مفتی سید محمد عباس شوشتری

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
مفتی سید محمد عباس شوشتری
ذاتی معلومات
مکمل نام مفتی سید محمد عباس موسوی شوشتری
لقب/کنیت مفتی،افتخار العلما،تاج العلما،شمس العلما
نسب موسوی کنتوری
تاریخ ولادت آخر ربیع الاول ۱۲۲۴ ھ ق
آبائی شہر لکھنؤ
تاریخ وفات 25 رجب المرجب 1306 ھ
مدفن امام باڑہ غفران مآب لکھنؤ
علمی معلومات
اساتذہ سید حسین علیین،عبدالقوی،...
شاگرد سید حامد حسین موسوی،ناصر الملت،...
اجازہ روایت از سید حسین علیین،
اجازہ اجتہاد از سید حسین علیین،
تالیفات روائح القرآن،جواہر عبقریہ،شریعت غرّا،جلجلۃ السحاب فی حجیۃ ظواہر الکتاب،...
سیاسی-سماجی فعالیت
سماجی قاضی

مفتی سید محمد عباس شوشتری (آخر ربیع الاول ۱۲۲۴ ھ ق-١٣٠٦ ھ ق) برصغیر پاک و ہند کے شیعہ کنتوری خاندان کے صاحب اجتہاد ،فقیہ، متکلم ،دنیائے ادبیات عرب کی معروف شخصیت تھے ۔آپ سید حامد حسین موسوی صاحب عبقات الانوار اور سید ناصر حسین معروف ناصر الملت کے استاد اور سید العلما آیت اللہ سید حسین علیین کے شاگرد تھے ۔300 کے قریب کتابیں تالیف کیں ۔اس زمانے کے شیعہ حوزۂ علمیہ نجف تک آپ کی شہرت کا چرچا تھا ۔لکھنؤ میں فوت ہونے کے بعد غفران مآب کے امام باڑے میں دفن ہوئے۔

تعارف

  • نام سید محمد عباس موسوی
  • لقب: مفتی، افتخار العلما، شمس العلما ، تاج العلما۔

نسب

آپ کا نسب 17 پشتوں کے واسطے سے حضرت امام موسی کاظم علیہ السلام سے ملتا ہے ۔آپ کے جد امجد سید محمد جعفر ۱۲۱۰ھ میں شوشتر سے لکھنٔو آئے ۔آیت اللہ سید نعمت اللہ جزائری آپ ہی کے خاندان کے بزرگ علما میں سے ہیں ۔آپ کے والد کا نام سید علی اکبر تھا جو نہایت منکسر اور عبادت گزار ہونے کے ساتھ ساتھ صاحب تالیف بھی تھے ۔ہندوستان میں یہ خاندان سادات نوریہ اور کنتوری خاندان کے نام سے معروف ہے۔

پیدائش

آپ کی ولادت آخر ربیع الاول ۱۲۲۴ ھ ق ہفتہ کی رات بمقام لکھنؤ (ہندوستان) ہوئی ۔ شوشتر کے خاندانی رواج کے مطابق آپ کے والد سید علی اکبر نے آپ کے چچا کے نام سید عباس کے نام پر آپ کا نام سید محمد عباس رکھا ۔

وفات

آپ کی وفات ہندوستان کے شہر لکھنؤ میں 25 رجب المرجب لکھی گئی اور شعرا نے آپ کی وفات کی تاریخ شعری قطعات اور تجلیات تاریخ عباس کے صج 1 ص196 پر 1306 ھ ق مذکور ہے ۔لیکن کتاب تجلیات تاریخ عباس میں خود سید محمد عباس نے وفات سے ایک روز پہلے حکیم سید امیر حسین صاحب کو اپنا سن 80 سال بتایا اس اعتبار سے وفات کا سن 1304 ھ ق بنتا ہے ۔وفات کے بعد آپ کو دریا پر غسل دیا گیا ۔ نماز مغرب کے بعد عظیم الشان جم غفیر کی موجودگی میں امام باڑہ غفران مآب میں نماز جنازہ ادا کی گئی ۔مجمع میں جناب سید ابوالحسن عرف ابو صاحب اور جناب سید ابوالحسن عرف بچھن صاحب موجود تھے ابو الحسن بچھن کے اصرار پر جناب سید ابو صاحب قبلہ نے نماز جنازہ پڑھایا اور بالآخر اس گنجینۂ علم و کمال کے آفتاب کو غفران مآب کے امام باڑےمیں آدھی رات کی تاریکی میں دفنا دیا گیا ۔

ازدواج

مفتی صاحب کی پہلی شادی میرن صاحب کی صاحزادی سے ہوئی جو مختار الدولہ وزیر اول نواب آصف الدولہ کے خاندان سے تھیں ۔ دوسری شادی حاج آغا عباس علی صاحب مرحوم اصفہانی الاصل کی دختر کے ساتھ ہوئی۔ تیسری شادی عسکری صاحب کی دختر سے ہوئی ۔

اولاد

پہلی شادی سے مولانا سید محمد صاحب عرف وزیر صاحب اور حاجی سید حسن صاحب تھے ان کے علاوہ بھی متعدد اولادیں ہوئیں مگر وہ سب کمسنی میں فوت ہو گئیں ایک صاحزادی البتہ سن رشد کو پہنچی جن کا عقد سید عبدالجواد صاحب کے ساتھ ہوا کچھ عرصہ کے بعد وہ بھی لاولد فوت ہوئیں ۔

دوسری بیوی سے مولوی سید حسین صاحب صابر، مولوی سید امیر حسن صاحب اور مولوی سید نور الدین اور تین صاحزادیاں ہوئیں دیگر اولادیں صغر سنی میں فوت ہوگئیں ۔

تیسری بیوی سے دو صاحزادے مفتی سید محمد علی صاحب اور مفتی احمد علی صاحب اور ایک صاحزادی ہیں ۔

اہم واقعات

  • شاہی وظیفہ مفتی صاحب کیلئے ۱۲۵۸ ہجری میں محمد علی شاہ مرحوم شاہ اودھ کی طرف سے علمی قدردانی کے بدلے میں مناسب وظیفہ مقرر ہوا۔ اسی زمانے میں جواہر عبقریہ تصنیف کی۔
  • ۲۰ جمادی الاول 1259 ہجری کو مفتی صاٖحب کے تحریری رسالے کی ترغیب کی بدولت مدرسہ شاہی قائم ہوا اور تین سال اس میں مشغول تدریس رہے ۔
  • ۱۲۶۴ ہجری قضاوت کا عہدہ قبول کیا۔محکمے کیلئے قوانین مرتب کئے ۔
  • ۱۲۷۴ ھ میں واقعہ غدر پیش آیا مفتی صاحب قصبہ زید پور تشریف لے گئے اور دو تین مہینے وہاں‌قیام کیا ۔
  • ۱۲۷۶ ھ میں آب و ہوا موافق نہ ہونے کی بنا پر کلکتہ سے چھٹی پر واپس آ گئے ۔
  • 1298ھ میں دوبارہ کلکتہ آئے۔ یہاں انہیں افتخار العلما اور تاج العلما کا لقب دیا گیا ۔
  • ملکہ وکٹوریہ کی جانب سے شمس العلما کا خطاب ملا ۔
  • 1306ھ کے اوائل میں لکھنؤ واپس آ گئے اور وفات تک یہیں رہے ۔[1]

ذاتی خصوصیات

  • بچپن سے ہی عبادت کا شوق طینت میں سموئے ہوا تھا اور بچپنے ہی میں طولانی سجدے کرنے کی عادت رہی بعض اوقات سجدے اس قدر طولانی ہوتے کہ پسینے سے شرابور ہو جاتے ۔کبھی سجدے میں سر رکھ کر ہزار مرتبہ تک ذکر الہی کر ڈالتے. اپنے پم سنوں کو عبادت کی طرف راغب کرتے ۔[2] ساری زندگی اسی پر قائم رہے اور اہل محلہ شب بیداری کی مناجات سے با خبر رہے ۔ [3] ایک محلے کا محافظ ہندو تھا۔ اس نے رات کو کسی کے بہت زیادہ گریہ کی آواز سنی ۔صبح اہل محلہ سے کہا اس پر کیا مصیبت پڑی ہے کہ اس طرح گریہ کرتا ہے کہ دل بھر آتا ہے ۔مفتی صاحب کو جب اس واقعے کی خبر ملی تو آپ نے اپنی مناجات کو ایک نظم میں بیان کرتے ہوئے کہا :اے بار الہا ! میری حالت ایسی ہو گئی ہے کہ دشمن بھی مجھ پر رحم کرتے ہیں۔ میر خورشید کے خواب میں آپ نے کہا اللہ نے مجھے دو جنتوں دی ہیں ۔میں نے ایک اپنے لیے اور دوسری اپنے احباب کیلئے رکھی تھی۔یہ آیت: و لمن خاف مقام ربہ جنتان(اور جو اپنے پروردگار کے مقام سے ڈرتا رہا اس کے لئے دو جنتیں ہیں ) اس خواب کی تصدیق کرتی ہے۔[4]
  • آپ کی استجابت دعا زبان زد عام تھی اور آپ صاحب کرامت بھی تھے ۔اس کے چند نمونے تجلیات تاریخ عباس میں مذکور ہیں ۔[5]
  • عدل و انصاف کے بیان میں اسی قدر کافی ہے کہ حکومت کی جانب سے جرائم کی تحقیق اور اجرائے احکام کیلئے افتا کا محکمہ آپ کے سہرد تھا۔اپنے زمانے میں جود و سخا ،زہد و توکل ،قناعت پسندی،... جیسی دیگر اوصاف اخلاقی کا بے نظیر نمونہ تھے ۔

واقعات

آپ کی زندگی کے بہت سے ایسے واقعات ہیں جو قابل تحریر ہیں لیکن یہاں چند ایک انکی زندگی کے واقعات ذکر کرتے ہیں جو انکی پاکیزہ اور طیب زندگی کی عکاسی کرتے ہیں ۔

  • لکھنؤ میں خشک سالی کی بنا پر لوگوں نے مفتی صاحب سے نماز استسقاء کی تمنا ظاہر کی مقررہ وقت پر نماز استسقا پڑھی گئی اور رحمت الہی کا نزول ہوا ۔۔[6]
  • لکھنؤ کے قیام کی ایک چلچلاتی دھوپ میں آپ کے گھر کے ساتھ والے چھپر میں آگ بھڑک اٹھی جسکی وجہ سے اہل خانہ گھر میں محبوس ہو کر رہ گئے۔اس عالم میں آپ نے رو رو کر بارش برسنے کی دعا کی مستجاب ہوئی جبکہ آسمان پر کہیں بادلوں کا نام و نشان تک نہ تھا اسکے باوجود ایک بادل کا لکہ نمودار ہوا جو پھیلنے لگا اور آنا فانا برسنے لگا یہانتک برسا کہ آگ خاموش ہو گئی اور تمام اہل خانہ محفوظ رہے۔حیرت کی بات یہ ہے کہ وہ صرف اسی آگ کی جگہ پر برسا۔ اطراف پہلے کی طرح خشک ہی رہے ۔یہ واقعہ 15صفر1274ھ ق کا ہے ۔اس واقعے کی نظم کہی جس کے ابتدائی اشعار یہ ہیں :

وقع الحریق ظھرة فی داری فتحیرت فھا اولوا الابصار
میرے گھر میں آگ بھڑک اٹھی تو گھر میں موجود صاحبان بصیرت پریشان ہو گئے
فتلھبت شعل ولم یوجد سوی قطرات دمع بالتضرع جار
آگ کے شعلوں نے اسے لپیٹ میں لے لیا اور میرے پاس تضرع کے آنسؤں کے قطروں کے سوا کچھ نہیں تھا
فدعوت ربی بانھا سحابة فاجابنی بھواطل الامطار
میں نے اپنے رب سے بادلوں کی دعا کی تو اس نے مسلسل بارش کے ساتھ مجھے جواب دیا۔[7]
  • ایک مرتبہ کرایہ کے مکان میں رہتے تھے ۔ایک روز باریش شخص مضطربی کے عالم میں آیااور کہنے لگا کہ اس مکان میں پہلے ایک حافظ صاحب رہتے تھے وہ کہاں ہیں ۔ آپ نے فرمایا کہ اب تو چند ماہ سے میں یہاں رہتا ہوں۔اسنےکہا:نہایت ضروری ان سے کام ہے انکا پتہ کروا دیجئے۔ جناب مفتی صاحب کو اس کے اضطراب پر بیحد رحم آیا دوسرے کمرے میں جاکر واپس آئے اور فرمایا کہ تم کسی کی تلاش نہ کرو اپنے گھر جاؤ تمہارے یہاں فرزند نرینہ پیدا ہوا ہے ۔ ہر چند وہ شخص سنی المذہب تھا مگر متعجب ہو کر گھر دوڑا تو دیکھا لڑکا پیدا ہو چکا تھا۔واپسی پر کچھ ہدیہ میں رقم لایا ،کہنے لگا پہلے یہاں کے مقیم حافظ صاحب نجومی تھے کئی مرتبہ درد زہ کیلئے ان سے تعویذ لیا تھا۔آپ نے بغیر تعویذ بتا دیا ۔یہ ہدیہ قبول کریں ۔ آپ نے قبول نہ کیا۔ اس وقت کے حاضرین میں سے مرزا محمد زکی خان صاحب نے دریافت کیا۔آپ نے جواب دیا : یہ شخص آیا اور اس کے اضطراب پر مجھے رحم آیا میں نے قرآن مجید سے تفاؤل کیا حضرت مریم کا ذکر اور حضرت عیسی کی ولادت کا ذکر برآمد ہوا: فَأَجَاءَهَا الْمَخَاضُ إِلَىٰ جِذْعِ النَّخْلَةِ قَالَتْ يَا لَيْتَنِي مِتُّ قَبْلَ هَـٰذَا وَكُنتُ نَسْيًا مَّنسِيًّا ﴿٢٣﴾فَنَادَاهَا مِن تَحْتِهَا أَلَّا تَحْزَنِي [8] یہ دیکھ کر میں نے کہدیا کہ جاؤ تمہارے یہاں لڑکا پیدا ہو چکا ۔[9]

تعلیمی مراحل

چار پانچ برس کی عمر میں قرآن اور ابتدائی تعلیم سنی مسلک کے عالم دین مولوی عبد القوی کے پاس مکمل کی ۔ سریع الفہمی کی بدولت تین دن حروف تہجی پڑھنے کے بعد ہی پند نامہ سعدی پڑھا۔ساتویں برس کے بعد مولوی عبدالقدوس صاحب کے شاگرد ہوئے۔ ملا حسن صاحب شرح معلم سے مصباح شروع کی اس کے بعد مولوی قدرت علی صاحب کے شاگرد ہوئے ۔ مولوی عبدالعلی سے کتب معقولات و حساب و فلسفہ ہئیت و ہندسہ پڑھا۔بارہ سال کی کم عمری میں ملا حسن حمد اللہ پر ایسے مفید حواشی لکھے جو سن کے لحاظ سے مطابقت نہیں رکھتے تھے۔ چودہ سال کی عمر میں فارغ التحصیل ہوئے اور کتب بینی کا سلسلہ شروع ہوا۔

آتھ سال کے سن میں ایک روز ایک طالب علم نے فوائد ضیائیہ معروف بہ شرح جامی کا نہایت مشکل مسئلہ دریافت کیا۔آپ نے فورا اسے سمجھا دیا ۔ طالب علم نے کہا: میں نے فوائد ضیائیہ تیرہ مرتبہ اس شہر کے علما سے پڑھی ہے لیکن کسی نے اس مسئلے کو حل نہیں کیا ۔ اب میں آپ سے پڑھوں گا۔

آپ کی حاضر جوابی کا اس واقعہ سے اندازہ لگایا جا سکتا ہے :آپ نے سات سال کی عمر میں سُلّم العلوم کے شارح مولوی عبد القدوس کے پاس مصباح پڑھی۔ وہ بعض اوقات اپنے مذہبی تعصب کی بنا پر گمراہی کی گفتگو بھی کرتا ۔ایک مرتبہ مفتی صاحب کی موجودگی میں کسی نے اس سے پوچھا کہ مولانا کیا بات ہے کہ ہم سنیوں سے لوگوں کو شیعہ ہوتے تو دیکھتے ہیں لیکن کبھی کسی شیعہ کو سنی ہوتے نہیں دیکھا ۔عبد القدوس نے جواب دیا۔ اہل سنت حضرات اس طیب و طاہر غذا کی مانند پاک ہیں کہ جو فضلے میں تبدیل ہو جاتے ہیں اور فضلہ غذا میں دوبارہ تبدیل نہیں ہوتا ہے ۔مفتی صاحب نے اپنے استاد سے مخاطب ہو کر کہا : آپ کی اس دلیل (یعنی کسی چیز کے فضلہ بن جانے کے بعد اس کا پاکیزگی میں تبدیل ہونا ممکن نہیں ہے ) کے مطابق خلفائے ثلاثہ کہ جو پہلے کافر و ناپاک تھے پس وہ طہارت اسلام کی طرف منقلب نہیں ہوئے ہونگے ۔یہ سن کر عبد القدوس متحیر و پریشان ہو گیا ۔[10]

طالب علمی کے زمانے میں تحصیل علم کا اس قدر شوق تھا کہ ضروری کاموں پر بھی تحصیل علم کو ترجیح دیتے یہانتک کہ کھانے پینے اور اصلاح خط وغیرہ کو وقت کا ضیاع سمجھتے تھے ۔دسترخوان پر اگر پہلے روٹی آگئی تو سالن کا انتظار کئے بغیر اسے کھانا شروع کر دیتے تا کہ جلدی فراغت ہو جائے اور کتب بینی میں تاخیر نہ ہو ۔[11]

تحصیل علم طب

مولوی عبدالقوی صاحب کی ترغیب و تشویق کی بدولت فن طب کا شوق ہوا لہذا موجز اور اقصرائی کی کتب مرزاحکیم عوض علی کے پاس پڑھیں ۔ نفیسی ، شرح اسباب قانون کو طبیب الملوک مرزا علی خان اور مسیح الدولہ مرزا حسن علی خان سے پڑھا۔کچھ عرصہ تک مطب بھی کیا یہانتک کہ فن طب میں بہرہ تام حاصل ہوا ۔آخر کار طب کی تعلیم دینا شروع کی اور بہت سے شاگرد کامل طبیب کی صورت میں نکلے ۔ایک روز مطالعہ کے دوران یہ حدیث الطبیبب ضامن ولو کان حاذقا (طبیب مریض کا ضامن ہے اگرچہ وہ حاذق ہی کیوں نہ ہو ) نظر سے گزری تو طبابت سے کنارہ کشی اختیار کی اور پھر ساری زندگی کسی کا علاج نہیں کیا۔بہرحال مولوی عبدالقوی، مولوی قدرت علی اور مولوی عبدالقدوس سے کتب درسیہ ختم کیں۔اٹھارہ برس کی عمر میں ایک قوی عالم دین بن چکے تھے ۔اسی سن تک چند رسالے بھی تالیف کئے ۔[12]

فقہی دروس

اٹھارھویں برس سید العلما سید حسین بن سید دلدار حسین کے شرائع الاسلام کے دروس میں اپنے برادر زادہ سید ہادی کے ساتھ شرکت شروع کی اور فقہ کی ریاض المسائل سمیت کتب پڑھیں۔اکیسویں برس علم تجوید کی تکمیل کا شوق ہوا تو اس عہد کے مشہور قاریوں سے پڑھنے کے بعد اس فن میں کمال حاصل کیا ۔[13]

مفتی صاحب کو سید حسین علیین نے اجازۂ روایت اور اجازۂ اجتہاد دیا ۔ یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ لکھنؤ کے ایک شخص محمد بن محد امان مفتی صاحب کے درس میں شریک ہوتے تھے ۔انہیں جاہ و عظمت اور صاحب علم کہلوانے کا شوق تھا ۔ مفتی صاحب کی بعض کتب کا مسودہ بھی انکے پاس تھا ۔ان میں سے ایک نور الابصار فی مسائل الاصول والاخبار بھی تھی۔ آخرکار وہ عراق گئے تو وہاں کے مراجع عظام کو اپنے نام سے یہ دکھا کر جناب شیخ ابو محمد حسن بن حسین آل عصفور ، آقا شیخ خلف بن علی بن الحسین آل عصفور،آقا حسن بن الشیخ جعفر ،آقا حسن الزکی ،شیخ سلیمان بن احمد بن عبد الجبارع،سید کاظم بن سید قاسم رشتی اور جناب شیخ محمد حسن نجفی صاحب جواہر الکلام سے اجازے لکھوائے۔ حقیقت میں یہ تمام اجازے بھی مفتی صاحب کے ہی ہیں چونکہ نور الابصار فی مسائل الاصول والاخبار کے اصل مؤلف مفتی سید محمد عباس ہیں۔

اسمائے اساتذہ

  • مولوی عبد القوی
  • مولوی عبدالقدوس
  • ملا حسن
  • مولوی قدرت علی
  • مولوی عبدالعلی
  • مرزاحکیم عوض علی
  • مرزا علی خان
  • مرزا حسن علی خان
  • سید حسین بن سید دلدار حسین

شاگرد

مفتی صاحب کے شاگردوں کی تعداد بہت زیادہ ہے ہم یہاں چند ایک اسما کے ذکر پر اکتفا کرتے ہیں:

  • سید مہدی شاہ کشمیری:١٤ رجب سن ١٢٣٣ ھ میں ولادت ہوئی اور ١٣١٤ ھ ٢٥ جمادی الاخر منگل کو وفات پائی۔
  • سید حامد حسین موسوی نیشاپوری
  • مولانا سید ابوالحسن بن سید علی بن سید صفدر رضوی
  • سید حیدر علی
  • مرزا محمد علی
  • سید ناصر حسین معروف ناصر الملت
  • سید محمد صاحب جونپوری
  • سید علی محمد بن سلطان العلما
  • سید علی جواد
  • سید نقی صاحب
  • ......۔[14]

تالیفات

تفسیر

  1. تفسیر سورہ رحمن (عربی)
  2. تفسیر سورہ ق (عربی )
  3. تفسیر آیت سیجنبہا الاتقی (عربی)
  4. انوار یوسفیہ تفسیر سورہ یوسف (عربی)
  5. حواشی قرآن (عربی )
  6. حسناء عالیہ المہر فی تفسیر سورہ الدہر. (فارسی)[15]

حدیث

  1. ترجمۃ الاربعین: چالیس حدیثوں کی فارسی شرح
  2. سیف مسلول: جامع الاصول سے بعض احادیث کا استخراج کر کے کلام فرمایا ہے (عربی )[16]
  3. نزع القوس من روضۃ الفردوس: روضۃ الفردوس کی چند احادیث کے متعلق گفتگو ہے ۔[17]
  4. ترصیع الجواہر: جواہر سینہ سے احادیث قدسیہ کی تلخیص۔ (عربی )[18]
  5. جواہر الکلام ملقب با نہارالانوار: کافی کی اصول دین سے متعلق احادیث کی لطیف شرح ہے ۔ (عربی )
  6. التقاط اللئالی من الامالی : امالی صدوق کی منتخب احادیث (عربی)
  7. روح الایمان ۔اصول دین کے متعلق چالیس حدیثوں کی شرح ۔ (عربی)

علم کلام

  1. روائح القرآن فی فضائل امنا الرحمن۔ (عربی):حضرت علی بن ابی طالب و ذریت ائمہ طاہرین کے مناقب اور دشمنان اہل بیت کے مطاعن کے بیان میں ایک عظیم الشان کتاب ہے۔ ایک سواکتیس آیتیں اہل سنت کی معتبر روایات و تفاسیر کی کتب سے بیان کی ہیں ۔علامہ حلی کی کشف الحق و نہج الصدق میں مذکور آیات پر فضل بن روز بہان کے اعتراضات کا جواب دیا ہے ۔کتاب کے مقدمے میں بسم اللہ الرحمن الرحیم اور اہدنا الصراط المستقیم کی نفیس تفیسر اور کتاب کے آخر میں علامہ حلی کی کتاب اور اس کتاب میں موجود 9 فرق بیان کئے ہیں ۔1257ھ میں 110 آیتوں پر ختم کر دی پھر اس میں باقی آیات کا اضافہ کیا۔1271ھ میں مکمل ہوئی اور 1277ھ میں چھپی اور 1278ھ میں اسکی طبع ختم ہوگئی۔
اس کتاب کا نام روح القرآن رکھا گیا بعد میں روائح القرآن رکھا گیا۔
نجف اشرف میں حجت الاسلام آقای شیخ مرتضی انصاری شوستری نے اس کتاب کے بارے میں کہا یہ کتاب ہمارے لئے فخر کا باعث ہے ۔خداوند عالم اس کتاب کے فیوض کو ہمیشہ تا قیام قیامت بسیط برقرار رکھے جو مذہب حق کا قلعہ مستحکم اور خزانہ ہے ۔
  1. شعلہ جوالہ: احراق مصاحف کے متعلق نادر لطیف کتاب (عربی )
  2. آتشپارہ: ترجمہ شعلہ جوالہ بزبان فارسی۔
  3. بغیۃ الطالب فی اسلام ابی طالب (عربی ): حضرت ابو طالب کا مسلم و ناجی ہونا ثابت کیا ہے ۔
  4. جواہر عبقریہ: تحفہ اثنا عشریہ کے باب غیبت امام عصر کا لاجواب جواب ہے ۔ (فارسی )
  5. جواب منتہی الکلام: یہ مسودات پانچ جلدوں میں مرتب ہیں (فارسی )
  6. روح الجنان فی مطاعن عثمان (عربی )
  7. دلیل قوی (فارسی )[19]:اپنے استاد مولوی عبدالقوی نے بیماری کے دوران خواب میں اصحاب خمسہ کو دیکھا .اسکے بعد اپنے استاد کیلئے اسے تصنیف کیا۔یہ ایران میں بھی چھپ چکی ہے ۔
  8. مقتل عثمان (عربی)
  9. تائید الاسلام: مسیحیون کے سوالات کا جواب (اُردو)
  10. مطرفیہ فی الرد علی المتصوفہ (عربی )[20]
  11. نصر المومنین ملقب بمقام محمود:رد شبہات یہود مشتمل برمضامین لطیف وتحقیقات انیق (فارسی)
  12. درہ بہیتہ در مبحث تقیہ۔[21]
  13. رسالہ رجعت
  14. منابرالاسلام: نصائح ،مواعظ اور اخلاق پر مشتمل دو جلدیں ہیں ۔(عربی )
  15. مواعظ لقمانیہ: اس میں حضرت لقمان کے مواعظ جمع کر کے شرح کی ہے ۔
  16. رسائل مواعظ: ٣ جلد ایک رسالہ مولوی مہدی شاہ صاحب ،دوسرا رسالہ مولوی سید اصغر حسین پاروی اور تیسرا رسالہ مولوی سید رفیق علی کیلئے تالیف کیا ۔
  17. موعظہ حسنہ ۔
  18. مجالس المواعظ ٥ جلد (اردو)
  19. رسالہ برد سرہ ابواب الجنان[22]

فقہ و اصول

  1. شریعت غرّا: یہ کتاب فقہ استدلالی کے مطالب عالیہ کو بالتزام سجع دقاقبہ قالب فصاحت میں ڈھالا ہے۔ بحث اموات تک ہے ۔موت کی وجہ سے نامکمل رہی ۔ (زبان عربی )
  2. رشحۃ الافکار فی تحدید الاکرار: یہ رسالہ وجیزہ لائق (سید حسین علیین) کے مبحث کُر کی شرح ہے۔ (عربی )
  3. اساور عسجدیہ علی مبحث الفوریہ: زمانہ تحصیل علم میں معالم الاصولکی بحث فوریت پر بطور حاشیہ لکھا۔ (عربی )
  4. استحضار ۔
  5. نور الابصار فی مسائل الاصول والاخبار۔(عربی )[23][24]
  6. کتاب القضاخطا در حوالہ: Closing </ref> missing for <ref> tag: منصب اقتا کے زمانہ میں یہ کتاب احکام قضا کے متعلق لکھی تھی ۔(عربی )
  7. نبراس فی حجیۃ القیاس (عربی )[25]
  8. جلجلۃ السحاب فی حجیۃ ظواہر الکتاب: [26] جناب سید العلماء نے اس کی بیحد مدح تقریظ میں لکھی ہے۔(١٢٦٣ ھ)
  9. فوح العبیر فی الاحباط والتکفیر ۔[27]
  10. صفحۃ الماس فی الارتماس[28]  :غسل ارتماسی آنی الحصول ہے یا تدریجی الاصول ، کی تحقیق ہے۔
  11. سماء مدرار فی الاصول و الاخبار ۔ناتمام رہ گئی (عربی )
  12. روض اریض فی منجزات المریض۔ (عربی )[29]
  13. معراج المومنین ۔ در طہارت و صلواة (فارسی )[30]
  14. بناء الاسلام فی احکام الصیام (فارسی )
  15. تحفہ حسینیہ فی حل عبارة من الصومیہ (عربی )
  16. طریق جعفری ۔ مسائل کا جواب (اُردو)
  17. صلواة النار (فارسی)
  18. لسان الصباح ۔ تحقیق وقت صبح ۔ (عربی )[31]
  19. اقبال خسروی دربیان طہارت وصلوة (بزبان اُردو)[32]
  20. حواشی درہ منظومہ (عربی )
  21. تعلیقہ انیقہ: حواشی شرح لمعہ بر مباحث مشکلہ (عربی )[33]
  22. استقبال: حاج سید باقر رشتی کے رسالے تحفۃ الابرار کی بحث قبلہ پر بسیط حاشیہ ہے (فارسی )[34]

منطق وفلسفہ وہیئت وہندسہ

  1. تعلیقہ حسناء حواشی ملاحسن بر شرح سُلّم
  2. حواشی شرح سلم ملا حمد اللہ
  3. حواشی تحریر اقلیدس
  4. جواب انتقاض انعکاس خاصتین ۔
  5. ترجمہ صدرا شرح ہدایت الحکمۃ تا فلکیات ۔
  6. حواشی ملا جلال
  7. رسالہ در جواب شبہ ابن کیمونہ.[35]

صرف ونحو، معانی وبیان وعروض،ادب اور طب میں تقریبا 60 تالیفات اور متفرقات میں 14 تالیفات لکھیں ۔[36] ان میں سے کئی کتب اپنی نظیر آپ کی مصداق ہیں۔

حوالہ جات

  1. مرزا محمد ہادی ،تجلیات تاریخ عباس، خلاصہ از باب چہارم۔
  2. مرزا محمد ہادی،تجلیات تاریخ عباس،ج1ص8۔
  3. مرزا محمد ہادی،تجلیات تاریخ عباس،ج2 ص8
  4. مرزا محمد ہادی،تجلیات تاریخ عباس،ج2 ص12
  5. ایضا:ج 2 ص16تا 31۔
  6. مرزا محمد ہادی،تجلیات تاریخ عباس ،2/29
  7. مرزا محمد ہادی،تجلیات تاریخ عباس ،2/26
  8. پھر دردِ زہ انہیں ایک کھجور کے تنے کی طرف لے آیا، وہ (پریشانی کے عالم میں) کہنے لگیں: اے کاش! میں پہلے سے مرگئی ہوتی اور بالکل بھولی بسری ہوچکی ہوتی، (23) پھر ان کے نیچے کی جانب سے (جبرائیل نے یا خود عیسٰی علیہ السلام نے) انہیں آواز دی کہ تو رنجیدہ نہ ہو،
  9. مرزا محمد ہادی،تجلیات تاریخ عباس ،2/31
  10. سید مہدی بن نجف ،ورثۃ الانبیا 418 طبع مؤسسہ کتابشناسی شیعہ قم
  11. مرزا محمد ہادی عزیز لکھنوی، تجلیات تاریخ عباس،تلخیص 9تا24،نظامی پریس وکٹوریہ اسٹریٹ لکھنو( انڈیا)
  12. مرزا محمد ہادی عزیز لکھنوی، تجلیات تاریخ عباس،تلخیص 9تا24،نظامی پریس وکٹوریہ اسٹریٹ لکھنو(انڈیا)
  13. مرزا محمد ہادی،تجلیات تاریخ عباس،ص29
  14. مرزا محمد ہادی،تجلیات تاریخ عباس،ج2 ص271،...۔
  15. آقا بزرگ تہرانی، الذریعہ،4/315،ناشر : دار الأضواء - بيروت - لبنان
  16. محسن امین عاملی،اعیان الشیعہ،7/412/27
  17. بزرگ تہرانی،الذریعہ،24/38
  18. محسن امین عاملی،اعیان الشیعہ،7/412/56
  19. محسن امین عاملی،اعیان الشیعہ،7/412
  20. محسن امین عاملی،اعیان الشیعہ،7/412
  21. سید اعجاز حسین،کشف الحجب و الاستار 210/1076
  22. مرزا محمد ہادی ،تجلیات تاریخ عباس،ج 2 ص224 تا 232دیکھیں۔
  23. سید اعجاز حسین،کشف الحجب و الاستار 591/3336 میں یہ نور الانوار کے نام سے ہے۔
  24. محسن امین عاملی،اعیان الشیعہ،7/412/59
  25. بزرگ تہرانی،الذریعہ،24/38
  26. محسن امین عاملی،اعیان الشیعہ،7/412
  27. بزرگ تہرانی،الذریعہ،16/123
  28. بزرگ تہرانی،الذریعہ،15/47/308
  29. بزرگ تہرانی،الذریعہ،11/273/1684
  30. بزرگ تہرانی،الذریعہ،21/234/4783
  31. بزرگ تہرانی،الذریعہ،18/305/219،مؤلف نے اسے شرح کلام بہائی میں نقل کیا ہے۔
  32. محسن امین عاملی،اعیان الشیعہ،7/413
  33. محسن امین عاملی،اعیان الشیعہ،7/413
  34. مرزا محمد ہادی ،تجلیات تاریخ عباس،ج 2 ص232 تا 234دیکھیں۔
  35. مرزا محمد ہادی ،تجلیات تاریخ عباس،ج 2 ص235دیکھیں۔
  36. مرزا محمد ہادی ،تجلیات تاریخ عباس،ج 2 ص234 تا 240دیکھیں۔


کتابیات

  • آقا بزرگ تہرانی، الذریعہ الی تصانیف الشیعہ، دار الأضواء، لبنان(سافٹ وئر اہل البیت)
  • محسن امین عاملی،اعیان الشیعہ،ناشر : دار التعارف للمطبوعات بيروت،لبنان۔(سافٹ وئر اہل البیت)
  • مرزا محمد ہادی عزیز لکھنوی، تجلیات تاریخ عباس، نظامی پریس وکٹوریہ اسٹریٹ لکھنو( انڈیا)
  • سید اعجاز حسین،کشف الحجب و الاستار، مكتبہ آيت اللہ العظمى مرعشي نجفي قم۔(سافٹ وئر اہل البیت)
  • سید مہدی بن نجف ،ورثۃ الانبیا، طبع مؤسسہ کتابشناسی شیعہ قم۔

بیرونی رابط

اس مقالے کو مرزا محمد ہادی کی کتاب تجلیات تاریخ عباس سے اخذ کیا گیا ہے ۔