نماز قضا

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
مشہور احکام
رساله عملیه.jpg
نماز
واجب نمازیں یومیہ نمازیںنماز جمعہنماز عیدنماز آیاتنماز میت
مستحب نمازیں نماز تہجدنماز غفیلہنماز جعفر طیارنماز امام زمانہنماز استسقاءنماز شب قدرنماز وحشتنماز شکرنماز استغاثہدیگر نمازیں
دیگر عبادات
روزہخمسزکاتحججہاد
امر بالمعروف و نہی عن المنکرتولیتبری
احکام طہارت
وضوغسلتیممنجاساتمطہرات
مدنی احکام
وکالتوصیتضمانتکفالتارث
عائلی احکام
شادی بیاهمتعہتعَدُّدِ اَزواجنشوز
طلاقمہریہرضاعہمبستریاستمتاع
عدالتی احکام
قضاوتدیّتحدودقصاصتعزیر
اقتصادی احکام
خرید و فروخت (بیع)اجارہقرضہسود
دیگر احکام
حجابصدقہنذرتقلیدکھانے پینے کے آدابوقفاعتکاف
متعلقہ موضوعات
بلوغفقہشرعی احکامتوضیح المسائل
واجبحراممستحبمباحمکروہ


نماز قضا (ادا نماز کے مقابلے میں) جو نماز بھی اپنے وقت سے خارج ہونے کے بعد پڑھی جائے. جہاں تک کہ نمازیں واجب اور مستحب میں تقسیم ہوتی ہیں، انکی قضا کی بھی دو قسمیں ہیں. نماز بعض جگہ جیسے نابالغ یا حائضہ عورت کے لئے قضا نہیں ہے. کسی فرد کی وفات کے بعد دوسرا شخص اس کی قضا نمازیں ادا کر سکتا ہے.

نماز قضا کی تعریف

نماز قضا اس نماز کو کہتے ہیں کہ جو اپنے مخصوص وقت میں ادا نہ کی جائے یا یہ کہ صحیح طریقے سے ادا نہ کی گئی ہو.[1]

ادای نماز کا وقت

حتی کہ اگر ایک رکعات نماز بھی اپنے مقرر وقت پر پڑھی جائے وہ نماز، ادا ہے. مقرر کیا گیا وقت صبح کی نماز کے لئے طلوع فجر سے سورج طلوع ہونے تک، ظہر کی نماز کے لئے اذان ظہر سے لے کر اس وقت تک جب مغرب کی اذان ہونے میں پانچ رکعات نماز پڑھنے کا وقت ہو. (آیات عظام امام خمینی، گلپایگانی، اراکی، فاضل، صافی، نوری اور زنجانی کی نظر میں) یا سورج کے غروب ہونے تک (آیات عظام خامنہ ای، خوئی، بہجت، مکارم اور وحید کی نظر میں)، نماز عصر کے لئے نماز ظہر سے لے کر اذان مغرب ہونے میں ایک رکعات کا وقت ہو یا سورج غروب ہونے تک (جو تفصیل بیان ہو چکی ہے) ، نماز مغرب کے لئے اذان مغرب سے لے کر آدھی رات ہونے میں پانچ رکعات نماز پڑھنے کا وقت ہو اور نماز عشاء کے لئے نماز مغرب سے آدھی رات تک ایک رکعات پڑھنے کا وقت ہو.[2]

نماز قضا کی اقسام

نماز قضا کی دو قسمیں ہیں:

  • واجب نماز کی قضا جو ممکن ہے روزانہ والی نمازیں ہوں یا دوسری نمازیں جیسے نماز آیات اور نماز طواف
  • مستحب نمازوں کی قضا[3]

وہ جگہ جہاں نماز کی قضا واجب نہیں ہے

بعض اشخاص کے لئے جو نمازیں ادا نہیں کیں، انکی قضا کرنا واجب نہیں ہے:

  1. نابالغ افراد
  2. حائض اور نفساء عورتیں
  3. پاگل اور دیوانے افراد
  4. وہ افراد جو بے اختیار بے ہوش ہو گئے ہیں
  5. کافر مسلمان ہونے کے بعد.[4]

والدین کی قضا نمازیں

واجب نمازوں میں سے ایک، والد کی قضا نماز ہے جو کہ بڑے بیٹے (والد کی وفات کے وقت سب سے بڑا بیٹآ) پر واجب ہے. بعض مراجع جیسے آغا خامنہ ای، گلپایگانی، اراکی، مکارم، نوری، فاضل، بہجت، صافی کے فتوے کے مطابق والدہ کی قضا نمازیں بھی بڑے بیٹے پر واجب ہیں.[5]

نماز قضا کے بعض احکام

  • جس کی کچھ نمازیں قضا ہو جائیں اور انکی تعداد کے بارے میں علم نہ ہو تو، اگرچہ وہ کم مقدار میں بھی قضا کرے کافی ہے.[6]
  • قضا نماز کا کوئی معین وقت نہیں ہے اور اسے کسی وقت بھی انجام دیا جا سکتا ہے.[7]
  • اگر نماز کے بعد پتہ چلے کہ جو نماز پڑھی ہے وہ باطل تھی، تو اس کی قضا بجا لائے.[8]
  • جو نمازیں قضا ہوئی ہیں انکی قضا اسی کیفیت سے بجالانی چاہیے.[9]
  • وفات سے پہلے ہر شخص اپنی قضا نمازوں کا ذمہ دار خود ہے اور کوئی دوسرا شخص کسی زندہ فرد کی قضا نمازیں نہیں پڑھ سکتا.[10]

حوالہ جات