جمیل بن دراج

ویکی شیعہ سے
(جمیل بن دراج نخعی سے رجوع مکرر)
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
جمیل بن دراج
معلومات
مکمل نام جمیل بن دراج نخعی
کنیت ابو علی یا ابو محمد
لقب نخعی یا مولی النخع
وجہ شہرت امام صادق (ع) کے صحابی
محل زندگی کوفہ


جمیل بن دراج (متوفی 128 ق) دوسری صدی ہجری کے شیعہ راوی، محدث اور فقیہ ہیں۔ وہ اصحاب اجماع کی فرد ہیں، انہوں نے تقریبا 300 روایات امام جعفر صادق اور امام موسی کاظم علیہما السلام سے نقل کی ہیں۔ اسی طرح سے انہوں نے 50 سے زیادہ راویوں سے روایات نقل کی ہیں جن میں زرارہ بن اعین اور محمد بن مسلم شامل ہیں۔ 40 سے زیادہ افراد نے ان سے روایات نقل کی ہیں جن میں سے بعض اصحاب اجماع جیسے ابی نصر بزنطی شامل ہیں۔ جمیل بن دراج کی روایات زیادہ تر عقائد، اخلاق، آداب اور فقہ کے بارے میں ہیں۔ شیعہ علمائ رجال نے انہیں ثقہ قرار دیا ہے۔

جمیل کا نام امام رضا علیہ السلام کے اصحاب میں بھی آتا ہے۔ امام موسی کاظم علیہ السلام کی شہادت کے بعد وہ کچھ عرصہ واقفیوں کے ساتھ ملحق ہو گئے تھے پھر ان سے جدا ہو گئے اور انہوں نے امام علی رضا علیہ السلام کی امامت کو قبول کر لیا۔

نسب اور وفات

اصحاب اجماع

امام باقرؑ کے اصحاب
۱. زُرارَۃ بن اَعین
۲. مَعروفِ بنِ خَرَّبوذ
۳. بُرَید بن معاویہ
۴. ابوبصیر اَسَدی یا (ابوبصیر مرادی)
۵. فُضَیل بن یسار
۶. محمد بن مُسلِم

امام صادقؑ کے اصحاب
۱. جَمیل بن دَرّاج
۲. عبداللہ بن مُسکان
۳. عبداللہ بن بُکَیر
۴. حَمّاد بن عثمان
۵. حماد بن عیسی
۶. اَبان بن عثمان

امام کاظمؑ اور امام رضاؑ کے اصحاب
۱. یونس بن عبد الرحمن
۲. صَفوان بن یحیی
۳. اِبن اَبی عُمَیر
۴. عبداللہ بن مُغَیرِہ
۵. حسن بن محبوب یا (حسن بن علی بن فَضّال، فَضالَۃ بن ایوب و عثمان بن عیسی)
۶. احمد بن ابی نصر بزنطی

جمیل کی ولادت کے سلسلہ میں اطلاعات دسترسی میں نہیں ہیں۔ ان کی کنیت ابو علی یا ابو محمد تھی۔[1] ان کا خاندان کوفہ میں مقیم تھا اور قبیلہ نخع کے ساتھ ان کا ولایت اور حمایت کا رشتہ استوار تھا۔ اسی سبب سے انہیں نخعی[2] یا مولی النخع[3] بھی کہا جاتا ہے۔

ان کے والد ابو الصبیح الدراج[4] بقال تھے[5] اور آپ کے چھوٹے بھائی نوح بن دراج ثقہ راویوں اور کوفہ کے شیعوں میں سے ہیں اور وہاں کے قاضی تھے کچھ مدت تک وہ مشرقی بغداد کے قاضی بھی رہ چکے ہیں۔[6] جمیل آخر عمر میں نابینا ہو گئے تھے اور امام رضا (ع) کے زمانہ میں انہوں نے وفات پائی۔[7]

وثاقت

جمیل بن دراج کا شمار ان شیعہ روات میں سے ہوتا ہے جن کی علمائ رجال نے توثیق کی ہے۔[8] ان کی ثقہ، شیخ اور وجہ الطائفۃ جیسی تعبیروں سے مدح کی گئی ہے۔[9]

اصحاب اجماع

کشی نے جمیل بن دراج کا شمار ان 18 فقہائ کے زمرہ میں کیا ہے جن کی روایات کے صحیح ہونے پر علمائ امامیہ کا اجماع ہے۔[10] انہیں اصحاب اجماع میں سے امام صادق اور امام کاظم علیہما السلام کے مشترک راویوں میں معتبر ترین اور فقیہ ترین فرد شمار کیا گیا ہے۔[11]

روایت

جمیل بن دراج کا نام کتب اربعہ کی 570 روایات میں جمیل بن دراج[12] کے نام سے اور دسیوں مقام پر جمیل[13] کے نام سے سلسلہ اسناد میں ذکر ہوا ہے۔ چونکہ ان کا نام جمیل، جمیل بن دراج اور جمیل بن صالح جو امام صادق علیہ السلام کے اصحاب میں سے ہیں ان کے ساتھ مشترک ہے اس لئے انہیں روایت کے سلسلہ سند میں طبقہ اور قبل و بعد کی بنیاد پر پہچانا جاتا ہے۔[14]

جمیل کی روایات کی خصوصیات

کتب حدیثی میں جمیل بن دراج کی روایات زیادہ تر عقائد، اخلاق، آداب اور فقہ کے مختلف ابواب پر مشتمل ہیں۔ انہوں نے تقریبا 300 روایات امام صادق اور امام کاظم علیہما السلام سے بلا واسطہ نقل کی ہیں۔ جن میں سے امام صادق (ع) سے نقل ہونے والی روایتوں کی تعداد زیادہ ہے۔[15] اسی طرح سے انہوں نے 50 سے زائد راویوں سے حدیث نقل کی ہے جن میں سے اکثر امام صادق علیہ السلام کے اصحاب ہیں۔[16] ان کی با واسطہ روایات کی سب سے زیادہ تعداد زرارہ بن اعین سے 92 روایات[17] اور ان کے بعد محمد بن مسلم سے 55 روایات[18] ہیں۔

جمیل بن دراج کا شمار ان افراد میں ہوتا ہے جو ائمہ کی خاص احادیث کے محرم راز تھے۔ امام صادق علیہ السلام نے انہیں ان خاص احادیث، جن سے تمام شیعہ آگاہ نہیں تھے اور یا انہیں اسرار شیعہ میں سے شمار کیا جا سکتا ہے، کے نقل کرنے سے منع فرمایا تھا۔[19]

جمیل سے نقل کرنے والے روات

40 سے زائد راویوں نے ان سے روایات نقل کی ہیں۔[20] درج ذیل راویوں نے بالترتیب ان سے سب سے روایتیں نقل کی ہیں:

امام رضا (ع) کے صحابی

جمیل امام صادق (ع)، امام کاظم (ع) اور امام رضا (ع) کے اصحاب میں سے ہیں۔[22] امام کاظم (ع) کی شہادت کے بعد کچھ عرصہ تک انہیں امام رضا (ع) کی امامت میں شک تھا۔ اس اعتبار سے انہیں واقفیہ میں شمار کیا جاتا تھا۔[23] انہوں نے امام رضا (ع) میں امامت کے شواہد کا مشاہدہ کرنے کے بعد[24] وہ امام کاظم (ع) کے بعض دوسرے اصحاب کے ساتھ جیسے احمد بن محمد بزنطی اور یونس بن یعقوب واقفیہ سے عدول کرکے امام رضا (ع) کی امامت سے ملحق ہوگئے۔[25]

تالیفات

جمیل بن دراج کی تین کتابیں ذکر کی گئی ہیں۔ ایک بطور مستقل ان سے منسوب ہے جبکہ دوسری میں ان کے ساتھ مرازم بن حکیم اور تیسری میں محمد بن حمران شریک ہیں۔[26]

ان کی مستقل تالیف شدہ کتاب کو کبھی اصل جو مجموعہ احادیث شیعہ میں اس کے اعتبار پر دلالت کرتی ہے، سے بھی تعبیر کیا جاتا ہے اور کبھی کتاب سے۔[27] تعبیر کا یہ اختلاف اس بات کا سبب نہ ہو کہ اسے دو چیز سمجھا جائے۔

ان کی دو اور کتابوں کے نقل کرنے والے بہت سے راوی ہیں۔ نجاشی نے ان کے اور مزارم بن حکیم کی مشترکہ تالیف کو چند واسطوں کے ساتھ علی بن حدید سے نقل کیا ہے۔[28]

حوالہ جات

  1. نجاشی‌، ص ۱۲۶
  2. نجاشی‌، ص ۱۲۶.
  3. طوسی‌، رجال‌الطوسی‌، ص ۱۷۷.
  4. خوئی، ج۵، ص۱۲۲.
  5. کشّی‌، ص ۲۵۲.
  6. خطیب بغدادی، ج ۱۳، ص ۳۱۶.
  7. خوئی، ج ۵، ص ۱۲۲.
  8. کشّی‌، ص ۲۵۱.
  9. طوسی، الفهرست، ص ۹۴.
  10. کشّی‌، ص ۳۷۵
  11. ابن ‌داوود حلّی‌، ص ۶۶.
  12. خوئی، ج ۵، ص ۱۲۴.
  13. خوئی، ج ۵، ص ۱۱۷
  14. کاظمی‌، ص ‌۳۱ـ ۳۳؛ اردبیلی‌، ج ‌۱، ص ‌۱۶۶ ـ ۱۶۷.
  15. خوئی، ج ۴، ص ‌۱۵۳ ـ ۱۵۴.
  16. خوئی، ج ۴، ص ‌۱۵۲ ـ ۱۵۳.
  17. خوئی، ج ۵، ص ۱۲۵.
  18. خوئی، ج ۵، ص ۱۲۵.
  19. کشّی‌، ص ۲۵۱.
  20. خوئی، ج ۴، ص ۱۵۳
  21. خوئی، ج ۴، ص ۴۴۹.
  22. خوئی، ج ۵، ص ۱۲۳.
  23. نوری‌، ج ۶، ص ۹۶.
  24. خوئی، ج ۵، ص ۱۲۴.
  25. طوسی، کتاب‌الغیبه، ص ۷۱.
  26. نجاشی، ج ۱، ص ۱۲۷.
  27. طوسی، فهرست کتب الشیعة‌، ص ۱۱۴
  28. نجاشی، ج ۱، ص ۱۲۷.


منابع

  • ابن ‌داوود حلّی‌، کتاب الرجال‌، چاپ جلال‌الدین محدث ارموی‌، تهران‌، ۱۳۴۲ش‌.
  • اردبیلی‌، محمد، جامع‌الرواة و ازاحة الاشتباهات عن‌الطرق و الاسناد، بیروت‌، ۱۴۰۳ق.
  • حرّعاملی‌، وسائل الشیعه، آل البیت، قم، ۱۴۱۴ق.
  • خطیب بغدادی‌، تاریخ بغداد، دارالکتب العلمیه، بیروت.
  • خوئی، ابوالقاسم، معجم رجال الحدیث، بیروت، ۱۴۰۳ق.
  • صدر، حسن، نهایة ‌الدرایه فی شرح ‌الرسالة الموسومة بالوجیزة ‌للبهائی، چاپ ماجد غرباوی‌، قم‌، ۱۴۱۳ق.
  • طوسی‌، رجال‌الطوسی‌، چاپ جواد قیومی اصفهانی‌، قم‌، ۱۴۱۵ق.
  • طوسی، فهرست کتب‌الشیعة و اصولهم و اسماء المصنفین و اصحاب الاصول‌، چاپ عبدالعزیز طباطبائی‌، قم ۱۴۲۰ق.
  • طوسی، کتاب‌الغیبة، چاپ عباداللّه طهرانی و علی‌احمد ناصح‌، قم‌، ۱۴۱۱ق.
  • کاظمی‌، محمدامین، هدایة ‌المحدثین الی طریقة المحمدین‌، چاپ مهدی رجایی‌، قم ۱۴۰۵ق.
  • کشّی‌، محمدبن عمر، اختیار معرفة ‌الرجال، (تلخیص‌) محمدبن حسن طوسی‌، چاپ حسن مصطفوی‌، مشهد، ۱۳۴۸ش‌.
  • نجاشی‌، احمدبن علی‌، فهرست اسماء مصنّفی الشیعة المشتهر برجال النجاشی‌، چاپ موسی شبیری زنجانی‌، قم، ‌۱۴۰۷ق.
  • نوری‌، حسین، خاتمة مستدرک الوسائل‌، قم‌، ۱۴۱۵ـ۱۴۲۰ق.

بیرونی رابطہ