عبد اللہ بن حسن مثنی

ویکی شیعہ سے
(عبد اللہ محض سے رجوع مکرر)
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
عبدالله محض.jpg
نام: عبداللہ بن حسن مثنیٰ معروف بہ عبداللہ محض
مشہور اقارب: امام حسنؑ (جد پدری)، امام حسینؑ(جد مادری) اور امام صادقؑ
وجہ شہرت: اپنے بیٹے نفس زکیہ کیلئے مہدی کا لقب دے کر بیعت لینا
محل زندگی: مدینہ
مدفن: نجف کے جنوب میں 70 کیلو میٹر کے فاصلے پر
مذہب: اسلام، شیعہ

عبداللہ بن حسن مثنّیٰ جو عبداللہ محض کے نام سے مشہور ہیں امام حسنؑ کے پوتے اور امام حسین(ع) نواسے ہیں۔ انہوں نے بنی امیہ کے آخری دور اور امام صادقؑ کے دور امامت میں اپنے بیٹے محمد کو مہدی کا لقب دیتے ہوئے ان کیلئے لوگوں سے بیعت طلب کیا۔

عبداللہ محض کی اولاد میں محمد (نفس زکیہ) اور ابراہیم (قتیل باخمرا) نے بنی عباس کے خلاف قیام کرتے ہوئے جام شہادت نوش کئے۔ ان کے بیٹے ادریس نے مراکش میں پہلی شیعہ حکومت کی بنیاد رکھی جو بعد میں حکومت ادریسیہ کے نام سے مشہور ہوئی۔

عبداللہ محض منصور دوانیقی کے دور میں اپنے بیٹے نفس زکیہ کے مخفی گاہ کا پتہ نہ دینے کے جرم میں تین سال کیلئے جیل بھیج دیا گیا اور وہیں پر قتل کر دیا گیا۔ ان کا مدفن عراق میں نجف اشرف سے 70 کیلو میٹر کے فاصلے پر واقع ہے۔ انہیں عراق میں عبداللہ ابونجم کے نام سے جانا جاتا ہے۔

زندگی نامہ

عبداللہ محض کے والد حسن مثنیٰ شیعوں کے دوسرے امام، امام حسنؑ کے بیٹے اور ان کی والدہ فاطمہ بنت امام حسینؑ ہیں۔[1] عبداللہ محض کے نام سے مشہور ہونے کی وجہ بھی یہی ہے کہ ان کا نسب ماں اور باپ دونوں طرف سے رسول خداؐ تک پہنچتا ہے۔[2] ان سے یہ جملہ مشہور ہے کہ "مجھے دو دفعہ پیغمبر اکرمؐ نے متولد کیا ہے"۔[3]


عبداللہ بن حسن مثنی نوجوانی میں امام سجادؑ کے درس میں شرکت کرتے تھے۔[4] اس سلسلے میں وہ خود کہتے تھے میری والدہ فاطمہ بنت امام حسینؑ ہمیشہ مجھے میرے ماموں امام سجادؑ کے دروس میں شرکت کرنے کی سفارش کرتی تھیں اور ہر جلسے میں خدا کی نسبت میرے علم اور خوف میں اضافہ ہوتا تھا۔[5] ابوالفرج اصفہانی عبداللہ محض کو خاندان بنی‌ ہاشم کے بزرگ اور صاحب علم و فضل قرار دیتے ہوئے[6] کہتے ہیں کہ بنی امیہ کے آٹھویں حکمراں عمر بن عبدالعزیز کے یہاں بھی وہ خاص احترام کے حامل تھے۔[7]

عبداللہ بن حسن مثنی 145ھ کو 75 سال کی عمر میں کوفہ کے ہاشمیہ جیل خانے[8] یا دوسرے قول کی بنا پر بغداد میں قتل ہوئے۔[9] سبط بن جوزی کے مطابق وہ عید قربان کے دن قتل ہوئے ہیں۔[10] اسی طرح ابوالفرج اصفہانی لکھتے ہیں کہ عبداللہ کو ان کے اوپر چھت گرا کر قتل کئے گئے۔[11]

آپ کا مدفن عراق کے صوبہ دیوانیہ کے شہر شنافیہ سے 9 کلومیٹر کے فاصلے پر مغرب میں جبکہ نجف سے 70 کیلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہے اور یہاں پر ان کا مزار عبداللہ ابونجم کے نام سے معروف ہے۔[12]مصر کے شہر قاہرہ میں بھی عبداللہ محض کے نام سے ایک بارگاہ پائی جاتی ہے۔.[13]

اولاد

عبداللہ بن حسن مثنی کے بہت سارے اولاد کا نام تاریخی منابع میں آیا ہے؛ من جملہ ان میں محمد جو نفس زکیہ کے نام سے مشہور تھے، نے مدینہ میں بنی عباس کے خلاف قیام کیا جس کے نتیجے میں وہ اپنے اکثر ساتھیوں سمیت مارا گیا۔[14] ابراہیم جو قتیل باخمرا کے نام سے جانے جاتے تھے، نے اپنے بھائی نفس زکیہ کے بعد بصرہ میں قیام کیا۔[15] ان کے اس قیام میں بعض مشہور فقہاء نے بھی شرکت کی اور ابوحنیفہ افراد نے بھی اس قیام کی حمایت کی،[16] لیکن آخر کار یہ قیام بھی اپنی منقطی انجام تک نہیں پہنچا اور ابراہیم کوفہ کے نزدیک باخمرا نامی جگہے پر قتل ہوئے۔[17]

عبداللہ محض کے ایک اور بیٹے ادریس جو واقعہ فخ میں شریک تھے، مراکش چلے گئے اور وہاں پر شیعہ حکومت قائم کرنے میں کامیاب ہوئے جو تاریخ میں حکومت ادریسی کے نام سے مشہور ہے۔[18] ان کے سلیمان واقعہ فخ میں شہید ہوئے۔[19] یحیی[20] قیام فخ میں شرکت کے بعد ایران فرار کر گئے اور وہاں سے مخفیانہ طور پر دیلم چلے گئے اور وہیں پر قیام پذیر ہوئے اور لوگوں کو اپنی امامت کی دعوت دینے لگے[21] یوں وہ اپنے اردگرد کچھ لوگوں کو جمع کرنے میں کامیاب ہو گئے لیکن آخر کار وہ بھی شکست سے دوچار ہوئے اور ہارون الرشید کے حکم سے انہیں جیل بھیج دیا گیا اور سنہ 176ھ کو بغداد میں اس دنیا سے رخصت ہوئے۔[22]

نفس زکیہ کیلئے بیعت مانگنا

تاریخی شواہد کے مطابق عبداللہ بن حسن مثنی نے شروع میں بنی امیہ کے خلاف زید بن علی کے قیام میں کوئی دلچسپی نہیں لی اور قیام سے پہلے جب کوفہ میں زید بن علی سے ملے تو انہیں کوفہ والوں کے وعدوں پر زیادہ اعتماد نہ کرنے کی نصیحت بھی کی۔[23] اسی طرح تاریخ منابع سے پتہ چلتا ہے کہ امیر المؤمنین حضرت علیؑ کے صدقات کے بارے میں عبداللہ محض اور زید بن علی کے درمیان اختلاف بھی وجود میں آگیا تھا۔[24] لیکن زید بن علی کی شہادت کے بعد عبداللہ ان کے نظریات میں دلچسپی لینے لگا اور اپنے بیٹوں کو بنی امیہ کے خلاف قیام کیلئے تیار کرنے لگا۔[25]

بنی امیہ کے دور حکومت کے اواخر میں جب بنی ہاشم ابواء نامی مقام پر اپنے درمیان کسی کی بیعت کرنے کیلئے جع ہو گئے تو عبداللہ محض نے اپنے بیٹے نفس زکیہ کو مہدی کے عنوان سے پیش کیا اور دوسروں کو ان کی بیعت کرنے کی دعوت دی۔[26] امام صادقؑ نے عبداللہ کے اس اقدام کی مخالفت فرمائی اور ان کے اس اقدام سے آپؑ سخت ناراض بھی ہو گئے۔[27] امام صادقؑ نے عبداللہ سے فرمایا مستقل میں خلافت پر سفاح اور ان کے بھائی اور بیٹے کا قبضہ ہو گا نہ تم اور تمہارے بیٹوں کا۔[28] مقاتل الطالبیین میں ذکر شدہ مطالب کے مطابق امام صادقؑ نے عبداللہ ان کے دو بیٹوں کے قتل کئے جانے کے بارے میں بھی آگاہ فرمایا تھا۔[29]

معاصر مورخ رسول جعفریان امام حسنؑ اور امام حسینؑ کی اولاد میں اختلاف کا منشاء نفس زکیہ کو ان کے والد کی طرف سے قائم آل محمد کے عنوان سے معرفی کرنا قرار دیتے ہیں۔[30]

زندان بنی‌ عباس

عبدالله محض2.jpg

عبداللہ محض کو منصور دوانیقی کے دور میں نفس زکیہ کے مخفی گاہ کا پتہ نہ دینے کے جرم میں تین سال کیلئے جیل بھیج دیا گیا۔[31] بتایا جاتا ہے کہ سنہ 140ھ کو حج کے موسم میں منصور دوانیقی کے ساتھ ان کی ملاقات ہوئی اور اپنے بیٹے نفس زکیہ کے مخفی گاہ سے متعلق معلومات دینے سے انکار کیا۔[32] بنی عباس کا پہلا خلیفہ، ابوالعباس سفاح اگرچہ عبداللہ محض کا بیٹا محمد کی جستجو میں تھا لیکن عبداللہ کا بیٹے کی مخفی گاہ بتانے سے انکار کے باوجود ان پر تشدد نہیں کیا۔[33]

حوالہ جات

  1. بلاذری، انساب الاشراف، ۱۳۹۴ق، ج۲، ص۱۹۸۔
  2. سجادی، «ابراہیم بن عبداللہ»، ج۲، ص۴۴۶۔
  3. وَلَّدَنی رَسولُ اللہِ مَرَّتَین (ابوالفرج اصفہانی، مقاتل الطالبیین، ۱۴۰۸ق، ص۱۶۸)۔
  4. اربلی، کشف الغمۃ، ۱۴۲۷ق، ج۲، ص۸۴؛ قرشی، حیاۃ الامام زین العابدین، ۱۴۰۸ق، ج۲، ص۲۶۴۔
  5. اربلی، کشف الغمۃ، ۱۴۲۷ق، ج۲، ص۸۴؛ قرشی، حیاۃ الامام زین العابدین، ۱۴۰۸ق، ج۲، ص۲۶۴۔
  6. ابوالفرج اصفہانی، مقاتل الطالبیین، ۱۴۰۸ق، ص۱۶۷۔
  7. ابوالفرج اصفہانی، مقاتل الطالبیین، ۱۴۰۸ق، ص۱۷۰۔
  8. ابوالفرج اصفہانی، مقاتل الطالبیین، ۱۴۰۸ق، ص۱۷۱۔
  9. صابری، تاریخ فرق اسلامی، ۱۳۸۸ش، ج۲، ص۷۰، بہ نقل از تاریخ بغداد، ج۹، ص۴۳۱-۴۳۳ و تاریخ الیعقوبی، ج۲، ص۳۶۰۔
  10. سبط بن الجوزي، تذكرۃ الخواص، ۱۴۱۸ق، ص۲۰۷۔
  11. ابوالفرج اصفہانی، مقاتل الطالبیین، ۱۴۰۸ق، ص۲۰۲-۲۰۳۔
  12. «محافظ النجف الاشرف يزور مرقد (عبد اللہ ابو نجم) (رض) ويتابع مع سدنتہ مشاريع الاعمار والتاہيل»۔
  13. موقع "أخبارك"
  14. طبری، تاریخ الامم و الملوک، ۱۳۸۷ق، ج۷، ص۵۹۰۔
  15. طبری، تاریخ الامم و الملوک، ۱۳۸۷ق، ج۷، ص۶۲۲۔
  16. ذہبی، العبر، دار الکتب العلمیہ، ج۱، ص۱۵۵-۱۵۶۔
  17. یعقوبی، تاریخ الیعقوبی، دار صادر، ج۲، ص۳۷۸۔
  18. ابوالفرج اصفہانی، مقاتل الطالبیین، ۱۴۰۸ق، ص۴۰۶-۴۰۸۔
  19. ابوالفرج اصفہانی، مقاتل الطالبیین، ۱۴۰۸ق، ص۳۶۵۔
  20. ابوالفرج اصفہانی، مقاتل الطالبیین، ۱۴۰۸ق، ص۳۸۸۔
  21. ابوالفرج اصفہانی، مقاتل الطالبیین، ۱۴۰۸ق، ص۳۹۰-۴۳۳۔
  22. ابن‌عنبہ، عمدۃ الطالب، ۱۳۸۳ش، ص۱۳۶-۱۳۷۔
  23. صابری، تاریخ فرق اسلامی، ۱۳۸۸ش، ج۲، ص۷۰، بہ نقل از ابن اثیر، الکامل، ج۵، ص۱۴۳۔
  24. بلاذری، أنساب‌الأشراف، ۱۳۹۴ق، ج۲، ص۱۹۹۔
  25. صابری، تاریخ فرق اسلامی، ۱۳۸۸ش، ج۲، ص۷۰۔
  26. ابوالفرج اصفہانی، مقاتل الطالبیین، ۱۴۰۸ق، ص۱۸۵-۱۸۶۔
  27. ابوالفرج اصفہانی، مقاتل الطالبیین، ۱۴۰۸ق، ص۱۸۵-۱۸۶۔
  28. ابوالفرج اصفہانی، مقاتل الطالبیین، ۱۴۰۸ق، ص۱۸۵-۱۸۶۔
  29. ابوالفرج اصفہانی، مقاتل الطالبیین، ۱۴۰۸ق، ص۱۸۵-۱۸۶۔
  30. جعفریان، حیات فکری و سیاسی امامان شیعہ، ۱۳۸۷ش، ص۳۷۱۔
  31. ابوالفرج اصفہانی، مقاتل الطالبیین، ۱۴۰۸ق، ص۱۹۲-۱۹۳؛ طبری، تاریخ الامم و الملوک، ۱۳۸۷ق، ج۷، ص۵۲۴۔
  32. ابوالفرج اصفہانی، مقاتل الطالبیین، ۱۴۰۸ق، ص۱۹۲-۱۹۳؛ طبری، تاریخ الامم و الملوک، ۱۳۸۷ق، ج۷، ص۵۲۴۔
  33. ابن جوزی، المنتظم، ۱۴۱۲ق، ج۸، ص۹۰.


مآخذ

  • ابن عنبۃ، احمد بن علی، عمدۃ الطالب في أنساب آل أبي طالب، قم، انصاریان، ۱۳۸۳ش/۲۰۰۴م۔
  • ابوالفرج اصفہانی، علی بن حسین، مقاتل الطالبیین، شرح و تحقیق احمد صقر، بیروت، مؤسسہ الاعلمی للمطبوعات، ۱۹۸۷م/۱۴۰۸ق۔
  • اربلی، علی بن عیسی، کشف الغمۃ فی معرفۃ الائمۃ، نجف، مکتبہ الحیدریہ، ۱۴۲۷ق۔
  • بلاذری، احمد بن یحیی، انساب الاشراف (ج۲)، تحقیق: محمدباقر محمودی، بیروت، مؤسسۃ الاعلمی للمطبوعات، ۱۳۹۴ق/۱۹۷۴م۔
  • جعفریان، رسول، حیات فکری و سیاسی امامان شیعہ، قم، انتشارات انصاریان، چاپ یازدہم، ۱۳۸۷ش۔
  • ذہبی، شمس الدین محمد بن احمد، العبر فی خیر من غبر، تحقیق: ابوہاجر محمدسعید بن بسیونی زغلول، بیروت، دار الکتب العلمیہ، بی‌تا۔
  • سبط بن الجوزى‏،‌ یوسف بن قزاوغلی، تذكرۃ الخواص‏، قم، منشورات الشريف الرضى‏، ۱۴۱۸ق۔
  • سجادی، صادق، مدخل ابراہیم بن عبداللہ در دایرۃ المعارف بزرگ اسلامی، ج۲، ص۴۴۶۔
  • صابری، حسین، تاریخ فرق اسلامی فرق شیعہ و فرقہ‌ہای منسوب بہ آن، تہران، سمت، چاپ پنجم، ۱۳۸۸ش۔
  • طبری، محمد بن جریر، تاریخ الامم و الملوک، بیروت، دار التراث، چاپ دوم، ۱۳۸۷ق۔
  • قرشی، باقر شریف، حیاۃ الامام زین العابدین، بیروت، دارالاضواء، ۱۹۸۸م/۱۴۰۸ق۔
  • «محافظ النجف الاشرف يزور مرقد (عبد اللہ ابو نجم) (رض) ويتابع مع سدنتہ مشاريع الاعمار والتاہيل»، سایت خبرگزاری براثا، تاریخ درج مطلب: ۴ اکتبر ۲۰۰۸م، تاریخ بازدید: ۲ آذر ۱۳۹۷ش۔
  • یعقوبی، احمد بن ابی‌یعقوب، تاریخ الیعقوبی، بیروت، دار صادر، بی‌تا۔