عبداللہ ابن سبا اور دوسرے تاریخی افسانے (کتاب)

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
عبداللہ ابن سبا اور دوسرے تاریخی افسانے
Abdullahbnsaba.jpg
مؤلف: سید مرتضی عسکری
زبان: عربی
مترجم: سید قلبی علی رضوی
تعداد مجلد: 2
ناشر: مجمع جہانی اہلبیتؑ

عبداللہ بن سبأ و أساطیر أخری (ترجمہ: عبداللہ بن سبا اور دوسرے تاریخی افسانے)دو جلدوں پر مشتمل سید مرتضی عسکری کی ایک کتاب ہے۔ یہ سیف بن عمر نامی شخص کی روایت پر ایک تاریخی، تحقیقی اور رجالی کتاب ہے۔ مؤلف کے مطابق اس شخص نے بہت سارے افسانے بنائے ہیں ان میں سے ایک عبداللہ بن سبا ہے۔

بعض شیعہ مخالفین عبد اللہ ابن سبا کو اس مذہب کا بانی سمجھتے ہیں، لیکن اس کتاب کے مصنف نے اس ادعا کو غلط ثابت کرنے کی کوشش کی ہے۔مولف نے 500ھ سے پہلے کی کتابوں سے استناد کرتے ہوئے سیف کی روایات کا تقابلی جائزہ لیتے ہوئے انہیں جعلی قرار دیا ہے۔ مصنف نے شروع میں کتاب کا نام «احادیث سیف» رکھا تھا لیکن صلح الحسن نامی کتاب کے مصنف شیخ راضی آل یاسین کی تجویز کے مطابق کتاب کے نام کو تبدیل کر کے عبد اللہ بن سبا رکھا۔[1]اب اس کتاب کا مختلف زبانوں میں ترجمہ ہوچکا ہے اور اردو میں بھی عبد اللہ بن سبا اور دوسرے تاریخی افسانے کے نام سے ترجمہ ہوچکا ہے۔

شیعہ
السعید۲.jpg
اصول دین (عقائد)
بنیادی عقائد توحید  • عدل  • نبوت  • امامت  • معاد یا قیامت
دیگر عقائد عصمت  • ولایت  • مہدویت: غیبت  • انتظار • ظہور • رجعت  • بداء  • ......
فروع دین (عملی احکام)
عبادی احکام نماز • روزہ • خمس • زکات • حج • جہاد
غیرعبادی احکام امر بالمعروف اور نہی عن المنکر  • تولا  • تبرا
مآخذ اجتہاد قرآن کریم  • سنت (پیغمبر اور ائمہ کی حدیثیں)  • عقل  • اجماع
اخلاق
فضائل عفو • سخاوت • مواسات • ...
رذائل كبر  • عُجب  • غرور  • حسد  • ....
مآخذ نہج البلاغہ  • صحیفۂ سجادیہ  • .....
نمایاں عقائد
امامت  • مہدویت • رجعت • بدا • شفاعت  • توسل  • تقیہ  • عصمت  • مرجعیت، تقلید • ولایت فقیہ • متعہ  • عزاداری  • متعہ  • عدالت صحابہ
شخصیات
شیعہ ائمہ امام علیؑ  • امام حسنؑ  • امام حسینؑ  • امام سجادؑ  • امام باقرؑ  • امام صادقؑ  • امام کاظمؑ  • امام رضاؑ  • امام جوادؑ  • امام ہادیؑ  • امام عسکریؑ  • امام مہدیؑ  •
صحابہ سلمان فارسی  • مقداد بن اسود  • ابوذر غفاری  • عمار یاسر

خواتین:

خدیجہؑ • فاطمہؑ • زینبؑ • ام کلثوم بنت علی • اسماء بنت عمیس • ام ایمن  • ام سلمہ
شیعہ علما ادباء • علمائے اصول • شعراء • علمائے رجال • فقہاء • فلاسفہ • مفسرین
مقامات
مسجد الحرام • مسجد النبیبقیع • مسجدالاقصی • حرم امام علیمسجد کوفہ  • حرم امام حسینؑ • حرم کاظمین • حرم عسکریینحرم امام رضاؑ
حرم حضرت زینب • حرم فاطمہ معصومہ
اسلامی عیدیں
عید فطر • عید الاضحی • عید غدیر خم • عید مبعث
شیعہ مناسبتیں
ایام فاطمیہ • محرّم ، تاسوعا، عاشورا اور اربعین
واقعات
واقعۂ مباہلہ • غدیر خم • سقیفۂ بنی ساعدہ • واقعۂ فدک • خانۂ زہرا کا واقعہ • جنگ جمل • جنگ صفین • جنگ نہروان • واقعۂ کربلا • اصحاب کساء  • افسانۂ ابن سبا
شیعہ کتب
الکافی • الاستبصار • تہذیب الاحکام • من لایحضرہ الفقیہ
شیعہ مکاتب
امامیہ • اسماعیلیہ • زیدیہ • کیسانیہ


کچھ مؤلف کے بارے میں

اصل مضمون: سید مرتضی عسکری

سید مرتضی شریف عسکری المعروف علامہ عسکری (۱۳۳۲ھ - ۱۴۲۸ھ)، حوزہ علمیہ سامرا کا سیرہ نگار، تاریخ اسلام کا ماہر اور شیعہ عالم دین. عسکری نے تاریخ اسلام کو ایک محقق کی نظر سے پرکھنے کی کوشش کی ہے۔ ان کی اہم کتابوں میں 150 جعلی اصحاب، التوسل بالنبیؐ و التبرک بآثارہ معالم المدرستین اور القرآن الکریم و روایات المدرستین وغیرہ ہیں۔ آپ مجمع جہانی اہلبیت کی شورای عالی کا سابق رکن اور عراق میں بعثی حکومت کے مخالفین میں سے تھے اور حزب الدعوۃ‌الاسلامیۃ کے اصلی ممبران میں سے تھے۔

کتاب لکھنے کا مقصد

مولف کو شروع میں مشہور اور قدیمی مآخذ میں ایسی روایات ملیں جنکا جعلی ہونے کے بارے میں قرآئن اور شواہد موجود تھے۔ اور آپ نے ان روایات کو جمع کر کے دوسری روایات سے مقایسہ کرنے کا ارادہ کر لیا۔ اور پھر ایسے نتیجے تک پہنچا جس کے بارے میں تاریخ میں غفلت ہوئی تھی۔ البتہ شروع میں ایسی کتاب چھاپ کرنے میں خوف محسوس کر رہے تھے کیونکہ بہت ساری تاریخی مآخذ کا ضعیف ہونے کا انکشاف ہوتا تھا اسی لیے وہ لوگ جنہیں تاریخی کتابوں پر اسطرح سے ایمان ہے جس طرح سے بوڑھی عورتوں کا خرافات پر ایمان ہے تو ان لوگوں کو ان کتابوں کو پڑھنے سے منع کیا ہے کیونکہ تاریخی مآخذ کا ضعیف ہونا صرف عبد اللہ بن سبا کے افسانے تک محدود نہیں ہے۔[2]

پہلی جلد کے مضامین

عبداللہ بن سبأ کا افسانہ

پہلی جلد کا آغاز عبد اللہ ابن سبا کی داستان سے ہوتا ہے۔ اور مؤلف کی نظر میں کہانی کچھ اس طرح سے ہے: یمن کے شہر صنعا سے ایک یہودی عثمان کے دور خلافت میں مسلمان ہوتا ہے اور اسلامی شہروں کی طرف سفر کر کے لوگوں کو بشارت دیتا ہے کہ محمدؐ رجعت کرے گا اور علیؑ اس کا وصی ہے لیکن عثمان نے اس کا حق غصب کیا ہے اسی لئے اس حق کو اس سے چھیننے کے لیے اس کے ساتھ جنگ کرنا واجب ہے۔ اس نے اپنے نمایندے اسلامی شہروں کی طرف بھیجا اور بعض لوگ اس کے ہم نظر ہوگئے جن میں سے بعض بزرگان؛ جیسے ابوذر، عمار یاسر اور مالک اشتر وغیرہ۔ عثمان کا قتل بھی سابئیوں کی تحریک سے واقع ہوا ہے۔[3]

افسانے کا سرچشمہ

اس افسانے کے منبع اور سرچشمے کو پانے کے لیے مؤلف نے پرانے مآخذ اور متاخر مآخذ اور روایات میں تحقیق کر کے اس نتیجے پر پہنچا کہ یہ کہانی صرف چار طریقوں سے روایت ہوئی ہے۔: تاریخ الامم و الملوک (طبری/۳۱۰)، تاریخ مدینۃ دمشق (ابن عساکر/۵۷۱)، التمہید و البیان فی مقتل الشہید عثمان بن عفان (ابن ابی بکر/۷۴۱) اور تاریخ الاسلام (ذہبی/۷۴۸). ان چاروں کتابوں میں اس کہانی کو «سیف بن عمر» نامی شخص سے نقل کیا ہے۔[4]

سیف بن عمر

مولف سیف بن عمر کی معرفی کرتے ہوئے کہتا ہے کہ وہ تمیمی اُسیّدی کوفی الاصل، متوفی ۱۷۰ تا ۱۹۳ھ ہے اور پھر اس کی روایات کو تاریخ اور رجال کے بزرگوں؛ جیسے یحیی بن معین (۲۳۳ھ) سے ابن حجر (۸۵۲ھ) تک تحقیق کرتا ہے اور ان سب نے کہا ہے کہ وہ ضعیف، جھوٹا، متروک الحدیث اور زندیق ہونے کی تہمت بھی ہے۔۔۔۔۔۔

سیف بن عمر کی روایات کی تحقیق

مولف اس کے بعد سیف کی روایات کو اصلی منابع سے مقایسہ کرتا ہے خاص کر تاریخ طبری کی روایت سے موازنہ کرتا ہے اور ان روایات کو دوسرے قابل اعتماد راویوں کی روایات سے مقایسہ کرتا ہے تاکہ ایک تو: سیف کی روایات کا تاریخی منابع پر تاثیر معلوم ہوجائے؛ اور دوم: سیف کی احادیث کی قدر و قیمت معلوم ہوسکے؛ اور سوم: تاریخی واقعات کے نقل کرنے میں سیف کی بے طرفی اور غیرجانبداری کی مقدار کا اندازہ لگایا جاسکے۔ پہلی جلد کے آخر میں انہوں نے سیف کی جعلی روایات کا رواج پانا اور صحیح روایات سے بےرخی کی وجہ سیف کی روایات کا اس وقت کے مسلمانوں کے تقاضا اور چاہت کے مطابق ہونا قرار دیا ہے نہ این کہ ایسا کوئی واقعہ رونما بھی ہوا ہو۔

دوسری جلد کے مضامین

روایات جعل کرنے کا مقصد

دوسری جلد کے دیباچے میں مولف لکھتا ہے کہ شروع میں ان کا خیال یہ تھا کہ روایات کو جعل کرنے میں سیف کا مقصد بزرگ صحابہ کا دفاع اور ان کے مخالفوں کی تحقیر کرنا تھا لیکن آخر میں اس نتیجے پر پہنچا ہے کہ جعلی روایات بنانے میں سیف کے دو اہداف تھے:

۱. قحطانیوں کے مقابلے میں عدنانیوں کی تعریف میں قبیلے کی تعصب؛

۲. سیف کا کافر ہونا۔ اسی وجہ سے وہ اسلام کی تاریخی حقایق کو تحریف کرنے لگا اور خرافات و افسانوں کو مسلمانوں کے عقائد میں شامل کیا۔

سیف کے بعض دوسرے افسانے

مولف نے سیف کے بعض دوسرے افسانے بیان کرتے ہوئے بعض مندرجہ ذیل افسانوں کو بعض دوسری روایات سے مقایسہ کیا ہے: اسلام کا تلوار کے بل بوتے پر پھیلنا، عمان اور یمن کے لوگوں کا مرتد ہونا، غیر واقعی فتوحات، اشخاص کے ناموں میں تحریف وغیرہ وغیرہ۔ اس جلد کے دوسرے حصے میں دوبارہ عبد اللہ بن سبا کے بارے میں بحث کرتے ہوئے اس کی شخصیت کو حدیثی اور ملل و نحل کی کتابوں میں بررسی کیا ہے۔

سبائیت اور ابن سبأ

فارسی ترجمے کا ٹائٹل

مولف سبائیت اور ابن سبأ کے بارے میں کہتا ہے: سبائیت (سبئیت)، سبأ ابن یشجب بن یعرب بن قحطان کی نسل، یمنی قبیلے سے منسوب ہے اور قحطانیت کے مترادف ہے اور صحاح ستہ کی بہت ساری احادیث کے راویوں کے کا لقب بھی سبئی ہے اور تیسری صدی کے اواسط تک اسی لقب سے مشہور تھے۔ پھر اس کے بعد سے یہ لقب امام علیؑ کے بعض اصحاب اور سبائی قبیلے سے تعلق رکھنے والے مختار کے بعض دوستوں کو طعنہ کے طور پر استعمال کیا گیا اور پھر سب شیعوں کو یہی لقب دینے لگے۔ اس کے بعد سیف بن عمر نے عبد اللہ ابن سبا کا افسانہ گھڑ دیا اور طبری نے اس سے اور مورخوں نے طبری سے نقل کیا اور بعد میں یہ لفظ ایک مذہبی فرقے کے لیے استعمال ہونے لگا اور سبا کے قبایل سے منسوب ہونے کو بھولا دیا گیا۔ مؤلف کہتا ہے کہ عبد اللہ بن سباوہی عبداللہ بن وہب سبائی ہے جو نہروان میں خوارج کے سرکردوں میں سے تھا۔[5]


چھاپ، نشر اور ترجمے

کتاب کا عربی ٹائٹل

یہ کتابوں عربی میں دو جلدوں پر مشتمل سنہ۱۳۷۵ھ کو پہلی بار نجف میں پھر سنہ۱۳۸۱ھ کو اضافات کے ساتھ قاہرہ میں پھر سنہ۱۳۸۸ھ کو بیروت سے چھپ کر منظر عام پر آگئی۔ لیکن تینوں چھاپ مولف کی نظارت کے بغیر تھے اسی وجہ سے ان میں کچھ اشتباہات پائے جاتے تھے۔ لیکن چوتھا ایڈیشن بیروت سے سنہ۱۳۹۳ھ کو مولف کی اصلاحات اور اضافات کے ساتھ منظر عام پر آگیا۔[6]

یہ کتاب اب تک انگلش، فارسی، اردو اور ترکی زبان میں ترجمہ ہوچکی ہے۔

کتاب کے انتشار اور عکس العمل

کتاب عبداللہ بن سبا، نشر ہونے کے بعد بہت سارے موافق اور مخالف بنے جن کی طرف مولف نے تیسرے ایڈیشن کے دیباچے میں اشارہ کیا ہے اور ان کا جواب بھی دیا ہے۔ اسی طرح سعودی عرب کے بعض اخبارات میں بھی اس حوالے سے بعض یونیورسیٹیز کے استادوں نے کچھ نظریات کا اظہار کیا تھا۔ ان نظریات اور علامہ عسکری کی طرف سے ان کے جوابات کو «آراء و اصداء حول عبداللہ بن سبأ و روایات سیف فی الصحف السعودیۃ» [7] نامی کتاب میں جمع کر کے چھاپ دیا ہے۔

حوالہ جات

  1. مقدمہ چاپ اول
  2. ج۱، ص۲۳-۲۴
  3. ج۱، ص۲۹-۳۴
  4. ج۱، ص۵۷
  5. ج۲، ص۱۸۹
  6. ج۱، ص۷ از چاپ چہارم
  7. ناشر: دانشکدہ اصول الدین، چاپ اول ۱۳۷۹

بیرونی روابط

کتاب کا متن: http://alhassanain.org/urdu/?com=book&id=112