حق الناس

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں

حَق‌ُّالناس ان حقوق کو کہا جاتا ہے جو انسان پر حق اللہ کے علاوہ لوگوں کے ہوتے ہیں۔ حق الناس مالی حقوق ہی نہیں بلکہ انسانی جان اور عزت کو بھی شامل ہے۔ حق الناس جیسے چوری، قَذْف، غیبت اور چغلی وغیرہ ہیں۔ توبہ کرنے اور اللہ تعالی کی راہ میں شہید ہونے سے بہت سارے گناہ پاک ہوتے ہیں لیکن حق الناس معاف نہیں ہوتا۔ حق الناس میں لوگوں کا یا حق ادا ہوجائے یا جس کا حق ہے وہ معاف کردے۔

اسلام میں عدالتی احکام میں بھی حق الناس اور حق اللہ میں فرق پایا جاتا ہے؛ مثال کے طور پر حق الناس میں فیصلہ کرنے کے لیے حقدار کی طرف سے مطالبہ اور درخواست کرنے کی ضرورت ہے جبکہ حق اللہ میں کسی کی طرف سے مطالبہ یا درخواست کرنے کی ضرورت نہیں۔

مفہوم‌ شناسی

اسلام میں حقوق کو حق الناس اور حق اللہ میں تقسیم کیا گیا ہے۔[1]حق الناس سے مراد وہ حقوق ہیں جو کسی کے ذمے لوگوں کے حقوق ہوتے ہیں، جبکہ حق اللہ سے مراد بندوں پر اللہ کے حقوق ہیں۔[2] حق الناس بھی ایک حوالے سے حق اللہ شمار ہوتے ہیں؛[3]لیکن یہ اصطلاح جب حق اللہ کے مقابلے میں آتی ہے تو اس سے مراد صرف اور صرف وہ حقوق ہیں جو انسان کے ذمے ہوتے ہیں۔[4]

فقہی اور حدیثی مصادر میں حق الناس کے لیے حقوق العباد،[5] حق آدمی،[6]آدمی کے حقوق[7] اور حقوق مسلمین[8]جیسی اصطلاحات استعمال ہوئی ہیں۔

موارد

بعض فقہا نے حق الناس کو دو حصوں میں تقسیم کیا ہے: خالص حق الناس، جیسے انسان کی جان اور مال، جب کہ غیر خالص حق الناس سے مراد وہ حقوق ہیں جس میں حق اللہ اور جق الناس دونوں کا پہلو پائے جاتے ہیں؛ جیسے چوری، [9] تعزیر[10] اور قذف.[11]

حق‌الناس سے مراد صرف مالی حقوق ہی نہیں بلکہ جان اور عزت بھی اس میں شامل ہیں۔[12] اسی لئے غیبت،[13] تہمت، چغلخوری اور لوگوں کو تنگ کرنا حق الناس میں شمار ہوتے ہیں۔[14]امام سجادؑ کی رسالہ حقوق سے مشہور حدیث میں پچاس سے زیادہ دوسروں کے حقوق بیان ہوئے ہیں۔[15]

احادیث کی روشنی میں اہمیت

حق‌الناس کو احادیث میں دعا قبول نہ ہونے کے عوامل میں سے قرار دیا گیا ہے۔[16] امام جعفر صادقؑ مومن کا حق ادا کرنے سے بالاتر کوئی عبادت نہیں سمجھتے ہیں۔[17]رسول اکرمؐ کی حدیث مَناہی، میں آیا ہے کہ کسی کے ذمے دوسرے کا حق ہو اور ادا کرنے کی استطاعت بھی رکھتے ہوئے اس ٹال دے تو اس کے نامہ اعمال میں ہر دن عَشّار کے برابر گناہ درج ہونگے۔[18] عشار اس شخص کو کہا گیا ہے جو ظالم حاکم کے حکم سے لوگوں کے مال کا دسواں حصہ زبردستی وصول کرتا تھا۔[19]

فقہ اور حقوق میں مقام

فقہی میں حق الناس کے بارے میں زیادہ بحث قضائی احکام والے حصے میں ہوتی ہے۔[20]بعض اسلامی ممالک کے قوانین میں بھی اس پر توجہ ہوئی ہے۔[21]مثال کے طور پر دیت، قصاص اور حق الناس میں بعض توہین جیسے تعزیراتی جرائم کو جرم قرار دیا گیا ہے۔[22]

حق اللہ سے فرق

حق اللہ اور حق الناس میں بہت سارے فرق بیان ہوئے ہیں ان میں سے بعض مندرجہ ذیل ہیں:

  • قاضی کے ہاں حق اللہ کی نسبت حق‌الناس کو ثابت کرنا آسان ہے؛ کیونکہ حق اللہ ایک مرد اور دو عورتوں کی گواہی یا ایک مرد اور قسم سے یا صرف خواتین کی گواہی سے ثابت نہیں ہوتا ہے؛ لیکن بعض حق الناس کو ان کے ذریعے ثابت کیا جاسکتا ہے۔[23]
  • حق الناس میں حکم جاری ہونا حقدار کی درخواست پر موقوف ہے؛ لیکن حق اللہ میں کسی کی درخواست کی ضرورت نہیں ہے۔[24]ایران کے قانونِ تعزیرات کا آرٹیکل 159 کے تحت حق الناس میں مجرم کا تعاقب اور مجرم کو سزا دینا حقدار یا اس کا وکیل کی درخواست کے اوپر موقوف ہے۔[25]
  • حق‌الناس میں حق اللہ کے برخلاف، قاضی مجرم کو اقرار کرنے سے منصرف نہیں کرسکتا ہے۔[26]
  • حق الناس کے بعض موارد کو معاف کیا جاسکتا ہے اور دوسروں کی طرف منتقل بھی ہوسکتے ہیں۔ لیکن حق اللہ میں جس شخص پر جرم واقع ہوا ہے اس کی طرف سے معاف کرنا یا اس کے راضی ہونے سے حق ختم نہیں ہوسکتا ہے۔[27]
  • حق‌الناس‌ توبہ کے ذریعے ساقط نہیں ہوتے ہیں، لیکن بعض حق اللہ توبہ سے ختم ہوتے ہیں۔[28]
  • حق‌الناس احتیاط اور دقت و توجہ پر مبتنی ہے جبکہ حق اللہ میں آسانی اور سہولت مدنظر ہے۔[29]کہا گیا ہے کہ بعض فقہا نے عدالتی امور میں حق اللہ اور حق الناس کا بنیادی فرق کی وجہ اسی کو قرار دیا ہے۔[30]
  • حق‌الناس اللہ کی راہ میں شہید ہونے سے معاف نہیں ہوتے ہیں؛ جبکہ حق اللہ شہادت کے ذریعے سے معاف کئے جاتے ہیں۔[31]اسی لئے کہا گیا ہے کہ امام حسینؑ نے شب عاشورا اپنے اصحاب سے کہا کہ جس پر حق الناس ہے وہ اس لشکر میں نہ رہے۔[32]

ازالہ

حق الناس میں توبہ کرنے کے علاوہ یا حقدار کے حقوق ادا کرنا ہونگے یا حقدار اسے معاف کر دے۔[33] بعض فقہاء کا کہنا ہے اس میں وہ حقوق بھی شامل ہیں جو انسان بالغ ہونے سے پہلے ضائع کئے ہیں۔[34]

ایک حدیث نبوی کے مطابق قیامت کے میں جس شخص پر دوسروں کے حقوق ہونگے اس کی نیکیاں ان لوگوں کو دی جائیں گی اور اگر اس کی نیکیاں کم پڑے تو ان کے گناہ اس کے نامہ اعمال میں درج کریں گے پھر اسے جہنم میں ڈالا جائے گا۔[35]لئالی الاخبار میں امام صادقؑ سے ایک روایت نقل ہوئی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ قیامت میں انسان کی سب سے بری حالت اس وقت ہوگی جب زکات اور خمس کے مستحق اس کا راستہ روکیں گے اور اللہ تعالی اس کی نیکیاں خمس اور زکات کے بدلے انہیں دے گا۔[36]

متعلقہ مضامین

حوالہ جات

  1. مراجعہ کریں: ابن‌ شعبہ، تحف العقول، ۱۴۰۴ق، ص۲۵۵.
  2. مراجعہ کریں: عاملی، الاصطلاحات الفقہیہ، ۱۴۱۳ق، ص۷۱.
  3. ملاحظہ کریں: شہید اول، القواعد و الفوائد، ۱۴۰۰ق، ج۲، ص۴۳؛ موسوی اردبیلی، فقہ القضاء، ۱۴۲۳ق، ج۲، ص۱۸۸.
  4. شہید اول، القواعد و الفوائد، ۱۴۰۰ق، ج۲، ص۴۳؛ ملاحظہ کریں: موسوی اردبیلی، فقہ القضاء، ۱۴۲۳ق، ج۲، ص۱۸۸.
  5. القواعد و الفوائد، ۱۴۰۰ق ، ج۱، ص۱۹۵.
  6. شیخ طوسی، المبسوط، ۱۳۸۷ق، ج۲، ص۳۷۰.
  7. شیخ طوسی، المبسوط، ۱۳۸۷ق، ج۲، ص۳۷۰.
  8. کلینی، الکافی، ۱۴۰۷ق، ج۷، ص۲۲۰.
  9. شیخ طوسی، المبسوط، ۱۳۸۷ق، ج۸، ص۱۶۳.
  10. محقق داماد، قواعد فقہ، ۱۴۰۶ق، ج۴، ص۲۰۹.
  11. محقق داماد، قواعد فقہ، ۱۴۰۶ق، ج۳، ص۱۶۰.
  12. ملاحظہ ہو: علامہ مجلسی، بحارالانوار، ۱۴۰۳ق، ج۷۴، ص۱۶۰.
  13. نگاہ کنید بہ علامہ مجلسی، بحارالانوار، ۱۴۰۳ق، ج۷۴، ص۱۶۰.
  14. علامہ مجلسی، بحارالانوار، ۱۴۰۳ق، ج۷۲، ص۱۵۰.
  15. ابن‌شعبہ، تحف‌العقول، ۱۴۰۴ق، ص۲۵۵-۲۷۲.
  16. علامہ مجلسی، بحارالانوار، ۱۴۰۳ق، ج۹۰، ص۳۲۱.
  17. کلینی، الکافی، ۱۴۰۷ق، ج۲، ص۱۷۰.
  18. شیخ صدوق، من لایحضرہ الفقیہ، ۱۴۱۳ق، ج۴، ص۱۶-۱۷.
  19. طریحی، مجمع البحرین، ۱۴۱۶ق، ج۳، ۴۰۴.
  20. مثال کے طور پر ملاحظہ کریں: شیخ طوسی، المبسوط، ۱۳۸۷ق، ج۸، ص۱۶۳.
  21. ملاحظہ کریں: شیری، سقوط مجازات در حقوق کیفری اسلام و ایران، ۱۳۷۲ش، ص۱۱۲؛ مجموعہ جرائم و مجازات‌ہا، ۱۳۸۵ق، ج۲، ص۶۰۵-۶۰۶.
  22. شیری، سقوط مجازات در حقوق کیفری اسلام و ایران، ۱۳۷۲ش، ص۱۱۹-۱۲۰
  23. شیخ طوسی، المبسوط، ۱۳۸۷ق، ج۷، ص۲۴۸-۲۴۹.
  24. منتظری، دراسات فی ولایۃ الفقیہ، ۱۴۰۹ق، ج۲، ص۲۰۱.
  25. شیری، سقوط مجازات در حقوق کیفری اسلام و ایران، ۱۳۷۲ش، ص۱۱۲.
  26. محقق داماد، قواعد فقہ، ۱۴۰۶ق، ج۳، ص۳۳.
  27. ملاحظہ فرمائیں: شہید اول، القواعد و الفوائد، ۱۴۰۰ق، ج۲، ص۴۳-۴۴.
  28. اردبیلی، زبدة البیان، المکتبة الجعفریہ لاحیاء الآثار الجعفریہ، ص۳۰۸-۳۰۹.
  29. شیخ طوسی، المبسوط، ۱۳۸۷ق، ج۸، ص۱۶۳.
  30. مرقایی، «حق اللہ و حق الناس»، ج۱۳.
  31. شیخ صدوق، من لایحضرہ الفقیہ، ۱۴۱۳ق، ج۳، ص۱۸۳؛ کلینی، الکافی، ۱۴۰۷ق، ج۵، ص۹۴.
  32. شوشتری، احقاق الحق، ۱۴۰۹ق، ج۱۹، ص۴۳۰.
  33. ملاحظہ کریں: کلینی، الکافی، ۱۴۰۷ق، ج۵، ص۹۴.
  34. ملاحظہ فرمائیں: مراغی، العناوین الفقہیہ، ۱۴۱۷ق، ج۲، ص۶۶۰.
  35. علامہ مجلسی، بحارالانوار، ج۶۹، ص۶.
  36. تویسرکانی، لئالی الاخبار، علامہ، ج۳، ص۲۱۴.


مآخذ

  • ابن‌ شعبہ حرانی، حسن بن علی، تحف‌العقول، تصحیح علی‎ اکبر غفاری، قم، جامعہ مدرسین، ۱۴۰۴ق.
  • اردبیلی، احمد بن محمد، زبدۃالبیان فی احکام القرآن، تصحیح محمد باقر بہبودی، تہران، المکتبۃ الجعفریہ لاحیاء الآثار الجعفریہ، بی‌تا.
  • آخوندی، محمود، آئین دادرسی کیفری، تہران، ۱۳۶۸ش.
  • تویسرکانی، محمدنبی بن احمد، لئالی الاخبار، قم، علامہ، بی‌تا.
  • شبکہ جامع کتاب گیسوم
  • شوشتری، قاضی نوراللہ، احقاق الحق و ازہاق الباطل، مقدمہ: آیت‌اللہ مرعشی نجفی، قم، مکتبۃ آیۃ اللہ المرعشی النجفی، ۱۴۰۹ق.
  • شہید اول، محمد بن مکی، القواعد و الفوائد، تحقیق سید عبد الہادی حکیم، نجف، ۱۴۰۰ق (افست، قم، کتابفروشی مفید).
  • شیخ صدوق، محمد بن علی، من لایحضرہ الفقیہ، تصحیح: علی‌اکبر غفاری، قم، دفتر انتشارات اسلامی وابستہ بہ جامعہ مدرسین حوزہ علمیہ قم، ۱۴۱۳ق.
  • شیخ طوسی، محمد بن حسن، المبسوط فی فقہ الامامیہ، تصحیح سیدمحمدتقی کشفی، تہران، المکتبۃ المرتضویہ لاحیاء آلآثار الجعفریہ، ۱۳۸۷ق.
  • شیری، عباس، سقوط مجازات در حقوق کیفری اسلام و ایران، تہران، مرکز انتشارات جہاد دانشگاہی شہید بہشتی، ۱۳۷۲ش.
  • عاملی، یاسین عیسی، الاصطلاحات الفقہیہ فی الرسائل العلمیہ، بیروت، دارالبلاغہ، ۱۴۱۳ق.
  • علامہ طباطبایی، سید محمد حسین، المیزان فی تفسیر القرآن، قم، دفتر انتشارات اسلامی جامعہ مدرسین حوزہ علمیہ قم، ۱۴۱۷ق.
  • علامہ مجلسی، محمد باقر، بحار الانوار، بیروت، دار احیاء التراث العربی، ۱۴۰۳ق.
  • طریحی، فخر الدین، مجمع البحرین، تصحیح: سید احمد حسینی، تہران، کتابفروشی، مرتضوی، ۱۴۱۶ق.
  • کلینی، محمد بن یعقوب، الکافی، تصحیح: علی اکبر غفاری و محمد آخوندی، تہران، دار الکتب الاسلامیہ، ۱۴۰۷ق.
  • مجموعہ جرائم و مجازات‌ہا، تہران، معاونت پژوہش تدوین و تنقیح قوانین و مقررات مجمع تشخیص مصلحت نظام، ۱۳۸۵ق.
  • محقق داماد، سید مصطفی، قواعد فقہ، تہران، مرکز نشر علوم اسلامی، ۱۴۰۶ق.
  • مراغی، سید میر عبدالفتاح، العناوین الفقہیہ، قم، دفتر انتشارات اسلامی وابستہ بہ جامعہ مدرسین حوزہ علمیہ قم، ۱۴۱۷ق.
  • مرقایی، سید طہ، «حق اللہ و حق الناس» در دانشنامہ جہان اسلام.
  • منتظری، حسین علی، دراسات فی ولایۃ الفقیہ و فقہ الدولہ الاسلامیہ، قم، تفکر، ۱۴۰۹ق.
  • موسوی اردبیلی، سید عبدالکریم، فقہ القضاء، قم، ۱۴۲۳ق.
  • نجفی، محمد حسن، جواہر الکلام فی شرح شرائع الاسلام، تصحیح:‌ عباس قوچانی و علی آخوندی، بیروت، دار احیاء التراث العربی، ۱۴۰۴ق.
  • نورلیب، شناسامہ کتاب نگاہی بہ حق الناس

بیرونی روابط