ماہ رمضان کی مستحب نمازیں

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں

ماہ رمضان کی مستحب نمازوں سے مراد یومیہ نمازیں، یومیہ نوافل، نماز شب اور ہر مہینے میں پڑھی جانے والی مستحب نمازوں کے علاوہ ہیں جو صرف اسی مہینے کے ساتھ مختص ہیں۔ ان نمازوں میں سے بعض اس مہینے کی ہر رات پڑھی جاتی ہیں جبکہ بعض مخصوص دنوں یا راتوں کے ساتھ مختص ہیں۔ شب قدر جو اس مہینے کی انیسویں، اکیسویں یا تیئیسویں راتوں میں سے ایک ہے، کی بھی مخصوص نمازیں ہیں۔

ہر رات کی مشترک نمازیں

کتاب مفاتیح الجنان میں آیا ہے:[1] ماه رمضان کی ہر رات دو ركعت نماز پڑھنا مستحب ہے جس کی ہر ركعت میں سورہ حمد کے بعد تین مرتبہ سورہ توحید اور سلام پھیرنے کے بعد یہ دعا پڑھی جاتی ہے:

سُبْحانَ مَنْ هُوَ حَفيظٌ لايَغْفُلُ سُبحانَ مَنْ هُوَ رَحيمٌ لايَعْجَلُ سُبْحانَ مَنْ هُوَ قاَّئِمٌ لايَسْهُو سُبْحانَ مَنْ هُوَ دائِمٌ لايَلْهُو(ترجمہ پاک و منزہ ہے وہ خدا جو نگہبان ہے اور کبھی بھی غفلت کا شکار نہیں ہوتا، منزہ ہے وہ خدائے مہربان جو شتاب زدگی کا شکار نہیں ہوتا۔ منزہ ہے وہ خدا جو قائم ہے اور فراموشی کا شکار نہیں ہوتا اور منزہ ہے وہ خدا جو دائم ہے اور کسی چیز میں سرگرم نہیں ہوتا۔)

اس کے بعد تسبیحات اربعہ (سبحان الله و الحمدلله و لا اله الا الله و الله اکبر) کو سات مرتبہ پڑھی جائے پھر یہ دعائے پڑھی جائے:

سُبْحانَكَ سُبْحانَكَ سُبْحانَكَ يا عَظيمُ اغْفِرْ لِىَ الذَّنْبَ الْعَظيمَ(ترجمہ خدایا آپ ہر عیب و نقص سے منزہ ہیں، منزہ ہیں، منزہ ہیں۔ خدایا میرے گناہان کبیرہ کو بخش دے۔)

اور آخر میں دس مرتبہ محمد و آل محمد پر صلوات بھیجی جائے۔ احادیث کے مطابق جو شخص اس نماز کو ماہ رمضان کی ہر رات پڑھے خدا اس کے ستر ہزار گناہ معاف کر دیتا ہے۔

ہر رات کی مخصوص نمازیں

اس مہینے کی ہر رات پڑھی جانے والی مخصوص نمازیں، کتاب مفاتیح الجنان[2] میں یوں بیان ہوئی ہیں:

رات نماز اور اس کی کیفیت
پہلی چار رکعت، جس کی ہر رکعت میں سورہ حمد کے بعد پندرہ مرتبہ سورہ توحید
دوسری چار رکعت، جس کی ہر رکعت میں سورہ حمد کے بعد بیس مرتبہ سورہ قدر
تیسری دس رکعت، جس کی ہر رکعت میں سورہ حمد کے بعد پچاس مرتبہ سورہ توحید
چوتھی آٹھ رکعت، جس کی ہر رکعت میں سورہ حمد کے بعد بیس مرتبہ سورہ قدر
پانچویں دو رکعت، جس کی ہر رکعت میں حمد کے بعد پچاس مرتبہ سورہ توحید اور سلام پھیرنے کے بعد سو مرتبہ صلوات
چھٹی چار رکعت، جس کی ہر رکعت میں حمد کے بعد سورہ تَبارَک الَّذی بِیدِہ الْمُلْک
ساتویں چار رکعت، جس کی ہر رکعت میں حمد کے بعد تیرہ مرتبہ اِنّا اَنْزَلْناہ
آٹھویں دو رکعت، جس کی ہر رکعت میں حمد کے بعد دس مرتبہ سورہ توحید اور سلام کے بعد ہزار مرتبہ سُبْحانَ اللّہ
نویں مغرب اور عشاء کے درمیان چھ رکعت، جس کی ہر رکعت میں حمد کے بعد سات مرتبہ آیۃ الکرسی اور سلام کے بعد پچاس مرتبہ صلوات
دسویں بیس رکعت، جس کی ہر رکعت میں حمد کے بعد تیس مرتبہ سورہ توحید
گیارہویں دو رکعت، جس کی ہر رکعت میں حمد کے بعد بیس مرتبہ اِنّا اَعْطَیناک الْکوْثَرَ
بارہویں آٹھ رکعت، جس کی ہر رکعت میں حمد کے بعد تیس مرتبہ اِنّا اَنْزَلْناہ
تیرہویں چار رکعت، جس کی ہر رکعت میں حمد کے بعد پچس مرتبہ سورہ توحید
چودہویں چھ رکعت، جس کی ہر رکعت میں حمد کے بعد تیس مرتبہ اِذا زُلْزِلَتْ
پندرہویں چار رکعت، جس کی پہلی دو رکعت میں حمد کے بعد سو مرتبہ سورہ توحید اور دوسری دو رکعت میں حمد کے بعد پچاس مرتبہ سورہ توحید
سولہویں بارہ رکعت، جس کی ہر رکعت میں حمد کے بعد بارہ مرتبہ اَلْہیکمُ التَّکاثُرُ
سترہویں دو رکعت، جس پہلی رکعت میں حمد کے بعد کوئی بھی سورہ چاہے پڑھ سکتا ہے جبکہ دوسری رکعت میں حمد کے بعد سو مرتبہ سورہ توحید اور سلام کے بعد سو مرتبہ لا اِلهَ اِلا اللّهُ
اٹھارہویں چار رکعت، جس کی ہر رکعت میں حمد کے بعد پچس مرتبہ اِنّا اَعْطَیناک الْکوْثَرَ
انیسویں پچاس رکعت، جس کی ہر رکعت میں حمد کے بعد ایک مرتبہ سورہ اِذا زُلْزِلَتْ
بیسویں آٹھ رکعت، کسی بھی سورہ کے ساتھ
اکیسویں آٹھ رکعت، کسی بھی سورہ کے ساتھ
بائیسویں آٹھ رکعت، کسی بھی سورہ کے ساتھ
تیئیسویں آٹھ رکعت، کسی بھی سورہ کے ساتھ
چوبیسویں آٹھ رکعت، کسی بھی سورہ کے ساتھ
پچیسویں آٹھ رکعت، جس کی ہر رکعت میں حمد کے بعد دس مرتبہ سورہ توحید
چھبیسویں آٹھ رکعت، جس کی ہر رکعت میں حمد کے بعد سو مرتبہ سورہ توحید
ستائیسویں چار رکعت، جس کی ہر رکعت میں حمد کے بعد سورہ تَبارَک الَّذی بِیدِہ الْمُلْک ایک مرتبہ اگر یہ نہ پڑھ سکے تو پچس مرتبہ سورہ توحید
اٹھائیسویں چھ رکعت، جس کی ہر رکعت میں حمد کے بعد سو مرتبہ آیۃ الکرسی، سو مرتبہ سورہ توحید اور سو مرتبہ سورہ کوْثَرْ اور سلام کے بعد سو مرتبہ صلوات
انتیسویں دو رکعت، جس کی ہر رکعت میں حمد کے بعد بیس مرتبہ سورہ توحید
تیسویں بارہ رکعت، جس کی ہر رکعت میں حمد کے بعد بیس مرتبہ سورہ توحید



حوالہ جات

  1. قمی، مفاتیح الجنان، دعائے افتتاح کے بعد، ص۳۲۹.
  2. قمی، مفاتیح الجنان، تیسویں دن کے اعمال کے بعد، ص۴۳۳.