"سورہ فاطر" کے نسخوں کے درمیان فرق

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
م
م
 
سطر 156: سطر 156:
 
[[fr:Sourate Fâtir]]
 
[[fr:Sourate Fâtir]]
 
[[id:Surah Fathir]]
 
[[id:Surah Fathir]]
 +
[[de:Sure Fāṭir]]
  
 
[[زمرہ:حامدات سورتیں]]
 
[[زمرہ:حامدات سورتیں]]

حالیہ نسخہ بمطابق 05:30, 15 فروری 2020

سباء سورۂ فاطر یس
سوره فاطر.jpg
ترتیب کتابت: 35
پارہ : 22
نزول
ترتیب نزول: 43
مکی/ مدنی: مکی
اعداد و شمار
آیات: 45
الفاظ: 780
حروف: 3228

سورہ فاطر یا ملائکہ قرٓن پاک کی پینتیسویں35ویں سورت ہے جو قرآن کے 22 ویں پارے میں واقع ہے نیز یہ مَکّی سورتوں میں سے ہے۔ حمد الہی سے شروع ہونے کی وجہ سے اس سورے کو حامدات میں سے قرار دیتے ہیں۔ سورہ فاطر میں معاد، قیامت کے حالات، کافروں کی ندامت و پشیمانی بیان ہوئی ہے نیز دنیا کے ظواہری فریب اور انسان کو شیطانی وسوسوں سے ڈراتی ہے۔ اس سورے میں انعام الہی شمار ہوئے، تلاوت قرآن، اقامۂ نماز اور انفاق کو ایک ایسی تجارت کہا گیا ہے جس میں کسی قسم کا نقصان نہیں ہے۔

اس سورے کی مشہور آیات میں سے پندرھویں ( 15ویں) آیت ہے جس میں خدا کی بے نیازی بیان ہوئی ہے اور لوگوں کو خدا کا نیازمند کہا گیا ہے۔ اٹھارھویں آیت عدل الہی اور قیامت کے روز اس کی شدید پکڑ کی بیان گر ہے۔اس سورے کی تلاوت کی فضیلت میں رسول اللہ سے روایت مروی ہے: جو اس سور کی تلاوت کرے گا قیامت کے روز جنت کے تین دروازے اسے اپنی جانب بلائیں گے وہ جس سے چاہے وارد بہشت ہو جائے۔


تعارف

  • وجہ تسمیہ

این سورہ کو فاطر اور ملائکہ کہتے ہیں کہ یہ دونوں نام سورے کی پہلی آیت سے لئے گئے ہیں۔[1] اس آیت میں «فاطر» خالق اور زمین آسمان کے پروردگار کے معنا میں ہے۔[2]

  • مقام اور ترتیب نزول

سورہ فاطر سورہ‌ہای مکی سورتوں میں سے ہے اور ترتیب نزول کے لحاظ سے تینتالیسواں (43واں) سورہ ہے کہ جو پیامبر(ص) پر نازل ہوا ہے۔ قرآن کی موجودہ ترتیب میں یہ سورت پینتیسویں نمبر پر ہے۔[3] و در جزء بیست‌ودوم جای دارد.

  • تعداد آیات و کلمات

فاطر کی پینتالیس (45) آیتیں، 780 کلمے اور 3228 کلمات ہیں۔ حامدات کہلانے والے سورتوں میں پانچواں اور آخری سورہ ہے کہ جو الحمدللہ یعنی خدا کی حمد دے شروع ہوتا ہے۔ حجم کے لحاظ سے سورہ فاطر مثانی سورے کا حصہ ہے اور قرآن کے حزب پر مشتمل ہے۔[4]

مضامین

سورہ فاطر دنیا کے ظاہری فریب، فتنوں اور شیطانی وسوسوں سے ڈراتی ہے، انسان کو فقیر اور خدا کو بے نیاز کہتی ہے۔ انسان نعمتوں کے ولی کو پہچنوانے اور اس کی شکر گزاری کرنے کی خاطر خدا کی بعض نعمتیں بیان ہوئی ہیں،[5] مثلا بارش کی نعمت، انتخاب زوج کا اختیار اور میٹھے اور کھارے پانی کے ذخیرے کہ جن سے لوگ فائدے حاصل کرت ہیں۔

اس سورے میں معاد اور قیامت کے بعض احوال، کافروں کی پشیمنای اور ندامت، کفار کے دنیا میں واپس لوٹ کر اپنے گذشتہ کے تلافی کرنے کی جانب اشارہ ہوا ہے۔[6] اسی طرح اس سورہ کی آیات میں مشرکوں، جھوٹے خداؤں اور ان کی ناتوانی کا تذکرہ ہوا ہے۔ تلاوت قرآن، اقامۂ نماز اور ظاہری اور مخفی انفاقِ کو ضرر کے بغیر تجارت کہا گیا ہے۔

تفسیر

لوگوں کی ہدایت کیلئے رسول اللہ کی کوشش

سورے کی آٹھویں آیت میں خدا رسول اللہ سے مخاطب ہو کر فرماتا ہے: پس ان (بدبختوں) کے بارے میں افسوس کرتے کرتے آپ کی جان نہ چلی جائے۔ مفسرین اس آیت کے مفہوم کو سورہ شعراء کی تیسری آیت کی مانند سمجھتے ہیں[7] کہ جس میں خدا فرماتا ہے: شاید آپ (اس غم میں) جان دے دیں گے کہ یہ لوگ ایمان نہیں لاتے۔[8] قرآن میں اس تعبیر سے ظاہر ہوتا ہے کہ پیامبر اسلام(ص) کس قدر لوگوں کی نسبت شفیق اور دلسوز تھے نیز وہ اپنے رسالتی امور کی انجام دہی میں کس قدر سنجیدگی کے ساتھ پابند تھے۔[9]


ہدایت اور گمراہی

آٹھویں آیت میں آیا ہے:بے شک اللہ جسے چاہتا ہے گمراہی میں چھوڑ دیتا ہے اور جسے چاہتا ہے ہدایت دیتا ہے۔اس آیت کے ظاہری معنا کی بنا پر انسان کی اختیار کی نفی ہوتی ہے لیکن امام ہادی کے اہواز کے لوگوں کے نام خط کہ جسے طبرسی نے کتاب الاحتجاج میں نقل کیا ہے، کو دیکھتے ہوئے اس آیت کے معنا کو دو طرح سے بیان کر سکتے ہیں:

  1. خدا اگر ہر کسی کو ہدایت یا گمراہ کرے تو اس صورت میں جزا و سزا کا کوئی معنا نہیں ہو گا جبکہ انسان کے اعمال کی جزا و سزا ہے۔
  2. خدا اپنے بندوں کی راہ ہدایت کی طرف رہنمائی کرتا ہے مثلا سورہ فصلت کی سترھویں آیت؛[10] اس حالت میں بھی ان میں سے کسی کا اختیار کرنا انسان کے ارادہ و اختیار میں ہے۔[11]

بعض مفسرین نے ہدایت و ضلالت (گمراہی) کے دو مرحلے بیان کئے ہیں:

پہلا مرحلہ: اس مرحلے میں خدا انسان کو مجبور نہیں کرتا ہے اور انسان اختیار رکھتا ہے

دوسرا مرحلہ: گمراہی اختیار کرنے کی صورت میں اس گمراہی پر مرتب ہونے والے آثار اور عقوبتیں اس مرحلے میں شامل ہیں۔ یہ آثار اور عقوبتیں فرمان خدا کے تابع ہیں۔ حقیقت میں یہ مسیر حق سے انسان کی نافر- مانی کا عکس العمل ہے۔ پس جن آیات میں گمراہی کے اختیار خدا میں ہونے کا کہا گیا ہے وہ یہ دوسری گمراہی ہے۔ اسی طرح ہدایت کے بھی دو مرحلے ہیں۔[12]

قبولیف اعمال کا معیار

«إِلَیہِ یصْعَدُ الْکلِمُ الطَّیبُ وَالْعَمَلُ الصَّالِحُ یرْ‌فَعُہُ: اچھے اور پاکیزہ کلام اس کی طرف بلند ہوتے ہیں اور نیک عمل انہیں بلند کرتا ہے (یا اللہ نیک عمل کو بلند کرتا ہے)[13] اس آیت کی تفسیر میں آنے والی روایات میں آیا ہے : «الکلم الطیب:یعنی اچھی گفتار سے توحید، نبوت اور ولایت امیر المومین اور دیگر آئمہ کی گواہی مراد ہے اور «والعمل الصالح» سے مراد ان پر قلبی ایمان رکھنا ہے[14] شیخ کلینی کتاب کافی میں لکھتے ہیں: امام صادق(ع) نے اس آیت کے بارے میں فرمایا: اہنے ہاتھ سے اپنے سینے ک طرف اشارہ کرتے ہوئے فرمایا کہ اس سے ہم اہل بیت کی ولایت مراد ہے۔ پس جس کسی کے سینے میں ہماری ولای نہیں ہے اس کا کوئی عمل خدا اوپر نہیں لے جائے گا یعنی اسے قبول نہیں کرے گا۔[15]

مُردوں سے توسل کی ممنوعیت پر وہابی استدلال

اسی سورت کی 22ویں آیت میں آیا ہے: اور نہ ہی زندے (مؤمنین) اور مردے (کافرین) برابر ہیں۔ بے شک اللہ جسے چاہتا ہے سنوارتا ہے (اے رسول) جو (کفار مردوں کی طرح) قبروں میں دفن ہیں آپ انہیں نہیں سنا سکتے۔

وہابی اس آیت سے استدلال کرتے ہوئے کہتے ہیں: مرحومین سے توسل کرنا چاہے وہ ارواح انبیا اور اولیائے الہی ہی ہوں، باطل ہے۔کیونکہ اس آیت کے مطابق مردے آوازیں نہیں سنتے ہیں اور نہ ہی وہ زندہ انسانوں کی ضرورتوں کو برطرف کر سکتے ہیں۔[16] اس کے مقابلے میں شیعہ علما اور اہل سنت کے بہت سے علما اور صوفی معتقد ہیں کہ اس اس دنیا میں فوت ہونے والے افراد عالم برزخ میں برزخی زندگی رکھتے ہیں۔ قرآن میں اس سے متعلق بہت سی آیات موجود ہیں۔[17] وہ معتقد ہیں کہ (آیت 22 فاطر) میں کفار‌ کو قبروں میں موجود اجساد سے تشبیہ دی گئی ہے کہ جس طرح مردوں کیلئے (اب) ہدایت کوئی فائدہ نہیں رکھتی اور ان کیلئے ہدایت قبول کرنا ممکن نہیں (اسی طرح) گفتار پیامبر(ص) کفار کیلئے کوئی نفع نہیں رکھتی ہے۔[18]

مشہور آیات

  • یا أَیہَا النَّاسُ أَنْتُمُ الْفُقَراءُ إِلَی اللَّہِ وَ اللَّہُ ہُوَ الْغَنِی الْحَمِید ( ۱۵)

ترجمہ:‌اے لوگو! تم (سب) اللہ کے محتاج ہو اور اللہ ہی بے نیاز ہے جو قابلِ تعریف ہے۔

یہ آیت خاص طور پر عُرَفا[19] اور فلاسفہ کے ہاں مورد توجہ رہی ہے اور بعض فلاسفہ اسے معروف برہان: فقر و امکان یا امکان و وجوب کی طرف اشارہ سمجھتے ہیں کہ جس میں واجب الوجود کو ثابت کیا گیا ہے۔[20]

اس آیت کی توضیح میں آیا ہے کہ اس تمام جہان ہستی میں حقیقی بے نیاز اور قائم بالذات صرف ذات خدا ہے بلکہ تمام موجودات مکمل طور پر محتاج ہیں اور وہ تمام انسان بلکہ تمام موجودات اپنے وجود میں مکمل طور پر محتاج اور نیازمند ہیں اور وہ سب اُس مستقل وجود سے اس طرح وابستہ ہیں کہ اگر ایک لحظے کیلئے بھی ان کا رابطہ اس سے قطع ہو جائے تو وہ نہیں ہیں۔[21]

  • وَ لا تَزِرُ وَازِرَةٌ وِزْرَ أُخْری( ۱۸)

ترجمہ:اور کوئی بوجھ اٹھانے والا (گنہگار) کسی دوسرے کا بوجھ نہیں اٹھائے گا

یہ آیت عدل الہی کا پیغام دیتی ہے اور آگے چل کر قیامت کے روز سخت حساب کتاب کو بیان کرتی ہے کہ اس دن کوئی کسی دوسرے کا بوجھ اپنے کندھوں پر نہیں اٹھائے گا ہر چند وہ جس قدر بھی اس سے محبت رکھتا ہو۔[22]

  • إِنَّما یخْشَی اللَّہَ مِنْ عِبادِہِ الْعُلَماء( ۲۸)

ترجمہ: اور اللہ کے بندوں میں سے صرف علماء ہی اس سے ڈرتے ہیں بے

تعظیم کے ساتھ کسی سے ڈرنا خشیت ہے۔[23] اس آیت کی تفسیر میں امام سجاد سے منقول ہے: «علم اور عمل باہمی دو صمیمی دوست ہیں، جو خدا کی معرفت رکھتا ہے وہی اس سے ڈرتا ہے اور یہ ڈر اور خوف اسے خدا کی اطاعت اور فرمانبرداری کی ترغیب دیتا ہے۔ صاحبان علم اور انکے پیروکار وہ لوگ ہیں کہ جو اچھی طرح سے خدا کی معرفت رکھتے ہیں اور اسی کیلئے اعمال انجام دیتے ہیں اور وہ خدا سے عشق کرتے ہیں جیسا کہ ارشاد خدا ہے: إِنَّما یخْشَی اللَّہَ مِنْ عِبادِہِ الْعُلَماءُ».[24] اسی طرح تفسیری اور روائی کتب میں آیا ہے کہ اس آیت میں العلما سے امیر المومنین مراد ہیں۔[25]

فضیلت اور خواص

تفسیر مجمع البیان میں پیامبر(ص) سے مروی روایت کی بنا پر سورہ فاطر کی تلاوت کرنے والے کو قیامت کے دن بہشت کے تین دروازے اپنی جانب بلائیں گے یہاں تک کہ وہ جس دروازے سے وہ چاہے گا بہشت میں داخل ہو جائے گا۔[26] تفسیر نورالثقلین میں نیز امام صادق سے منقول ہے: جو کوئی رات کو اس کی تلاوت کرے گا خدا اس کی محافظت کرے گا اور جو کوئی اسے دن کو تلاوت کرے گا اسے کسی قسم کی کوئی ناراحتی نہیں پہنچے گی، اور خدا اسے دنیا و آخرت میں ایسی خیر سے ہمکنار کرے گا کہ اس نے ایسا سوچا بھی نہیں ہو گا اور نہ اس کی آرزو کی ہوگی۔[27]

متن اور ترجمہ

سورہ فاطر
ترجمہ
بِسْمِ اللَّـہِ الرَّ‌حْمَـٰنِ الرَّ‌حِيمِ

الْحَمْدُ لِلَّہِ فَاطِرِ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ جَاعِلِ الْمَلَائِكَةِ رُسُلًا أُولِي أَجْنِحَةٍ مَّثْنَى وَثُلَاثَ وَرُبَاعَ يَزِيدُ فِي الْخَلْقِ مَا يَشَاء إِنَّ اللَّہَ عَلَى كُلِّ شَيْءٍ قَدِيرٌ ﴿1﴾ مَا يَفْتَحِ اللَّہُ لِلنَّاسِ مِن رَّحْمَةٍ فَلَا مُمْسِكَ لَہَا وَمَا يُمْسِكْ فَلَا مُرْسِلَ لَہُ مِن بَعْدِہِ وَہُوَ الْعَزِيزُ الْحَكِيمُ ﴿2﴾ يَا أَيُّہَا النَّاسُ اذْكُرُوا نِعْمَتَ اللَّہِ عَلَيْكُمْ ہَلْ مِنْ خَالِقٍ غَيْرُ اللَّہِ يَرْزُقُكُم مِّنَ السَّمَاء وَالْأَرْضِ لَا إِلَہَ إِلَّا ہُوَ فَأَنَّى تُؤْفَكُونَ ﴿3﴾ وَإِن يُكَذِّبُوكَ فَقَدْ كُذِّبَتْ رُسُلٌ مِّن قَبْلِكَ وَإِلَى اللَّہِ تُرْجَعُ الأمُورُ ﴿4﴾ يَا أَيُّہَا النَّاسُ إِنَّ وَعْدَ اللَّہِ حَقٌّ فَلَا تَغُرَّنَّكُمُ الْحَيَاةُ الدُّنْيَا وَلَا يَغُرَّنَّكُم بِاللَّہِ الْغَرُورُ ﴿5﴾ إِنَّ الشَّيْطَانَ لَكُمْ عَدُوٌّ فَاتَّخِذُوہُ عَدُوًّا إِنَّمَا يَدْعُو حِزْبَہُ لِيَكُونُوا مِنْ أَصْحَابِ السَّعِيرِ ﴿6﴾ الَّذِينَ كَفَرُوا لَہُمْ عَذَابٌ شَدِيدٌ وَالَّذِينَ آمَنُوا وَعَمِلُوا الصَّالِحَاتِ لَہُم مَّغْفِرَةٌ وَأَجْرٌ كَبِيرٌ ﴿7﴾ أَفَمَن زُيِّنَ لَہُ سُوءُ عَمَلِہِ فَرَآہُ حَسَنًا فَإِنَّ اللَّہَ يُضِلُّ مَن يَشَاء وَيَہْدِي مَن يَشَاء فَلَا تَذْہَبْ نَفْسُكَ عَلَيْہِمْ حَسَرَاتٍ إِنَّ اللَّہَ عَلِيمٌ بِمَا يَصْنَعُونَ ﴿8﴾ وَاللَّہُ الَّذِي أَرْسَلَ الرِّيَاحَ فَتُثِيرُ سَحَابًا فَسُقْنَاہُ إِلَى بَلَدٍ مَّيِّتٍ فَأَحْيَيْنَا بِہِ الْأَرْضَ بَعْدَ مَوْتِہَا كَذَلِكَ النُّشُورُ ﴿9﴾ مَن كَانَ يُرِيدُ الْعِزَّةَ فَلِلَّہِ الْعِزَّةُ جَمِيعًا إِلَيْہِ يَصْعَدُ الْكَلِمُ الطَّيِّبُ وَالْعَمَلُ الصَّالِحُ يَرْفَعُہُ وَالَّذِينَ يَمْكُرُونَ السَّيِّئَاتِ لَہُمْ عَذَابٌ شَدِيدٌ وَمَكْرُ أُوْلَئِكَ ہُوَ يَبُورُ ﴿10﴾ وَاللَّہُ خَلَقَكُم مِّن تُرَابٍ ثُمَّ مِن نُّطْفَةٍ ثُمَّ جَعَلَكُمْ أَزْوَاجًا وَمَا تَحْمِلُ مِنْ أُنثَى وَلَا تَضَعُ إِلَّا بِعِلْمِہِ وَمَا يُعَمَّرُ مِن مُّعَمَّرٍ وَلَا يُنقَصُ مِنْ عُمُرِہِ إِلَّا فِي كِتَابٍ إِنَّ ذَلِكَ عَلَى اللَّہِ يَسِيرٌ ﴿11﴾ وَمَا يَسْتَوِي الْبَحْرَانِ ہَذَا عَذْبٌ فُرَاتٌ سَائِغٌ شَرَابُہُ وَہَذَا مِلْحٌ أُجَاجٌ وَمِن كُلٍّ تَأْكُلُونَ لَحْمًا طَرِيًّا وَتَسْتَخْرِجُونَ حِلْيَةً تَلْبَسُونَہَا وَتَرَى الْفُلْكَ فِيہِ مَوَاخِرَ لِتَبْتَغُوا مِن فَضْلِہِ وَلَعَلَّكُمْ تَشْكُرُونَ ﴿12﴾ يُولِجُ اللَّيْلَ فِي النَّہَارِ وَيُولِجُ النَّہَارَ فِي اللَّيْلِ وَسَخَّرَ الشَّمْسَ وَالْقَمَرَ كُلٌّ يَجْرِي لِأَجَلٍ مُّسَمًّى ذَلِكُمُ اللَّہُ رَبُّكُمْ لَہُ الْمُلْكُ وَالَّذِينَ تَدْعُونَ مِن دُونِہِ مَا يَمْلِكُونَ مِن قِطْمِيرٍ ﴿13﴾ إِن تَدْعُوہُمْ لَا يَسْمَعُوا دُعَاءكُمْ وَلَوْ سَمِعُوا مَا اسْتَجَابُوا لَكُمْ وَيَوْمَ الْقِيَامَةِ يَكْفُرُونَ بِشِرْكِكُمْ وَلَا يُنَبِّئُكَ مِثْلُ خَبِيرٍ ﴿14﴾ يَا أَيُّہَا النَّاسُ أَنتُمُ الْفُقَرَاء إِلَى اللَّہِ وَاللَّہُ ہُوَ الْغَنِيُّ الْحَمِيدُ ﴿15﴾ إِن يَشَأْ يُذْہِبْكُمْ وَيَأْتِ بِخَلْقٍ جَدِيدٍ ﴿16﴾ وَمَا ذَلِكَ عَلَى اللَّہِ بِعَزِيزٍ ﴿17﴾ وَلَا تَزِرُ وَازِرَةٌ وِزْرَ أُخْرَى وَإِن تَدْعُ مُثْقَلَةٌ إِلَى حِمْلِہَا لَا يُحْمَلْ مِنْہُ شَيْءٌ وَلَوْ كَانَ ذَا قُرْبَى إِنَّمَا تُنذِرُ الَّذِينَ يَخْشَوْنَ رَبَّہُم بِالغَيْبِ وَأَقَامُوا الصَّلَاةَ وَمَن تَزَكَّى فَإِنَّمَا يَتَزَكَّى لِنَفْسِہِ وَإِلَى اللَّہِ الْمَصِيرُ ﴿18﴾ وَمَا يَسْتَوِي الْأَعْمَى وَالْبَصِيرُ ﴿19﴾ وَلَا الظُّلُمَاتُ وَلَا النُّورُ ﴿20﴾ وَلَا الظِّلُّ وَلَا الْحَرُورُ ﴿21﴾ وَمَا يَسْتَوِي الْأَحْيَاء وَلَا الْأَمْوَاتُ إِنَّ اللَّہَ يُسْمِعُ مَن يَشَاء وَمَا أَنتَ بِمُسْمِعٍ مَّن فِي الْقُبُورِ ﴿22﴾ إِنْ أَنتَ إِلَّا نَذِيرٌ ﴿23﴾ إِنَّا أَرْسَلْنَاكَ بِالْحَقِّ بَشِيرًا وَنَذِيرًا وَإِن مِّنْ أُمَّةٍ إِلَّا خلَا فِيہَا نَذِيرٌ ﴿24﴾ وَإِن يُكَذِّبُوكَ فَقَدْ كَذَّبَ الَّذِينَ مِن قَبْلِہِمْ جَاءتْہُمْ رُسُلُہُم بِالْبَيِّنَاتِ وَبِالزُّبُرِ وَبِالْكِتَابِ الْمُنِيرِ ﴿25﴾ ثُمَّ أَخَذْتُ الَّذِينَ كَفَرُوا فَكَيْفَ كَانَ نَكِيرِ ﴿26﴾ أَلَمْ تَرَ أَنَّ اللَّہَ أَنزَلَ مِنَ السَّمَاء مَاء فَأَخْرَجْنَا بِہِ ثَمَرَاتٍ مُّخْتَلِفًا أَلْوَانُہَا وَمِنَ الْجِبَالِ جُدَدٌ بِيضٌ وَحُمْرٌ مُّخْتَلِفٌ أَلْوَانُہَا وَغَرَابِيبُ سُودٌ ﴿27﴾ وَمِنَ النَّاسِ وَالدَّوَابِّ وَالْأَنْعَامِ مُخْتَلِفٌ أَلْوَانُہُ كَذَلِكَ إِنَّمَا يَخْشَى اللَّہَ مِنْ عِبَادِہِ الْعُلَمَاء إِنَّ اللَّہَ عَزِيزٌ غَفُورٌ ﴿28﴾ إِنَّ الَّذِينَ يَتْلُونَ كِتَابَ اللَّہِ وَأَقَامُوا الصَّلَاةَ وَأَنفَقُوا مِمَّا رَزَقْنَاہُمْ سِرًّا وَعَلَانِيَةً يَرْجُونَ تِجَارَةً لَّن تَبُورَ ﴿29﴾ لِيُوَفِّيَہُمْ أُجُورَہُمْ وَيَزِيدَہُم مِّن فَضْلِہِ إِنَّہُ غَفُورٌ شَكُورٌ ﴿30﴾ وَالَّذِي أَوْحَيْنَا إِلَيْكَ مِنَ الْكِتَابِ ہُوَ الْحَقُّ مُصَدِّقًا لِّمَا بَيْنَ يَد