واقعہ حکمیت

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں

حَکَمیّت جنگ صفین سے متعلق ایک تلخ تاریخی واقعہ ہے۔ اس واقعہ میں کوفہ والوں (امام علی ؑ کے لشکر) کی طرف سے ابو موسی اشعری اور شام والوں (معاویہ کے لشکر) کی طرف سے عمرو عاص نے باہمی گفتگو کے بعد مسلمانوں کے درمیان اختلافات اور جنگ کے خاتمے کیلئے قرآن کے مطابق حکم کرنے کا فیصلہ کیا۔

جنگ صفین میں شام کے لشکر کی شکست کے آثار نمودار ہونے کے بعد معاویہ اور عمرو عاص نے شکست سے بچنے کے لئے مکر و فریب کا سہارا لیتے ہوئے حکمیت کی درخواست کی۔ امام علی ؑ نے شروع سے اس کی مخالفت کی لیکن آپ کے لشکر میں موجود چند سادہ لوح افراد نے عمرو عاص کے دھوکے میں آکر اسے قبول کرنے پر اصرار کیا یہاں تک کہ قبول نہ کرنے کی صورت میں امام ؑ کو جان سے مار دینے کی دھمکی بھی دی گئی۔ آخر کار عمرو عاص کی مکاری رنگ لائی اور اس نے ابو موسی اشعری کو دھوکہ دے کر طے شدہ قرارداد کی خلاف ورزی کرتے ہوئے معاویہ کو خلافت کا حقدار بنا دیا۔ یوں حکمیت کی داستان امام علی ؑ کے لشکر میں بغاوت اور شامیوں کو حتمی شکست سے نجات دلانے کے ساتھ ختم ہوئی۔

حکمیت کی حقیقت

تفصیلی مضمون: