"رقص" کے نسخوں کے درمیان فرق

ویکی شیعہ سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
م
م
 
سطر 50: سطر 50:
  
 
[[fa:رقص]]
 
[[fa:رقص]]
 +
[[ar:الرقص]]
  
 
[[زمرہ:فقہی اصطلاحات]]
 
[[زمرہ:فقہی اصطلاحات]]

حالیہ نسخہ بمطابق 13:00, 23 مئی 2020

مشہور احکام
رساله عملیه.jpg
نماز
واجب نمازیں یومیہ نمازیںنماز جمعہنماز عیدنماز آیاتنماز میت
مستحب نمازیں نماز تہجدنماز غفیلہنماز جعفر طیارنماز امام زمانہنماز استسقاءنماز شب قدرنماز وحشتنماز شکرنماز استغاثہدیگر نمازیں
دیگر عبادات
روزہخمسزکاتحججہاد
امر بالمعروف و نہی عن المنکرتولیتبری
احکام طہارت
وضوغسلتیممنجاساتمطہرات
مدنی احکام
وکالتوصیتضمانتکفالتارث
عائلی احکام
شادی بیاهمتعہتعَدُّدِ اَزواجنشوز
طلاقمہریہرضاعہمبستریاستمتاع
عدالتی احکام
قضاوتدیّتحدودقصاصتعزیر
اقتصادی احکام
خرید و فروخت (بیع)اجارہقرضہسود
دیگر احکام
حجابصدقہنذرتقلیدکھانے پینے کے آدابوقفاعتکاف
متعلقہ موضوعات
بلوغفقہشرعی احکامتوضیح المسائل
واجبحراممستحبمباحمکروہ


رَقْص اعضاء بدن کے موزون اور ہم آہنگ حرکت کو کہا جاتا ہے جو عموما گانے اور موسیقی کے ساتھ انجام پاتا ہے۔ اکثر فقہاء رقص کی تمام اقسام کو حرام سمجھتے ہیں؛ لیکن بعض فقہاء اس بات کے معتقد ہیں کہ رقص صرف اس صورت میں حرام ہے جب یہ کسی حرام کام کے ساتھ انجام پائے مثلا انسان کے شہوت کو ابھارنے کا سبب بنے۔ بعض وہ فقہاء جو رقص کو بذات خود حرام سمجھتے ہیں وہ عورتوں کا عورتوں کے لئے رقص کرنا اور عورت کا اپنے شوہر کے لئے رقص کرنے کو حرام نہیں سمجھتے ہیں۔

معانی

رَقْص اعضاء بدن کے موزون اور ہم آہنگ حرکت کو کہا جاتا ہے جو عموما گانے اور موسیقی کے ساتھ انجام پاتا ہے۔[1] فقہاء «مکاسب مُحَرَّمہ» (حرام تجاریتیں) اور «مسائل مُستَحَدثہ» (جدید مسائل) میں رقص سے بحث کرتے ہیں۔[2]

حکم

رقص کے شرعی احکام کے ضمن میں دو نظریے موجود ہیں: پہلا نظریہ رقص کو صرف اس صورت میں حرام قرار دیتے ہیں جب یہ کسی حرام کام کے ساتھ انجام پائے[3] یا انسان کے شہورت کو ابھارنے کا موجب بنے؛[4] لیکن دوسرے نظریے کے تحت جو اکثر فقہاء کا نظریہ ہے، رقص بذات خود حرام ہے۔[5]

حرام ہونے کی علت

فقہی کتابوں میں رقص کے حرام ہونے پر کئی دلائل پیش کی گئی ہیں جو درج ذیل ہیں:

  • رقص لہو و لعب کا مصداق ہے اور لہو و لعب حرام ہے۔[6]
  • پیغمبر اکرمؐ سے منقول ایک حدیث میں رقص کرنے سے منع کی گئی ہے۔[7]
  • رقص فساد کا سبب ہے اور شرم و حیا کو ختم کر دیتا ہے۔[8]

میاں بیوی کا ایک دوسرے کے لئے رقص کرنا

ان فقہاء کی اکثریت جو رقص کو بذات خود حرام سمجھتے ہیں، عورت کا اپنے شوہر کے لئے رقص کرنے کو جائز سمجھتے ہیں۔[9] ان فقہاء میں سے بعض شوہر کا اپنی بیوی کے لئے رقص کرنے کو بھی جائز سمجھتے ہیں[10] جبکہ بعض فقہاء اسے بھی جائز نہیں سمجھتے ہیں۔[11]

آیت اللہ بہجت میاں بیوی کا ایک دوسرے کے لئے رقص کرنے کو بھی حرام سمجھتے ہیں۔[12]

عورت کا عورت کے لئے رقص کرنا

رقص کو بذات خود حرام سمجھنے والے بعض فقہاء کے فتوے کے مطابق عورت کا عورت کے لئے رقص کرنا جائز ہے۔[13] البتہ یہ حکم اس صورت میں ہے کہ اس کے ساتھ کوئی اور حرام کام جیسے غِنا وغیرہ انجام نہ پائے اور کوئی مرد حتی اس عورت کے محارم میں سے بھی کوئی مرد وہاں موجود نہ ہو۔[14]

سماع

تفصیلی مضمون: سماع

صوفی حضرات رقص کی ایک قسم کو جو کسی خاص مکان یا زمان میں انجام پاتا ہے اور ان کے مطابق اس کام سے انسان وجد میں آتا ہے اور خدا سے نزدیک ہوتا ہے؛ کو صوفیوں کے لئے جائز سمجھتے ہیں[15] لیکن بعض اس رقص اور آواز کو صوفیوں کے لئے بھی جائز نہیں سمجھتے ہیں۔[16]

حوالہ جات

  1. مہربانی، «رقص»،‌ ص۲۱۵۔
  2. مؤسسہ دایرۃالمعارف اسلامی، فرہنگ فقہ، ۱۳۸۹ش، ج۴، ص۱۲۴۔
  3. خویی، صراط‌النجاۃ، ۱۴۱۶ق، ج۱، ص۳۷۲۔
  4. خامنہ ای، اجوبۃالاستفتائات، ۱۴۲۴ق، ص۲۵۶۔
  5. ملاحظہ کریں: گلپایگانی، ارشادالسائل، ۱۴۱۴ق، ص۱۵۶؛ منتظری، رسالہ استفتائات، بی‌تا، ج۱، ص۱۴۴؛ سیستانی، الفتاوی المیسرہ، ۱۴۱۶ق، ص۴۳۶و۴۳۷؛ مکارم شیرازی، استفتائات جدید، ۱۴۲۷ق، ج۱، ص۱۵۵۔
  6. اردبیلی، رسالۃ فی الغناء، ۱۴۱۸ق، ص۲۷؛ تبریزی، استفتائات جدید، ج۱، ص۲۱۹۔
  7. منتظری، رسالہ استفتائات، بی‌تا، ج۱، ص۱۴۴۔
  8. فاضل لنکرانی، جامع‌المسائل، ۱۴۲۵ق، ص۴۴۳۔
  9. ملاحظہ کریں: تبریزی، صراط‌النجاۃ، بی‌تا، ج۵، ص۳۸۵؛ شیرازی، استفتائات‌الغنا، بی‌تا، ص۴۸؛ مکارم شیرازی، استفتائات جدید، ۱۴۲۷ق، ج۱، ص۱۵۵۔
  10. تبریزی، صراط‌النجاۃ، بی‌تا، ج۵، ص۳۸۵؛ شیرازی، استفتائات‌الغنا، بی‌تا، ص۴۸۔
  11. مکارم شیرازی، استفتائات جدید، ۱۴۲۷ق، ج۱، ص۱۵۵۔
  12. بہجت، استفتائات، ۱۴۲۸، ج۴، ص۵۳۱۔
  13. فاضل لنکرانی، اجوبۃالسائلین، ۱۴۱۶ق، ص۱۴۸؛ تبریزی، استفتائات جدید، بی‌تا، ج۲، ص۲۱۹۔
  14. ملاحظہ کریں: تبریزی، استفتائات جدید، بی‌تا، ج۲، ص۲۱۹۔
  15. نوروزی طلب،‌ «مطالعہ تطبیقی رقص شیوا و رقص سماع»،‌ ص۱۹۔
  16. کاشانی، مصباح الہدایہ، ۱۳۷۶ش، ص۱۷۸۔


مآخذ

  • اردبیلی، میرزایوسف، رسالۃ فی الغناء، تحقیق و تصحیح علی‌اکبر زمانی‌نژاد، قم، مرصاد، چاپ اول، ۱۴۱۸ق۔
  • بہجت، محمدتقی، استفتائات، قم، دفتر حضرت آیت‌اللہ بہجت، چاپ اول، ۱۴۲۸۔
  • تبریزی، جواد، استفتائات جدید، چاپ اول، بی‌تا۔
  • تبریزی، جواد، صراط‌النجاۃ، بی‌تا۔
  • خامنہ‌ای، سیدعلی، اجوبۃالاستفتائات، قم، دفتر مقام معظم رہبری در قم، چاپ اول، ۱۴۲۴ق۔
  • خویی، سیدابوالقاسم، صراط‌النجاۃ، قم، مکتب نشرالمنتخب، چاپ اول، ۱۴۱۶ق۔
  • سیستانی، سیدعلی، الفتاوی المیسرہ، جمع‌آوری سید عبدالہادی حکیم، قم، دفتر حضرت آیت‌اللہ سیستانی، چاپ اول، ۱۴۱۶۔
  • شیرازی، سیدصادق، استفتائات‌الغنا، بی‌تا۔
  • فاضل لنکرانی، محمد، اجوبۃالسائلین، قم، دفتر آیت‌اللہ فاضل لنکرانی، چاپ اول، ۱۴۱۶ق۔
  • فاضل لنکرانی، محمد، جامع‌المسائل، قم، امیر قلم، چاپ اول، ۱۴۲۵ق۔
  • کاشانی، عزالدین محمود، مصباح الہدایہ و مفتاح الکفایہ، تصحیح جلال‌الدین ہمایی، تہران، نشر ہما، ۱۳۷۶ش۔
  • گلپایگانی، سیدمحمدرضا، ارشادالسائل، بیروت، دارالصفوہ، چاپ دوم، ۱۴۱۴ق۔
  • مکارم شیرازی، ناصر، استفتائات جدید، قم، انتشارات مدرسہ امام علی بن ابی‌طالب، چاپ دوم، ۱۴۲۷ق،
  • منتظری، حسین‌علی، رسالہ استفتائات، قم، چاپ اول، بی‌تا۔
  • مہربانی،‌ امین، «رقص»، در دانشنامہ جہان اسلام، تہران، مؤسسہ فرہنگی ہنری کتاب مرجع، ۱۳۹۴ش۔
  • مؤسسہ دایرۃالمعارف اسلامی، فرہنگ فقہ مطابق مذہب اہل‌بیت، قم، نشر دایرۃ المعارف فقہ اسلامی،‌ چاپ اول، ۱۳۸۹ش۔
  • نوروزی طلب، علیرضا،‌ عادلوند، «مطالعہ تطبیقی رقص شیوا و رقص سماع»،‌ پدیدہ، در مجلہ باغ نظر، تہران، مرکز پژوہشی ہنر، معماری و شہرسازی نظر، ۱۳۹۳ش۔