زیارت شہداء

ویکی شیعہ سے
(زیارت الشہدا سے رجوع مکرر)
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
دعا و مناجات
مسجد جامع خرمشهر.jpg


زیارت الشہداء جسے زیارت ناحیہ غیر مشہور بھی کہا جاتا ہے، ان زیارت ناموں میں سے ہے جسے سید بن طاووس نے کتاب اقبال میں روز عاشورا کے اعمال کے ضمن میں بیان کیا ہے۔ یہ زیارت شہدائے کربلا کے ناموں پر مشتمل ہے جس کا آغاز اَلسّلامُ عَلَی اَوّلِ قَتیلٍ مِن نَسلِ خَیرِ سَلیلٍ سے ہوتا ہے۔[1] سید بن طاووس سے پہلے یہ زیارت المزار شیخ مفید[2] اور مزار کبیر ابن مشہدی[3] میں آیا ہے۔

مضامین

اس زیارت میں امام حسینؑ پر مختصر سلام دینے کے بعد شہدائے کربلا میں سے ایک ایک کا نام لے کر ان پر بھی درود و سلام اور ان کے قاتلوں پر نام لے کر لعنت بھیجی جاتی ہے۔

اس زیارت کو مختصر اضافے کے ساتھ جس میں امام حسین(ع)، علی اکبر اور ایک ایک کا نام لئے بغیر دیگر شہداء کی زیارت شامل ہے، شیخ مفید اور سیدبن طاووس کی نقل کے مطابق ماہ رجب کی پہلی تاریخ اور 15 شعبان کی رات کے اعمال میں بھی ذکر ہوئی ہے اور یہاں یہ زیارت زیارت رجبیہ امام حسین سے مشہور ہے۔[4] البتہ زیارت رجبیہ ایک الگ مستقل زیارت ہونے کا احتمال بھی دیا جاتا ہے۔[5]

سند

یہ زیارت سید بن طاووس کی کتاب اقبال الاعمال کے علاوہ المزار الکبیر اور مصباح الزائر میں بھی نقل ہوئی ہے قدیم منابع جیسے کامل الزیارات اور مصباح المتہجد میں اس کا کوئی تذکرہ نہیں ہوا ہے۔[6]

سید بن طاووس شیخ طوسی سے شیخ طوسی ابو عبدالله محمدبن احمد بن عیاش سے وہ ابومنصور بن عدالمنعم بن نعمان بغدادی سے نقل کرتے هیں کہ یہ زیارت سنہ 252 ہجری قمری کو ناحیہ مقدسہ (مذکورہ تاریخ کو مد نظر رکھتے ہوئے یہاں ناحیہ مقدسہ سے مراد امام ہادیؑ ہیں) کی جانب سے شیخ محمد بن غالب اصفہانی تک پہنچی ہے۔ شیخ طوسی (متوفی 460 ہجری قمری) سے غیبت صغرا (260 سے 329 ہجری قمری) تک صرف دو راویوں کا نام ذکر ہوا ہے اس لئے یہ احتمال دیا جا سکتا ہے کہ درمیان سے کچھ راویوں کا نام حذف ہوا ہے۔ اس زیارت میں کربلا کے 72 شہداء کے علاوہ اصحاب امام حسینؑ میں سے دیگر 8 شہداء من جملہ مسلم بن عقیل کا نام ان کے قاتلوں کے نام کے ساتھ ذکر ہوا ہے۔ علامہ مجلسی نے بھی اس زیارت کو بحار الانوار میں نقل کیا ہے۔[7] محمد مہدی شمس الدین اپنی کتاب امام حسینؑ کے اصحاب میں سید بن طاووس کی کتاب اقبال میں مذکور سند کو دو مجہول اور ایک ضعیف فرد کی وجہ سے معتبر نہیں سمجھتا۔ بحار الانوار کی سند جسے المزار الکبیر ابن مشہدی نے نقل کیا ہے، بھی اسی مشکل سے دوچار ہے۔[8]

اس زیارت کی تاریخ صدور کو مد نظر رکھتے ہوئے[9] یہ بات یقینی ہے کہ زیارت امام ہادیؑ (شہادت 254 ہجری قمری) یا امام حسن عسکریؑ سے صادر ہوئی ہے نہ کہ امام زمانہ(عج) سے کیونکہ اس وقت آپؑ کی ولادت ہی نہیں ہوئی تھی[10]

متن زیارت

السَّلَامُ عَلَیكَ یا أَوَّلَ قَتِیلٍ مِنْ نَسْلِ خَیرِ سَلِیلٍ، مِنْ سُلَالَهِ إِبْرَاهِیمَ الْخَلِیلِ، صَلَّی اللهُ عَلَیكَ وَ عَلَی أَبِیكَ، إِذْ قَالَ فِیكَ: قَتَلَ اللهُ قَوْماً قَتَلُوكَ، یا بُنَی مَا أَجْرَأَهُمْ عَلَی الرَّحْمَنِ وَ عَلَی انْتِهَاكِ حُرْمَهِ الرَّسُولِ، عَلَی الدُّنْیا بَعْدَكَ الْعَفَا، كَأَنِّی بِكَ بَینَ یدَیهِ مَاثِلًا، وَ لِلْكَافِرِینَ قَائِلًا:
أَنَا عَلِی بْنُ الْحُسَینِ بْنِ عَلِی * * * * نَحْنُ وَ بَیتِ اللهِ أَوْلَی بِالنَّبِی
أَطْعَنُكُمْ بِالرُّمْحِ حَتَّی ینْثَنِی * * * * أَضْرِبُكُمْ بِالسَّیفِ أَحْمِی عَنْ أَبِی
ضَرْبَ غُلَامٍ هَاشِمِی عَرَبِی * * * * وَ اللهِ لایحْكُمُ فِینَا ابْنُ الدَّعِی
حَتَّی قَضَیتَ نَحْبَكَ وَ لَقِیتَ رَبَّكَ، أَشْهَدُ أَنَّكَ أَوْلَی بِاللهِ وَ بِرَسُولِهِ، وَ أَنَّكَ ابْنُ رَسُولِهِ وَ ابْنُ حُجَّتِهِ وَ أَمِینِهِ، حَكَمَ اللهُ لَكَ عَلَی قَاتِلِكَ مُرَّهَ بْنِ مُنْقِذِ بْنِ النُّعْمَانِ الْعَبْدِی، (لَعَنَهُ اللهُ) وَ أَخْزَاهُ، وَ مَنْ شَرِكَهُ فِی قَتْلِكَ، وَ كَانُوا عَلَیكَ ظَهِیراً، أَصْلَاهُمُ اللهُ جَهَنَّمَ وَ ساءَتْ مَصِیراً، وَ جَعَلَنَا اللهُ مِنْ مُلَاقِیكَ وَ مُرَافِقِیكَ، وَ مُرَافِقِی جَدِّكَ وَ أَبِیكَ، وَ عَمِّكَ وَ أَخِیكَ، وَ أُمِّكَ الْمَظْلُومَهِ، وَ أَبْرَأُ إِلَی اللهِ مِنْ قَاتِلِیكَ، وَ أَسْأَلُ اللهَ مُرَافَقَتَكَ فِی‌دار الْخُلُودِ، وَ أَبْرَأُ إِلَی اللهِ مِنْ أَعْدَائِكَ أُولِی الْجُحُودِ، وَ السَّلَامُ عَلَیكَ وَ رَحْمَهُ اللهِ وَ بَرَكَاتُهُ.
السَّلَامُ عَلَی عَبْدِ اللهِ بْنِ الْحُسَینِ، الطِّفْلِ الرَّضِیعِ وَ الْمَرْمِی الصَّرِیعِ، الْمُتَشَحِّطِ دَماً، الْمُصَعَّدِ دَمُهُ فِی السَّمَاءِ، الْمَذْبُوحِ بِالسَّهْمِ فِی حَجْرِ أَبِیهِ، لَعَنَ اللهُ رَامِیهُ حَرْمَلَهَ بْنَ كَاهِلٍ الْأَسَدِی وَ ذَوِیهِ.
السَّلَامُ عَلَی عَبْدِ اللهِ بْنِ أَمِیرِ الْمُؤْمِنِینَ، مُبْلَی الْبَلَاءِ وَ الْمُنَادِی بِالْوَلَاءِ فِی عَرْصَهِ كَرْبَلَاءَ، الْمَضْرُوبِ مُقْبِلًا وَ مُدْبِراً، وَ لَعَنَ اللهُ قَاتِلَه هَانِی بْنَ ثُبَیتٍ الْحَضْرَمِی.
السَّلَامُ عَلَی الْعَبَّاسِ بْنِ أَمِیرِ الْمُؤْمِنِینَ، الْمِوَاسِی أَخَاهُ بِنَفْسِهِ، الْآخِذِ لِغَدِهِ مِنْ أَمْسِهِ، الْفَادِی لَهُ الْوَاقِی، السَّاعِی إِلَیهِ بِمَائِهِ الْمَقْطُوعَهِ یدَاهُ، لَعَنَ اللهُ قَاتِلِیهِ یزِیدَ بْنَ وَقَّادٍ وَ حَكِیمَ بْنَ الطُّفَیلِ الطَّائِی.
السَّلَامُ عَلَی جَعْفَرِ بْنِ أَمِیرِ الْمُؤْمِنِینَ الصَّابِرِ بِنَفْسِهِ مُحْتَسِباً، وَ النَّائِی عَنِ الْأَوْطَانِ مُغْتَرِباً، الْمُسْتَسْلِمِ لِلْقِتَال، الْمُسْتَقْدِمِ لِلنِّزَالِ، الْمَكْثُورِ بِالرِّجَالِ، لَعَنَ اللهُ قَاتِلَهُ هَانِی بْنَ ثُبَیتٍ الْحَضْرَمِی.
السَّلَامُ عَلَی عُثْمَانَ بْنِ أَمِیرِ الْمُؤْمِنِینَ سَمِیِّ عُثْمَانَ بْنِ مَظْعُونٍ لَعَنَ اللهُ رَامِیهُ بِالسَّهْمِ خَوْلِی بْنَ یزِیدَ الْأَصْبَحِی الْأَیادِی الْأَبَانِی الدَّارِمِی.
السَّلَامُ عَلَی مُحَمَّدِ بْنِ أَمِیرِ الْمُؤْمِنِینَ قَتِیلِ الْأَبَانِیالدَّارِمِی (لَعَنَهُ اللهُ) وَ ضَاعَفَ عَلَیهِ الْعَذَابَ الْأَلِیمَ وَ صَلَّی اللهُ عَلَیكَ یا مُحَمَّدُ وَ عَلَی أَهْلِ بَیتِكَ الصَّابِرِینَ. السَّلَامُ عَلَی أَبِی بَكْرِ بْنِ الْحَسَنِ الزَّكِی الْوَلِی، الْمَرْمِی بِالسَّهْمِ الرَّدِی، لَعَنَ اللهُ قَاتِلَهُ عَبْدَ اللهِ بْنَ عُقْبَهَ الْغَنَوِی.
السَّلَامُ عَلَی عَبْدِ اللهِ بْنِ الْحَسَنِ بْنِ عَلِی الزَّكِی لَعَنَ اللهُ قَاتِلَهُ وَ رَامِیهُ حَرْمَلَهَ بْنَ كَاهِلٍ الْأَسَدِی.
السَّلَامُ عَلَی الْقَاسِمِ بْنِ الْحَسَنِ بْنِ عَلِی الْمَضْرُوبِ عَلَی هَامَتِهِ، الْمَسْلُوبِ لَامَتُهُ حِینَ نَادَی الْحُسَینَ عَمَّهُ، فَجَلَّی عَلَیهِ عَمُّهُ كَالصَّقْرِ وَ هُوَ یفْحَصُ بِرِجْلِهِ التُّرَابَ وَ الْحُسَینُ یقُولُ: بُعْداً لِقَوْمٍ قَتَلُوكَ وَ مَنْ خَصْمُهُمْ یوْمَ الْقِیامَهِ جَدُّكَ وَ أَبُوكَ ثُمَّ قَالَ: عَزَّ وَ اللهِ عَلَی عَمِّكَ أَنْ تَدْعُوَهُ فَلَا یجِیبَكَ أَوْ یجِیبَكَ وَ أَنْتَ قَتِیلٌ جَدِیلٌ فَلَا ینْفَعَكَ هَذَا وَ اللهِ یوْمٌ كَثُرَ وَاتِرُهُ وَ قَلَّ نَاصِرُهُ جَعَلَنِی اللهُ مَعَكُمَا یوْمَ جَمَعَكُمَا وَ بَوَّأَنِی مُبَوَّأَكُمَا وَ لَعَنَ اللهُ قَاتِلَكَ عَمْرَو بْنَ سَعْدِ بْنِ نُفَیلٍ الْأَزْدِی وَ أَصْلَاهُ جَحِیماً وَ أَعَدَّ لَهُ عَذَاباً أَلِیماً.
اَلسَّلَامُ عَلَی عَوْنِ بْنِ عَبْدِ اللهِ بْنِ جَعْفَرٍ الطَّیارِ فِی الْجِنَانِ، حَلِیفِ الْإِیمَانِ، وَ مُنَازِلِ الْأَقْرَآنِ، النَّاصِحِ لِلرَّحْمَنِ، التَّالِی لِلْمَثَانِی وَ الْقُرْآنِ، لَعَنَ اللهُ قَاتِلَهُ عَبْدَ اللهِ بْنَ قُطْبَهَ النَّبْهَانِی.
اَلسَّلَامُ عَلَی مُحَمَّدِ بْنِ عَبْدِ اللهِ بْنِ جَعْفَرٍ الشَّاهِدِ مَكَانَ أَبِیهِ وَ التَّالِی لِأَخِیهِ وَ وَاقِیهِ بِبَدَنِهِ لَعَنَ اللهُ قَاتِلَهُ عَامِرَ بْنَ نَهْشَلٍ التَّمِیمِی.
اَلسَّلَامُ عَلَی جَعْفَرِ بْنِ عَقِیلٍ، لَعَنَ اللهُ قَاتِلَهُ وَ رَامِیهُ بِشْرَ بْنَ حَوْطٍ الْهَمْدَانِی.
اَلسَّلَامُ عَلَی عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ عَقِیلٍ لَعَنَ اللهُ قَاتِلَهُ وَ رَامِیهُ عُثْمَانَ بْنَ خَالِدِ بْنِ أسد أَشْیمَ الْجُهَنِی.
اَلسَّلَامُ عَلَی الْقَتِیلِ ابْنِ الْقَتِیلِ، عَبْدِ اللهِ بْنِ مُسْلِمِ بْنِ عَقِیلٍ، وَ لَعَنَ اللهُ قَاتِلَهُ عَامِرَ بْنَ صَعْصَعَه َوَ قِیلَ: أَسَدَ بْنَ مَالِكٍ.
اَلسَّلَامُ عَلَی أَبِی عبدالله عُبَیدِ اللهِ بْنِ مُسْلِمِ بْنِ عَقِیلٍ وَ لَعَنَ اللهُ قَاتِلَهُ وَ رَامِیهُ عَمْرَو بْنَ صَبِیحٍ الصَّیدَاوِی.
اَلسَّلَامُ عَلَی مُحَمَّدِ بْنِ أَبِی سَعِیدِ بْنِ عَقِیلٍ وَ لَعَنَ اللهُ قَاتِلَهُ لَقِیطَ بْنَ نَاشِرٍ الْجُهَنِی.
اَلسَّلَامُ عَلَی سُلَیمَانَ مَوْلَی الْحُسَینِ بْنِ أَمِیرِ الْمُؤْمِنِینَ وَ لَعَنَ اللهُ قَاتِلَهُ سُلَیمَانَ بْنَ عَوْفٍ الْحَضْرَمِی،
اَلسَّلَامُ عَلَی قَارِبٍ مَوْلَی الْحُسَینِ بْنِ عَلِی.
اَلسَّلَامُ عَلَی مُنْجِحٍ مَوْلَی الْحُسَینِ بْنِ عَلِی(ع)
اَلسَّلَامُ عَلَی مُسْلِمِ بْنِ عَوْسَجَةَ الْأَسَدِی الْقَائِلِ لِلْحُسَینِ وَ قَدْ أَذِنَ لَهُ فِی الِانْصِرَافِ أَ نَحْنُ نُخَلِّی عَنْكَ وَ بِمَ نَعْتَذِرُ إِلَی اللهِ مِنْ أَدَاءِ حَقِّكَ وَ لاوَ اللهِ حَتَّی أَكْسِرَ فِی صُدُورِهِمْ رُمْحِی وَ أَضْرِبَهُمْ بِسَیفِی مَا ثَبَتَ قَائِمُهُ فِی یدِی وَ لاأُفَارِقُكَ وَ لَوْ لَمْ یكُنْ مَعِی سِلَاحٌ أُقَاتِلُهُمْ بِهِ لَقَذَفْتُهُمْ بِالْحِجَارَةِ ثُمَّ لَمْ أُفَارِقْكَ حَتَّی أَمُوتَ مَعَكَ وَ كُنْتَ أَوَّلَ مَنْ شَرَی نَفْسَهُ وَ أَوَّلَ شَهِیدٍ مِنْ شُهَدَاءِ اللهِ قَضَی نَحْبَهُ فَفُزْتَ وَ رَبِّ الْكَعْبَةِ شَكَرَ اللهُ لَكَ اسْتِقْدَامَكَ وَ مُوَاسَاتَكَ إِمَامَكَ إِذْ مَشَی إِلَیكَ وَ أَنْتَ صَرِیعٌ فَقَالَ یرْحَمُكَ اللهُ یا مُسْلِمَ بْنَ عَوْسَجَةَ وَ قَرَأَ فَمِنْهُمْ مَنْ قَضی نَحْبَهُ وَ مِنْهُمْ مَنْ ینْتَظِرُ وَ ما بَدَّلُوا تَبْدِیلًا لَعَنَ اللهُ الْمُشْتَرِكِینَ فِی قَتْلِكَ عَبْدَ اللهِ الضَّبَابِی وَ عَبْدَ اللهِ بْنَ خَشْكَارَةَ الْبَجَلِی
اَلسَّلَامُ عَلَی سَعْدِ بْنِ عَبْدِ اللهِ الْحَنَفِی الْقَائِلِ لِلْحُسَینِ وَ قَدْ أَذِنَ لَهُ فِی الِانْصِرَافِ لانُخَلِّیكَ حَتَّی یعْلَمَ اللهُ أَنَّا قَدْ حَفِظْنَا غَیبَةَ رَسُولِ اللهِ(ص) فِیكَ وَ اللهِ لَوْ أَعْلَمُ أَنِّی أُقْتَلُ ثُمَّ أُحْیا ثُمَّ أُحْرَقُ ثُمَّ أُذْرَی وَ یفْعَلُ ذَلِكَ بی‌سَبْعِینَ مَرَّةً مَا فَارَقْتُكَ حَتَّی أَلْقَی حِمَامِی دُونَكَ وَ كَیفَ لاأَفْعَلُ ذَلِكَ وَ إِنَّمَا هِی مَوْتَةٌ أَوْ قَتْلَةٌ وَاحِدَةٌ ثُمَّ هِی الْكَرَامَةُ الَّتِی لاانْقِضَاءَ لَهَا أَبَداً فَقَدْ لَقِیتَ حِمَامَكَ وَ وَاسَیتَ إِمَامَكَ وَ لَقِیتَ مِنَ اللهِ الْكَرَامَةَ فِی‌دار الْمُقَامَةِ حَشَرَنَا اللهُ مَعَكُمْ فِی الْمُسْتَشْهَدِینَ وَ رَزَقَنَا مُرَافَقَتَكُمْ فِی أَعْلَی عِلِّیینَ
اَلسَّلَامُ عَلَی بِشْرِ بْنِ عُمَرَ الْحَضْرَمِی شَكَرَ اللهُ لَكَ قَوْلَكَ لِلْحُسَینِ وَ قَدْ أَذِنَ لَكَ فِی الِانْصِرَافِ أَكَلَتْنِی إِذَنِ السِّبَاعُ حَیاً إِذَا فَارَقْتُكَ وَ أَسْأَلُ عَنْكَ الرُّكْبَانَ وَ أَخْذُلُكَ مَعَ قِلَّةِ الْأَعْوَانِ لایكُونُ هَذَا أَبَداً
اَلسَّلَامُ عَلَی یزِیدَ بْنِ حُصَینٍ الْهَمْدَانِی الْمَشْرِقِی الْقَارِی الْمُجَدَّلِ
اَلسَّلَامُ عَلَی عِمْرَانَ بْنِ كَعْبٍ الْأَنْصَارِی اَلسَّلَامُ عَلَی نَعِیمِ بْنِ عَجْلَانَ الْأَنْصَارِی
اَلسَّلَامُ عَلَی زُهَیرِ بْنِ الْقَینِ الْبَجَلِی الْقَائِلِ لِلْحُسَینِ(ع) وَ قَدْ أَذِنَ لَهُ فِی الِانْصِرَافِ لاوَ اللهِ لایكُونُ ذَلِكَ أَبَداً أَ أَتْرُكُ ابْنَ رَسُولِ اللهِ(ص) أَسِیراً فِی یدِ الْأَعْدَاءِ وَ أَنْجُو أَنَا لاأَرَانِی اللهُ ذَلِكَ الْیوْمَ
اَلسَّلَامُ عَلَی عَمْرِو بْنِ قَرَظَةَ الْأَنْصَارِی اَلسَّلَامُ عَلَی حَبِیبِ بْنِ مُظَاهِرٍ الْأَسَدِی
اَلسَّلَامُ عَلَی الْحُرِّ بْنِ یزِیدَ الرِّیاحِی اَلسَّلَامُ عَلَی عَبْدِ اللهِ بْنِ عُمَیرٍ الْكَلْبِی
اَلسَّلَامُ عَلَی نَافِعِ بْنِ هِلَالٍ الْبَجَلِی الْمُرَادِی اَلسَّلَامُ عَلَی أَنَسِ بْنِ كَاهِلٍ الْأَسَدِی
اَلسَّلَامُ عَلَی قَیسِ بْنِ مُسْهِرٍ الصَّیدَاوِی اَلسَّلَامُ عَلَی عَبْدِ اللهِ وَ عَبْدِ الرَّحْمَنِ ابْنَی عُرْوَةَ بْنِ حَرَّاقٍ الْغِفَارِیینِ
اَلسَّلَامُ عَلَی جَوْنٍ مَوْلَی أَبِی ذَرٍّ الْغِفَارِی اَلسَّلَامُ عَلَی شَبِیبِ بْنِ عَبْدِ اللهِ النَّهْشَلِی
اَلسَّلَامُ عَلَی الْحَجَّاجِ بْنِ یزِیدَ السَّعْدِی اَلسَّلَامُ عَلَی قَاسِطٍ وَ كَرِشٍ ابْنَی زُهَیرٍ التَّغْلَبِیینِ
اَلسَّلَامُ عَلَی كِنَانَةَ بْنِ عَتِیقٍ اَلسَّلَامُ عَلَی ضِرْغَامَةَ بْنِ مَالِكٍ اَلسَّلَامُ عَلَی جُوَینِ بْنِ مَالِكٍ الضُّبَعِی
اَلسَّلَامُ عَلَی عَمْرِو بْنِ ضُبَیعَةَ الضُّبَعِی اَلسَّلَامُ عَلَی زَیدِ بْنِ ثُبَیتٍ الْقَیسِی
اَلسَّلَامُ عَلَی عَبْدِ اللهِ وَ عُبَیدِ اللهِ ابْنَی یزِیدَ بْنِ ثُبَیتٍ الْقَیسِی اَلسَّلَامُ عَلَی عَامِرِ بْنِ مُسْلِمٍ
اَلسَّلَامُ عَلَی قَعْنَبِ بْنِ عَمْرٍو النَّمِری اَلسَّلَامُ عَلَی سَالِمٍ مَوْلَی عَامِرِ بْنِ مُسْلِمٍ
اَلسَّلَامُ عَلَی سَیفِ بْنِ مَالِكٍ اَلسَّلَامُ عَلَی زُهَیرِ بْنِ بِشْرٍ الْخَثْعَمِی
اَلسَّلَامُ عَلَی بَدْرِ بْنِ مَعْقِلٍ الْجُعْفِی اَلسَّلَامُ عَلَی الْحَجَّاجِ بْنِ مَسْرُوقٍ الْجُعْفِی
اَلسَّلَامُ عَلَی مَسْعُودِ بْنِ الْحَجَّاجِ وَ ابْنِهِ اَلسَّلَامُ عَلَی مُجَمِّعِ بْنِ عَبْدِ اللهِ الْعَائِدِی
اَلسَّلَامُ عَلَی عَمَّارِ بْنِ حَسَّانَ بْنِ شُرَیحٍ الطَّائِی اَلسَّلَامُ عَلَی حَیانَ بْنِ الْحَارِثِ السَّلْمَانِی الْأَزْدِی
اَلسَّلَامُ عَلَی جُنْدَبِ بْنِ حُجْرٍ الْخَوْلَانِی اَلسَّلَامُ عَلَی عُمَرَ بْنِ خَالِدٍ الصَّیدَاوِی اَلسَّلَامُ عَلَی سَعِیدٍ مَوْلَاهُ
اَلسَّلَامُ عَلَی یزِیدَ بْنِ زِیادِ بْنِ الْمُظَاهِرِ الْكِنْدِی اَلسَّلَامُ عَلَی زَاهِرٍ مَوْلَی عَمْرِو بْنِ الْحَمِقِ الْخُزَاعِی
اَلسَّلَامُ عَلَی جَبَلَةَ بْنِ عَلِی الشَّیبَانِی اَلسَّلَامُ عَلَی سَالِمٍ مَوْلَی بَنِی الْمَدِینَةِ الْكَلْبِی
اَلسَّلَامُ عَلَی أَسْلَمَ بْنِ كَثِیرٍ الْأَزْدِی اَلسَّلَامُ عَلَی قَاسِمِ بْنِ حَبِیبٍ الْأَزْدِی
اَلسَّلَامُ عَلَی عُمَرَ بْنِ الْأُحْدُوثِ الْحَضْرَمِی اَلسَّلَامُ عَلَی أَبِی ثُمَامَةَ عُمَرَ بْنِ عَبْدِ اللهِ الصَّائِدِی
اَلسَّلَامُ عَلَی حَنْظَلَةَ بْنِ أَسْعَدَ الشِّبَامِی اَلسَّلَامُ عَلَی عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ عَبْدِ اللهِ بْنِ الْكَدِنِ الْأَرْحَبِی
اَلسَّلَامُ عَلَی عَمَّارِ بْنِ أَبِی سَلَامَةَ الْهَمْدَانِی
اَلسَّلَامُ عَلَی عَابِسِ بْنِ شَبِیبٍ الشَّاكِرِی اَلسَّلَامُ عَلَی شَوْذَبٍ مَوْلَی شَاكِرٍ
اَلسَّلَامُ عَلَی شَبِیبِ بْنِ الْحَارِثِ بْنِ سَرِیعٍ اَلسَّلَامُ عَلَی مَالِكِ بْنِ عَبْدِ اللهِ بْنِ سَرِیعٍ
اَلسَّلَامُ عَلَی الْجَرِیحِ الْمَأْسُورِ سَوَّارِ بْنِ أَبِی حِمْیرٍ الْفَهْمِی الْهَمْدَانِی اَلسَّلَامُ عَلَی الْمُرْتَثِّ مَعَهُ عَمْرِو بْنِ عَبْدِ اللهِ الْجُنْدُعِی
اَلسَّلَامُ عَلَیكُمْ یا خَیرَ أَنْصَارٍ، اَلسَّلَامُ عَلَیكُمْ بِمَا صَبَرْتُمْ فَنِعْمَ عُقْبَی الدَّارِ بَوَّأَكُمُ اللهُ مُبَوَّأَ الْأَبْرَارِ أَشْهَدُ لَقَدْ كَشَفَ اللهُ لَكُمُ الْغِطَاءَ وَ مَهَّدَ لَكُمُ الْوِطَاءَ وَ أَجْزَلَ لَكُمُ الْعَطَاءَ وَ كُنْتُمْ عَنِ الْحَقِّ غَیرَ بَطَّاءٍ وَ أَنْتُمْ لَنَا فَرَطٌ وَ نَحْنُ لَكُمْ خُلَطَاءُ فِی‌دار الْبَقَاءِ وَ اَلسَّلَامُ عَلَیكُمْ وَ رَحْمَةُ اللهِ وَ بَرَكَاتُه.

حوالہ جات

  1. بحارالانوار، ج ۹۸، ۲۶۹-۲۷۴.
  2. بحارالانوار، ج۹۸، ۲۷۴
  3. المزار الکبیر،ص۴۸۵.
  4. بحارالانوار، ج۹۸، ۳۳۶-۳۴۱.
  5. سایت پژوہہ
  6. دانشنامہ امام حسین(ع)، ج۱۲، ص۲۷۴
  7. ج۴۵، ص۶۴
  8. انصار الحسین، محمد مہدی شمس الدین، ص۱۹۴.
  9. انصار الحسین، محمد مہدی شمس الدین، ص۱۹۴.
  10. آیتی، بررسی تاریخ عاشورا، ص۱۲۳.


مآخذ

  • انصارالحسین، محمد مہدی شمس الدین، ترجمہ ہوشنگ اجاقی، نشر آفاق، ۱۴۰۶ق.