ۳ ژانویہ ۲۰۲۰م، رجوع کی تاریخ ۲۶ دی ۱۳۹۸.